“This is India’s Time”
“Every development expert group in the world is discussing how India has transformed in the last 10 years”
“World trusts India today”
“Stability, consistency and continuity make for the ‘first principles’ of our overall policy making”
“India is a welfare state. We ensured that the government itself reaches every eligible beneficiary”
“Productive expenditure in the form of capital expenditure, unprecedented investment in welfare schemes, control on wasteful expenditure and financial discipline - Four main factors in each of our budgets”
“Completing projects in a time-bound manner has become the identity of our government”
“We are addressing the challenges of the 20th century and also fulfilling the aspirations of the 21st century”
“White Paper regarding policies followed by the country in the 10 years before 2014 presented in this session of Parliament”

گیانا کے وزیر اعظم مسٹر مارک فلپس، مسٹر ونیت جین، صنعت کے رہنما، سی ای او، دیگر معززین، خواتین و حضرات،

دوستو، عالمی کاروباری سربراہ ملاقات کی ٹیم نے اس بار سربراہ ملاقات کے لیے جو موضوع طے کیا ہے، میرے خیال میں وہ موضوع خود بہت اہم ہے۔ رکاوٹ، ترقی اور تنوع آج کے دور میں بہت مشہور الفاظ ہیں۔ اور خلل، ترقی اور تنوع کی اس بحث میں، سبھی متفق ہیں کہ یہ بھارت کا وقت ہے۔ اور بھارت پر پوری دنیا کا اعتماد مسلسل بڑھ رہا ہے۔ ہم نے ابھی داووس میں ایسے لوگوں کا کمبھ میلہ دیکھا ہے، وہاں مائع کچھ اور ہے، وہاں گنگا جل نہیں ہے۔ داووس میں بھی بھارت کے تئیں بے مثال جوش دیکھنے میں آیا ہے۔ کسی نے کہا کہ بھارت ایک بے مثال اقتصادی کامیابی کی داستان ہے۔ داووس میں جو کہا گیا وہی دنیا کے پالیسی ساز کہہ رہے ہیں۔ کسی نے کہا کہ بھارت کا ڈیجیٹل اور فزیکل بنیادی ڈھانچہ نئی بلندیوں پر ہے۔ ایک تجربہ کار نے کہا کہ اب دنیا میں کوئی ایسی جگہ نہیں ہے جہاں بھارت کا غلبہ نہ ہو۔ یہاں تک کہ ایک سینئر عہدیدار نے بھارت کی صلاحیتوں کا موازنہ 'بڑھے ہوئے بیل' سے کیا۔ آج دنیا کے ہر ڈیولپمنٹ ایکسپرٹ گروپ میں یہ چرچا ہے کہ 10 سال میں بھارت بدل گیا ہے۔ اور اب ونیت جی بیان کر رہے تھے، اس میں بہت سی باتوں کا ذکر تھا۔ یہ چیزیں بتاتی ہیں کہ آج دنیا کا بھارت پر کتنا اعتماد ہے۔ بھارت کی صلاحیت کے حوالے سے دنیا میں اس سے پہلے کبھی ایسے مثبت جذبات نہیں تھے۔ دنیا میں شاید ہی کسی نے بھارت کی کامیابی کے بارے میں اس طرح کے مثبت جذبات کا احساس کیا ہو۔ اسی لیے میں نے لال قلعہ سے کہا ہے کہ – یہی سمے، صحیح سمے ہے۔

 

دوستو،

کسی بھی ملک کی ترقی کے سفر میں ایک وقت ایسا آتا ہے جب تمام حالات اس کے موافق ہوتے ہیں۔ جب وہ ملک آنے والی کئی صدیوں تک خود کو مضبوط بناتا ہے۔ میں آج بھارت کے لیے وہی وقت دیکھ رہا ہوں۔ اور جب میں ہزار سال کی بات کرتا ہوں تو بہت سوچ سمجھ کر بات کرتا ہوں۔ یہ سچ ہے کہ اگر کسی نے کبھی ہزار الفاظ نہ سنے ہوں، ہزار دن نہ سنے ہوں تو اسے ہزار سال بہت طویل معلوم ہوتے ہیں، لیکن کچھ لوگ ایسے ہوتے ہیں جو دیکھنے کے قابل ہوتے ہیں۔ یہ مدت واقعی بے مثال ہے۔ ایک طرح سے ’نیک ایام ‘ کا دور شروع ہو گیا ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب ہماری شرح نمو مسلسل بڑھ رہی ہے اور ہمارا مالیاتی خسارہ کم ہو رہا ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب ہماری برآمدات بڑھ رہی ہیں اور چالو کھاتہ خسارہ کم ہو رہا ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب ہماری پیداواری سرمایہ کاری ریکارڈ بلندی پر ہے اور افراط زر قابو میں ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب مواقع اور آمدنی دونوں بڑھ رہے ہیں اور غربت کم ہو رہی ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب کھپت اور کارپوریٹ منافع دونوں بڑھ رہے ہیں اور بینک این پی اے میں ریکارڈ کمی آئی ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب پیداوار اور پیداواری صلاحیت دونوں بڑھ رہی ہیں۔ اور... یہ وہ وقت ہے جب ہمارے ناقدین کے حوصلے ازحد پست ہیں۔

دوستو،

اس مرتبہ ہمارے عبوری بجٹ کو ماہرین اور میڈیا میں ہمارے دوستوں کی جانب سے بھی کافی پذیرائی ملی ہے۔ کئی تجزیہ کاروں نے بھی اس کی تعریف کی ہے اور کہا ہے کہ یہ پاپولسٹ بجٹ نہیں ہے اور یہ تعریف کی ایک وجہ بھی ہے۔ میں اس جائزے کے لیے اس کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ لیکن میں ان کے تجزیے میں کچھ اور چیزیں شامل کرنا چاہوں گا… کچھ بنیادی نکات کی طرف توجہ مبذول کرانا چاہوں گا۔ اگر آپ ہمارے بجٹ یا مجموعی پالیسی سازی پر بات کرتے ہیں، تو آپ کو اس میں کچھ اولین اصول نظر آئیں گے۔ اور وہ پہلے اصول ہیں - استحکام، مستقل مزاجی، تسلسل، یہ بجٹ بھی اسی کی توسیع ہے۔

 

دوستو،

جب کسی کو آزمانا ہوتا ہے تو اسے مشکل یا چیلنج کے وقت ہی آزمایا جا سکتا ہے۔ کورونا وبا اور اس کے بعد کا پورا دور دنیا بھر کی حکومتوں کے لیے ایک بڑا امتحان بن گیا۔ کسی کو اندازہ نہیں تھا کہ صحت اور معیشت کی اس دوہری چنوتی سے کیسے نمٹا جائے۔ اس عرصے کے دوران بھارت میں سب سے زیادہ… یاد ہے اس دن میں مسلسل ٹی وی پر آتا تھا اور ملک سے رابطہ کرتا تھا۔ اور بحران کی اس گھڑی میں ہر لمحہ ہم وطنوں کے سامنے سینہ تان کر کھڑا رہتا تھا۔ اور اس وقت ابتدائی دنوں میں، میں نے کہا تھا اور میں نے جان بچانے کو ترجیح دی تھی۔ اور ہم نے کہا کہ اگر زندگی ہے تو جہان ہے۔ آپ کو یاد ہو گا۔ ہم نے اپنی تمام تر توانائیاں زندگی بچانے والے وسائل جمع کرنے اور لوگوں کو آگاہ کرنے میں صرف کی۔ حکومت نے غریبوں کے لیے راشن مفت کر دیا۔ ہم نے میڈ ان انڈیا ویکسین پر توجہ مرکوز کی۔ ہم نے اس امر کو بھی یقینی بنایا کہ یہ ویکسین ہر بھارت تک جلد پہنچ جائے۔ جیسے ہی اس مہم نے زور پکڑا… ہم نے کہا جان بھی ہے، جہان بھی ہے۔

ہم نے صحت اور معاش دونوں کے تقاضوں پر توجہ دی۔ حکومت نے خواتین کے بینک کھاتوں میں براہ راست رقم ارسال کی... ہم نے سڑکوں پر دکانداروں اور چھوٹے صنعت کاروں کو مالی مدد فراہم کی، ہم نے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے تمام تر اقدامات کیے کہ کاشتکاری میں کوئی پریشانی نہ ہو۔ ہم نے مصیبت کو موقع میں تبدیل کرنے کا عزم کیا۔ میڈیا کی دنیا سے تعلق رکھنے والے میرے دوستو، آپ اس وقت کے اخبارات نکال کر دیکھ سکتے ہیں... اس وقت بڑے ماہرین کی رائے تھی کہ پیسے چھاپیں، نوٹ چھاپیں، تاکہ ڈیمانڈ بڑھے اور بڑے کاروبار کو مدد ملے۔ میں سمجھ سکتا ہوں کہ صنعتی شعبے کے افراد نے مجھ پر رُباب ڈالے، وہ تو میں سمجھ سکتا ہوں، آج بھی ایسا ہی کریں گے۔ لیکن تمام نوبل انعام یافتہ بھی مجھے ایک ہی بات بتاتے تھے، دو – دو، بس یہی چل رہا تھا۔ دنیا کی کئی حکومتوں نے بھی یہ راستہ اختیار کیا تھا۔ لیکن اس قدم کا نتیجہ تو شاید اور کچھ نہ نکلا لیکن ہم ملکی معیشت کو اپنی خواہش کے مطابق چلانے میں کامیاب ہوئے  اور مہنگائی ، ان لوگوں کی حالت ایسی تھی کہ آج بھی مہنگائی پر قابو نہیں پا رہے۔ انہوں نے جو راستہ اختیار کیا اس کے مضر اثرات آج بھی ہیں۔ ہم پر بھی دباؤ ڈالنے کی بہت کوششیں کی گئیں۔ ہمارے سامنے بھی آسان راستہ تھا کہ دنیا جو کچھ بھی کہہ رہی ہے، دنیا جو کچھ بھی کر رہی ہے، چلو اس میں بہہ جاتے ہیں۔ لیکن ہمیں زمینی حقائق کا علم تھا… ہم سمجھ گئے… ہم نے اپنے تجربے کی بنیاد پر کچھ فیصلے لیے۔ اور اس کا جو نتیجہ نکلا اسے دنیا میں آج بھی ستائش حاصل ہو رہی ہے۔ دنیا اس کی تعریف کر رہی ہے۔ جن پالیسیوں پر سوال اٹھائے جارہے تھے وہ ہماری پالیسیاں ثابت ہوئیں۔ اور یہی وجہ ہے کہ بھارت کی معیشت آج اتنی مضبوط پوزیشن میں ہے۔

 

ساتھیو،

ہم ایک ویلفیئر اسٹیٹ ہیں۔ ہماری ترجیح ملک کے عام آدمی کی زندگی کو آسان بنانا اور اس کے معیار زندگی کو بہتر بنانا ہے۔ یہ فطری بات ہے کہ ہم نے نئی اسکیمیں بنائیں، لیکن ہم نے اس بات کو بھی یقینی بنایا کہ اس اسکیم کے فوائد ہر اہل مستحق تک پہنچیں۔

ہم نے نہ صرف حال بلکہ ملک کے مستقبل میں بھی سرمایہ کاری کی۔ اگر آپ توجہ دیں تو آپ کو ہمارے ہر بجٹ میں چار بڑے عوامل نظر آئیں گے۔ پہلا- سرمایہ دارانہ اخراجات کی شکل میں پیداواری اخراجات کا ریکارڈ، دوسرا- فلاحی اسکیموں پر بے مثال سرمایہ کاری، تیسرا- فضول خرچی پر کنٹرول اور چوتھا- مالیاتی نظم و ضبط۔ آپ نے دیکھا ہو گا کہ ہم نے ان چاروں موضوعات کو یکساں طور پر متوازن رکھا اور چاروں موضوعات میں مقررہ اہداف حاصل کر لیے۔ آج کچھ لوگ ہم سے پوچھتے ہیں کہ ہم نے یہ کام کیسے کیا؟ میں اس کا جواب کئی طریقوں سے دے سکتا ہوں۔ اور ایک اہم طریقہ پیسہ بچانے کا منتر رہا ہے پیسہ کمایا گیا ہے۔ مثال کے طور پر، ہم نے پروجیکٹوں  کو تیزی سے مکمل کر کے اور وقت پر مکمل کر کے ملک کا بہت پیسہ بچایا۔ منصوبوں کو مقررہ مدت میں مکمل کرنا ہماری حکومت کی پہچان بن چکی ہے۔ میں ایک مثال دیتا ہوں۔ مشرقی کلی طور پر وقف مال بھاڑا گلیارہ 2008 میں شروع کیا گیا تھا۔ اگر سابقہ ​​حکومت تیزی سے کام کرتی تو اس کی لاگت 16,500 کروڑ روپے ہوتی۔ لیکن یہ گذشتہ برس مکمل ہوا، اس وقت تک اس کی لاگت بڑھ کر 50 ہزار کروڑ روپے سے تجاوز کر چکی تھی۔ اسی طرح آپ آسام کے بوگی بیل پل کو بھی جانتے ہیں۔ اس کی شروعات 1998 میں ہوئی تھی اور اسے 1100 کروڑ روپے کے خرچ سے مکمل ہونا تھا۔ وہاں کیا ہوا جان کر آپ حیران رہ جائیں گے، کچھ دیر بعد ہم آئے اور سپیڈ تھوڑی بڑھا دی۔ یہ معاملہ 1998 سے چل رہا تھا۔ ہم نے اسے 2018 میں مکمل کیا۔ پھر بھی جو معاملہ 1100 کروڑ کا تھا وہ 5 ہزار کروڑ تک پہنچ گیا ہے۔ میں آپ کو ایسے بہت سے پروجیکٹس گنا سکتا ہوں۔ جو پیسہ پہلے ضائع ہو رہا تھا وہ کس کا تھا؟ یہ پیسہ کسی لیڈر کی جیب سے نہیں آرہا تھا، یہ ملک کا پیسہ تھا، یہ ملک کے ٹیکس دہندگان کا پیسہ تھا، یہ آپ لوگوں کا پیسہ تھا۔ ہم ٹیکس دہندگان کے پیسے کا احترام کرتے ہیں، ہم نے منصوبوں کو وقت پر مکمل کرنے کے لیے اپنی تمام تر کوششیں کیں۔ آپ نے دیکھا کہ پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی تعمیر کتنی تیزی سے ہوئی۔ کرتویہ پتھ ہو... ممبئی کا اٹل پل ہو... ملک نے ان کی تعمیر کی رفتار دیکھی ہے۔ اسی لیے آج ملک کہتا ہے- اسکیم کا سنگ بنیاد مودی نے رکھا، اس کا افتتاح بھی مودی نے کیا۔

 

ساتھیو،

ہماری حکومت نے نظام میں شفافیت لا کر اور تکنالوجی کا استعمال کر کے ملک کا پیسہ بھی بچایا ہے۔ آپ سوچ سکتے ہیں... کانگریس حکومت کے وقت سے، کاغذات میں... آپ کو یہ سن کر حیرانی ہوگی کہ کاغذات میں 10 کروڑ نام آ رہے تھے، جو فرضی مستفید تھے... ایسے مستفید جو پیدا ہی نہیں ہوئے تھے۔ 10 کروڑ ایسی بیوائیں تھیں جو کبھی پیدا ہی نہیں ہوئیں۔ ہم نے کاغذات سے ایسے 10 کروڑ فرضی نام نکال دیئے۔ ہم نے براہِ راست فائدہ منتقلی اسکیم شروع کی۔ ہم نے پیسے کی لیکیج کو روک دیا۔ ایک وزیر اعظم کہہ کر گئے ہیں کہ جب 1 روپیہ نکلتا ہے تو 15 پیسے پہنچتے ہیں۔ ہم نے ڈائریکٹ ٹرانسفر کیا، 1 روپیہ نکلتا ہے، 100 پیسے پہنچتے ہیں، 99 بھی نہیں۔ براہ راست فائدہ منتقلی اسکیم کا نتیجہ یہ ہے کہ ملک کے تقریباً 3 لاکھ کروڑ روپے غلط ہاتھوں میں جانے سے بچ گئے ہیں۔ ہماری حکومت نے ایک پورٹل، جی ای ایم شروع کیا، تاکہ ان چیزوں میں شفافیت لائی جا سکے جنہیں حکومت خریدتی ہے، جی ای ایم… اس کے ذریعے ہم نے نہ صرف وقت بچایا ہے، بلکہ معیار بھی بہتر ہوا ہے۔ بہت سے لوگ سپلائی کرنے والے بن گئے ہیں۔ اور اس میں حکومت نے تقریباً 65 ہزار کروڑ روپے کی بچت کی ہے، 65 ہزار کروڑ روپے کی بچت… آپ کو اس کے فوائد بھی دن بہ دن مل رہے ہیں۔ گذشہ ایک سال میں ہم نے پٹرول میں ایتھنول ملا کر 24 ہزار کروڑ روپے بچائے ہیں۔ اور یہی نہیں، صفائی مہم جس کا کچھ لوگ مذاق اڑاتے ہیں، اس ملک کے وزیر اعظم صفائی کی بات کرتے رہتے ہیں۔ میں نے صفائی مہم کے تحت سرکاری عمارتوں میں صفائی ستھرائی کے کام سے نکلنے والے ردی کو بیچ کر 1100 کروڑ روپے کمائے ہیں۔

اور ساتھیو،

ہم نے اپنی اسکیمیں بھی اس طرح بنائیں کہ ملک کے شہریوں کا پیسہ بچ جائے۔ آج جل جیون مشن کی وجہ سے غریبوں کو پینے کا صاف پانی ملنا ممکن ہو گیا ہے۔ جس کی وجہ سے ان کے بیماری پر ہونے والے اخراجات میں کمی آئی ہے۔ آیوشمان بھارت نے ملک کے غریبوں کو ایک لاکھ کروڑ روپے خرچ کرنے سے بچایا ہے اور ان کا علاج کروایا ہے۔ پی ایم جن اوشدھی کیندروں پر 80فیصد ڈسکاؤنٹ اور ہمارے ملک میں ڈسکاؤنٹ ایک طاقت ہے، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ اسٹور کتنا ہی اچھا ہو، سامان کتنا ہی اچھا ہو، اگر ساتھ والی دکان 10فیصد ڈسکاؤنٹ کہتی ہے، تو تمام خواتین وہاں جائیں گی۔ 80 فیصد ڈسکاؤنٹ کے ساتھ ہم ملک کے متوسط ​​طبقے اور غریب خاندانوں کو دوائیں فراہم کرتے ہیں، جن اوشدھی کیندر میں، اور جنہوں نے وہاں سے دوائیں خریدی ہیں، ان کی 30 ہزار کروڑ روپے کی بچت ہوئی ہے۔

 

ساتھیو،

میں نہ صرف موجودہ نسل بلکہ آنے والی کئی نسلوں کے سامنے بھی جوابدہ ہوں۔ میں صرف اپنی روزمرہ کی زندگی پوری کرکے نہیں جانا چاہتا ہوں۔ میں آپ کو آنے والی نسلوں کا مستقبل محفوظ بناکر جانا چاہتا ہوں۔

ساتھیو،

میں خزانہ خالی کرنے اور مزید چار ووٹ حاصل کرنے کی سیاست سے دور رہتا ہوں۔ اور اس لیے ہم نے پالیسیوں میں، فیصلوں میں مالیاتی انتظام کو اولین ترجیح دی ہے۔ میں آپ کو ایک چھوٹی سی مثال دوں گا۔ آپ کو بجلی کے حوالے سے بعض جماعتوں کا نقطہ نظر معلوم ہے۔ یہ طرز عمل ملک کے نظامِ اقتدار کو تباہی کی طرف لے جانے والا ہے۔ میرا طریقہ ان سے مختلف ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ ہماری حکومت ایک کروڑ گھروں کے لیے روف ٹاپ سولر سکیم لائی ہے۔ اس سکیم سے لوگ بجلی پیدا کر کے اپنے بجلی کے بل کو صفر تک کم کر سکیں گے اور زیادہ بجلی بیچ کر پیسے بھی کما سکیں گے۔ ہم نے اُجالا اسکیم شروع کی جو سستے ایل ای ڈی بلب فراہم کرتی ہے… ہماری پچھلی حکومت میں ایل ای ڈی بلب 400 روپے میں دستیاب تھے۔ جب ہم یہاں آئے تو حالات بہتر ہو گئے اور ہمیں 40-50 روپے میں ملنا شروع ہو گئے اور معیار بھی وہی تھا، کمپنی بھی وہی تھی۔ ایل ای ڈی کی وجہ سے لوگوں نے بجلی کے بلوں میں تقریباً 20 ہزار کروڑ روپے کی بچت کی ہے۔

ساتھیو،

آپ سب یہاں… تجربہ کار صحافیوں کی ایک بڑی تعداد بھی یہاں بیٹھی ہے… آپ کو معلوم ہے… سات دہائیوں سے دن رات غریبی مٹاؤ کے نعرے لگائے جارہے ہیں۔ ان نعروں سے غربت تو دور نہیں ہوئی لیکن اس وقت کی حکومتوں نے غربت دور کرنے کی تجاویز دینے والی انڈسٹری ضرور بنائی۔ اس سے انہوں نے پیسے کمائے۔ مشاورتی خدمات فراہم کرنے کے لیے نکلے تھے۔ اس صنعت کے لوگ ہر بار غربت مٹانے کے نئے نئے فارمولے بتاتے اور خود کروڑ پتی بن گئے لیکن ملک سے غربت کم نہ کر سکے۔ برسوں تک غربت دور کرنے کے فارمولے پر اے سی کمروں میں بیٹھ کر بحث ہوتی رہی... شراب اور پنیر کے ساتھ اور غریب غریب ہی رہا۔ لیکن 2014 کے بعد جب وہ غریب کا بیٹا وزیراعظم بنا تو غربت کے نام پر چلنے والی یہ صنعت ٹھپ ہو گئی۔ میں غربت سے نکل کر یہاں آیا ہوں اس لیے مجھے غربت سے لڑنا معلوم ہے۔ ہماری حکومت نے غربت سے لڑنے کی مہم چلائی۔ جب ہر سمت کام شروع ہوا تو نتیجہ یہ نکلا کہ پچھلے 10 برسوں میں 25 کروڑ لوگ غربت سے باہر آئے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ہماری حکومت کی پالیسیاں درست ہیں، ہماری حکومت کی سمت درست ہے۔ اس سمت میں آگے بڑھ کر ہم ملک کی غربت کو کم کریں گے اور اپنے ملک کو ترقی یافتہ بنائیں گے۔

 

ساتھیو،

حکمرانی کا ہمارا ماڈل بیک وقت دو راستوں پر آگے بڑھ رہا ہے۔ ایک جانب، ہم 20ویں صدی کی چنوتیوں سے نمٹ رہے ہیں۔ جو ہمیں ورثے میں ملی ہے۔ اور دوسری جانب ہم اکیسویں صدی کی امنگوں کو پورا کرنے میں مصروف ہیں۔ ہم کسی کام کو چھوٹا نہیں سمجھتے تھے۔ دوسری طرف ہم نے بڑی چنوتیوں کا سامنا کیا اور بڑے اہداف حاصل کئے۔ اگر ہماری حکومت نے 11 کروڑ بیت الخلاء بنائے ہیں تو اس نے خلائی شعبے میں بھی نئے امکانات پیدا کیے ہیں۔ اگر ہماری حکومت نے غریبوں کو 4 کروڑ گھر دیے ہیں تو اس نے 10 ہزار سے زیادہ اٹل ٹنکرنگ لیب بھی بنائے ہیں۔ اگر ہماری حکومت نے 300 سے زیادہ میڈیکل کالج بنائے ہیں تو مال بھاڑا گلیاروں اور دفاعی گلیاروں  پر بھی کام تیز رفتاری سے جاری ہے۔ ہماری حکومت نے وندے بھارت ٹرینیں چلائی ہیں اور دہلی سمیت ملک کے کئی شہروں میں تقریباً 10 ہزار الیکٹرک بسیں بھی چلائی ہیں۔ ہماری حکومت نے کروڑوں بھارتیوں کو بینکنگ سے مربوط کیا ہے اور ڈیجیٹل انڈیا اور فن ٹیک کے ذریعے سہولیات کا ایک پل بھی بنایا ہے۔

ساتھیو،

اس وقت اس ہال میں ملک و دنیا کے تمام مفکرین اور انڈسٹری سے تعلق رکھنے والے معززین بیٹھے ہیں۔ آپ اپنی تنظیم کے لیے اہداف کیسے طے کرتے ہیں، آپ کے لیے کامیابی کی تعریف کیا ہے؟ بہت سے لوگ کہیں گے کہ ہم نے اپنا ہدف وہیں سے طے کیا جہاں ہم پچھلے سال تھے، پہلے ہم 10 پر تھے، اب ہم 12، 13، 15 پر جائیں گے۔ اگر 5-10 فیصد اضافہ ہو تو اسے اچھا سمجھا جاتا ہے۔ میں کہوں گا کہ یہ "محدود ترقی کے طرز فکر کی لعنت " ہے۔ یہ غلط ہے کیونکہ آپ خود کو محدود کر رہے ہیں۔ کیونکہ آپ خود پر بھروسہ کرکے اپنی رفتار سے آگے نہیں بڑھ رہے ہیں۔ مجھے یاد ہے کہ جب میں حکومت میں آیا تھا تو ہماری بیوروکریسی بھی اسی سوچ میں پھنسی ہوئی تھی۔ میں نے فیصلہ کیا کہ بیوروکریسی کو اس سوچ سے نکالوں گا تب ہی ملک اس سوچ سے نکل سکے گا۔ میں نے سابقہ حکومتوں کے مقابلے بہت بڑے پیمانے پر اور زیادہ رفتار سے کام کرنے کا فیصلہ کیا۔ اور آج دنیا اس کے نتائج دیکھ رہی ہے۔ بہت سے شعبے ایسے ہیں جن میں گذشتہ 70 برسوں یا 7 دہائیوں سے زیادہ کام گذشتہ 10 برسوں میں ہوا ہے۔ یعنی آپ 7 دہائیوں اور ایک دہائی کا موازنہ کریں… 2014 تک 7 دہائیوں میں تقریباً 20 ہزار کلومیٹر ریلوے لائنوں کو برق کاری سے آراستہ کیا گیا، 7 دہائیوں میں 20 ہزار کلومیٹر۔ ہم نے اپنی حکومت کے 10 برسوں میں 40 ہزار کلومیٹر سے زیادہ ریلوے لائنوں کو برق کاری کا کام انجام دیا۔ اب بتاؤ کوئی مقابلہ ہے؟ میں مئی کے مہینے کی بات نہیں کر رہا۔ 2014 تک 7 دہائیوں میں 4 لین یا اس سے زیادہ کی تقریباً 18 ہزار کلومیٹر قومی شاہراہیں بنائی گئیں، 18 ہزار۔ ہم نے اپنی حکومت کے 10 برسوں میں تقریباً 30 ہزار کلومیٹر لمبی شاہراہیں بنائی ہیں۔ 70 سال میں 18 ہزار کلومیٹر... 10 سال میں 30 ہزار کلومیٹر... اگر میں محدود ترقی کی سوچ کے ساتھ کام کرتا تو کہاں پہنچ جاتا بھائی؟

ساتھیو،

2014 تک، بھارت میں 7 دہائیوں میں 250 کلومیٹر سے بھی کم میٹرو ریل نیٹ ورک تیار کیا گیا۔ گذشتہ 10 برسوں میں، ہم نے 650 کلومیٹر سے زیادہ کا نیا میٹرو ریل نیٹ ورک بنایا ہے۔ 2014 تک 7 دہائیوں میں، ہندوستان میں 3.5 کروڑ کنبوں کے پاس نل کے پانی کے کنکشن تھے، 3.5 کروڑ… 2019 میں، ہم نے جل جیون مشن شروع کیا۔ محض گذشتہ 5 برسوں میں، ہم نے دیہی علاقوں میں 10 کروڑ سے زیادہ گھروں کو نل کا پانی فراہم کیا ہے۔

ساتھیو،

2014 سے پہلے 10 برسوں میں ملک میں جو پالیسیاں چلائی گئیں وہ دراصل ملک کو غربت کی راہ پر گامزن کر رہی تھیں۔ اس سلسلے میں پارلیمنٹ کے اس اجلاس میں ہم نے بھارت کی معاشی صورتحال کے حوالے سے ایک وائٹ پیپر بھی پیش کیا ہے۔ آج اس کی بحث بھی چل رہی ہے اور آج جب سامعین کی اتنی بڑی تعداد موجود ہے تو میں بھی بتاتا ہوں کہ میرے ذہن میں کیا ہے۔ یہ وائٹ پیپر جو میں آج لایا ہوں، 2014 میں بھی لا سکتا تھا۔ اگر میں سیاسی مفادات حاصل کرنا چاہتا تو 10 سال پہلے ملک کے سامنے یہ اعداد و شمار پیش کر دیتا۔ لیکن جب 2014 میں یہ چیزیں میرے علم میں آئیں تو میں حیران رہ گیا۔ معیشت ہر لحاظ سے انتہائی نازک حالت میں تھی۔ گھوٹالوں اور مفلوج پالیسی کے حوالے سے دنیا بھر کے سرمایہ کاروں میں پہلے ہی بڑی مایوسی تھی۔ اگر میں اس وقت ان چیزوں کو کھولتا تو ذرا سا نیا غلط اشارہ بھی جاتا تو شاید ملک کا اعتماد ٹوٹ جاتا، لوگ سمجھتے کہ ڈوب چکے ہیں اب بچ نہیں سکتے۔ مثال کے طور پر، اگر کسی مریض کو پتہ چلتا ہے کہ اسے یہ سنگین بیماری ہے، تو آدھار وہیں ختم ہو جاتا ہے اور ملک کی وہی حالت ہو جاتی ہے۔ ان تمام چیزوں کو سامنے لاتے ہوئے یہ سیاسی طور پر میرے لیے موزوں تھا۔ سیاست مجھے ایسا کرنے کو کہتی ہے لیکن قومی مفاد مجھے ایسا کرنے کی اجازت نہیں دیتا اس لیے میں نے سیاست کا راستہ چھوڑ کر قومی پالیسی کا راستہ اختیار کیا۔ اور گذشتہ 10 برسوں میں جب تمام حالات مضبوط ہو چکے ہیں۔ ہم کسی بھی حملے کا مقابلہ کرنے کے لیے اتنے مضبوط ہو چکے ہیں، اس لیے مجھے لگا کہ مجھے ملک کو سچ بتانا چاہیے۔ اور اسی لیے میں نے کل پارلیمنٹ میں وائٹ پیپر پیش کیا ہے۔ اگر آپ غور کریں تو معلوم ہوگا کہ ہم کہاں تھے اور کتنے برے حالات سے گزر کر آج یہاں تک پہنچے ہیں۔

ساتھیو،

آج آپ ہندوستان کی ترقی کی نئی بلندیوں کو دیکھ رہے ہیں۔ ہماری حکومت نے بہت سے کام کیے ہیں۔ اور اب میں دیکھ رہا تھا کہ ہمارے ونیت جی بار بار کہہ رہے تھے کہ دنیا کی تیسری معیشت، تیسری معیشت۔ اور کسی کو کوئی شک نہیں، میں دیکھ رہا تھا کہ ونیت جی بہت شائستگی سے بولتے ہیں، بہت نرم لہجے میں۔ لیکن پھر بھی آپ سب مانتے ہیں کہ ہاں یار! ہم تیسرے نمبر پر پہنچ جائیں گے، کیوں؟ میں ان کے پاس بیٹھا تھا۔ اور میں آپ کو گارنٹی دیتا ہوں کہ ہماری تیسری مدت میں ملک معیشت میں دنیا میں تیسرے نمبر پر پہنچ جائے گا۔ اور دوستو آپ بھی تیار رہو، میں کچھ نہیں چھپاتا۔ میں بھی سب کو تیاری کا موقع دیتا ہوں۔ لیکن لوگ سمجھتے ہیں کہ وہ سیاست دان ہے اس لیے بولتے رہتے ہیں۔ لیکن اب جب کہ آپ کو میرا تجربہ ہو چکا ہے، میں ایسی بات نہیں کرتا۔ اور تو میں آپ کو بتاتا چلوں کہ تیسری مدت میں… اس سے بھی بڑے فیصلے ہونے والے ہیں۔ میں بھارت میں غربت کو ختم کرنے اور بھارت کی ترقی کو ایک نئی تحریک دینے کے لیے پچھلے ڈیڑھ سال سے نئی اسکیمیں تیار کر رہا ہوں۔ اور میں مختلف سمتوں میں کیسے کام کروں گا، کہاں لے جاؤں گا۔ میں اس کا مکمل روڈ میپ بنا رہا ہوں۔ اور میں نے مختلف طریقوں سے 15 لاکھ سے زیادہ لوگوں سے تجاویز حاصل کی ہیں۔ 15 لاکھ سے زیادہ لوگوں کے ساتھ، میں اس پر کام کر رہا ہوں۔ میں آپ کو پہلی مرتبہ بتا رہا ہوں کہ میں نے کبھی کوئی پریس نوٹ نہیں دیا۔ کام جاری ہے اور یہ آنے والے 20-30 دنوں میں اپنی حتمی شکل اختیار کر لے گا۔ نیو انڈیا اب اتنی تیز رفتاری سے کام کرے گا...اور یہی مودی کی گارنٹی ہے۔ مجھے امید ہے کہ اس سربراہ اجلاس میں مثبت بات چیت ہوگی۔ بہت سے اچھے مشورے سامنے آئیں گے ، جو روڈ میپ تیار ہو رہا ہے وہ ہمارے بھی کام آئے گا۔ ایک مرتبہ پھر اس اہتمام کے لیے میری جانب سے بہت ساری نیک خواہشات۔

بہت بہت شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
PM Modi writes to first-time voters in Varanasi, asks them to exercise franchise

Media Coverage

PM Modi writes to first-time voters in Varanasi, asks them to exercise franchise
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،29مئی 2024
May 30, 2024

PM Modi's Endeavours for a Viksit Bharat Earns Widespread Praise Across the Country