تمل ناڈو کے گورنر جناب بھنواری لال پروہت جی، تمل ناڈو کے وزیر اعلیٰ جناب پلانی سوامی جی، نائب وزیر اعلیٰ جناب او پی ایس ، میرے ساتھی پرہلاد جوشی جی، تمل ناڈو حکومت میں وزیر جناب ویلومانی جی، معزز شخصیات، خواتین وحضرات۔

ونککم

مجھے کوئمبٹور آکر بڑی خوشی محسوس ہورہی ہے۔ یہ صنعت اور اختراع کا ایک شہر ہے۔ آج ہم بہت سے ایسے ترقیاتی کام شروع کررہے جن سے کوئمبٹور اور پورے تمل ناڈو کو فائدہ پہنچے گا۔

دوستو،

بھوانی ساگر باندھ کو جدید طرز پر ڈھالنے کے لئے سنگ بنیاد رکھا جارہا ہے۔ اس سے دو لاکھ ایکڑ زمین کی آبپاشی ہوگی۔  ایروڈ، تریپور اور کرور اضلاع کو اِس پروجیکٹ سے خاص طور پر فائدہ ہوگا۔ یہ پروجیکٹ ہمارے کسانوں کے لئے بھی بہت مفید ثابت ہوگا۔ مجھے عظیم تھروولورکے الفاظ یاد آرہے ہیں۔ انہوں نے کہا تھا کہ

உழுதுண்டு வாழ்வாரே வாழ்வார்மற் றெல்லாம்

தொழுதுண்டு பின்செல் பவர்.

اس کا مطلب یہ ہے ’کسان ہی وہ لوگ ہیں جو صحیح معنی میں زندگی گزارتے ہیں اور باقی تمام دیگر لوگ ان ہی کی وجہ سے زندہ رہتے ہیں: ہم ان کا احترام کرتے ہیں‘۔

دوستو،

تمل ناڈو بھارت کی صنعتی ترقی میں ایک اہم رول ادا کررہا ہے۔ صنعت کی بنیادی ضرورتوں میں سے ایک ضرورت مسلسل بجلی کی فراہمی ہے۔  آج مجھے دو بڑے بجلی پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کرنے میں اور ایک اور بڑے بجلی پروجیکٹ کا سنگ بنیاد رکھنےمیں خوشی محسوس ہورہی ہے۔  709 میگاواٹ شمسی توانائی کے پروجیکٹ کو ترونل ویلی، تھوتھو کڈی، راما ناتھا پورم اور ورودھو نگر اضلاع میں نویلی نگ نائٹ کارپوریشن انڈیا لمیٹیڈ نے تیار کیا ہے۔  اس پروجیکٹ کی لاگت تین ہزار کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔  این ایل سی کا ایک ہزار میگاواٹ کا خرارتی بجلی کا ایک اور پروجیکٹ جو تقریباً 7 ہزار 800 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کیاگیا ہے، تمل ناڈو کے لیے بہت فائدہ مند ثابت ہوگا۔ اس پروجیکٹ سے جو بجلی تیار ہوگی، اس کا 65 فیصد سے زیادہ حصہ تمل ناڈو کو دیا جائے گا۔

دوستو،

تمل ناڈو کی سمندری تجارت اور بندرگاہ سے وابستہ ترقی میں ایک شاندار تاریخ رہی ہے۔ مجھے لی او چدمبر نار بندرگاہ،تھوتھوکدی سے متعلق مختلف پروجیکٹوں کی شروعات کرکے خوشی محسوس ہورہی ہے۔ ہم عظیم مجاہد آزادی وی-او-سی کی کوششوں کو یاد کرتے ہیں۔ ایک متحرک بھارتی جہازرانی صنعت اور بحری تجارت کی ترقی کے ان کے وژن سے ہمیں فیضان ملتا ہے۔ آج جن پروجیکٹوں کی شروعات کی گئی ہے، ان سے بندرگاہ پر مال کی لدائی، اترائی کے کام کو مزید استحکام حاصل ہوگا۔ اس سے ماحول دوست بندرگاہی معاملات میں بھی مدد ملے گی۔ اس کے علاوہ ہم اس بندرگاہ کو مشرقی ساحل پر بندرگاہوں کے مابین ایک بڑی بندرگاہ بنانے کے لئے مزید اقدامات کریں گے۔جب ہماری بندرگاہیں زیادہ اچھی طرح کام کرنے والی ہوں گی تو بھارت کے آتم نربھر اور بھارت کے تجارت نیز لاجٹکس کے لئے ایک عالمی مرکز بننے میں مدد ملے گی۔

بندرگاہ سے وابستہ ترقی کے بھارت کے عہد کو ساگر مالا اسکیم کے ذریعہ دیکھا جاسکتا ہے۔ 2015 سے 2035 کی مدت کے دوران عمل درآمد کے لئے 6 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کے تقریباً 575 پروجیکٹوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔ ان میں بندرگاہ کو جدید طرز پر بنانا، نئی بندرگاہ کی ترقی، بندرگاہ کی کنکٹویٹی کو بہتر بنانا، بندرگاہ سے وابستہ صنعت کاری اور ساحلی کے قریب رہنے والوں کی ترقی۔

مجھے یہ نوٹ کرکے خوشی ہورہی ہے کہ جلد ہی چنئی میں سری کیرمبدور کے نزدیک مپیدو کے مقام پر ایک نیا ملٹی ماڈل لاجیٹکس پارک شروع کیا جانے والا ہے۔ ’ساگر مالا پروگرام‘ کے تحت 8 لین والا کورم پلم کل اور ریل اوور برج کا کام بھی شروع کیا گیا تھا۔ اس پروجیکٹ سے بندرگاہ جانے اور وہاں سے آنے کا مسلسل اور بھیڑ بھاڑ سے آزاد راستہ فراہم ہوگا۔ اس سے سامان سے لدے ٹرکوں کے آنے جانے میں بھی کم وقت لگے گا۔

دوستو،

ماحولیات کی ترقی اور اس کی دیکھ بھال آپس میں مربوط ہے۔ وی او سی بندرگاہ نے پہلے ہی 500 کلو واٹ صلاحیت کا چھت کے اوپر شمسی توانائی کا پلانٹ نصب کرلیا ہے۔  140 کلو واٹ کے چھت پر نصب کئے جانے والے ایک اور شمسی پروجیکٹ کا کام بھی چل رہا ہے۔  مجھے یہ دیکھ کر خوشی ہورہی ہے کہ وی او سی بندرگاہ نے تقریباً 20 کروڑ روپے کی لاگت سے زمین پر مبنی ایک شمسی توانائی کا پلانٹ شروع کیا ہے جس کی صلاحیت 5 میگاواٹ ہے۔ اس پروجیکٹ سے بندرگاہ کی بجلی کی کل کھپت کا 60 فیصد حصہ پورا کرنے میں مدد ملے گی۔ یہ صحیح معنی میں اورجا آتم نربھرتا کی ایک مثال ہے۔

پیارے دوستو،

ترقی کی بنیاد ہر انفرادی شخص کے لئے وقار کو یقینی بنا نا ہے۔ وقار کو یقینی بنانے کا ایک راستہ ہر ایک کے لئے مکان فراہم کرنا ہے۔ ہمارے لوگوں کے خوابوں اور آرزوؤں کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لئے پردھان منتری آواس یوجنا شروع کی گئی تھی۔

دوستو،

مجھے 4 ہزار 144 مکانوں کا افتتاح کرکے بڑا فخر محسوس ہورہا ہے۔ یہ مکان تروپور، مدورائی اور تروچلاپلی اضلاع میں تعمیر کئے گئے ہیں۔ اس پروجیکٹ کی لاگت 332 کروڑ روپے ہے۔  یہ مکان اُن لوگوں کو دیے جائیں گے، جن کے سر پر ٓزادی کے 70 سال بعد بھی چھت نہیں تھی۔

دوستو،

تمل ناڈو ریاست کی بڑی تیزی سے شہرکاری کی گئی ہے۔ بھارت سرکار اور تمل ناڈو کی حکومت نے شہروں کی ہمہ جہت ترقی کا عہد کررکھا ہے۔ میں تمل ناڈو کے چھوٹے اسمارٹ شہروں میں مربوط کمان اور کنٹرول مراکز کا سنگ بنیاد رکھ کر خوشی محسوس کررہا ہوں۔ ا س سے ان شہروں میں مختلف خدمات کے بندوبست کے لئے ایک مؤثر اور مربوط آئی ٹی حل فراہم ہوگا۔

دوستو،

مجھے یقین ہے کہ آج جن پروجیکٹوں کی شروعات کی گئی ہے، ان سے تمل ناڈو کے لوگوں کی زندگی کو بہت فروغ حاصل ہوگا۔ اُن تمام کنبوں کے لئے جنہیں آج نئے مکانات مل رہے ہیں، میری طرف سے نیک خواہشات۔ ہم لوگوں کے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے اور ایک آتم نربھر بھارت کی تعمیر کے لئے برابر کام کرتے رہیں گے۔

شکریہ

آپ کا بہت بہت شکریہ

ونککم!!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Getting excellent feedback, clear people across India voting for NDA, says PM Modi

Media Coverage

Getting excellent feedback, clear people across India voting for NDA, says PM Modi
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Overwhelming support for the NDA at PM Modi's rally in Nanded, Maharashtra
April 20, 2024
For decades, Congress stalled the development of Vidarbha & Marathwada: PM Modi
The land of Nanded reflects the purity of India's Sikh Gurus: PM Modi
The I.N.D.I alliance only believe in vote-bank politics: PM Modi

Ahead of the Lok Sabha elections, PM Modi addressed a public meeting in Nanded, Maharashtra amid overwhelming support by the people of BJP-NDA. He bowed down to prominent personalities including Guru Gobind Singh Ji, Nanaji Deshmukh, and Babasaheb Ambedkar.

Speaking on the initial phase of voting for the Lok Sabha elections, PM Modi said, “We have the popular support of the First-time voters with us.” He added, “I.N.D.I alliance have come together to save and protect their corruption and the people have thoroughly rejected them in the 1st phase of polling.” He added that the Congress Shehzada now has no choice but to contest from Wayanad, but like he left Amethi he may also leave Wayanad. He said that the country is voting for BJP-NDA for a ‘Viksit Bharat’.

Lamenting the Congress for stalling the development of the people, PM Modi said, “Congress is the wall between the development of Dalits, Poor & deprived.” He added that Congress even today opposes any developmental work that our government intends to carry out. He said that one can never expect them to resolve any issues and people cannot expect robust developmental prospects from them.

Highlighting the dire state and fragile conditions of Marathwada and Vidarbha, PM Modi said, “For decades, Congress stalled the development of Vidarbha & Marathwada.” He “It is the policies of the Congress that both Marathwada and Vidarbha are water-deficient, its farmers are poor and there are no prospects for industrial growth.” He said that our government has enabled 'Nal se Jal' to 80% of households in Nanded. He said that our constant endeavor has been to facilitate the empowerment of our farmers through record rise in MSPs, income support through PM-KISAN, and the promotion of ‘Sree Anna’.

Highlighting the infra impetus in Nanded in the last decade, PM Modi said, “To treat every wound given by Congress is Modi's guarantee.” He added “The ‘Shaktipeeth highway’ and ‘Latur Rail Coach Factory’ is our commitment to a robust infra.” He said that we aim to foster the development of the Marathwada region in the next 5 years.

Elaborating on the relationship between the Sikh Gurus and Nanded, PM Modi said, “The land of Nanded reflects the purity of India's Sikh Gurus.” He added that we are guided by the principles of Guru Gobind Singh Ji. “Over the years we have celebrated the 550th birth anniversary of Guru Nanak Dev Ji, the 400th birth anniversary of Guru Teg Bahadur Ji, and the 350th birth anniversary of Guru Gobind Singh Ji,” said PM Modi. He said that the Congress has always opposed the Sikh community and is taking revenge for 1984. He said that it is due to this that they oppose the CAA that aims to bring the Sikh brothers and sisters to India, granting them citizenship. He said that it was our government that brought back the Guru Granth Sahib from Afghanistan and facilitated the Kartarpur corridor. He said that various other decisions like the abrogation of Article 370 and the abolition of Triple Talaq have greatly benefitted our Muslim sisters and brothers.

Taking a dig at the I.N.D.I alliance, PM Modi said “The I.N.D.I alliance only believe in vote-bank politics.” He added that for this they have left no stone unturned to criticize and disrespect ‘Sanatana’. He said that it is the same I.N.D.I alliance that boycotted the Pran-Pratishtha of Shri Ram.

In conclusion, PM Modi said that we all must strive to ensure that India becomes a ‘Viksit Bharat’, and for that, it is the need of the hour to vote for the BJP-NDA. He thanked the people of Nanded for their overwhelming support and expressed confidence in a Modi 3.0.