Share
 
Comments
ای-روپی واؤچرکی بدولت ہر ایک کو نشان زد ،شفاف اور سقم سے مبرّا بہم رسانی میں مدد ملے گی: وزیراعظم
ای-روپی واؤچرڈی بی ٹی کو زیادہ موثر بنانےمیں اہم کردار اد ا کرے گا اور اس سے ڈجیٹل حکمرانی کو ایک نیا زاویہ ملے گا : وزیراعظم
ہم ٹکنالوجی کو غریبوں کی مدد کے ایک وسیلے کے طور پردیکھتے ہیں اور یہ ان کی ترقی کے لئے ایک وسیلہ ثابت ہوگا: وزیراعظم

نمسکار،

اس اہم پروگرام میں ملک کے تمام گورنر، لیفٹیننٹ گورنر، مرکزی کابینہ کے میرے ساتھی، ریزرو بینک کے گورنر، ریاستوں کے چیف سکریٹری، مختلف انڈسٹری ایسوسی ایشنز سے وابستہ ساتھی، اسٹارٹ اپ، فن ٹیک کی دنیا سے جڑے میرے نوجوان دوست بینکوں کے سینیئر افسران اور میرے پیارے بھائیوں اور بہنوں،

آج ملک ڈجیٹل گورننس کو ایک نئی جہت دے رہا ہے۔ e-RUPI واؤچر ملک میں ڈجیٹل لین دین، ڈی بی ٹی کو زیادہ مؤثر بنانے میں بڑا کردار ادا کرنے جا رہا ہے۔ یہ ٹارگیٹڈ، شفاف اور لیکیج فری ڈلیوری میں ہر ایک کی مدد کرے گا۔ ای-روپی اس بات کی بھی علامت ہے کہ 21ویں صدی کا ہندوستان جدید ٹکنالوجی کی مدد سے کس طرح آگے بڑھ رہا ہے، ٹکنالوجی کو لوگوں کی زندگیوں سے جوڑ رہا ہے۔ اور مجھے خوشی ہے کہ یہ آغاز ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب ملک آزادی کے 75 سالوں پر امرت مہوتسو منا رہا ہے۔ اور ایسے وقت میں ملک نے مستقبل کی اصلاح کا ایک اور اہم قدم اٹھایا ہے۔

ساتھیوں،

صرف حکومت ہی نہیں، اگر کوئی عام ادارہ یا تنظیم کسی کے علاج میں، کسی کی تعلیم میں یا کسی اور کام میں مدد کرنا چاہتی ہے، تو وہ نقد رقم کے بجائے ای-روپی دے سکے گی۔ یہ اس بات کو یقینی بنائے گا کہ اس کی طرف سے دی گئی رقم اسی کام کے لیے استعمال کی جائے جس کے لیے یہ رقم دی گئی ہے۔ ابتدائی مرحلے میں یہ اسکیم ملک کے صحت کے شعبے سے متعلق فوائد پر نافذ کی جا رہی ہے۔

فرض کریں، ایک تنظیم خدمت کی غرض سے حکومت ہند کی جانب سے دی جانے والی مفت ویکسین کا فائدہ نہیں اٹھانا چاہتی، لیکن کسی نجی اسپتال میں بھیجنا چاہتا ہے جہاں کچھ قیمت ادا کرکے ویکسین لگائی جا رہی ہے۔ اگر وہ 100 غریبوں کو ویکسین دینا چاہتا ہے تو وہ ان 100 غریب لوگوں کو ای-روپی واؤچر دے سکتا ہے۔ ای-روپی واؤچر اس بات کو یقینی بنائے گا کہ اسے صرف ویکسین حاصل کرنے کے لیے استعمال کیا جائے نہ کہ کسی اور مقصد کے لیے۔ وقت کے ساتھ، اس میں مزید چیزیں شامل کی جائیں گی۔ مثال کے طور پر، کوئی علاج پر خرچ کرنا چاہتا ہے، کوئی ٹی بی کے مریض کو صحیح ادویات اور خوراک کے لیے مالی مدد فراہم کرنا چاہتا ہے، یا بچوں، حاملہ خواتین کو خوراک اور غذائیت سے متعلق سہولیات فراہم کرنا چاہتا ہے، تو ای-روپی اس کے لیے بہت مددگار ثابت ہوگا۔ یعنی، ای-روپی ایک طرح سے، شخص کے ساتھ ساتھ مقصد مرکوز بھی ہے۔

جس مقصد کے لیے کوئی مدد یا کوئی فائدہ دیا جا رہا ہے وہ اس کے لیے استعمال کیا جائے گا، یہ ای-روپی یقینی بنانے جا رہا ہے۔ اب اگر کوئی اولڈ ایج ہوم میں 20 نئے بستر لینا چاہتا ہے تو ای-روپی واؤچر اس کی مدد کرے گا۔

اگر کوئی کسی علاقے میں 50 غریبوں کے لیے کھانے کا بندوبست کرنا چاہتا ہے تو ای-روپی واؤچر اس کی مدد کرے گا۔ اگر کوئی گؤشالہ میں چارے کا بندوبست کرنا چاہتا ہے تو اس کے لیے بھی ای-روپی واؤچر مدد کرے گا۔

اب اگر ہم اسے قومی نقطہ نظر سے دیکھیں، تو اگر حکومت کی طرف سے کتابوں کے لیے پیسے بھیجے گئے ہیں، تو ای-روپی اس بات کو یقینی بنائے گا کہ صرف کتابیں خریدی جائیں۔ اگر یونیفارم کے لیے پیسے بھیجے جائیں تو اس سے صرف یونیفارم ہی خریدی جائے۔

اگر رعایتی کھاد کے لیے مدد دی جاتی ہے تو اسے صرف کھاد خریدنے کے لیے استعمال کیا جانا چاہیے۔ حاملہ خواتین کے لیے دی گئی رقم سے صرف غذائیت سے بھرپور خوراک خریدی جا سکتی ہے۔ یعنی، رقم ادا کرنے کے بعد، ای-روپی واؤچر اس استعمال کو ثابت کرے گا جسے ہم چاہتے ہیں۔

ساتھیوں،

پہلے کچھ لوگ ہمارے ملک میں چاہتے تھے اور وہ کہتے تھے کہ ٹکنالوجی صرف امیروں کے لیے ہے، بھارت ایک غریب ملک ہے، تو اس لیے بھارت کے لیے ٹکنالوجی کا استعمال کیا ہے۔ آج ملک کی سوچ مختلف ہے، نئی ہے۔ آج ہم ٹکنالوجی کو غریبوں کی مدد، ان کی ترقی کے آلے کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔ آج دنیا دیکھ رہی ہے کہ ٹکنالوجی ہندوستان میں کس طرح شفافیت اور ایمانداری لا رہی ہے۔ ٹیکنالوجی کس طرح نئے مواقع پیدا کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔

آپ آج کے انوکھے پروڈکٹ کو دیکھیں، آج ہم یہاں تک پہنچے ہیں کیونکہ ملک نے برسوں سے جن دھن اکاؤنٹس کھولنے، انھیں موبائل اور آدھار اور JAM سے جوڑنے کے لیے سخت محنت کی ہے۔ جب JAM شروع کیا گیا تو بہت سے لوگ اس کی اہمیت کو سمجھنے سے قاصر تھے۔ لیکن ہم نے لاک ڈاؤن کے وقت اس کی اہمیت کو دیکھا۔ جب دنیا کے بڑے ممالک پریشان تھے کہ لاک ڈاؤن میں اپنے غریبوں کی مدد کیسے کی جائے۔ لیکن بھارت کے پاس ایک مکمل نظام تیار تھا۔ جب دوسرے ممالک اپنے ڈاکخانے اور بینک کھول رہے تھے، تو بھارت براہ راست خواتین کے بینک کھاتوں میں مالی مدد بھیج رہا تھا۔

اب تک بھارت میں براہ راست بینیفٹ ٹرانسفر کے ذریعے تقریباً ساڑھے سترہ لاکھ کروڑ روپے براہ راست مستحقین کے اکاؤنٹس میں بھیجے جا چکے ہیں۔ آج مرکزی حکومت ڈی بی ٹی کے ذریعے لوگوں کو 300 سے زائد اسکیموں کے فوائد فراہم کر رہی ہے۔ اس کے تحت تقریباً 90 کروڑ عوام کو کسی نہ کسی شکل میں فائدہ ہو رہا ہے۔ چاہے وہ راشن ہو، ایل پی جی گیس، علاج، وظیفہ، پنشن، اجرت، گھر بنانے میں مدد، اس طرح کے بہت سے فوائد ڈی بی ٹی سے حاصل کیے جا رہے ہیں۔ پی ایم کسان سمن ندھی کے تحت، 1 لاکھ 35 ہزار کروڑ روپے براہ راست کسانوں کے بینک کھاتوں میں منتقل کیے گئے ہیں۔

ساتھیوں،

ہندوستان آج دنیا کو دکھا رہا ہے کہ وہ ٹکنالوجی کو اپنانے اور اس سے جڑنے میں کسی سے پیچھے نہیں ہے۔ جب بات اختراعات کی ہو، سروس کی فراہمی میں ٹکنالوجی کا استعمال ہو، ہندوستان دنیا کے بڑے ممالک کے ساتھ ساتھ عالمی قیادت دینے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ پچھلے 7 سالوں میں ہندوستان نے جو پیش رفت کی ہے اس میں ٹکنالوجی کے مناسب استعمال کا بڑا کردار ہے۔ آپ سوچیے، کیا کسی نے 8-10 سال پہلے تصور کیا تھا کہ کروڑوں گاڑیاں بغیر کسی جسمانی لین دین کے ٹول بوتھ سے گزریں گی؟ یہ آج کے FASTag سے ممکن ہو گیا ہے۔

کیا کسی نے 8-10 سال پہلے سوچا تھا کہ ہمارے سرٹیفکیٹ، دستاویزات ہر وقت ڈجیٹل طور پر ہماری جیب میں رہیں گے، اور ایک کلک کے ساتھ ہر جگہ استعمال ہو سکتے ہیں؟ آج یہ ڈیجی لاکر سے ممکن ہے۔

کیا 8-10 سال پہلے کسی نے سوچا تھا کہ بھارت میں MSME سیکٹر کے کاروباری افراد کو صرف 59 منٹ میں قرض کی منظوری مل جائے گی؟ آج ہندوستان میں یہ بھی ممکن ہے۔ اور اسی طرح، 8-10 سال پہلے کیا آپ نے سوچا تھا کہ آپ کسی چیز کے لیے ڈجیٹل واؤچر بھیجیں گے، اور کام ہو جائے گا؟ آج یہ بھی ای-روپی کے ذریعے ممکن ہو گیا ہے۔

میں آپ کو ایسی کئی مثالیں دے سکتا ہوں۔ ملک نے اس وبائی مرض کے دوران بھی ٹکنالوجی کی طاقت کو محسوس کیا ہے۔ آروگیہ سیتو ایپ کی مثال بھی ہمارے سامنے ہے۔ آج یہ ایپ سب سے زیادہ ڈاؤن لوڈ ہونے والی ایپس میں سے ایک ہے۔ اسی طرح، کووڈ پورٹل آج بھی ہمارے ویکسینیشن پروگرام میں، ویکسینیشن سنٹر کے انتخاب میں، رجسٹریشن میں، ویکسین سرٹیفکیٹ حاصل کرنے میں ہم وطنوں کی مدد کر رہا ہے۔

اگر پرانا نظام چل رہا ہوتا تو ویکسینیشن حاصل کرنے کے بعد سرٹیفکیٹ کے لیے بھاگنا پڑتا۔ دنیا کے کئی بڑے ممالک میں بھی آج کاغذ پر ہاتھ سے لکھ کر سرٹیفکیٹ دیے جا رہے ہیں۔ لیکن ہندوستان کے لوگ ایک کلک میں ڈجیٹل سرٹیفکیٹ ڈاؤن لوڈ کر رہے ہیں۔

 

ساتھیوں،

مجھے یاد ہے جب 4 سال قبل BHIM ایپ لانچ کی گئی تھی، تو میں نے کہا تھا کہ وہ دن دور نہیں جب نوٹ اور سکوں کی بجائے زیادہ تر کاروباری لین دین ڈجیٹل ہو جائے گا۔ پھر میں نے یہ بھی کہا تھا کہ یہ تبدیلی غریب، پسماندہ، چھوٹے تاجروں، کسانوں، قبائلیوں کو سب سے زیادہ با اختیار بنائے گی۔ آج ہم اس کا خود تجربہ کر رہے ہیں۔ ہر ماہ یو پی آئی ٹرانزیکشن کے نئے ریکارڈ بن رہے ہیں۔ جولائی کے مہینے میں یو پی آئی کے ذریعے 300 کروڑ سے زیادہ لین دین کیا گیا ہے جس میں 6 لاکھ کروڑ روپے کے لین دین ہوئے ہیں۔ آج چائے، جوس اور پھل اور سبزی فروش بھی اسے استعمال کر رہے ہیں۔

اس کے ساتھ ساتھ بھارت کا RuPay کارڈ بھی ملک کا فخر بڑھا رہا ہے۔ اسے سنگاپور بھوٹان میں بھی لانچ کیا گیا ہے۔ آج ملک میں 66 کروڑ RuPay کارڈ ہیں اور ہزاروں کروڑ مالیت کے لین دین بھی ملک میں RuPay کارڈ کے ذریعے کئے جا رہے ہیں۔ اس کارڈ نے غریبوں کو بھی با اختیار بنایا ہے۔

 

ساتھیوں،

ٹکنالوجی کس طرح غریبوں کو با اختیار بناتی ہے اس کی ایک اور مثال پی ایم سونیدھی یوجنا ہے۔ ہمارے ملک میں جو ریہڑی پٹری والے، ٹھیلا چلانے والے بھائی بہن ہیں، ان کی اقتصادی شمولیت کے بارے میں پہلے کبھی نہیں سوچا گیا تھا۔ ان کے لیے اپنے کام کو جاری رکھنے کے لیے بینک سے مدد لینا ناممکن تھا۔ جب ڈجیٹل ٹرانزیکشن کی کوئی تاریخ نہ ہو، کوئی دستاویزات نہ ہوں، تب ہمارے گلی کے دکاندار بینک سے قرض لینے کے لیے پہلا قدم بھی نہیں اٹھا سکتے تھے۔ اس کو بھانپتے ہوئے، ہماری حکومت نے پی ایم سونیدھی یوجنا شروع کیا۔ آج ملک کے چھوٹے اور بڑے شہروں میں اس سکیم کے تحت 23 لاکھ سے زائد اسٹریٹ فروشوں اور دکانداروں کی مدد کی گئی ہے۔ اس کورونا دور میں انھیں تقریباً 2300 کروڑ روپے دیے گئے ہیں۔ یہ غریب ساتھی اب ڈجیٹل لین دین کر رہے ہیں اور اپنا قرض ادا کر رہے ہیں۔ یعنی اب ان کے لین دین کی ڈجیٹل تاریخ بن رہی ہے۔

ساتھیوں،

آج دنیا ڈجیٹل انفراسٹرکچر اور ملک میں ڈجیٹل لین دین کے لیے گزشتہ 6-7 سالوں میں کیے گئے کام کا لوہا مان رہی ہے۔ خاص طور پر بھارت میں فن ٹیک کی ایک بہت بڑی بنیاد تیار ہوئی ہے۔ ہم وطنوں کی مثبت ذہنیت، فن ٹیک حل کو اپنانے کی ان کی صلاحیت بھی لا محدود ہے۔ لہذا، یہ ہندوستان کے نوجوانوں کے لیے ایک بہت اچھا موقع ہے۔ ہندوستان کے اسٹارٹ اپس کے لیے فن ٹیک میں بہت سے امکانات ہیں۔

ساتھیوں،

مجھے یقین ہے کہ ای-روپی واؤچر بھی کامیابی کے نئے باب لکھے گا۔ ہمارے بینکوں اور دیگر ادائیگی گیٹ وے کا اس میں بڑا کردار ہے۔ ہمارے سینکڑوں پرائیویٹ ہسپتالوں، کارپوریٹس، انڈسٹری، این جی اوز اور دیگر اداروں نے بھی اس میں بڑی دلچسپی ظاہر کی ہے۔ میں ریاستی حکومتوں پر بھی زور دیتا ہوں کہ وہ اپنی اسکیموں کے درست اور مکمل فوائد کو یقینی بنانے کے لیے ای-روپی کا زیادہ سے زیادہ استعمال کریں۔ مجھے یقین ہے کہ ہم سب کی ایسی نتیجہ خیز شراکت داری ایک ایماندار اور شفاف نظام کی تشکیل کو مزید تقویت دے گی۔

ایک بار پھر میں تمام اہل وطن کو اس بڑی اصلاح کے لیے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ بہت بہت مبارکباد!

شکریہ!

 

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
Prime Minister Modi lived up to the trust, the dream of making India a superpower is in safe hands: Rakesh Jhunjhunwala

Media Coverage

Prime Minister Modi lived up to the trust, the dream of making India a superpower is in safe hands: Rakesh Jhunjhunwala
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit UP on October 25 and launch Pradhan Mantri Atmanirbhar Swasth Bharat Yojana (PMASBY)
October 24, 2021
Share
 
Comments
PMASBY to be one of the largest pan-India scheme for strengthening healthcare infrastructure across the country
Objective of PMASBY is to fill critical gaps in public health infrastructure in both urban and rural areas
Critical care services will be available in all the districts with more than 5 lakh population
Integrated Public Health Labs to be set up in all districts
National Institution for One Health, 4 New National Institutes for Virology to be set up
IT enabled disease surveillance system to be developed
PM to also inaugurate nine medical colleges in UP
PM to inaugurate development projects worth more than Rs 5200 crores for Varanasi

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Uttar Pradesh on 25th October, 2021. At around 10.30 AM in Siddharthnagar, Prime Minister will inaugurate nine medical colleges in Uttar Pradesh. Subsequently, at around 1.15 PM in Varanasi, Prime Minister will launch Pradhan Mantri Atmanirbhar Swasth Bharat Yojana. He will also inaugurate various development projects worth more than Rs 5200 crore for Varanasi.

Prime Minister Atmanirbhar Swasth Bharat Yojana (PMASBY) will be one of the largest pan-India scheme for strengthening healthcare infrastructure across the country. It will be in addition to the National Health Mission.

The objective of PMASBY is to fill critical gaps in public health infrastructure, especially in critical care facilities and primary care in both the urban and rural areas. It will provide support for 17,788 rural Health and Wellness Centres in 10 High Focus States. Further, 11,024 urban Health and Wellness Centres will be established in all the States.

Critical care services will be available in all the districts of the country with more than 5 lakh population, through Exclusive Critical Care Hospital Blocks, while the remaining districts will be covered through referral services.

People will have access to a full range of diagnostic services in the Public Healthcare system through Network of laboratories across the country. Integrated Public Health Labs will be set up in all the districts.

Under PMASBY, a National Institution for One Health, 4 New National Institutes for Virology, a Regional Research Platform for WHO South East Asia Region, 9 Biosafety Level III laboratories, 5 New Regional National Centre for Disease Control will be set up.

PMASBY targets to build an IT enabled disease surveillance system by developing a network of surveillance laboratories at block, district, regional and national levels, in Metropolitan areas. Integrated Health Information Portal will be expanded to all States/UTs to connect all public health labs.

PMASBY also aims at Operationalisation of 17 new Public Health Units and strengthening of 33 existing Public Health Units at Points of Entry, for effectively detecting, investigating, preventing, and combating Public Health Emergencies and Disease Outbreaks. It will also work towards building up trained frontline health workforce to respond to any public health emergency.

Nine medical colleges to be inaugurated are situated in the districts of Siddharthnagar, Etah, Hardoi, Pratapgarh, Fatehpur, Deoria, Ghazipur, Mirzapur and Jaunpur. 8 Medical Colleges have been sanctioned under the Centrally Sponsored Scheme for “Establishment of new medical colleges attached with district/ referral hospitals” and 1 Medical College at Jaunpur has been made functional by the State Government through its own resources.

Under the Centrally Sponsored Scheme, preference is given to underserved, backward and aspirational districts. The Scheme aims to increase the availability of health professionals, correct the existing geographical imbalance in the distribution of medical colleges and effectively utilize the existing infrastructure of district hospitals. Under three phases of the Scheme, 157 new medical colleges have been approved across the nation, out of which 63 medical colleges are already functional.

Governor and Chief Minister of UP and Union Health Minister will also be present during the event.