Share
 
Comments
’’جی-20 کے لوگو سے عالمی بھائی چارے کا تصور ظاہر ہو رہا ہے‘‘
’’جی-20 کے لوگو میں موجود کمل کا پھول موجودہ مشکل حالات میں امید کی ایک علامت ہے‘‘
’’جی 20 کی صدارت بھارت کے لیے محض ایک سفارتی میٹنگ نہیں ہے، بلکہ یہ ایک نئی ذمہ داری اور بھارت کے تئیں دنیا کے اعتماد کا ایک پیمانہ ہے ‘‘
’’جب ہم اپنی ترقی کے لیے کوشش کرتے ہیں، تو ہم عالمی ترقی کو بھی ذہن میں رکھتے ہیں‘‘
’’ماحولیات ہمارے لیے ایک عالمی موضوع ہونے کے ساتھ ساتھ ایک نجی ذمہ داری بھی ہے‘‘
’’ہم اس امر کے لیے کوشش کریں گے کہ کوئی پہلی یا تیسری دنیا نہ ہو، بلکہ صرف ایک دنیا ہو‘‘
’’جی-20 کے لیے ہمارا منتر ہے – ایک کرۂ ارض، ایک کنبہ ، ایک مستقبل‘‘
’’جی-20 تقریبات محض دہلی یا چند مقامات تک محدود نہیں ہوں گی۔ ہر شہری، ریاستی حکومت اور سیاسی جماعت کو اس میں شمولیت اختیار کرنی ہے‘‘

نمسکار،

میرے پیارے ہم وطنوں اور عالمی برادری کے تمام اہل خانہ، کچھ دنوں بعد یکم دسمبر سے، ہندوستان G-20 کی صدارت کرے گا۔ یہ ہندوستان کے لیے ایک تاریخی موقع ہے۔ آج اس تناظر میں اس سربراہی اجلاس کی ویب سائٹ، تھیم اور لوگو کا اجرا کیا گیا ہے۔ میں اس موقع پر تمام ہم وطنوں کو بہت بہت مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

G-20 ایسے ممالک کا ایک گروپ ہے جن کی اقتصادی صلاحیت دنیا کی جی ڈی پی کا 85 فیصد ہے۔ G20 بیس ممالک کا ایک گروپ ہے جو دنیا کی 75 فیصد تجارت کی نمائندگی کرتا ہے جو دنیا کی دو تہائی آبادی پر مشتمل ہے۔ اور ہندوستان، اب اس G20 گروپ کی قیادت کرنے جا رہا ہے، اس کی صدارت کرنے جا رہا ہے۔

آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ آزادی کے امرت دور میں ملک کے سامنے کتنا بڑا موقع آیا ہے۔ یہ ہر ہندوستانی کے لیے فخر کی بات ہے، یہ اس کے فخر کو بڑھانے کی بات ہے۔ اور مجھے خوشی ہے کہ G-20 سربراہی اجلاس، ہندوستان میں ہونے والے پروگراموں کے بارے میں تجسس اور سرگرمی مسلسل بڑھ رہی ہے۔ اس لوگو کی تخلیق میں اہل وطن نے بڑا کردار ادا کیا ہے جسے آج لانچ کیا گیا ہے۔ ہم نے لوگو کے لیے اہل وطن سے ان کی قیمتی تجاویز مانگی تھیں۔ اور مجھے یہ جان کر بہت خوشی ہوئی کہ ہزاروں لوگوں نے اپنے تخلیقی خیالات حکومت کو بھیجے۔ آج وہ خیالات، وہ تجاویز اتنے بڑے عالمی ایونٹ کا چہرہ بن رہے ہیں۔ میں اس کوشش کے لیے سب کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

G-20 کا یہ لوگو صرف ایک لوگو نہیں ہے۔ یہ ایک پیغام ہے۔ یہ ایک احساس ہے جو ہماری رگوں میں ہے۔ یہ ایک قرارداد ہے، جو ہماری سوچ میں شامل ہے۔ ’واسودھیو کٹمبکم‘ کے منتر کے ذریعے، عالمگیر بھائی چارے کا جذبہ جسے ہم جیتے آئے ہیں، وہ خیال اس لوگو اور تھیم میں جھلک رہا ہے۔ اس لوگو میں کمل کا پھول ہندوستانی ورثے، ہمارے عقیدے، ہماری ذہانت کی عکاسی کر رہا ہے۔

دوستوں،

ہندوستان کی G20 صدارت دنیا میں بحران اور افراتفری کے وقت میں ملی ہے۔ دنیا ایک صدی میں ایک بار آنے والی تباہ کن وبائی بیماری، تنازعات اور بہت سی معاشی بے یقینی کے بعد کے اثرات سے گزر رہی ہے۔ G20 لوگو میں کمل کی علامت ان دنوں میں امید کی نمائندگی کرتی ہے۔ حالات کتنے ہی نامساعد کیوں نہ ہوں، کنول پھر بھی کھلتا ہے۔ یہاں تک کہ اگر دنیا ایک گہرے بحران میں ہے، تب بھی ہم ترقی کر سکتے ہیں اور دنیا کو ایک بہتر جگہ بنا سکتے ہیں۔

ہندوستانی ثقافت میں، علم اور خوشحالی کی دیوی دونوں ایک کمل پر بیٹھی ہیں۔ آج دنیا کو اس چیز کی سب سے زیادہ ضرورت ہے: مشترکہ علم جو ہمارے حالات پر قابو پانے میں ہماری مدد کرتا ہے، اور مشترکہ خوشحالی جو آخری میل پر آخری شخص تک پہنچتی ہے۔

یہی وجہ ہے کہ G20 لوگو میں زمین کو بھی کمل پر رکھا گیا ہے۔ لوگو میں کنول کی سات پنکھڑیاں بھی نمایاں ہیں۔ وہ سات بر اعظموں کی نمائندگی کرتے ہیں۔ موسیقی کی عالمگیر زبان میں سروں کی تعداد بھی سات ہے۔ موسیقی میں، جب سات سر ایک ساتھ آتے ہیں، تو وہ کامل ہم آہنگی پیدا کرتے ہیں۔ لیکن ہر سر کی اپنی انفرادیت ہے۔ اسی طرح G20 کا مقصد تنوع کا احترام کرتے ہوئے دنیا کو ہم آہنگی میں لانا ہے۔

ساتھیوں،

یہ سچ ہے کہ دنیا میں جب بھی G-20 جیسے بڑے پلیٹ فارموں کی کانفرنس ہوتی ہے تو اس کے اپنے سفارتی اور جیو پولیٹیکل معنی ہوتے ہیں۔ یہ بھی فطری بات ہے۔ لیکن ہندوستان کے لیے یہ سربراہی اجلاس محض ایک سفارتی ملاقات نہیں ہے۔ ہندوستان اسے اپنے لیے ایک نئی ذمہ داری کے طور پر دیکھتا ہے۔ ہندوستان اسے اپنے آپ پر دنیا کے اعتماد کے طور پر دیکھتا ہے۔ آج دنیا میں ہندوستان کو جاننے، ہندوستان کو سمجھنے کا ایک بے مثال تجسس ہے۔ آج ہندوستان کا ایک نئی روشنی میں مطالعہ کیا جا رہا ہے۔ ہماری موجودہ کامیابیوں کا اندازہ لگایا جا رہا ہے۔ ہمارے مستقبل کے بارے میں بے مثال امیدوں کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

ایسے میں ہمارے اہل وطنوں کی ذمہ داری ہے کہ ہم ان امیدوں اور توقعات سے کہیں زیادہ بہتر کام کریں۔ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم دنیا کو ہندوستان کی سوچ اور صلاحیت سے، ہندوستان کی ثقافت اور سماجی طاقت سے واقف کرائیں۔ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اپنی ہزاروں سال پرانی ثقافت اور اس میں موجود جدیدیت کی حکمت سے دنیا کے علم میں اضافہ کریں۔

جس طرح ہم صدیوں اور ہزار سال سے ’جے جگت‘ کے تصور کو جی رہے ہیں، آج ہمیں اسے زندہ کر کے جدید دنیا کے سامنے پیش کرنا ہے۔ ہمیں سب کو جوڑنا ہے۔ عالمی فرائض سے سب کو آگاہ کرنا ہوگا۔ انہیں بیدار کرنا ہوگا، دنیا کے مستقبل میں ان کی شرکت کے لیے حوصلہ افزائی کرنا ہوگی۔

ساتھیوں،

آج جب ہندوستان G20 کی صدارت کرنے جا رہا ہے، یہ تقریب ہمارے لیے 130 کروڑ ہندوستانیوں کی طاقت اور صلاحیت کی نمائندگی کرتی ہے۔ آج ہندوستان اس مقام پر پہنچ چکا ہے۔ لیکن، اس کے پیچھے ہمارا ہزاروں سالوں کا ایک بہت بڑا سفر ہے، اس سے جڑے لا محدود تجربات ہیں۔ ہم نے ہزاروں سال کی دولت اور رونق بھی دیکھی ہے۔ ہم نے دنیا کے تاریک ترین دور بھی دیکھے ہیں۔ ہم نے صدیوں کی غلامی اور اندھیروں میں جینے کے مجبوری کے دن دیکھے ہیں۔ بہت سے حملوں اور مظالم کا سامنا کرتے ہوئے، ہندوستان ایک متحرک تاریخ پر فخر کرتے ہوئے اس مقام پر پہنچ گیا ہے جہاں وہ آج ہے۔

وہ تجربات آج ہندوستان کی ترقی کے سفر میں سب سے بڑی طاقت ہیں۔ آزادی کے بعد ہم نے صفر سے شروع ہونے والا ایک بڑا سفر شروع کیا، جس کا مقصد سب سے اوپر ہے۔ اس میں گزشتہ 75 سالوں میں تمام حکومتوں کی کوششیں شامل ہیں۔ تمام حکومتوں اور شہریوں نے اپنے اپنے طریقے سے ہندوستان کو ساتھ لے کر آگے بڑھنے کی کوشش کی ہے۔ ہمیں آج اس جذبے کے ساتھ ایک نئی توانائی کے ساتھ پوری دنیا کو ساتھ لے کر آگے بڑھنا ہے۔

ساتھیوں،

ہندوستان کی ہزاروں سال پرانی ثقافت نے ہمیں ایک اور چیز سکھائی ہے۔ جب ہم اپنی ترقی کے لیے کوشش کرتے ہیں تو ہم عالمی ترقی کا بھی تصور کرتے ہیں۔ آج ہندوستان دنیا کی ایک ایسی زر خیز اور زندہ جمہوریت ہے۔ ہمارے ہاں جمہوریت کی رسومات بھی ہیں اور مادر جمہوریت کی شکل میں ایک شاندار روایت بھی۔ ہندوستان میں جتنی انفرادیت ہے جتنی تنوع ہے۔ یہ جمہوریت، یہ تنوع، یہ مقامی نقطہ نظر، یہ جامع سوچ، یہ مقامی طرز زندگی، یہ عالمی افکار، آج دنیا اپنے تمام چیلنجوں کا حل ان نظریات میں دیکھ رہی ہے۔

ہم دنیا کے ہر انسان کو یقین دلاتے ہیں کہ ترقی اور فطرت دونوں ایک دوسرے کے ساتھ چل سکتے ہیں۔ ہمیں پائیدار ترقی کو بھی محض نظام حکومت کے بجائے انفرادی زندگی کا حصہ بنانا ہوگا، اسے وسعت دینا ہوگی۔ ماحولیات کو ایک عالمی وجہ کے ساتھ ساتھ ہمارے لیے ذاتی ذمہ داری بننا چاہیے۔

ساتھیوں،

آج دنیا علاج کی بجائے صحت کی تلاش میں ہے۔ ہمارا آیوروید، ہمارا یوگا، جس کے بارے میں دنیا میں ایک نیا یقین اور جوش ہے، ہم اس کی توسیع کے لیے ایک عالمی نظام بنا سکتے ہیں۔ اگلے سال دنیا جوار کا عالمی سال منانے جا رہی ہے لیکن ہم نے صدیوں سے اپنے گھر کے کچن میں بہت سے موٹے اناج کو جگہ دی ہے۔

ساتھیوں،

کئی شعبوں میں ہندوستان کی کامیابیاں ایسی ہیں، جو دنیا کے دیگر ممالک کے لیے کارآمد ثابت ہوسکتی ہیں۔ مثال کے طور پر، ہندوستان نے جس طرح سے ترقی کے لیے، شمولیت کے لیے، بدعنوانی کے خاتمے کے لیے، کاروبار کرنے میں آسانی اور زندگی کی آسانی کو بڑھانے کے لیے ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز کا استعمال کیا ہے، یہ تمام ترقی پذیر ممالک کے لیے نمونہ ہیں۔

اسی طرح آج ہندوستان خواتین کو با اختیار بنانے میں ترقی کر رہا ہے، خواتین نے اس میں اضافہ کرکے ترقی کی قیادت کی۔ ہمارے جن دھن اکاؤنٹس اور مدرا جیسی اسکیموں نے خواتین کی مالی شمولیت کو یقینی بنایا ہے۔ اس طرح کے مختلف شعبوں میں ہمارا تجربہ دنیا کے لیے بہت مددگار ثابت ہو سکتا ہے۔ اور G20 میں ہندوستان کی صدارت ان تمام کامیاب مہمات کو دنیا تک لے جانے کے لیے ایک اہم ذریعہ کے طور پر آ رہی ہے۔

ساتھیوں،

آج کی دنیا اجتماعی قیادت کی طرف بڑی امید سے دیکھ رہی ہے۔ چاہے وہ G-7 ہو، G-77 ہو یا UNGA۔ اس ماحول میں G20 کے صدر کے طور پر ہندوستان کا کردار بہت اہم ہے۔ ہندوستان ایک طرف ترقی یافتہ ممالک کے ساتھ قریبی تعلقات رکھتا ہے، اور ساتھ ہی ساتھ ترقی پذیر ممالک کے خیالات کو اچھی طرح سمجھتا اور ان کا اظہار کرتا ہے۔ اس بنیاد پر، ہم ’گلوبل ساؤتھ‘ کے ان تمام دوستوں کے ساتھ مل کر اپنی G20 صدارت کا خاکہ بنائیں گے جو دہائیوں سے ترقی کی راہ پر ہندوستان کے شریک سفر رہے ہیں۔

ہماری کوشش ہوگی کہ دنیا میں کوئی پہلی یا تیسری دنیا نہ ہو بلکہ صرف ایک دنیا ہو۔ ہندوستان ایک بہتر مستقبل کے لیے ایک مشترکہ مقصد کے لیے پوری دنیا کو اکٹھا کرنے کے وژن پر کام کر رہا ہے۔ ہندوستان نے ایک سورج، ایک دنیا، ایک گرڈ کے منتر کے ساتھ دنیا میں قابل تجدید توانائی کے انقلاب کا مطالبہ کیا ہے۔ ہندوستان نے ایک زمین، ایک صحت کے منتر کے ساتھ عالمی صحت کو مضبوط کرنے کی مہم شروع کی ہے۔ اور اب G20 میں بھی ہمارا منتر ہے - ایک زمین، ایک خاندان، ایک مستقبل۔ یہ خیالات، ہندوستان کی یہ اقدار عالمی فلاح و بہبود کی راہ ہموار کرتی ہیں۔

ساتھیوں،

آج ملک کی تمام ریاستی حکومتوں، تمام سیاسی جماعتوں سے بھی میری ایک درخواست ہے۔ یہ تقریب صرف مرکزی حکومت کی نہیں ہے۔ اس تقریب کا اہتمام ہم ہندوستانیوں نے کیا ہے۔ G-20 ہمارے لیے ’اتیتھی دیو بھوا‘ کی اپنی روایت کی جھلک دیکھنے کا بھی ایک بہترین موقع ہے۔ G-20 سے متعلق یہ تقریبات دہلی یا صرف چند مقامات تک محدود نہیں رہیں گی۔ اس کے تحت ملک کے کونے کونے میں پروگرام منعقد کیے جائیں گے۔ ہماری ریاستوں میں سے ہر ایک کی اپنی خصوصیات ہیں، اپنا اپنا ورثہ ہے۔ ہر ریاست کی اپنی ثقافت، اپنی خوبصورتی، اپنی چمک، اپنی مہمان نوازی ہوتی ہے۔

ساتھیوں،

ابھی اگلے ہفتے مجھے انڈونیشیا جانا ہے۔ وہاں یہ باقاعدہ اعلان کیا جائے گا کہ ہندوستان کو G-20 کی صدارت دی جائے گی۔ میں ملک کی تمام ریاستوں، تمام ریاستی حکومتوں سے بھی گزارش کرتا ہوں کہ اس میں اپنی ریاست کے کردار کو زیادہ سے زیادہ بڑھائیں۔ اپنی ریاست کے لیے اس موقع سے فائدہ اٹھائیں۔ ملک کے تمام شہریوں، دانشوروں کو بھی اس تقریب کا حصہ بننے کے لیے آگے آنا چاہیے۔ آپ سبھی اپنی تجاویز بھیج سکتے ہیں، ابھی شروع کی گئی ویب سائٹ پر اپنے خیالات کا اظہار کر سکتے ہیں۔

اس سمت میں آپ کے مشورے اور تعاون، کہ کس طرح ہندوستان دنیا کی فلاح و بہبود کے لیے اپنے کردار کو بڑھا سکتا ہے، G-20 جیسے ایونٹ کی کامیابی کو نئی بلندیاں فراہم کرے گا۔ مجھے یقین ہے کہ یہ تقریب نہ صرف ہندوستان کے لیے ایک یادگار ہوگی بلکہ مستقبل بھی دنیا کی تاریخ میں ایک اہم واقعہ کے طور پر اس کا جائزہ لے گا۔

اس خواہش کے ساتھ، ایک بار پھر آپ سب کو دل کی گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops

Media Coverage

Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Karnataka on 6th February
February 04, 2023
Share
 
Comments
PM to inaugurate India Energy Week 2023 in Bengaluru
Moving ahead on the ethanol blending roadmap, PM to launch E20 fuel
PM to flag off Green Mobility Rally to create public awareness for green fuels
PM to launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil - each uniform to support recycling of around 28 used PET bottles
PM to dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System - a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously
In yet another step towards Aatmanirbharta in defence sector, PM to dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru
PM to lay foundation stones of Tumakuru Industrial Township and of two Jal Jeevan Mission projects in Tumakuru

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Karnataka on 6th February, 2023. At around 11:30 AM, Prime Minister will inaugurate India Energy Week 2023 at Bengaluru. Thereafter, at around 3:30 PM, he will dedicate to the nation the HAL helicopter factory at Tumakuru and also lay the foundation stone of various development initiatives.

India Energy Week 2023

Prime Minister will inaugurate the India Energy Week (IEW) 2023 in Bengaluru. Being held from 6th to 8th February, IEW is aimed to showcase India's rising prowess as an energy transition powerhouse. The event will bring together leaders from the traditional and non-traditional energy industry, governments, and academia to discuss the challenges and opportunities that a responsible energy transition presents. It will see the presence of more than 30 Ministers from across the world. Over 30,000 delegates, 1,000 exhibitors and 500 speakers will gather to discuss the challenges and opportunities of India's energy future. During the programme, Prime Minister will participate in a roundtable interaction with global oil & gas CEOs. He will also launch multiple initiatives in the field of green energy.

The ethanol blending programme has been a key focus areas of the government to achieve Aatmanirbharta in the field of energy. Due to the sustained efforts of the government, ethanol production capacity has seen a six times increase since 2013-14. The achievements in the course of last eight years under under Ethanol Blending Programe & Biofuels Programe have not only augmented India’s energy security but have also resulted in a host of other benefits including reduction of 318 Lakh Metric Tonnes of CO2 emissions and foreign exchange savings of around Rs 54,000 crore. As a result, there has been payment of around Rs 81,800 crore towards ethanol supplies during 2014 to 2022 and transfer of more than Rs 49,000 crore to farmers.

In line with the ethanol blending roadmap, Prime Minister will launch E20 fuel at 84 retail outlets of Oil Marketing Companies in 11 States/UTs. E20 is a blend of 20% ethanol with petrol. The government aims to achieve a complete 20% blending of ethanol by 2025, and oil marketing companies are setting up 2G-3G ethanol plants that will facilitate the progress.

Prime Minister will also flag off the Green Mobility Rally. The rally will witness participation of vehicles running on green energy sources and will help create public awareness for the green fuels.

Prime Minister will launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil. Guided by the vision of the Prime Minister to phase out single-use plastic, IndianOil has adopted uniforms for retail customer attendants and LPG delivery personnel made from recycled polyester (rPET) & cotton. Each set of uniform of IndianOil’s customer attendant shall support recycling of around 28 used PET bottles. IndianOil is taking this initiative further through ‘Unbottled’ - a brand for sustainable garments, launched for merchandise made from recycled polyester. Under this brand, IndianOil targets to meet the requirement of uniforms for the customer attendants of other Oil Marketing Companies, non-combat uniforms for Army, uniforms/ dresses for Institutions & sales to retail customers.

Prime Minister will also dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System and flag-off its commercial roll-out. IndianOil had earlier developed an innovative and patented Indoor Solar Cooking System with single cooktop. On the basis of feedback received, twin-cooktop Indoor Solar Cooking system has been designed offering more flexibility and ease to the users. It is a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously, making it a reliable cooking solution for India.

PM in Tumakuru

In yet another step towards Aatmanirbharta in the defence sector, Prime Minister will dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru. Its foundation stone was also laid by the Prime Minister in 2016. It is a dedicated new greenfield helicopter factory which will enhance capacity and ecosystem to build helicopters.

This helicopter factory is Asia’s largest helicopter manufacturing facility and will initially produce the Light Utility Helicopters (LUH). LUH is an indigenously designed and developed 3-ton class, single engine multipurpose utility helicopter with unique feature of high manoeuvrability.

The factory will be expanded to manufacture other helicopters such as Light Combat Helicopter (LCH) and Indian Multirole Helicopter (IMRH) as well as for repair and overhaul of LCH, LUH, Civil ALH and IMRH in the future. The factory also has the potential for exporting the Civil LUHs in future.

This facility will enable India to meet its entire requirement of helicopters indigenously and will attain the distinction of enabling self-reliance in helicopter design, development and manufacture in India.

The factory will have a manufacturing set up of Industry 4.0 standards. Over the next 20 years, HAL is planning to produce more than 1000 helicopters in the class of 3-15 tonnes from Tumakuru. This will result in providing employment for around 6000 people in the region.

Prime Minister will lay the foundation stone of Tumakuru Industrial Township. Under the National Industrial Corridor Development Programme, development of the Industrial Township spread across 8484 acre in three phases in Tumakuru has been taken up as part of Chennai Bengaluru Industrial Corridor.

Prime Minister will lay the foundation stones of two Jal Jeevan Mission projects at Tiptur and Chikkanayakanahalli in Tumakuru. The Tiptur Multi-Village Drinking Water Supply Project will be built at a cost of over Rs 430 crores. The Multi-village water supply scheme to 147 habitations of Chikkanayakanahlli taluk will be built at a cost of around Rs 115 crores. The projects will facilitate provision of clean drinking water for the people of the region.