مبلغ5550 کروڑ روپے سے زیادہ کے 176 کلومیٹر طویل قومی شاہراہ کے منصوبوں کا سنگ بنیاد رکھا
کازی پیٹ میں 500 کروڑ روپے مالیت سے زیادہ کے، ریلوے مینوفیکچرنگ یونٹ کا سنگ بنیاد رکھا
بھدرکالی مندر میں درشن اور پوجا کی
تیلگو لوگوں کی صلاحیتوں نے ہمیشہ ہندوستان کی استعداد میں اضافہ کیا ہے
’’آج کا نیا نوجوان ہندوستان، توانائی سے بھرا ہوا ہے‘‘
’’ہندوستان میں تیز رفتار ترقی، متروک بنیادی ڈھانچہ کے ساتھ ناممکن ہے‘‘
’’تلنگانہ آس پاس کے اقتصادی مراکز کو جوڑ رہا ہے اور اقتصادی سرگرمیوں کا مرکز بن رہا ہے‘‘
مینوفیکچرنگ سیکٹر، نوجوانوں کے لیے روزگار کا بڑا ذریعہ بن رہا ہے

تلنگانہ پرجلندرکی نا ابھینندنلو...

تلنگانہ کی گورنر تمل سائی سوندراجن جی، میرے مرکزی کابینہ کے ساتھی نتن گڈکری جی، جی کشن ریڈی جی، بھائی سنجے جی، دیگر معززین اور میرے تلنگانہ کے بھائیو اور بہنو، حال ہی میں تلنگانہ نے اپنے قیام کے 9 برس مکمل کیے ہیں۔ تلنگانہ ریاست بھلے ہی نئی ہو لیکن ہندوستان کی تاریخ میں تلنگانہ کا تعاون، یہاں  کے عوام کا تعاون ہمیشہ سے بہت بڑا رہا ہے۔ تلگو لوگوں کی طاقت نے ہمیشہ ہندوستان کی طاقت کو بڑھایا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج جب ہندوستان دنیا کی پانچویں بڑی اقتصادی طاقت بن چکا ہے،  تو اس میں بھی تلنگانہ کے عوام کا بڑا رول ہے۔ اور ایسے میں، آج جب پوری دنیا ہندوستان میں سرمایہ کاری کے لیے آگے آرہی ہے، ایک ترقی یافتہ ہندوستان کو لے کر اتنا جوش ہے، تب تلنگانہ کے سامنے مواقع  ہی مواقع ہیں۔

 

ساتھیو،

آج کا نیا ہندوستان نوجوان ہندوستان ہے،  بہت زیادہ توانائی سے بھرا ہوا  ہندوستان ہے۔ 21ویں صدی کی اس تیسری دہائی میں یہ سنہرہ  دور ہمارے سامنے آیا ہے۔ ہمیں اس سنہرے دور کے ہر سیکنڈ سے بھرپور استفادہ کرنا ہے۔ ملک کا کوئی گوشہ تیز رفتار ترقی کے کسی بھی امکان میں پیچھے نہیں رہنا چاہیے۔ انہی امکانات کو تقویت دینے کے لیے گزشتہ 9 سالوں میں حکومت ہند نے تلنگانہ کی ترقی پر  اور  یہاں کی کنکٹی وٹی پر خصوصی توجہ دی ہے۔ اسی سلسلے میں آج تلنگانہ میں کنکٹی وٹی اور مینوفیکچرنگ سے متعلق 6000 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا گیا ہے۔ میں ان تمام پروجیکٹوں کے لیے تلنگانہ کے عوام کو بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں۔

ساتھیو،

نئے اہداف ہوں تو نئے راستے بھی بنانے پڑتے ہیں۔ پرانے انفراسٹرکچر کی بنیاد پر ہندوستان کی تیز رفتار ترقی ممکن نہیں تھی۔ آنے جانے میں اگر زیادہ وقت ضائع ہوگا،  لاجسٹکس اگر مہنگا ہوگا تو کاروبار بھی نقصان  ہوتا ہے اور لوگوں کو بھی پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اس لئے  ہماری حکومت پہلے سے کہیں  زیادہ رفتار اور پیمانے پر کام کر رہی ہے۔ آج ہر قسم کے انفراسٹرکچر کے لیے پہلے سے کئی گنا  تیزی سے کام ہو رہا ہے۔ آج  پورے ملک میں ہائی وے ، ایکسپریس ویز، اکنامک کوریڈور، انڈسٹریل کوریڈورایک جال بچھا رہا ہے۔ دو لین کے ہائی وی  چار لین میں اور چار لین کے ہائی وے  چھ لین میں تبدیل کئے جارہے ہیں۔ جہاں 9 سال پہلے جہاں  تلنگانہ کا نیشنل ہائی وے نیٹ ورک 2500 کلومیٹر  کا تھا، آج یہ بڑھ کر 5000 کلومیٹر ہو چکا ہے۔ آج تلنگانہ میں 2500 کلومیٹر کے نیشنل ہائی وے پروجیکٹ تعمیر کے الگ الگ  مراحل میں ہیں۔ بھارت مالا پروجیکٹ کے تحت جو درجنوں کوریڈور ملک میں بن رہے ہیں ان میں سے بہت سے  تلنگانہ سے  ہوکر گزرتے ہیں۔ حیدرآباد-اندور اکنامک کوریڈور، سورت-چنئی اکنامک کوریڈور، حیدرآباد-پناجی اکنامک کوریڈور، حیدرآباد-وشاکھاپٹنم انٹر کوریڈور، ایسی کتنی ہی  مثالیں ہمارے سامنے ہیں۔ ایک طرح سے تلنگانہ  آس پڑوس کے اکنامک سینٹروں  کو  جوڑ رہا ہے، معاشی سرگرمیوں ا ہب بن رہا ہے۔

 

ساتھیو،

آج ناگپور-وجئے واڑہ کوریڈور کے منچیریال سے وارنگل سیکشن کا  بھی سنگ بنیاد  رکھا گیا ہے۔ یہ تلنگانہ کو مہاراشٹرا اور آندھرا پردیش سے جدید کنکٹی وٹی فراہم کرتا ہے۔ اس سے منچیریال اور وارنگل کے درمیان  کا فاصلہ بہت کم ہو جائے گا اور ٹریفک جام کے مسئلہ میں  بھی کمی آئے گی۔ یہ خاص طور پر ان علاقوں سے گزرتا ہے جہاں ترقی کا فقدان تھا، جہاں ہماری قبائلی برادری کے بھائی بہن بڑی تعداد میں رہتے ہیں۔ یہ کوریڈور ملٹی موڈل کنکٹی وٹی کے وژن کو بھی  مضبوطی دے گا۔ کریم نگر-وارنگل سیکشن کو چار  لین  میں تبدیل کئے جانے سے حیدرآباد-وارنگل انڈسٹریل کاریڈور، کاکتیہ میگا ٹیکسٹائل پارک اور وارنگل ایس ای زیڈ کی کنکٹی وٹی بھی  مضبوط ہوگی۔

ساتھیو،

حکومت ہند آج تلنگانہ میں جو کنکٹی وٹی میں اضافہ کررہی ہے اس کا فائدہ  تلنگانہ کی صنعت ہورہا ہے، یہاں کے ٹورزم کو ہو رہا ہے۔ تلنگانہ میں  جو متعدد  ہیریٹیج سنٹر ہیں، عقیدے کے مقامات ہیں، وہاں آنا جانا  اب اور زیادہ  آسان ہو رہا ہے۔ یہاں جو  زراعت سے جڑی صنعتیں ہیں، کریم نگر کی گرینائٹ انڈسٹری ہے اسے بھی حکومت ہند کی ان کوششوں سے مدد مل رہی ہے۔ یعنی کسان ہو یا مزدور، اسٹوڈینٹ ہوں یا پروفیشنل، سبھی کو  اس کا فائد ہ ہورہا ہے۔ اس سے  نوجوانوں کو  ان کے  گھروں کے قریب ہی  روزگار کے، اپنے روزگار کے نئے مواقع بھی مل رہے ہیں۔

ساتھیو،

نوجوانوں کے لیے روزگار کا ایک اور بڑا ذریعہ ملک میں  مینوفیکچرنگ سیکٹر بن رہا ہے، میک ان انڈیا مہم بن  رہی ہے۔ ہم نے ملک میں مینوفیکچرنگ کی حوصلہ افزائی کرنے  کے لیے پی ایل آئی اسکیم شروع کی ہے۔ یعنی جو زیادہ مینوفیکچرنگ کر رہا ہے، اسے حکومت ہند سے خصوصی امداد مل رہی ہے۔ اس کے تحت 50 سے زیادہ بڑے پراجکٹس  یہاں تلنگانہ میں  لگے ہیں۔ آپ جانتے ہیں کہ ہندوستان نے اس سال ڈیفنس ایکسپورٹ میں  نیا ریکارڈ بنایا ہے۔ ہندوستان کا ڈیفنس ایکسپورٹ  9 سال پہلے ایک ہزار کروڑ روپے سے بھی کم تھا۔ آج یہ 16 ہزار کروڑ روپے سے تجاوز کر گیا ہے۔ اس کا فائدہ حیدرآباد میں واقع بھارت ڈائنامکس لمیٹڈ کو  بھی  ہورہا  ہے۔

ساتھیو،

آج انڈین  ریلوے  بھی مینوفیکچرنگ کے معاملے میں نئے ریکارڈ اور نئے سنگ میل طے کر رہی ہے۔ ان دنوں میڈ ان انڈیا وندے بھارت ٹرینوں کی  بہت چرچا ہے۔ گزشتہ برسوں میں انڈین ریلوے نے ہزاروں جدید کوچ اور  لوکو موٹیو  بنائے ہیں۔ انڈین کی ریلویز کی اس کایا پلٹ میں اب قاضی پیٹ بھی میک ان انڈیا کی نئی توانائی کے ساتھ شامل ہونے جا رہا ہے۔ اب یہاں ہر ماہ درجنوں ویگنیں بنیں گی۔ اس  سے اس  میدان  میں روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے، یہاں کے ہر خاندان کو  کسی نہ کسی شکل میں فائدہ ہوگا۔ یہی تو سب کا ساتھ، سب کا وکاس ہے۔ ترقی کے اس منتر پر  تلنگانہ کو  ہمیں آگے  بڑھانا ہے۔ ایک بار پھر، آپ سبھی کو ان متعدد  ترقی پسند پروگراموں کے لئے  ، اہتمام کے لئے، ترقی کی نئی دھارا کے لیے بہت بہت مبارکباد  دیتا ہوں۔ بہت بہت نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں! شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream

Media Coverage

A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Srinagar Viksit Bharat Ambassadors Unite for 'Viksit Bharat, Viksit Kashmir'
April 20, 2024

Srinagar hosted a momentous gathering under the banner of the Viksit Bharat Ambassador or VBA 2024. Held at the prestigious Radisson Collection, the event served as a unique platform, bringing together diverse voices and perspectives to foster the nation's collective advancement towards development.

Graced by the esteemed presence of Union Minister Shri Hardeep Singh Puri as the Chief Guest, the event saw the attendance of over 400 distinguished members of society, representing influencers, industry stalwarts, environmentalists, and young minds, including first-time voters. Presidents of Chambers of Commerce, Federation of Kashmir Industrial Corporation, House Boat Owners Association, and members of the writers' association were also present.

The VBA 2024 meetup began with an interesting panel discussion on Viksit Kashmir, which focused on the symbiotic relationship between industry growth and sustainable development. This was followed by an interactive session by Minister Puri, who engaged with the attendees through an engaging presentation. Another event highlight was the live doodle capture by a local artist of the discussions.

Union Minister Hardeep Singh Puri discussed how India has changed in the last decade. He said India is on track to become one of the world's top three economies, surpassing Germany and Japan soon.

 

"The country is set to surpass Germany and Japan and will become the world's third-largest economy by 2027-28," he said.

 

According to official estimates, India's economy is projected to reach a remarkable $40 trillion by 2040. Presently, the economy stands at approximately $3.5 trillion.

He also stressed that India's progress is incomplete without a developed Kashmir.

 

"Bharat cannot be Viksit without a Viksit Kashmir," he said.

Hardeep Puri reflected on India's economic journey, noting that in the 1700s, India contributed a significant 25% to the global GDP. However, as experts documented, this figure gradually dwindled to a mere 2% by 1947.

 

He highlighted how India, once renowned as the 'sone ki chidiya' (golden bird), lost its economic strength during British colonial rule and continued to struggle even after gaining independence, remaining categorized under the 'Fragile Five' until 2014.

 

Puri emphasized that the true shift in India's economic trajectory commenced under the Modi government. Over the past decade, the nation has ascended from among the top 11 economies to ranking among the top 5 globally.

The Union Minister also encouraged everyone to participate in the Viksit Bharat 2047 mission, emphasizing that achieving this dream requires the active engagement and coordination of all "ambassadors" of change.

He highlighted India's rapid progress in metro network development, stating that the operational metro network spans approximately 950 kilometres. He expressed confidence that within the next 2-3 years, India's metro network will expand to become the second-largest globally, surpassing that of the United States.

 

Regarding Jammu and Kashmir, he mentioned that through the Smart project, over 68 projects totalling Rs 6,800 crores were conceptualized, with Rs 3,200 crores worth of projects already completed.

 

He further stated that Jammu and Kashmir possesses more potential than Switzerland but has faced setbacks due to man-made crises. He emphasized the Modi government's dedication to the comprehensive development of the region.

The minister highlighted a significant government policy shift from women-centred to women-led development. Drawing from his extensive experience as a diplomat spanning 39 years, he shared that when a country transitions to women-led development, there is typically a substantial GDP increase of 20-30%. 

He mentioned that the government is actively pursuing this objective, citing examples such as the Awas Yojana, where houses are registered in the names of women household members, and the implementation of 33% reservation for women in elected bodies as part of this broader mission. 

He also provided insight into the transformative impact of the Modi government's welfare policies on people's lives. He highlighted the Ujjwala Yojana, noting that 32 crore individuals have received LPG cylinders, a significant increase from the 14 crore connections in 2014. Additionally, he mentioned the expansion of the gas pipeline network, which has grown from 14,000 km to over 20,000 km over the past ten years.

The Vision of Viksit Bharat: 140 crore dreams, 1 purpose 

The Viksit Bharat Ambassador movement aims to encourage citizens to take responsibility for contributing to India's development. VBA meet-ups and events are being organized in various parts of the country to achieve this goal. These events provide a platform for participants to engage in constructive discussions, exchange ideas, and explore practical strategies for contributing to the movement.

Join the movement on the NaMo App: https://www.narendramodi.in/ViksitBharatAmbassador

The NaMo App: Bridging the Gap

Prime Minister Narendra Modi's app, the NaMo App, is a digital bridge that empowers citizens to participate in the Viksit Bharat Ambassador movement. The NaMo App serves as a one-stop platform for individuals to:

Join the cause: Sign up and become a Viksit Bharat Ambassador and make 10 other people

Amplify Development Stories: Access updates, news, and resources related to the movement.

Create/Join Events: Create and discover local events, meet-ups, and volunteer opportunities.

Connect/Network: Find and interact with like-minded individuals who share the vision of a developed India.

The 'VBA Event' section in the 'Onground Tasks' tab of the 'Volunteer Module' of the NaMo App allows users to stay updated with the ongoing VBA events.