Inaugurates pilot Project of the 'World's Largest Grain Storage Plan in Cooperative Sector' in 11 PACS of 11 states
Lays foundation stone for additional 500 PACS across the country for construction of godowns & other agri infrastructure
Inaugurates project for computerization in 18,000 PACS across the country
“Cooperative sector is instrumental in shaping a resilient economy and propelling the development of rural areas”
“Cooperatives have the potential to convert an ordinary system related to daily life into a huge industry system, and is a proven way of changing the face of the rural and agricultural economy”
“A large number of women are involved in agriculture and dairy cooperatives”
“Modernization of agriculture systems is a must for Viksit Bharat”
“Viksit Bharat is not possible without creating an Aatmnirbhar Bharat”

ملک کے وزیر داخلہ اور امداد باہمی کے وزیر جناب امت شاہ، میرے کابینہ کے ساتھی ارجن منڈا، جناب  پیوش گوئل جی، قومی کوآپریٹو سوسائٹیوں کے عہدیداران، دیگر معززین، خواتین و حضرات!

 

آج ’بھارت منڈپم‘ ترقی یافتہ ہندوستان کے امرت سفر میں ایک اور بڑی کامیابی کا گواہ ہے۔ ملک نے 'تعاون کے ذریعے خوشحالی' کا جو عزم لیا ہے آج ہم اس عزم کو پورا کرنے کی سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں ۔ امداد باہمی  کی طاقت زراعت اور کاشتکاری کی بنیاد کو مضبوط کرنے میں بہت بڑا کردار ادا کرتی ہے۔ اس سوچ کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہم نے تعاون کی ایک الگ وزارت تشکیل دی۔ اور اب اسی سوچ کو ذہن میں رکھ کر آج کا پروگرام منعقد کیا جا رہا ہے۔ آج ہم نے اپنے کسانوں کے لیے دنیا کی سب سے بڑی اسٹوریج اسکیم شروع کی ہے۔ اس کے تحت ملک کے کونے کونے میں ہزاروں ویئر ہاؤوسز  اور ہزاروں گودام بنائے جائیں گے۔ آج 18 ہزار پیک کی کمپیوٹرائزیشن کا بڑا کام بھی مکمل کر لیا گیا ہے۔ یہ تمام کام ملک میں زرعی انفراسٹرکچر کو نئی وسعت دیں گے اور زراعت کو جدید ٹیکنالوجی سے جوڑیں گے۔ میں ان اہم اور دور رس نتائج لانے والے پروگراموں کے لیے آپ سب کو بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں اور آپ کو بہت سی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔

 

دوستو

 

کوآپریٹو  ہندوستان کے لیے ایک بہت قدیم نظام ہے۔ یہ ہمارے شاستروں  میں بھی کہا گیا ہے - الپنم آپی واستونم، سنہتی: کاریہ سادھیکا۔ یعنی جب چھوٹی چیزیں اور چھوٹے وسائل کو بھی جوڑ دیا جائے تو بڑے کام پورے ہو سکتے ہیں۔ کوآپریٹو  کا یہ بے ساختہ نظام قدیم ہندوستان کی گاؤں کی معیشت میں کام کرتا رہا ہے۔ کوآپریٹو ہمارے خود انحصار معاشرے کی بنیاد ہوا کرتا تھا۔ کوآپریٹو صرف ایک نظام نہیں ہے بلکہ یہ ایک احساس ہے، ایک جذبہ ہے۔ کوآپریٹو کا یہ جذبہ اکثر نظام اور وسائل کی حدود سے باہر حیران کن نتائج دیتا ہے۔ کوآپریٹو ایک سادہ رزق کے نظام کو بڑی صنعتی صلاحیت میں بدل سکتا ہے۔ یہ ملک کی معیشت خصوصاً دیہی اور زرعی معیشت کو از سر نو بہتر کرنے کا ایک ثابت شدہ طریقہ ہے۔ یہ ملک کی اس صلاحیت اور زراعت کے شعبے کی اس بکھری ہوئی طاقت کو ایک علیحدہ وزارت کے ذریعے جمع کرنے کی ایک بہادر کوشش بھی ہے۔ کسانوں کے مصنوعات کے  ایسوسی ایشن - ایف پی او کی ایک بہت اہم مثال ہمارے سامنے ہے۔ آج ایف پی او کے ذریعے، چھوٹے گاؤں کے کسان بھی کاروباری بن رہے ہیں اور اپنی مصنوعات کو بیرون ممالک برآمد کر رہے ہیں۔ ہم نے ملک میں 10 ہزار ایف پی اوز بنانے کا ہدف رکھا تھا۔ ایک علیحدہ کوآپریٹو کی وزارت  کا نتیجہ ہے کہ ملک میں 8 ہزار ایف پی اوز پہلے ہی بن چکے ہیں اور چل رہے ہیں۔ بہت سے ایف پی اوز کی کامیابی کی کہانیاں آج ملک سے باہر بھی زیر بحث ہیں۔ اسی طرح ایک اور اطمینان بخش تبدیلی یہ آئی ہے کہ امداد باہمی  کے ثمرات اب مویشی پروروں   اور ماہی گیروں  تک پہنچ رہے ہیں۔ آج 25 ہزار سے زیادہ کوآپریٹو یونٹس فش فارمنگ کے شعبہ میں کام کر رہے ہیں۔ حکومت کا مقصد آنے والے 5 سالوں میں 2 لاکھ کوآپریٹو سوسائٹیاں بنانے کا ہے۔ اور ان میں سے ایک بڑی تعداد ماہی گیری کے شعبے کی کوآپریٹو سوسائیٹیوں کی بھی ہونے والی ہے۔

دوستو

امداد باہمی  کی طاقت کیا ہوتی ہے، میں نے گجرات کے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے اس طاقت کا تجربہ کیا ہے۔ گجرات میں امول کی کامیابی کی کہانی آج پوری دنیا جانتی ہے۔ ہم سب لجت پاپڑ کے بارے میں بھی جانتے ہیں جو پوری دنیا کی مارکیٹ میں پہنچ چکا ہے۔ ان تمام تحریکوں کی قیادت بنیادی طور پر ملک کی خواتین نے کی ہے۔ آج ملک میں بھی کسان ڈیری اور زراعت میں کوآپریٹیو سے وابستہ ہیں، ان میں کروڑوں کی تعداد میں خواتین ہیں۔ خواتین کی اس صلاحیت کو دیکھتے ہوئے حکومت نے بھی انہیں تعاون سے متعلق پالیسیوں میں ترجیح دی ہے۔آپ جانتے ہیں کہ حال ہی میں ملٹی اسٹیٹ کوآپریٹو سوسائٹی ایکٹ میں اصلاحات کی گئی ہیں۔ اس کے تحت ملٹی اسٹیٹ کوآپریٹو سوسائٹیز کے بورڈز میں خواتین ڈائریکٹرز کا ہونا لازمی قرار دیا گیا ہے۔ ہمارے ملک میں اگر ناری شکتی وندن ایکٹ پارلیمنٹ میں پاس ہوتا ہے تو اس پر کافی بحث ہوتی ہے۔ لیکن ہم نے اتنی ہی طاقت کے ساتھ یہ بہت اہم قانون بنایا ہے۔ لیکن بہت کم لوگ اس پر بحث کرتے ہیں۔

 

دوستو

ذخیرہ اندوزی اس بات کی بھی ایک بہترین مثال ہے کہ کوآپریٹیو کس طرح اجتماعی طاقت کے ذریعے کسانوں کے انفرادی مسائل کو حل کرتی ہے۔ ہمارے ملک میں ذخیرہ کرنے کے بنیادی ڈھانچے کی کمی کی وجہ سے کسانوں کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا۔ پچھلی حکومتوں نے اس ضرورت پر کبھی اتنی توجہ نہیں دی۔ لیکن، آج یہ مسئلہ کوآپریٹو سوسائٹیوں کے ذریعے حل کیا جا رہا ہے۔ یہ اپنے آپ میں ایک بڑی بات ہے، دنیا کے سب سے بڑے اسٹوریج پلان کے تحت اگلے 5 سالوں میں 700 لاکھ میٹرک ٹن ذخیرہ کرنے کی گنجائش پیدا کی جائے گی۔ اس مہم پر 1.25 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کی لاگت آئے گی۔ اس اسکیم کی تکمیل کے بعد، ہمارے کسان اپنی ضرورت کے مطابق اپنی مصنوعات کو ذخیرہ کر سکیں گے۔ انہیں بینکوں سے قرض لینے میں بھی آسانی ہوگی۔ اور یہی وہ صحیح وقت ہے جب وہ محسوس کریں کہ ہاں، مارکیٹ ابھی ان کا سامان بیچنے کے لیے ہے، وہ مناسب وقت پر اپنی مصنوعات کو مارکیٹ میں لے جا کر بیچ سکیں گے۔

دوستو

ہندوستان کے زرعی نظام کو جدید بنانا ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے لیے اتنا ہی اہم ہے۔ زرعی شعبے میں نئے انتظامات کرنے کے ساتھ ساتھ ہم پی اے سی ایس  جیسے کوآپریٹو اداروں کو بھی نئے کرداروں کے لیے تیار کر رہے ہیں۔ یہ کمیٹیاں اب پردھان منتری جن او شدھی کیندر کے طور پر بھی کام کر رہی ہیں۔ ان کے ذریعہ ہزاروں پردھان منتری کسان سمردھی کیندر بھی چلائے جارہے ہیں۔ ہم نے کوآپریٹو سوسائیٹیوں کو پیٹرول اور ڈیزل کے ریٹیل آؤٹ لیٹس میں بھی تبدیل کر دیا ہے۔ کئی کمیٹیوں میں ایل پی جی سلنڈر بھی دستیاب ہونا شروع ہو گئے ہیں۔ پی اے سی ایس کئی دیہاتوں میں واٹر کمیٹیوں کا کردار بھی ادا کر رہی ہے۔ یعنی پی اے سی ایس  اور کریڈٹ سوسائٹیز کی افادیت بھی بڑھ رہی ہے، ان کی آمدنی کے ذرائع بھی بڑھ رہے ہیں۔ یہی نہیں، کوآپریٹو سوسائٹیاں اب دیہاتوں میں کامن سروس سینٹرز کی شکل میں سینکڑوں سرکاری سہولیات فراہم کر رہی ہیں۔ اب کمپیوٹر کے ذریعے یہ کمیٹیاں ٹیکنالوجی اور ڈیجیٹل انڈیا سے متعلق مواقع کو کسانوں تک بڑے پیمانے پر لے جائیں گی۔ اس سے دیہی علاقوں میں نوجوانوں کے لیے روزگار کے نئے مواقع بھی پیدا ہوں گے۔

 

دوستو

ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے عزم کی تکمیل کے لیے، میں سمجھتا ہوں کہ آپ سب کا کردار اور کوآپریٹو اداروں کا کردار بہت اہم ہے۔ اس لیے آپ سب سے میری توقعات بھی زیادہ ہیں۔ اور آخر توقع تو ان سے ہوتی ہے جو کرتے ہیں، جو نہیں کرتے ان سے کون توقع رکھے گا؟ خود کفیل ہندوستان کی تعمیر میں آپ جتنا زیادہ فعال حصہ ڈالیں گے، اتنی ہی جلدی ہم اپنے مقصد کو حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ خود انحصار ہندوستان کی تشکیل کے بغیر ترقی یافتہ ہندوستان بنانا ممکن نہیں ہے۔ آپ کی صلاحیتوں اور آپ کی تنظیمی صلاحیتوں کو دیکھ کر بہت سی تجاویز ذہن میں آرہی ہیں۔ میں آپ کو ایک ساتھ نہیں بتاؤں گا۔ لیکن ایک چیز جس کی میں نشاندہی کرنا چاہتا ہوں۔ مثال کے طور پر، میں تجویز کرتا ہوں کہ ہمارے کوآپریٹیو ان چیزوں کی فہرست بنائیں جو ہم باہر سے، بیرون ملک سے لاتے ہیں۔ اب ہم کوئی چیز درآمد  نہیں کریں گے۔ کوآپریٹو سیکٹر اس میں کیا کر سکتا ہے؟ ہمیں ملک میں ہی ان کے لیے سپورٹ سسٹم بنانا ہوگا۔ کوآپریٹو ادارے یہ ذمہ داری بہت آسانی سے اٹھا سکتے ہیں۔ اب ہمیں زرعی ملک کہا جاتا ہے لیکن یہ بھی سچ ہے کہ ہم گزشتہ 75 سالوں سے زرعی ملک ہونے کے گیت گا رہے ہیں۔ لیکن یہ بدقسمتی دیکھیں کہ ہر سال ہزاروں کروڑ روپے کا خوردنی تیل درآمد کیا جاتا ہے۔ ہم خوردنی تیل میں خود کفیل کیسے ہو سکتے ہیں، اس مٹی میں اگنے والے تیل کے بیج اور اس سے نکالا جانے والا تیل ہمارے شہریوں کی زندگیوں کو مزید تقویت دے سکتا ہے۔ اور اگر میرے کوآپریٹو سیکٹر کے ساتھی اس کے لیے کام نہیں کریں گے تو کون کرے گا؟ کیا میں صحیح کام کر رہا ہوں یا نہیں؟ آپ ہی ہیں جن کو یہ کرنا چاہیے۔ اب آپ دیکھیں کہ خوردنی تیل بھی باہر سے آتا ہے اور ہمیں انرجی کے لیے درکار تیل، گاڑیوں، ٹریکٹروں وغیرہ کو چلانے کے لیے پیٹرول، ڈیزل سے متعلق اپنا درآمدی بل کم کرنا پڑتا ہے۔ اس کے لیے آج ہم ایتھنول کے حوالے سے کافی کام کر رہے ہیں۔ پچھلے 10 سالوں میں ایتھنول کی پیداوار، خریداری اور ملاوٹ میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ آج یہ کام زیادہ تر شوگر ملوں کی ذمہ داری ہے اور سرکاری کمپنیاں ان سے ایتھنول خریدتی ہیں۔ کیا کوآپریٹو سوسائٹیاں اس میں نہیں آسکتی؟ وہ جتنا زیادہ آئیں گے اس کا پیمانہ اتنا ہی بڑھے گا۔ دالوں کی درآمد کو کم کرنے کے لیے آپ دیکھیں کہ زرعی ممالک میں ہم باہر سے دالیں لا کر کھاتے ہیں۔ دالوں کی درآمد کو کم کرنے کے معاملے میں میرے کوآپریٹو سیکٹر کے لوگ بہت اچھا کام کر سکتے ہیں اور اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ مینوفیکچرنگ سے متعلق بہت سی چھوٹی چیزیں ہیں، جنہیں ہم سب درآمد کرتے ہیں لیکن کوآپریٹیو کی مدد سے ہم انہیں ملک میں ہی بنا سکتے ہیں۔

دوستو

آج ہم قدرتی کاشتکاری پر بہت زیادہ زور دے رہے ہیں۔ کوآپریٹیو بھی اس میں بڑا کردار ادا کر سکتے ہیں۔ خوراک دینے والے کو توانائی فراہم کرنے والا اور خوراک دینے والے کو کھاد دینے والا بنانے میں کوآپریٹیو کا بھی بڑا کردار ہے۔ اگر کوآپریٹو اس میں شامل ہوجائے۔ نتائج بہت جلد آئیں گے۔ اب دیکھیں، چھت پر سولر لگانے کی بات ہو یا کھیتوں کے ڈھیروں پر چھوٹے سولر پینل لگانے کی، اس میں 50-60 کسانوں کو اکٹھا ہو کر ایک کوآپریٹو سوسائٹی بنانی چاہیے، کھیتوں پر سولر پینل لگوانا چاہیے، اور وہ بجلی کوآپریٹو سوسائٹی ہی پیدا کرے گی ۔ ایک کوآپریٹو تنظیم آسانی سے کسانوں یا حکومت کو بجلی بیچ کر کام کر سکتی ہے۔ آج کل ہم دیکھ رہے ہیں کہ بڑی بڑی ملٹی نیشنل کمپنیاں گوبردھن یوجنا میں آ رہی ہیں۔ یہ توانائی کا ایک بہت بڑا ذریعہ بننے جا رہا ہے۔ کوآپریٹیو کو اس میں کیوں پیچھے چھوڑ دیا جائے؟ مال کی بربادی ہو، گائے کے گوبر سے بائیو سی این جی بنانا ہو، نامیاتی کھاد بنانا ہو، ان سب میں کوآپریٹو ادارے پھیل سکتے ہیں۔ اس سے ملک کے کھاد کے درآمد پر آرہے انحصار  میں بھی کمی آئے گی۔ آپ کو ہمارے کسانوں اور چھوٹے کاروباریوں کی مصنوعات کی عالمی برانڈنگ کے کام میں بھی آگے آنا چاہیے۔ اب دیکھیں پہلے گجرات میں تمام ڈیری مختلف ناموں سے کام کرتی تھیں۔ جب سے امول ایک برانڈ بن گیا ہے، ڈیری بہت سی اور متنوع ہیں۔ لیکن امول ایک برانڈ بن گیا۔ آج ان کی آواز پوری دنیا میں سنی جاتی ہے۔ ہم اپنی مختلف مصنوعات کے لیے ایک مشترکہ برانڈ بھی بنا سکتے ہیں۔ ہمارا مقصد اپنے باجرے کو بنانا چاہیے، یعنی شری ان یہ برانڈ، جوار کا ہندوستان کا برانڈ دنیا کے ہر کھانے کی میز پر  پہنچنا ہے۔ اس کے لیے کوآپریٹیو کو ایک جامع ایکشن پلان کے ساتھ آگے آنا چاہیے۔

 

دوستو

امداد باہمی  گاؤں کی آمدنی بڑھانے میں بہت بڑا حصہ تعاون دے  سکتا ہے۔ ہم نے ڈیری سیکٹر میں واضح تبدیلی دیکھی ہے۔ پچھلے تین دنوں سے، میں کوآپریٹو سیکٹر کے ایک پروگرام میں کہیں ٹھہرا ہوا ہوں۔ اس سے پہلے امول نے احمد آباد کے گیا میں 50 سال مکمل کیے تھے۔ پھر کل میں بنارس، کاشی میں تھا، جہاں بنارس ڈیری کا افتتاح ہوا تھا۔ بنارس کا تجربہ یہ ہے کہ وہاں ڈیری کوآپریٹیو کے آنے سے مویشی پالنے والوں کی آمدنی میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ تعاون میں اضافے سے ایک اور شعبہ داخل ہو گیا ہے۔ میں نے گجرات کے لوگوں سے تعاون کی درخواست کی تھی۔ کہ تم شہد کی دنیا میں آجاؤ۔ ہم نے سفید انقلاب کیا، اب میٹھا انقلاب کریں۔ اور شہد کے میدان میں ہمارے لوگ آگے آئے۔ آج اربن سیکٹر سے کسانوں کو کتنا فائدہ ہو رہا ہے؟ یہ آپ بھی جانتے ہیں۔ گزشتہ 10 سالوں میں شہد کی پیداوار 75 ہزار میٹرک ٹن سے بڑھ کر تقریباً 1.5 لاکھ میٹرک ٹن تک پہنچ گئی ہے۔ شہد کی برآمد بھی 28 ہزار میٹرک ٹن سے بڑھ کر 80 ہزار میٹرک ٹن ہوگئی ہے۔ اس میں نیفڈ اور ٹرائیفیڈ کے ساتھ ساتھ ریاستوں کے کوآپریٹو اداروں نے بھی بڑا رول ادا کیا ہے۔ ہمیں اس دائرہ کار کو مزید بڑھانا ہوگا۔

دوستو

گجرات میں، ہم نے دیکھا ہے کہ جب دودھ کا پیسہ براہ راست بہنوں کے بینک کھاتوں میں جانے لگا، تو اس سے ایک بامعنی سماجی تبدیلی آئی۔ اب ہماری کوآپریٹو سوسائٹیز اور ہمارے پی اے سی ایس کو کمپیوٹرائز کر دیا گیا ہے۔ اس لیے اب اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ جو بھی کام کیا جائے، جو بھی ادائیگیاں کی جائیں، ڈیجیٹل طریقے سے کی جائیں۔ کوآپریٹو بینکوں کو خاص طور پر ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کو ضم کرنے کے لیے تیزی سے کام کرنا چاہیے۔ ایک اور موضوع سوائل ہیلتھ کارڈ کا ہے۔ ہم نے مٹی کی صحت کو جانچنے کے لیے مٹی کی جانچ کا اتنا بڑا پروگرام بنایا ہے۔ میں کوآپریٹو تنظیموں اور پی اے سی ایس سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ اپنے علاقوں میں مٹی کی جانچ کرنے والی چھوٹی لیبز قائم کریں اور کسانوں کو اپنی زمین اور مٹی کی صحت کی مسلسل نگرانی کرنے کی عادت بنائیں۔ مٹی کی جانچ کا نیٹ ورک بنائیں۔

 

دوستو

ہمیں کوآپریٹیو میں نوجوانوں اور خواتین کی شرکت بڑھانے کے لیے بھی اپنی کوششیں بڑھانا ہوں گی۔ اور میں کوآپریٹو سیکٹرز میں کام کر سکتا ہوں جہاں کسان وابستہ ہیں۔ اس کے ساتھ آپ انہیں بتا سکتے ہیں کہ آپ کو جو ڈیویڈنڈ وغیرہ ملے گا وہ اب آپ کی تنظیم کی جانب سے مٹی کی جانچ کے بعد آپ کو مفت دیا جائےگا، انہیں سکھایا جائے گا کہ وہ مٹی کے تجربے کی بنیاد پر اپنی فصلوں پر توجہ دیں۔

دوستو

اس سے امداد باہمی  میں نیا پن اور نئی توانائی آئے گی۔ امداد باہمی  میں مہارت کی نشوونما، تربیت اور بیداری بڑھانے کی بہت ضرورت ہے۔ بہت سی تبدیلیاں آ چکی ہیں اور سب کچھ کاغذ پر ہونا چاہیے۔زبانی بات چیت کا کوئی فائدہ نہیں۔ اور اس کے لیے تربیت کا ہونا بہت ضروری ہے اور اس کے لیے کوششیں کی جانی چاہئیں۔ پی اے سی ایس  اور کوآپریٹو سوسائٹیز کو بھی ایک دوسرے سے سیکھنا ہو گا۔ بہت سے کوآپریٹو ادارے اختراعی کام کرتے ہیں۔ بہت سے اقدامات کئے جاتے ہیں۔ کیا ہم بہترین طریقوں کا اشتراک کرنے کے لیے ایک مشترکہ پورٹل بنا سکتے ہیں؟ اور ہر کوئی اس پر اپنے نئے نئے تجربات اور نئے طریقے اپ لوڈ کرتا رہتا ہے۔ آن لائن ٹریننگ کا نظام ہونا چاہیے، ان بہترین طریقوں کو آگے بڑھانے کے لیے کوئی ماڈیول بنایا جائے۔ آپ جانتے ہیں کہ اسپیریشنل ڈسٹرکٹ پروگرام، اسپیریشنل ڈسٹرکٹز مہم اس پروگرام کی خصوصیات میں سے ایک ہے۔ صحت مند مقابلہ: صحت مند مسابقت کے لیے درجہ بندی کا نظام بنایا گیا ہے۔ اور درجہ بندی دن میں دس بار اوپر نیچے ہوتی رہتی ہے۔ ہر افسر یہ سمجھتا ہے کہ اس کا ضلع آگے بڑھے۔ کیا ہمیں کوآپریٹو سیکٹر کے مختلف عمودی تخلیق کرنے چاہئیں؟ ایک قسم کی کوآپریٹو کی ایک عمودی، دوسری قسم کی کوآپریٹو کی دوسری عمودی بنائیں اور ایسا طریقہ کار بنائیں کہ اس میں بھی صحت مند مقابلہ چوبیس گھنٹے چلتا رہے۔ امدادباہمی کی  تنظیموں کے درمیان مقابلہ ہونا چاہیے اور بہترین کارکردگی دکھانے والوں کے لیے انعامات کا نظام ہونا چاہیے۔ ایسے کوآپریٹو اداروں سے نئی چیزیں سامنے آنی چاہئیں۔ ایک بہت بڑی تحریک جس کو حکومت اور کوآپریٹو تنظیمیں مل کر ایک نئی شکل دے سکتی ہیں۔

 

دوستو

کوآپریٹو اداروں کے ساتھ ایک چیز سوالیہ نشان لے کر چلتی رہتی ہے۔ کوآپریٹو تنظیموں کے انتخابات میں شفافیت لانا بہت ضروری ہے۔ اس سے لوگوں کا اعتماد بڑھے گا۔ زیادہ سے زیادہ لوگ شامل ہوں گے۔

دوستو

کوآپریٹو سوسائٹیز کو خوشحالی کی بنیاد بنانے کے لیے ہماری حکومت ان کو درپیش چیلنجز کو بھی کم کر رہی ہے۔ آپ کو یاد ہوگا، ہمارے ملک میں کمپنیوں پر سیس کم تھا، لیکن کوآپریٹو سوسائٹیوں کو زیادہ سیس دینا پڑتا تھا۔ ہم نے 1 کروڑ سے 10 کروڑ روپے کے درمیان آمدنی والی کوآپریٹو سوسائٹیوں پر سیس کو 12 فیصد سے کم کر کے 7 فیصد کر دیا۔ جس کی وجہ سے کمیٹیوں نے کام کرنے کے لیے سرمایہ بھی بڑھا دیا ہے۔ ان کے لیے ایک کمپنی کے طور پر آگے بڑھنے کے راستے کھلے ہیں۔ پہلے متبادل ٹیکس میں بھی کوآپریٹو سوسائٹیز اور کمپنیوں کے درمیان امتیازی سلوک کیا جاتا تھا۔ ہم نے معاشروں کے لیے کم از کم متبادل ٹیکس کو 18.5 فیصد سے کم کر کے 15 فیصد کر دیا۔ اور ہم نے اسے کارپوریٹ دنیا کے برابر لایا۔ ایک اور مسئلہ یہ تھا کہ کوآپریٹو سوسائٹیوں کو ایک کروڑ روپے سے زیادہ کی رقم نکالنے پر ٹی ڈی ایس ادا کرنا پڑتا تھا۔ ہم نے نکالنے کی اس حد کو بھی بڑھا کر 3 کروڑ روپے سالانہ کر دیا ہے۔ یہ فائدہ اب ممبران کے مفاد میں استعمال کیا جا سکتا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ امداد باہمی  کی طرف ہماری مشترکہ کوششیں ملک کی اجتماعی طاقت کے ساتھ ترقی کے تمام امکانات کو کھول دے گی۔

اس خواہش کے ساتھ، میں آپ سب کا بہت بہت شکریہ ادا کرتا ہوں ! اور جیسا کہ امت بھائی نے بتایا کہ آج مختلف مراکز میں لاکھوں لوگ جمع ہوئے ہیں۔ میں آج کے اہم اقدام میں اتنے جوش و خروش کے ساتھ شامل ہونے کے لیے ان کا بھی شکریہ ادا کرتا ہوں اور میں ان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ آئیے ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے مقصد کو حاصل کرنے کے لیے تعاون کے جذبے کے صحیح معنوں میں کندھے سے کندھا ملا کر قدم بہ قدم آگے بڑھیں۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%

Media Coverage

India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 23 اپریل 2024
April 23, 2024

Taking the message of Development and Culture under the leadership of PM Modi