دہلی-وڈودرا ایکسپریس وے کو ملک کے نام وقف کیا
پی ایم اے وائی – گرامین کے تحت بنائے گئے 2.2 لاکھ سے زیادہ مکانات کا گرہ پرویش شروع کیا اور پی ایم اے وائی – شہری کے تحت تعمیر کردہ مکانات کو قوم کے نام وقف کیا
جل جیون مشن کے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا
آیوشمان بھارت ہیلتھ انفراسٹرکچر مشن کے تحت 9 طبی مراکز کا سنگ بنیاد رکھا
آئی آئی ٹی اندور کی تعلیمی عمارت کو قوم کے نام وقف کیا اور کیمپس میں ہاسٹل اور دیگر عمارتوں کا سنگ بنیاد رکھا
اندور میں ملٹی موڈل لاجسٹک پارک کا سنگ بنیاد رکھا
‘‘گوالیار کی سرزمین اپنے آپ میں ایک تحریک ہے’’
‘‘ڈبل انجن کا مطلب ہے مدھیہ پردیش کی دوہری ترقی’’
‘‘حکومت کا مقصد مدھیہ پردیش کو ہندوستان کی ٹاپ 3 ریاستوں میں شامل کرانا ہے’’
‘‘خواتین کو بااختیار بنانا ووٹ بینک کے ایشو کی بجائے قومی تعمیر نو اور قومی بہبود کا مشن ہے’’
‘‘مودی گارنٹی کا مطلب ہے تمام گارنٹیوں کی تکمیل کی ضمانت’’
‘‘جدید انفراسٹرکچر اور امن و امان کی مضبوط صورتحال کسانوں اور صنعتوں دونوں کو فائدہ پہنچاتی ہے’’
‘‘ہماری حکومت ہر طبقے اور ہر علاقے کی ترقی کے لیے وقف ہے’’
‘‘جن کو کوئی نہیں پوچھتا، اُن کو مودی پوچھتا ہے، مودی پوجتا ہے’’

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج مدھیہ پردیش کے گوالیار میں تقریباً 19260 کروڑ روپے کے مختلف ترقیاتی پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اور قوم کے نام وقف کیا۔ ان پروجیکٹوں میں دہلی–وڈوڈرا ایکسپریس وے، پی ایم اے وائی کے تحت بنائے گئے 2.2 لاکھ سے زیادہ مکانات کا گرہ پرویش اور پی ایم اے وائی – شہری کے تحت تعمیر کیے گئے مکانات کو قوم کے نام وقف کرنا، جل جیون مشن پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھنا، آیوشمان بھارت ہیلتھ انفراسٹرکچر مشن کے تحت 9 طبی مراکز کا سنگ بنیاد رکھنا، آئی آئی ٹی اندور کی تعلیمی عمارت کو وقف کرنا اور کیمپس میں ہاسٹل اور دیگر عمارتوں کا سنگ بنیاد رکھنا اور اندور میں ایک ملٹی ماڈل لاجسٹک پارک کا سنگ بنیاد رکھنا شامل ہیں۔

 

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ گوالیار کی سرزمین بہادری، عزت نفس، فخر، موسیقی، ذوق و شوق کی علامت ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اس سرزمین نے مسلح افواج میں خدمات انجام دینے والوں کے ساتھ ساتھ ملک کے بہت سے انقلابی پیدا کیے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گوالیار کی سرزمین نے حکمراں پارٹی کی پالیسیوں اور قیادت کی تشکیل کی ہے؛ اور راج ماتا وجئے راجے سندھیا، کشابھاؤ ٹھاکرے اور اٹل بہاری واجپائی کی مثالیں دیں۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ  اس سرزمین کے سپوتوں نے ملک کی خاطر اپنی جانیں قربان کی ہیں، وزیر اعظم نے کہا، ’’گوالیار کی سرزمین اپنے آپ میں ایک تحریک ہے۔‘‘

وزیر اعظم نے کہا کہ اگرچہ اس نسل کے لوگوں کو جدوجہد آزادی میں حصہ لینے کا موقع نہیں ملا لیکن ہندوستان کو ترقی یافتہ اور خوشحال بنانے کی ذمہ داری یقیناً ہم پر عائد ہوتی ہے۔ جن پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کیا گیا یا جن کا سنگ بنیاد رکھا گیا، ان کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت ایک دن میں اتنے پروجیکٹ لے کر آ رہی ہے جتنے پروجیکٹ کو حکومتیں ایک سال میں نہیں لا سکتیں۔

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ دسہرہ، دیوالی اور دھنتیرس سے ٹھیک پہلے تقریباً 2 لاکھ خاندان گرہ پرویش کر رہے (گھر میں داخل  ہو رہے) ہیں اور کنیکٹیویٹی کے کئی پروجیکٹ پیش کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اجین میں وکرم اُدیوگ پوری اور ملٹی موڈل لاجسٹک پارک مدھیہ پردیش کی صنعتی ترقی کو تقویت دیں گے۔ انہوں نے گوالیار کے آئی آئی ٹی میں شروع کیے گئے نئے پروجیکٹوں کا ذکر کیا۔ انہوں نے آیوشمان بھارت ہیلتھ انفراسٹرکچر کے تحت ودیشہ، بیتول، کٹنی، برہان پور، نرسنگھ پور، دموہ اور شاجاپور کے نئے طبی مراکز کے بارے میں بات کی۔

 

وزیراعظم نے تمام ترقیاتی منصوبوں کے لیے ڈبل انجن والی حکومت کی کاوشوں کو سراہا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ترقی کی رفتار اس وقت بڑھتی ہے جب دہلی اور بھوپال دونوں  جگہ کی حکومت عوام کے لیے وقف اصولوں کے ساتھ کام کرے۔ اسی لیے، وزیر اعظم نے کہا، مدھیہ پردیش کے لوگ ڈبل انجن والی حکومت میں یقین رکھتے ہیں۔ ’’ڈبل انجن کا مطلب مدھیہ پردیش کی دوہری ترقی ہے،‘‘ جناب مودی نے کہا۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ پچھلے کچھ سالوں میں حکومت نے مدھیہ پردیش کو ’بیمارو راجیہ‘ (پسماندہ ریاست) سے نکال کر ملک کی ٹاپ 10 ریاستوں میں شامل کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا، ’’یہاں سے حکومت کا مقصد مدھیہ پردیش کو ہندوستان کی ٹاپ 3 ریاستوں میں شامل کرانا ہے۔‘‘ انہوں نے ہر ایک سے اپیل کی کہ وہ ایک ذمہ دار شہری کے طور پر اپنا ووٹ ڈالیں، جو مدھیہ پردیش کو ٹاپ 3 ریاستوں کی پوزیشن پر لے جائے گا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ دنیا اپنا مستقبل ہندوستان میں دیکھتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان صرف 9 سالوں میں 10 ویں مقام سے پانچویں بڑی معیشت بن گیا ہے۔ انہوں نے ان لوگوں کو تنقید کا نشانہ بنایا جو ہندوستان کی اس طاقت پر یقین نہیں رکھتے اور کہا کہ ’’یہ مودی کی گارنٹی ہے کہ حکومت کے اگلے دور میں ہندوستان دنیا کی تین بڑی معیشتوں میں شامل ہوجائے گا۔‘‘

 

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’مودی نے غریبوں، دلتوں، پسماندہ اور قبائلی خاندانوں کو پکے مکانات کی ضمانت دی ہے،‘‘ اور اس بات پر زور دیا کہ ملک میں اب تک 4 کروڑ خاندانوں کو پکے گھر دیے جا چکے ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ مدھیہ پردیش میں اب تک لاکھوں گھر غریب خاندانوں کو دیے جا چکے ہیں اور آج بھی کئی گھروں کا افتتاح کیا گیا ہے۔ پچھلی حکومت پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے دھوکہ دہی والی اسکیموں اور غریبوں کو فراہم کیے گئے گھروں کے ناقص معیار پر افسوس کا اظہار کیا۔ اس کے برعکس، وزیراعظم نے کہا کہ موجودہ حکومت کے دوران مستحقین کی ضروریات کے مطابق گھر تعمیر کیے جا رہے ہیں اور ٹیکنالوجی کی مدد سے پیشرفت کی نگرانی کے بعد رقم براہ راست ان کے بینک کھاتوں میں منتقل کی جاتی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ گھروں میں بیت الخلاء، بجلی، نل سے پانی کا کنکشن اور اجولا گیس کنکشن ہے۔ آج کے جل جیون مشن کے پروجیکٹوں پر بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ اس سے ان گھروں کو پانی کی فراہمی میں مدد ملے گی۔

انہوں نے کہا کہ اس بات کو یقینی بنایا گیا ہے کہ یہ گھر خواتین کے نام پر ہوں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ اس اسکیم نے کروڑوں بہنوں کو ’لکھ پتی‘ بنا دیا ہے۔ وزیراعظم نے گھروں کی خواتین مالکان سے کہا کہ وہ اپنے بچوں کی تعلیم پر توجہ دیں۔

وزیر اعظم نے زور دے کر کہا، ’’خواتین کو بااختیار بنانا ووٹ بینک کے ایشو کی بجائے قومی تعمیر نو اور قومی بہبود کا مشن ہے۔‘‘ حال ہی میں منظور شدہ ’ناری شکتی وندن ادھینیم‘ (خواتین کو بااختیار بنانے کا قانون) کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا، ’’مودی گارنٹی کا مطلب ہے تمام گارنٹیوں کی تکمیل کی ضمانت۔‘‘ انہوں نے ملک کی ترقی کے سفر میں ’ماتری شکتی‘ (خواتین) کی زیادہ سے زیادہ شرکت کی اپیل کی۔

 

وزیر اعظم نے کہا کہ گوالیار اور چمبل مواقع کی سرزمین بنتے جا رہے ہیں جو پہلے کی لاقانونیت، پسماندگی اور سماجی انصاف کی خلاف ورزی کے بعد حکومت کی سخت محنت کا نتیجہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم پیچھے مڑ کر دیکھنے کے متحمل نہیں ہو سکتے۔

’’جدید بنیادی ڈھانچہ اور امن و امان کی مضبوط صورتحال سے کسانوں اور صنعتوں دونوں کو فائدہ ہوتا ہے،‘‘ وزیر اعظم نے زور دے کر کہا، ’’جبکہ دونوں نظام ترقی مخالف حکومت کی موجودگی سے تباہ ہو جاتے ہیں۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ترقی مخالف حکومت جرائم اور خوشامد کو بھی جنم دیتی ہے، جو غنڈوں، مجرموں، فسادیوں اور بدعنوانوں کو کھلی چھوٹ دیتی ہے جس سے خواتین، دلتوں، پسماندہ طبقات اور قبائلیوں پر مظالم میں اضافہ ہوتا ہے۔ وزیر اعظم نے مدھیہ پردیش کے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ ایسے ترقی مخالف عناصر سے چوکنا رہیں۔

محروموں کو ترجیح دینے کی حکومتی پالیسی کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا، ’’ہماری حکومت ہر طبقے اور ہر علاقے کو ترقی فراہم کرنے کے لیے وقف ہے۔ جن کو کوئی نہیں پوچھتا، اُن کو مودی پوچھتا ہے، انہیں مودی پوجتا ہے۔‘‘ انہوں نے دیویانگوں کے لیے جدید آلات اور مشترکہ اشاروں کی زبان تیار کرنے جیسے اقدامات کا ذکر کیا۔ آج گوالیار میں دیویانگ کھلاڑیوں کے لیے ایک نئے اسپورٹس سنٹر کا افتتاح کیا گیا۔ اسی طرح چھوٹے کسانوں کو کئی دہائیوں تک نظر انداز کیا گیا، لیکن اب ان کی دیکھ بھال کی جا رہی ہے۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ حکومت نے اب تک پی ایم کسان سمان ندھی کے ذریعے ملک کے ہر چھوٹے کسان کے کھاتوں میں 28 ہزار روپے بھیجے ہیں۔ ہمارے ملک میں 2.5 کروڑ چھوٹے کسان ہیں جو موٹے اناج اگاتے ہیں۔ ’’پہلے کسی کو موٹے اناج اگانے والے چھوٹے کسانوں کی پرواہ نہیں تھی۔ یہ ہماری حکومت ہے جس نے ہندوستانی کھانوں کو باجرے کی شناخت دی ہے اور اسے پوری دنیا کے بازاروں میں لے جا رہی ہے،‘‘ انہوں نے کہا۔

 

وزیر اعظم نے اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے پی ایم وشوکرما یوجنا کے بارے میں بات کی جس سے کمہار، لوہار، سوتھار، سنار، ملاکر، درزی، دھوبی، موچی اور حجام کو فائدہ پہنچے گا۔ اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ سماج کے اس طبقے کو پیچھے چھوڑ دیا گیا ہے، وزیر اعظم نے کہا، ’’مودی نے انہیں آگے لانے کے لیے ایک بہت بڑی مہم شروع کی ہے۔‘‘ انہوں نے بتایا کہ حکومت ان کی تربیت کے اخراجات کو پورا کرے گی اور جدید آلات کے لیے 15000 روپے بھی دے گی۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ انہیں لاکھوں روپے کے سستے قرضوں کی پیشکش کی جا رہی ہے۔ ’’مودی نے وشوکرما کے قرض کی ضمانت لی ہے،‘‘ انہوں نے کہا۔

وزیر اعظم نے ڈبل انجن والی حکومت کے مستقبل پر مبنی نقطہ نظر پر زور دیا اور مدھیہ پردیش کو ملک کی اعلیٰ ریاستوں میں شامل کرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

مدھیہ پردیش کے وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان، مرکزی وزراء نریندر سنگھ تومر، ڈاکٹر وریندر کمار اور جیوترادتیہ سندھیا، اراکین پارلیمنٹ اور حکومت مدھیہ پردیش کے وزراء اس موقع پر موجود تھے۔

پس منظر

ملک بھر میں رابطوں کو فروغ دینے کی ایک اور پہل کے طور پر وزیر اعظم نے دہلی–وڈودرا ایکسپریس وے کو قوم کے نام وقف کیا، جسے تقریباً 11895 روپے کی لاگت سے تیار کیا گیا ہے۔ وہ 1880 کروڑ روپے سے زائد مالیت کے پانچ مختلف سڑکوں کے منصوبوں کا بھی سنگ بنیاد رکھیں گے۔

 

وزیر اعظم اس بات کو یقینی بنانے کی مسلسل کوشش کر رہے ہیں کہ ہر ایک کے پاس اپنا گھر ہو۔ اس وژن کے مطابق، پی ایم اے وائی – گرامین کے تحت بنائے گئے 2.2 لاکھ سے زیادہ مکانات کے گرہ پرویش کی شروعات وزیر اعظم نے کی تھی۔ انہوں نے پی ایم اے وائی – شہری کے تحت تقریباً 140 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کیے گئے مکانات بھی قوم کو وقف کیے۔

حکومت کی توجہ کے اہم شعبوں میں سے ایک محفوظ اور مناسب پینے کے پانی کی فراہمی ہے۔ اس مقصد کو آگے بڑھاتے ہوئے وزیر اعظم نے گوالیار اور شیوپور اضلاع میں 1530 کروڑ روپے سے زیادہ مالیت کے جل جیون مشن پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا۔ ان منصوبوں سے خطے کے 720 سے زیادہ گاؤوں مستفید ہوں گے۔

 

صحت کے بنیادی ڈھانچے کو مزید فروغ دینے والے ایک قدم کے طور پر، وزیر اعظم نے آیوشمان بھارت ہیلتھ انفراسٹرکچر مشن کے تحت نو طبی مراکز کا سنگ بنیاد رکھا۔ انہیں 150 کروڑ روپے سے زائد کی لاگت سے تیار کیا جائے گا۔

وزیر اعظم نے آئی آئی ٹی اندور کی تعلیمی عمارت کو قوم کے نام وقف کیا اور کیمپس میں ہاسٹل اور دیگر عمارتوں کا سنگ بنیاد رکھا۔ مزید برآں، وزیر اعظم نے اندور میں ملٹی ماڈل لاجسٹک پارک کا سنگ بنیاد رکھا۔ انہوں نے اجین میں انٹیگریٹڈ انڈسٹریل ٹاؤن شپ، آئی او سی ایل کے بوتل کے پلانٹ اور گوالیار میں اٹل بہاری واجپئی دیویانگ اسپورٹس ٹریننگ سنٹر کے علاوہ دیگر پروجیکٹوں کو بھی قوم کے نام وقف کیا۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
G20 hosts Kashi blossoms with flowers from  6 states

Media Coverage

G20 hosts Kashi blossoms with flowers from 6 states
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Prime Minister Narendra Modi to visit Kerala,Tamil Nadu and Maharashtra
February 26, 2024
PM to visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC), Thiruvananthapuram, and inaugurate three important space infrastructure projects worth about Rs 1800 crore
Projects include ‘PSLV Integration Facility’ at Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC
PM to also review progress of Ganganyaan
PM to inaugurate, dedicate to nation and lay the foundation stone of multiple infrastructure projects worth more than Rs 17,300 crore in Tamil Nadu
In a step to establish a transshipment hub for the east coast of the country, PM to lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port
PM to launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel
PM to address thousands of MSME entrepreneurs working in Automotive sector in Madurai
PM to inaugurate and dedicate to nation multiple infrastructure projects related to rail, road and irrigation worth more than Rs 4900 crore in Maharashtra
PM to release 16th instalment amount of about Rs 21,000 crore under PM-KISAN; and 2nd and 3rd instalments of about Rs 3800 crore under ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’
PM to disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women SHGs across Maharashtra
PM to initiate the distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra
PM to launch the Modi Awaas Gharkul Yojana

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Kerala, Tamil Nadu and Maharashtra on 27-28 February, 2024.

On 27th February, at around 10:45 AM, Prime Minister will visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC) at Thiruvananthapuram, Kerala. At around 5:15 PM, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’ in Madurai, Tamil Nadu.

On 28th February, at around 9:45 AM, Prime Minister will inaugurate, and lay the foundation stone of multiple development projects worth about Rs 17,300 crore at Thoothukudi, Tamil Nadu. At around 4:30 PM, Prime Minister will participate in a public programme in Yavatmal, Maharashtra, and inaugurate and dedicate to nation multiple development projects worth more than Rs 4900 crore at Yavatmal, Maharashtra. He will also release benefits under PM KISAN and other schemes during the programme.

PM in Kerala

Prime Minister’s vision to reform the country’s space sector to realise its full potential, and his commitment to enhance technical and R&D capability in the sector will get a boost as three important space infrastructure projects will be inaugurated during his visit to Vikram Sarabhai Space Centre, Thiruvananthapuram. The projects include the PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC, Thiruvananthapuram. These three projects providing world-class technical facilities for the space sector have been developed at a cumulative cost of about Rs. 1800 crore.

The PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota will help in boosting the frequency of PSLV launches from 6 to 15 per year. This state-of-the-art facility can also cater to the launches of SSLV and other small launch vehicles designed by private space companies.

The new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at IPRC Mahendragiri will enable development of semi cryogenic engines and stages which will increase the payload capability of the present launch vehicles. The facility is equipped with liquid Oxygen and kerosene supply systems to test engines up to 200 tons of thrust.

Wind tunnels are essential for aerodynamic testing for characterisation of rockets and aircraft during flight in the atmospheric regime. The “Trisonic Wind Tunnel” at VSSC being inaugurated is a complex technological system which will serve our future technology development needs.

During his visit, Prime Minister will also review the progress of Gaganyaan Mission and bestow ‘astronaut wings’ to the astronaut-designates. The Gaganyaan Mission is India’s first human space flight program for which extensive preparations are underway at various ISRO centres.

PM in Tamil Nadu

In Madurai, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’, and address thousands of Micro, Small and Medium enterprises (MSMEs) entrepreneurs working in the automotive sector. Prime Minister will also launch two major initiatives designed to support and uplift MSMEs in the Indian automotive industry. The initiatives include the TVS Open Mobility Platform and the TVS Mobility-CII Centre of Excellence. These initiatives will be a step towards realising the Prime Minister’s vision of supporting the growth of MSMEs in the country and helping them to formalise operations, integrate with global value chains and become self-reliant.

In the public programme at Thoothukudi, Prime Minister will lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port. This Container Terminal is a step towards transforming V.O.Chidambaranar Port into a transshipment hub for the east coast. The project aims to leverage India's long coastline and favourable geographic location, and strengthen India's competitiveness in the global trade arena. The major infrastructure project will also lead to creation of employment generation and economic growth in the region.

Prime Minister will inaugurate various other projects aimed at making the V.O.Chidambaranar Port as the first Green Hydrogen Hub Port of the country. These projects include desalination plant, hydrogen production and bunkering facility etc.

Prime Minister will also launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel under Harit Nauka initiative. The vessel is manufactured by Cochin Shipyard and underscores a pioneering step for embracing clean energy solutions and aligning with the nation's net-zero commitments. Also, Prime Minister will also dedicate tourist facilities in 75 lighthouses across ten States/UTs during the programme.

During the programme, Prime Minister will dedicate to nation rail projects for doubling of Vanchi Maniyachchi - Nagercoil rail line including the Vanchi Maniyachchi - Tirunelveli section and Melappalayam - Aralvaymoli section. Developed at the cost of about Rs 1,477 crore, the doubling project will help in reducing travel time for the trains heading towards Chennai from Kanyakumari, Nagercoil & Tirunelveli.

Prime Minister will also dedicate four road projects in Tamil Nadu, developed at a total cost of about Rs 4,586 Crore. These projects include the four-laning of the Jittandahalli-Dharmapuri section of NH-844, two-laning with paved shoulders of the Meensurutti-Chidambaram section of NH-81, four-laning of the Oddanchatram-Madathukulam section of NH-83, and two-laning with paved shoulders of the Nagapattinam-Thanjavur section of NH-83. These projects aim to improve connectivity, reduce travel time, enhance socio-economic growth and facilitate pilgrimage visits in the region.

PM in Maharashtra

In a step that will showcase yet another example of commitment of the Prime Minister towards welfare of farmers, the 16th instalment amount of more than Rs 21,000 crores under the Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi (PM-KISAN), will be released at the public programme in Yavatmal, through direct benefits transfer to beneficiaries. With this release, an amount of more than 3 lakh crore, has been transferred to more than 11 crore farmers’ families.

Prime Minister will also disburse 2nd and 3rd instalments of ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’, worth about Rs 3800 crore and benefiting about 88 lakh beneficiary farmers across Maharashtra. The scheme provides an additional amount of Rs 6000 per year to the beneficiaries of Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi Yojana in Maharashtra.

Prime Minister will disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women Self Help Groups (SHGs) across Maharashtra. This amount is additional to the Revolving fund provided by the Government of India under National rural livelihood Mission (NRLM). Revolving Fund (RF) is given to SHGs to promote lending of money within SHGs by rotational basis and increase annual income of poor households by promoting women led micro enterprises at village level.

Prime Minister will initiate distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra. This is yet another step to reach out to beneficiaries of welfare schemes so as to realise the Prime Minister’s vision of 100 percent saturation of all government schemes.

Prime Minister will launch the Modi Awaas Gharkul Yojana for OBC category beneficiaries in Maharashtra. The scheme envisages the construction of a total 10 lakh houses from FY 2023-24 to FY 2025-26. Prime Minister will transfer the first instalment of Rs 375 Crore to 2.5 lakh beneficiaries of the Yojana.

Prime Minister will dedicate to nation multiple irrigation projects benefiting Marathwada and Vidarbha region of Maharashtra. These projects are developed at a cumulative cost of more than Rs 2750 crore under Pradhan Mantri Krishi Sinchai Yojna (PMKSY) and Baliraja Jal Sanjeevani Yojana (BJSY).

Prime Minister will also inaugurate multiple rail projects worth more than Rs. 1300 crore in Maharashtra. The projects include Wardha-Kalamb broad gauge line (part of Wardha-Yavatmal-Nanded new broad gauge line project) and New Ashti - Amalner broad gauge line (part of Ahmednagar-Beed-Parli new broad gauge line project). The new broad gauge lines will improve connectivity of the Vidarbha and Marathwada regions and boost socio-economic development. Prime Minister will also virtually flag off two train service during the programme. This includes train services connecting Kalamb and Wardha; and train service connecting Amalner and New Ashti. This new train service will help improve rail connectivity and benefit students, traders and daily commuters of the region.

Prime Minister will dedicate to nation several projects for strengthening the road sector in Maharashtra. The projects include four laning of the Warora-Wani section of NH-930; road upgradation projects for important roads connecting Sakoli-Bhandara and Salaikhurd-Tirora. These projects will improve connectivity, reduce travel time and boost socio-economic development in the region. Prime Minister will also inaugurate the statue of Pandit Deendayal Upadhyay in Yavatmal city.