کوآپریٹو مارکیٹنگ اور کوآپریٹو ایکسٹینشن اور ایڈوائزری سروسز پورٹل کے لیے ای-کامرس ویب سائٹ کے ای-پورٹل لانچ کیے گئے
’’تعاون کا جذبہ سب کی کوشش کا پیغام‘‘
’’کفایتی کھاد مہیا کرانا اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ گارنٹی کس طرح فراہم کی گئی ہے اور کسانوں کی زندگی کو بدلنے کے لیے بڑے پیمانے پر کن کوششوں کی ضرورت ہے‘‘
’’حکومت اور کوآپریٹوز مل کر ترقی یافتہ ہندوستان کے خواب کو دوہری طاقت فراہم کریں گے‘‘
’’یہ ضرورت ہے کہ کوآپریٹو سیکٹر شفافیت اور بدعنوانی سے پاک گورننس کا ماڈل بنے‘‘
وزیر اعظم نے کہا، ’کسان پیداواری تنظیم (ایف پی او) چھوٹے کسانوں کو مضبوط بنانے جا رہے ہیں، یہ چھوٹے کسانوں کو بازار میں بڑی طاقت بنانے کا ذریعہ ہیں‘
آج کیمیکل سے پاک قدرتی کھیتی حکومت کی ایک بنیادی ترجیح ہے‘‘

میرے کابینہ کے ساتھی جناب امت شاہ، نیشنل کوآپریٹو یونین کے صدر جناب دلیپ سنگھانی، ڈاکٹر چندرپال سنگھ یادو، ملک کے کونے کونے سے کوآپریٹو یونینوں کے تمام ممبران، ہمارے کسان بھائیوں اور بہنوں، دیگر معززین، خواتین اور حضرات، آپ سبھی کو 17 ویں انڈین کوآپریٹو مہاسمیلن پر بہت بہت مبارکباد۔ میں آپ سبھی کو اس کانفرنس میں خوش آمدید کہتا ہوں۔

ساتھیو،

آج ہمارا ملک ایک ترقی یافتہ اور خود کفیل بھارت کے ہدف پر کام کر رہا ہے۔ اور میں نے لال قلعہ سے کہا ہے کہ ہمارے ہر مقصد کو حاصل کرنے کے لیے ہر ایک کی کوشش ضروری ہے اور تعاون کا جذبہ بھی ہر ایک کی کوشش کا پیغام دیتا ہے۔ آج اگر ہم دنیا میں دودھ کی پیداوار میں پہلے نمبر پر ہیں تو اس میں ڈیری کوآپریٹوز کا بہت بڑا حصہ ہے۔ اگر بھارت دنیا کے سب سے بڑے چینی پیدا کرنے والے ممالک میں سے ایک ہے تو اس میں کوآپریٹو کا بھی بڑا حصہ ہے۔ ملک کے ایک بڑے حصے میں، کوآپریٹو چھوٹے کسانوں کے لیے ایک بہت بڑا سہارا بن گئے ہیں۔ آج ڈیری جیسے کوآپریٹو سیکٹر میں تقریبا 1 فیصد حصہ داری ہماری ماؤں اور بہنوں کی ہے۔ لہٰذا، جب ترقی یافتہ بھارت کے بڑے اہداف کی بات آئی، تو ہم نے کوآپریٹو کو ایک بڑی طاقت دینے کا فیصلہ کیا۔ پہلی بار، جسے امت بھائی نے تفصیل سے بیان کیا ہے، پہلی بار ہم نے کوآپریٹو کے لیے الگ وزارت بنائی ہے، الگ بجٹ کا اہتمام کیا ہے۔ آج کوآپریٹوز کو وہی سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں جو کارپوریٹ سیکٹر کو ملتی ہیں۔ کوآپریٹوز کی طاقت بڑھانے کے لیے ٹیکس کی شرحوں میں بھی کمی کی گئی ہے۔ کوآپریٹو سیکٹر سے متعلق مسائل جو برسوں سے زیر التوا تھے انہیں تیز رفتاری سے حل کیا جارہا ہے۔ ہماری حکومت نے کوآپریٹو بینکوں کو بھی مضبوط کیا ہے۔ کوآپریٹو بینکوں کے لیے نئی شاخیں کھولنے ، لوگوں کے گھروں تک پہنچنے اور بینکنگ خدمات فراہم کرنے کے لیے قواعد کو آسان بنایا گیا ہے۔

ساتھیو،

ہمارے کسان بھائی بہنوں کی اتنی بڑی تعداد اس پروگرام سے وابستہ ہے۔ آپ ان تبدیلیوں کا تجربہ کر رہے ہیں جو گزشتہ 9 برسوں میں کی گئی پالیسیوں اور فیصلوں میں کی گئی ہیں۔ یاد کیجیے، 2014 سے پہلے کسانوں کے کیا مطالبات تھے؟ کسان کہا کرتے تھے کہ انہیں حکومت کی طرف سے بہت کم مدد ملتی تھی۔ اور جو تھوڑی سی مدد بھی ملتی، وہ بھی بچولیوں کے کھاتے میں چلی جاتی تھی۔ ملک کے چھوٹے اور درمیانے درجے کے کسان سرکاری اسکیموں کے فوائد سے محروم رہتے تھے۔ گزشتہ 2014 برسوں میں یہ صورتحال مکمل طور پر بدل گئی ہے۔ آج کروڑوں چھوٹے کسانوں کو پی ایم کسان سمان ندھی مل رہی ہے۔ اور کوئی بچولیا نہیں، کوئی غلط فائدہ اٹھانے والا نہیں۔ پچھلے چار برسوں میں اس اسکیم کے تحت ڈھائی لاکھ کروڑ روپے دیئے گئے ہیں، آپ سبھی کوآپریٹو سیکٹر کی قیادت کرنے والے لوگ ہیں، مجھے امید ہے کہ آپ ان اعداد و شمار کو دیکھیں گے، ڈھائی لاکھ کروڑ روپے براہ راست کسانوں کے بینک کھاتوں میں بھیجے گئے ہیں۔ اگر میں اس رقم کا موازنہ کسی اور اعداد و شمار سے کروں تو آپ آسانی سے اس کا اندازہ لگا سکیں گے۔ اگر ہم 9 سے پہلے کے 2014 سال کے کل زرعی بجٹ کو شامل کریں تو 5 سال کا زرعی بجٹ 90 ہزار کروڑ سے کم تھا ، 90 ہزار کروڑ سے بھی کم تھا۔ یعنی ہم نے پورے ملک کے زرعی نظام پر خرچ کی گئی رقم سے تقریبا 90 گنا زیادہ رقم صرف ایک اسکیم یعنی پی ایم کسان سمان ندھی پر خرچ کی ہے۔

ساتھیو،

مرکز کی بی جے پی حکومت نے آپ کو گارنٹی دی ہے کہ دنیا میں مہنگی کھادوں اور کیمیکلز کا بوجھ کسانوں پر نہ پڑے۔ آج، کسان کو یوریا کے تھیلے، یوریا کے تھیلے 270 روپے فی تھیلے سے بھی کم قیمت پر مل رہے ہیں۔ یہی بیگ بنگلہ دیش میں 270 روپے، پاکستان میں 720 روپے اور چین میں 800 روپے میں دستیاب ہیں۔ اور بھائیو اور بہنو، امریکہ جیسے ترقی یافتہ ملک میں کسانوں کو اتنی ہی مقدار میں یوریا تین ہزار روپے سے زیادہ میں مل رہا ہے۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ بات  آپ کے گلے سے نیچے اتر رہی ہے۔ جب تک ہم اس فرق کو نہیں سمجھتے، اس کی ضمانت کیا ہے؟ اس سے پتہ چلتا ہے کہ کسان کی زندگی کو بدلنے کے لیے کتنی بڑی کوشش کی ضرورت ہے۔ مجموعی طور پر گزشتہ 2100 برسوں میں میں صرف کھاد سبسڈی کی بات کر رہا ہوں، صرف سبسڈی کھاد کی بات کر رہا ہوں۔ بی جے پی حکومت نے 10 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کیے ہیں۔ اس سے بڑی ضمانت کیا ہے بھائی؟

ساتھیو،

ہماری حکومت شروع سے ہی اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بہت سنجیدہ رہی ہے کہ کسانوں کو ان کی فصلوں کی مناسب قیمت ملے۔ گزشتہ 9 برسوں میں ایم ایس پی بڑھا کر کسانوں کو 15 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کی رقم دی گئی ہے۔ یعنی ہر سال، ہر سال مرکزی حکومت زراعت اور کسانوں پر ساڑھے چھ لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کر رہی ہے۔ جس کا مطلب ہے کہ ہر سال اوسطا حکومت ہر کسان کو کسی نہ کسی شکل میں 6 ہزار روپے دے رہی ہے۔ یعنی بی جے پی حکومت کے تحت کسانوں کو ہر سال مختلف طریقوں سے 50 ہزار روپے ملنے کی گارنٹی ہے۔ یہی مودی کی ضمانت ہے۔ اور میں آپ کو وہ بتا رہا ہوں جو میں نے کیا ہے، وعدے نہیں بتا رہا ہوں۔

ساتھیو،

کسان دوست نقطہ نظر کو جاری رکھتے ہوئے کچھ دن پہلے ایک اور بڑا فیصلہ لیا گیا ہے۔ مرکزی حکومت نے کسانوں کے لیے 3 لاکھ 70 ہزار کروڑ روپے کے پیکیج کا اعلان کیا ہے۔ یہی نہیں گنے کے کاشتکاروں کے لیے مناسب اور منافع بخش قیمت اب ریکارڈ 315 روپے فی کوئنٹل تک بڑھا دی گئی ہے۔ اس سے گنے کے پانچ کروڑ سے زیادہ کسانوں اور شوگر ملوں میں کام کرنے والے لاکھوں مزدوروں کو براہ راست فائدہ ہوگا۔

ساتھیو،

امرت کال میں ملک کے گاؤوں اور کسانوں کی استعداد کار بڑھانے میں ملک کے کوآپریٹو سیکٹر کا کردار بہت بڑا ہونے جا رہا ہے۔ حکومت اور کوآپریٹو مل کر ترقی یافتہ بھارت، خود کفیل بھارت کے عزم کو دوگنی طاقت دیں گے۔ آپ دیکھیں، حکومت نے ڈیجیٹل انڈیا کے ساتھ شفافیت میں اضافہ کیا ہے، جس سے ہر فائدہ اٹھانے والے کو براہ راست فائدہ پہنچ رہا ہے۔ آج ملک کا غریب ترین طبقہ بھی یہ سمجھتا ہے کہ اعلیٰ سطح سے کرپشن اور اقربا پروری اب ختم ہو چکی ہے۔ اب جبکہ کوآپریٹو کو اس قدر فروغ دیا جا رہا ہے تو یہ ضروری ہے کہ عام لوگ، ہمارے کسان، ہمارے مویشی پالنے والے بھی روزمرہ کی زندگی میں ان چیزوں کا تجربہ کریں اور وہ بھی یہی بات کہیں۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ کوآپریٹو سیکٹر شفافیت اور بدعنوانی سے پاک گورننس کا نمونہ بنے۔ کوآپریٹو میں ملک کے عام شہری کے اعتماد کو مزید مستحکم کیا جانا چاہیے۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ کوآپریٹوز میں جتنا ممکن ہو ڈیجیٹل سسٹم کو فروغ دیا جائے۔ ہمیں نقد لین دین پر انحصار ختم کرنا ہوگا۔ اس کے لیے اگر آپ مہم چلا کر کوشش کریں اور کوآپریٹو سیکٹر کے آپ سبھی لوگوں کو، میں نے آپ کے لیے بہت اچھا کام کیا ہے، میں نے ایک وزارت بنائی ہے۔ اب آپ میرے لیے ایک بڑا کام کردیں۔ ڈیجیٹل، کیش لیس، مکمل شفافیت کی طرف جانا۔ اگر ہم سب مل کر کام کریں تو یقینی طور پر ہمیں تیزی سے کامیابی ملے گی۔ آج بھارت اپنے ڈیجیٹل لین دین کے لیے دنیا میں پہچانا جاتا ہے۔ ایسے میں کوآپریٹو سوسائٹیوں، کوآپریٹو بینکوں کو بھی اب سب سے آگے رہنا ہوگا۔ اس سے شفافیت کے ساتھ ساتھ مارکیٹ میں آپ کی کارکردگی میں بھی اضافہ ہوگا اور بہتر مسابقت بھی ممکن ہوگی۔

ساتھیو،

پرائمری سطح پر سب سے اہم کوآپریٹو سوسائٹی، یعنی پی اے سی ایس، اب شفافیت اور جدیدیت کا نمونہ بن جائے گی۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ اب تک 60 ہزار سے زائد پیک کمپیوٹرائزڈ ہو چکے ہیں اور میں اس پر آپ کو مبارکباد دیتا ہوں۔ لیکن یہ بہت ضروری ہے کہ کوآپریٹو بھی ٹیکنالوجی کے استعمال پر زور دیتے ہوئے اپنے کام کو بہتر بنائیں۔ جب ہر سطح پر کوآپریٹوز کور بینکنگ جیسے نظام کو اپنائیں گے، جب ممبران آن لائن لین دین کو سو فیصد قبول کریں گے، تو اس سے ملک کو بہت فائدہ ہوگا۔

ساتھیو،

آج آپ یہ بھی دیکھ رہے ہیں کہ بھارت کی برآمدی برآمدات مسلسل نئے ریکارڈ بنا رہی ہیں۔ آج پوری دنیا میں میک ان انڈیا کے چرچے بھی ہو رہے ہیں۔ ایسے میں آج حکومت اس شعبے میں اپنا حصہ بڑھانے کی کوشش کر رہی ہے۔ اس مقصد کے ساتھ آج ہم مینوفیکچرنگ سے متعلق کوآپریٹوز کی خصوصی طور پر حوصلہ افزائی کر رہے ہیں۔ اب ان کے لیے ٹیکس بھی بہت کم کر دیا گیا ہے۔ برآمدات بڑھانے میں کوآپریٹو سیکٹر بھی بڑا کردار ادا کر رہا ہے۔ ڈیری سیکٹر میں ہمارے کوآپریٹو بہت اچھا کام کر رہے ہیں۔ آج دودھ پاؤڈر، مکھن اور گھی بڑی مقدار میں برآمد کیا جا رہا ہے۔ اب شاید وہ شہد میں بھی داخل ہو رہے ہیں. ہمارے گاؤوں میں صلاحیت کی کوئی کمی نہیں ہے، لیکن ہمیں عزم کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔ آج آپ دیکھیں کہ بھارت کے موٹے اناج، باجرا، جو دنیا میں پہچانے جانے لگے ہیں۔ شری انا، کے بارے میں کافی گفتگوہو رہی ہے۔ اس کے لیے دنیا میں ایک نئی مارکیٹ بنائی جا رہی ہے۔ اور جب میں ابھی امریکہ گیا تھا، تو صدر جمہوریہ نے اپنے ذریعے منعقد کی گئی ضیافت میں شری انا کی قسم کے طور پر ان موٹے اناج رکھے تھے۔ حکومت ہند کی پہل کی وجہ سے اس سال پوری دنیا میں باجرے کے بین الاقوامی سال کے طور پر منایا جا رہا ہے۔ کیا آپ جیسے کوآپریٹو پارٹنر ملک کے اناج کو عالمی منڈی میں لے جانے کی کوشش نہیں کر سکتے؟ اور یہ چھوٹے کسانوں کو آمدنی کا ایک بڑا ذریعہ فراہم کرے گا۔ اس سے غذائیت سے بھرپور غذا کی ایک نئی روایت کا آغاز ہوگا۔ آپ کو اس سمت میں کوشش کرنی چاہیے اور حکومت کی کوششوں کو آگے بڑھانا چاہیے۔

ساتھیو،

گزشتہ برسوں میں ہم نے یہ ثابت کیا ہے کہ جب قوت ارادی ہوتی ہے تو سب سے بڑے چیلنج کو بھی چیلنج کیا جا سکتا ہے۔ جیسا کہ میں آپ سے گنے کی کوآپریٹو کے بارے میں بات کروں گا۔ ایک وقت تھا جب کسانوں کو گنے کی کم قیمت ملتی تھی اور پیسہ بھی کئی برسوں تک پھنسا رہتا تھا۔ گنے کی پیداوار زیادہ ہونے پر بھی کسان مشکل میں تھے اور اگر گنے کی پیداوار کم بھی تھی تو کسان کی مشکلات بڑھ گئیں۔ ایسے میں گنے کے کاشتکاروں کا کوآپریٹو پر سے بھروسہ اٹھ رہا تھا۔ ہم نے اس مسئلے کے مستقل حل پر توجہ مرکوز کی۔ ہم نے گنے کے کاشتکاروں کو پرانی ادائیگیوں کے لیے شوگر ملوں کو 20 ہزار کروڑ روپے کا پیکیج دیا۔ ہم نے گنے سے ایتھنول بنانے اور پٹرول میں ایتھنول ملانے پر زور دیا۔ آپ تصور کر سکتے ہیں کہ پچھلے 20 برسوں میں شوگر ملوں سے 9,70 کروڑ روپے کا ایتھنول خریدا گیا ہے۔ اس سے شوگر ملوں کو گنے کے کاشتکاروں کو بروقت ادائیگیاں کرنے میں مدد ملی ہے۔ اس سے پہلے گنے کی زیادہ قیمت ادا کرنے پر جو ٹیکس لگایا جاتا تھا اسے بھی ہماری حکومت نے ختم کر دیا ہے۔ ہم نے ٹیکس سے متعلق دہائیوں پرانے مسائل کو بھی حل کیا ہے۔ اس بجٹ میں کوآپریٹو شوگر ملوں کو پرانے دعووں کو نمٹانے کے لیے 10ہزار کروڑ روپے کی خصوصی امداد دی گئی ہے۔ یہ تمام کوششیں چینی کے شعبے میں مستقل تبدیلی لا رہی ہیں اور اس شعبے کی کوآپریٹوز کو مضبوط بنا رہی ہیں۔

ساتھیو،

ایک طرف ہمیں برآمدات میں اضافہ کرنا ہے تو دوسری طرف ہمیں درآمدات پر اپنا انحصار مسلسل کم کرنا ہے۔ ہم اکثر کہتے ہیں کہ بھارت اناج میں خود کفیل ہے۔ لیکن حقیقت کیا ہے، صرف گندم، دھان اور چینی میں خود کفیلی کافی نہیں ہے۔ جب ہم غذائی تحفظ کی بات کرتے ہیں تو یہ صرف آٹے اور چاول تک محدود نہیں ہے۔ میں آپ کو چند باتیں یاد دلانا چاہتا ہوں۔ خوردنی تیل، دالیں، فش فیڈ کی درآمد ہو، فوڈ سیکٹر میں پروسیسڈ اور دیگر مصنوعات کی درآمد ہو، اس پر ہم ہر سال چونک جائیں گے، میرے کسان بھائیوں اور بہنوں کو جگا ئیں، ہر سال ہم دو سے ڈھائی لاکھ کروڑ روپے خرچ کرتے ہیں، جو پیسہ بیرون ملک جاتا ہے۔ یعنی یہ پیسہ بیرون ملک بھیجنا پڑتا ہے۔ کیا یہ بھارت جیسے خوراک سے مالا مال ملک کے لیے صحیح ہے؟ اتنے بڑے امید افزا کوآپریٹو سیکٹر میں قیادت میرے سامنے بیٹھی ہے، اس لیے میں فطری طور پر آپ سے توقع کرتا ہوں کہ ہمیں انقلاب کی سمت میں آگے بڑھنا ہے۔ کیا یہ پیسہ بھارت کے کسانوں کی جیبوں میں جانا چاہیے یا نہیں؟ بیرون ملک کیوں جانا چاہیے؟

ساتھیو،

ہم سمجھ سکتے ہیں کہ ہمارے پاس تیل کے بڑے کنویں نہیں ہیں، ہمیں باہر سے پٹرول اور ڈیزل درآمد کرنا پڑتا ہے، یہ ہماری مجبوری ہے۔ لیکن خوردنی تیل میں خود کفالت ممکن ہے۔ آپ کو معلوم ہوگا کہ مرکزی حکومت نے اس کے لیے مشن موڈ میں کام کیا ہے، جیسے ایک مشن پام آئل شروع ہوا ہے۔ اس سے پامولین کی کاشت ہو، پامولین کا تیل دستیاب ہونا چاہیے۔ اسی طرح تلہن کی فصلوں کو فروغ دینے کے لیے بڑی تعداد میں اقدامات کیے جارہے ہیں۔ اگر ملک کے کوآپریٹو ادارے اس مشن کی باگ ڈور سنبھال لیں تو آپ دیکھیں گے کہ ہم کتنی جلد خوردنی تیل میں خود کفیل ہو جائیں گے۔ آپ کسانوں کو آگاہ کرنے کے لیے شجرکاری، ٹکنالوجی اور خریداری سے متعلق ہر طرح کی معلومات، ہر قسم کی سہولیات فراہم کرسکتے ہیں۔

ساتھیو،

مرکزی حکومت نے ماہی گیری کے شعبے کے لیے ایک اور بہت بڑی اسکیم شروع کی ہے۔ پی ایم متسیہ سمپدا یوجنا کی وجہ سے آج مچھلی کی پیداوار میں کافی پیش رفت ہو رہی ہے۔ ملک بھر میں جہاں کہیں بھی ندیاں اور چھوٹے تالاب ہیں، یہ اسکیم گاؤں والوں اور کسانوں کو آمدنی کے اضافی ذرائع فراہم کر رہی ہے۔ اس میں مقامی سطح پر فیڈ کی پیداوار کے لیے بھی مدد دی جارہی ہے۔ آج 25 ہزار سے زائد کوآپریٹو سوسائٹیاں ماہی گیری کے شعبے میں کام کر رہی ہیں۔ اس کی وجہ سے مچھلی کی پروسیسنگ، مچھلی کی ڈرائنگ اور مچھلی کا علاج، مچھلی ذخیرہ کرنے، مچھلی کی کیننگ، مچھلی کی نقل و حمل جیسے بہت سے کاموں کو آج منظم طریقے سے فروغ ملا ہے۔ اس سے ماہی گیروں کی زندگی کو بہتر بنانے اور روزگار پیدا کرنے میں مدد ملی ہے۔ پچھلے نو برسوں میں اندرون ملک ماہی گیری میں بھی دوگنا اضافہ ہوا ہے۔ اور جیسے کہ ہم نے تعاون کی ایک علیحدہ وزارت تشکیل دی ہے، ایک نئی طاقت ابھر کر سامنے آئی ہے۔ اسی طرح ایک دیرینہ مطالبہ تھا کہ ملک میں ماہی گیری کے لیے ایک علیحدہ وزارت بنائی جائے۔ ہم نے اس کے لیے علیحدہ بجٹ کا بھی انتظام کیا ہے اور اس علاقے کے نتائج پہلے ہی نظر آرہے ہیں۔ مجھے امید ہے کہ آپ سبھی آگے آئیں گے اور دیکھیں گے کہ کس طرح کوآپریٹو سیکٹر اس مہم کو مزید وسعت دے سکتا ہے۔ کوآپریٹو سیکٹر کو اپنے روایتی نقطہ نظر سے کچھ مختلف کرنا ہوگا۔ حکومت اپنی طرف سے ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ اب ماہی گیری جیسے کئی نئے شعبوں میں بھی پی اے سی ایس کا کردار بڑھ رہا ہے۔ ہم ملک بھر میں 2 لاکھ نئی کثیر المقاصد سوسائٹیاں بنانے کے ہدف پر کام کر رہے ہیں۔ اور جیسا کہ امت بھائی نے کہا، اب اگر ہم سبھی پنچایتوں میں جائیں گے، تو یہ تعداد اور بڑھ جائے گی۔ اس سے ان گاؤوں، پنچایتوں میں کوآپریٹو کی طاقت بھی مضبوط ہوگی جہاں فی الحال یہ نظام دستیاب نہیں ہے۔

ساتھیو،

گزشتہ برسوں میں ہم نے کسان پروڈیوسر ایسوسی ایشن (ایف پی او) کے قیام پر خصوصی زور دیا ہے۔ اس وقت ملک بھر میں 10 ہزار نئے ایف پی اوز کی تعمیر پر کام جاری ہے اور ان میں سے تقریبا 5 ہزار پہلے ہی تعمیر کیے جا چکے ہیں۔ یہ ایف پی او چھوٹے کسانوں کو بڑی طاقت دینے جا رہے ہیں۔ یہ چھوٹے کسانوں کو بازار میں ایک بڑی طاقت بنانے کا ذریعہ ہیں۔ بیج سے لے کر بازار تک، ایک چھوٹا سا کسان ہر نظام کو اپنے حق میں کیسے اٹھا سکتا ہے، وہ بازار کی طاقت کو کیسے چیلنج کر سکتا ہے، یہ ان کی مہم ہے۔ حکومت نے پی اے سی ایس کے ذریعے ایف پی او بنانے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ لہٰذا اس شعبے میں کوآپریٹو کے بے پناہ امکانات موجود ہیں۔

ساتھیو،

کوآپریٹو سیکٹر کسانوں کی آمدنی بڑھانے کے دیگر ذرائع پر بھی حکومت کی کوششوں کو تقویت دے سکتا ہے۔ شہد کی پیداوار ہو، نامیاتی خوراک کی پیداوار ہو، فارم میڈس پر سولر پینل لگا کر بجلی پیدا کرنے کی مہم ہو، مٹی کی جانچ ہو، کوآپریٹو سیکٹر کا تعاون بہت اہم ہے۔

ساتھیو،

آج کیمیکل سے پاک کاشتکاری، قدرتی کاشتکاری حکومت کی ترجیح ہے۔ اور میں صرف دہلی کی ان بیٹیوں کو ان کے دلوں کو جھنجھوڑنے کے لیے مبارکباد دیتا ہوں۔ دھرتی ماں چیخ رہی ہے اور کہہ رہی ہے کہ مجھے قتل نہ کرو۔ انہوں نے ناٹیہ منچل کے ذریعے ہمیں بہت اچھے طریقے سے جگانے کی کوشش کی ہے۔ میں چاہتا ہوں کہ ہر کوآپریٹو آرگنائزیشن ایسی ٹیم بنائے کہ ٹیم ہر گاؤں میں اس طرح پرفارم کرے کہ وہ لوگوں کو بیدار کرے۔ حال ہی میں ایک بہت بڑی اسکیم پی ایم پرانم کو منظوری دی گئی ہے۔ مقصد یہ ہے کہ زیادہ سے زیادہ کسان کیمیکل سے پاک کاشتکاری کو اپنائیں۔ اس کے تحت متبادل کھاد، نامیاتی کھاد کی پیداوار پر زور دیا جائے گا۔ اس سے مٹی کی حفاظت بھی ہوگی اور کسانوں کی لاگت بھی کم ہوگی۔ اس میں کوآپریٹو تنظیموں کا تعاون بہت اہم ہے۔ میں تمام کوآپریٹو تنظیموں پر زور دیتا ہوں کہ وہ اس مہم میں زیادہ سے زیادہ شامل ہوں۔ آپ فیصلہ کر سکتے ہیں کہ ہم اپنے ضلع کے 5 گاؤوں میں کیمیکل فری فارمنگ کے لیے 5 فیصد کام کریں گے، ہم اس بات کو یقینی بنا سکتے ہیں کہ 5 گاؤوں اور 5 گاؤوں میں کسی بھی کھیت میں ایک گرام کیمیکل کا استعمال نہ ہو۔ اس سے پورے ضلع میں اس کے بارے میں بیداری بڑھے گی، ہر ایک کی کوششوں میں اضافہ ہوگا۔

ساتھیو،

ایک اور مشن ہے جو کیمیکل فری فارمنگ اور اضافی آمدنی دونوں کو یقینی بنا رہا ہے۔ یہ گوبردھن یوجنا ہے۔ اس کے تحت ملک بھر میں کچرے سے دولت پیدا کرنے کا کام کیا جا رہا ہے۔ گائے کے گوبر، فضلے سے بجلی اور نامیاتی کھاد بنانے کا یہ ایک بہترین ذریعہ بنتا جا رہا ہے۔ حکومت آج اس طرح کے پلانٹس کا ایک بہت بڑا نیٹ ورک بنا رہی ہے۔ کئی بڑی کمپنیوں نے ملک میں 50 سے زیادہ بائیو گیس پلانٹس تعمیر کیے ہیں۔ گوبردھن پلانٹس کے لیے کوآپریٹوز کو بھی آگے آنے کی ضرورت ہے۔ اس سے نہ صرف مویشی مالکان کو فائدہ ہوگا بلکہ جو جانور سڑکوں پر رہ گئے ہیں ان کا بھی صحیح استعمال ہوگا۔

ساتھیو،

آپ سبھی ڈیری سیکٹر میں، مویشی پروری کے شعبے میں بہت وسیع پیمانے پر کام کرتے ہیں۔ مویشی پالنے والوں کی ایک بڑی تعداد کوآپریٹو تحریک سے وابستہ ہے۔ آپ سبھی جانتے ہیں کہ کس طرح جانوروں کی بیماری مویشی مالک کو بڑی مصیبت میں ڈال سکتی ہے۔ ایک طویل عرصے سے فٹ اینڈ ماؤتھ بیماری، منہ پکا اور کھرپکا ہمارے جانوروں کے لیے بڑی پریشانی کا سبب رہے ہیں۔ ان بیماریوں کی وجہ سے مویشی پالنے والوں کو ہر سال ہزاروں کروڑ روپے کا نقصان ہوتا ہے۔ لہٰذا پہلی بار بھارت کی مرکزی حکومت نے اس کے لیے ملک بھر میں مفت ٹیکہ کاری مہم چلائی ہے۔ ہمیں مفت کوویڈ ویکسین یاد ہے، یہ جانوروں کے لیے اتنی ہی بڑی مفت ویکسین مہم ہے۔ اس کے تحت 24 کروڑ جانوروں کو ٹیکہ لگایا گیا ہے۔ لیکن ہم ابھی تک ایف ایم ڈی کو جڑ سے اکھاڑ نہیں سکے ہیں۔ ٹیکہ کاری مہم ہو یا جانوروں کا سراغ لگانا، کوآپریٹو کو آگے آنا چاہیے۔ ہمیں یاد رکھنا ہوگا کہ ڈیری سیکٹر میں مویشی پروری ہی واحد اسٹیک ہولڈر نہیں ہے، میرے جذبات کی قدرکریں، ساتھیو، یہ صرف مویشی پالنے والے ہی اسٹیک ہولڈر نہیں ہیں بلکہ ہمارے جانور بھی برابر کے اسٹیک ہولڈرز ہیں۔ لہٰذا ہمیں اسے اپنی ذمہ داری سمجھ کر اپنا حصہ ڈالنا ہوگا۔

ساتھیو،

مجھے حکومت کے سبھی مشنوں کو کامیاب بنانے کے لیے کوآپریٹو کی اہلیت کے بارے میں کوئی شک نہیں ہے۔ اور میں نے اس ریاست میں کوآپریٹو کی طاقت دیکھی ہے جہاں سے میں آیا ہوں۔ کوآپریٹوز نے بھی تحریک آزادی میں بہت اہم کردار ادا کیا۔ لہذا، میں اپنے آپ کو ایک اور بڑے مقصد میں شامل ہونے کی خواہش سے نہیں روک سکتا۔ میں نے آزادی کے 75 سال مکمل ہونے کے موقع پر ہر ضلع میں 75 امرت سروور بنانے کی اپیل کی ہے۔ ایک سال سے بھی کم عرصے میں ملک بھر میں تقریبا 60  ہزار امرت سروور تعمیر کیے گئے ہیں۔ یہ ہر گھر، کھیت اور کھیت کو آبپاشی یا پینے کا پانی فراہم کرنے کے لیے پچھلے  9 برسوں میں حکومت کے ذریعہ کیے گئے کام کی توسیع ہے۔ یہ پانی کے ذریعہ کو بڑھانے کا طریقہ ہے. تاکہ کسانوں اور ہمارے جانوروں کو پانی کی کمی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ لہٰذا کوآپریٹو سیکٹر سے وابستہ ساتھیوں کو بھی اس مقدس مہم میں شامل ہونا چاہیے۔ آپ کسی بھی علاقے میں کوآپریٹو میں سرگرمی کر سکتے ہیں، لیکن اپنی قابلیت کے مطابق، آپ فیصلہ کر سکتے ہیں کہ ہم ایک تالاب بنائیں گے، دو بنائیں گے، پانچ بنائیں گے، دس بنائیں گے۔ لیکن آئیے پانی کی طرف کام کرتے ہیں۔ اگر امرت سروور کو ہر گاؤں میں بنایا جائے تو آنے والی نسلیں ہمیں بڑی شکر گزاری کے احساس کے ساتھ یاد رکھیں گی۔ آج ہمیں جو پانی مل رہا ہے وہ ہمارے آباؤ اجداد کی کوششوں کا نتیجہ ہے۔ ہمیں اپنے مستقبل کے بچوں کے لیے بھی کچھ چھوڑنا ہوگا۔ پانی سے متعلق ایک اور مہم پرڈراپ مور کراپ ہے۔ ہمارے کسان کس طرح اسمارٹ آبپاشی کو اپناتے ہیں اس کے لیے بیداری بہت ضروری ہے۔ زیادہ پانی، زیادہ فصلوں کی ضمانت نہیں ہے۔ کوآپریٹوز کو چھوٹے آبپاشی کو ایک گاؤں سے دوسرے گاؤں تک پھیلانے کے لیے اپنے کردار کو بھی بڑھانا ہوگا۔ مرکزی حکومت اس کے لیے کافی مدد دے رہی ہے، بہت حوصلہ افزائی کر رہی ہے۔

ساتھیو،

سب سے بڑا مسئلہ اسٹوریج کا ہے۔ امت بھائی نے اسے بہت تفصیل سے بیان کیا ہے۔ اناج کے ذخیرہ کرنے کی سہولیات کی کمی نے طویل مدت میں ہماری غذائی سلامتی اور ہمارے کسانوں کو بہت نقصان پہنچایا ہے۔ آج، ہم بھارت میں پیدا ہونے والے اناج کا 50 فیصد سے بھی کم ذخیرہ کر سکتے ہیں۔ اب مرکزی حکومت دنیا کی سب سے بڑی اسٹوریج اسکیم لے کر آئی ہے۔ گزشتہ کئی دہائیوں میں طویل عرصے سے ملک میں کیے گئے کام کا نتیجہ کیا نکلا ہے؟ ہمارے پاس 1400 لاکھ ٹن سے زیادہ ذخیرہ کرنے کی صلاحیت ہے۔ اگلے 5 برسوں میں، ہم نے تقریبا 700 لاکھ ٹن کی نئی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت پیدا کرنے کا عزم کیا ہے، جو اس کا 50 فیصد ہے-یہ یقینی طور پر ایک بڑا کام ہے، جس سے ملک کے کسانوں کی طاقت میں اضافہ ہوگا اور گاؤوں میں روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ پہلی بار ہماری حکومت نے گاؤوں میں زراعت سے متعلق بنیادی ڈھانچے کے لیے ایک لاکھ کروڑ روپے کا خصوصی فنڈ بنایا ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ اس کے تحت پچھلے 3 برسوں میں 40 ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی گئی ہے۔ اس کا ایک بڑا حصہ کوآپریٹو، پی اے سی ایس سے تعلق رکھتا ہے۔ کوآپریٹو سیکٹر کو کولڈ اسٹوریج جیسے انتظامات کی تخلیق میں فارم گیٹ انفراسٹرکچر کی تعمیر میں مزید کوشش کرنے کی ضرورت ہے۔

ساتھیو،

مجھے یقین ہے کہ نئے بھارت میں کوآپریٹو ملک کے اقتصادی دھارے کا ایک طاقتور ذریعہ بنیں گے۔ ہمیں ایسے گاؤوں کی تعمیر کی طرف بھی بڑھنا ہے، جو کوآپریٹو کے ماڈل پر عمل کرتے ہوئے خود کفیل بنیں۔ اس تبدیلی کو کس طرح بہتر بنایا جا سکتا ہے اس پر آپ کی بحث بہت اہم ثابت ہوگی۔ آپ کو کوآپریٹو میں تعاون کو بہتر بنانے کے طریقوں پر بھی تبادلہ خیال کرنا چاہیے۔ کوآپریٹوز کو سیاست کے بجائے سماجی پالیسی اور قومی پالیسی کا آلہ کار بننا چاہیے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ کے مشورے ملک میں کوآپریٹو تحریک کو مزید تقویت دیں گے اور ترقی یافتہ بھارت کے مقصد کو حاصل کرنے میں مدد کریں گے۔ ایک بار پھر مجھے آپ سب کے درمیان آنے کا موقع ملا، یہ خوشی کی بات تھی۔ میں آپ کو بھی اپنی طرف سے نیک خواہشات پیش کرتا ہوں!

شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India a 'green shoot' for the world, any mandate other than Modi will lead to 'surprise and bewilderment': Ian Bremmer

Media Coverage

India a 'green shoot' for the world, any mandate other than Modi will lead to 'surprise and bewilderment': Ian Bremmer
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi attends 'Salaam India' programme organised by India TV
May 23, 2024

In an interview to India TV under the 'Salaam India' programme with Rajat Sharma, Prime Minister Narendra Modi became candid and spoke at length about India's Lok Sabha Elections, 2024 at the Bharat Mandapam in New Delhi.