Releases commemorative stamp and coin to honour the great spiritual guru
“Chaitanya Mahaprabhu was the touchstone of love for Krishna. He made spiritualism and meditation accessible to the masses”
“Bhakti is a grand philosophy given by our sages. It is not despair but hope and self-confidence. Bhakti is not fear, it is enthusiasm”
“Our Bhakti Margi saints have played an invaluable role, not only in the freedom movement but also in guiding the nation through every challenging phase”
We treat the nation as ‘dev’ and move with a vision of ‘dev se desh’”
“No room for division in India's mantra of unity in diversity”
“‘Ek Bharat Shreshtha Bharat’ is India’s spiritual belief”
“Bengal is a source of constant energy from spirituality and intellectuality”

اس مقدس تقریب میں موجود تمام قابل احترام سنتوں، آچاریہ گوڈیا مشن کے عقیدت مند بھکتی سندر سنیاسی جی، کابینہ میں میرے ساتھی ارجن رام میگھوال جی، میناکشی لیکھی جی، ملک اور دنیا سے وابستہ تمام کرشن بھکت، دیگر معززین، خواتین و حضرات۔

ہرے کرشنا! ہرے کرشنا! ہرے کرشنا! آج یہاں آپ کی موجودگی سے بھارت منڈپم کی شان میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ اس عمارت کا خیال بھگوان بسویشور کے انوبھو منڈپم سے جڑا ہوا ہے۔ انوبھو منڈپم قدیم ہندوستان میں روحانی مباحث کا مرکز تھا۔ انوبھو منڈپم عوامی بہبود کے جذبات اور عزائم  کا مرکز تھا۔ آج، شریل بھکتی سدھانت سرسوتی گوسوامی پربھوپاد جی کے 150 ویں یوم پیدائش کے موقع پر، وہی توانائی بھارت منڈپم میں نظر آتی ہے۔ ہم نے یہ بھی سوچا کہ یہ عمارت ہندوستان کی جدید طاقت اور قدیم اقدار دونوں کا مرکز بن جائے۔ ابھی چند مہینے پہلے، یہاں جی- 20 چوٹی کانفرنس کے ذریعے نئے ہندوستان کی صلاحیت دیکھی گئی۔ اور آج اسے ‘عالمی ویشنو کنونشن’  منعقد کرنے کا ایک مقدس اعزاز حاصل ہو رہا ہے۔ اور یہ نئے ہندوستان کی تصویر ہے... جہاں ترقی کے ساتھ ساتھ وراثت بھی ہے، دونوں کا سنگم ہے۔ جہاں جدیدیت کا خیر مقدم کیا جاتا ہے اور اپنی شناخت پر فخر ہوتا ہے۔

 

یہ میری خوش قسمتی ہے کہ اس مقدس تقریب میں آپ تمام سنتوں  کے بیچ یہاں موجود ہوں۔ اور میں اپنے آپ کو خوش قسمت سمجھتا ہوں کہ آپ میں سے بہت سے سنتوں  سے میرا واسطہ رہا ہے۔ میں آپ سب کی صحبت میں کئی بار رہا ہوں۔ میں 'کرشنم وندے جگد گروم' کے جذبے میں بھگوان کرشن کے قدموں میں جھکتا ہوں۔ میں شریل بھکتی سدھانت پربھوپادجی کو اپنا پر احترام  خراج عقیدت پیش کرتا ہوں اور ان کو خراج عقیدت پیش کرتا ہوں۔ میں پربھوپادا کے تمام پیروکاروں کو ان کے 150ویں یوم پیدائش پر دل کی گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ آج، اس موقع پر، مجھے سریلا پربھوپادا کی یاد میں ایک ڈاک ٹکٹ اور ایک یادگاری سکہ جاری کرنے کی سعادت بھی حاصل ہوئی، اور میں اس کے لیے آپ سب کو بھی مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

 

معزز سنتوں،

 

ہم پربھوپاد گوسوامی جی کا 150 واں یوم پیدائش ایسے وقت میں منا رہے ہیں جب چند دن پہلے ہی عظیم الشان رام مندر کا سینکڑوں سال پرانا خواب پورا ہوا ہے۔ آج آپ کے چہروں پر جو خوشی اور مسرت  دکھائی دے رہی  ہے، مجھے یقین ہے کہ اس میں رام للا کے بیٹھنے کی خوشی بھی شامل ہے۔ یہ بہت بڑا مہا یگیہ صرف سنتوں کی عقیدت اور آشیرواد سے مکمل ہوا ہے۔

 

دوستو

 

آج ہم سب اپنی زندگی میں بھگوان کے پریم، کرشنا کی لیلاؤں اور عقیدت کے عنصر کو اتنی آسانی سے سمجھتے ہیں۔ اس دور میں چیتنیا مہا پربھو کے آشیروادکا اس کے پیچھے بڑا کردار ہے۔ چیتنیا مہا پربھو کرشنا کے لیے محبت کا مظہر تھے۔ اس نے روحانیت اور روحانی عمل کو عام لوگوں کے لیے قابل رسائی اور آسان بنایا۔ اس نے ہمیں بتایا کہ بھگوان  کو نہ صرف سنیاس کرنے سے بلکہ خوشی کے ذریعے بھی حاصل کیا جا سکتا ہے۔ اور میں آپ کو اپنا تجربہ بتاتا ہوں۔ میں ان روایات میں پرورش پانے والا شخص ہوں۔ میری زندگی کے مختلف مراحل میں سے ایک مرحلہ کچھ مختلف تھا۔ میں اس ماحول میں بیٹھا کرتا تھا، درمیان میں ہوا کرتا تھا، جب بھجن اور کیرتن چلتے تھے، میں کونے میں بیٹھا کرتا تھا، سنتا تھا، اس لمحے کو اپنے دل کے مطابق گزارتا تھا لیکن جڑتا نہیں، بیٹھا رہتا تھا۔ پتا نہیں ایک بار میرے ذہن میں کئی خیالات آئے۔ میں نے سوچا کہ یہ فاصلہ کیا ہے؟ یہ کیا چیز ہے جو مجھے روک رہی ہے؟ میں رہتا ہوں، میں شامل نہیں ہوتا۔ اور اس کے بعد جب میں نے بھجن اور کیرتن میں شرکت کرنا شروع کی تو میں خود بھی تالیاں بجانے لگا اور اس میں شامل ہونے لگا، اور میں نے دیکھا کہ میں اس میں مگن تھا۔ میں نے اس طاقت کو محسوس کیا ہے جو چیتنیا پربھو کی اس روایت میں ہے۔ اورابھی  جب آپ یہ کر رہے تھے تو میں تالیاں بجانے لگا۔ تو وہاں کے لوگوں کو لگ رہا ہے کہ پی ایم تالیاں بجا رہے ہیں۔ پی ایم تالیاں نہیں بجا رہے تھے، بھگوان تالیاں بجا رہے تھے۔

 

چیتنیا مہا پربھو نے ہمیں دکھایا کہ کس طرح اپنی زندگی میں بھگوان کرشن کی لیلاؤں  کو منا کر خوش رہنا ہے۔ آج بہت سے متلاشی براہ راست تجربہ کر رہے ہیں کہ کوئی سنکرتن، بھجن، گیت اور رقص کے ذریعے روحانیت کے عروج تک کیسے پہنچ سکتا ہے۔ اور میں اس سے ملا ہوں جو تجربے سے لطف اندوز ہوتا ہے۔ چیتنیا مہا پربھو نے بھی ہمیں شری کرشن کے مشاغل کی خوبصورتی کی وضاحت کی، اور زندگی کے مقصد کو جاننے میں اس کی اہمیت بھی بتائی۔ یہی وجہ ہے کہ آج بھگوت جیسے متون کے لیے عقیدت مندوں کا وہی عقیدہ ہے، وہی محبت چیتنیا چریتامرت اور بھکتمل کے لیے ہے۔

 

دوستو

 

چیتنیا مہا پربھو جیسی شخصیات وقت کے مطابق کسی نہ کسی شکل میں اپنے کام کو آگے بڑھاتی رہتی ہیں۔ شریل بھکتی سدھانت پربھوپاد ان کی عزائم کے مجسم تھے۔ ہمیں شریل بھکتی سدھانت جی کی زندگی کے ہر قدم پر یہ دیکھنے کو ملتا ہے کہ کوئی سادھنا سے سدھی تک کیسے پہنچتا ہے، کس طرح کوئی آرتھ سے پرمارتھ تک کا سفر کرتا ہے۔ 10 سال سے کم عمر میں، پربھوپاد جی نے پوری گیتا کو یاد کر لیا۔ نوجوانی میں، جدید تعلیم کے ساتھ ساتھ، انہوں نے سنسکرت، گرامر، ویدوں اور ویدنگوں میں علم حاصل کیا۔ اس نے علم نجوم کی ریاضی میں سوریہ سدھانت جیسے متون کی وضاحت کی۔ سدھانت سرسوتی کا خطاب حاصل کیا، 24 سال کی عمر میں اس نے ایک سنسکرت اسکول بھی کھولا۔ سوامی جی نے اپنی زندگی میں 100 سے زیادہ کتابیں لکھیں، سینکڑوں مضامین لکھے اور لاکھوں لوگوں کو سمت دکھائی۔ یعنی ایک طرح سے نظام زندگی میں علم کی راہ اور عقیدت کی راہ دونوں کا توازن شامل کر دیا گیا۔ بھجن 'ویشنو جن تو تینے کہیے، پیر پرائی جانے رے’ کے ساتھ، وہ ویشنو جذبہ جسے گاندھی جی گاتے تھے، شریل پربھوپادسوامی نے وہ جذبہ... عدم تشدد اور محبت کا وہ انسانی عزم کو... ہندوستان اور بیرون ملک پہنچانے کا کام کیا۔

 

دوستو

 

میں گجرات میں پیدا ہوا۔ گجرات کی پہچان یہ ہے کہ جہاں بھی ویشنو جذبہ کہیں بھی  پیدا ہو،گجرات اس سے ضرور جڑ جاتا ہے۔ بھگوان کرشن خود متھرا میں اوتار ہوتے ہیں، لیکن اپنی لیلاؤں  کو بڑھانے کے لیے وہ دوارکا آتے ہیں۔ میرا بائی جیسی عظیم کرشن بھکت راجستھان میں پیدا ہوئی تھی۔ لیکن، وہ شری کرشنا کی جذبے میں  گجرات آتی ہے۔ ایسے بہت سے ویشنو سنت ہیں جن کا گجرات اور دوارکا کی سرزمین سے خاص تعلق ہے۔ گجرات کی سنت شاعرہ نرسی مہتا بھی ان کی جائے پیدائش  گجرات ہے۔ لہذا، شری کرشن کے ساتھ تعلق، چیتنیا مہا پربھو کی روایت، یہ میرے لیے زندگی کا ایک فطری حصہ ہے۔

 

دوستو

 

میں 2016 میں گاوڑیا مٹھ کی صد سالہ تقریبات کے لیے آپ سب کے درمیان آیا ہوں۔ اس وقت میں نے آپ سے ہندوستان کے روحانی شعور کے بارے میں تفصیل سے بات کی تھی۔ جب کوئی معاشرہ اپنی جڑوں سے دور ہوتا ہے تو وہ سب سے پہلے اپنی صلاحیتوں کو بھول جاتا ہے۔ اس کا سب سے بڑا اثر یہ ہے کہ ہم اپنی خوبیوں اور اپنی خوبیوں کے حوالے سے احساس کمتری کا شکار ہو جاتے ہیں۔ ہندوستانی روایت میں، ہماری زندگی میں بھکتی جیسا اہم فلسفہ بھی اس سے اچھوتا نہیں رہا۔ یہاں بیٹھے نوجوان دوست میری بات سے جوڑ سکیں گے، جب عقیدت کی بات آتی ہے تو کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ عقیدت، منطق اور جدیدیت متضاد چیزیں ہیں۔ لیکن، دراصل خدا کی عقیدت ہمارے باباؤں کا دیا ہوا ایک عظیم فلسفہ ہے۔ عقیدت مایوسی نہیں، امید اور اعتماد ہے۔ عقیدت خوف نہیں، جوش اور ولولہ ہے۔ بھکتی میں یہ طاقت ہے کہ وہ لگاؤ ​​اور بے راہ روی کے درمیان زندگی کو شعور کے احساس سے بھر دے ۔ بھکتی وہی ہے جسے شری کرشنا، جنگ کے میدان میں  گیتا کے 12ویں باب میں عظیم یوگا کے طور پر بیان کرتے ہیں۔ جس کی طاقت کی وجہ سے مایوس ہونے والا ارجن ناانصافی کے خلاف اپنا گندیوا اٹھاتا ہے۔ لہٰذا، عقیدت شکست نہیں، احساس کا ہے۔

لیکن دوستو،

ہمیں یہ جیت دوسروں پر حاصل نہیں کرنی ہے، یہ جیت ہمیں اپنے اوپر حاصل کرنی ہے۔ ہمیں جنگ اپنے لیے نہیں بلکہ انسانیت کے لیے 'دھرمکشیتر کروکشیتر' کے جذبے سے لڑنی ہے۔ اور یہ احساس ہماری ثقافت میں، ہماری رگوں میں پیوست ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہندوستان اپنی سرحدوں کو پھیلانے کے لیے کبھی دوسرے ممالک پر حملہ کرنے نہیں گیا۔ ایسے عظیم فلسفے سے ناواقف لوگوں کے نظریاتی حملوں نے ہماری نفسیات کو کسی حد تک متاثر کیا۔ لیکن، ہم شریل پربھوپادجیسے سنتوں کے مقروض ہیں، جنہوں نے ایک بار پھر لاکھوں لوگوں کو سچائی کا نظارہ کرایا اور انہیں عقیدت کے قابل فخر جذبے سے بھر دیا۔ آج آزادی کے سنہری دور میں ملک ’غلامی کی ذہنیت سے آزادی‘ کا عہد لے کر ملک سنتوں کے عزم کو آگے بڑھا رہا ہے۔

 

دوستو

 

بھکتی تحریک  کے بہت سے علمبردار یہاں بیٹھے ہیں۔ آپ سب بھکتی کے راستے سے بخوبی واقف ہیں۔ ہمارے بھکتی سنتوں کا تعاون اور تحریک آزادی میں بھکتی تحریک کا کردار انمول رہا ہے۔ ہندوستان کے ہر مشکل دور میں کوئی نہ کوئی عظیم سنت یا آچاریہ کسی نہ کسی شکل میں قوم کو ہدایت دینے کے لیے آگے آیا ہے۔ آپ نے دیکھا، قرون وسطیٰ کے مشکل وقت میں، جب شکست ہندوستان کو افسردہ کر رہی تھی، بھکتی تحریک کے سنتوں نے ہمیں منتر ’ہرے کو ہرینام‘، ’ہرے کو ہرینام‘ دیا۔ ان سنتوں نے ہمیں سکھایا کہ خودسپردگی ا صرف بھگوان  کے سامنے ہونی چاہئے۔ صدیوں کی لوٹ مار کی وجہ سے ملک غربت کی گہری کھائی میں تھا۔ پھر سنتوں نے ہمیں قربانی  اور صبر کی زندگی گزار کر اپنی اقدار کی حفاظت کرنا سکھایا۔ ہمیں ایک بار پھر یقین ہو گیا کہ جب حق کی حفاظت کے لیے سب کچھ قربان کر دیا جائے تو باطل کا خاتمہ ہو جاتا ہے۔ صرف سچ کی فتح ہوتی ہے - 'ستیامیو جیتے'۔ یہی وجہ ہے کہ آزادی کی تحریک بھی سوامی وویکانند اور سریلا سوامی پربھوپاد جیسے سنتوں کی بے پناہ توانائی سے بھری ہوئی تھی۔ نیتا جی سبھاش چندر بوس، اور مہامنا مالویہ جی جیسی مشہور شخصیات پربھوپاد سوامی کی روحانی رہنمائی حاصل کرنے کے لیے ان کے پاس آتی تھیں۔

 

دوستو

 

ہمیں بھکتی یوگ کے ذریعے قربانیاں دینے کے بعد بھی امر رہنے کا یہ اعتماد ملتا ہے۔ اسی لیے ہمارے باباؤں نے کہا ہے کہ ’’امرت سوروپ چا’’ یعنی یہ عقیدت امرت کی شکل میں ہے۔ آج اسی اعتماد کے ساتھ کروڑوں ہم وطن حب الوطنی کی توانائی کے ساتھ لافانی دور میں داخل ہو چکے ہیں۔ اس امرتکال میں ہم نے اپنے ہندوستان کو ترقی یافتہ بنانے کا عزم کیا ہے۔ ہم قوم کو ایشور سمجھتے ہوئے اور ‘ایشور سے ملک تک' کے وژن کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں۔ ہم نے اپنی طاقت کو اپنا تنوع بنایا ہے، ملک کے ہر کونے کی طاقت، یہی ہماری توانائی، ہماری طاقت، ہمارا شعور ہے۔

 

دوستو

 

آپ سب یہاں اتنی بڑی تعداد میں جمع ہیں۔ کچھ کسی ریاست سے ہیں، کچھ کسی علاقے سے ہیں۔ زبان، بولی، رہن سہن بھی مختلف ہے۔ لیکن، ایک مشترکہ سوچ کتنی آسانی سے سب کو جوڑ دیتی ہے۔ بھگوان شری کرشن ہمیں سکھاتے ہیں - 'آہم آتما گڈاکیش سرو بھوتاشے ستہ'۔ یعنی تمام مخلوقات کے اندر وہی خدا رہتا ہے جو ان کی روح ہے۔ یہ عقیدہ ‘نر سے نارائن’اور ‘جیو سے شیو’کے تصور کی شکل میں ہندوستان کی روح میں سرایت کر گیا ہے۔ اس لیے ہندوستان کا تنوع میں اتحاد کا منتر اتنا سادہ، اتنا وسیع ہے کہ اس میں تقسیم کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ ہم ایک بار 'ہرے کرشنا' کہتے ہیں، اور ایک دوسرے کے دلوں سے جڑ جاتے ہیں۔ اسی لیے، دنیا کے لیے، قوم ایک سیاسی تصور ہو سکتا ہے… لیکن ہندوستان کے لیے، ’ایک بھارت، شریشٹھ بھارت’ ایک روحانی عقیدہ ہے۔

 

خود شریل  بھکتی سدھانت گوسوامی کی زندگی بھی ہمارے سامنے ایک مثال ہے! پربھوپادجی پوری میں پیدا ہوئے، انہوں نے جنوب کے رامانوجاچاریہ جی کی روایت میں تعلیم حاصل کی اور چیتنیا مہا پربھو کی روایت کو آگے بڑھایا۔ اور بنگال میں قائم اپنی خانقاہ کو اپنے روحانی سفر کا مرکز بنایا۔ بنگال کی سرزمین کی بات ایسی ہے کہ وہاں سے روحانیت اور عقل کو مستقل توانائی ملتی ہے۔ یہ بنگال کی سرزمین ہے، جس نے ہمیں رام کرشن پرمہنس جیسے سنت، سوامی وویکانند جیسے قومی بابا دیے۔ اس سرزمین نے سری اروبندو اور گرو رابندر ناتھ ٹیگور جیسے عظیم انسان بھی دیئے جنہوں نے قومی تحریکوں کو مقدس جذبے کے ساتھ آگے بڑھایا۔ راجہ رام موہن رائے جیسے سماجی مصلح بھی یہاں ملے۔ بنگال چیتنیا مہا پربھو اور پربھوپادجیسے ان کے پیروکاروں کی جائے پیدائش رہی ہے۔ ان کے اثر  کی وجہ سے آج محبت اور عقیدت ایک عالمی تحریک بن چکی ہے۔

 

دوستو

 

آج ہر طرف ہندوستان کی رفتار اور ترقی کا چرچا ہو رہا ہے۔ ہندوستان جدید بنیادی ڈھانچے اور ہائی ٹیک خدمات میں ترقی یافتہ ممالک کے برابر ہے۔ کئی شعبوں میں ہم بڑے ممالک کو بھی پیچھے چھوڑ رہے ہیں۔ ہمیں قائدانہ کردار میں دیکھا جا رہا ہے۔ لیکن اس کے ساتھ ہی آج ہندوستان کا یوگ بھی پوری دنیا کے ہر گھر تک پہنچ رہا ہے۔ ہماری آیوروید اور نیچروپیتھی میں دنیا کا اعتماد بڑھ رہا ہے۔ کئی ممالک کے صدور اور وزرائے اعظم آتے ہیں، مندوبین آتے ہیں، وہ ہمارے قدیم مندروں کو دیکھنے جاتے ہیں۔ یہ تبدیلی اتنی جلدی کیسے آگئی؟ یہ تبدیلی کیسے آئی؟ یہ تبدیلی نوجوانوں کی توانائی سے آئی ہے! آج ہندوستان کے نوجوان علم اور تحقیق دونوں کو ساتھ لے کر چل رہے ہیں۔ ہماری نئی نسل اب اپنی ثقافت کو اپنے ماتھے پر فخر سے سجاتی ہے۔ آج کا نوجوان روحانیت اوراسٹارٹ اپس دونوں کی اہمیت کو سمجھتا ہے اور دونوں کے قابل ہے۔ اس لیے ہم دیکھ رہے ہیں کہ آج کاشی ہو یا ایودھیا، تیرتھ دھاموں  پر جانے والوں کی بڑی تعداد ہمارے نوجوانوں کی ہے۔

 

بھائیو اور بہنو،

 

جب ملک کی نئی نسل اتنی باشعور ہوگی تو یہ فطری ہے کہ ملک چندریان بھی بنائے گا اور چندر شیکھر مہادیو کا دھام بھی سجائے گا۔ جب نوجوان قیادت کریں گے تو ملک چاند پر ایک روور بھی اتارے گا اور اس جگہ کا نام ‘شیو شکتی’ رکھ کر اپنی روایت کو بھی پروان چڑھائے گا۔ اب ملک میں وندے بھارت ٹرینیں بھی چلیں گی، اور ورنداون، متھرا اور ایودھیا کو بھی نئی زندگی دی جائے گی۔ مجھے یہ بتاتے ہوئے بھی خوشی ہو رہی ہے کہ ہم نے نمامی گنگا اسکیم کے تحت مایا پور، بنگال میں خوبصورت گنگا گھاٹ کی تعمیر بھی شروع کر دی ہے۔

 

دوستو

 

ہماری ترقی اور ورثے کا یہ قدم سنتوں  کے فیض سے 25 سال تک اسی طرح جاری رہے گا۔ سنتوں کے آشیرواد سے ہم ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر کریں گے اور ہماری روحانیت پوری انسانیت کی فلاح و بہبود کی راہ ہموار کرے گی۔ اس خواہش کے ساتھ، آپ سب کو ہرے کرشنا! ہرے کرشنا! ہرے کرشنا! بہت بہت شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Boosting ‘Make in India’! How India is working with Asean to review trade pact to spur domestic manufacturing

Media Coverage

Boosting ‘Make in India’! How India is working with Asean to review trade pact to spur domestic manufacturing
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 13 اپریل 2024
April 13, 2024

PM Modi's Interaction with Next-Gen Gamers Strikes a Chord with Youth

India Expresses Gratitude for PM Modi’s Efforts to Achieve Exponential Growth for the Nation