Share
 
Comments
دوسو چھیانوے کلومیٹر چار قطاروں والی ایکسپریس وے کی تقریباً 14,850 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر
ایکسپریس وے سے خطے میں رابطے اور صنعتی ترقی کو زبردست فروغ ملے گا
’’یوپی ایکسپریس وے پروجیکٹوں سے ریاست کے بہت سے نظرانداز علاقے مربوط ہو رہے ہیں‘‘
’’اتر پردیش کا ہر گوشہ نئے خوابوں اور نئے عزم کے ساتھ آگے بڑھنے کو تیار ہے‘‘
’’ پورے ملک میں یوپی کی پہچان بدل رہی ہے اور یہ بہت سی ترقی یافتہ ریاستوں سے آگے نکل رہی ہے‘‘
’’ہمیں اپنے مجاہدینِ آزادی کو یاد کرنا چاہیے اور آئندہ ایک ماہ میں مختلف تقریبات کا اہتمام کر کے نئے عزم کی فضا پیدا کرنی چاہیے‘‘
’’ہر وہ چیز دور رکھنی ہے جو ملک کو نقصان پہنچاتی ہے اور ملک کی ترقی کو متاثر کرتی ہے‘‘
’’ڈبل انجن والی حکومتیں مفت کی نوازشوں اور ’ریوڑی‘ بانٹنے کی روایت کو اپنانے کے بجائے محنت سے ثمرات سامنے لا رہی ہیں‘‘
’’ملک کی سیاست سے مفت کی نوازشوں کی روایت کو شکست دیں اور ختم کریں‘‘
’’متوازن ترقی سماجی انصاف کے مترادف ہے‘‘
’’ملک کی سیاست سے مفت کی نوازشوں کی روایت کو شکست دیں اور ختم کریں‘‘

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج اتر پردیش کے جالون کی اورائی تحصیل کے کیتھری گاؤں میں بندیل کھنڈ ایکسپریس وے کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ، ریاستی وزرا، عوامی نمائندے موجود تھے۔

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے بندیل کھنڈ خطے کی جانفشانی، بہادری اور مالا مال ثقافت کی شاندار روایت کو ذکر کیا اور کہا کہ "اِس سرزمین نے لاتعداد سورما پیدا کئے۔ یہاں ہندوستان کے لئے عقیدت خون میں شامل ہے اور مقامی بیٹوں اور بیٹیوں کی قابلیت اور محنت نے ہمیشہ ملک کا نام روشن کیا ہے۔"

نئے ایکسپریس وے سے سامنے آنے والے فرق کی بابت اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ "بندیل کھنڈ ایکسپریس وے کی وجہ سے چترکوٹ سے دہلی کے مابین دوری جہاں 3-4 گھنٹے کم ہوئی ہے، وہیں اس کا فائدہ اس سے کہیں زیادہ ہے۔ یہ ایکسپریس وے یہاں صرف گاڑیوں کی رفتار تیز نہیں کرے گی  بلکہ پورے بندیل کھنڈ کی صنعتی ترقی میں تیزی لائے گی۔

وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ وہ دن گئے جب اتنے بڑے انفراسٹرکچر اور سہولتیں صرف بڑے شہروں اور ممالک کے منتخب علاقوں تک محدود تھیں۔ اب سب کا ساتھ سب کا وکاس کے جذبے کے تحت  دور افتادہ اور نظر انداز کردہ علاقے بھی بے نظیر طور پر مربوط ہو رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایکسپریس وے کی وجہ سے اس خطے میں ترقی، روزگار اور اپنا  روزگار آپ کرنے کے بہت سے مواقع پیدا ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ اتر پردیش میں کنیکٹیویٹی پروجیکٹوں سے بہت سے علاقوں کو مربوط کیا جا رہا ہے جنہیں ماضی میں نظر انداز کیا جاتا رہا۔ مثال کے طور پر بندیل کھنڈ ایکسپریس وے سات اضلاع سے یعنی چترکوٹ، بندہ، مہوبہ، حمیر پور، جالون، اوریا اور اٹاوہ  گزرتی ہے۔ اسی طرح دیگر ایکسپریس ویز ریاست کے ہر کونے اور ایک دوسرے سے جوڑ رہی ہیں۔ نتیجے میں "اتر پردیش کا ہر کونا نئے خوابوں اور نئی عزائم کے ساتھ آگے بڑھنے کے لئے تیار ہے"۔ انہوں نے کہا کہ ڈبل انجن والی حکومت اس رُخ پر نئے ولولے کے ساتھ سرگرم عمل ہے۔

ریاست میں ہوائی رابطہ کو بہتر بنانے کے تعلق سے وزیر اعظم نے کہا کہ پریاگ راج میں نئے ہوائی اڈوں کے ٹرمینل سامنے آئے ہیں۔ کشی نگر میں نیا ہوائی اڈہ قائم کیا گیا اور جیور، نوئیڈا میں ایک نئے ہوائی اڈے کے لئے کام جاری ہے اور کئی اور شہروں کو ہوائی سفر کی سہولیات سے جوڑا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے سیاحت اور دیگر ترقی کے مواقع کو فروغ حاصل ہو گا۔

وزیر اعظم نے وزیر اعلیٰ سے کہا کہ وہ خطے کے کئی قلعوں کے گرد ٹورازم سرکٹ تیار کریں۔ انہوں نے وزیر اعلیٰ سے یہ بھی کہا کہ متعلق بہ قلعہ تقریبات اور مقابلوں کے اہتمام کیا جائے۔

وزیر اعظم نے سلسلہ کلام جاریرکھتے ہوئے کہا کہ جس یوپی میں سرجو نہر کے منصوبے کو مکمل ہونے میں 40 سال لگے، جس یوپی میں گورکھپور فرٹیلائزر پلانٹ 30 سال سے بند تھا، جس یوپی میں ارجن ڈیم پروجیکٹ کو مکمل ہونے میں 12 سال لگے، جس یوپی میں امیٹھی رائفل فیکٹری کا صرف ایک نام کا بورڈ تھا، جس یوپی میں رائے بریلی ریل کوچ فیکٹری میں صرف ڈبوں کو پینٹ کیا جاتا تھا، اس یوپی میں اب انفراسٹرکچر کا کام اتنی سنجیدگی سے کیا جا رہا ہے کہ وہ اچھی ریاستوں سے بھی آگے نکل گئی ہے۔ یوپی کی پہچان پورے ملک میں بدل رہی ہے۔

جناب مودی نے رفتار کی تبدیلی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ریلوے لائن کو دوگنا کرنے کی رفتار سالانہ 50 کلومیٹر سے بڑھا کر  200 کلومیٹر کر دیا گیا ہے۔ اسی طرح اتر پردیش میں کامن سروس سینٹرز کی تعداد جو 2014 میں 11,000 تھی اب 1 لاکھ 30 ہزار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ  12 میڈیکل کالج والی ریاست یوپی میں آج 35 میڈیکل کالج ہیں اور مزید 14 زیر قیام ہیں۔

وزیر اعظم نے نوٹ کیا کہ آج ملک جس ترقی کے دھارے پر گامزن ہے اس کے بنیادی طور پر دو پہلو ہیں۔ ایک ارادہ اور دوئم آداب (ارادہ اور مریادا)۔ ہم نہ صرف ملک کے حال کے لئے نئی سہولتیں پیدا کر رہے ہیں بلکہ ملک کا مستقبل تعمیر بھی کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اتر پردیش میں 'مریادا' یعنی آخری تاریخ کی حد کا پوری طرح احترام کرتے ہوئےپروجیکٹ مکمل کئے گئے ہیں۔ بابا وشوناتھ دھام، گورکھپور ایمس، دہلی-میرٹھ ایکسپریس وے اور بندیل کھنڈ ایکسپریس وے میں سہولتوں کی تازہ کاری اور تزئین و آرائش جیسے منصوبے اس لحاظ سے اس کی مثالیں ہیں کہ موجودہ حکومت  نے ہی ان پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اور پھر انہیں قوم کے نام وقف کیا۔ انہوں نے کہا کہ پروجیکٹوں کو وقت سے پہلے مکمل کر کے ہم لوگوں سے حاصل اختیارات اور ان کے اعتماد کا احترام کر رہے ہیں۔ انہوں نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ آئندہ یوم آزادی کے سلسلے میں بہت سی تقریبات کا اہتمام کریں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنے مجاہدینِ آزادی کو یاد کرنا چاہیے اور آئندہ ایک ماہ میں مختلف تقریبات کا اہتمام کر کے نئے عزم کی فضا پیدا کرنی چاہیے۔

وزیراعظم نے کہا کہ فیصلہ سازی اور پالیسی سازی دونوں کے پیچھے بڑی سوچ یہ ہونی چاہیے کہ ملک کی ترقی کو مزید تیز کرنی ہے۔ ہر وہ چیز جو ملک کو نقصان پہنچاتی ہو، ملک کی ترقی کو متاثر کرتی ہو، اس سے دور رہنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ’امرت کال‘ ایک نادر موقع ہے اور ہمیں ملک کی ترقی کو یقینی بنانے کے لئے اس موقع کو نہیں گنوانا چاہیے۔

وزیراعظم نے ملک میں مفت نوازشوں کے ذریعہ ووٹ مانگنے کی روایت کی طرف توجہ دلائی اور خبردار کیا کہ مفت نوازشوں کا یہ کلچر ملک کی ترقی کے لئے انتہائی خطرناک ہے۔ ملک کے لوگوں کو مفت نوازشوں کی اس روایت ('ریوڑی' کلچر) سے بہت محتاط رہنا ہوگا۔ ایسی روایت والے لوگ آپ کے لئے کبھی نئی  ایکسپریس وے، نئے ہوائی اڈے یا دفاعی راہداری نہیں بنا پائیں گے۔ مفت نوازشوں والی روایات کے لوگ یہ محسوس کرتے ہیں کہ وہ اس طرح عام آدمی کے ووٹ خرید سکتے ہیں۔ وزیر اعظم  نے ایسی سوچ کو اجتماعی طور پر شکست دینے اور ملک کی سیاست سے مفت نوازشوں کے کلچر کو ختم کرنے کی پکار دی۔ انہوں نے کہا کہ اب حکومت اس ’’ریوڑی‘‘ کلچر سے ہٹ کر پکے مکانات، ریلوے لائنز، سڑکیں اور انفراسٹرکچر، آبپاشی، بجلی کے منصوبے جیسی سہولتیں فراہم کرنے کے منصوبوں پر کام کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ "ڈبل انجن والی حکومتیں مفت کی نوازشوں اور 'ریوڑی' بانٹنے کی روایت کو اپنانے کے بجائے محنت سے ثمرات سامنے لا رہی ہیں"۔

متوازن ترقی پر اظہارِ کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ جیسے جیسےنظر انداز کردہ اور چھوٹے شہروں تک ترقی پہنچتی ہے سماجی انصاف کا ادراک ہوتا ہے۔ انتہائی نظر انداز کئے جانے والے مشرقی ہند اور بندیل کھنڈ تک جدید انفراسٹرکچر کی رسائی مشرقی سماجی انصاف کے مترادف ہے۔ جن پسماندہ اضلاع کو از خود اپنے آپ کو سنبھالنے کے لئے چھوڑ دیا گیا تھا اب وہ ترقی کی گواہی دے رہے ہیں، یہ بھی ان کے ساتھ سماجی انصاف ہے۔ انہوں نے کہا کہ غریبوں کے لئے بیت الخلا، گاؤں کو سڑکوں اور نلکے کے پانی سے جوڑنا بھی سماجی انصاف ہے۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ حکومت بندیل کھنڈ کے ایک اور چیلنج سے نمٹنے کے لئے مسلسل کام کر رہی ہے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ حکومت ہر گھر تک پائپ کے ذریعہ پانی کی فراہمی کے لئے جل جیون مشن پر کام کر رہی ہے۔

وزیر اعظم نے بندیل کھنڈ کی ندیوں کے پانی کو زیادہ سے زیادہ مقامی لوگوں تک پہنچانے کی کوشش کے طور پر رتولی ڈیم، بھوانی ڈیم، چلی چھڑکنے کی مجھگاؤں آبپاشی پروجیکٹ کی فہرست پیش کی اور کہا کہ کین-بیتوا لنک پروجیکٹ اس خطے کے لوگوں کی زندگیاں بدل کر رکھ دے گا۔

وزیر اعظم نے ہر ضلع میں 75 امرت سرووں کیلئے چلائی جانے والی مہم میں بندیل کھنڈ کے لوگوں سے تعاون کی اپنی درخواست کا اعادہ کیا۔

چھوٹی اور کاٹیج انڈسٹری کو مضبوط بنانے میں میک ان انڈیا مہم کے کردار کے حوالے سے وزیر اعظم نے کھلونا صنعت کی کامیابی اجاگر کی اور کہا کہ حکومت، کاریگروں، صنعت کاروں اور شہریوں کی کوششوں سے کھلونوں کی درآمد میں زبردست کمی آئی ہے۔ انہوں کہا کہ اس سے غریبوں، محروموں، پسماندہ لوگوں، قبائلیوں، دلتوں اور خواتین کو فائدہ پہنچے گا۔

وزیر اعظم نے کھیلوں کے میدان میں بندیل کھنڈ کے کردار پر بھی روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ کھیلوں کا سب سے بڑا اعزاز مقامی فرزند میجر دھیان چند کے نام سے منسوب ہے۔ انہوں نے اس خطے سے تعلق رکھنے والی بین الاقوامی ایتھلیٹ شیلی سنگھ کا بھی ذکر کیا جس نے انڈر 20 عالمی ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں نام روشن کیا۔

بندیل کھنڈ ایکسپریس وے

حکومت ملک بھر میں رابطوں کو بڑھانے کے لئے پرعزم ہے۔ اس کی ایک اہم خصوصیت سڑک کے بنیادی ڈھانچے میں بہتری کے رُخ پر کام کرنا ہے۔ اس رُخ پر ایک اہم کوشش 29 فروری 2020 کو اس وقت کی گئی جب وزیر اعظم کے ذریعہ بندیل کھنڈ ایکسپریس وے کی تعمیر کا سنگ بنیاد رکھا گیا۔ ایکسپریس وے پر کام 28 ماہ میں مکمل کر لیا گیا جو نیو انڈیا کے ورک کلچر کی طرف اشارہ کرتا ہے جس میں پروجیکٹوں کو وقت پر مکمل کیا جاتا ہے۔

اتر پردیش ایکسپریس ویز انڈسٹریل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (یو پی ای آئی ڈی اے) کے زیراہتمام 296 کلومیٹر کی چار قطاروں والی ایکسپریس وے تقریباً 14,850 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کی گئی ہے۔ اسے آگے چل کر چھ قطار والا راستہ بنایا جا سکتا ہے۔ یہ ایکسپریس وے چترکوٹ ضلع میں بھرت کوپ کے قریب گونڈا گاؤں کے قومی شاہراہ-35 سے اٹاوہ ضلع کے کدریل گاؤں کے قریب تک پھیلی ہوئی ہے۔ جہاں یہ آگرہ-لکھنؤ ایکسپریس وے کے ساتھ مل جاتی ہے۔ یہ راستہ سات اضلاع  چترکوٹ، باندہ، مہوبہ، حمیر پور، جالون، اوریا اور اٹاوہ سے گزرتا ہے۔

علاقے میں کنیکٹیویٹی کو بہتر بنانے کے ساتھ ساتھ بندیل کھنڈ ایکسپریس وے اقتصادی ترقی کو بھی زبردست فروغ دے گی۔ نتیجے میں مقامی لوگوں کے لئے روزگار کے ہزاروں مواقع  پیدا ہوں گے۔ ایکسپریس وے کے ساتھ والے اضلاع باندہ اور جالون میں صنعتی راہداری بنانے کا کام پہلے ہی شروع کیا جا چکا ہے۔

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
India's handling of energy-related issues quite impressive: US Deputy Energy Secy David Turk

Media Coverage

India's handling of energy-related issues quite impressive: US Deputy Energy Secy David Turk
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 24 اگست 2022
September 24, 2022
Share
 
Comments

Due to the initiatives of the Modi government, J&K has seen a massive influx in tourism.

Citizens appreciate the brilliant work by the government towards infrastructure and economic development.