Share
 
Comments
’’خواتین اخلاقیات، وفاداری، فیصلہ سازی اور قیادت کا عکس ہے‘‘
’’ہمارے ویدوں اور روایتوں نے اس بات پر اصرار کیا ہے کہ خواتین کو قوم کو سمت دینے میں اہل ہونا چاہئے‘‘
’’خواتین کی ترقی ہمیشہ قوم کو با اختیار بنانے کی طاقت فراہم کرتی ہے‘‘
’’آج ملک کی اولیت ہندوستان کی ترقی کے سفر میں خواتین کی مکمل شراکت داری میں پنہا ہے‘‘
’اسٹینڈ اَپ ‘کے تحت 80 فیصد سے زیادہ قرضہ جات خواتین کے نام پرہے؛مُدرا یوجنا کے تحت ہماری بہنوں اور بیٹیوں کو تقریباً 70 فیصد قرض دیئے گئے ہیں

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے عالمی یوم خواتین کے موقع پر ویڈیو کانفرنس کے ذریعے کچھ میں منعقد ایک سیمینار سے خطاب کیا۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے عالمی یوم خواتین کے موقع پر موجود تمام لوگوں کو مبارکباد دی۔انہوں نے صدیوں سے کچھ کی سرزمین کے مخصوص مقام کو ناری شکتی کی علامت کے طورپر تسلیم کیا ، کیونکہ یہاں ماں آشاپورہ  ماتر شکتی کی شکل میں موجود ہے۔انہوں نے کہا ’’یہاں کی خواتین نے پورے سماج کو سخت قدرتی چیلنجوں کے ساتھ جینا سکھا یا ہے، لڑنا سکھایا ہے اور جیتنا سکھایا ہے۔‘‘انہوں نے آبی تحفظ کے لئے کچھ کی خواتین کے رول کی بھی ستائش کی۔چونکہ پروگرام ایک سرحدی گاؤں میں ہورہا تھا۔ وزیر اعظم نے اس حوالے سے 1971ء کی جنگ میں اس علاقے کی خواتین کے تعاون کو بھی یاد کیا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ خواتین اخلاقیات، وفاداری، فیصلہ سازی  اور قیادت کا عکس ہوتی ہے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہی وجہ ہے کہ ہمارے ویدوں اور روایتوں نے اس بات پر اصرار کیا ہے کہ خواتین کو اس قدر اہل اور  بااختیارہونا چاہئے کہ وہ قوم کو سمت دینے میں اہل ثابت ہوسکیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ شمال میں میرا بائی سے لے کر جنوب میں سنت اکّا مہادیوی تک ہندوستان کی روحانیت سے مالامال خواتین نے بھگتی تحریک سے لے کر گیان درشن تک سماج میں اصلاح اور تبدیلی کو آواز دی  ہے۔ اسی طرح کچھ اور گجرات کی سرزمین نے ستی تورل ، گنگا ستی،  ستی لویان،  رام بائی اور لربائی جیسی روحانی خواتین کو دیکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے بے شمار دیوی دیوتاؤں کی علامت ناری بیداری نے جنگ آزادی کی لو کو جلائے رکھا تھا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ جو ملک اس مین کو ماں مانتا ہے ، وہاں کی خواتین کی ترقی ہمیشہ ملک کو بااختیار بنانے کی سمت میں طاقت فراہم کرتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا ’’آج ملک کی اولیت خواتین کی زندگیوں کو بہتر بنانا ہے۔ آج ملک کی اولیت ہندوستان کے ترقیاتی سفرمیں خواتین کی مکمل حصے  داری میں پوشیدہ ہے۔ ‘‘انہوں نے ذکر کیا کہ 11کروڑ بیت الخلاء کی تعمیر ، 9کروڑ اوجلاگیس کنکشن، 23کروڑ جن دھن کھاتے کا ذکر اُن اقدامات کے طورپر کیا جو خواتین کے لئے احترام پیدا کرتے ہیں اور ان کی زندگی کو آسان بناتے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت انہیں مالی مدد بھی فراہم کررہی ہے ،تاکہ خواتین آگے بڑھ سکیں، اپنے خوابوں کو پورا کرسکیں اور اپنا خود کا کامم شروع کرسکیں۔انہوں نے کہا ’’اسٹینڈ اَپ  انڈیا کے تحت 80 فیصد سے زیادہ قرض خواتین کے نام پرہے۔ مُدرا یوجنا کے تحت ہماری بہنوں اور بیٹیوں کو تقریباً 70فیصد قرض فراہم کیا گیا ہے۔اسی طرح پی اے –اے وائی کے تعمیر شدہ 2کروڑ گھروں میں سے زیادہ تر خواتین کے نام پر ہے۔ اِن تمام چیزوں سے مالی فیصلہ لینے میں خواتین کی شراکت داری میں اضافہ ہوا ہے۔

وزیر اعظم نے مطلع کیا کہ حکومت نے زچگی رخصت کو 12 ہفتے سے بڑھا کر 26ہفتے کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کام کی جگہوں پر خواتین کی تحفظ کے لئے قوانین کو مزید سخت کردیا گیاہے۔عصمت دری جیسے مزموم جرائم کے لئے موت کی سزا کا بھی التزام رکھا گیا ہے۔بیٹے-بیٹیوں کو یکساں مانتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت بیٹیوں کی شادی کی عمر بڑھا کر 21 سال کرنے کی بھی کوشش کررہی ہے۔آج ملک مسلح افواج میں خواتین کے لئے زیادہ سے زیادہ رول کو بڑھا وا دے رہا ہے۔سینک اسکولوں میں لڑکیوں کا داخلہ شروع ہوگیا ہے۔

وزیر اعظم نے لوگوں سے ملک میں عدم تغذیہ کے خلاف تحریک میں مدد کرنے کی گزارش کی۔ انہوں نے بیٹی بچاؤ-بیٹی پڑھاؤ میں خواتین کے رول پر بھی زور دیا۔انہوں نے ’کنیا شکشا پرویش اُتسو ابھیان‘میں ان کی حصے داری پر بھی زور دیا۔

’ووکل فار لوکل‘معیشت سے جڑا ایک بڑا موضوع بن گیا ہے، لیکن اس کا خواتین کو با اختیار بنانے سے بڑا تعلق ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ زیادہ تر مقامی مصنوعات کی طاقت خواتین کے ہاتھ میں ہوتی ہے۔

آخر میں وزیر اعظم نے جنگ آزادی میں سنت پرمپرا کے رول کے بارے میں بات کی اور سیمینار کے شرکاء کو کچھ کے رن کی خوبصورتی اور اس کی روحانیت کو محسوس کرنے کے لئے بھی کہا۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Share beneficiary interaction videos of India's evolving story..
Explore More
وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی  ایم مودی کے ساتھ کا متن

Popular Speeches

وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی ایم مودی کے ساتھ کا متن
In 5 charts: Why India needs Agnipath for military modernisation

Media Coverage

In 5 charts: Why India needs Agnipath for military modernisation
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi takes part in 14th BRICS Summit
June 24, 2022
Share
 
Comments

Prime Minister Shri Narendra Modi led India’s participation at the 14th BRICS Summit, convened under the Chairship of President Xi Jinping of China on 23-24 June 2022, in a virtual format. President Jair Bolsonaro of Brazil, President Vladimir Putin of Russia, and President Cyril Ramaphosa of South Africa also participated in the Summit on 23 June. The High-level Dialogue on Global Development, non-BRICS engagement segment of the Summit, was held on 24 June.

On 23 June, the leaders held discussions including in fields of Counter-Terrorism, Trade, Health, Traditional Medicine, Environment, Science, Technology & Innovation, Agriculture, Technical and Vocational Education & Training, and also key issues in the global context, including the reform of the multilateral system, COVID-19 pandemic, global economic recovery, amongst others. Prime Minister called for strengthening of the BRICS Identity and proposed establishment of Online Database for BRICS documents, BRICS Railways Research Network, and strengthening cooperation between MSMEs. India will be organizing BRICS Startup event this year to strengthen connection between Startups in BRICS countries. Prime Minister also noted that as BRICS members we should understand security concerns of each other and provide mutual support in designation of terrorists and this sensitive issue should not be politicized. At the conclusion of the Summit, BRICS Leaders adopted the ‘Beijing Declaration’.

On 24 June, Prime Minister highlighted India’s development partnership with Africa, Central Asia, Southeast Asia, and from Pacific to Caribbean; India’s focus on a free, open, inclusive, and rules-based maritime space; respect for sovereignty and territorial integrity of all nations from the Indian Ocean Region to Pacific Ocean; and reform of multilateral system as large parts of Asia and all of Africa and Latin America have no voice in global decision-making. Prime Minister noted the importance of circular economy and invited citizens of participating countries to join Lifestyle for Environment (LIFE) campaign. The participating guest countries were Algeria, Argentina, Cambodia, Egypt, Ethiopia, Fiji, Indonesia, Iran, Kazakhstan, Malaysia, Senegal, Thailand and Uzbekistan.

Earlier, in the keynote speech delivered at the Opening Ceremony of BRICS Business Forum on 22 June, Prime Minister appreciated BRICS Business Council and BRICS Women Business Alliance which continued their work despite COVID-19 Pandemic. Prime Minister also suggested the BRICS business community to further cooperate in field of technology-based solutions for social and economic challenges, Startups, and MSMEs.