Share
 
Comments
اگر حکومت کا دل اور اس کی نیت عوام کے مسائل کے احساس سے پر نہیں ہے تو مناسب صحت بنیادی ڈھانچے کا قیام ممکن نہیں ہے
’’گجرات میں کام اور حصولیابیاں اس قدر ہیں کہ کبھی کبھی تو ان کو شمار کرنا بھی مشکل ہوتا ہے‘‘
’’آج سب کا ساتھ ، سب کا وکاس، سب کا وشواس، سب کا پریاس حکومت گجرات کے لئے انتھک کام کررہی ہے‘‘
جب حکومت حساس ہوتی ہے تو سماج کو ہی اس کے سب سے بڑے فائدے پہنچتے ہیں، جن میں کمزور طبقات اور ہماری مائیں اور بہنیں شامل ہیں

 

نمستے بھائیوں

 گجرات کی صحت سہولیات کے لیے آج کا دن بہت بڑا ہے۔  میں اس اہم کام کو آگے بڑھانے اور تیز رفتاری سے آگے بڑھانے کے لیے بھوپیندر بھائی، کابینہ کے تمام ساتھیوں، ڈائس پر بیٹھے تمام ممبران پارلیمنٹ، ایم ایل اے، کارپوریشن کے تمام معززین کو مبارکباددیتا ہوں اور شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔  دنیا کی جدید ترین طبی ٹیکنالوجی، بہتر سہولیات اور طبی ڈھانچہ اب ہمارے احمد آباد اور گجرات میں اور زیادہ دستیاب ہوگا، اور اس معاشرے کا عام آدمی  اسےاستعمال کر سکے گا جو پرائیویٹ اسپتال نہیں جا سکتے۔  ایسے ہی سب کے لیے یہ سرکاری اسپتال، سرکاری ٹیم 24 گھنٹے خدمت کے لیے تیار رہے گی۔ بھائیوں بہنوں ،ساڑھے تین سال پہلے مجھے یہاں اس کیمپس میں آنے اور 1200 بستروں کی سہولت کے ساتھ میٹرنل اینڈ چائلڈ ہیلتھ اور سپر اسپیشلٹی سروسز شروع کرنے کا شرف حاصل ہوا تھا۔  آج اتنے قلیل عرصے میں یہ میڈیسٹی کیمپس بھی اتنی شاندار شکل میں ہمارے سامنے تیار ہوچکاہے۔  اس کے ساتھ ہی، انسٹی ٹیوٹ آف کڈنی ڈیزیز اور یو این مہتا انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی اپنی صلاحیت اور خدمات کو بڑھا رہے ہیں۔  گجرات کینسر ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کی نئی عمارت کے ساتھ اپ گریڈڈ بون میرو ٹرانسپلانٹ جیسی سہولیات بھی شروع ہو رہی ہیں۔  یہ ملک کا پہلا سرکاری اسپتال ہوگا، جہاں سائبر نائف جیسی جدید ٹیکنالوجی دستیاب ہوگی۔  جب ترقی کی رفتار گجرات کی طرح تیز ہو تو کام اور کامیابیاں اتنی بڑھ جاتی ہیں کہ انہیں شمار کرنا بھی مشکل ہو جاتا ہے۔  ہمیشہ کی طرح، گجرات ملک میں پہلی بار بہت کچھ کر رہا ہے۔  میں آپ سب کو اور گجرات کے تمام لوگوں کو ان کامیابیوں کے لیے مبارکباد دیتا ہوں۔  خاص طور پر، میں وزیر اعلی بھوپیندر بھائی پٹیل اور ان کی حکومت کی پوری پوری تعریف کرتا ہوں، جنہوں نے اتنی محنت سے ان اسکیموں کو کامیاب بنایا۔

 

ساتھیوں،

 آج صحت کے اس پروگرام میں، میں گجرات کے ایک بڑے سفر کے بارے میں بات کرنا چاہتا ہوں۔  یہ مختلف بیماریوں سے صحت مند ہونے کا سفر ہے۔  اب آپ سوچیں گے کہ اسپتال میں کوئی پروگرام ہے۔  مختلف قسم کی بیماریوں کے بارے میں مودی کیا کہہ رہے ہیں؟  میں بتاؤں گا کہ مجھے کس قسم کی بیماریاں ہیں، میں ڈاکٹر نہیں ہوں لیکن مجھے علاج کرنا تھا۔  20-25 سال پہلے گجرات کا نظام کئی بیماریوں سے دوچار تھا۔  ایک بیماری تھی صحت کے شعبے میں پسماندگی۔  دوسری بیماری تعلیم  کے شعبے میں پسماندگی تھی۔  تیسری بیماری بجلی کی کمی تھی۔  چوتھی بیماری پانی کی کمی تھی۔  پانچویں بیماری ہر طرف پھیلی ہوئی غلط حکمرانی تھی۔  چھٹی بیماری امن و امان کی خرابی تھی۔  اور ان تمام بیماریوں کی جڑ میں سب سے بڑی بیماری ووٹ بینک کی سیاست تھی۔  ووٹ بینک کی سیاست۔  جو بزرگ یہاں موجود ہیں، وہ گجرات کی پرانی نسل کے لوگ ہیں۔  انہیں یہ سب باتیں اچھی طرح یاد ہیں۔  20-25 سال پہلے گجرات کا یہی حال تھا!  نوجوانوں کو اچھی تعلیم کے لیے باہر جانا پڑتا تھا۔  لوگوں کو اچھے علاج کے لیے بھٹکنا پڑتا      تھا۔  لوگوں کو بجلی کا انتظار کرنا پڑتا  تھا۔  ہمیں ہر روز بدعنوانی اور تباہ حال امن و امان  کی صورتحال سے لڑنا پڑتا  تھا۔  لیکن آج گجرات ان تمام بیماریوں کو پیچھے چھوڑ کر آگے  چل رہا   ہے۔  اور اسی لیے ہم ریاست کو بہت سی بیماریوں سے پاک کرنے کے لیےپاک کرنےکی مہم چلا رہے ہیں جس طرح شہریوں کو بیماریوں سے نجات دلائی جاتی ہے۔  اور ہم آزاد ہونے کی ہر ممکن کوشش کرتے رہتے ہیں۔  آج جب ہائی ٹیک اسپتالوں کی بات آتی ہے تو گجرات کا نام سرفہرست رہتا ہے۔  جب میں یہاں کا وزیر اعلیٰ تھا تو میں کئی بار سول اسپتال جایا کرتا تھا، اور میں دیکھا کرتا    تھا کہ مدھیہ پردیش کے کچھ علاقوں، راجستھان کے کچھ علاقوں سے لوگ بڑی تعداد میں علاج کے لیے سول اسپتال آنے کو ترجیح دیتے ہیں۔

 

ساتھیوں،

 اگر ہم تعلیمی اداروں کی بات کریں، ایک سےبڑھ کر ایک یونیورسٹیوں کی  بات کریں تو آج گجرات کا کوئی مقابلہ نہیں۔  گجرات میں پانی کی صورتحال، بجلی کی صورتحال، امن و امان کی صورتحال سب میں اب بہتری آئی ہے۔  آج سب کا ساتھ، سب کا وکاس، سب کا وشواس اور سب کا پریاس کی حکومت گجرات کی خدمت کے لیے لگاتار کام کر رہی ہے۔

 

ساتھیوں،

 آج احمد آباد میں اس ہائی ٹیک میڈیسٹی اور دیگر صحت سے متعلق خدمات نے گجرات کی شناخت کو ایک نئی بلندی دی ہے۔  یہ نہ صرف ایک خدمت کا ادارہ ہے بلکہ یہ گجرات کے لوگوں کی صلاحیتوں کی علامت بھی ہے۔  گجرات کے لوگوں کو میڈیسٹی میں اچھی صحت  سہولت بھی ملے گی، اور یہ بھی فخر کی بات ہوگی کہ دنیا کی اعلیٰ طبی سہولیات اب ہماری اپنی ریاست میں مسلسل بڑھ رہی ہیں۔  میڈیکل ٹورزم کے میدان میں گجرات میں جو بے پناہ صلاحیت ہے اس میں مزید اضافہ ہوگا۔

 

ساتھیوں،

 ہم سب اکثر سنتے ہیں کہ صحت مند جسم کے لیے صحت مند دماغ ضروری ہے۔  اس کا اطلاق حکومتوں پر بھی ہوتا ہے۔  اگر حکومتوں کا دماغ صحت مند نہ ہو، نیت صاف نہ ہو، عوام کے لیے ان کے ذہنوں میں حساسیت نہ ہو تو ریاست کا ہیلتھ انفرااسٹرکچر بھی کمزور ہو جاتا ہے۔  گجرات کے عوام نے آج سے 20-22 سال پہلے تک بہت تکلیفیں برداشت کی ہیں، اور درد سے نجات کے لیے ہمارے ڈاکٹر ساتھیوں نے بھی، عموماً آپ کسی بھی ڈاکٹر کے پاس جائیں، اکثر ڈاکٹر تین مشورے ضرور دیں گے۔  تین مختلف متبادل بتائیں گے۔  پہلے کہتے ہیں بھائی دوائی سے ٹھیک ہو جائیں گے۔  پھر انہیں لگتا ہے کہ اس دوا کا مرحلہ ختم ہو گیا ہے۔  اس لیے وہ یہ کہنے پر مجبور ہیں کہ سرجری کے بغیر کوئی چارہ نہیں۔  دوا ہو یا سرجری، لیکن اس کے ساتھ وہ گھر والوں کو سمجھاتا ہے۔  کہ میں اپنا کام کروں گا لیکن آپ کی دیکھ بھال کی ذمہ داری آپ کی ہے۔  آپ مریض کی اچھی دیکھ بھال کرتے ہیں۔  وہ اس کے لیے بھی مشورہ دیتا ہے۔

 

 ساتھیوں،

 میں اس کے بارے میں مختلف انداز میں سوچوں تو ہماری حکومت نے علاج کے ان تین طریقوں کو گجرات کے طبی نظام کو بہتر بنانے کے لیے استعمال کیا۔  آپ مریض کے لیے جو کہتے ہیں، میں ریاستی نظام کے لیے وہی کرتا تھا۔  جو ڈاکٹر تجویز کرتے ہیں۔  سرجری‘ یعنی ہمت اور پوری قوت کے ساتھ پرانے حکومتی نظام میں تبدیلی۔  بے عملی، سستی اور کرپشن پر قینچی، یہ میری سرجری رہی ہے۔  دوسرا، طب - یعنی ایک نیا نظام بنانے کے لیے، نئے نظام کو تیار کرنے کے لیے، انسانی وسائل کی ترقی کے لیے، بنیادی ڈھانچے کو تیار کرنے کے لیے، تحقیق کرنے کے لیے، اختراع کرنے کے لیے، نئے اسپتالوں کی تعمیر کے لیے مسلسل نئی کوششیں، اس طرح کے بہت سے کام۔  اور تیسرا، دیکھ بھال یا  نگہداشت۔

یہ گجرات کے صحت کے شعبے کو ٹھیک کرنے کا سب سے اہم حصہ ہے۔  ہم نے احتیاط سے کام کیا۔  ہم لوگوں کے درمیان گئے، ان کی تکلیف کو سمجھا۔  اور یہی نہیں، آج میں بڑی عاجزی کے ساتھ کہنا چاہتا ہوں۔  گجرات اس ملک کی پہلی ریاست تھی جو نہ صرف انسانوں کے لیے بلکہ جانوروں کے لیے بھی ہیلتھ کیمپ لگاتا تھا۔  اور جب میں دنیا کو بتاتا تھا کہ یہاں جانوروں کے دانتوں کا علاج کیا جاتا ہے، جانوروں کی آنکھوں کا علاج کیا جاتا ہے تو باہر کے لوگوں کو عجیب لگتا تھا۔

 

بھائیوں اور بہنوں،

 ہم نے جو کوششیں کیں وہ لوگوں کو آپس میں جوڑ کر، عوامی شراکت داری کے ذریعے کی گئیں۔  اور میں جی20 سربراہی اجلاس میں اس وقت بول رہا تھا جب کورونا بحران تھا۔  تب میں نے بڑی عاجزی سے کہا تھا۔  دنیا کی ایسی خوفناک صورتحال کے پیش نظر میں نے کہا تھا کہ جب تک ہم ایک زمین، ایک صحت کے اس مشن پر کام نہیں کرتےتب تک جو غریب ہے، تکلیف میں ہے، کوئی اس کی مدد نہیں کرے گا اور ہم نے دنیا میں دیکھا ہے۔  کچھ ممالک ایسے ہیں جہاں کورونا کی ویکسین کی چار چار، پانچ پانچ خوراکیں لگائی گئی ہیں اور دوسری طرف کچھ ممالک ایسے ہیں جہاں غریبوں کو ایک بھی ویکسین نہیں ملی۔  میں تب درد میں تھا۔  پھربھارت وہ طاقت لے کر  آیا، ہم نے ویکسین کو دنیا تک پہنچانے کی کوشش کی۔  تاکہ دنیا میں کوئی نہ مرے بھائیو۔  اور ہم سب نے دیکھا ہے کہ جب نظام صحت مند ہوا تو گجرات کا شعبہ صحت بھی صحت مند ہو گیا۔  لوگ ملک میں گجرات کی مثالیں دینے لگے۔

 

ساتھیوں،

 جب کوششیں ایک جامع نقطہ نظر کے ساتھ پورے دل سے کی جاتی ہیں، تو ان کے نتائج بھی اسی طرح کثیر جہتی ہوتے ہیں۔  یہ گجرات کی کامیابی کا منتر ہے۔  آج گجرات میں اسپتال، ڈاکٹر اور نوجوانوں کے لیے ڈاکٹر بننے کا خواب پورا کرنے کے مواقع بھی موجود ہیں۔  20-22 سال پہلے ہماری اتنی بڑی ریاست میں صرف 9 میڈیکل کالج ہوا کرتے تھے۔  صرف 9 میڈیکل کالج!  جب میڈیکل کالج کم تھے تو سستے اور اچھے علاج کی گنجائش بھی کم تھی۔  لیکن، آج 36 میڈیکل کالج اپنی خدمات پیش کر رہے ہیں۔  20 سال پہلے گجرات کے سرکاری اسپتالوں میں تقریباً 15000 بستر تھے۔  اب یہاں کے سرکاری اسپتالوں میں بستروں کی تعداد 60 ہزار ہو گئی ہے۔  اس سے پہلے گجرات میں انڈر گریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹ میڈیکل کی کل سیٹیں 2200 تھیں۔

 اب گجرات میں ہمارے نوجوانوں کے لیے آٹھ ہزار پانچ سو میڈیکل سیٹیں دستیاب ہیں۔  جن ڈاکٹروں نے ان میں تعلیم حاصل کی ہے وہ گجرات کے کونے کونے میں صحت خدمات کو مضبوط کر رہے ہیں۔  آج گجرات میں ہزاروں ذیلی مراکز،  سی ایچ سی ، پی ایچ سی اور ویلنیس مراکز کا ایک بڑا نیٹ ورک بھی مکمل طور پر قائم ہے۔

 

 اور ساتھیوں،

 میں آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ گجرات نے جو کچھ سکھایا، وہ دہلی جانے کے بعد میرے لیے بہت مفید رہا۔  صحت کے اس وژن کے ساتھ ہم نے مرکز میں بھی کام کرنا شروع کیا۔  ان 8 سالوں میں ہم نے ملک کے مختلف حصوں میں  تقریباً 22نئے ایمس دیے ہیں۔  اس کا فائدہ گجرات کو بھی ہوا ہے۔  گجرات کو اپنا پہلا ایمس راجکوٹ میں ملا ہے۔  جس طرح سے گجرات میں صحت کے شعبے میں کام ہو رہا ہے، وہ دن دور نہیں جب گجرات پوری دنیا میں میڈیکل ریسرچ، فارما ریسرچ اور بائیو ٹیک ریسرچ میں اپنا جھنڈا گاڑ دے گا، ڈبل انجن والی حکومت کی سب سے زیادہ توجہ اسی پر ہے۔

ساتھیوں،

 جب حساسیت کو وسائل کے ساتھ ملایا جائے تو وسائل خدمت کا بہترین ذریعہ بن جاتے ہیں۔  لیکن جہاں ہمدردی نہ ہو وہاں وسائل خود غرضی اور بدعنوانی کی نذر ہو جاتے ہیں۔  اسی لیے شروع میں میں نے حسیات کا بھی ذکر کیا اور پرانے نظام کی غلط حکمرانی بھی یاد دلائی۔  اب نظام بدل چکا ہے۔  اس حساس اور شفاف نظام کا نتیجہ ہے کہ احمد آباد میں میڈیسٹی بنائی گئی ہے، کینسر انسٹی ٹیوٹ کو جدید بنایا گیا ہے۔  اور ساتھ ہی، گجرات کے ہر ضلع میں ڈے کیئر کیموتھراپی کی سہولت بھی شروع کی گئی ہے، تاکہ مریضوں کو کیموتھراپی کے لیے گاؤں گاؤں بھاگنا نہ پڑے۔  اب اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ آپ گجرات میں کہیں بھی ہوں، آپ کو کیموتھراپی جیسا اہم علاج اپنے ہی ضلع میں، گھر کے قریب ہی ملے گا۔  اسی طرح، پیچیدہ صحت دیکھ بھال  خدمات جیسے ڈائلیسس بھی بھوپیندر بھائی کی حکومت کی طرف سے تعلقہ کی سطح پر فراہم کی جا رہی ہے۔  گجرات نے ڈائیلیسس وین کی سہولت بھی شروع کر دی ہے، تاکہ مریض کو ضرورت ہو تو اس کے گھر پر بھی خدمت دی جا سکے۔  آج یہاں 8 فلور رین بسیرا کا بھی افتتاح کیا گیا ہے۔  اور جہاں تک ڈائیلیسس کا تعلق ہے۔  پورے ہندوستان میں سارا نظام خراب تھا۔  ڈائیلیسس کرانے والے کے لیے ضروری ہے کہ وہ ایک مخصوص وقت کے اندر ڈائیلیسس کروائے۔  اس کے بعد میں نے دنیا کے بڑے صحت کے شعبے میں کام کرنے والے لوگوں سے بات کی۔  میں نے کہا کہ مجھے اپنے ہندوستان کے ہر ضلع میں ڈائیلیسس سنٹر بنانے ہیں۔  اور گجرات میں تحصیل تک کام جاری ہے۔  میں نے ملک میں ڈائیلیسس سسٹم کو ضلع میں لانے کے لیے ایک بڑی پہل کی، اور بہت بڑی مقدار میں کام ہو رہا ہے۔

 

ساتھیوں،

 مریض کے لواحقین جن پریشانیوں کا سامناکر رہے ہوتے ہیں،انہیں مزید تکلیف کا سامنا نہ کرنا پڑے اسکی فکر حکومت نے کی ہے  آج ملک اسی طرح چل رہا ہے۔  یہ آج ملک کی ترجیحات ہیں۔

 

ساتھیوں،

 جب حکومت حساس ہوتی ہے تو اس کا سب سے زیادہ فائدہ معاشرے کے کمزور طبقے، غریب، متوسط طبقے کے خاندان، ماؤں بہنوں کو ہوتا ہے۔  پہلے ہم دیکھتے تھے کہ گجرات میں زچگی کی شرح اموات، بچوں کی شرح اموات تشویشناک بات تھی، لیکن حکومتوں نے اسے قسمت کے نام پر چھوڑ دیا۔  ہم نے فیصلہ کیا کہ یہ ہماری ماؤں اور بہنوں کی زندگیوں کا سوال ہے۔  اس کا الزام کسی کی قسمت پر نہیں ڈالنے دیا جائے گا۔  پچھلے 20 سالوں میں، ہم نے اس کے لیے مسلسل درست پالیسیاں بنائیں اور ان پر عمل درآمد کیا۔  آج گجرات میں زچگی کی شرح اموات اور بچوں کی شرح اموات میں بڑی کمی آئی ہے۔  ماں کی جان بھی بچائی جا رہی ہے اور نومولود بھی دنیا میں بحفاظت اپنی ترقی کے سفر پر قدم رکھ رہا ہے۔  'بیٹی بچاؤ، بیٹی پڑھاؤ' مہم کے نتیجے میں پہلی بار بیٹوں کے مقابلے بیٹیوں کی تعداد زیادہ ہوئی ہے۔  ان کامیابیوں کے پیچھے، گجرات حکومت کی 'چرنجیوی' اور 'کھلکھلاہٹ' جیسی اسکیموں کی محنت ہے۔  گجرات کی یہ کامیابی، یہ کوشش آج 'مشن اندر دھنش' اور 'ماتری وندنا' جیسی اسکیموں کے ذریعے پورے ملک کی رہنمائی کر رہی ہے۔

 

ساتھیوں،

 آج آیوشمان بھارت جیسی اسکیمیں ملک کے ہر غریب کے مفت علاج کے لیے دستیاب ہیں۔  گجرات میں 'آیوشمان بھارت' اور 'مکھیہ منتری امرتم' اسکیم مل کر غریبوں کی پریشانی اور بوجھ کو کم کر رہی ہیں۔  یہ ڈبل انجن والی حکومت کی طاقت ہے۔

 

ساتھیوں،

 تعلیم اور صحت دو ایسے شعبے ہیں جو نہ صرف حال بلکہ مستقبل کی سمت بھی طے کرتے ہیں۔  اور مثال کے طور پر اگر دیکھا جائے تو 2019 میں سول اسپتال میں 1200 بستروں کی سہولت موجود تھی۔  ایک سال بعد جب عالمی وباء نے حملہ کیا تو یہ اسپتال سب سے بڑے مرکز کے طور پر ابھرا۔  اس ایک صحت کے بنیادی ڈھانچے نے کتنی جانیں بچائیں؟  اسی طرح، 2019 میں ہی، اے ایم سی  کا ایس وی پی  اسپتال، احمد آباد شروع ہوا تھا۔  اس اسپتال نے عالمی وبائی مرض سے لڑنے میں بھی بڑا کردار ادا کیا۔  اگر گجرات میں پچھلے 20 سالوں میں ایسا جدید طبی انفرااسٹرکچر نہیں تھا، تو تصور کریں کہ عالمی وبا سے لڑنا ہمارے لیے کتنا مشکل ہوتا؟  ہمیں گجرات کا حال بھی سنوارنا ہے اور مستقبل کو بھی محفوظ کرنا ہے۔  مجھے یقین ہے، گجرات اپنی ترقی کی اس رفتار کو مزید آگے لے جائے گا، اور اسے بلندیوں پر لے جائے گا، اور آپ کی مہربانیاں بڑھتی رہیں گی اور اسی طاقت کے ساتھ، ہم مزید توانائی کے ساتھ آپ کی خدمت کرتے رہیں گے۔  میں آپ سب کی اچھی صحت کی خواہش کرتا ہوں۔  اور آپ سلامت رہیں، آپ کا خاندان صحت مند رہے، میں گجرات کے اپنے بھائیوں اور بہنوں کو مبارکباد دیتے ہوئے اپنی تقریر کا اختتام یہاں کرتا ہوں۔  بہت بہت شکریہ۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
India ‘Shining’ Brightly, Shows ISRO Report: Did Modi Govt’s Power Schemes Add to the Glow?

Media Coverage

India ‘Shining’ Brightly, Shows ISRO Report: Did Modi Govt’s Power Schemes Add to the Glow?
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM condoles the passing away of former Union Minister and noted advocate, Shri Shanti Bhushan
January 31, 2023
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has expressed deep grief over the passing away of former Union Minister and noted advocate, Shri Shanti Bhushan.

In a tweet, the Prime Minister said;

"Shri Shanti Bhushan Ji will be remembered for his contribution to the legal field and passion towards speaking for the underprivileged. Pained by his passing away. Condolences to his family. Om Shanti."