وزیر اعظم کا انفینٹی فورم 2.0 سے خطاب

Published By : Admin | December 9, 2023 | 10:40 IST
’’ہندوستان لچک اور ترقی کی علامت بن کر ابھرا ہے‘‘
’’ہندوستان کی ترقی کی وجہ یہ ہے کہ حکومت نے پالیسی، اچھی حکمرانی اور شہریوں کی فلاح و بہبود کو اولین ترجیح دی ہے‘‘
’’ہندوستان دنیا کے لیے امید کی کرن ہے، جو اس کی مضبوط ہوتی ہوئی معیشت اور گزشتہ دہائی کی کایا پلٹ کردینے والی اصلاحات کا نتیجہ ہے‘‘
’’گفٹ سٹی کا تصور ایک متحرک ایکو سسٹم کے طور پر کیا گیا ہے جو بین الاقوامی مالیات کے منظرنامے کی نئے سرے سے تشریح کرے گا‘‘
’’ہم گفٹ سٹی کو نئے دور کے عالمی مالیاتی اور ٹیکنالوجی سے متعلق خدمات کا ایک عالمی نرو سینٹر بنانا چاہتے ہیں‘‘
کوپ 28 میں ہندوستان کی جانب سے ’گلوبل گرین کریڈٹ انیشیٹیو‘ کی پیشکش کی گئی جو کہ کرۂ ارض کے موافق پہل ہے
’’ہندوستان آج دنیا میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی فن ٹیک مارکیٹوں میں سے ایک ہے‘‘
’’گفٹ آئی ایف ایس سی کا ایسی جدید ترین ڈیجیٹل انفرا اسٹرکچر ہے جو کاروباروں کی کارکردگی میں اضافہ میں مدد کرنے والا ایک پلیٹ فارم فراہم کراتا ہے‘‘
’’ہندوستان ایک ایسا ملک ہے جس میں جمہوری اقدار اور تجارت اور کامرس کی تاریخی روایات کی جڑیں بہت گہری ہیں‘‘

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے فن ٹیک پر ایک عالمی تھاٹ لیڈرشپ پلیٹ فارم انفینٹی فورم کے دوسرے ایڈیشن سے خطاب کیا۔ انفینٹی فورم کے دوسرے ایڈیشن کا اہتمام حکومت ہند کے زیر اہتمام مشترکہ طور پر بین الاقوامی مالیاتی خدمات کے مراکز سے متعلق اتھارٹی (آئی ایف ایس سی اے) اور گفٹ سٹی کے ذریعے وائبرنٹ گجرات گلوبل سمٹ 2024 کی ایک پیشگی تقریب کے طور پر کیا جا رہا ہے۔  انفینٹی فورم کے دوسرے ایڈیشن کا تھیم’گفٹ – آئی ایف ایس سی: نئے دور کی عالمی مالیاتی خدمات کے لئے نرو سینٹر‘ ہے۔

حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے دسمبر 2021 میں انفینٹی فورم کے پہلے ایڈیشن کے انعقاد کے دوران عالمی اقتصادی صورتحال کی غیر یقینی ہونے سے پریشان عالمی وبا سے متاثرہ دنیا کا ذکر کیا۔ اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ پریشان کن صورت حال ابھی پوری طرح سے دور نہیں ہوئی ہے اور جیو پولیٹکل تناؤ، افراط زر کی اونچی شرح، بڑھتے ہوئے قرضہ جات کے چیلنجوں کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے لچک اور ترقی کی ایک علامت کے طور پر ہندوستان کے ابھرنے پر روشنی ڈالی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ایسی صورت حال میں گفٹ سٹی میں ایسی تقریب کا انعقاد گجرات کے تفاخر کو نئی بلندیوں پر لے جا رہا ہے۔ اس موقع پر یونیسکو کے ثقافتی ورثے کے ٹیگ کے تحت ’گربا‘ کو شامل کئے جانے پر وزیر اعظم نے گجرات کے لوگوں کو مبارکباد پیش کی۔ انھوں نے کہا کہ ’’گجرات کی کامیابی ملک کی کامیابی ہے۔‘‘

 

وزیر اعظم مودی نے بتایا کہ ہندوستان کی ترقی کی وجہ یہ ہے کہ حکومت نے پالیسی، اچھی حکمرانی اور شہریوں کی فلاح و بہبود کو اولین ترجیح دی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ مالی سال کی پہلی ششماہی  کے دوران ہندوستان کی ترقی کی شرح 7.7 فیصد رہی ہے۔ جیسا کہ آئی ایم ایف نے ستمبر 2023 میں ذکر کیا تھا، وزیر اعظم نے سال 2023 میں 16 فیصد کی عالمی شرح نمو میں ہندوستان کے تعاون پر روشنی ڈالی۔ عالمی بینک کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ’’عالمی چیلنجوں کے درمیان، ہندوستانی معیشت سے بہت زیادہ امیدیں وابستہ ہیں۔ ‘‘  جناب مودی نے آسٹریلیائی وزیر اعظم کے اس بیان کو بھی تسلیم کیا کہ ہندوستان کو گلوبل ساؤتھ کی قیادت کرنے کے لیے تیار کیا جارہا ہے۔ انہوں نے ہندوستان میں لال فیتہ شاہی میں کمی آنے سے متعلق عالمی اقتصادی فورم کے مشاہدے پر روشنی ڈالی اور کہا کہ سرمایہ کاری کے بہتر مواقع پیدا ہوئے ہیں۔ وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ ہندوستان دنیا کے لیے امید کی کرن بن رہا ہے، جو کہ اس کی مضبوط ہوتی ہوئی معیشت اور گزشتہ 10 برسوں کی کایاپلٹ کردینے والی اصلاحات کا نتیجہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب کہ دنیا مالیاتی اور مالی راحت دینے پر توجہ دے رہی تھی، ہندوستان نے طویل مدتی ترقی اور اقتصادی صلاحیت کی توسیع پر توجہ مرکوز کی۔

عالمی معیشت کے ساتھ انضمام کو بڑھانے کے ہدف پر زور دیتے ہوئے، وزیر اعظم نے کئی شعبوں میں لچکدار ایف ڈی آئی پالیسی کی کامیابیوں، تعمیل کے بوجھ میں کمی، اور آج 3 ایف ٹی اے پر دستخط کرنے کا ذکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ گفٹ آئی ایف ایس سی اے ہندوستانی اور عالمی مالیاتی بازاروں کو مربوط کرنے کی ایک بڑی اصلاح کا حصہ ہے۔ گفٹ سٹی، اختراع اور موزونیت اور عالمی تعاون کے شعبے میں نئے معیارات  قائم کرے گا، اس بات کا ذکر کرتے ہوئے جناب مودی نے کہا کہ ’’گفٹ سٹی کا تصور ایک متحرک ایکو سسٹم کے طور پر کیا گیا ہے جو بین الاقوامی مالیات کے منظر نامے کا ازسرنو تعین کرے گا‘‘۔سال 2020 میں ایک یونیفائیڈ ریگولیٹر کے طور پر بین الاقوامی مالیاتی خدمات  مراکز سے متعلق اتھارٹی کے قیام کی اہمیت  کا انھو ں نے ذکر کیا۔ انہوں نے بتایا کہ آئی ایف ایس سی اے نے معاشی بحران کے اس دور میں سرمایہ کاری کی نئی راہیں کھولنے کے لیے  27 ریگولیشنز اور 10 سے زیادہ فریم ورک تیار کئے ہیں۔ وزیر اعظم مودی نے اس بات پر خوشی کا اظہار کیا کہ انفینٹی فورم کے پہلے ایڈیشن کے دوران جو تجاویز موصول ہوئی تھیں، ان پر کام شروع کردیا گیا۔ انھوں نے گورن فنڈ مینجمنٹ ایکٹیویٹیز کے جامع فریم ورک کی مثال پیش کی، جس کی آئی ایف سی اے نے اطلاع دی تھی۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ آج آئی ایف ایس سی اے میں 80 فنڈ مینجمنٹ ادارے رجسٹرڈ ہیں۔ جنھوں نے 80 بلین ڈالر سے زیادہ کے فنڈ قائم کئے ہیں اور 2 معروف بین الاقوامی یونیورسٹیوں نے 2024 میں گفٹ آئی ایف ایس سی اے میں اپنے کورسز شروع کرنے کی منظوری حاصل کی ہے۔ انہوں نے مئی 2022 میں آئی ایف ایس سی اے کے جاری کردہ فریم ورک فار ایئر کرافٹ لیزنگ کا بھی ذکر کیا۔ جس میں 26 یونٹوں نے کام شروع کر دیا ہے۔

 

آئی ایف ایس سی اے کے دائرۂ کار کو وسیع کرنے پر، اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت گفٹ آئی ایف ایس سی اے کو روایتی مالیات اور وینچرز کے دائرے سے باہر لے جانے کی کوشش کررہی ہے۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ’’ہم گفٹ سٹی کو نئے دور کی عالمی مالیات اور ٹیکنالوجی خدمات کا عالمی نرو سینٹر بنانا چاہتے ہیں۔‘‘ انہوں نے اس بات پر اعتماد ظاہر کیا کہ گفٹ سٹی کے ذریعے فراہم کردہ پروڈکٹ اور خدمات دنیا کو درپیش چیلنجوں کو حل کرنے میں معاون ہوں گے اور متعلقین اس سلسلے میں ایک بڑا رول ادا کریں گے۔

وزیر اعظم مودی نے آب و ہوا میں تبدیلی کے بڑے چیلنج کی طرف توجہ مبذول کرائی اور اس کے بارے میں ہندوستان کی تشویش کا بھی ذکر کیا، کیونکہ ہندوستان دنیا کی بڑی معیشتوں میں سے ایک ہے۔ انہوں نے حالیہ کوپ  28 سمٹ کے دوران ہندوستان کی عہد بندی کے بارے میں بتایا اور کہا کہ ہندوستان اور دنیا کے عالمی مقاصد کے حصول کے لئے کم لاگت والے مالی بندوبست کی خاطرخواہ دستیابی کو یقینی بنایا جانا چاہئے۔ انہوں نے عالمی ترقی اور استحکام کو یقینی بنانے کے لیے پائیدار مالیات کی ضرورت کو سمجھنے کی ضرورت کا اعادہ کیا، جو جی  20 کی صدارت کے دوران ترجیحی شعبوں میں سے ایک تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس سے سرسبز، زیادہ لچکدار اور زیادہ جامع معاشروں اور معیشتوں کی طرف منتقلی کو فروغ ملے گا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ کچھ اندازوں کے مطابق، ہندوستان کو بھی کم از کم 10 ٹریلین ڈالر کی ضرورت ہوگی، جہاں اس سرمایہ کاری کی ایک خاص رقم کو عالمی ذرائع سے مالی اعانت فراہم کرنا ہوگی، تاکہ 2070 تک نیٹ زیرو کے مقصد کو حاصل کیا جاسکے۔ انہوں نے آئی ایف ایس سی کو پائیدار مالیات کا ایک عالمی مرکز بنانے پر زور دیا۔ انھوں نے کہا کہ ’’گفٹ آئی ایف ایس سی ہندوستان کو کم کاربن کا اخراج کرنے والی معیشت بنانے کے لیے ضروری گرین کیپٹل فلو کے لیے ایک مؤثر چینل ہے۔ گرین بانڈز، سسٹین ایبل بانڈز، اور سسٹین ایبلٹی لنکڈ بانڈز جیسی مالیاتی پروڈکٹس کی ترقی سے پوری دنیا کی راہیں آسان ہو جائیں گی۔ انہوں نے کوپ 28 میں کرۂ ارض کے موافق ایک پہل کے طور پر ہندوستان کے ’گلوبل گرین کریڈٹ انیشیٹو‘ کے بارے میں بھی بتایا۔ جناب مودی نے صنعتی لیڈروں سے کہا کہ وہ گرین کریڈٹ کے لیے مارکیٹ میکانزم تیار کرنے کے بارے میں اپنے خیالات پیش کریں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’ہندوستان آج دنیا میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی فن ٹیک مارکیٹوں میں سے ایک ہے۔‘‘ انھوں نے کہا کہ فن ٹیک میں ہندوستان کی طاقت گفٹ آئی ایف ایس سی کے وژن سے ہم آہنگ ہے، اور اس کے نتیجے میں، تیزی سے ابھرتا ہوا فن ٹیک کا مرکز بن رہا ہے۔ وزیر اعظم نے آئی ایف ایس سی اے کی 2022 میں فن ٹیک کے لیے ایک پروگریسو ریگولیٹری فریم ورک جاری کرنے اور آئی ایف ایس سی اے کی فن ٹیک انسینٹیو اسکیم کی کامیابیوں کے بارے میں بتایا، جو ہندوستانی اور غیر ملکی فن ٹیکس کو اختراع اور کاروبار کو فروغ دینے کے لیے گرانٹ فراہم کرتی ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ گفٹ سٹی عالمی فن ٹیک ورلڈ کا گیٹ وے اور دنیا کے لیے فن ٹیک لیباریٹری بننے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ انہوں نے سرمایہ کاروں سے اپیل کی کہ وہ اس سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھائیں۔

گفٹ – آئی ایف ایس سی کے عالمی سرمایہ کے فلو کے لیے ایک ممتاز گیٹ وے بننے پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے ’ٹرائی سٹی‘ کے تصور کی وضاحت کی، جو کہ تاریخی شہر احمد آباد اور دارالحکومت گاندھی نگر کے درمیان واقع ہے، جو اسے غیر معمولی کنیکٹیوٹی فراہم کرتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’گفٹ آئی ایف ایس سی کا جدید ترین ڈیجیٹل انفرا اسٹرکچر ایک ایسا پلیٹ فارم مہیا کرتا ہے جو کاروبار کو کارکردگی بڑھانے کے لائق بناتا ہے۔‘‘ وزیر اعظم نے مزید کہا کہ گفٹ آئی ایف ایس سی ایک مقناطیس کے طور پر ابھرا ہے جو مالیاتی اور ٹیکنالوجی کی دنیا کے روشن ذہنوں کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آج آئی ایف ایس سی میں 58 آپریشنل اداروں، 3 ایکسچینجز، بشمول انٹرنیشنل بلین ایکسچینج، 25 بینک، بشمول 9 غیر ملکی بینک، 29 انشورنس ادارے، 2 غیر ملکی یونیورسٹیاں، 50 سے زائد پیشہ ورانہ خدمات فراہم کرنے والے بشمول مشاورتی فرم، قانونی فرم اور سی اے فرم ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ گفٹ سٹی اگلے چند سالوں میں دنیا کے بہترین بین الاقوامی مالیاتی مراکز میں سے ایک ہو گا۔

 

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’ہندوستان ایک جمہوری اقدار اور تجارت و کامرس کی تاریخی روایت کی گہری جڑوں والا ملک ہے۔‘‘ ہندوستان میں ہر سرمایہ کار یا کمپنی کے لئے مختلف مواقع کی موجودگی کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ گفٹ کے بارے میں ہندوستان کا نظریہ ہندوستان کی ترقی کی کہانی سے جڑا ہوا ہے۔ وزیر اعظم نے مثال دیتے روزانہ 4 لاکھ ہوائی مسافروں کی ہوائی ٹریفک کا ذکر کیا اور بتایا کہ   2014 میں مسافر طیاروں کی تعداد 400 تھی جو آج بڑھ کر 700 سے زیادہ ہوگئی ہے، اور گزشتہ 9 سالوں میں ہندوستان میں ہوائی اڈوں کی تعداد دوگنی ہوگئی ہے۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ ہماری ایئر لائنز آنے والے سالوں میں تقریباً 1000 طیارے خریدیں گی۔ انہوں نے گفٹ سٹی کی جانب سے طیارہ کرایہ پر لینے والوں کو فراہم کی جانے والی مختلف سہولیات پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے آئی ایف ایس سی اے کے شپ لیزنگ فریم ورک، آئی ٹی ٹیلنٹ کے بڑے پول، ڈیٹا پروٹیکشن قوانین اور گفٹ کے ڈیٹا ایمبیسی کے اقدام کا بھی ذکر کیا، جو تمام ممالک اور کاروبار کو ڈیجیٹل تسلسل کے لیے محفوظ سہولیات فراہم کرتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ’’ہندوستان کے نوجوانوں کی صلاحیت کی بدولت، ہم تمام بڑی کمپنیوں کے عالمی قابلیت کے مراکز کی بنیاد بن گئے ہیں۔‘‘

اپنے خطاب کے آخر میں، وزیر اعظم نے کہا کہ ہندوستان اگلے چند سالوں میں دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت اور 2047 تک ایک ترقی یافتہ ملک بن جائے گا۔ انہوں نے اس میں سرمایہ کی نئی شکلوں، ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز اور نئے دور کی مالی خدمات کے کردار پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ گفٹ سٹی اپنے موثر ضوابط، پلگ اینڈ پلے انفرا اسٹرکچر، بڑی ہندوستانی اندرونی معیشت تک رسائی، آپریشن کی مفید لاگت اور ٹیلنٹ کے فائدہ کے ساتھ بے مثال مواقع پیدا کر رہا ہے۔ انہوں نے تمام سرمایہ کاروں کو مدعو کرتے ہوئے کہا کہ  ’’آئیے ہم گفٹ آئی ایف ایس سی کے ساتھ مل کر عالمی خوابوں کو پورا کرنے کی سمت میں آگے بڑھیں۔ وائبرنٹ گجرات سمٹ بھی بہت جلد منعقد ہونے والا ہے۔‘‘ جناب مودی نے اختتام کرتے ہوئے کہا کہ ’’آئیے ہم مل کر دنیا کے سنگین مسائل کا حل تلاش کرنے کے لیے اختراعی خیالات کو تلاش کریں اور ان پر عمل کریں۔‘‘

 

پس منظر

انفینٹی فورم کے دوسرے ایڈیشن کا اہتمام حکومت ہند کے زیر اہتمام بین الاقوامی مالیاتی خدمات مراکز سے متعلق اتھارٹی (آئی ایف ایس سی اے) اور گفٹ سٹی کے ذریعے مشترکہ طور پر وائبرنٹ گجرات گلوبل سمٹ 2024 کی ایک پیشگی تقریب کے طور پر کیا جا رہا ہے۔ یہ فورم ایک پلیٹ فارم فراہم کرتا ہے۔ جہاں پوری دنیا سے ترقی پسند خیالات، اہم مسائل، اور اختراعی ٹیکنالوجیز کو دریافت کیا جاتا ہے، ان پر تبادلہ خیال کیا جاتا ہے اور انہیں حل اور مواقع کے طور پر تیار کیا جاتا ہے۔

انفینٹی فورم کے دوسرے ایڈیشن کا تھیم ’گفٹ- آئی ایف ایس سی: نئے دور کے عالمی مالیاتی خدمات کے لئے نرو سینٹر‘ ہے، جسے درج ذیل تین ٹریکس کے ذریعے بیان کیا جائے گا:

مکمل ٹریک: نیو ایج انٹرنیشنل فنانشیل سنٹر کی تشکیل

گرین ٹریک: ’’گرین اسٹیک‘‘ کے لیے کیس تیار کرنا

سلور ٹریک: گفٹ آئی ایف ایس سی میں لانجیوٹی فنانس ہب

ہر ٹریک میں انڈسٹری کے ایک سینئر لیڈر کی انفینٹی ٹاک اور ہندوستان اور دنیا بھر میں مالیاتی شعبے کے صنعتی ماہرین اور پریکٹیشنرز کے ایک پینل مباحثے پر مشتمل ہوگا، جو کہ عملی بصیرت اور قابل عمل حل فراہم کرے گا۔

اس فورم میں 300 سے زیادہ سی ایکس اوز کی شرکت ہوگی، جس میں ہندوستان سے مضبوط آن لائن شرکت ہوگی اور امریکہ،  برطانیہ،سنگاپور، جنوبی افریقہ، متحدہ عرب امارات، آسٹریلیا اور جرمنی سمیت 20 سے زیادہ ملکوں کے عالمی سامعین شرکت کریں گے۔ اس تقریب میں غیر ملکی یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز اور غیر ملکی سفارت خانوں کے نمائندے بھی شرکت کریں گے۔

 

 

 

 

 

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream

Media Coverage

A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Srinagar Viksit Bharat Ambassadors Unite for 'Viksit Bharat, Viksit Kashmir'
April 20, 2024

Srinagar hosted a momentous gathering under the banner of the Viksit Bharat Ambassador or VBA 2024. Held at the prestigious Radisson Collection, the event served as a unique platform, bringing together diverse voices and perspectives to foster the nation's collective advancement towards development.

Graced by the esteemed presence of Union Minister Shri Hardeep Singh Puri as the Chief Guest, the event saw the attendance of over 400 distinguished members of society, representing influencers, industry stalwarts, environmentalists, and young minds, including first-time voters. Presidents of Chambers of Commerce, Federation of Kashmir Industrial Corporation, House Boat Owners Association, and members of the writers' association were also present.

The VBA 2024 meetup began with an interesting panel discussion on Viksit Kashmir, which focused on the symbiotic relationship between industry growth and sustainable development. This was followed by an interactive session by Minister Puri, who engaged with the attendees through an engaging presentation. Another event highlight was the live doodle capture by a local artist of the discussions.

Union Minister Hardeep Singh Puri discussed how India has changed in the last decade. He said India is on track to become one of the world's top three economies, surpassing Germany and Japan soon.

 

"The country is set to surpass Germany and Japan and will become the world's third-largest economy by 2027-28," he said.

 

According to official estimates, India's economy is projected to reach a remarkable $40 trillion by 2040. Presently, the economy stands at approximately $3.5 trillion.

He also stressed that India's progress is incomplete without a developed Kashmir.

 

"Bharat cannot be Viksit without a Viksit Kashmir," he said.

Hardeep Puri reflected on India's economic journey, noting that in the 1700s, India contributed a significant 25% to the global GDP. However, as experts documented, this figure gradually dwindled to a mere 2% by 1947.

 

He highlighted how India, once renowned as the 'sone ki chidiya' (golden bird), lost its economic strength during British colonial rule and continued to struggle even after gaining independence, remaining categorized under the 'Fragile Five' until 2014.

 

Puri emphasized that the true shift in India's economic trajectory commenced under the Modi government. Over the past decade, the nation has ascended from among the top 11 economies to ranking among the top 5 globally.

The Union Minister also encouraged everyone to participate in the Viksit Bharat 2047 mission, emphasizing that achieving this dream requires the active engagement and coordination of all "ambassadors" of change.

He highlighted India's rapid progress in metro network development, stating that the operational metro network spans approximately 950 kilometres. He expressed confidence that within the next 2-3 years, India's metro network will expand to become the second-largest globally, surpassing that of the United States.

 

Regarding Jammu and Kashmir, he mentioned that through the Smart project, over 68 projects totalling Rs 6,800 crores were conceptualized, with Rs 3,200 crores worth of projects already completed.

 

He further stated that Jammu and Kashmir possesses more potential than Switzerland but has faced setbacks due to man-made crises. He emphasized the Modi government's dedication to the comprehensive development of the region.

The minister highlighted a significant government policy shift from women-centred to women-led development. Drawing from his extensive experience as a diplomat spanning 39 years, he shared that when a country transitions to women-led development, there is typically a substantial GDP increase of 20-30%. 

He mentioned that the government is actively pursuing this objective, citing examples such as the Awas Yojana, where houses are registered in the names of women household members, and the implementation of 33% reservation for women in elected bodies as part of this broader mission. 

He also provided insight into the transformative impact of the Modi government's welfare policies on people's lives. He highlighted the Ujjwala Yojana, noting that 32 crore individuals have received LPG cylinders, a significant increase from the 14 crore connections in 2014. Additionally, he mentioned the expansion of the gas pipeline network, which has grown from 14,000 km to over 20,000 km over the past ten years.

The Vision of Viksit Bharat: 140 crore dreams, 1 purpose 

The Viksit Bharat Ambassador movement aims to encourage citizens to take responsibility for contributing to India's development. VBA meet-ups and events are being organized in various parts of the country to achieve this goal. These events provide a platform for participants to engage in constructive discussions, exchange ideas, and explore practical strategies for contributing to the movement.

Join the movement on the NaMo App: https://www.narendramodi.in/ViksitBharatAmbassador

The NaMo App: Bridging the Gap

Prime Minister Narendra Modi's app, the NaMo App, is a digital bridge that empowers citizens to participate in the Viksit Bharat Ambassador movement. The NaMo App serves as a one-stop platform for individuals to:

Join the cause: Sign up and become a Viksit Bharat Ambassador and make 10 other people

Amplify Development Stories: Access updates, news, and resources related to the movement.

Create/Join Events: Create and discover local events, meet-ups, and volunteer opportunities.

Connect/Network: Find and interact with like-minded individuals who share the vision of a developed India.

The 'VBA Event' section in the 'Onground Tasks' tab of the 'Volunteer Module' of the NaMo App allows users to stay updated with the ongoing VBA events.