’مشن اسکولس آف ایکسی لینس‘ پروگرام کے تحت 4500 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اورقوم کے نام وقف کیا
’ودیا سمیکشا کیندر2.0 اور دیگر مختلف ترقیاتی پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا
’’ہمارے لیے غریبوں کے لیے گھر صرف ایک عدد نہیں، بلکہ وقار کا باعث ہے‘‘
’’ہمارا مقصد قبائلی علاقوں کے نوجوانوں کو مواقع فراہم کرتے ہوئے میرٹ کی حوصلہ افزائی کرنا ہے‘‘
’’میں چھوٹا ادے پور سمیت پورے قبائلی علاقے کی ماؤں اور بہنوں کو یہ بتانے آیا ہوں کہ تمہارا یہ بیٹا تمہارے حقوق کو یقینی بنانے آیا ہے‘‘

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے،

اسٹیج پر بیٹھے گجرات کے ہر دلعزیز وزیر اعلی جناب بھوپندر بھائی پٹیل، پارلیمنٹ میں میرے ساتھی جناب سی آر پاٹل، گجرات حکومت کے سبھی وزراء، ریاستی پنچایت کے نمائندے اور میرے پیارے بھائیو اور بہنو جو بڑی تعداد میں یہاں موجود ہیں۔

کیسے ہیں سب ، ذرااونچی آواز میں بولو، میں ایک طویل عرصے کے بعد بوڈیلی آیا ہوں۔ پہلے مجھے سال میں دو یا تین بار یہاں آنا ہوتاتھا اور اس سے پہلے جب میں سنگٹھن کا کام کرتا تھا تو میں روزانہ یہاں بوڈیلی آتاتھا۔ ابھی کچھ عرصہ پہلے ہی میں گاندھی نگر میں وائبرینٹ گجرات کے 20 سال پورے ہونے کے جشن میں آیا تھا۔ 20 سال گزر چکے ہیں، اور اب مجھے اپنے آدیواسی بھائیوں اور بہنوں کے درمیان بوڈیلی، چھوٹا ادے پور، عمرگام سے امباجی تک کے پورے علاقے میں کئی ترقیاتی پروجیکٹوں کے لیے آپ سے ملنے کا موقع ملا ہے۔ جیسا کہ وزیر اعلیٰ نے کہا ہے، مجھے 5000 کروڑ سے بھی زیادہ کے عظیم الشان پروجیکٹوں کے لیے، کسی کا سنگ بنیاد رکھنے تو کسی کو قوم کے نام وقف کرنے کا موقع ملا ہے۔ گجرات کے 22اضلاع اور 75سے زیادہ گرام پنچایتوں میں وائی فائی فراہم کرنے کا کام آج مکمل کرلیا گیا ہے۔ اس میں یہ موبائل، انٹرنیٹ گاؤوں میں رہنے والے لاکھوں دیہاتیوں کے لیے نیا نہیں ہے، گاؤں کی مائیں اور بہنیں بھی اسے استعمال کرنا جانتی ہیں، اور باہر کام کرنے والے لڑکے سے ویڈیو کانفرنس پر بات کرتی ہیں۔ بہت کم قیمت پر بہترین انٹرنیٹ سروس اب ہمارے گاؤوں میں میرے تمام بزرگوں اور بھائیوں اور بہنوں کے لیے دستیاب ہے۔ اور اس حیرت انگیز تحفے کے لیے آپ سبھی کو بہت بہت مبارکباد اور نیک خواہشات۔

 

میرے پیارے اہلِ خاندان،

میں نے چھوٹا ادے پور یا بوڈیلی کے آس پاس چکر لگاتا تھا تو یہاں ہر کوئی کہتا کہ ہمارا چھوٹا ادے پور ضلع مودی صاحب نے دیا تھا، کیونکہ جب میں یہاں تھا تو چھوٹا ادے پور سے بڑودہ جانے میں اتنا وقت لگتا تھا، مجھے یہ بات معلوم تھی کہ یہ بہت مشکل ہوتا ہے، اس لیے میں حکومت کو ہی آپ کے گھر لے آیا ہوں۔ لوگوں کو آج بھی یاد ہے کہ نریندر بھائی نے اپنے تمام عمرگام سے امباجی آدیواسی علاقے میں کئی بڑی اسکیمیں، بڑے پروجیکٹ شروع کیے ، لیکن میرے وزیر اعلیٰ بننے سے پہلے ہی میرا یہاں کی زمین سے رشتہ تھا، یہاں کے گاؤوں سے میرا رشتہ تھا، یہاں کے آدیواسی خاندان کے ساتھ میرا رشتہ تھا۔ اور یہ سب کچھ وزیر اعلیٰ یا وزیر اعظم بننے کے بعد ہوا ہے، ایسا نہیں ہے، اس سے پہلے بھی ایسا ہو چکا ہے، اور پھر میں ایک عام کارکن کے طور پر بس میں آتا تھا اور چھوٹا ادے پور آتا تھا، پھر میں لیلے دادا کی جھونپڑی میں جاتا تھا، اور لیلے دادا، وہاں بہت سے لوگ ہوں گے جو لیلے دادا کے ساتھ کام کرتے ہوں گے۔ اور داہود سے عمرگاؤں تک کے پورے علاقے کو دیکھیں، چاہے وہ لمڈی ہو، سنت رام پور ہو، جھلاد ہو، داہود ہو، گودھرا ہول ہو، کالول ہو، تب میرا یہ راستہ ہوا کرتا تھا، بس میں آنااور پروگرام کے بعد سب سے مل کر نکل جانا۔ جب بھی خالی ہوتا، کیوروہنیشور جاتا تھا، بھولے ناتھ کے چرنوں میں چکر لگالیتا تھا۔ میرے مالسار میں یا میرے پورگام میں، یا پور، یا نریشور میں، میراکئی بار جانا ہوتا تھا، یہاں تک کہ ساولی بھی، اور ساولی میں، ایک سوامی جی تھے، کئی بار مجھے ان کے ساتھ ستسنگ کرنے کا موقع ملا۔ بھادروا طویل وقت تک اس کی توسیع کے ساتھ میرا تعلق رہا، میں کئی گاؤوں میں رات کو ٹھہرتا تھا۔ میں نے بہت سے گاؤوں میں ملاقات کی ہوگی کبھی سائیکل پر، کبھی پیدل، کبھی بس میں، اور جو ملتا اسے لے کر ساتھ آپ کے درمیان کام کرتا تھا۔ آپ کے بیچ میرے بہت سے پرانے دوست ہیں۔

آج میں سی آر پاٹل اور بھوپندر بھائی کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جب مجھے جیپ میں آنے کا موقع ملا تو مجھے بہت سے بوڑھے لوگوں کو دیکھنے کا موقع ملا، میں نے سب کو دیکھا، میں نے آج بہت سے بوڑھے لوگوں کو یاد کیا، بہت سے خاندانوں کے ساتھ تعلقات تھے، بہت سے گھروں کے ساتھ اٹھتے بیٹھتے تھے، اور میں نے چھوٹا ادے پور ہی نہیں یہاں کے حالات کو بہت قریب سے دیکھا ہے، پورے قبائلی علاقے کو بہت قریب سے جانا ہے۔ اور جب میں اقتدار میں آیا تو مجھے احساس ہوا کہ مجھے اس پورے علاقے کو ترقی دینا ہے، قبائلی علاقے کو ترقی دینا ہے، میں اس کے لیے بہت سی ترقیاتی اسکیمیں لے کر آیا ہوں اور ان اسکیموں کا فائدہ بھی مل رہا ہے۔ بہت سے پروگراموں پر عمل درآمد بھی کیا گیا ہے اور آج اس کے مثبت فوائد بھی زمین پر نظر آرہے ہیں۔ یہاں مجھے چار پانچ چھوٹے بچے ملے، چھوٹے بچے ہی کہوں گا، کیونکہ 2001-2002 میں جب وہ چھوٹے  بچے تھے تب میں ان کی انگلی پکڑ کر اسکول لے جاتا، آج ان میں سے کچھ ڈاکٹر بن گئے، کچھ ٹیچر بن گئے، اور آج مجھے ان بچوں سے ملنے کا موقع ملا۔ اور جب من میں ملنے کا یقین پکا ہوتا ہے کہ آپ نے کوئی چھوٹا سا کام خیر سگالی، اور سچ کرنے کے جذبے کے ساتھ کیا ،میں آج اسے اپنی آنکھوں کے سامنے دیکھ رہا ہوں۔ اتنا بڑا سکون ملتا ہے، دماغ کو اتنی شانتی ملتی ہے، اتنا اطمینان ہوتا ہے کہ اس وقت کی محنت آج رنگ لے آئی ہے۔ مجھے آج ان بچوں کے جوش و خروش کو دیکھ کر خوشی ہوئی۔

 

میرے اہلِ خانہ،

اچھے اسکول بنائے گئے، اچھی سڑکیں بنیں، اچھے معیار کی رہائش میسر آئی، پانی کی سہولتیں ملنے لگیں، یہ سب چیزیں اہم ہیں، لیکن اس سے عام خاندان کی زندگی بدل جاتی ہے، اس سے غریب خاندان کی سوچنے کی قوت بھی بدل جاتی ہے، اور ہمیشہ غریبوں کو گھر، پینے کا پانی ملتا ہے، ہماری ترجیح سڑکوں، بجلی، تعلیم کے لیے مشن موڈ پر کام کرنا رہی ہے۔ میں اچھی طرح جانتا ہوں کہ غریبوں کو کیا چیلنجز درپیش ہیں۔ اور میں بھی اس کے حل کے لیے لڑتا ہوں۔ اتنے کم وقت میں میں پورے ملک میں آپ کے درمیان اور گجرات کے اپنے پیارے بھائیوں اور بہنوں کے درمیان بڑا ہوا ہوں، جس کی وجہ سے میں مطمئن ہوں کہ آج ہم نے ملک بھر میں غریبوں کے لیے 4 کروڑ سے زیادہ پکے گھر بنائے ہیں۔ پچھلی حکومتوں میں جب غریبوں کے لیے گھر بنائے جاتے تھے تو اس کے لیے ایک غریب کا گھر گنتی ہوتا تھا، ایک عدد ہوتا تھا۔ 100، 200، 500، 1000 جو کچھ بھی ہو، یہ گننے کی بات نہیں ہے، یہ گھر بنانے کی بات نہیں ہے، یعنی گھر کا ڈیٹا پورا کرنے کا کوئی کام نہیں ہے، ہمارے لیے ہم غریبوں کا گھر بنانے کا کام کرتے ہیں، یعنی ہم ان کو عزت دلانے کے لیے کام کرتے ہیں، ہم ان کو باوقار زندگی دینے کے لیے کام کرتے ہیں۔ اور یہ گھر میرے قبائلی بھائیوں اور بہنوں کو دیا جائے اور وہ بھی اس میں ایسا گھر بنائیں، ایسا نہیں ہے کہ ہم نے چار دیواری بنا لی ہے، ورنہ قبائلی کے درمیان کوئی مڈل مین نہیں ہے جسے ہم مقامی ذرائع سے بنانا چاہتے ہیں، حکومت سے براہ راست ان کے اکاؤنٹ میں پیسے جمع ہوں گے اور آپ اپنی مرضی سے ایسا گھر بنا سکتے ہیں، بھائی۔ اگر آپ بکریوں کو باندھنے کے لیے جگہ چاہتے ہیں تو آپ کو اس میں ہونا چاہیے، اگر آپ مرغی کے لیے جگہ بھی چاہتے ہیں تو یہ آپ کی مرضی کے مطابق آپ کا اپنا گھر ہونا چاہیے۔ آدیواسی ہوں، دلت ہوں، پسماندہ طبقات ہوں، انھیں ان کی ضروریات کے لیے گھر، مکان ملنا چاہیے، اور حکومت ان کی کوششوں کے لیے پیسے ادا کرے گی۔ اس طرح کے لاکھوں گھر ان کی بہنوں کے نام پر بنائے گئے اور ہر گھر ڈیڑھ سے دو لاکھ روپے میں بنایا جاتا ہے، یعنی میرے ملک کی کروڑوں بہنیں اور میرے گجرات کی لاکھوں بہنیں، جو اب لکھپتی دیدی بن چکی ہیں، ان کے نام پر ڈیڑھ لاکھ گھر بن چکے ہیں۔ اس وقت میرے نام پر کوئی گھر نہیں ہے، لیکن میں نے ملک کی لاکھوں لڑکیوں کے نام پر گھر کر دیے ہیں۔

ساتھیو،

گجرات کے گاؤوں کے لوگ پانی کی حالت پہلے سے جانتے ہیں، ان کے آدیواسی علاقوں میں وہ کہتے ہیں کہ جناب، نیچے پانی اوپر نہیں چڑھتا، ہم پہاڑی علاقوں میں رہتے ہیں، اور وہاں سے پانی کہاں سے آئے گا، ہم نے پانی کے بحران کا چیلنج بھی اٹھایا اور اگر نیچے کا پانی چڑھانابھی پڑے، ہم نے پانی پیش کیا اور گھر گھر پانی پہنچانے کی زحمت اٹھائی اور آج نل کے ذریعے پانی پہنچ گیا، ہم نے اس کا انتظام کیا، ورنہ ایک ہینڈ پمپ لگا دیا جاتا، یہ تین ماہ میں خراب ہو جاتا اور تین سال تک اس کی مرمت نہیں ہوتی، بھائی ہم نے ایسے دن دیکھے ہیں۔ اور اگر پانی خالص نہ ہو تو اس سے بہت سی بیماریاں جنم لیتی ہیں اور بچے کی نشوونما بھی متاثر ہوتی ہے۔ آج ہم نے گجرات کے ہر گھر میں پائپ سے پانی پہنچانے کی بڑی کوشش کی ہے اور میں نے کام کرتے ہوئے سیکھا کہ آپ کے درمیان رہ کر مجھے کیا سیکھنے کو ملا، جو کام میں نے آپ کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کیا، وہ آج دہلی میں میرے لیے بہت مفید ہے۔ جب میں اسے وہاں لاگو کرتا ہوں تو لوگوں کو لگتا ہے کہ آپ واقعی حقیقی مسئلے کا حل لے کر آئے ہیں، اس کی وجہ یہ ہے کہ میں نے آپ کے درمیان خوشی اور غم دیکھا ہے اور اسے کرنے کے راستے تلاش کیے ہیں۔

 

ہم نے چار سال پہلے جل جیون مشن شروع کیا تھا۔ ذرا سوچئے آج 10 کروڑ کے بارے میں، جب ماؤں اور بہنوں کو تین کلومیٹر پانی لینے جانا پڑتا تھا، آج 10 کروڑ کنبوں میں پائپ سے پانی گھر تک پہنچتا ہے، پانی باورچی خانے تک پہنچتا ہے، بھائی، ماں اور بہنیں دعائیں دیتے ہیں، اس کی وجہ یہ ہے کہ ان کے چھوٹے سے ادے پور میں، ان کے گاؤں کوانٹ میں اور مجھے یاد ہے کہ میں کئی بار کوانٹ آیا تھا۔ کوانٹ ایک زمانے میں بہت پیچھے تھا۔ ابھی ابھی کچھ لوگ مجھ سے ملنے آئے، میں نے مجھے کہاں بتایا کہ کوانٹ کا اسکل ڈیولپمنٹ کا کام چل رہا ہے یا نہیں؟ تو وہ حیران رہ گئے، یہ ہمارا رویہ ہے، یہ محبت اور جذبہ ہے، ہم نے کوانٹ میں ریجنل واٹر سپلائی کا کام مکمل کیا اور اس کی وجہ سے 50 ہزار لوگوں تک 50 ہزار گھروں تک پائپ سے پانی فراہم کرنے کا کام ہوا۔

ساتھیو،

گجرات نے بہت بڑے پیمانے پر تعلیم کے میدان میں مسلسل نئے تجربات کرنے کی یہ روایت نبھائی ہے، آج شروع ہونے والے پروجیکٹ اس سمت میں اٹھائے گئے بڑے قدم ہیں اور اس کے لیے میں بھوپندر بھائی اور ان کی پوری ٹیم کو مبارکباد دیتا ہوں۔ مشن اسکول آف ایکسیلینس اور ودیا سمیکشا اپنے دوسرے مرحلے میں گجرات میں اسکول جانے والے طلبہ پر بہت مثبت اثر ڈالیں گے۔ اور میں نے ابھی ورلڈ بینک کے صدر سے ملاقات کی ہے۔ وہ کچھ دن پہلے ودیا سمیکشا سینٹر کا دورہ کرنے کے لیے گجرات آئے تھے۔ وہ مجھ سے درخواست کر رہے تھے کہ مودی صاحب، آپ بھارت کے ہر ضلع میں یہ ودیا سمیکشا کیندر قائم کریں، جو آپ نے گجرات میں کیا ہے۔ اور عالمی بینک اس نیک کام میں شامل ہونا چاہتا ہے۔ گیان شکتی، گیان سیتو اور گیان سادھنا جیسی اسکیموں سے باصلاحیت، ضرورت مند طلبہ، بیٹے اور بیٹیوں کو بہت فائدہ ہونے والا ہے۔ اس میں میرٹ کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔ ہمارے قبائلی علاقے کے نوجوانوں کو بہت جشن منانے کا موقع مل رہا ہے۔

میرے خاندان والوں نے پچھلی دو دہائیوں سے گجرات میں تعلیم اور ہنر مندی کی ترقی پر توجہ مرکوز کی ہے۔ آپ سبھی جانتے ہیں کہ دو دہائی پہلے گجرات میں کلاس روموں کی حالت کیا تھی اور اساتذہ کی تعداد کیا تھی۔ بہت سے بچے پرائمری تعلیم بھی مکمل نہیں کر سکے، انھیں اسکول چھوڑنا پڑا، عمرگام سے امباجی تک پورے آدیواسی علاقے میں حالات اتنے خراب تھے کہ جب تک میں گجرات کا وزیر اعلیٰ نہیں بن گیا، کوئی سائنس اسٹریم اسکول نہیں تھا۔ بھائی، اگر اب سائنس اسٹریم کا اسکول نہیں ہے تو میڈیکل اور انجینئرنگ میں ریزرویشن کردو، سیاست کرلو، لیکن ہم نے بچوں کے مستقبل کو بہتر بنانے کے لیے کام کیا ہے۔ اسکول بھی بہت کم ہیں اور ان میں سہولیات نہیں ہیں، سائنس کا کوئی نام نہیں ہے اور ان تمام حالات کو دیکھتے ہوئے ہم نے اسے تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا۔ گزشتہ دو دہائیوں میں اساتذہ کی تقرری کے لیے 2 لاکھ اساتذہ کی بھرتی مہم چلائی گئی تھی۔ 1.25   لاکھ سے زیادہ نئے کلاس روم تعمیر کیے گئے تھے۔ تعلیم کے شعبے میں کیے گئے کام سے قبائلی علاقوں کو سب سے زیادہ فائدہ ہوا ہے۔ ابھی میں سرحدی علاقے میں گیا تھا، جہاں ہماری فوج کے لوگ موجود ہیں۔ یہ میرے لیے حیرت اور خوشی کی بات تھی کہ تقریبا ہر جگہ میں اپنے قبائلی علاقے کا ایک سپاہی سرحد پر کھڑا اور ملک کی حفاظت کرتے ہوئے دیکھوں گا اور کہوں گا، 'سر، آپ میرے گاؤں آئے ہیں، مجھے یہ سن کر مزہ آتا ہے۔ سائنس کہیں، کامرس کہیں ، گزشتہ دو دہائیوں میں آج یہاں درجنوں اسکولوں اور کالجوں کا ایک بڑا نیٹ ورک تیار ہوا ہے۔ نئے آرٹس کالج کھولے گئے۔ صرف آدیواسی علاقے میں بی جے پی حکومت نے 25,000 نئے کلاس روم، 5 میڈیکل کالج، گووند گرو یونیورسٹی اور برسمونڈا یونیورسٹی نے اعلی تعلیم کے معیار کو بلند کرنے کے لیے کام کیا ہے۔ آج اس شعبے میں ہنر مندی کی ترقی سے متعلق بہت ساری پروموشنز ہوئی ہیں۔

 

میرے اہلِ خانہ،

کئی دہائیوں کے بعد ملک میں نئی قومی تعلیمی پالیسی نافذ کی گئی ہے۔ ہم نے وہ کام مکمل کیا جو 30 سال سے رکا ہوا تھا اور مقامی زبان میں تعلیم کا خیال رکھا۔ اس بات کو اس لیے اہمیت دی گئی ہے کہ اگر بچے کو مقامی زبان میں پڑھنے کا موقع مل جائے تو اس کی محنت بہت کم ہو جاتی ہے اور وہ چیزوں کو آرام سے سمجھ پاتا ہے۔ ملک بھر کے 30 ہزار سے زیادہ پی ایم شری اسکولوں نے ایک جدید ترین نئی قسم کے اسکول کی تعمیر کے لیے مطالعہ شروع کیا ہے۔ گزشتہ 14 سالوں میں ، ایکلویہ رہائشی اسکول نے بھی قبائلی علاقے میں بہت بڑا حصہ ڈالا ہے اور ہم نے ان کی زندگیوں کو تبدیل کرنے کی ہمہ جہت کوششوں کے لیے یہ مرکز قائم کیا ہے۔ ہم نے ایس سی / ایس ٹی طلبہ کے لیے اسکالرشپ میں بھی کافی پیش رفت کی ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ میرے قبائلی علاقے کے چھوٹے چھوٹے گاؤوں کو قبائلی علاقے کے نوجوانوں میں اسٹارٹ اپ کی دنیا میں آگے لایا جائے۔ کم عمری میں ہی انھیں ٹیکنالوجی، سائنس میں دلچسپی ہو گئی اور اس کے لیے انھوں نے دور دراز کے جنگلات میں بھی اسکول میں ایک اٹل ٹنکرنگ لیب بنانے کا کام کیا۔ تاکہ اگر اس سے میرے قبائلی بچوں کی سائنس اور ٹیکنالوجی کی طرف دلچسپی بڑھے تو مستقبل میں وہ بھی سائنس اور ٹیکنالوجی کے میدان میں ایک مضبوط حامی پیدا کریں گے۔

میرے اہلِ خانہ،

زمانہ بدل گیا ہے۔ جوں جوں سرٹیفکیٹ کی اہمیت بڑھی ہے ویسے ویسے ہنر مندی کی اہمیت بھی بڑھ گئی ہے، کون سا ہنر آپ کے ہاتھ میں ہے، نچلی سطح پر اسکل ڈویلپر نے کیا ہے، اور اس لیے اسکل ڈیولپمنٹ کی اہمیت بھی بڑھ گئی ہے۔ آج اسکل ڈیولپمنٹ اسکیم سے لاکھوں نوجوان مستفید ہو رہے ہیں۔ ایک بار جب نوجوان کام سیکھ لیتا ہے تو اسے اپنے روزگار کے لیے مدرا اسکیم سے بغیر کسی گارنٹی کے بینک سے قرض مل جاتا ہے، جب اسے قرض لینا ہو تو اس کی گارنٹی کون دے گا، یہ آپ کے مودی کی گارنٹی ہے۔ انھیں اپنا کام شروع کرنا چاہیے اور نہ صرف خود کمانا چاہیے بلکہ چار دوسرے لوگوں کو بھی ملازمت دینی چاہیے۔ ون بندھو کلیان یوجنا کے تحت ہنر مندی کی تربیت کا کام بھی جاری ہے۔ گجرات کے 50 سے زیادہ آدیواسی تعلقوں میں آج آئی ٹی آئی اور اسکل ڈیولپمنٹ کے بڑے مراکز چل رہے ہیں۔ آج آدیواسی علاقوں میں جنگلاتی دولت کے مراکز چل رہے ہیں، جن میں 11 لاکھ سے زیادہ آدیواسی بھائی بہن وندھن کیندر میں تعلیم حاصل کر رہے ہیں، کما رہے ہیں اور اپنے کاروبار کو فروغ دے رہے ہیں۔ قبائلی ساتھیوں کے لیے ان کی مہارتوں کے لیے ایک نیا بازار ہے۔ اس فن کی تیاری، ان کی پینٹنگز، ان کی فنکارانہ صلاحیتوں کے لیے خصوصی دکانیں کھولنے کا کام جاری ہے۔

 

ساتھیو،

آپ نے ابھی تازہ ترین مثال دیکھی ہوگی کہ کس طرح ہم نے نچلی سطح پر ہنر مندی کی ترقی پر زور دیا ہے۔ وشوکرما جینتی کے دن 17 تاریخ کو پردھان منتری وشوکرما یوجنا کا افتتاح کیا گیا اور اس وشوکرما اسکیم کے ذریعے ہمارے ارد گرد اگر آپ کسی گاؤں کو دیکھیں تو گاؤں کی آبادکاری چند لوگوں کے بغیر نہیں ہو سکتی، اس لیے ہمارے پاس ان کے لیے ایک اصطلاح ہے جو رہائش گاہ کے اندر سب سے اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ اگر آپ کمہار، درزی، حجام، دھوبی، لوہار، سنار، ہار بنانے والے بھائی اور بہنیں ہیں، گھر بنانے والے ہیں، جنہیں ہندی میں راج مستری کہا جاتا ہے، تو مختلف کام کرنے والے لوگوں کے لیے کروڑوں روپے کی پردھان منتری وشوکرما یوجنا شروع کی گئی ہے۔ ہم نے اس ملک کے غریب اور عام محنت کش لوگوں کے لیے اتنا بڑا کام شروع کیا ہے، انھیں اپنے روایتی خاندانی کاروبار کی تربیت ملنی چاہیے، انھیں جدید آلات ملنے چاہئیں، ان کے لیے نئے ڈیزائن ملنے چاہئیں، اور وہ جو کچھ بھی پیدا کرتے ہیں اسے عالمی مارکیٹ میں فروخت کیا جانا چاہیے۔ اور اسی وجہ سے مجسمہ سازوں نے اس روایت کو آگے بڑھایا ہے، جو ایک بہت ہی امیر روایت ہے اور اب، ہم نے کام کیا ہے تاکہ انھیں کسی کی فکر نہ کرنی پڑے۔ لیکن ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ یہ روایت، یہ فن ختم نہیں ہونا چاہیے، گرو شیشیا روایت جاری رہنی چاہیے اور وزیر اعظم وشوکرما کا فائدہ لاکھوں ایسے کنبوں تک پہنچنا چاہیے جو ایمانداری سے کام کرکے خاندانی زندگی گزار رہے ہیں۔ اس طرح کے بہت سے اوزاروں کے ذریعے حکومت ان کی زندگیوں کو خوشحال بنانے کے لیے کام کر رہی ہے۔ ان کی پریشانی بہت کم سود پر لاکھوں روپے کا قرض حاصل کرنے کی ہے۔ یہاں تک کہ آج انھیں جو قرض ملے گا اسے بھی کسی گارنٹی کی ضرورت نہیں ہے۔ کیونکہ مودی نے ان کی گارنٹی لے لی ہے۔ حکومت کی جانب سے اس کی ضمانت دی گئی ہے۔

میرے اہلِ خانہ،

غریب، دلت، آدیواسی جو طویل عرصے سے محروم تھے، انھیں محرومی میں رکھا گیا، آج وہ کئی اسکیموں کے تحت مختلف قسم کی ترقی کی سمت میں پرامید خیالات کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں۔ آزادی کی کئی دہائیوں کے بعد، مجھے قبائلی فخر کا احترام کرنے کا موقع ملا۔ اب بھگوان بیرسمونڈا کا یوم پیدائش، پورا بھارت اسے آدیواسی فخر کے دن کے طور پر مناتا ہے۔ ہم نے اس سمت میں کام کیا ہے. بی جے پی حکومت نے پچھلی حکومت کے مقابلے میں آدیواسی برادری کے بجٹ میں پانچ گنا اضافہ کیا ہے۔ کچھ دن پہلے ملک نے ایک اہم کام کیا۔ بھارت کی نئی پارلیمنٹ کا آغاز ہوا اور نئی پارلیمنٹ میں پہلا قانون ناری شکتی وندنا قانون بن گیا۔ برکت سے ہم اسے پورا کرنے میں کامیاب ہوئے اور پھر بھی اس کے بارے میں بڑی بڑی باتیں کرنے والوں سے پوچھیں کہ آپ اتنی دہائیوں تک کیوں بیٹھے رہے، اگر میری مائیں بہنوں کو ان کے حقوق پہلے ہی دے دیے جاتے تو وہ کہاں تک جاتیں، اس لیے میرے خیال میں انھوں نے وہ وعدے پورے نہیں کیے۔ میں جواب دے رہا ہوں، میرے قبائلی بھائی اور بہنیں جو آزادی کے اتنے سالوں تک چھوٹی چھوٹی سہولیات سے محروم رہے، میری مائیں، بہنیں اور بیٹیاں دہائیوں سے اپنے حقوق سے محروم رہیں اور آج جب مودی ایک کے بعد ایک ان تمام رکاوٹوں کو دور کر رہے ہیں تو انھیں کہنا پڑ رہا ہے کہ وہ نت نئے ہتھکنڈے کھیلنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔ وہ تقسیم کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں، وہ سماج کو گمراہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔ میں چھوٹا ادے پور سے اس ملک کی آدیواسی ماؤں اور بہنوں کو یہ بتانے آیا ہوں کہ آپ کا یہ بیٹا بیٹھا ہے، اپنے حقوق کے لیے آواز اٹھائیں اور ہم ایک ایک کرکے یہ کام کر رہے ہیں۔ پارلیمنٹ اور اسمبلی کے اندر آپ سبھی بہنوں کے لیے زیادہ سے زیادہ شرکت کی راہیں کھل گئی ہیں۔ قانون میں درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل برادری کے ساتھ ساتھ وہاں کی بہنوں کے لیے بھی انتظامات کیے گئے ہیں، تاکہ انھیں وہاں سے بھی مواقع ملیں۔ نئے قانون میں درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل کی بہنوں کے لیے ریزرویشن فراہم کیا گیا ہے۔ یہ سب باتیں ایک بڑا اتفاق ہے کہ آج ملک میں اس قانون کو کون حتمی شکل دے گا۔ ملک کی پہلی آدیواسی خاتون دروپدی مرموجی جو آج صدر کے عہدے پر بیٹھی ہیں، اس پر فیصلہ کریں گی اور یہ قانون بن جائے گا۔ آج جب میں قبائلی علاقے چھوٹا ادے پور میں آپ سبھی بہنوں سے مل رہا ہوں تو بڑی تعداد میں یہاں آنے والی بہنوں کو مبارکباد دیتا ہوں۔ میں آپ کو سلام پیش کرتا ہوں اور آزادی کے اس امرت کال کا آغاز کتنا اچھا ہوا ہے، کتنا اچھا ہوا ہے ہے کہ اب ان ماؤں کے آشیرباد ہمیں اپنے عزم کو پورا کرنے میں نئی طاقت دینے والے ہیں، ہم اس علاقے کو نئے منصوبوں کے ساتھ ترقی دیں گے اور میں آپ سب کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں کہ آپ نے اتنی بڑی تعداد میں آکر جو آشیرباد دیا ہے۔ اپنے دونوں ہاتھ اوپر کرکے پوری طاقت کے ساتھ میرے ساتھ بولیں بھارت ماتا کی جئے، اپنے بوڈیلی کی آواز عمرگام سے امباجی تک پہنچنی چاہیے۔

 

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے،

آپ کا بہت شکريہ ۔

(نوٹ: وزیر اعظم کی تقریر بنیادی طور پر گجراتی زبان میں ہے، جس کا یہاں ترجمہ کیا گیا ہے۔)

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
The digital transformation: How UPI and AI are shaping MSME lending in India

Media Coverage

The digital transformation: How UPI and AI are shaping MSME lending in India
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
India’s Top Gamers Meet ‘Cool’ PM Modi
April 13, 2024
PM Modi showcases his gaming prowess, impressing India's top gamers with his quick grasp of mobile, PC, and VR games!
PM Modi delves into gaming, sparking dialogue on innovation and digital empowerment!
Young gamers applaud PM Modi's agility and adaptability, give him ‘NaMo OP' badge

Prime Minister Narendra Modi engaged in a unique interaction with India's top gamers, immersing himself in the world of PC and VR gaming. During the session, Prime Minister Modi actively participated in gaming sessions, showcasing his enthusiasm for the rapidly evolving gaming industry.

The event brought together people from the gaming community including @gcttirth (Tirth Mehta), @PAYALGAMING (Payal Dhare), @8bitthug (Animesh Agarwal), @GamerFleet (Anshu Bisht), @MortaLyt (Naman Mathur), @Mythpat (Mithilesh Patankar), and @SkRossi (Ganesh Gangadhar).

Prime Minister Modi delved into mobile, PC, and VR gaming experiences, leaving the young gamers astounded by his quick grasp of game controls and objectives. Impressed by PM Modi’s gaming skills, the gaming community also gave him the ‘NaMo OP’ badge.

What made the entire interaction even more interesting was PM Modi's eagerness to learn trending gaming lingos like ‘grind’, ‘AFK’ and more. He even shared one of his lingos of ‘P2G2’ which means ‘Pro People Good Governance.’

The event served as a platform for a vibrant exchange of ideas, with discussions ranging from the youngsters’ unique personal journeys that led them to fame in this growing field of gaming, to the latest developments in the gaming sector.

Among the key topics explored was the distinction between gambling and gaming, highlighting the importance of responsible gaming practices while fostering a supportive environment for the gaming community. Additionally, the participants delved into the crucial issue of enhancing women's participation in the gaming industry, underscoring the need for inclusivity and diversity to drive the sector forward.

PM Modi also spoke about the potential for not just esports and gaming content creation, but also game development itself which is centred around India and its values. He discussed the potential of bringing to life ancient Indian games in a digital format, that too with open-source script so that youngsters all over the country can make their additions to it.