صحت مند بھارت
September 06, 2018
Share
 
Comments

’’حکومت ہند کے ذریعہ کیے جانے والے حفظان صحت کے اقدامات 50 کروڑ ہندوستانیوں پر مثبت اثرات مرتب کریں گے۔ اس امر کو یقینی بنایا جانا لازمی ہے کہ ہندوستان کے غریبوں کو غریبی کے شکنجے سے رہائی دلائی جائے کہ یہ غریبی حفظانِ صحت پر آنے والے اخراجات کی متحمل نہیں ہوسکتی۔‘‘
وزیر اعظم مودی

ہر ہندوستانی شہری اعلیٰ معیاری حفظانِ صحت کی کفایتی سہولیات کا حقدار ہے۔ ایک شمولیتی سماج کی تشکیل میں حفظانِ صحت کو کلیدی عنصر تصور کرتے ہوئے وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی سرکار نے ایک صحت مند ہندوستان کے لئے متعدد اقدامات کیے ہیں۔

ماؤں اور بچوں کی صحت

پردھان منتری سرکشت ماترتو ابھیان میں تمام حاملہ خواتین کو مہینے کی 9 تاریخ کو ماقبل زچگی جامع اور معیاری مفت دیکھ بھال کو یقینی بنایا گیا ہے۔ ماں اور بچے کی بہتر صحت کو یقینی بنانے کے لئے ملک بھر کے 13,078 سے زائد صحت اداروں میں 1.3 کروڑ سے زائد خواتین کی ماقبل زچگی جانچ کی گئی۔ علاوہ ازیں 80.63 لاکھ حاملہ خواتین کی ٹیکہ کاری بھی کی گئی ہے۔ جانچ کے دوران 6.5 لاکھ سے زائد ایسی خواتین کی شناخت کی گئی جنہیں زچگی کے عمل میں شدید خطرات درپیش تھے۔

پردھان منتری ماتر وندنا یوجنا کے تحت حاملہ اور دودھ پلانے والی ماؤں کو مالی امداد دی جاتی ہے تاکہ وہ اپنے پہلے بچے کی زچگی سے پہلے اور بعد خاطر خواہ طریقے سے آرام کر سکیں۔ امید ہے کہ نقد 6,000 روپئے  سے پچاس لائے سے زائد حاملہ خواتین کو فائدہ پہنچے گا۔

بچپن کے دن فرد کی آئندہ زندگی کی صحت کی بنیاد ہوتے ہیں۔ مشن اندرا دھنش کا مقصد 2020 تک ان تمام بچوں کو اپنے دائرہ کار میں شامل کرنا ہے جن کی ٹیکہ کاری نہیں کی جا سکی ہے یا جن کی ڈپتھیریا، کھانسی بلغم، ٹیٹنس، پولیو، تپ دق، چیچک، ہیپاٹائٹس بی کے تدارک کے لئے جزوی طور سے ٹیکہ کاری کی گئی ہے۔

مشن اندرا دھنش نے ملک کے 528 اضلاع میں اپنی خدمات کا چوتھا مرحلہ مکمل کر لیا ہے جہاں 81.78 لاکھ حاملہ خواتین کی ٹیکہ کاری اور 3.19 کروڑ بچوں کی ٹیکہ کاری کی جا چکی ہے۔ ٹیکے کی پلانے والی دوا سے مؤثر حیثیت رکھنے والی آئی پی وی کا استعمال نومبر 2015 میں شروع کیا گیا تھا۔ بچوں کو اب تک اس دوا کی تقریباً چار کروڑ خوراکیں پلائی جا چکی ہیں۔ روٹا وائرس ویکسین کا استعمال مارچ 2016 میں شروع کیا گیا تھا اور اب تک بچوں کو اس ویکسین کی 1.5 کروڑ خوراکیں پلائی جا چکی ہیں۔  میزلس روبیلا (ایم آر) ٹیکہ کاری مہم فروری 2017 میں شروع کی گئی تھی جس میں تقریباً آٹھ کروڑ بچوں کی یہ ٹیکہ کاری کی گئی۔ پی سی وی کا آغاز مئی 2017 میں کیا گیا تھا جس کے تحت بچوں کو اس دوا کی 15 لاکھ خوراکیں دی جا چکی ہیں۔

تدارکی حفظانِ صحت

تیزی سے بدلتی دنیا میں طرز زندگی سے پیدا ہونے والے امراض میں نمایاں طور سے اضافہ ہو رہا ہے۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی فعال قیادت کے تحت یوگا ایک جن آندولن کی شکل اختیار کر چکاہے جس کے نتیجے میں دنیا بھر کے کروڑوں لوگوں کو صحت کے فوائد حاصل ہو چکے ہیں۔ 2015 سے ہر سال 21 جون کو عالمی یوم یوگا کے طور پر منایا جاتا ہے دنیا بھر میں جس کے تئیں دلچسپی اور اس میں شرکت میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

سوئے تغذیہ ختم کرنے کی ایک مسلسل کوشش کے تحت وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی سرکار نے پوشن ابھیان شروع کیا تھا۔ یہ سوئے تغذیہ کی شکایت کے تدارک کے لئے شروع کیا جانے والا اپنی نوعیت کا پہلا قدم ہے جس میں کثیر شعبہ جاتی اقدامات شامل ہیں۔ اس کے تحت اجتماعی طور سے سوئے تغذیہ کے تدارک کے لئے تکنالوجی اور معینہ نظریے کو روبہ عمل لایا جا رہا ہے۔

کفایتی اور معیاری حفظانِ صحت

کفایتی اور معیاری حفظانِ صحت خدمات کو یقینی بناتے ہوئے محافظ حیات دواؤں سمیت 1084 لازمی ادویہ کو مئی 2014 کے بعد قیمتوں کے تعین کے نظام کے تحت لایا گیا ہے جس سے صارفین کو تقریباً 10,000 کروڑ روپئے کا فائدہ حاصل ہوا ہے۔

جہاں تک پردھان منتری بھارتی جن اوشدھی کیندروں کا تعلق ہے، ملک بھر میں 3,000 سے زائد ایسی دوکانیں کام کر رہی ہیں جس کے نتیجے میں 50 فیصد سے زائد کی بچت ہو رہی ہے۔ امرت (علاج کے لئے کفایتی دوائیں اور بھروسے مند تنصیب) فارمیسیاں سرطان اور امراض قلب کے علاج کی دوائیں فراہم کراتی ہیں جس میں بازار کی شرحوں سے 60 سے  90فیصد تک کم قیمت پر تبدیلیٔ قلب کی جاتی ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی سرکار کے سبب، کارڈیاک اسٹنٹس اور نی امپلاٹس (گھٹنوں کی تبدیلی) پر آنے والے طبی اخراجات میں  50سے 70فیصد تک کمی ہوگئی ہے جس سے مریضوں کو زبردست مالی راحت ملی ہے۔

2016 میں شروع کیے جانے والے پردھان منتری نیشنل ڈایالیسس پروگرام کے تحت غریب مریضوں کو مفت سہولت فراہم کرائی جاتی ہے اور نیشنل ہیلتھ مشن کے تحت سبھی مریضوں کو خدمات فراہم کرائی جاتی ہیں۔ اس پروگرام کے تحت تقریبا 2.5 لاکھ مریضوں نے ان خدمات کا فائدہ اٹھایا ہے اور اب تک ڈائیلیسس کے 25 لاکھ سیشن ہو چکے ہیں۔ آج ملک میں 497 ڈائیلیسس اوپریشنال یونٹ / سینٹرس اور 3330 پوری طرح سے کارآمد ڈائیلیسس مشینیں موجود ہیں۔

آیوشمان بھارت

صحت کی دیکھ بھال پر آنے والے استطاعت سے زائد اخراجات کے نتیجے میں لاکھوں ہندوستانی غریبی کے شکنجے میں جکڑے جا چکے ہیں۔ سرکاری اور پرائیویٹ سیکٹروں میں صحت خدمات کی فراہمی کی وسیع تر صلاحیتیں موجود ہیں۔ آیوشمان بھارت کے تحت سرکاری اور پرائیویٹ صحت شعبوں کے استحکام کے ساتھ معیاری حفظانِ صحت تک جامع اور کفایتی شرحوں پر معیاری حفظانِ صحت خدمات کی فراہمی کو یقینی بنایا گیا تھا۔یہ دنیا کا سب سے بڑا صحت بیمہ قدم ہے جس سے ہر کنبے کو پانچ لاکھ روپئے کے سالانہ کا صحت بیمے کی سہولت فراہم ہو سکے گی جس سے تقریباً  50 کروڑ افراد استفادہ کر سکیں گے۔اس کے ساتھ ہی 1.5 لاکھ ضمنی مراکز اور پرائمری صحتی مراکز کو ہیلتھ اینڈ ویل نیس سینٹر (ایچ ڈبلیو سی) میں تبدیل کرنے کی کوشش بھی ہے جن کے ذریعہ پورے ملک میں جامع ابتدائی حفظانِ صحت کی خدمات دستیاب کرائی جا سکیں گی۔

آج ملک بھر میں حفظانِ صحت کے شعبے کی ڈھانچہ جاتی سہولیات کو بڑے پیمانے پر فروغ دیا جا رہا ہے۔
• اے آئی آئی ایم ایس جیسے 20 نئے سپر اسپیشلیٹی ہسپتال قائم کیے جا رہے ہیں۔
• گذشتہ چار برسوں کے دوران کل 92 میڈیکل کالج قائم کیے جا چکے ہیں، جس کے نتیجے میں ایم بی بی ایس کی 15,354 نشستوں کا اضافہ ہو چکا ہے۔
• 73 سرکاری میڈیکل کالجوں کی تازہ کاری کی جا رہی ہے۔
• 2014 سے اب تک مصروف کار اے آئی آئی ایم سے ہسپتالوں کو 1675 مزید اسپتالی بستر فراہم کرائے جا چکے ہیں۔
• سال 2017-18 کے دوران جھارکھنڈ اور گجرات میں دو نئے اے آئی آئی ایم اسپتال قائم کیے جانے کا اعلان کیا جا چکا ہے۔
• پچھلے چار برسوں کے دوران کل 12,646 پوسٹ گریجیوٹ نشستوں (براڈ اینڈ سپر اسپیشلٹی کورس) کا اضافہ کیا جا چکا ہے۔

پالیسیاں اور قوانین

قومی صحت پالیسی 15 سال کے وقفے کے بعد 2017 میں تیار کی گئی تھی۔ اس میں تغیر پذیر سماجی۔ معاشی، وبائی امراض کے میدان میں ابھرتی چنوتیوں کے تدارک کا تعین کیا گیا ہے۔

شروع میں دماغی صحت کو ازحد نظرانداز کیا جانے والا میدان سمجھا جاتا تھا لیکن اب وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت نے اس کو خاطر خواہ اہمیت دی ہے۔ مینٹل ہیلتھ کیئر ایکٹ 2017 میں ہندوستان میں دماغی صحت کے لئے حقوق پر مبنی ایک قانونی نظام مرتب کیا گیا ہے، جس سے دماغی مسائل کے شکار لوگوں کے حقوق کی حفاظ کی غرض سے دماغی حفظانِ صحت کی فراہمی میں معیار اور مقدار کے نظام کو مستحکم کیا گیا ہے۔

بیماریوں کا خاتمہ

تپ دق (ٹی بی) ایک متعدی مرض ہے۔ دنیا بھر کے ٹی بی مریضوں کے چوتھائی حصے کے بقدر مریض ہندوستان میں موجود ہیں۔ 2030 تک ٹی بی کی وبا سے نجات کے لئے ترقی کے پائیدار نشانے معین کیے گئے ہیں۔ عالمی نشانوں کی تکمیل سے قبل ہندوستان میں ٹی بی کے مرض کے خاتمے کے لئے زبردست کوششیں کی جا رہی ہیں۔ دواؤں سے حساس تپ دق کے علاج کے علاج کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی کی سرکار کے تحت چار لاکھ ڈی او ٹی مراکز قائم کیے گئے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی سرکار نے گھر گھر جاکر ٹی بی کے مرض کا پتہ لگانے کی مہم بھی شروع کی ہے۔ جس کے تحت ایکٹو کیس فائنڈنگ کے مطابق 5.5 کروڑ افراد میں ٹی بی کے مرض کے آثار پائے گئے ہیں۔ ٹی بی کا مرض انسان کی غذا اور آمدنی پر مضر اثرات مرتب کرتا ہے کیونکہ اس میں مریض چلنے پھرنے کے لائق نہیں رہ جاتا۔ اس مرض کے علاج کی مدت کے دوران غذائی معاونت کے طور پر 500 روپئے ماہانہ کی راست نقدی منتقلی کا انتظام کیا گیا ہے۔

2018 تک جذام (کوڑھ) کے مرض کے خاتمے، 2020 تک خسرے کے مرض کے خاتمے اور 2025 تک ٹی بی کے مرض کے خاتمے کے پروگراموں پر عمل آوری کی جا رہی ہے۔ ہندوستان نے دسمبر 2015 کے عالمی نشانے سے قبل مئی 2015 میں ہی مادرانا اور نو مولودیت کے دوران ٹیٹنس کو ختم کرنے کی کامیابی حاصل کر لی ہے۔

عطیات
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
‘Modi Should Retain Power, Or Things Would Nosedive’: L&T Chairman Describes 2019 Election As Modi Vs All

Media Coverage

‘Modi Should Retain Power, Or Things Would Nosedive’: L&T Chairman Describes 2019 Election As Modi Vs All
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi Adorns Colours of North East
March 22, 2019
Share
 
Comments

The scenic North East with its bountiful natural endowments, diverse culture and enterprising people is brimming with possibilities. Realising the region’s potential, the Modi government has been infusing a new vigour in the development of the seven sister states.

Citing ‘tyranny of distance’ as the reason for its isolation, its development was pushed to the background. However, taking a complete departure from the past, the Modi government has not only brought the focus back on the region but has, in fact, made it a priority area.

The rich cultural capital of the north east has been brought in focus by PM Modi. The manner in which he dons different headgears during his visits to the region ensures that the cultural significance of the region is highlighted. Here are some of the different headgears PM Modi has carried during his visits to India’s north east!