گیارہ جلدوں کی پہلی سیریز کا اجرا کیا گیا
پنڈت مدن موہن مالویہ کی مکمل کتاب کی رونمائی اپنے آپ میں بہت اہم ہے
مہامنا جدید فکر اور سناتن ثقافت کا سنگم تھے
مالویہ جی کے خیالات کی خوشبو ہماری حکومت کے کاموں میں محسوس کی جا سکتی ہے
مہامنا کو بھارت رتن سے نوازنا ہماری حکومت کے لیے فخر کی بات تھی
ملک کی نئی قومی تعلیمی پالیسی میں بھی مالویہ جی کی کوششوں کی جھلک نظر آتی ہے
گڈ گورننس کا مطلب ہے طاقت کا مرکز بننے کے بجائے خدمت کا مرکز ہونا
ہندوستان قومی اور بین الاقوامی اہمیت کے کئی اداروں کا خالق بن رہا ہے

 کابینہ میں میرے ساتھی جناب انوراگ ٹھاکر جی، ارجن رام میگھوال جی، مہامنا سمپورنا وانگ مایا کے ایڈیٹر ان چیف میرے بہت پرانے دوست رام بہادر رائے جی، مہامنا مالویہ مشن کے صدر پربھو نارائن شریواستو جی، اسٹیج پر بیٹھے تمام سینئر ساتھی، خواتین و حضرات،

سب سے پہلے، آپ سب کو کرسمس کی مبارک باد۔ آج کا دن ان لاکھوں لوگوں کو تحریک دیتا ہے ہے جو بھارت اور بھارتیتا میں یقین رکھتے ہیں۔ آج مہامنا مدن موہن مالویہ جی کا یوم پیدائش ہے۔ آج اٹل جی کا یوم پیدائش بھی ہے۔ آج اس مبارک موقع پر میں مہامنا مالویہ جی کے قدموں میں جھکتا ہوں۔ میں احترام کے ساتھ اٹل جی کو خراج عقیدت پیش کرتا ہوں۔ اٹل جی کے یوم پیدائش کے موقع پر آج ملک گڈ گورننس ڈے منا رہا ہے۔ میں گڈ گورننس ڈے پر سبھی ہم وطنوں کو بھی مبارکباد دیتا ہوں۔

ساتھیو،

 

آج اس مبارک موقع پر پنڈت مدن موہن مالویہ کی کلیات کا اجراء اپنے آپ میں بہت اہم ہے۔ یہ پوری سائنس ہماری نوجوان نسل اور ہماری آنے والی نسل کو مہامنا، ان کی زندگی کے خیالات اور نظریات سے آشنا کرنے کا ایک طاقتور ذریعہ بن جائے گی۔ اس کے ذریعے بھارت کی جدوجہد آزادی اور معاصر تاریخ کو جاننے اور سمجھنے کے دروازے کھلیں گے۔ خاص طور پر ریسرچ اسکالرز، تاریخ اور پولیٹیکل سائنس کے طلبہ کے لیے یہ ادب کسی علمی خزانے سے کم نہیں۔ بی ایچ یو کے قیام سے متعلق واقعات، کانگریس کی اعلیٰ قیادت کے ساتھ ان کی بات چیت، برطانوی راج کے تئیں ان کا سخت رویہ، بھارت کے قدیم ورثے کا احترام... ان کتابوں میں کیا کچھ نہیں ہے۔سب سے اہم بات یہ ہے کہ ان جلدوں میں سے ایک جس کا ذکر رام بہادر رائے جی نے کیا ہے وہ مہامنا کی ذاتی ڈائری سے جڑی ہوئی ہے۔ مہامنا کی ڈائری سماج، قوم اور روحانیت جیسے تمام پہلوؤں میں بھارتی ذہن کی رہنمائی کر سکتی ہے۔

دوستو، میں جانتا ہوں کہ مشن کی ٹیم اور آپ سبھی نے اس کام کے لیے کتنے سال ریاضت کی ہے۔ ملک کے کونے کونے سے مالویہ جی کے ہزاروں خطوط اور دستاویزات تلاش کرنا، انھیں جمع کرنا، بہت سے آرکائیوز میں سمندر کی طرح غوطہ لگانا، ہر کاغذ کی تلاش کرنا، بادشاہوں اور مہاراجوں کے ذاتی مجموعوں سے پرانے کاغذات جمع کرنا، یہ کسی مشکل کام سے کم نہیں ہے۔ یہ اسی بے پناہ محنت کا نتیجہ ہے کہ مہامنا کی عظیم شخصیت گیارہ جلدوں پر مشتمل اس کلیات کی شکل میں ہمارے سامنے آئی ہے۔ میں وزارت اطلاعات و نشریات، مہامنا مالویہ مشن اور رام بہادر رائے جی اور ان کی ٹیم کو اس عظیم کام کے لیے دل کی گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں۔ اس میں کئی لائبریریوں کے لوگوں اور مہامنا سے جڑے لوگوں کے اہل خانہ نے بھی بہت تعاون کیا ہے۔ میں ان تمام ساتھیوں کو بھی دل کی گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

 

میرے اہلِ خانہ،

مہامنا جیسی شخصیات صدیوں میں ایک بار جنم لیتی ہیں۔ اور آنے والی کئی صدیوں تک ہر لمحے، ہر وقت ان سے تحریک لیتے ہیں۔ بھارت کی کتنی نسلیں مہامنا جی کی مقروض ہیں۔ وہ تعلیم اور قابلیت میں اس وقت کے عظیم ترین علما میں سے تھے۔ وہ جدید سوچ اور ابدی اقدار کا سنگم تھے! انھوں نے جتنا جدوجہد آزادی میں بڑا کردار ادا کیا، اتنا ہی ملک کی روحانی روح کو بیدار کرنے میں بھی فعال کردار ادا کیا! اگر ان کا ایک وژن حال کے چیلنجز پر تھا تو دوسرا وژن مستقبل کی تعمیر میں مصروف تھا۔ مہامنا نے جس کردار میں زندگی بسر کی، اس میں انھوں نے ’پہلے ملک‘ کے عزم کو مقدم رکھا۔ وہ ملک کی سب سے بڑی طاقت سے ٹکرا گئے۔ مشکل ترین ماحول میں بھی انھوں نے ملک کے لیے امکانات کے نئے بیج بوئے۔ مہامنا کی بہت سی ایسی خدمات ہیں، جو اب پورے ادب کی ۱۱ جلدوں کے ذریعے مستند طور پر سامنے آئیں گی۔ میں اسے اپنی حکومت کا اعزاز سمجھتا ہوں کہ ہم نے انھیں بھارت رتن سے نوازا۔ اور میرے لیے مہامنا ایک اور وجہ سے بہت خاص ہیں۔ ان کی طرح خدا نے مجھے بھی کاشی کی خدمت کرنے کا موقع دیا ہے۔ اور میں یہ بھی خوش قسمت ہوں کہ میں نے 2014 میں الیکشن لڑنے کے لیے جس امیدوار کو نامزد کیا تھا، وہ مالویہ جی کی فیملی کا رکن تھا۔ مہامنا کو کاشی پر بے پناہ بھروسہ تھا۔ آج کاشی ترقی کی نئی بلندیوں کو چھو رہا ہے، اپنے ورثے کی عظمت کو بحال کر رہا ہے۔

میرے اہلِ خانہ،

آزادی کے امرت کال میں ملک اپنے ورثے پر فخر کرتے ہوئے غلامی کی ذہنیت سے آزادی حاصل کرکے آگے بڑھ رہا ہے۔ آپ ہماری حکومتوں کے کاموں میں کہیں نہ کہیں مالویہ جی کے خیالات کی خوشبو محسوس کریں گے۔ مالویہ جی نے ہمیں ایک ایسی قوم کا تصور دیا تھا جس میں اس کی قدیم روح اس کے جدید جسم میں محفوظ ہے۔ جب انگریزوں کے خلاف احتجاج میں ملک میں تعلیم کے بائیکاٹ کا مسئلہ اٹھایا گیا تو مالویہ جی اس خیال کے خلاف کھڑے ہوئے، وہ اس خیال کے خلاف تھے۔ انھوں نے کہا کہ تعلیم کا بائیکاٹ کرنے کے بجائے ہمیں بھارتی اقدار پر مبنی ایک آزاد تعلیمی نظام تشکیل دینے کی طرف جانا چاہیے۔ اور لطف کی بات دیکھیں، اس کی ذمہ داری بھی انھوں نے خود لی، اور بنارس ہندو یونیورسٹی کی شکل میں ملک کو ایک قابل فخر ادارہ دیا۔ انھوں نے آکسفورڈ اور کیمبرج جیسے اداروں میں پڑھنے والے نوجوانوں کو بی ایچ یو آنے کی ترغیب دی۔ انگریزی کے ایک عظیم اسکالر ہونے کے باوجود ، مہامنا بھارتی زبانوں کے مضبوط حامی تھے۔ ایک وقت تھا جب ملک کے نظام، عدالتوں میں فارسی اور انگریزی زبان کا غلبہ تھا۔ مالویہ جی نے بھی اس کے خلاف آواز اٹھائی تھی۔ ان کی کوششوں کی وجہ سے ناگری رسم الخط وجود میں آیا، بھارتی زبانوں کو عزت ملی۔ آج ملک کی نئی قومی تعلیمی پالیسی بھی مالویہ جی کی ان کوششوں کی عکاسی کرتی ہے۔ ہم نے بھارتی زبانوں میں اعلی تعلیم کا ایک نیا افتتاح کیا ہے۔ حکومت آج عدالت میں بھارتی زبانوں میں کام کی حوصلہ افزائی بھی کر رہی ہے۔ اس کام کے لیے ملک کو 75 سال انتظار کرنا پڑا۔

 

ساتھیو،

کسی بھی قوم کو بااختیار بنانے میں اس قوم کے ادارے بھی اتنے ہی اہم ہوتے ہیں۔ مالویہ جی نے اپنی زندگی میں بہت سے ادارے بنائے جہاں قومی شخصیات پیدا ہوئیں۔ بنارس ہندو یونیورسٹی کے بارے میں پوری دنیا جانتی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ مہامنا نے کئی اور ادارے بھی بنائے۔ ہریدوار میں رشی کل برہماچاریہ شرم ہو، پریاگ راج میں بھارتی بھون لائبریری ہو یا لاہور میں سناتن دھرم کالج کا قیام ہو، مالویہ جی نے ملک کی تعمیر کے کئی اداروں کو ملک کے نام وقف کیا۔ اگر ہم اس دور کا موازنہ کریں تو ہم دیکھتے ہیں کہ آج ایک بار پھر بھارت قوم کی تعمیر کے ایک سے ایک ادارے بنا رہا ہے۔ کوآپریٹو کی طاقت سے ملک کی ترقی کو تیز کرنے کے لیے ایک علیحدہ وزارت تعاون تشکیل دی گئی ہے۔ مرکزی حکومت نے بھارتی نظام طب کی ترقی کے لیے آیوش کی ایک علیحدہ وزارت قائم کی ہے۔ جام نگر میں ڈبلیو ایچ او گلوبل سینٹر فار ٹریڈیشنل میڈیسن کا سنگ بنیاد بھی رکھا گیا ہے۔ ہم نے باجرا پر تحقیق کے لیے انڈین انسٹی ٹیوٹ آف باجرا ریسرچ قائم کیا ہے۔ بھارت نے ماضی میں گلوبل بائیو فیول الائنس بھی تشکیل دیا ہے تاکہ توانائی کے شعبے میں عالمی مسائل پر غور کیا جاسکے۔ بین الاقوامی شمسی اتحاد ہو یا قدرتی آفات سے نمٹنے والے بنیادی ڈھانچے کا اتحاد، گلوبل ساؤتھ کے لیے ڈی سی اے سی کی تشکیل ہو، انڈیا-مڈل ایسٹ-یورپ اکنامک کوریڈور ہو، خلائی شعبے کے لیے ان اسپیس کی تخلیق ہو یا نیوی کے شعبے میں ساگر انیشی ایٹو ہو، بھارت آج قومی اور بین الاقوامی اہمیت کے بہت سے اداروں کا معمار بن رہا ہے۔ یہ ادارے، یہ ادارے نہ صرف اکیسویں صدی کے بھارت بلکہ اکیسویں صدی کی دنیا کو بھی ایک نئی سمت دینے کا کام کریں گے۔

ساتھیو،

مہامنا اور اٹل جی دونوں ایک ہی سوچ کے بہاؤ سے جڑے ہوئے تھے۔ اٹل جی نے مہامنا کے بارے میں کہا تھا کہ ’’جب کوئی شخص سرکاری مدد کے بغیر کچھ کرنے کے لیے باہر جائےگا تو مہامنا کی شخصیت، اس کا کام، اس کا راستہ چراغ کی طرح روشن کرے گا۔‘‘ آج ملک ان خوابوں کو پورا کرنے میں مصروف ہے جو مالویہ جی، اٹل جی، ملک کے ہر مجاہد آزادی نے دیکھے تھے۔ ہم نے اچھی حکمرانی کو اس کی بنیاد بنایا ہے۔ گڈ گورننس کا مطلب یہ ہے کہ جب حکمرانی کے مرکز میں طاقت، طاقت اور خدمت نہ ہو۔ جب پالیسیاں واضح ارادوں اور حساسیت کے ساتھ بنائی جاتی ہیں... اور جب ہر حقدار کو بغیر کسی امتیاز کے اپنا پورا حق مل جائے۔ گڈ گورننس کا یہ اصول آج ہماری حکومت کی پہچان بن چکا ہے۔

ہماری حکومت کی مسلسل کوشش رہی ہے کہ ملک کے شہریوں کو بنیادی سہولیات کے لیے ادھر ادھر بھاگنے کی ضرورت نہ پڑے۔ بلکہ آج حکومت ہر شہری کے پاس خود جا رہی ہے اور اسے ہر سہولت فراہم کر رہی ہے۔ اور اب ہماری کوشش ہے کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ اس طرح کی ہر سہولت پر 100 فیصد عمل درآمد ہو۔ اس کے لیے ملک بھر میں وکاس بھارت سنکلپ یاترا نکالی جا رہی ہے۔ آپ نے یہ بھی دیکھا ہوگا کہ مودی کی گارنٹی والی گاڑیاں ملک کے گاؤوں اور شہروں تک پہنچ رہی ہیں۔ فائدہ اٹھانے والوں کو موقع پر ہی کئی اسکیموں کا فائدہ مل رہا ہے۔ میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں. آج مرکزی حکومت ہر غریب کو 5 لاکھ روپے تک کے مفت علاج کے لیے آیوشمان کارڈ دیتی ہے۔ یہ کارڈ گزشتہ برسوں میں کروڑوں غریب لوگوں کو دیئے گئے تھے۔ لیکن اس کے باوجود کئی علاقوں میں بیداری کی کمی کی وجہ سے یہ آیوشمان کارڈ غریبوں تک نہیں پہنچ سکے۔ اب صرف 40 دنوں میں ملک میں ایک کروڑ سے زیادہ نئے آیوشمان کارڈ بنائے گئے ہیں، ان کی تلاش کی گئی اور انھیں دیا گیا ہے۔ کسی کو نہیں چھوڑا گیا... کوئی پیچھے نہیں رہا... سب کو ایک ساتھ ہونا چاہیے، سب کو ترقی ملنی چاہیے... یہ اچھی حکمرانی ہے، یہ اچھی حکمرانی ہے۔

 

 

ساتھیو،

گڈ گورننس کا ایک اور پہلو ایمانداری اور شفافیت ہے۔ ہمارے ملک میں یہ تاثر تھا کہ حکومتیں بڑے گھوٹالوں اور بدعنوانی کے بغیر نہیں چل سکتیں۔ 2014 سے پہلے ہم لاکھوں کروڑ روپے کے گھوٹالوں کی باتیں سنتے تھے۔ لیکن ہماری حکومت، اس کی گڈ گورننس نے بھی ان اندیشوں پر مبنی تصورات کو توڑ دیا ہے۔ آج لاکھوں کروڑ روپے کی غریبوں کی فلاح و بہبود کی اسکیموں کا چرچا ہے۔ ہم غریبوں کو مفت راشن کی اسکیم پر چار لاکھ کروڑ روپے خرچ کر رہے ہیں۔ ہماری حکومت غریبوں کو پکے گھر فراہم کرنے کے لیے بھی 4 لاکھ کروڑ روپے خرچ کر رہی ہے۔ ہر گھر کو نل کا پانی فراہم کرنے کے لیے 3  لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کیے جارہے ہیں۔ ایماندار ٹیکس دہندگان کی ایک ایک پائی عوامی مفاد اور قومی مفاد میں خرچ کی جانی چاہیے۔ یہ اچھی حکمرانی ہے۔

اور دوستو،

جب اس طرح ایمانداری سے  کام کیا جاتا ہے، پالیسیاں بنائی جاتی ہیں تو اس کے نتائج بھی سامنے آتے ہیں۔ اس گڈ گورننس کے نتیجے میں ہماری حکومت کے صرف 5 سالوں میں 13 کروڑ لوگ غربت سے باہر آئے ہیں۔

 

ساتھیو،

حساسیت کے بغیر اچھی حکمرانی کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔ ہمارے پاس 110  سے زیادہ اضلاع تھے جو پسماندہ ہونے کی بنا پر اپنے حال پر چھوڑ دیئے گئے تھے۔ کہا گیا تھا کہ چونکہ یہ 110 اضلاع پسماندہ ہیں اس لیے ملک بھی پسماندہ رہے گا۔ جب کسی افسر کو سزا کی پوسٹنگ دینی پڑتی تھی تو اسے ان اضلاع میں بھیج دیا جاتا تھا۔ یہ فرض کیا گیا کہ ان ١١٠ اضلاع میں کچھ بھی تبدیل نہیں ہوسکتا ہے۔ اس سوچ سے نہ تو یہ اضلاع آگے بڑھ پاتے اور نہ ہی ملک ترقی کر پاتا۔ یہی وجہ ہے کہ ہماری حکومت نے ان 110 اضلاع کی نشاندہی پر امنگ اضلاع کے طور پر کی ہے۔ ہم نے مشن موڈ پر ان اضلاع کی ترقی پر توجہ مرکوز کی۔ آج، یہ پر امنگ اضلاع بہت سے ترقیاتی پیرامیٹرز پر دوسرے اضلاع کے مقابلے میں کہیں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ اس جذبے کو آگے بڑھاتے ہوئے آج ہم امپریشنل بلاکس پروگرام پر کام کر رہے ہیں۔

ساتھیو،

جب سوچ اور نقطہ نظر تبدیل ہوتا ہے، تو نتائج بھی تبدیل ہوتے ہیں۔ کئی دہائیوں تک ہمارے سرحدی گاؤوں کو آخری گاؤں سمجھا جاتا تھا۔ ہم نے انھیں ملک کا پہلا گاؤں ہونے کا اعتماد دیا۔ ہم نے سرحدی گاؤوں میں وائبرینٹ ولیج اسکیم شروع کی۔ آج سرکاری افسران اور وزراء وہاں جا رہے ہیں، لوگوں سے مل رہے ہیں۔ میں نے اپنی کابینہ کے وزراء کے لیے یہ لازمی کر دیا تھا کہ وہ اس گاؤں میں رات کو آرام کریں، جسے اب تک آخری گاؤں کہا جاتا تھا، جسے میں پہلا گاؤں کہتا ہوں۔ کچھ 17-17 ہزار فٹ کی بلندی پر گئے۔

آج حکومت کی اسکیموں کے فوائد تیزی سے وہاں پہنچ رہے ہیں۔ اگر یہ اچھی حکمرانی نہیں ہے تو پھر یہ کیا ہے؟ آج ملک میں کوئی بھی المناک حادثہ یا آفت آتی ہے تو حکومت تیزی سے راحت اور بچاؤ میں مصروف ہوجاتی ہے۔ ہم نے یہ کورونا کے دور میں دیکھا ہے، ہم نے یہ یوکرین جنگ کے دوران دیکھا ہے۔ ملک دنیا میں جہاں بھی مشکل ہے اپنے شہریوں کو بچانے کے لیے جنگی بنیادوں پر کام کرتا ہے۔ میں گڈ گورننس کی ایسی کئی مثالیں پیش کر سکتا ہوں۔ گورننس میں یہ تبدیلی اب معاشرے کی سوچ کو بھی بدل رہی ہے۔ لہٰذا آج بھارت میں عوام اور حکومت کے درمیان اعتماد ایک نئی بلندی پر ہے۔ یہ اعتماد ملک کے اعتماد میں ظاہر ہوتا ہے۔ اور یہ خود اعتمادی آزادی کے امرت کل میں ایک ترقی یافتہ بھارت کی تعمیر کی توانائی بن رہی ہے۔

 

ساتھیو،

آزادی کے امرت کال میں ہمیں مہامنا اور اٹل جی کے نظریات کو سنگ بنیاد سمجھ کر ترقی یافتہ بھارت کے خواب کے لیے کام کرنا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ملک کا ہر شہری عزم کے ساتھ کامیابی کے اس راستے پر اپنا بھرپور حصہ ڈالے گا۔ اسی خواہش کے ساتھ میں ایک بار پھر مہامنا کے قدموں میں اپنا سرجھکاتے ہوئے اپنی بات ختم کرتا ہوں۔ آپ کا بے حد شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%

Media Coverage

India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 23 اپریل 2024
April 23, 2024

Taking the message of Development and Culture under the leadership of PM Modi