Share
 
Comments

ئی دہلی،  16  فروری 2021،         

نمسکار!

اترپردیش کی گورنر محترمہ آنند بین پٹیل جی، ریاست کے  مقبول اور  شہرت یافتہ وزیراعلی یوگی آدتیہ ناتھ جی، یو پی حکومت  کے دیگر  معزز وزراء، پارلیمنٹ میں  میرے دیگر ساتھی،  ارکان اسمبلی اور میرے پیارے بھائیو اور بہنو!

اپنی بہادری سے مادر وطن  کا وقار بڑھانے والے قومی ہیرو مہاراجہ سہیل دیو کی جائے پیدائش اور رشی منیوں  نے جہاں  تپسیہ کی، بہرائچ کی ایسی  مقدس سرزمین کو میں احترام کے ساتھ نمن کرتا ہوں! بسنت پنچمی  کی آپ سبھی کو، پورے ملک کو بہت بہت نیک خواہشات!! ماں سرسوتی بھارت کو علم اور سائنس سے مزید مالا مال کریں۔ آج کا دن، تعلیم کی شروعات اور  حرفوں کی  تعلیم کے لئے بہت مبارکبا دن مانا جاتا ہے۔ ہمارے یہاں کہا گیا ہے :

सरस्वति महाभागे विद्ये कमललोचने।

विद्यारूपे विशालाक्षि विद्यां देहि नमोऽस्तु ते॥

یعنی، ہے  مہا بھاگیہ وتی، گیان روپا، کمل  جیسی بڑی آنکھوں والی، علم دینے والی سرسوتی، مجھ کو  تعلیم دیجئے، میں آپ کو نمن کرتا ہوں۔ بھارت کی، انسانیت کی خدمت کے لئے ریسرچ اور انوویشن میں مصروف، قوم کی تعمیر میں مصروف ہر اہل وطن کو ماں سرسوتی کا  آشیرواد ملے، انہیں کامیابی ملے، یہی ہم سبھی کی پرارتھنا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

رام چرت  مانسن  میں گوسوامی تلسی داس جی کہتے ہیں، رتو بسنت بہ تربھد بیاری۔ یعنی، بسنت  رُت میں شیٹل،  مند سوگندھ ایسی تین قسم کی ہوا بہہ رہی ہے، اسی موسم میں کھیت کلیان، باغ باغیچوں سے لیکر   زندگی کا ہر حصہ لطف حاصل کررہا ہے۔ واقعی، ہم جس طرف دیکھیں تو پھولوں کی بہار ہے، ہر جاندار بسنت رُت کے استقبال میں کھڑا ہے۔ یہ بسنت   عالمی وبا کی مایوسی کو پیچھے چھوڑکر آگے بڑھتے بھارت کے لئے نئی امید، نئی امنگ لیکر آیا ہے۔اس خوشی میں، ہندوستانیت، ہماری ثقافت، ہمارے سنسکاروں کے لئے ڈھال بن کر کھڑے ہونے والی عظیم  شخصیت، مہاراجہ سہیل دیو جی کے  یوم پیدائش  کا جشن ہماری خوشیوں میں اور اضافہ کررہا ہے۔

ساتھیو،

مجھے تقریباً دو سال قبل غازی پور میں مہاراجہ سہیل دیو کی  یاد میں ڈاک ٹکٹ جاری کرنے کا موقع ملا تھا۔ آج بہرائچ میں ان کے شاندار میموریل  کا سنگ بنیاد رکھنے کا فخر حاصل ہوا ہے۔ یہ جدید اور شاندار میموریل، تاریخی چتورا جھیل کی ترقی، بہرائچ  پر مہاراجہ سہیل دیو کے آشیرواد کو بڑھائیں گے، آنے والی نسلوں کو بھی اس سے تحریک ملے گی۔

ساتھیو،

آج مہاراجہ سہیل دیو کے نام پر بنائے گئے میڈیکل کالج کو ایک نئی اور عالیشان عمارت  ملی ہے۔ بہرائچ جیسے ترقی کے لئے خواہش مند ضلع میں  صحت کی سہولتوں میں اضافے سے یہاں کے لوگوں کی زندگی آسان ہوگی۔ اس  کا فائدہ آس پاس کے شراوستی، بلرام پور ، سدھارتھ نگر کو تو ہوگا ہی، نیپال سے  آنے والے مریضوں کی بھی یہ  مدد کرے گا۔

بھائیو اور بہنو،

بھارت کی تاریخ صرف وہ نہیں ہے جو ملک کو غلام بنانے والوں، غلامی کی ذہنیت کے ساتھ تاریخ لکھنے والوں نے لکھی ہے۔ بھارت کی تاریخ وہ بھی ہے جو  بھارت کے عام لوگوں نے  بھارت کی لوک گاتھاؤں میں  رچائی بسائی ہے، جس کو پیڑھیوں نے آگے بڑھایا ہے۔  آج جب بھارت اپنی آزادی کے  75 ویں سال میں داخل ہورہا ہے، ایسی  عظیم شخصیتوں کی خدمات ، ان کے ایثار و قربانی،  ان کی تپسیہ، ان کی جد وجہد ، ان کی بہادری، ان کی شہادت، ان سب باتوں کو یاد کرنا، ان کو احترام کے ساتھ نمن کرنا، ان سے تحریک حاصل کرنا، اس سے  بڑا کوئی موقع نہیں ہوسکتا ہے۔ یہ افسوسناک ہے کہ ہندوستان اور ہندوستانیت کے تحفظ کے لئے  جنہوں نے زندگی وقف کردی، ایسے بہت سے  شجاعت کے پیکر مرد و خواتین   کو وہ مقام نہیں دیا گیا جس کے وہ مستحق تھے۔  تاریخ  رقم کرنے والوں کے ساتھ، تاریخ  لکھنے کے نام پر ہیر پھیر کرنے والوں نے جو ناانصافی کی،اس میں اب آج کا بھارت اصلاح کررہا ہے۔ اس کو صحیح کررہا ہے۔ غلطیوں سے ملک کو پاک کررہا ہے۔ آپ دیکھئے نیتاجی سبھاش چندر بوس  جو آزاد ہند حکومت  کے پہلے وزیراعظم تھے،  کیا ان کی اس شناخت کو آزاد ہند فوج کی خدمات کو وہ اہمیت دی گئی، جو اہمیت نیتاجی کو ملنی چاہئیں تھی؟

آج لال قلعے سے لیکر انڈو مان  نکوبار  تک ان کی اس شناخت کو  ہم نے  ملک اور دنیا کے سامنے مستحکم کیا ہے۔ ملک کی پانچ سو  سے زیادہ ریاستوں کو ایک کرنے کا دشوار کام کرنے والے  سردار پٹیل جی کے ساتھ کیا  کیا گیا ، ملک کا ہر بچہ اس بو بخوبی جانتا ہے ۔ آج دنیا کا سب سے بڑا مجسمہ اسٹیچو آف یونٹی سردار پٹیل کا ہی ہے جو ہمیں تحریک دے رہا ہے ۔ ملک کو آئین دینے میں  اہم کردار نبھانے والے محروموں، مظلوموں ، استحصال کا شکار ہونے والوں کی آواز  بابا صاحب امبیڈکر کو بھی  صرف سیاسی چشمے سے دیکھا گیا۔ آج بھارت سے لیکر انگلینڈ تک   ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر سے متعلق مقامات کو  پنچ تیر تھ کی شکل میں فروغ دیا جارہا ہے۔

ساتھیو،

بھارت کے ایسے بہت سے مجاہدین آزادی ہیں جن کی خدمات کا متعدد وجوہات سے احترام نہیں کیا گیا۔ انہیں شناخت نہیں دی گئی۔ چوری چورا کے بہادروں کے ساتھ جو ہوا وہ کیا ہم بھول سکتے ہیں؟ مہاراجہ سہیل دیو اور ہندوستانیت کی حفاظت کے لئے ان کی کوششوں کے ساتھ بھی یہی سلوک کیا گیا۔

تاریخ کی کتابوں میں بھلے ہی مہاراجہ سہیل دیو کی شجاعت، بہادری کو وہ مقام نہیں ملا ، لیکن اودھ اور ترائی سے لیکر پوروانچل کی لوک گاتھاؤں  میں  لوگوں کے دل میں وہ ہمیشہ بنے رہے۔ صرف بہادری ہی نہیں  ایک حساس اور ترقی پسند حکمراں کے طور پر ان کی چھاپ کو مٹایا نہیں جاسکتا۔ اپنے حکومت کے دور میں  جس طرح انہوں نے  بہتر راستوں کے لئے  پوکھروں۔ تالابوں کے لئے، باغ باغیچوں اور  تعلیم کے شعبے میں کام کیا وہ بے مثال تھا۔ ان کی یہی سوچ، اس  میموریل کے مقام میں بھی نظر آنے والی ہے۔

ساتھیو،

ٹورسٹ مہاراجہ سہیل دیو جی کی زندگی سے تحریک حاصل کرسکیں، اس کے لئے  ان کا چالیس فٹ کا کانسے کا مجسمہ قائم کیا جائے گا۔ یہاں پر تعمیر ہونے والی میوزیم میں مہاراجہ سہل دیو سے متعلق تاریخی معلومات ہوں گی۔ اس کے اندر کی اور آس پاس کی سڑکوں کو چوڑا کیا جائے گا۔ بچوں کے لئے پارک بنے گا،  آڈیٹوریم ہوگا، سیاحوں کے لئے رہائش گاہ،  پارکنگ، کیفے ٹیریا جیسی  متعدد سہولتوں کی تعمیر ہوگی۔اس کے ساتھ ساتھ جو مقامی  دست کار ہیں، فنکار ہیں، وہ اپنا سامان یہاں آسانی ہے فروخت کرپائیں اس کے لئے دکانیں تعمیر کی جائیں گی۔ اسی طرح  چتورا جھیل پر گھاٹ اور سیڑھیوں کی تعمیر  اور  تذئین کاری سے اس تاریخی جھیل کی اہمیت اور بڑھ جائے گی۔ یہ تمام کوششیں  بہرائچ کی خوبصورتی میں ہی اضافہ نہیں کریں گے بلکہ  یہاں آنے والے سیاحوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہوگا۔’مری میا‘ کی کرپا سے یہ کام جلد مکمل ہوں گے۔

بھائیو اور بہنو،

گزشتہ کچھ برسوں سے ملک بھر میں  تاریخ،عقیدت، روحانیت، ثقافت سے متعلق  جتنی بھی یادگاروں کی تعمیر کی جارہی ہے، ان کا بہت بڑا مقصد  سیاحت کو فروغ دینے کا بھی ہے۔ اترپردیش تو سیاحت اور  تیرتھاٹن، دونوں کے معاملے میں مالا مال بھی اور اس کی صلاحیتیں بھی لا محدود ہیں۔ چاہے وہ بھگوان کی جائے پیدائش ہو یا  کرشن کا ورندا ون، بھگوان بدھ کا سارناتھ ہو یا  کاشی وشوناتھ، سنت کبیر  کا مگہر دھام ہو یا وارانسی میں سنت روی داس کی  جائے پیدائش کی جدید کاری، پوری ریاست میں بڑے پیمانے پر کام چل رہا ہے۔ ان کی ترقی کے لئے بھگوان  رام، شری کرشن اور بدھ کی زندگی سے متعلق مقامات  جیسے اجودھیا، چترکوٹ، متھرا، ورندا ون، گووردھن، کُشی نگر، شراوستی وغیرہ  تیرتھ مقامات پر  رامائن سرکٹ،  آدھیاتمنک سرکٹ، بودھ سرکٹ کو فروغ دیا جارہا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

گزشتہ چند برسوں میں جو کوششیں کی گئی ہیں، ان کے اثرات بھی نظر آنے لگے ہیں۔جس ریاست میں دیگر ریاستوں سے  سب سے زیادہ سیاح آتے ہیں، اس ریاست کا نام اترپردیش ہے۔غیر ملکی سیاحوں کو راغب کرنے میں بھی  یو پی ملک کےٹاپ  تین ریاستوں میں شامل ہوچکا ہے۔ اترپردیش میں سیاحوں کے لئے  ضروری سہولتوں کے ساتھ ساتھ  جدید کنکٹی وٹی کے  ذرائع میں بھی اضافہ کیا جارہا ہے۔ مستقبل میں اجودھیا کا ایئرپورٹ اور کُشی نگر کا انٹرنیشنل ایئر پورٹ ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کے لئے بہت کارآمد ثابت ہوں گے۔ اترپردیش میں چھوٹے بڑے درجن بھر ہوائی اڈوں پر کام چل رہا ہے، جن میں سے کئی پوروانچل میں ہی ہیں۔ اڑان یوجنا کے تحت یو پی کے کئی شہروں کو کم قیمت والی ہوائی خدمت سے جوڑنے کی مہم چل رہی ہے۔

اس کے علاوہ  پورانچل ایکسپریس وے، بندیل کھنڈ ایکسپریس وے ، گنگا ایکسپریس وے، گورکھپور لنک ایکسپریس وے، بلیا لنک ایکسپریس وے، ایسی جدید اور چوڑی سڑکیں  پورے یو پی میں بنائی جارہی ہیں اور یہ تو ایک طرح سے  جدید یو پی کے  جدید انفرا اسٹرکچر کی شروعات ہے۔ایئر اور روڈ کنکٹی وٹی کے علاوہ  یو پی کی  ریل کنکٹی وٹی بھی اب  جدید ہورہی ہے۔یو پی دو بڑے ڈیڈیکیڈٹ فریٹ کوریڈور کا جنکشن ہے۔ حال میں ہی ایسٹرن ڈیڈیکیٹ فریٹ کوریڈور کے ایک بڑے حصے  کو یو پی میں ہی قوم کے نام وقف کیا گیا۔ یو پی میں جس طرح آج جدید انفرا اسٹرکچر پر کام چل رہا ہے، اس سے  اترپردیش میں صنعت لگانے کے لئے  ملک اور دنیا کے سرمایہ کار  پرجوش ہیں۔ اس سے یہاں نئی صنعتوں کے لئے تو بہتر مواقع بن ہی رہے ہیں، یہاں کے نوجوانوں کو روزگار کے نئے مواقع بھی  دستیاب ہورہے ہیں۔

ساتھیو،

کورونا کے دور میں اترپردیش میں جس طرح سے کام ہوا ہے، وہ بہت اہم ہے۔تصور کیجئے اگر یو پی میں  حالات بگڑتے  تو ملکی اور بین الاقوامی سطح پر کس طرح کی باتیں کی جاتیں۔ لیکن یوگی جی کی حکومت نے  یوگی جی کی پوری ٹیم نے  بہترین طریقے سے  صورتحال کو سنبھال کو دکھایا ہے۔ یو پی نہ صرف  زیادہ سے زیادہ  لوگوں کی زندگی بچانے میں کامیاب رہا،  بلکہ باہر سے  لوٹنے والے مزدوروں کو  روزگار دینے میں بھی یو پی نے قابل تعریف کام کیا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

کورونا کے خلاف  یو پی کی لڑائی میں گزشتہ تین چار برسوں میں کئے گئے کاموں کاموں کی بہت اہمیت رہی ہے۔ پوروانچل کو دہائیوں تک پریشان کرنے والے دماغی بخار کا اثر، یو پی نے بہت کم کرکے دکھایا ہے۔ یو پی میں 2014 تک  14 میڈیکل کالج تھے، جو آج بڑھ کر 24 ہوچکے ہیں۔ ساتھ ہی گورکھپور اور بریلی میں  ایمس کا بھی کام چل رہا ہے۔ان کے علاوہ 22 نئے میڈیکل کالج اور بنائے جارہی ہیں۔ وارانسی میں  جدید کینسر اسپتالوں کی سہولت بھی  اب پوروانچل کو مل رہی ہے۔ یو پی جل جیون مشن یعنی ہر گھر  پانی پہنچانے کے لئے بھی قابل تعریف کام کررہا ہے۔ جب صاف پینے کا پنی گھر پر پہنچے گا، تو ا سے بہت سی بیماریاں ویسی ہی کم ہوجائیں گی۔

بھائیو اور بہنو،

اترپردیش میں ہوتی  جارہی  بجلی، پانی ، سڑک اور  صحت کی سہولتوں کا  براہ راست فائدہ گاؤں ، غریب اور کسان کو ہورہا ہے۔ خاص طور پر چھوٹے کسان جن کے پاس بہت کم زمیں ہوتی ہے۔ انہیں  ان اسکیموں سے  بہت زیادہ فائدہ ہورہا ہے۔ اترپردیش کے ایسے تقریباً ڈھائی کروڑ کسان خاندانوں  کے بینک کھاتے میں  پی ایم کسان سمان ندھی کے ذریعہ سے  براہ راست پیسے جمع کئے جاچکے ہیں۔ یہ وہ کسان خاندان ہیں جو کبھی بجلی کا بل یا کھاد کی بوری خریدنے کے لئے بھی دوسروں سے قرض لینے کے لئے مجبور تھے۔ لیکن ایسے چھوٹے کسانوں کو  ہماری حکومت نے 27 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ  براہ راست منتقل کئے ہیں۔ ان کے کھاتے میں جمع کردیئے گئے ہیں۔ یہاں کسانوں کو  بجلی نہ ہونے کی وجہ سے جو دقتیں آتی تھیں،  رات رات بھر بورنگ کے پانی کے لئے جاگنا پڑتا تھا،  انتظار کرنا پڑتا تھا کہ میرا نمبر کب آئے گا، ایسی تمام دقتیں بھی  بجلی کی سپلائی بہتر ہونے سے اب دور  ہورہی ہیں۔

ساتھیو،

ملک کی  آبادی بڑھنے کے ساتھ  کھیتی کی زمین چھوٹی سے چھوٹی ہوتی جارہی ہے۔ اس لئے ملک میں کسان   پیداواری اداروں کی تشکیل بہت ضروری ہے۔ آج حکومت  چھوٹے کسانوں کے ہزاروں کسان پیداواری ادارے یعنی ایف پی او بنا رہی ہے۔ ایک دو بیگھا کے 500 کسان خاندان جب منظم ہوکر بازار میں اتریں گے تو وہ 500۔ 1000 بیگھا کسان سے بھی زیادہ طاقتور ہوں گے۔ اسی طرح  کسان ریل کے ذریعہ سبزیوں، پھلوں، دودھ، مچھلی اور ایسے کئی کاروبار  کرنے والے چھوٹے کسانوں کو اب بڑے بازاروں سے جوڑا جارہا ہے جو نئی زرعی اصلاحات کی گئی ہیں، ان کا فائدہ  بھی چھوٹے  اور بہت چھوٹی کسانوں کو  سب سے زیادہ ہوگا۔ اترپردیش میں ان نئے قوانین کے بننے کے بعد جگہ جگہ سے کسانوں کے بہتر تجربات سامنے آنے بھی لگے ہیں۔ ان زرعی قوانین  کو لیکر طرح طرح  کے غلط پروپیگنڈے کی کوشش کی گئی۔ یہ پورے ملک نے دیکھا ہے کہ جنہوں نے ملک کے زرعی بازار میں غیر ملکیوں کمپنیوں کو بلانے کے لئے قانون بنایا، وہ آج ملکی کمپنیوں کے نام پر کسانوں کو ڈرا رہے ہیں۔

ساتھیو۔

ریاست کے لئے جھوٹ اور غلط پروپیگنڈے کی یہ پول اب کھل رہی ہے۔ نئے قوانین نافذ ہونے کے باوجود یو پی میں اس بار پچھلے سال کے مقابلے میں دوگنے کسانوں کو دھان خریدا گیا۔

اس بار یو پی میں تقریباً 65 لاکھ میٹرک ٹن  کی خریداری کی جاچکی ہے جو گزشتہ سال کے مقابلے میں تقریباً دوگنی ہے۔ یہیں نہیں، یوگی جی کی حکومت گنا کسانوں تک بھی گزشتہ سالوں میں  ایک لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ پہنچا چکی ہے۔ کورونا کے دور میں بھی گنا کسانوں کو دقت پیش نہ آئےاس لئے ہر ممکن مدد کی گئی ہے۔ چینی ملیں  کسانوں کو آدائیگی کر پائیں اس کے لئے  مرکز نے بھی ہزاروں کروڑ روپے ریاستی حکومت کو دیئے ہیں۔ گنا  کسانوں کی ادائیگ وقت پر ہوتی رہے اس کے لئے یوگی جی کی حکومت کی کوششیں جارہی ہیں۔

بھائیو اور بہنو،

حکومت کی یہ ہر ممکن کوشش ہے کہ گاؤں اور کسان کی زندگی بہتر ہو۔ کسان کو، گاؤں میں رہنے والے غریب کو پریشانی نہ ہو، اس کو اپنے مکان پر ناجائز قبضے کے خرچے سے نجات ملے، اس کے لئے مالکانہ حق کی اسکیم بھی آج پورے اترپردیش میں چلائی جارہی ہے۔ اس اسکیم کے تحت آج کل یوم پی تقریباً 50 ضلعوں میں  ڈرون کے ذریعہ سروے چل رہے ہیں۔ تقریباً 12 ہزار گاؤوں میں ڈرون سروے کا کام مکمل ہوچکا ہے اور ابھی تک 2 لاکھ سے زیادہ خاندانوں کو پراپرٹی کارڈ  یعنی  گھرونی مل چکا ہے۔ یعنی یہ خاندان اب ہر طرح کے خدشات سے نجات پاچکے ہیں۔

ساتھیو،

آج گاؤں کا غریب کسان دیکھ رہا ہے کہ اس کے چھوٹے سے گھر کو بچانے کے لئے، اس کی زمین کو بچانے کے لئے پہلی بار  کوئی  حکومت اتنی بڑی اسکیم چلا رہی ہے ۔ اتنا بڑا رکشا  کَوَچ،  ہر غریب کو، ہر کسان کو،  ہر ایک گاؤں والے کو دے رہا ہے۔ اس لئے جب کوئی زرعی اصلاحات کے ذریعہ کسانوں کی زمین چھینے جانے کا جھوٹ پھیلاتا ہے تو اس پر کوئی کیسے یقین کرسکتا ہے؟ ہمارا مقصد ملک کے ہر شہری کو  بااختیار بنانے کا ہے۔ ہمارا عزم ملک کو خود کفیل بنانے کا ہے۔ اس عزم کو پورا کرنے کے لئے سپردگی کے جذبے کے ساتھ ہم کام میں لگے رہیں گے۔ میں رام چرت مانس کی ایک چوپائی سے ہی اپنی بات ختم کروں ک گا:

प्रबिसि नगर कीजे सब काजा।

हृदयँ राखि कोसलपुर राजा॥

 

مفہوم یہ ہے کہ  دل میں بھگوان رام کا نام دھارن کرکے ہم جو بھی کام کریں گے، اس میں یقیناً کامیابی ملے گی۔

ایک بار پھر  مہاراجہ سہیل دیو جی کو نمن کرتے ہوئے، آپ کو ان نئی سہولتوں کے لئے بہت بہت مبارکباد دیتے ہوئے یوگی جی اور ان کی پوری ٹیم کا خیر مقدم کرتے ہوئئے بہت بہت شکریہ!!

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops

Media Coverage

Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Karnataka on 6th February
February 04, 2023
Share
 
Comments
PM to inaugurate India Energy Week 2023 in Bengaluru
Moving ahead on the ethanol blending roadmap, PM to launch E20 fuel
PM to flag off Green Mobility Rally to create public awareness for green fuels
PM to launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil - each uniform to support recycling of around 28 used PET bottles
PM to dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System - a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously
In yet another step towards Aatmanirbharta in defence sector, PM to dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru
PM to lay foundation stones of Tumakuru Industrial Township and of two Jal Jeevan Mission projects in Tumakuru

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Karnataka on 6th February, 2023. At around 11:30 AM, Prime Minister will inaugurate India Energy Week 2023 at Bengaluru. Thereafter, at around 3:30 PM, he will dedicate to the nation the HAL helicopter factory at Tumakuru and also lay the foundation stone of various development initiatives.

India Energy Week 2023

Prime Minister will inaugurate the India Energy Week (IEW) 2023 in Bengaluru. Being held from 6th to 8th February, IEW is aimed to showcase India's rising prowess as an energy transition powerhouse. The event will bring together leaders from the traditional and non-traditional energy industry, governments, and academia to discuss the challenges and opportunities that a responsible energy transition presents. It will see the presence of more than 30 Ministers from across the world. Over 30,000 delegates, 1,000 exhibitors and 500 speakers will gather to discuss the challenges and opportunities of India's energy future. During the programme, Prime Minister will participate in a roundtable interaction with global oil & gas CEOs. He will also launch multiple initiatives in the field of green energy.

The ethanol blending programme has been a key focus areas of the government to achieve Aatmanirbharta in the field of energy. Due to the sustained efforts of the government, ethanol production capacity has seen a six times increase since 2013-14. The achievements in the course of last eight years under under Ethanol Blending Programe & Biofuels Programe have not only augmented India’s energy security but have also resulted in a host of other benefits including reduction of 318 Lakh Metric Tonnes of CO2 emissions and foreign exchange savings of around Rs 54,000 crore. As a result, there has been payment of around Rs 81,800 crore towards ethanol supplies during 2014 to 2022 and transfer of more than Rs 49,000 crore to farmers.

In line with the ethanol blending roadmap, Prime Minister will launch E20 fuel at 84 retail outlets of Oil Marketing Companies in 11 States/UTs. E20 is a blend of 20% ethanol with petrol. The government aims to achieve a complete 20% blending of ethanol by 2025, and oil marketing companies are setting up 2G-3G ethanol plants that will facilitate the progress.

Prime Minister will also flag off the Green Mobility Rally. The rally will witness participation of vehicles running on green energy sources and will help create public awareness for the green fuels.

Prime Minister will launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil. Guided by the vision of the Prime Minister to phase out single-use plastic, IndianOil has adopted uniforms for retail customer attendants and LPG delivery personnel made from recycled polyester (rPET) & cotton. Each set of uniform of IndianOil’s customer attendant shall support recycling of around 28 used PET bottles. IndianOil is taking this initiative further through ‘Unbottled’ - a brand for sustainable garments, launched for merchandise made from recycled polyester. Under this brand, IndianOil targets to meet the requirement of uniforms for the customer attendants of other Oil Marketing Companies, non-combat uniforms for Army, uniforms/ dresses for Institutions & sales to retail customers.

Prime Minister will also dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System and flag-off its commercial roll-out. IndianOil had earlier developed an innovative and patented Indoor Solar Cooking System with single cooktop. On the basis of feedback received, twin-cooktop Indoor Solar Cooking system has been designed offering more flexibility and ease to the users. It is a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously, making it a reliable cooking solution for India.

PM in Tumakuru

In yet another step towards Aatmanirbharta in the defence sector, Prime Minister will dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru. Its foundation stone was also laid by the Prime Minister in 2016. It is a dedicated new greenfield helicopter factory which will enhance capacity and ecosystem to build helicopters.

This helicopter factory is Asia’s largest helicopter manufacturing facility and will initially produce the Light Utility Helicopters (LUH). LUH is an indigenously designed and developed 3-ton class, single engine multipurpose utility helicopter with unique feature of high manoeuvrability.

The factory will be expanded to manufacture other helicopters such as Light Combat Helicopter (LCH) and Indian Multirole Helicopter (IMRH) as well as for repair and overhaul of LCH, LUH, Civil ALH and IMRH in the future. The factory also has the potential for exporting the Civil LUHs in future.

This facility will enable India to meet its entire requirement of helicopters indigenously and will attain the distinction of enabling self-reliance in helicopter design, development and manufacture in India.

The factory will have a manufacturing set up of Industry 4.0 standards. Over the next 20 years, HAL is planning to produce more than 1000 helicopters in the class of 3-15 tonnes from Tumakuru. This will result in providing employment for around 6000 people in the region.

Prime Minister will lay the foundation stone of Tumakuru Industrial Township. Under the National Industrial Corridor Development Programme, development of the Industrial Township spread across 8484 acre in three phases in Tumakuru has been taken up as part of Chennai Bengaluru Industrial Corridor.

Prime Minister will lay the foundation stones of two Jal Jeevan Mission projects at Tiptur and Chikkanayakanahalli in Tumakuru. The Tiptur Multi-Village Drinking Water Supply Project will be built at a cost of over Rs 430 crores. The Multi-village water supply scheme to 147 habitations of Chikkanayakanahlli taluk will be built at a cost of around Rs 115 crores. The projects will facilitate provision of clean drinking water for the people of the region.