Share
 
Comments
کھلاڑیوں اور ان کے اہل خانہ کے ساتھ غیررسمی اور برجستہ گفت و شنید کی
135کروڑ بھارتیوں کی نیک خواہشات اور دعائیں آپ کے ساتھ ہیں: وزیراعظم
کھلاڑیوں کو بہترین تربیتی کیمپ، ساز و سامان، بین الاقوامی ایکسپوزر دستیاب کرائے گئے ہیں: وزیراعظم
ایتھلیٹ اس بات کا مشاہدہ کررہے ہیں کہ کیسے نئی سوچ اور نئے نکتہ نظر کے ساتھ ملک آج ان کے ساتھ کھڑا ہے: وزیراعظم
پہلی مرتبہ اتنی بڑی تعداد میں اور اتنے سارے کھیلوں میں کھلاڑیوں نے اولمپک کے لئے کوالیفائی کیا ہے: وزیراعظم
متعدد ایسے کھیل ہیں جن میں بھارت نے پہلی مرتبہ کوالیفائی کیا ہے: وزیراعظم
یہ اہل وطن کی ذمے داری ہے کہ وہ ’چیئر فور انڈیا‘ کریں: وزیر اعظم

آپ سے بات کرکے مجھے بہت اچھا لگا۔ ویسے سبھی سے بات نہیں ہو پائی، لیکن آپ کا جوش، آپ کا ولولہ پورے ملک کے سبھی لوگ آج محسوس کر رہے ہیں۔ پروگرام میں میرے ساتھ موجود ملک کے وزیر کھیل جناب انوراگ ٹھاکر جی نے اب سے کچھ دن پہلے تک وزیر کھیل کی حیثیت سے آپ سب کے ساتھ بہت کام کیا ہے۔ ایسے ہی ہمارے موجودہ وزیر قانون جناب کرن ریجیجو جی، وزیر مملکت کھیل ہمارے سب سے نوجوان وزیر جناب نشیتھ پرمانک جی، کھیل سے جڑی تنظیموں کے سبھی سربراہان، ان کے تمام ممبران، اور ٹوکیو اولمپک میں حصہ لینے جا رہے سبھی میرے ساتھیو، سبھی کھلاڑیوں کے اہل خانہ سے آج ہماری ورچوئل بات چیت ہوئی ہے لیکن مجھے اور اچھا لگتا اگر میں آپ سبھی کھلاڑیوں کو یہاں دہلی کے اپنے گھر میں مدعو کرتا، آپ لوگوں سے روبرو ملاقات کرتا۔ اس کے پہلے میں ہمیشہ ایسا کرتا رہا ہوں۔ اور میرے لیے وہ موقع بڑی خوشی کا موقع رہتا ہے۔ لیکن اس بار کورونا کی وجہ سے یہ ممکن نہیں ہو پا رہا ہے۔ اور اس بار ہمارے آدھے سے زیادہ کھلاڑی پہلے ہی بیرون ملک تربیت حاصل کر رہے ہیں۔ لیکن میں آپ سے وعدہ کرتا ہوں کہ آپ کے واپس آنے کے بعد میں سہولت کے مطابق وقت نکال کر ضرور آپ سب سے ملوں گا۔ لیکن کورونا نے بہت کچھ بدل دیا ہے۔ اولمپک کا سال بھی بدل گیا، آپ کی تیاریوں کا طریقہ بدل گیا، بہت کچھ بدلا ہوا ہے۔ اولمپک شروع ہونے میں اب صرف 10 دن باقی ہیں۔ آپ کو ٹوکیو میں بھی ایک مختلف قسم کا ماحول ملنے والا ہے۔

ساتھیو،

آج آپ کے ساتھ گفتگو کے دوران، ملک کو بھی پتہ چلا کہ آپ نے اس مشکل وقت میں بھی ملک کے لیے کتنی محنت کی ہے، کتنا پسینہ بہایا ہے۔ گزشتہ ’من کی بات‘ میں میں نے آپ میں سے کچھ ساتھیوں کی اس محنت کے بارے میں گفتگو بھی کی تھی۔ میں نے سبھی شہریوں سے اپیل کی تھی کہ وہ ملک کے کھلاڑیوں کا، آپ سب کا حوصلہ بڑھائیں۔ مجھے یہ دیکھ کر آج خوشی ہوتی ہے کہ ملک آپ کے لیے خوش ہے۔ حال کے دنوں میں ’ہیش ٹیگ چیئر فار انڈیا‘ کے ساتھ کتنی ہی تصویریں میں نے دیکھی ہیں۔ سوشل میڈیا سے لے کر ملک کے مختلف کونوں تک، پورا ملک آپ کے لیے کھڑا ہے۔ 135 کروڑ ہندوستانیوں کی یہ نیک خواہشات کھیلوں کے میدان میں داخل ہونے سے پہلے آپ سب کے لیے پورے ملک کی دعائیں ہیں۔ میں بھی اپنی طرف سے آپ کو ڈھیر ساری نیک خواہشات دیتا ہوں۔ آپ سب کو ملک کی طرف سے نیک خواہشات ملتی رہیں اس کے لیے نمو ایپ پر بھی انتظام کیا گیا ہے۔ نمو ایپ پر جا کر بھی لوگ آپ کے لیے پیغامات بھیج رہے ہیں۔

ساتھیو،

پورے ملک کے جذبات آپ سے وابستہ ہیں۔ اور جب میں آپ سب کو ایک ساتھ دیکھ رہا ہوں تو کچھ چیزیں عام نظر آتی ہیں۔ وہ ہیں، دلیری، اعتماد اور مثبت رویہ۔ آپ میں ایک عام عنصر نظر آتا ہے۔ نظم و ضبط اور عزم و حوصلہ۔ یہی خصوصیات نئے ہندوستان کی بھی ہیں۔ اسی وجہ سے، آپ سبھی ہندوستان کے عکاس ہیں، جو ملک کے مستقبل کی علامت ہے۔ آپ میں سے کچھ جنوب سے ہیں، کچھ شمال سے ہیں، کچھ مشرق سے ہیں، کچھ شمال مشرق سے ہیں۔ کچھ نے اپنے کھیل کا آغاز گاؤں کے کھیتوں سے کیا ہے، جبکہ بہت سے دوست بچپن سے ہی کچھ اسپورٹس اکیڈمی سے وابستہ ہیں۔ لیکن اب آپ سب یہاں ’ٹیم انڈیا‘ کا حصہ ہیں۔ آپ سب ملک کے لیے کھیل رہے ہیں۔ یہ تنوع، یہی ’ٹیم کی روح‘ ’ایک بھارت شریشٹھ بھارت‘ کی شناخت ہے۔

ساتھیو،

آپ سب اس بات کے گواہ ہیں کہ ملک کس طرح آج ایک نئی سوچ کے ساتھ اپنے ہر کھلاڑی کے ساتھ کھڑا ہے۔ آپ کھل کر کھیلیں، اپنی پوری صلاحیت کے ساتھ کھیل سکیں، اپنے کھیل کو، اپنی تکنیک کو اور بہتر بنا سکیں، اس کو اولین ترجیح دی گئی ہے۔ آپ کو یاد ہوگا، اولمپکس کے لیے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی بہت پہلے تشکیل دی گئی تھی۔ ہدف اولمپک پوڈیم اسکیم کے تحت تمام کھلاڑیوں کی ہر ممکن مدد کی گئی۔ آپ نے بھی اس کا تجربہ کیا ہے۔ آپ پہلے کی نسبت آج ہونے والی تبدیلیوں کو بھی محسوس کر رہے ہیں۔

میرے ساتھیو،

آپ ملک کے لیے پسینہ بہاتے ہیں، ملک کا پرچم لے کر جاتے ہیں، اس لیے ملک کا فرض ہے کہ آپ کے ساتھ مستحکم طور پر کھڑا رہے۔ ہم نے کوشش کی ہے۔ کھلاڑیوں کو اچھے ٹریننگ کیمپس کے لیے، بہتر ساز و سامان کے لیے۔ آج کھلاڑیوں کو زیادہ سے زیادہ بین الاقوامی ایکسپوژر بھی دیا جا رہا ہے۔ کھیل سے متعلقہ اداروں نے آپ کی تجاویز کو سب سے بڑھ کر رکھا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اتنے مختصر وقت میں بہت سی تبدیلیاں رونما ہوئیں۔

ساتھیو،

جس طرح کھیل کے میدان میں سخت محنت کے ساتھ صحیح حکمت عملی کو جوڑا جاتا ہے تبھی جیت پکی ہوتی ہے، یہی چیز میدان کے باہر بھی لاگو ہوتی ہے۔ اگر ملک نے ’کھیلو انڈیا‘ اور ’فٹ انڈیا‘ جیسی مہم چلاتے ہوئے مشن موڈ میں صحیح حکمت عملی کے ساتھ کام کیا ہے، تو آپ نتائج بھی دیکھ رہے ہیں۔ پہلی بار اتنی بڑی تعداد میں کھلاڑیوں نے اولمپکس کے لیے کوالیفائی کیا ہے۔ پہلی بار، ہندوستان کے کھلاڑی بہت سارے کھیلوں میں حصہ لے رہے ہیں۔

ساتھیو،

ہمارے یہاں کہا جاتا ہے ’ابھیاست جایتے نرنام دویتیا پرکرتیہ‘، یعنی ہم جیسی مشق کرتے ہیں، جیسی کوشش کرتے ہیں۔ آہستہ آہستہ یہ ہماری فطرت کا ایک حصہ بن جاتا ہے۔ اتنے عرصے سے آپ سب جیتنے کی مشق کر رہے ہیں۔ آپ سب کو دیکھ کر، آپ کی اس توانائی کو دیکھ کر، کوئی شک نہیں رہ جاتا۔ آپ اور ملک کے نوجوانوں کا جوش و خروش دیکھ کر میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ وہ دن دور نہیں جب جیتنا نیو انڈیا کی عادت بن جائے گی۔ اور یہ ابھی ابتدا ہے، جب آپ ٹوکیو جا کر ملک کا جھنڈا لہرائیں گے، تب پوری دنیا اسے دیکھے گی۔ ہاں، یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ جیتنے کے دباؤ سے نہیں کھیلنا ہے۔ اپنے دل و دماغ کو بس ایک ہی بات کہیے کہ مجھے اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنا ہے۔ میں ایک بار پھر اپنے ملک کے لوگوں سے کہوں گا ’چیئر فار انڈیا‘۔ مجھے پورا یقین ہے کہ آپ سبھی ملک کے لیے کھیلیں گے اور ملک کا فخر بڑھا کر نئی بلندیاں حاصل کریں گے۔ اس یقین کے ساتھ، آپ کا بہت بہت شکریہ! میری نیک خواہشات اور آپ کے اہل خانہ کو میرا خصوصی سلام۔ بہت شکریہ!

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Mann KI Baat Quiz
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India Inc raised $1.34 billion from foreign markets in October: RBI

Media Coverage

India Inc raised $1.34 billion from foreign markets in October: RBI
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM chairs high level meeting to review preparedness to deal with Cyclone Jawad
December 02, 2021
Share
 
Comments
PM directs officials to take all necessary measures to ensure safe evacuation of people
Ensure maintenance of all essential services and their quick restoration in case of disruption: PM
All concerned Ministries and Agencies working in synergy to proactively counter the impact of the cyclone
NDRF has pre-positioned 29 teams equipped with boats, tree-cutters, telecom equipments etc; 33 teams on standby
Indian Coast Guard and Navy have deployed ships and helicopters for relief, search and rescue operations
Air Force and Engineer task force units of Army on standby for deployment
Disaster Relief teams and Medical Teams on standby along the eastern coast

Prime Minister Shri Narendra Modi chaired a high level meeting today to review the preparedness of States and Central Ministries & concerned agencies to deal with the situation arising out of the likely formation of Cyclone Jawad.

Prime Minister directed officials to take every possible measure to ensure that people are safely evacuated and to ensure maintenance of all essential services such as Power, Telecommunications, health, drinking water etc. and that they are restored immediately in the event of any disruption. He further directed them to ensure adequate storage of essential medicines & supplies and to plan for unhindered movement. He also directed for 24*7 functioning of control rooms.

India Meteorological Department (IMD) informed that low pressure region in the Bay of Bengal is expected to intensify into Cyclone Jawad and is expected to reach coast of North Andhra Pradesh – Odisha around morning of Saturday 4th December 2021, with the wind speed ranging upto 100 kmph. It is likely to cause heavy rainfall in the coastal districts of Andhra Pradesh, Odisha & W.Bengal. IMD has been issuing regular bulletins with the latest forecast to all the concerned States.

Cabinet Secretary has reviewed the situation and preparedness with Chief Secretaries of all the Coastal States and Central Ministries/ Agencies concerned.

Ministry of Home Affairs is reviewing the situation 24*7 and is in touch with the State Governments/ UTs and the Central Agencies concerned. MHA has already released the first instalment of SDRF in advance to all States. NDRF has pre-positioned 29 teams which are equipped with boats, tree-cutters, telecom equipments etc. in the States and has kept 33 teams on standby.

Indian Coast Guard and the Navy have deployed ships and helicopters for relief, search and rescue operations. Air Force and Engineer task force units of Army, with boats and rescue equipment, are on standby for deployment. Surveillance aircraft and helicopters are carrying out serial surveillance along the coast. Disaster Relief teams and Medical Teams are standby at locations along the eastern coast.

Ministry of Power has activated emergency response systems and is keeping in readiness transformers, DG sets and equipments etc. for immediate restoration of electricity. Ministry of Communications is keeping all the telecom towers and exchanges under constant watch and is fully geared to restore telecom network. Ministry of Health & Family Welfare has issued an advisory to the States/ UTs, likely to be affected, for health sector preparedness and response to COVID in affected areas.

Ministry of Port, Shipping and Waterways has taken measures to secure all shipping vessels and has deployed emergency vessels. The states have also been asked to alert the industrial establishments such as Chemical & Petrochemical units near the coast.

NDRF is assisting the State agencies in their preparedness for evacuating people from the vulnerable locations and is also continuously holding community awareness campaigns on how to deal with the cyclonic situation.

The meeting was attended by Principal Secretary to PM, Cabinet Secretary, Home Secretary, DG NDRF and DG IMD.