Share
 
Comments

Business representatives from India and Sri Lanka,

Distinguished guests,

684-32 PM MODI AT Business Meeting hosted by Ceylon (3)

I am delighted to be here at the Ceylon Chamber of Commerce.

Thank you for coming here in such large numbers.

It is a real honour to visit Sri Lanka.

Over the course of these two days, I will meet people from all walks of life.

For me, this is one of the most important meetings in Sri Lanka.

This is because no matter how old and strong the relationship is, economic cooperation is often the locomotive that gives it momentum.

It is also important because for all of us in our region, the most important priority is transforming the lives of our people.

Our path will be determined by our economic choices and the quality of governance. But, business enterprises will remain critical for our success.

I often say that a nation`s fortunes are linked to its neighbourhood. There are many in India who would argue that India is too large to need her neighbours. There are many in our region who worry that India`s economic size will hurt them.

I disagree with both views.

For one, we all need a stable and peaceful neighbourhood to concentrate on national development.

I also believe that countries do better when the entire region moves together.

I said at the SAARC Summit that barriers of boundaries inhibit progress; international partnerships give it speed. That is why we see a rising tide of regional integration and cooperation across the world.

684-32 PM MODI AT Business Meeting hosted by Ceylon (2)

Our region is rich in resources. We constitute a large market. We complement each other. Therefore, our cooperation can be of huge benefit to all of us. There are already powerful examples in South Asia that show us that difference in size is no constraint to beneficial partnerships, if we use our strengths and seize our opportunities.

Bhutan benefits from hydropower exports to India. Nepal has significant manufacturing exports to India – in part driven by Indian investors. Infrastructure, energy, supply chains, traditional handicrafts, modern manufacturing, tourism and services – there are no limits to our possibilities.

I hardly need to tell this informed audience about the transformation unleashed in India over the past ten months. There is new purpose and clarity in our policies; a new vision for inclusive development; new standards in our governance; and, a new level of energy in our economy. Last quarter, India was the fastest growing global economy. We are confident that we can grow even faster.

The progress of one-sixth of humanity is a major economic opportunity for the world.

The global confidence in India has been restored. The world`s engagement with India is at a new level. But, the first claim on us should be that of India`s neighbours. And, I will be happy if India is a catalyst for economic growth in our own region. That is why I speak of a neighbourhood where trade, investment, ideas and people move easily across the borders.

And, as I said in Kathmandu, Nepal, in November, India will do its part for the region. We will work to integrate our markets more. We will make trade smoother and possible through the most direct routes. We will invest in regional connectivity. And, we will share our capabilities in science and technology with South Asia, from advanced medicines to disaster management or space science.

As a friend and neighbor, we attach the highest importance to Sri Lanka`s economic progress.

Sri Lanka is a nation of many achievements and great strengths. It has education, skills and enterprise. It has an excellent location. And, it has won peace now. Sri Lankan businesses have shown that they can compete with the best in the world. Our garments and tea industry know that!

We are pleased to be Sri Lanka`s largest trading partner and one its largest sources of investment. Our Free Trade Agreement in 2000 was a pioneering initiative in the region. It has given a big boost to our trade. Sri Lanka`s exports to India have grown sixteen times – yes, sixteen times – since then. This is impressive by any standards.

I know there are concerns here about the huge trade imbalance. I am prepared to work with you to address them. I want balanced growth in trade. We will try to make it easier and smoother for you to access the Indian market. That is part of my philosophy of ease of doing business in India. Our agreement on Customs cooperation is a step in that direction.

India is opening up to the world. We offer duty free access to Least Developed Countries, including in South Asia. And, India has Free Trade Agreements with ASEAN and others.

We should ensure that Sri Lanka does not fall behind in the changing and competitive world. That is why India and Sri Lanka should move boldly to conclude a Comprehensive Economic Partnership Agreement. You should also attract investments from India for exports to India. That should be the natural outcome of our proximity and your strengths.

Indian investments can also upgrade and expand your infrastructure. It is also natural that Indian investors are more likely to invest here because of familiarity and proximity. They are already here. And, I know that there are many large commitments in the pipeline. They are looking for your support.

During this visit, I am pleased with progress on Sampur Thermal Power Project and the Trincomalee Oil Farm. That is good for Sri Lanka`s energy security and for our partnership.

Sustainable development of the Ocean Economy can be a huge area for cooperation.

I also believe that when we connect the lives of people, we strengthen the bonds between nations. We have extended visa on arrival facility to Sri Lanka from April 14. We should do more to connect our countries by air and sea.

India and Sri Lanka were, in some ways, better connected in the past than we are now! In the past, a person could buy a rail ticket in Colombo and travel to Chennai by rail and ferry! Air India`s decision to launch direct flight between our capitals will help reverse that trend.

Tourism unites people and creates economic opportunities. India is already the biggest source of tourists here. We will work together to increase that flow.

684-32 PM MODI AT Business Meeting hosted by Ceylon (1)

In conclusion, let me return to the point I had made at the beginning. India`s progress gives us the ability to create opportunities for our neighbours. Our development partnership has injected commitments of 1.6 billion dollars in assistance from India. That has helped rebuild and upgrade infrastructure in Sri Lanka.

Today, we have offered another Line of Credit of about 318 million dollars for the railways sector. Reserve Bank of India has agreed to provide Central Bank of Sri Lanka a currency swap arrangement for 1.5 billion dollars. This will increase the stability of Sri Lankan Rupee.

It is not just in development partnership. We will also be supportive in advancing your commercial interests. I believe in Sri Lanka`s capabilities. We should engage more. We should open up to each other more.

We should move forward with greater belief in our own strengths; more trust in each other; and, with more confidence in the fruits of our partnership.

As I was saying before, Sri Lanka has the potential to be our most important economic partner in the region. We count on your support to make it happen.

Thank you and wish you all the best. Thank you very much.

بھارتی اولمپئنس کی حوصلہ افزائی کریں۔ #Cheers4India
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India's Remdesivir production capacity increased to 122.49 lakh vials per month in June: Government

Media Coverage

India's Remdesivir production capacity increased to 122.49 lakh vials per month in June: Government
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
گجرات میں پردھان منتری غریب کلیان انّ یوجنا کے استفادہ کنندگان سے وزیراعظم کی بات چیت کا متن
August 03, 2021
Share
 
Comments
اس سے قبل بھی، سستے راشن اسکیموں کا دائرہ کار اور بجٹ بڑھتا رہا لیکن بھکمری اور غذائی قلت اس تناسب سے کم نہیں ہوئی: وزیراعظم
پردھان منتری غریب کلیان انا یوجنا شروع ہونے کے بعد مستحقین کو راشن کی تقریباًدوگنی رقم مل رہی ہے: وزیر اعظم
80 لاکھ سے زیادہ لوگ وبائی امراض کے دوران 2 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کا مفت راشن حاصل کر رہے ہیں: وزیر اعظم
صدی کی سب سے بڑی آفت کے باوجود کوئی شہری بھوکا نہیں رہا: وزیراعظم
غریبوں کو بااختیار بنانے کو آج اولین ترجیح دی جارہی ہے: وزیراعظم
ہمارے کھلاڑیوں کا نیا اعتماد نئے ہندوستان کی شناخت بن رہا ہے: وزیر اعظم
ملک 50 کروڑ لوگوں کی ٹیکہ کاری کے سنگ میل کی طرف تیزی سے بڑھ رہا ہے: وزیراعظم
آئیے آزادی کا امرت مہوتسو پر قوم کی تعمیر کے لیے نئی تحریک چھیڑنے کاعہدکریں: وزیر اعظم

نئی دہلی،  3  اگست 2021،   نمسکار! گجرات کے وزیر اعلیٰ جناب وجے روپانی جی، نائب وزیر اعلیٰ جناب نتن بھائی پٹیل جی،پارلیمنٹ میں میرے ساتھی اور گجرات بی جے پی کے صدر جناب سی آر پاٹل جی، پی ایم غریب کلیان انّ یوجنا کے تمام استفادہ کنندگان، بھائیو اور بہنو!

گزشتہ برسوں میں گجرات نے ترقی اور اعتماد کا جو مسلسل سلسلہ شروع کیا، وہ ریاست کو نئی بلندی پر لے جا رہا ہے۔حکومت گجرات نے ہماری بہنوں، ہمارے کسانوں، ہمارے غریب خاندانوں کے مفاد میں ہر اسکیم کو خدمت کے جذبے کے ساتھ زمین پر اتارا ہے۔ آج گجرات کے لاکھوں کنبوں کو پی ایم غریب کلیان انّ یوجنا کے تحت ایک ساتھ مفت راشن تقسیم کیا جا رہا ہے۔ یہ مفت راشن عالمی وبا کے اس دور میں غریب کی پریشانی کو کم کرتا ہے، ان کے اعتماد میں اضافہ کرتا ہے۔ یہ آج سے شروع نہیں ہو رہی ہے، اسکیم تو گزشتہ ایک سے قریب قریب چل رہی ہےتاکہ اس ملک کا کوئی غریب بھوکا نہ سو جائے۔

میرے پیارے بھائیو اور بہنو،

غریب کے دل میں بھی اسکی وجہ سے یقین پیدا ہوا ہے۔ یہ یقین، اس لئے آیا ہے کہ ان کو لگتا ہے کہ چیلنج چاہے کتنا بھی بڑا ہے، ملک ان کے ساتھ ہے۔ تھوڑی دیر قبل مجھے کچھ استفادہ کنندگان کے ساتھ بات چیت کرنے کا موقع ملا، میں نے اس بات چیت میں محسوس بھی کیا کہ ایک نئی خود اعتمادی ان کے اندر بھری ہوئی ہے۔

ساتھیو،

آزادی کے بعد سے ہی قریب قریب ہر حکومت نے غریبوں کو سستا کھانا فراہم کرانے کی بات کہی تھی۔ سستے راشن کی اسکیموں کا دائرہ اور بجٹ سال در سال بڑھتا گیا، لیکن اس کا جو اثر ہونا چاہیئے تھا، وہ محدود ہی رہا۔ ملک کے خوردنی اشیا کا ذخیرہ بڑھتا گیا لیکن بھکمری اور تغذیہ کی کمی اس تناسب میں کمی نہیں آپائی۔ اس کا ایک بڑا سبب تھا کہ موثر ڈلیوری سسٹم کا نہ ہونا اور کچھ بیماریاں بھی آگئی سسٹمز میں، کچھ کٹ کی کمپنیاں بھی آگئیں، خود غرض عناصر بھی داخل ہوئے۔ اس صورتحال کو بدلنے کے لیے سال 2014 کے بعد نئے سرے سے کام شروع کیا گیا۔ نئی ٹیکنالوجی کو اس تبدیلی کا ذریعہ بنایا گیا۔ کروڑوں فرضی استفادہ کنندگان کو سسٹم سے نکال دیا گیا۔ راشن کارڈ کو آدھار کارڈ سے لنک کیا اور سرکاری راشن کی دوکانوں میں ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کی حوصلہ افزائی کی گئی۔ آج نتیجہ ہمارے سامنے ہے۔

بھائیواور بہنو،

سو سال کی سب سے بڑی آفت نہ صرف ہندوستان بلکہ پوری دنیا پر آئی ہے، پوری نوع انسانی پر آئی ہے۔ روزگار پر ایک بحران آیا، کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے کام دھندے بند کرنے پڑے۔ لیکن ملک نے اپنے شہریوں کو بھوکا نہیں سونے دیا۔ بدقسمتی سے دنیا کے کئی ممالک کے لوگوں کو آج کورونا کے ساتھ ساتھ بھکمری کے شدید بحران کا سامنا کرنا پڑ گیا ہے۔ لیکن بھارت کورونا کی آہٹ کی پہلے دن سے ہی اس مصیبت کوپہچنااور اس پر کام کیا۔ اس لیے آج دنیا بھر میں پردھان منتری غریب کلیان ان یوجنا کی تعریف ہورہی ہے۔ بڑے بڑے ایکسپرٹ اس بات کی تعریف کر رہے ہیں کہ بھارت اپنے 80 کروڑ سے زائد لوگوں کو اس وبا کے دوران مفت اناج فراہم کر ارہا ہے۔ اس پر 2 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ یہ ملک خرچ کر رہا ہے۔ مقصد ایک ہی ہے۔ کوئی بھارت کا میرا بھائیو، بہن، میرا کوئی بھی بھارت کا شہری بھوکا نہ رہے۔ آج 2 روپے کلو گیہوں، 3 روپے کلوکے چاول کے کوٹے کے علاوہ ہر استفادہ کنندہ کو 5 کلو گیہوں اور چاول مفت دیا جا رہا ہے۔ یعنی اس سکیم سے پہلے کے مقابلے میں راشن کارڈ رکھنے والوں کو تقریباً ڈبل مقدار میں راشن فراہم کرایا جا رہا ہے۔ یہ اسکیم دیوالی تک چلنے والی، دیوالی تک کسی غریب کو پیٹ بھرنے کے لیے اپنی جیب سے پیسہ نہیں نکالنا پڑے گا۔ گجرات میں بھی تقریباًساڑھے تین کروڑ استفادپ کنندگان کو مفت راشن کا فائدہ آج مل رہا ہے۔ میں گجرات حکومت کی اس بات کے لیے بھی تعریف کروں گا کہ اس نے ملک کے دیگر حصوں سے اپنے یہاں کام کرنے کے لئے آنے والے مزدوروں کو بھی ترجیح دی۔ کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے متاثر ہونے والے لاکھوں مزدوروں کو اس اسکیم کا فائدہ ملا ہے۔ اس میں بہت سارے ایسے ساتھی تھے، جن کے پاس یا تو راشن کارڈ تھا ہی نہیں، یا پھر ان کا راشن کارڈ دوسری ریاستوں کا تھا۔ گجرات ان ریاستوں میں ہے جس نے سب سے پہلے ون نیشن، ون راشن کارڈ کی اسکیم کو نافذ کیا۔ ون نیشن، ون راشن کارڈ کا فائدہ گجرات کے لاکھوں مزدور ساتھیوں کو مل رہا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

ایک دور تھا جب ملک میں ترقی کی بات محض بڑے شہروں تک ہی محدود ہوتی تھی۔ وہاں بھی ترقی کا مطلب صرف اتنا ہی ہوتا تھا کہ مخصوص علاقوں میں بڑے بڑے فلائی اوور بن جائیں، سڑکیں بن جائیں، میٹرو بن جائیں! یعنی گاؤں قصبوں سے دور اور ہمارے گھر کے باہر جو کام ہوتا تھا جس کا عام لوگوں سے کوئی تعلق نہیں تھا، اسے ترقی سمجھا گیا۔ گزشتہ برسوں میں ملک نے اس سوچ کو تبدیل کیا ہے۔ آج ملک دونوں سمتوں میں کام کرنا چاہتا ہے، دو پٹریوں پر چلنا چاہتا ہے۔ ملک کو نئے انفراسٹرکچر کی بھی ضرورت ہے۔ انفراسٹرکچر پر لاکھوں کروڑوں خرچ کیے جا رہے ہیں، اس سے لوگوں کوروزگار بھی مل رہا ہے، لیکن ساتھ ہی عام لوگوں کا معیار زندگی بہتر بنانے کے لیے، ایز آف لیونگ کے لیے نئے معیارات بھی قائم کیے جا رہے ہیں۔ غریبوں کو بااختیار بنانے کو آج اولین ترجیح دی جا رہی ہے۔ جب 2 کروڑ غریب خاندانوں کو گھر دیے جاتے ہیں تو اس کا مطلب ہوتا ہے کہ وہ اب سردی، گرمی، بارش کے خوف سے آزاد ہوکر جی سکیں گے، اتنا نہیں، جب خود کا اپنا گھر ہو تا ہے نہ تو ان کی زندگی خوداری سے پر ہوجاتی ہے۔ نئے عزائم سے جڑجاتا ہے۔ ان عزائم کو عملی جامہ پہنانے کے لیے غریب، کنبے سمیت جی جان سے جٹ جاتا ہے۔دن رات محنت کرتا ہے۔ جب 10 کروڑ خاندانوں کو رفع حاجت کے لئے گھر سے باہر جانے کی مجبوری سے آزادی ملتی ہے تو اس کا مطلب ہے کہ ان کا معیار زندگی بہتر ہوا ہے۔ وہ پہلے سوچتا تھا کہ خوشحال خاندانوں کے گھروں میں ہی ٹوائلیٹ ہوتا ہیں، بیت الخلا انہیں کے گھر میں ہوتا ہے۔ غریب کو تو بیچارے کو اندھیرے کا انتظار کرنا پڑتا ہے، کھلے میں باہر جانا پڑتا ہے۔ لیکن جب غریب کو ٹوائلیٹ ملتا ہے تو وہ امیر کی برابری میں اپنے آپ کو دیکھتا ہے، ایک نیا اعتماد پیدا ہوتا ہے۔ اسی طرح، جب ملک کا غریب جن دھن کھاتوں کے ذریعے بینکنگ سسٹم سے جڑتا ہے، موبائل بینکنگ غریب کے بھی ہاتھ میں ہوتی ہے، تب اسے طاقت ملتی ہے، اسے نئے مواقع ملتے ہیں۔ ہمارے یہاں کہاجاتا ہے-

सामर्थ्य मूलम्

सुखमेव लोके!

یعنی ہماری صلاحیت کی بنیاد ہماری زندگی کا سکھ ہی ہوتا ہے۔ جیسے ہم سکھ کے پیچھے بھاگ کر سکھ حاصل نہیں کر سکتے، بلکہ اس کے لیے ہمیں مقررہ کام کرنے ہوتے ہیں، کچھ حاصل کرنا ہوتا ہے۔ ویسے ہی بااختیاری بھی صحت، تعلیم، سہولت اور وقار میں اضافے سے ہوتی ہے۔ جب کروڑوں غریبوں کو آیوشمان یوجنا سے مفت علاج ملتا ہے تو صحت مندی سے وہ بااختیار ہوتے ہیں۔ جب کمزور طبقات کے لیے ریزرویشن کی سہولت کو یقینی بنایا جاتا ہے تو پھر ان طبقات کو تعلیم کے ذریعے بااختیار بنایا جاتا ہے۔ جب سڑکیں گاؤوں کو شہروں سے بھی جوڑتی ہیں، جب غریب خاندانوں کو مفت گیس کنکشن، مفت بجلی کے کنکشن ملتے ہیں تو یہ سہولیات انہیں بااختیار بناتی ہیں۔ جب کوئی شخص صحت، تعلیم اور دیگر سہولیات حاصل کرتا ہے تو وہ اپنی ترقی کے بارے میں، ملک کی ترقی کے بارے میں سوچتا ہے۔ ان خوابوں کو پورا کرنے کے لیے آج ملک میں مدرا یوجنا ہے، سوانیدھی یوجنا ہے۔ بھارت میں ایسی کئی اسکیمیں غریبوں کو باعزت زندگی کے راستے پر لارہی ہیں، عزت کے ساتھ بااختیار بنانے کا ذریعہ بن رہی ہیں۔

بھائیو اور بہنو،

جب عام انسانوں کے خوابوں کو مواقع ملتے ہیں، نظام جب گھر تک پہنچنے لگتا ہےتو زندگی کیسے بدلتی ہے یہ گجرات بخوبی سمجھتا ہے۔ کبھی گجرات کے ایک بڑے حصے میں لوگوں، ماؤں اور بہنوں کو پانی جیسی ضرورت کےلیے کئی کلومیٹر پیدل جانا پڑتا تھا۔ ہماری تمام مائیں اور بہنیں گواہ ہیں۔ یہ راجکوٹ میں تو پانی کے لیے ٹرین بھیجنی پڑتی تھی۔ راجکوٹ میں تو اگر پانی لینا تھا تو گھر کے باہر گڑھا کھود کر نیچے پائپ میں سے پانی ایک ایک کٹوری لیکر بالٹی بھرنی پڑتی تھی۔ لیکن آج، سردار سروور ڈیم، ساونی یوجنا سے، نہروں کے نیٹ ورک سے، اس کچھ میں بھی ماں نرمدا کا پانی پہنچ رہا ہے، جہاں کوئی سوچتا بھی نہیں تھا اور ہمارے یہاں تو کہا جاتا تھا کہ ماں نرمدا کو یاد کرنے سے ہی پنیہ ملتا ہے۔ آج تو ماں نرمدا گجرات کے گاؤں گاؤں جاتی ہے، خود ماں نرمدا گھر گھر جاتی ہے، خود ماں نرمدا کے دوار آکر آپ کو آشیرواد دیتی ہے۔ ان کوششوں کا نتیجہ یہ ہے کہ آج گجرات سو فیصد نل کا پانی فراہم کرنے کے ہدف سے زیادہ دور نہیں ہے۔ یہی رفتار عام لوگوں کی زندگی میں یہی تبدیلی، اب آہستہ آہستہ پورا ملک محسوس کر رہا ہے۔ آزادی کی کئی دہائیوں کے بعد بھی، ملک میں محض 3 کروڑ دیہی کنبے پانی کے نل کی سہولت سے جڑے ہوئے تھے، جن کو نل سے پانی ملتا تھا۔ لیکن آج جل جیون ابھیان کے تحت، ملک بھر میں صرف دو سالوں میں، دو سال کے اندر ساڑھے چار کروڑ سے زیادہ خاندانوں کو پائپ کے پانی سے جوڑا جاچکا ہے اور اس لئے میری مائیں، بہنیں مجھے بھرپور آشیرواد دیتی رہتی ہیں۔

بھائیو اور بہنو،

ڈبل انجن کی حکومت کے فوائد بھی گجرات مسلسل دیکھ رہا ہے۔ آج، سردار سروور باندھ سے ترقی کی نئی دھارا ہی نہیں بہہ رہی ہے، بلکہ اسٹیچو آف یونٹی کی شکل میں دنیا کے سب سے بڑے پرکشش مقامات میں سے ایک آج گجرات میں ہے۔ کچھ میں قائم ہورہا ہےقابل تجدید توانائی پارک، جو گجرات کو پوری دنیا کے قابل تجدید توانائی کے نقشے میں جگہ دینے والا ہے۔ گجرات میں ریل اور ہوائی کنکٹی وٹی کے جدید اور شاندار انفراسٹرکچر پروجیکٹ تیار کیے جا رہے ہیں۔ گجرات کے احمد آباد اور سورت جیسے شہروں میں میٹرو کنکٹی وٹی کی توسیع تیزی سے ہو رہی ہے۔ گجرات میں ہیلتھ کیئر اور میڈیکل ایجوکیشن میں بھی قابل تعریف کام کیا جا رہا ہے۔ گجرات میں تیار ہونے والے بہتر میڈیکل انفراسٹرکچر نے 100 سال کی سب سے بڑی طبی ایمرجنسی سے نمٹنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

ساتھیو،

گجرات سمیت پورے ملک میں ایسے بہت سے کام ہیں، جن کی وجہ سے آج ہر ایک اہل وطن، ہر علاقے کی اعتمادی میں اضافہ ہورہا ہے۔ اور یہ خود اعتمادی ہی ہے جو ہر چیلنج پر قابو پانے کا، ہر خواب کو پورا کرنے کا ایک بہت بڑا فارمولہ ہے۔ تازہ مثال اولمپکس میں ہمارے کھلاڑیوں کی کارکردگی ہے۔ اس بار بھارت کے اب تک کے سب سے زیادہ کھلاڑیوں نے اولمپکس میں کوالیفائی کیا ہے۔ یاد رہے، یہ 100 سال کی سب سے بڑی آفت سے لڑتے ہوئے کیا ہے۔ کئی تو ایسے کھیل ہیں جن میں ہم نے پہلی بار کوالیفائی کیا ہے۔ صرف کوالیفائی ہی نہیں کیا بلکہ وہ سخت مقابلہ بھی دے رہے ہیں۔ ہمارے کھلاڑی ہر کھیل میں بہترین مظاہرہ کررہے ہیں۔ اس اولمپکس میں نئے بھارت کی بلند خوداعتمادی ہر کھیل میں نظر آرہی ہے۔ اولمپکس میں اترنے والے ہمارے کھلاڑی اپنے سے بہتر رینکنگ کے کھلاڑیوں کو، ان کی ٹیموں کو چیلنج دے رہے ہیں۔ بھارتی کھلاڑیوں کا جوش، جنون اور جذبہ آج بلند ترین سطح پر ہے۔ یہ اعتمادی تب آتی ہے جب صحیح ٹیلنٹ کی پہنچان ہوتی ہے، اس کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔ یہ اعتمادی اس وقت آتی ہے جب نظام بدلتے ہیں، ان میں شفافیت آتی ہے۔ یہ نئی خود اعتمادی نیو انڈیا کی پہچان بن رہی ہے۔ یہ خود اعتمادی آج ملک کے کونے کونے میں، ہر چھوٹے بڑے گاؤں قصبے غریب، متوسط ​​طبقے کے نوجوان بھارت کے ہر کونے میں یہ اعتماد آرہا ہے۔

ساتھیو،

اسی خود اعتمادی ہمیں کورونا سے لڑائی میں اور اپنی ٹیکہ کاری کی مہم میں بھی جاری رکھنا ہے۔ عالمی وبا کے اس ماحول میں، ہمیں اپنی چوکسی کو مسلسل برقرار رکھنا ہے۔ ملک آج 50 کروڑ ٹیکہ کاری کی طرف تیزی سے بڑھ رہا ہے تو، گجرات بھی ساڑھے تین کروڑ ویکسین کی خوراک کے مرحلے کے قریب پہنچ رہا ہے۔ ہمیں ویکسین بھی لگانی ہے، ماسک بھی پہننا ہے اور جتنا ممکن ہو بھیڑ کا حصہ بننے سے بچنا ہے۔ ہم دنیا کو دیکھ رہے ہیں۔ جہاں ماسک ہٹائے بھی گئے تھے، وہاں پھر سے ماسک لگانے کی اپیل کی جانے لگی ہے۔ ہمیں احتیاط اور حفاظت کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔

 

ساتھیو،

آج جب ہم پردھان منتری غریب کلیان ان یوجنا پر اتنا بڑا پروگرام کر رہے ہیں، تو میں اہل وطن سے ایک اورعزم کرانا چاہتا ہوں۔ یہ عزم ہے ملک کی تعمیر کی ایک نئی تحریک بیدار کرنے کا۔ آزادی کے 75 برس پر، آزادی کے امرت مہوتسو میں، ہمیں یہ مقدس عزم لینا ہے۔ ان عزائم میں غریب امیر، خاتون مرد، دلت محروم سب برابری کے حصے دار ہیں۔ گجرات آنے والے برسوں میں اپنے تمام عزائم پورے کرے، دنیا میں اپنی شاندار پہنچان کو مزید مستحکم کرے، اسی خواہش کے ساتھ میں آپ سب کے لئے بہت بہت نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ ایک بار پھر ان یوجنا کے سبھی استفادہ کنندگان کے لئے بہت بہت نیک خواہشات !!! آپ سب کا بہت بہت شکریہ !!!