Share
 
Comments
For ages, conservation of wildlife and habitats has been a part of the cultural ethos of India, which encourages compassion and co-existence: PM Modi
India is one of the few countries whose actions are compliant with the Paris Agreement goal of keeping rise in temperature to below 2 degree Celsius: PM

پیارے دوستو!

مجھے آپ سب لوگوں کا مہاتماگاندھی کی سرزمین گاندھی نگر میں مہاجر جانوروں سے متعلق کنونشن پر  13 ویں  کانفرنس  آف پارٹیز  میں آپ  سب کا خیر مقدم کرتے ہوئے بہت خوشی محسوس ہورہی ہے۔

بھارت دنیا میں سب سے زیادہ متنوع ممالک میں سے ایک ہے۔ دنیا کے  2.4 فیصد زمینی رقبے کے اس ملک میں عالمی  حیاتیاتی تنوع کا تقریبا 8 فیصد یہاں موجود ہے۔ بھارت  مختلف اقسام کے ماحولیاتی  مسکنوں کا ملک ہے، جہاں حیاتیاتی تنوع کے چار  بڑے مقام ہیں۔ ان میں مشرقی ہمالیہ ، مغربی گھاٹ ، بھارت – میانما  کا منظر نامہ اور انڈو  مان ونکوبار جزائر شامل ہیں۔ اس کے علاوہ بھارت  پوری دنیا  کے تقریبا 500 مہاجر پرندوں کا بھی  گھر ہے۔

خواتین وحضرات!

صدیوں سے جنگلی حیات  اور مسکنوں  کا تحفظ بھارت کی ثقافتی اقدار کا ایک حصہ ہیں جو ہمدردی اور  بقائے باہم  کی ہمت افزائی کرتا ہے۔ ہمارے ویدوں میں جانوروں کے تحفظ کی بات کی گئی ہے۔ سمراٹ اشوک نے جنگلات  کو  تباہ کرنے اور جانوروں کو ہلاک کرنے   پر پابندی پر بہت زور دیا۔ گاندھی جی  سے تحریک پاکر  علم  تشدد کے اقدار پر جانوروں اور  فطرت کے  تحفظ  کا ہمارے آئین میں بھی مناسب طور پر شامل کیا گیا ہے۔ اس کی عکاسی  کئی قوانین اور  ضابطوں سے بھی  ہوتی ہے۔

کئی سال سے جاری  پائیدار کوششوں سے  امید افزا نتائج سامنے آئے ہیں۔ محفوظ علاقوں کی تعداد ، جو 2014 میں  745 تھی ، 2019  میں بڑھ کر 870 ہوگئی ہے، جو  تقریبا  ایک لاکھ 70 ہزار مربع  کلو میٹر  پر محیط ہے۔

بھارت میں جنگلات کے رقبے میں قابل قدر اضافہ ہوا ہے۔ موجودہ جائزے سے ظاہر ہوتا ہے کہ  ملک میں  جنگلات کا  کل رقبہ، ملک کے  کُل  جغرافیائی  رقبے کا  21.67 فیصد ہے۔

بھارت تحفظ ، پائیدار طرز حیات  اور  سبز ترقی کے ماڈل  کی اقدار  کی بنیاد پر  آب وہوا  سے متعلق  سرگرمیاں انجام دے رہا ہے۔ ہمارے اقدامات میں  450  میگاواٹ  قابل تجدید توانائی  حاصل کرنے کا ہدف ، الیکٹرک موٹر گاڑیوں کے لئے  ہمت افزائی ، اسمارٹ سٹی  اور پانی وغیرہ کے تحفظ  جیسے اقدامات  شامل ہیں۔

بین الاقوامی شمسی اتحاد ،آفات میں محفوظ رکھنے والے بنیادی ڈھانچے کے لئے اتحاد  اور  سوئڈن کے ساتھ  صنعتی تبدیلی میں قیادت  جیسے اقدامات میں وسیع ممالک کی شرکت امید افزا ہے۔

بھارت اُن چند ملکوں میں سے ایک ہے  جن کی سرگرمیاں  درجہ حرارت کو  د و ڈگری سیلسیس سے کم رکھنے ، پیرس معاہدے کے ہدف  پر عمل در آمد  پر مبنی ہے۔

بھارت نے  جانوروں کے تحفظ کے مخصوص  پروجیکٹ ؍ پروگرام شروع کئے ہیں۔ ان کے  بہت اچھے نتائج سامنے آئے ہیں۔ شیروں کے لئے ریزرو علاقوں میں ،  جو ابتدائی برسوں میں  9 تھے ، اب  تک بڑھ کر 50 ہوگئے ہیں۔ فی الحال بھارت میں شیروں کی تعداد  تقریبا 2970 ہے۔ بھارت نے  شیروں کی تعداد دوگنی کرنے کے اپنے ہدف کو  مقررہ 2022  سے  دو سال پہلے ہی  حاصل کرلیا ہے۔ میں  شیروں کی آبادی والے ملکوں اور دوسرے ملکوں پر زور دیتا ہوں کہ وہ  یہاں آئیں اور  شیروں کے تحفظ  کے  مؤثر طریقوں  میں ساجھیداری کریں اور اپنے  شیروں کے تحفظ کو مستحکم بنائیں۔

بھارت میں  ایشیائی ہاتھیوں کی کل  عالمی آبادی  کا 60 فیصد حصہ  موجود ہے۔ ہماری ریاستوں نے  ہاتھیوں کے لئے 30 مخصوص علاقے محفوظ کئے ہیں۔ بھارت  نے  ایشیائی ہاتھیوں کے تحفظ کے لئے  کئی اہم اقدامات کئے ہیں اور  نئے معیار قائم کئے ہیں۔

ہم نے  بالائی ہمالیہ میں برفانی تیندوئے  اور اس کے مسکن  کے تحفظ کے لئے  پروجیکٹ اسنولیوپارڈ شروع کیا ہے۔ بھارت نے  12 ملکوں کی عالمی برفانی تیندوئے کے ماحولیاتی نظام کے پروگرام (جی ایس ایل ای پی) کی  اسٹیئرنگ کمیٹی  کی میزبانی  کی تھی جس میں  نئی دہلی اعلانیہ منظور کیا گیا ۔ اس  اعلانئے میں  برفانی تیندوئے کے تحفظ کے لئے  ہر ملک کے لئے مخصوص فریم ورک اور  سبھی ملکوں کے درمیان تعاون  پر زور دیا  گیا ہے۔ مجھے یہ بتاتے ہوئے  خوشی ہورہی ہے کہ بھارت عوام کی شرکت کے ساتھ پہاڑوں کے ماحولیات  کے تحفظ سمیت  سبز معیشت  کو فروغ دینے میں  ایک قائدانہ رول ادا کرے گا۔

دوستو!

گجرات میں  گیر کا علاقہ ایشیائی ببر  شیر وں کا مسکن ہے  اور جو ملک کے لئے  ایک فخر کی بات ہے۔ ہم نے جنوری 2019 میں  ایشیائی ببر شیروں کے تحفظ کیلئے  ایک خصوصی پروجیکٹ شروع کیا ہے۔ مجھے  یہ بتاتے ہوئے  خوشی ہورہی ہے کہ آج ایشیائی ببر شیروں  کی  تعداد 523 تک پہنچ چکی ہے۔

بھارت میں ایک سینگ والے گینڈے آسام ، اترپردیش اور مغربی بنگال میں پائے جاتے ہیں۔ حکومت ہند نے  2019 میں  ایک سینگ والے بھارتی گینڈوں کے تحفظ کی قومی حکمت عملی  کا آغاز کیا۔

گریٹ انڈین بسٹرڈ ( سون چریا)  کے تحفظ کے لئے بھی ہماری کوششیں جاری ہیں کیونکہ یہ پرندہ بھی  معدوم ہونے کی کگار پر ہے۔ ان کی افزائش کے  ایک پروگرام کے طور پر 9 انڈوں کو کامیابی سے سہہ کر بچے نکالے گئے ہیں۔ اس کام  کو بھارتی سائنس دانوں اور  محکمہ جنگلات نے  ابو ظہبی کے حوبارہ  تحفظ کے  بین الاقوامی فنڈ کی تکنیکی امداد  سے انجام دیا ہے۔ یہ  وجہ ہے کہ ہم نے ’’جی بی  -دی گریٹ‘‘  کا میسکوٹ  بنایا ہے جو سون چریا کے لئے  خراج عقیدت ہے۔

دوستو!

بھارت کے لئے   گاندھی نگر میں مہاجر جانوروں سے متعلق کنونشن پر  13 ویں کانفرنس آف پارٹیز  کی میزبانی  کرنا ایک بڑے فخر کی بات ہے۔

جیسا کہ آپ نے  محسوس کیا ہوگا کہ ، سی ایم ایس  ، سی او پی – 13  کا لوگو جنوبی ہندوستان کے روایتی  ’’کولم ‘‘ سے تحریک حاصل کرکے تیار کیا گیا ہے، جو  فطرت کے ساتھ ہم آہنگی  سے رہنے  کے لئے  ایک خاص اہمیت کا حامل ہے۔

دوستو!

ہم روایتی  طور پر  ’’ اتیتھی دیوو بھوا‘‘  کے منتر پر عمل کررہے ہیں، جس کا اظیار  سی ایم ایس ، سی او پی – 13  کے نعرے ؍ موضوع سے ہوتا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ ’’مہاجر جانور  کرہ ارض کو جوڑتے ہیں اور  ہم سب مل کر ان کی    گھر واپسی کا خیر مقدم کرتے ہیں‘‘۔ یہ جانور  کسی پاسپورٹ یا ویزا کے بغیر  ملکوں میں آتے جاتے ہیں لیکن یہ  امن اور خوشحالی کے  پیامبر ہیں اور  ان کا تحفظ کرنا ہماری ذمہ داری ہے۔

خواتین وحضرات!

 بھارت  آنے والے تین برسوں کے لئے اس کنونشن کی صدارت سنبھالے گا۔ اپنی صدارت کے دوران بھارت  درج ذیل  شعبوں میں کام کرنے کی  کوشش کرے گا۔

بھارت مہاجر پرندوں کے لئے  وسط ایشیائی  اُڑان کا راستہ ہے ۔ وسطی ایشیاء  کے  اس  فلائی وے  میں اور  ان کے مسکنوں میں پرندوں کے تحفظ کے لئے بھارت نے  وسطی ایشیائی  فلائی وے  پر  مہاجر پرندوں کے تحفظ کا قومی ایکشن پلان تیار کیا ہے۔ بھارت اس سلسلے میں دوسرے ملکوں کے لئے بھی  ایکشن پلان تیار کرنے میں سہولت فراہم کرکے خوشی محسوس کرے گا۔ ہم  وسط ایشیائی فلائی وے  میں آنے والے ملکوں کے سرگرم تعاون کے ساتھ مہاجر پرندوں کے تحفظ کو ایک نئی اونچائی  تک لے جانے کے خواہش مند ہیں۔ میں ایک مشترکہ پلیٹ فارم قائم کرکے تحقیق  ، مطالعات ، جائزوں ، صلاحیت سازی  اور  تحفظ کے اقدامات  پر عمل در آمد کے لئے  ایک ادارہ جاتی نظام  قائم کرنے کا خواہش مند ہوں۔

دوستو!

بھارت کے پاس  7500 کلو میٹر کے قریب ساحلی پٹی ہے اور  بھارتی سمندر متنوع جانوروں اور  مختلف اقسام کے پیڑ پودوں سے مالا مال ہے۔ بھارت آسیان اور  مشرقی ایشیاء سمیٹ کے ملکوں کے ساتھ اپنی  تنظیم کو  مستحکم کرنے کی تجویز رکھتا ہوں۔ یہ  بھارت بحر الکاہل پہل (آئی پی او آئی ) کے خطوط پر ہوگا جس میں بھارت ایک قائدانہ رول ادا کرے گا۔ بھارت 2020 تک اپنی  سمندری  کچھوئے  کی پالیسی اور  سمندری  کناروں سے متعلق  بندوبست کی پالیسی  کا آغاز کرے گا۔ یہ  بہت چھوٹی چھوٹی پلاسٹک  کے ذریعے  پیدا ہونے والی  آلودگی  سے بھی نمٹے گی۔ ایک مرتبہ استعمال ہونے والی پلاسٹک  ماحولیات کے تحفظ کے لئے ایک بڑا چیلنج ہے اور  ہم نے بھارت میں اس کے استعمال کو  ایک مشن کے طور پر کم کرنے  کا قدم اٹھایا ہے۔

دوستو!

بھارت میں کئی  محفوظ علاقے ایسے ہیں جن کی پڑوسی ملکوں کے محفوظ علاقوں کے ساتھ سرحدیں ملتی ہیں۔ اس سلسلے میں سرحد پار  محفوظ علاقوں کے قیام سے جنگلی حیات  کے تحفظ میں تعاون بہت  مثبت نتائج کا حامل ہوسکتا ہے۔

دوستو!

 میری حکومت  ٹھوس طریقے سے پائیدار ترقی میں یقین رکھتی ہے۔ ہم  اس بات کو یقینی بنارہے ہیں کہ ترقی  ماحولیات کو  نقصان  پہنچائے  بغیر  حاصل ہوسکے۔ ہم نے  ماحولیاتی  طور پر نازک علاقوں میں ترقی کے لئے  لائنیئر انفرا اسٹرکچر پالیسی رہنما خطوط جاری کئے ہیں۔

قدرتی وسائل  کو اگلی نسلوں کے لئے برقرار رکھنے کے کام میں عوام  کو  اہم ساجھیدار بنایا  جارہا ہے۔ میری حکومت  ’’سب کا ساتھ، سب کا وکاس،  سب کا وشواس‘‘ کے نعرے کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے۔  ملک میں جنگلاتی علاقوں کے قرب وجوار میں رہنے والے لاکھوں لوگوں کو اب جنگلات کی مشترکہ بندو بست کمیٹیوں اور ماحولیات کے فروغ  کی کمیٹیوں کے ساتھ مربوط کیا گیا ہے اور یہ لوگ جنگلات اور جنگلی  حیات  کے تحفظ سے جڑے ہوئے ہیں۔

دوستو!

 مجھے یقین ہے کہ یہ کانفرنس جانوروں اور ان کے مسکنوں کے  تحفظ کے شعبے میں تجربات میں ساجھیداری اور صلاحیت سازی  کے لئے ایک بہترین پلیٹ فارم فراہم کرے گی۔ میں یہ بھی امید کرتا ہے کہ آپ لوگ بھارت کی میزبانی اور  یہاں کے تنوع کا بھی  پورا مزہ لیں گے۔

شکریہ!

'من کی بات ' کے لئے اپنے مشوروں سے نوازیں.
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
With 2.5 crore jabs on PM’s birthday, India sets new record for Covid-19 vaccines

Media Coverage

With 2.5 crore jabs on PM’s birthday, India sets new record for Covid-19 vaccines
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
وزیراعظم نے اپنے یوم پیدائش پر صدر جمہوریہ، نائب صدر جمہوریہ اور دیگر عالمی رہنماؤں کا نیک خواہشات پیش کرنے پر شکریہ ادا کیا
September 17, 2021
Share
 
Comments

نئی دہلی،17 ستمبر ،2021   /  وزیراعظم نے اپنے یوم پیدائش پر صدر جمہوریہ، نائب صدر جمہوریہ اور دیگر عالمی رہنماؤں  کا نیک خواہشات پیش کرنے پر شکریہ ادا کیا۔

صدر جمہوریہ سے ایک جواب میں  وزیراعظم نے کہا  ‘‘عزت مآب صدر جمہوریہ ، آپ کے اس بیش بہا نیک خواہشات کے پیغام کے لیے تہہ دل سے شکریہ۔’’

نائب صدر جمہوریہ سے ایک جواب میں  وزیراعظم نے کہا ‘‘مدبرانہ خواہشات کے لیے  نائب صدر جمہوریہ  آپ کا شکریہ’’۔

سری لنکا کے صدر سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا ‘‘نیک خواہشات کے لیے صدر موصوف آپ کا شکریہ’’۔

"Thank you Vice President @MVenkaiahNaidu Garu for the thoughtful wishes."

نیپال کے وزیر اعظم  سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا ‘‘آپ کی ہمدردانہ مبارکباد پر وزیراعظم میں شکریہ ادا کرنا چاہوں گا۔’’

"Thank you President @GotabayaR for the wishes."

سری لنکا کے وزیراعظم سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا  ‘‘نیک خواہشات کے لیے میرے دوست وزیراعظم راج پکسا آپ کا شکریہ ۔’’

"I would like to thank you for your kind greetings, PM @SherBDeuba."

ڈومنیکا کے وزیر اعظم سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا ‘‘آپ کی پیاری خواہشات کے لیے وزیراعظم آپ کا شکرگزار ہوں۔’’

"Thank you my friend, PM Rajapaksa, for the wishes."

نیپال کے سابق وزیراعظم سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا ‘‘آپ کا شکریہ ، جناب کے پی شرما اولی۔’’

"Grateful to you for the lovely wishes, PM @SkerritR."

نیپال کے سابق وزیراعظم سے ایک جواب میں وزیراعظم نے کہا ‘‘آپ کا شکریہ ، جناب کے پی شرما اولی۔’’

"Thank you, Shri @kpsharmaoli."