Share
 
Comments

وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت نے زراعت پر زبردست توجہ مرکوز کی ہے۔ پیداواریت میں بہتری، کسانوں کے تحفظ، ان کی آمدنی میں اضافے اور ان کی مجموعی فلاح کے لئے متعدد اقدامات کیے گئے ہیں۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی سرکار نے 2022 زرعی آمدنی کو دوگنا کرنے کا نشانہ معین کیا ہے اور اس کے حصول کے لئے ہمہ جہت طریقے سے کام کیے جا رہے ہیں۔ بیجوں اور مٹی سے لے کر بازاروں تک کسانوں کی رسائی کے سلسلے میں پورے دائرے زراعت میں اصلاحات پر توجہ مرکوز کی جا رہی ہے۔ اس کے ساتھ ہی کسانوں کی آمدنی کی معاونت کے لئے دیگر متعلقہ سرگرمیوں پر بھی نظرثانی شدہ طریقے سے توجہ مرکوز کی جا رہی ہے۔

این ڈی اے حکومت نے زراعت کے لئے اب تک کا سب سے زیادہ ریکارڈ سرمایہ مختص کیا ہے۔2009 سے 2014 تک کی سابقہ سرکار کی کارکردگی سے اپنی سرکار کا موازنہ کرتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ سابق سرکار کی مذکورہ مدت میں بجٹ میں زراعت کے لئے مختص کی گئی رقم 1,21,082 کروڑ روپئے تھی، جبکہ نریندر مودی کی سرکار میں 2014-19 کی مدت کے دوران زراعت کے لئے 2,11,694 کروڑ روپئے کا سرمایہ مختص کیا ہے۔ یہ پچھلے سرمایے کے مقابلے تقریباً دوگنا ہے۔

پیداواری مدت کے دوران کسانوں کی امداد

کاشتکاروں کو اچھی پیداوار دستیاب کرانے کو یقینی بنانے کی غرض سے بوائی سے متعلق سرگرمیوں پر توجہ ضروری ہے۔ سرکار نے اس سمت میں متعدد اقدامات کیے ہیں۔

کھیتی میں مٹی کی صحت کو  بنیادی کردار قرار دیتے ہوئے سرکار نے 2015 سے 2018 کی مدت کے دوران 13 کروڑ سے زائد سوائل ہیلتھ کارڈ دستیاب کرائے ہیں۔ پیداوار میں بہتری کے لئے سوائل ہیلتھ کارڈس میں کسانوں کی مدد خاطر خصوصی غذاؤں اور فرٹیلائزرس کے لئے فصلوں سے متعلق سفارشات کی گئی ہیں۔

فرٹیلائزرس کی تقسیم کے سلسلے میں مشکل سے ہی کسی ریاستی سرکار کو شکایت ہو۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یوریا کی پیداوار میں زبردست اضافہ کر دیا گیا ہے اور سرکار نے بند پڑے فرٹیلائز پلانٹوں کو دوبارہ چالو کیا ہے۔ اس کے علاوہ نئے پلانٹ بھی لگائے  گئے ہیں جہاں سرکار نے یوریا کی 100 فیصد نیم کوٹنگ کی ہے، وہیں اس سے نہ صرف مٹی کے معیار میں بہتری پیدا ہوئی ہے بلکہ فرٹیلائزرس کا دیگر مقاصد کے لئے استعمال سے بھی بچاؤ ہو سکا ہے۔ اس کے ساتھ ہی فرٹیلائزرس کی بقایا سبسڈی کی ادائیگی کے لئے 10,000 کروڑ روپئے کا انتظام کیا گیا ہے۔

پردھان منتری کرشی سینچائی یوجنا ’ہر قطرے سے زیادہ فصل‘ کو یقینی بنانے کے لئے مرتب کی گئی ہے جس کے تحت 28.5 ہیکٹیئر رقبہ زمین کی آبپاشی کی جا سکے گی۔ علاوہ ازیں مائکرو اریگیشن کے لئے بھی 50,000 کروڑ روپئے کا فنڈ قائم کیا گیا ہے تاکہ مائیکرو اریگیشین کی سہولت دستیاب کرائی جا سکے۔ اس کے ساتھ کسانوں میں آبپاشی کے لئے سولر پمپوں کی تنصیب کا بھی رجحان بڑھ رہا ہے۔

کسانوں کے لئے قرض

مودی سرکار نے زراعت کے قرض کے مسئلے کے تدارک کے لئے متعدد پالیسی اقدامات کرکے کسانوں کو استحصال اور غیر رسمی قرض سے بچانے کا کارنامہ انجام دیا

پردھان منتری فصل بیمہ یوجنا کسانوں کو سرکار کی جانب سے فراہم کردہ خطرات کے خلاف تحفظ اور حفاظتی بندوست کی یقین دہانی کرانے والا سب سے بڑا منصوبہ ہے ۔

سود کی معافی کی اسکیم کے تحت 7 فیصد سالانہ کی شرح سود پر تین لاکھ روپئے تک کے قلیل المدتی فصل قرض دستیاب کرائے جا رہے ہیں۔7 فیصد کی شرح سود کا اطلاق ایک سال کی مدت کے لئے ہوگا۔

کسانوں کی پیداوار کی فروخت

بوائی کے وقت سے کسانوں کی مدد کے کرنے کے بعد سرکاری کی پالیسی کا اگلا منطقی اقدام کسانوں کو ان کی پیداوار کی معقول قیمت دلانا ہے۔ جون 2018 میں سرکار نے خریف کی فصل کے لئے کم از کم امدادی قیمت میں 1.5 گنا اضافہ کیے جانے کو منظوری دی تھی۔ جس سے پیداواری لاگت پر کسانوں کے منافع میں 50 فیصد اضافہ ہوگا۔

ای ۔ این اے ایم کے نام سے موسوم نیشنل اگریکلچر مارکیٹ اسکیم نے ملک کی 16 اور دو مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے 585 بازاروں کو مربوط کیا ہے۔ ای۔ این اے ایم پر 164.53 لاکھ ٹن سے زیادہ زرعی پیداوار کے سودے کیے گئے ہیں اور 87لاکھ سے زائد کسانوں کا اندراج کیا گیا ہے۔ اس طرح، زراعت کے کاروبار میں بچولیوں کو ختم کیا جا رہا ہے تاکہ کسانوں کو ان کا حق حاصل ہو سکے۔

ملک کے 22,000 دیہی ہاٹ گرامین ایگریکلچر مارکیٹ میں تبدیل ہو جائیں گے جس سے 86 فیصد چھوٹے کسانوں کو فائدہ پہنچے گا۔

گوداموں اور کولڈ اسٹوریج چینس کے لئے بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کی جا رہی ہے تاکہ پیداوار کے بعد کسانوں کی فصل کا نقصان نہ ہو سکے اور فوڈ پروسسنگ کے ذریعہ اس کی مالیت میں اضافہ ہو سکے۔ بازاروں پر کسانوں کی بالادستی کو یقینی بنایا جا رہاہے۔

ٹماٹر، آلو اور پیاز جیسی جلد خراب ہونے والی اشیاء کی قیمتوں میں اتار چڑھاؤ  کے سدباب کے لئے ’آپریشن گرینس‘ شروع کیا گیا ہے۔

متعلقہ شعبوں پر توجہ

جیسا کہ پہلے بتایا جا چکا ہے کہ کسانوں کی آمدنی میں اضافے کے لئے زراعت سے متعلق دیگر سرگرمیوں پر بھی توجہ مرکوز کی جا رہی ہے۔ ماہی گیری، آبی جانوروں کی پرورش اور مویشی پروری کی خاطر ڈھانچہ جاتی سہولیات کے لئے 10,000 کروڑ روپئے کی پونجی مختص کی گئی ہے۔

3000 کروڑ روپئے کے سرمایے کی تخصیص کے ساتھ انٹی گریٹڈ ڈیولپمنٹ اینڈ مینجمنٹ آف فشریز  کے تحت قائم کیے جانے والے 20 گوکل گرام اس سلسلے کی روشن مثال کی حیثیت رکھتے ہیں۔

پیداوار میں نمو

ایسے اشارے بھی موجود ہیں جن سے اشارہ ہوتا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی زرعی پالیسی پر عمل آوری کے بہتر نتائج برآمد ہو رہے ہیں۔  2017-18 کے دوران زرعی پیداوار میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے اور اناجوں کی پیداوار 279.51 ملین ٹن تک پہنچ چکی ہے۔

دالوں کے بفر اسٹاک میں بھی اضافہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں بفر اسٹاک کی مقدار 1.5 لاکھ ٹن سے بڑھ کر 20 لاکھ ٹن ہو گئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی 2016-17میں دودھ کی پیداوار میں بھی  2013-14 کے مقابلے میں 18.81 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی کے ’بیج سے بازارتک‘کے جذبے پر حرف بہ حرف عمل آوری کرتے ہوئے سرکار نے زراعت پر نیک نیت نظریہ اختیار کیا ہے جس کے مثبت نتائج ٹھوس دھرتی پر رخشندہ ہونے شروع ہو گئے ہیں۔

donation
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India claims top 10 in list of fastest-growing cities

Media Coverage

India claims top 10 in list of fastest-growing cities
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Share
 
Comments

بنیادی ڈھانچہ اور رابطہ کاری کسی بھی ملک کی ترقی اور نمو کے لئے جسم میں خون پہنچانے والی دریدوں کی حیثیت رکھتی ہیں۔ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت نے بنیادی ڈھانچے کے فروغ کو اولین ترجیح دی ہے۔ نئے ہندوستان کے خواب کی عملی تعبیر کے لئے این ڈی اے حکومت ریلوے، سڑکوں، شاہراہوں، آبی شاہراہوں اور کفایتی شرحوں پر ہوابازی کی سہولت کی فراہمی پر توجہ مرکوز کر رہی ہے۔

ریلوے

ہندوستانی ریلوے کا نیٹ ورک دنیا کا سب سے بڑا نیٹ ورک ہے۔ ریل پٹریاں بدلے جانے کے کام کی رفتار فرد کی نگرانی کے بغیر ریلوے کراسنگ اور بڑی پٹری کی لائنیں بچھانے کے کام میں وزیر اعظم مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کے دور اقتدار میں نمایاں کام ہوا ہے۔

2017-18 کے دوران ایک سال کے عرصے میں محض 100 سے بھی کم ریل حادثوں کے ساتھ ریلوے میں حفاظت کا بہترین نظام ریکارڈ کیا گیا۔ اعداد و شمار شاہد ہیں کہ سال 2013-14 میں 118 ریل حادثے ہوئے جن کی تعداد سال 2017-18 میں ہوکر محض 73 رہ گئی۔ 5,469فرد کی نگرانی کے بغیر لیول کراسنگ کوسال2009-14کی مدت میں 20فیصد کی رفتار سے ختم کر دیا گیا ہے۔ بڑی لائن کے ریل راستوں پر فرد کے بغیر لیول کراسنگ کو بہتر حفاظت کے لئے 2020 تک پوری طرح ختم کر دیا جائے گا۔

ریلوے کی ترقی میں رفتار پیدا کرتے ہوئے 50 فیصد ریل پٹریاں بدلی گئیں جو 2013-14 میں محض 2,926 کلو میٹر تھیں اور اب 2017-18 کی مدت میں بڑھ کر 4,405 کلو میٹر ہوگئی ہیں۔ وزیر اعظم مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کے دوراقتدار میں بڑی لائن کی 9,528 کلو میٹر طویل ریلوے لائن چالو کی گئی جو 2009-14 کی درمیانی مدت کے 7,600 کلومیٹر سے کہیں زیادہ ہے۔

ملک کی تاریخ میں پہلی مرتبہ شمال مشرقی ہندوستان بڑی لائن کی ریلوے لائن کے ساتھ باقی ماندہ ملک سے جڑ چکا ہے جس سے 70 برس بعد میگھالیہ، تری پورہ اور میزورم نے ہندوستان کے ریل نقشے پر اپنی جگہ محفوظ کر لی ہے۔

نئے ہندوستان کی ترقی کے لئے ہمیں جدید تکنالوجی کی بھی اشد ضرورت ہے۔ ممبئی سے احمدآباد کا سفر کرنے والی بلیٹ ٹرین کی منصوبہ بندی کے نتیجے میں احمدآباد سے ممبئی کا سفر آٹھ گھنٹوں سے کم ہو کر دو گھنٹے میں طے ہو سکے گا۔

 

شہری ہوابازی

ہمارے ملک کا شہری ہوابازی کا شعبہ بھی مسلسل ترقی کر رہا ہے۔ اڑان (اُڑے دیش کا عام ناگرک) کے تحت ملک کے 25 ہوائی اڈوں سے کفایتی ہوائی سفر کی سہولت محض چار برس کی مدت میں دستیاب کرائی جا چکی ہے جبکہ آزادی کے بعد سے سال 2014 تک مصروف عمل ہوائی اڈوں کی تعداد محض 75 ہی تھی۔ غیر مخصوص اور ناکافی پرواز والے ہوائی اڈوں سے علاقائی فضائی رابطہ کاری کی شرح 2,500 روپئے فی گھنٹہ کردی گئی ہے جس سے ان گنت ہندوستانیوں کے ہوائی سفر کا خواب پورا ہونے میں مدد ملی ہے۔ اس طرح پہلی مرتبہ ایئر کنڈیشنڈ ریلوں سے زیادہ لوگوں نے طیاروں میں فضائی سفر کیے۔

گذشتہ تین برسوں کے دوران مسافروں کی آمدورفت کی نمو 18-20 فیصد تک رہی ہے، جس کے ساتھ ہندوستان دنیا کا تیسرا سب سے بڑا شہری ہوابازی بازار بن چکا ہے۔ 2017 میں تو گھریلو فضائی مسافروں کی تعداد بھی 100 ملین سے زیادہ ہوگئی تھی۔

 

جہازرانی

وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت میں ہندوستان جہازرانی کے شعبے میں بھی ترقی کی مسلسل کوششیں کر رہا ہے۔ بندرگاہی ترقیات میں تیزی کے ساتھ ملک کے بڑے بندرگاہوں پر آمدورفت کے اوقات میں بھی کمی ہوگئی ہے جو سال 2013-14 میں 94 گھنٹے تھی اور 2017-18 میں محض 64 گھنٹے رہ گئی ہے۔

بڑے بندرگاہوں پر مال اور سامان کے نقل و حمل کی بات کریں تو سال 2010-11 میں مال کے نقل و حمل کی مقدار 570.32 ملین ٹن تھی جو 2012-13 میں گھٹ کر 545.79 ملین ٹن رہ گئی۔ تاہم این ڈی اے حکومت کے دور اقتدار میں اس میں بہتری پیدا ہوئی اور سال 2017-18 میں ساز و سامان اور مال کے نقل و حمل کی مقدار100ملین ٹن کے اضافے کے ساتھ 679.367 ملین ٹن ہوگئی۔

اندرون ملک آبی شاہراہوں سے نہ صرف ٹرانسپورٹ پر آنے والے خرچ میں کمی ہوئی ہے بلکہ کاربن ڈائی آکسائڈ گیس کے اخراج میں بھی کمی واقع ہوئی ہے۔ گذشتہ چار برسوں کے دوران 106 قومی آبی شاہراہیں آمدورفت کے لئے جوڑی گئیں جبکہ گذشتہ 30 برسوں کے دوران اندرون ملک قومی آبی شاہراہوں کی تعداد محض پانچ سے آگے نہیں بڑھ سکی تھی۔

سڑک ترقیات

کثیر رخی ارتباط کے ساتھ شاہراہوں کی توسیع کا کام انقلابی پروجیکٹ بھارت مالا پریوجنا کے تحت کیا جا رہا ہے۔ قومی شاہراہوں کے نیٹ ورک میں بھی 2013-14 کے 92,851 کلو میٹر سے بڑھ کر 2017-18 میں 1,20,543 کلو میٹر کی توسیع ہوئی ہے۔

محفوظ سڑکوں کے لئے سیتو بھارتم پروجیکٹ پر 20,800 کروڑ روپئے کی کل تخصیص کے ساتھ کام جاری ہے، جس کے تحت ریلوے اووَر برج یا انڈر پاس راستوں کی تعمیر کی جا رہی ہے تاکہ قومی شاہراہوں کو ریلوے کی لیول کراسنگ سے بچایا جا سکے۔

سڑکوں کی تعمیر کی رفتار بھی تقریباً دوگنی ہو چکی ہے۔ سال 2013-14 میں سڑکو کی تعمیر کی رفتار 12 کلو میٹر یومیہ تھی جو 2017-18 میں بڑھ کر 27 کلو میٹر یومیہ ہوگئی ہے۔

 جموں میں ہندوستان کی سب سے طویل سرنگ چینانی ۔ نشری اور ملک کا طویل ترین پل دھولہ ۔ سادیہ اروناچل پردیش سے اضافہ شدہ رابطہ کاری دراصل ان علاقوں کو ترقی دینے کی ہماری عہد بستگی کا ثبوت ہیں جن میں اب تک کوئی ترقیاتی کام نہیں ہوا تھا۔ بہروچ میں دریائے نرمدا پر پل کی تعمیر اور کوٹا میں دریائے چمبل پر پل کی تعمیر سے اس خطے کی سڑک رابطہ کاری میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

سڑکیں دیہی ترقیات کے لئے عمل انگیزی کا کردار ادا کرتی ہیں۔ اس کی اہمیت کو پیش نظر رکھتے ہوئے گذشتہ چار برس کی مدت میں 1.69 لاکھ کلو میٹر طویل سڑکیں تعمیر کی جا چکی ہیں۔ سڑکوں کی تعمیر کی اوسط رفتار 2013-14 میں 69 کلو میٹر یومیہ تھیں جو 2017-18 میں بڑھ کر 134 کلو میٹر یومیہ ہوگئی ہے۔اب دیہی سڑک رابطہ کاری کی مقدار 82 فیصد تک ہوگئی ہے جو 2014 میں محض 56 فیصد تھی۔ دیہی سڑک رابطہ کاری میں اس اضافے سے ہمارےگاؤں بھی ملک کی ترقی کے راہِ عمل میں شامل ہوگئے ہیں۔

ملازمتوں کے مواقع میں اضافے کے لئے سیاحت میں وافر امکانات موجود ہیں۔ تیرتھوں کے اضافہ شدہ سفر کے تجربات کے ساتھ سیاحت کے شعبے میں بھی زبردست ترقی ہوئی ہے۔ چاردھام مہامارگ وکاس پریوجنا سیاحت کے شعبے کو بڑھاوا دینے کے لئے شروع کی گئی تھی جس کے تحت سفر محفوظ، تیزرفتار اور آسان بنایا جا سکے گا۔ اس سے تقریباً 12,000 کروڑ روپئے کی لاگت سے تقریباً 900 کلومیٹر طویل قومی شاہراہوں کی تعمیر ہو سکے گی۔

بنیادی ڈھانچے میں بہتری کے ساتھ مال اور سازو سامان کے نقل و حمل سے ہماری معیشت کو استحکام حاصل ہوا ہے۔ این ڈی اے حکومت کی کوششوں کے نتیجے میں سال 2017-18 کے دوران کل 1,160 ملین ٹن مال اور ساز و سامان کی لدان ہوئی جو اب تک کی سب سے زیادہ مقدار ہے۔

شہری تغیر

اسمارٹ سٹیز کے ذریعہ شہروں کی ہیئت میں تبدیلی کے لئے سو شہری مراکز کا انتخاب معیار زندگی میں بہتری، پائیدار شہری منصوبہ بندی اور ترقی کو یقینی بنانے کی غرض سے کیا گیا ہے۔ ان شہروں میں مختلف ترقیاتی منصوبے تقریباً دس کروڑ ہندوستانیوں کی زندگی پر مثبت اثرات مرتب کریں گے۔ ان منصوبوں پر 2,01,979 کروڑ روپیوں کی لاگت آئے گی۔

پردھان منتری آواس یوجنا کے تحت شہری اور دیہی دونوں طرح کے علاقوں میں تقریباً ایک کروڑ کفایتی مکانات تعمیر کیے گئے ہیں۔ متوسط طبقے اور نو متوسط طبقے کے فائدے کے لئے 9 اور بارہ لاکھ روپئے تک کے قرض کی فراہمی کا انتظام کیا گیا ہے جن کی شرح سود میں 4 اور 3 فیصد کی رعایت دی جائے گی۔