Share
 
Comments
’’ جب دوسروں کی خواہشات آپ کی خواہشات بن جائیں اور جب دوسروں کے خوابوں کو پورا کرنا آپ کی کامیابی کا پیمانہ بن جائے تو فرض کی ادائیگی کا راستہ تاریخ رقم کرتا ہے ‘‘
’’ آج امنگوں والے اضلاع ، ملک کی ترقی کی رکاوٹوں کو دور کر رہے ہیں ۔ وہ رکاوٹ کے بجائے تیزی پیدا کرنے والے بن رہے ہیں ‘‘
’’ آج آزادی کا امرت کال کے دوران ، ملک کا ہدف ، خدمات اور سہولیات کا 100 فی صد حصول ہے ‘‘
’’ ملک ڈجیٹل انڈیا کی شکل میں ایک خاموش انقلاب کا مشاہدہ کر رہا ہے ۔ کسی بھی ضلع کو اِس میں پیچھے نہیں رہنا چاہیئے ‘‘

نمسکار!

پروگرام میں ہمارے ساتھ موجود ملک کی مختلف ریاستوں کے معزز وزرائے اعلیٰ، لیفٹیننٹ گورنر، مرکزی کابینہ میں میرے تمام ساتھی، تمام ریاستوں کے وزرا، مختلف وزارتوں کے سکریٹری اور ضلع مجسٹریٹ، کلکٹر-کمشنر، دیگر معززین، خواتین اور حضرات،

زندگی میں اکثر ہم دیکھتے ہیں کہ لوگ اپنی خواہشات کے لیے دن رات محنت کرتے ہیں اور انھیں کسی حد تک پورا بھی کرتے ہیں۔ لیکن جب دوسروں کی خواہشیں ہماری اپنی خواہشات بن جاتی ہیں، جب دوسروں کے خوابوں کی تکمیل ہی ہماری کامیابی کا پیمانہ بن جاتی ہے، تو وہ فرض شناسی تاریخ رقم کرتی ہے۔ آج ہم ملک کے اضلاع میں یہی تاریخ بنتے دیکھ رہے ہیں۔ مجھے یاد ہے جب یہ مہم 2018 میں شروع ہوئی تھی تو میں نے کہا تھا کہ جو علاقے کئی دہائیوں سے ترقی سے محروم ہیں وہاں کے عوام کی خدمت کا موقع ملنا اپنے آپ میں بہت بڑا اعزاز ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ آج جب ملک اپنی آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے، تو آپ اس مہم کی بہت سی کامیابیوں کے ساتھ آج یہاں موجود ہیں۔ میں آپ سب کو آپ کی کامیابی پر مبارکباد پیش کرتا ہوں، آپ کے نئے اہداف کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ میں وزراء اعلیٰ کو بھی مبارکباد دیتا ہوں اور خاص طور پر ریاستوں کو بھی کہ انھوں نے، میں نے دیکھا ہے کہ کئی اضلاع میں ہونہار اور بہت ذہین نوجوان افسران کو تعینات کیا ہے، یہ اپنے آپ میں ایک درست حکمت عملی ہے۔ اسی طرح جہاں کوئی آسامی تھی اسے پر کرنے کو ترجیح دی گئی ہے۔ تیسرے یہ کہ، میں نے دیکھا ہے کہ انھوں نے میعاد کو بھی مستحکم رکھا ہے۔ یعنی ایک طرح سے وزراء اعلیٰ نے ضرورت مند اضلاع میں امید افزا قیادت اور ٹیمیں فراہم کرنے کا کام کیا ہے۔ آج ہفتہ ہے، چھٹی کا موڈ ہوتا ہے، پھر بھی تمام معزز وزراء اعلیٰ نے وقت نکال کر اس میں ہمارا ساتھ دیا۔ آپ سب لوگ بھی آج چھٹی منائے بغیر اس پروگرام میں شامل ہیں۔ اس سے وزراء اعلیٰ کے دلوں میں بھی ضرورت مند ضلع کی اہمیت ظاہر ہوتی ہے۔ یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ وہ اس طرح پیچھے رہ جانے والوں کو اپنی ریاست کے برابر لانے کے لیے کتنے پرعزم ہیں۔

ساتھیوں،

ہم نے دیکھا ہے کہ ایک طرف بجٹ بڑھتا رہا، منصوبے بنتے رہے، اعداد و شمار میں معاشی ترقی بھی دکھائی گئی، لیکن آزادی کے 75 سال بعد بھی اتنے طویل سفر کے بعد بھی ملک کے کئی اضلاع پیچھے رہ گئے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ان اضلاع پر پسماندہ اضلاع کا ٹیگ لگا دیا گیا۔ ایک طرف ملک کے سینکڑوں اضلاع ترقی کرتے رہے تو دوسری طرف یہ پسماندہ اضلاع پیچھے ہوتے رہے۔ یہ اضلاع پورے ملک کی ترقی کے اعداد و شمار کو بھی نیچے کر دیتے تھے۔ بحیثیت مجموعی جب تبدیلی نظر نہیں آتی تو اچھی کارکردگی دکھانے والے اضلاع کو بھی مایوسی کا سامنا کرنا پڑتا ہے اس لیے ملک نے ان پیچھے رہ جانے والے اضلاع پر خصوصی توجہ دی۔ آج ضرورت مند اضلاع ملک کی ترقی کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو ختم کر رہے ہیں۔ آپ سب کی کوششوں سے ضرورت مند اضلاع جمود کی بجائے تیز رفتاری کا باعث بن رہے ہیں۔ جن اضلاع کو کبھی تیز رفتاری سے ترقی کرنے والے اضلاع سمجھا جاتا تھا، آج یہ ضرورت مند اضلاع ان اضلاع سے بہت سارے پیمانوں میں بہتر کام کر رہے ہیں۔ آج یہاں بہت سے معزز وزراء اعلیٰ وابستہ ہیں۔ وہ یہ بھی مانیں گے کہ ان ضرورت مند اضلاع نے حیرت انگیز کام کیا ہے۔

ساتھیوں،

ضرورت مند اضلاع میں ترقی کی اس مہم نے کئی طریقوں سے ہماری ذمہ داریوں کو وسعت دی ہے اور نئے سرے سے ڈیزائن کیا ہے۔ ہمارے آئین کا تصور اور آئین کی روح اسے ایک ٹھوس شکل دیتی ہے۔ اس کی بنیاد مرکز- ریاست اور مقامی انتظامیہ کا ٹیم ورک ہے۔ اس کی پہچان وفاقی ڈھانچے میں تعاون کی بڑھتی ہوئی ثقافت ہے۔ اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ لوگوں کی شرکت جتنی زیادہ ہوگی، نگرانی اتنی ہی مؤثر ہوگی، نتیجہ اتنا ہی بہتر ہوگا۔

ساتھیوں،

ضرورت مند اضلاع میں ترقی کے لیے، انتظامیہ اور عوام کے درمیان براہ راست رابطہ، جذباتی تعلق بہت ضروری ہے۔ اور اس مہم کا اہم پہلو ٹیکنالوجی اور اختراع ہے! جیسا کہ ہم نے ابھی حالیہ پیشکش میں دیکھا ہے، جتنے زیادہ اضلاع ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہیں، حکمرانی اور ترسیل کے جتنے زیادہ جدید طریقے وہ اختراع کر رہے ہیں، اتنا ہی بہتر کر رہے ہیں۔ آج ملک کی مختلف ریاستوں کے ضرورت مند اضلاع کی کامیابی کی بہت سی کہانیاں ہمارے سامنے ہیں۔ میں دیکھ رہا تھا، آج مجھے صرف پانچ ضلع کے عہدیداروں سے بات کرنے کا موقع ملا۔ لیکن باقی جو یہاں بیٹھے ہیں، میرے سامنے سینکڑوں افسران بیٹھے ہیں۔ ہر ایک کے پاس کوئی نہ کوئی کامیابی کی کہانی ہوتی ہے۔ اب ہمارے سامنے آسام میں درانگ، بہار میں شیخ پورہ، تلنگانہ میں بھدرادری کوٹھاگڈم کی مثال دیکھیں۔ ان اضلاع نے بچوں میں غذائیت کی کمی کو کافی حد تک کم کیا ہے۔ شمال مشرق میں آسام کے گولپارہ اور منی پور کے چندیل اضلاع میں 4 سالوں میں مویشیوں کی ویکسینیشن کی شرح 20 فیصد سے بڑھ کر 85 فیصد ہوگئی ہے۔ بہار کے جموئی اور بیگوسرائے جیسے اضلاع، جہاں کی 30 فیصد آبادی کے پاس بھی دن میں ایک بالٹی بھر پینے کا پانی ہوتا تھا، اب 90 فیصد آبادی کو پینے کا صاف پانی مل رہا ہے۔ ہم اندازہ لگا سکتے ہیں کہ کتنے غریبوں، کتنی خواتین، کتنے بچوں اور بزرگوں کی زندگیوں میں خوشگوار تبدیلی آئی ہے۔ اور میں کہوں گا کہ یہ صرف اعداد و شمار نہیں ہیں۔ اس کے پیچھے آپ سب کی استقامت اور پسینہ کارفرما ہے۔ میں سمجھتا ہوں، یہ تبدیلی، یہ تجربہ آپ کی پوری زندگی کا سرمایہ ہے۔

 

ساتھیوں،

ضرورت مند اضلاع میں جو بھی کام ہوا ہے وہ دنیا کی بڑی سے بڑی یونیورسٹیوں کے لیے مطالعہ کا موضوع ہے۔ پچھلے 4 سالوں میں ملک کے تقریباً ہر ضرورت مند ضلع میں جن دھن کھاتوں میں 4 سے 5 گنا اضافہ ہوا ہے۔ تقریباً ہر خاندان میں بیت الخلا ہے، ہر گاؤں میں بجلی پہنچ چکی ہے۔ اور بجلی نہ صرف غریبوں کے گھر تک پہنچی ہے بلکہ عوام کی زندگیوں میں توانائی داخل ہوئی ہے، ان علاقوں کے عوام کا ملک کے نظام پر اعتماد بڑھ گیا ہے۔

ساتھیوں،

ہمیں ان کوششوں سے بہت کچھ سیکھنا ہے۔ ایک ضلع کو دوسرے ضلع کی کامیابیوں سے سیکھنا ہوگا، دوسرے کے چیلنجز کا اندازہ لگانا ہوگا۔ مدھیہ پردیش کے چھتر پور ضلع میں 4 سال کے اندر حاملہ خواتین کی پہلی سہ ماہی رجسٹریشن 37 فیصد سے بڑھ کر 97 فیصد کیسے ہوئی؟ اروناچل کے نامسائی، ہریانہ کے میوات اور تریپورہ کے ڈھلائی میں ادارہ جاتی ترسیل 40-45 فیصد سے بڑھ کر 90 فیصد کیسے ہوئی؟ رائچور، کرناٹک میں، باقاعدگی سے اضافی غذائیت حاصل کرنے والی حاملہ خواتین کی تعداد 70 فیصد سے بڑھ کر 97 فیصد کیسے ہوئی؟ چمبہ، ہماچل پردیش میں، گرام پنچایت کی سطح پر کامن سروس سینٹرز کی کوریج 67 فیصد سے بڑھ کر 97 فیصد کیسے ہوئی؟ یا سکما، چھتیس گڑھ میں، جہاں 50 فیصد سے کم بچوں کو ٹیکے لگائے جاتے تھے، اب 90 فیصد ٹیکے لگائے جا رہے ہیں۔ کامیابی کی ان تمام کہانیوں میں پورے ملک کی انتظامیہ کے لیے بہت سی نئی چیزیں سیکھنے کے لیے ہیں، بہت سے نئے سبق بھی ہیں۔

ساتھیوں،

آپ نے دیکھا ہے کہ ضرورت مند اضلاع میں رہنے والے لوگوں میں آگے بڑھنے کی کتنی تڑپ ہے، کتنی آرزو ہے۔ ان اضلاع کے لوگوں نے اپنی زندگی کا ایک طویل عرصہ محرومیوں، بہت سی مشکلات میں گزارا ہے۔ ہر چھوٹی سے چھوٹی چیز کے لیے انھیں جدوجہد کرنی پڑتی ہے۔ انھوں نے اتنا اندھیرا دیکھا ہے کہ ان میں اس اندھیرے سے نکلنے کی زبردست بے صبری ہے۔ اسی لیے وہ لوگ ہمت دکھانے کے لیے تیار ہوتے ہیں، خطرہ مول لینے کے لیے تیار ہوتے ہیں اور جب بھی انہیں موقع ملتا ہے، اس سے بھر پور فائدہ اٹھاتے ہیں۔ ضرورت مند اضلاع میں رہنے والے جو لوگ ہیں، جو معاشرہ ہے، ہمیں سمجھنا چاہیے، اس کی طاقت کو پہچاننا چاہیے۔ اور میں اتفاق کرتا ہوں، اس کا ان اضلاع میں ہونے والے کام پر بھی بہت اثر پڑتا ہے۔ ان علاقوں کے لوگ بھی آپ کے ساتھ آ کر کام کرتے ہیں۔ ترقی کی خواہش ساتھ چلنے کا راستہ بن جاتی ہے۔ اور جب عوام پُرعزم ہے، انتظامیہ پُرعزم ہے تو پھر کوئی کیسے پیچھے رہ سکتا ہے۔ پھر آگے ہی جانا ہے، آگے ہی بڑھنا ہے۔ اور آج ضرورت مند اضلاع کے لوگ ایسا ہی کر رہے ہیں۔

ساتھیوں،

پچھلے سال اکتوبر میں مجھے وزیر اعلیٰ اور وزیر اعظم کے طور پر عوام کی خدمت کرتے ہوئے 20 سال سے زیادہ کا عرصہ ہو گیا ہے۔ اس سے پہلے بھی کئی دہائیوں تک میں نے ملک کے مختلف حصوں میں انتظامیہ کے کام کو، اس کے کام کرنے کے طریقے کو بہت قریب سے دیکھا ہے۔ میرا تجربہ یہ ہے کہ فیصلے کے عمل میں جو خلا ہوتا ہے، اس سے زیادہ نقصان عمل درآمد میں ہونے والے خلا سے ہوتا ہے۔ اور ضرورت مند اضلاع نے ثابت کیا ہے کہ عمل درآمد میں خلا کے خاتمے کی وجہ سے وسائل کا زیادہ سے زیادہ استعمال ہوتا ہے۔ ہمارے ضرورت مند اضلاع نے ثابت کیا ہے کہ اگر ہم گڈ گورننس کے بنیادی اصولوں پر عمل کریں تو کم وسائل کے باوجود بڑے نتائج حاصل کیے جا سکتے ہیں۔ اور جس انداز کے ساتھ اس مہم پر کام کیا گیا وہ اپنے آپ میں بے مثال ہے۔ ضرورت مند اضلاع میں ملک کا پہلا نقطہ نظر یہ تھا کہ ان اضلاع کے بنیادی مسائل کی نشاندہی کے لیے خصوصی کام کیا گیا۔ اس کے لیے لوگوں سے براہ راست ان کے مسائل پوچھے گئے جو ان سے جڑے ہوئے تھے۔ ہمارا دوسرا نقطہ نظر یہ تھا کہ - ضرورت مند اضلاع کے تجربات کی بنیاد پر، ہم نے کام کو مسلسل بہتر کیا۔ ہم نے کام کا طریقہ طے کیا ہے، جس میں قابل پیمائش اشارے کا انتخاب ہے، جس میں ضلع کی موجودہ حالت کا موازنہ ریاست اور ملک کی بہترین حالت سے کیا جاتا ہے، جس میں پیشرفت کی حقیقی وقت میں نگرانی ہوتی ہے۔ جس کا دوسرے اضلاع کے ساتھ صحت مند مقابلہ کیا جاتا ہے۔ اس مہم کے دوران تیسرا طریقہ یہ تھا کہ ہم نے ایسی گورننس اصلاحات کیں جس سے اضلاع میں ایک مؤثر ٹیم بنانے میں مدد ملی۔ مثال کے طور پر، نیتی آیوگ کے پریزنٹیشن میں بتایا گیا کہ افسران کی مستحکم مدت نے پالیسیوں کو بہتر طریقے سے نافذ کرنے میں بہت مدد کی۔ اور اس کے لیے میں وزراء اعلیٰ کو مبارکباد دیتا ہوں۔ آپ سب خود ان تجربات سے گزرے ہیں۔ میں نے یہ باتیں دہرائیں تاکہ لوگوں کو معلوم ہو سکے کہ گڈ گورننس کا اثر کیا ہوتا ہے۔ جب ہم بنیادی باتوں پر زور دینے کے منتر پر عمل کرتے ہیں تو اس کے نتائج بھی سامنے آتے ہیں۔ اور آج میں اس میں ایک اور بات کا اضافہ کرنا چاہوں گا۔ آپ سب کی کوشش ہونی چاہیے کہ فیلڈ وزٹ، انسپیکشن اور نائٹ ہالٹ کے لیے بھی تفصیلی گائیڈ لائنز بنائی جائیں، ایک ماڈل تیار کیا جائے۔ آپ دیکھیں گے کہ اس سے آپ سب کو کتنا فائدہ ہوگا۔

 

ساتھیوں،

ضرورت مند اضلاع میں حاصل ہونے والی کامیابیوں کو دیکھتے ہوئے ملک نے اب اپنے اہداف کو مزید وسعت دی ہے۔ ہم نے اب تک جو کامیابیاں حاصل کی ہیں ان سے آگے ہمیں بہت طویل سفر طے کرنا ہے۔ اور بڑے پیمانے پر کام کرنا ہے۔ ہمارے ضلع کے ہر گاؤں تک سڑک کے ذریعے کیسے پہنچیں، ہر اہل شخص تک آیوشمان بھارت کارڈ کیسے پہنچے، بینک اکاؤنٹ کا بندوبست کیسے کیا جائے، کوئی غریب خاندان اجولا گیس کنکشن سے محروم نہ رہے، ہر اہل شخص کو سرکاری بیمہ کا فائدہ ملنا چاہیے۔ پنشن اور مکان جیسی سہولیات کے فوائد حاصل کرنے کے لیے ہر ضلع کے لیے ایک مقررہ ہدف ہونا چاہیے۔ اسی طرح ہر ضلع کو اگلے دو سال کے لیے اپنا وژن طے کرنا چاہیے۔ آپ ایسے کسی بھی 10 کاموں کے بارے میں فیصلہ کر سکتے ہیں جو اگلے 3 مہینوں میں مکمل ہو سکتے ہیں، اور وہ عام آدمی کے لیے زندگی کی آسانی میں اضافہ کرتے ہیں۔ اسی طرح، آزادی کے امرت مہوتسو میں شامل ہو کر کوئی بھی 5 کام طے کریں جو آپ مکمل کر سکتے ہیں۔ یہ کام اس تاریخی دور میں آپ کی، آپ کے ضلع اور ضلع کے عوام کی تاریخی کامیابی بن جائے۔ جس طرح ملک خواہش مند اضلاع کو آگے بڑھانے کے لیے کام کر رہا ہے، اسی طرح آپ ضلع میں بلاک کی سطح پر اپنی ترجیحات اور اہداف طے کر سکتے ہیں۔ آپ کو بھی اس ضلع کی خوبیوں کو پہچاننا چاہیے جس کے لیے آپ کو ذمہ داری ملی ہے، ان کا ساتھ دیں۔ ان خوبیوں میں ضلع کی صلاحیت پوشیدہ ہے۔ آپ نے دیکھا ہے، ’ایک ضلع، ایک پروڈکٹ‘ ضلع کی خوبیوں پر مبنی ہے۔ اپنے ضلع کو قومی اور عالمی شناخت دینا آپ کا مشن ہونا چاہیے۔ یعنی ووکل فار لوکل کے منتر کو اپنے اضلاع میں بھی نافذ کریں۔ اس کے لیے آپ کو ضلع کی روایتی مصنوعات کی شناخت، مہارتوں کی نشاندہی اور ویلیو چین کو مضبوط کرنا ہوگا۔ ملک ڈجیٹل انڈیا کی شکل میں ایک خاموش انقلاب کا مشاہدہ کر رہا ہے۔ ہمارا کوئی ضلع اس میں پیچھے نہیں رہنا چاہیے۔ یہ بہت ضروری ہے کہ ڈجیٹل انفراسٹرکچر ہمارے ملک کے ہر گاؤں تک پہنچ جائے، جو خدمات اور سہولیات کی ڈور سٹیپ ڈیلیوری کا ذریعہ بنے۔ نیتی آیوگ کی رپورٹ میں جن اضلاع کی ترقی توقع سے کم رہی ہے، ان اضلاع کے ڈی ایم، مرکز کے انچارج افسران کو خصوصی کوششیں کرنی ہوں گی۔ میں نیتی آیوگ سے بھی کہوں گا کہ آپ کو ایسا طریقہ کار بنانا چاہیے تاکہ تمام اضلاع کے ڈی ایم کے درمیان باقاعدہ بات چیت ہو۔ ہر ضلع ایک دوسرے کے بہترین طریقوں کو نافذ کر سکتا ہے۔ مرکز کی تمام وزارتوں کو مختلف اضلاع میں سامنے آنے والے تمام چیلنجوں کو بھی دستاویز بند کرنا چاہیے۔ یہ بھی دیکھیں کہ پی ایم گتی شکتی نیشنل ماسٹر پلان اس میں کس طرح مدد کر سکتا ہے۔

ساتھیوں،

آج کے پروگرام میں آپ کے سامنے ایک اور چیلنج رکھنا چاہتا ہوں، ایک نیا مقصد بھی دینا چاہتا ہوں۔ یہ چیلنج ملک کی 22 ریاستوں کے 142 اضلاع کے لیے ہے۔ یہ اضلاع ترقی کی دوڑ میں پیچھے نہیں ہیں۔ یہ ضرورت مند ضلع کے زمرے میں نہیں ہیں۔ وہ ایک طویل سفر طے کر چکے ہیں۔ لیکن کئی پیرامیٹرز میں آگے ہونے کے باوجود ایک یا دو پیرامیٹرز ایسے ہیں جن میں وہ پیچھے ہیں۔ اور تب میں نے وزارتوں کو بتایا کہ وہ اپنی اپنی وزارتوں میں کیا ہے جو ڈھونڈ سکتے ہیں۔ کسی کو دس اضلاع مل گئے، کسی کو چار اضلاع مل گئے، کسی کو چھ اضلاع مل گئے، خیر اتنا کچھ آ گیا۔ جیسا کہ ایک ضلع ہے جہاں سب کچھ بہت اچھا ہے لیکن غذائیت کی کمی کا مسئلہ ہے۔ اسی طرح ایک ضلع میں تمام اشاریے ٹھیک ہیں لیکن وہ تعلیم میں پیچھے ہے۔ حکومت کی مختلف وزارتوں، مختلف محکموں نے ایسے 142 اضلاع کی فہرست تیار کی ہے۔ ایک یا دو پیرامیٹرز پر جن پر یہ مختلف 142 اضلاع پیچھے ہیں، اب وہاں بھی ہمیں اسی اجتماعی نقطہ نظر کے ساتھ کام کرنا ہے جیسا کہ ہم ضرورت مند اضلاع میں کرتے ہیں۔ یہ ایک نیا موقع ہے، تمام حکومتوں، حکومت ہند، ریاستی حکومت، ضلع انتظامیہ، سرکاری مشینری کے لیے ایک نیا چیلنج ہے۔ اب ہمیں مل کر اس چیلنج کو پورا کرنا ہے۔ اس میں مجھے اپنے تمام وزیر اعلیٰ ساتھیوں کا تعاون ہمیشہ ملتا رہا ہے، مجھے یقین ہے کہ آئندہ بھی ملتا رہے گا۔

ساتھیوں،

ابھی کورونا کا بھی دور چل رہا ہے۔ کورونا کی تیاری، اس کے انتظام اور کورونا کے درمیان بھی ترقی کی رفتار کو برقرار رکھنے میں تمام اضلاع کا بڑا کردار ہے۔ ان اضلاع میں مستقبل کے چیلنجز کو مدنظر رکھتے ہوئے ابھی سے کام کیا جانا چاہیے۔

ساتھیوں،

ہمارے رشیوں نے کہا ہے – ”جل بندو نپاتین کرمشہ: پوریتے گھٹہ“ یعنی بوند بوند سے ہی پورا گھڑا بھرتا ہے۔ اس لیے ضرورت مند اضلاع میں آپ کی ہر کوشش آپ کے ضلع کو ترقی کی نئی سطح پر لے جائے گی۔ میں یہاں سول سروسز کے ساتھیوں کو ایک اور بات یاد دلانا چاہوں گا۔ آپ کو وہ دن یاد ہوگا جب اس سروس میں آپ کا پہلا دن تھا۔ آپ ملک کے لیے کتنا کرنا چاہتے تھے، آپ میں کتنا جذبہ تھا، آپ کتنی خدمت سے معمور تھے۔ آج اسی جذبے کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔ آزادی کے اس امرت دور میں، بہت کچھ کرنا ہے، حاصل کرنا ہے۔ ہر ضرورت مند ضلع کی ترقی سے ملک کے خواب پورے ہوں گے۔ ایک نئے ہندوستان کا جو خواب ہم نے آزادی کے سو سال مکمل ہونے پر دیکھا ہے، اسے پورا کرنے کا راستہ ہمارے ان اضلاع اور دیہاتوں سے ہو کر ہی جاتا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ اپنی کوششوں میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے۔ جب ملک اپنے خواب پورے کرے گا تو اس کے سنہرے باب میں آپ سب دوست بڑا کردار ادا کریں گے۔ اس یقین کے ساتھ، میں تمام وزراء اعلیٰ کا شکریہ ادا کرتا ہوں اور آپ سب کا شکریہ ادا کرتا ہوں، آپ نے اپنی زندگی میں جو محنت کی ہے اور جو نتائج لائے ہیں اس کے لیے آپ کا بہت بہت شکریہ! 26 جنوری آنے والی ہے، اس کام کا دباؤ بھی ہے، ضلع مجسٹریٹس پر زیادہ دباؤ ہے۔ کورونا کے پچھلے دو سالوں سے آپ میدان جنگ میں فرنٹ لائن پر ہیں۔ اور ایسے میں میں آپ کو ہفتہ کے دن آپ سب کے ساتھ بیٹھنے کی تھوڑی سی تکلیف دے رہا ہوں لیکن پھر بھی آج جس جوش اور ولولے سے آپ سب جڑے ہیں یہ میرے لیے خوشی کی بات ہے۔ میں آپ سب کا بہت بہت شکریہ کرتا ہوں! میں آپ سب کے لیے بہت نیک خواہشات رکھتا ہوں!

 

مودی ماسٹرکلاس: وزیر اعظم مودی کے ساتھ پریکشا پے چرچا
Share your ideas and suggestions for 'Mann Ki Baat' now!
Explore More
وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی  ایم مودی کے ساتھ کا متن

Popular Speeches

وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی ایم مودی کے ساتھ کا متن
PM calls for rapid rollout of 5G, says will contribute $450 bn to economy

Media Coverage

PM calls for rapid rollout of 5G, says will contribute $450 bn to economy
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Virtual meeting between PM Modi and PM of Cambodia
May 18, 2022
Share
 
Comments

Virtual Meeting between Prime Minister Shri Narendra Modi and H.E. Samdech Akka Moha Sena Padei Techo Hun Sen, Prime Minister of Cambodia

Prime Minister Shri Narendra Modi held a virtual meeting today with H.E. Samdech Akka Moha Sena Padei Techo Hun Sen, Prime Minister of Cambodia.

The two leaders held discussions on the entire range of bilateral issues, including cooperation in the fields of trade and investment, human resource development, defence and security, development cooperation, connectivity, post-pandemic economic recovery and people-to-people ties. They expressed satisfaction at the pace of bilateral cooperation.

PM Hun Sen emphasised the importance that Cambodia attaches to its relations with India. Prime Minister Modi reciprocated the sentiment and stressed Cambodia’s valued role in India’s Act East policy. The leaders reviewed the robust development partnership between both countries, including capacity building programmes and Quick Impact Projects under the Mekong-Ganga Cooperation framework. Prime Minister Modi also highlighted the historical and civilizational links between the two countries and expressed his happiness at India’s involvement in restoration of Angkor Wat and Preah Vihear temples in Cambodia, which depict the cultural and linguistic connect between the two countries.

Prime Minister Hun Sen thanked India for providing 3.25 lakh doses of Indian-manufactured Covishield vaccines to Cambodia under Quad Vaccine Initiative.

The two leaders complimented each other on the 70th anniversary of the establishment of diplomatic relations between India and Cambodia being celebrated this year. As part of these celebrations, Prime Minister Modi invited His Majesty the King of Cambodia and Her Majesty Queen Mother to visit India at a mutually convenient time.

The two leaders also exchanged views on regional and global issues of shared interest. Prime Minister Modi congratulated Cambodia on assuming the Chairmanship of ASEAN and assured India’s full support and assistance to Cambodia for the success of its Chairmanship.