تقریباً 1.48 لاکھ کروڑ روپے مالیت کے تیل اور گیس کے متعدد پروجیکٹوں کو قوم کو وقف کیا اور سنگ بنیاد رکھا
بہار میں 13400 کروڑ روپے سے زیادہ مالیت کے کئی ترقیاتی پروجیکٹوں کو قوم کو وقف کیا اور سنگ بنیاد رکھا
برونی میں ہندوستان ارورک اینڈ رسائن لمیٹڈ (ایچ یو آر ایل) کھاد پلانٹ کا افتتاح کیا
تقریباً 3917 کروڑ روپے مالیت کے کئی ریلوے پروجیکٹوں کا افتتاح کیا اور سنگ بنیاد رکھا
میں ‘بھارت پشودھن’ کوقوم کے نام وقف کیا - ملک میں مویشیوں کے لیے ایک ڈیجیٹل ڈیٹا بیس
‘سال1962 فارمرز ایپ’ کا آغاز
‘‘بہار، ڈبل انجن والی سرکار کی طاقت کی وجہ سے جوش و اعتماد سے لبریز ہے’’
‘‘بہار، وِکست بنے گا تو ہندوستان بھی وِکست ہو جائے گا’’
‘‘تاریخ اس بات کا ثبوت ہے کہ جب بہار اور مشرقی ہندوستان خوشحال رہے ہیں، تو ہندوستان بااختیار رہا ہے’’
‘‘حقیقی سماجی انصاف ‘سنتشٹی کرن’ سے حاصل ہوتا ہے، ‘تشٹی کرن’ سے نہیں۔ حقیقی سماجی انصاف سیچوریشن سے حاصل ہوتا ہے’’
‘‘ڈبل انجن والی سرکار کی دوہری کوششوں سے بہار یقینی طور پر وِکسِت ہوگا’’

بہار کے گورنر جناب راجندر ارلیکر جی، وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار جی، میرے کابینہ کے ساتھی گری راج سنگھ جی، ہردیپ سنگھ پوری جی، نائب وزیر اعلیٰ وجے سنہا جی، سمراٹ چودھری جی، اسٹیج پر موجود دیگر تمام معززین اور بیگوسرائے سے آئے میرے پرجوش پیارے بھائیوں اور بہنو۔

میں جے منگلا گڑھ مندر اور نولکھا مندر میں موجود دیوتاؤں کو سلام عقیدت پیش کرتا ہوں۔ میں آج ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے لیے ایک ترقی یافتہ بہار کی تعمیر کے عزم کے ساتھ بیگو سرائے آیا ہوں۔ یہ میری خوش قسمتی ہے کہ مجھے آپ سب کو اتنی بڑی تعداد میں دیکھنے کا شرف حاصل ہوا۔

 

ساتھیو،

بیگوسرائے کی یہ سرزمین باصلاحیت نوجوانوں کی سرزمین ہے۔ اس زمین نے ہمیشہ ملک کے کسانوں اور مزدوروں دونوں کو مضبوط کیا ہے۔ آج اس سرزمین کی پرانی شان پھر سے لوٹ رہی ہے۔ آج یہاں سے بہار سمیت پورے ملک کے لیے 1 لاکھ 60 ہزار کروڑ روپے اس سے بھی زیادہ کے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد اور آغاز کیا گیا ہے، ڈیڑھ لاکھ کروڑ سے بھی زیادہ۔ پہلے اس طرح کے پروگرام دہلی کے وگیان بھون میں ہوتے تھے، لیکن آج مودی دہلی کو بیگوسرائے لے آیا ہے۔ اور ان اسکیموں میں تقریباً 30 ہزار کروڑ روپے کے پروجیکٹ صرف میرے بہار کے ہیں۔ حکومت کی طرف سے ایک ہی پروگرام میں اتنی بڑی سرمایہ کاری ظاہر کرتی ہے کہ ہندوستان کی صلاحیت کتنی بڑھ رہی ہے۔ اس سے یہاں بہار کے نوجوانوں کے لیے روزگار کے کئی نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ آج کے یہ منصوبے ہندوستان کو دنیا کی تیسری بڑی اقتصادی سپر پاور بنانے کا ذریعہ بنیں گے۔ آپ رُکیے بھائی، بہت ہوگیا آپ کا پیار، مجھے منظور ہے، آپ رُکیے، آپ بیٹھئے، آپ کرسی سے نیچے آجائیں، آپ سے گزارش ہے، آپ بیٹھیں... ہاں۔ آپ بیٹھ جایئے، وہ کرسی پر بیٹھ جایئے آرام سے، تھک جائیں گے۔ آج کے یہ پروجیکٹ بہار میں سہولت اور خوشحالی کی راہ ہموار کریں گے۔ آج بہار کو نئی ریل خدمات حاصل ہوئی ہیں ۔ ایسے ہی کام ہیں جن کی وجہ سے آج ملک پورے وثوق سے کہہ رہا ہے، ہر بچہ کہہ رہا ہے، گاؤں بھی کہہ رہا ہے، شہر بھی کہہ رہا ہے- اب کی بار… 400 پار!، اب کی بار… 400پار!، ا ب کی بار...400 برابر! این ڈی اے سرکار... 400 پار!

ساتھیو،

2014 میں جب آپ نے مجھے این ڈی اے کی خدمت کا موقع دیا تو میں کہتا تھا کہ مشرقی ہندوستان کی تیز رفتار ترقی ہماری ترجیح ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ جب بھی بہار اور مشرقی ہندوستان خوشحال ہوئے ہیں، ہندوستان بھی مضبوط رہا ہے۔ جب بہار میں حالات خراب ہوئے تو اس کا ملک پر بھی بہت برا اثر پڑا۔ اس لیے میں بیگوسرائے سے پورے بہار کے لوگوں سے کہتا ہوں کہ بہار کی ترقی ہوگی تو ملک بھی ترقی کرے گا۔ بہار کے میرے بھائیوں اور بہنو، آپ مجھے اچھی طرح جانتے ہیں، اور جب میں آپ کے درمیان آیا ہوں، میں دوبارہ کہنا چاہتا ہوں - یہ کوئی وعدہ نہیں ہے - یہ ایک عزم ہے، یہ ایک مشن ہے۔ آج بہار اور ملک کو جو پروجیکٹ ملے ہیں وہ اس سمت میں ایک بڑا قدم ہے۔ ان میں سے زیادہ تر کا تعلق پٹرولیم سے ہے، کھاد سے متعلق ہے، ریلوے سے متعلق ہے۔ توانائی، کھاد اور کنکٹیویٹی، یہی تو ترقی کی بنیاد ہیں۔ زراعت ہو یا صنعت، سب کچھ ان پر منحصر ہے۔ اور جب ان پر کام تیز رفتاری سے ہوتا ہے تو فطری بات ہے کہ روزگار کے مواقع بھی بڑھتے ہیں اور روزگار بھی ملتا ہے۔ آپ یاد کیجئے، میں نے بروننی میں کھاد بنانے والی فیکٹری کو دوبارہ شروع کرنے کی گارنٹی دی تھی جو بند تھی۔ آپ کے آشیرواد سے مودی نے اس گارنٹی کو پورا کیا۔ یہ بہار سمیت پورے ملک کے کسانوں کے لیے بہت بڑا کام رہا ہے۔ پرانی حکومتوں کی بے حسی کی وجہ سے برونی ، سندھری، گورکھپور، راما گنڈم میں فیکٹریاں بند پڑی تھیں، مشینیں سڑ رہی تھیں۔ آج یہ تمام کارخانے یوریا میں ہندوستان کی خود انحصاری کا فخر بن رہے ہیں۔ اسی لیے ملک کہتا ہے- مودی کی گارنٹی یعنی گارنٹی پورا ہونے کی گارنٹی۔ مودی کی گارنٹی یعنی گارنٹی جے پورا ہوئے چھے!

 

ساتھیو،

آج برونی ریفائنری کی صلاحیت بڑھانے کا کام شروع ہو رہا ہے۔ اس کی تعمیر کے دوران ہی ہزاروں مزدوروں کو مہینوں مسلسل روزگار ملا۔ اس ریفائنری سے بہار میں صنعتی ترقی کو نئی توانائی ملے گی اور ہندوستان کو آتم نربھر بنانے میں مدد ملے گی۔ مجھے آپ کو یہ بتاتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ گزشتہ 10 برسوں میں، بہار کو پٹرولیم اور قدرتی گیس سے متعلق 65 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کے پروجیکٹ ملے ہیں، جن میں سے کئی مکمل ہو چکے ہیں۔ بہار کے کونے کونے تک گیس پائپ لائنوں کا جال پہنچنا بہنوں کو سستی گیس فراہم کرنے میں مدد کر رہا ہے۔ اس سے یہاں صنعتیں لگانے میں آسانی ہو رہی ہے۔

ساتھیو،

آج یہاں ہم خود انحصار ہندوستان سے جڑے ایک اور تاریخی لمحے کے گواہ بن گئے ہیں۔ کرناٹک میں کے جی بیسن کے تیل کے کنوؤں سے تیل کی پیداوار شروع ہوگئی ہے۔ اس سے ہمارا بیرون ملک سے خام تیل کی درآمد پر انحصار کم ہو جائے گا۔

ساتھیو،

قومی مفاد اور عوامی مفاد سے سرشار مضبوط حکومت ایسے فیصلے کرتی ہے۔ خاندانی مفادات اور ووٹ بینک سے جڑی حکومتوں کی وجہ سے بہار نے بہت نقصان اٹھایا ہے۔ اگر 2005 سے پہلے کے حالات ہوتے تو بہار میں ہزاروں کروڑ کے ایسے پروجیکٹوں کا اعلان کرنے سے پہلے سو بار سوچنا پڑتا۔ آپ مجھ سے زیادہ جانتے ہیں کہ سڑکوں، بجلی، پانی اور ریلوے کا کیا حال تھا۔ پورا بہار جانتا ہے کہ 2014 سے پہلے کے 10 سالوں میں ریلوے کے نام پر ریلوے کے وسائل کو کس طرح لوٹا گیا۔ لیکن دیکھیں آج پوری دنیا میں ہندوستانی ریلوے کی جدید کاری کا چرچا ہو رہا ہے۔ ہندوستانی ریلوے کو تیزی سے برقی بنایا جا رہا ہے۔ ہمارے ریلوے سٹیشن بھی ہوائی اڈوں جیسی سہولیات سے آراستہ ہو رہے ہیں۔

 

ساتھیو،

بہار نے کئی دہائیوں سے اقربا پروری کا نقصان دیکھا ہے اور اقربا پروری کا خمیازہ بھگتنا پڑا ہے۔ خاندانی اور سماجی انصاف ایک دوسرے کے متضاد ہیں۔ اقربا پروری ٹیلنٹ کا سب سے بڑا دشمن ہے، خاص کر نوجوانوں کا۔ یہ وہ بہار ہے، جس میں بھارت رتن کرپوری ٹھاکر جی کی بھرپور میراث ہے۔ نتیش جی کی قیادت میں این ڈی اے حکومت یہاں اس وراثت کو آگے بڑھا رہی ہے۔ دوسری طرف، آر جے ڈی-کانگریس کی انتہائی خاندانی برائی ہے۔ آر جے ڈی-کانگریس کے لوگ اپنے اقربا پروری اور بدعنوانی کا جواز پیش کرنے کے لیے دلتوں، محروم اور پسماندہ لوگوں کو اپنی ڈھال کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ یہ سماجی انصاف نہیں بلکہ معاشرے سے غداری ہے۔ یہ سماجی انصاف سے انکار اور معاشرے کے ساتھ غداری ہے۔ ورنہ کیا وجہ ہے کہ صرف ایک خاندان کو بااختیار بنایا گیا؟ اور معاشرے کے باقی گھرانے پیچھے رہ گئے؟ ملک نے یہ بھی دیکھا ہے کہ کس طرح ایک خاندان کے لیے نوکریوں کے نام پر نوجوانوں کی زمینوں پر قبضہ کیا گیا۔

ساتھیو،

حقیقی سماجی انصاف تکمیل سے آتا ہے۔ حقیقی سماجی انصاف اطمینان سے حاصل ہوتا ہے، منھ بھرائی سے نہیں۔ مودی اس قسم کے سماجی انصاف اور اس قسم کے سیکولرازم میں یقین رکھتے ہیں۔ جب مفت راشن ہر مستحق تک پہنچ جائے، جب ہر غریب مستحق کو مستقل مکان ملے، جب ہر بہن کو گھر میں گیس، پانی کا نل، بیت الخلا ملے، جب غریب سے غریب کو بھی اچھا اور مفت علاج ملے، جب ہر ایک کی سیر ہو تب ہی سمان ہو۔ کسان فائدہ اٹھانے والے کے بینک اکاؤنٹ میں ندھی پہنچ جاتی ہے۔ اور یہی حقیقی سماجی انصاف ہے۔ پچھلے 10 سالوں میں جتنے بھی خاندانوں تک مودی کی ضمانت پہنچی ہے، ان میں میرا خاندان سب سے زیادہ دلت، پسماندہ اور انتہائی پسماندہ ہے۔

 

ساتھیو،

ہمارے لیے سماجی انصاف خواتین کی طاقت کو طاقت دینے کے بارے میں ہے۔ ایک وجہ ہے کہ گزشتہ 10 برسوں میں میری مائیں اور بہنیں اتنی بڑی تعداد میں آشیرواد دینے آئی ہیں، اس کی وجہ ہے۔ ہم نے 1 کروڑ بہنوں کو لکھ پتی دیدی بنایا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ بہار کی بھی لاکھوں بہنیں ہیں، جو اب لکھ پتی دیدی بن گئی ہیں۔ اور اب مودی نے 3 کروڑ بہنیں بنانے کی گارنٹی دی ہے، سنو اعداد و شمار، صرف 3 کروڑ بہنوں کو لکھپتی دیدی کے طور پر یاد رکھیں۔ حال ہی میں ہم نے بجلی کے بل کو صفر تک کم کرنے اور بجلی سے پیسے کمانے کا منصوبہ بھی شروع کیا ہے۔ پی ایم سوریا گھر - مفت بجلی اسکیم۔ بہار کے کئی خاندان بھی اس سے مستفید ہونے والے ہیں۔ بہار کی این ڈی اے حکومت بھی بہار کے نوجوانوں، کسانوں، مزدوروں، خواتین کے لیے مسلسل کام کر رہی ہے۔ ڈبل انجن کی دوہری کوششوں سے بہار ترقی کرتا رہے گا۔ آج ہم اتنی بڑی ترقی کا جشن منا رہے ہیں، اور آپ اتنی بڑی تعداد میں ترقی کے راستے کو مضبوط کر رہے ہیں، میں آپ کا شکر گزار ہوں۔ ایک بار پھر، میں آپ سب کو ہزاروں کروڑ کے ان ترقیاتی منصوبوں کے لیے مبارکباد دیتا ہوں۔ اتنی بڑی تعداد میں مائیں بہنیں آئی ہیں، میں انہیں خاص طور پر سلام پیش کرتا ہوں۔ میرے ساتھ بولیے-

بھارت ماتا  کی جے!

دونوں ہاتھ اوپر کرکے پوری قوت سے بولیے -

بھارت ماتا  کی جے!

بھارت ماتا  کی جے!

بھارت ماتا  کی جے!

بھارت ماتا  کی جے!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India to complete largest defence export deal; BrahMos missiles set to reach Philippines

Media Coverage

India to complete largest defence export deal; BrahMos missiles set to reach Philippines
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Amroha is a witness to Shri Krishna's Shricharan
Amroha is the place that has given us India's Top performer in the Cricket World Cup, Mohammed Shami
Despite being close to Delhi NCR, Amroha and it's garment industry couldn't derive the benefits for several decades
In the last decade we have fulfilled the vision of Babasaheb Ambedkar, Jyotiba Phule & Chaudhary Charan Singh in enabling developmental benefits to all
Our government enforced the ban of 'Triple Talaq' truly empowering our Muslim Sisters
People will not forget the 'Gunda Raj' before the advent of the BJP government in UP

Praising cricketer Mohammed Shami, PM Modi said, "Amroha is the place that has given us India's Top performer in the Cricket World Cup, Mohammed Shami." He added that Mohammed Shami has also received the Arjuna Award. He said that for the same there is also going to be a stadium built for the youth of Amroha.

Speaking on the constant state of underdevelopment facilitated by the I.N.D.I alliance, PM Modi said, "Where BJP possesses the vision to make India and it's villages developed the I.N.D.I alliance aims to keep the villages underdeveloped." He added, "Despite being close to Delhi NCR, Amroha and its garment industry couldn't derive the benefits for several decades." He added that today UP possesses modern airports facilitating robust connectivity.

Lamenting previous governments of betraying the trust of SC-ST-OBC, PM Modi said, "Previous governments have only betrayed the trust of SC-ST-OBC." He added, "In the last decade we have fulfilled the dream and vision of Babasaheb Ambedkar, Jyotiba Phule & Chaudhary Charan Singh in enabling last-mile reach of developmental benefits to all." He added, "Our government enforced the ban of 'Triple Talaq' truly empowering our Muslim Sisters."

Elaborating on how Congress-SP-BSP have ignored the Kisan of Amroha, PM Modi said, "Congress-SP-BSP have ignored the Kisan of Amroha." He added that through various initiatives like PM-KISAN and a record rise in MSPs we have pioneered the prosperity and empowerment of all farmers, especially the sugarcane farmers through 'Sugar Mills'. He added that today UP has easy access to Urea and there is 'Mango Pack House' to enable the processing of local mangoes.

Highlighting the I.N.D.I alliance's tendency on seeking votes on 'Corruption, Appeasement & Dyansty', PM Modi said, I.N.D.I alliance seeks Votes on 'Corruption, Appeasement & Dyansty'. He added, "I.N.D.I alliance only attacks 'Sanatana' and were also against the Pran-Pratishtha of Shri Ram. He said, "The politics of I.N.D.I alliance even made them go against the Tigri Mela of Amroha." He also said that when I prayed in Dwarka below the sea, Congress' Yuvraj said that there is nothing worth praying for under the sea and such is their tendency of insulting 'Sanatana'.

Speaking on the politics of appeasement, PM Modi said, "Politics of appeasement has always engulfed 'Western UP' in riots." He added, "People will not forget the 'Gunda Raj' before the advent of the BJP government in UP. He added, "The BJP government in UP has enabled the robust protection of our Mothers-Daughters-Sisters of UP."

In conclusion, PM Modi said that 26th April is the day of importance and an opportunity to discard the the bad policies of I.N.D.I alliance and to vote for the bright future of India. PM Modi thanked Amroha for the large turnout and sought their support and blessings for the BJP in the upcoming Lok Sabha elections.