اسکیم کےتحت ایک لاکھ ریہڑی -پٹری والوں کو قرض تقسیم کیا
دہلی میٹروکےفیز-4کے دو اضافی کوریڈورزکا سنگ بنیادرکھا
‘‘پی ایم سواندھی یوجنا سڑک دکانداروں کے لیے لائف لائن ثابت ہوئی ہے’’
‘‘ریہڑی-پٹری والوں کی وینڈنگ گاڑیاں اور دکانیں چھوٹی ہوں، ان کے خواب بہت بڑے ہیں’’
‘‘پی ایم سواندھی یوجنا لاکھوں ریہڑی -پٹری والے خاندانوں کے لیے امدادی نظام بن گئی ہے’’
‘‘مودی غریبوں اورمتوسط طبقے کی زندگیوں کو بہتر بنانے کے لیے مسلسل کام کررہے ہیں؛ مودی کی سوچ ‘‘عوام کی بہبود سےملک کی فلاح‘‘ہے
‘‘عام شہریوں کے خوابوں کی شراکت اور مودی کا حل روشن مستقبل کی گارنٹی ہے’’

مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی ہردیپ سنگھ پوری جی، بھاگوت کراڈ جی، دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر، وی کے سکسینہ جی، یہاں موجود دیگر تمام معززین، اور آج کے پروگرام کی خاص بات یہ ہے کہ ملک کے سینکڑوں شہروں میں لاکھوں کی تعداد میں دکاندار۔ ہمارے بھائی اور بہنیں ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ہم سے جڑے ہوئے ہیں۔ میں ان سب کو بھی خوش آمدید کہتا ہوں۔

آج کا پی ایم سواندھی مہوتسو ان لوگوں کے لیے وقف ہے جو ہمارے آس پاس رہتے ہیں اور جن کے بغیر ہماری روزمرہ کی زندگی کا تصور کرنا مشکل ہے۔ اور کووڈ کے دوران، ہر ایک نے ریڑھی پٹری والے دکانداروں کی طاقت دیکھی۔ آج، میں اس مہوتسو کے موقع پر ہمارے ہر ایک اسٹریٹ وینڈر، ریڑھی پٹری والے دکانداروں اور سڑک کنارے دکانداروں کو دل کی گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں۔ آج ملک کے کونے کونے سے جڑے ہوئے دوستوں کو بھی اس پی ایم سواندھی کا خاص فائدہ ہوا، آج پی ایم سواندھی اسکیم کے تحت ایک لاکھ لوگوں کو براہ راست ان کے بینک کھاتوں میں رقم منتقل کی گئی ہے۔ اور سونے پے سہاگہ ہے کہ آج یہاں لاجپت نگر سے ساکیت جی بلاک اور اندرا پرستھ سے اندرلوک میٹرو پروجیکٹ تک دہلی میٹرو کی توسیع کا سنگ بنیاد بھی رکھا گیا ہے۔ دہلی والوں کے لیے یہ دوہرا تحفہ ہے۔ میں آپ سب کو بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں۔

 

ساتھیو،

ہمارے ملک بھر کے شہروں میں، لاکھوں لوگ سڑکوں پر، فٹ پاتھوں اور ہینڈ کارٹس پر کام کرتے ہیں۔ یہ وہ دوست ہیں جو آج یہاں موجود ہیں۔ جو عزت نفس کے ساتھ محنت کرتے ہیں اور اپنے خاندان کی کفالت کرتے ہیں۔ ان کی گاڑیاں، ان کی دکانیں چھوٹی ہو سکتی ہیں، لیکن ان کے خواب چھوٹے نہیں، ان کے خواب بھی بڑے ہیں۔ ماضی میں پچھلی حکومتوں نے ان کامریڈز کا خیال تک نہیں رکھا۔ انہیں طعنے سہنے پڑے اور ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہوئے۔ فٹ پاتھ پر سامان بیچتے ہوئے جب اسے پیسوں کی ضرورت پڑی تو وہ زیادہ شرح سود پر قرض لینے پر مجبور ہوگیا۔ اور اگر واپسی میں چند دن یا چند گھنٹے کی تاخیر ہو جاتی تو توہین کے ساتھ ساتھ زیادہ سود بھی دینا پڑتا۔ اور اگر ہمارے پاس بینک اکاؤنٹس بھی نہیں تھے تو ہم بینکوں میں داخل نہیں ہو سکتے تھے، اس لیے قرض لینے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا تھا۔ یہاں تک کہ اگر کوئی کھاتہ کھولنے آتا تو اسے طرح طرح کی ضمانتیں دینی پڑتی تھیں۔ اور ایسی حالت میں بینک سے قرض لینا بھی ناممکن تھا۔ جن کے بینک اکاؤنٹس تھے ان کے کاروبار کا کوئی ریکارڈ نہیں تھا۔ بہت سارے مسائل کے درمیان کوئی بھی شخص آگے بڑھنے کا سوچ بھی کیسے سکتا ہے، خواہ کتنے ہی بڑے خواب کیوں نہ ہوں۔ آپ دوستو، بتاؤ، کیا آپ کو ایسی پریشانی ہوئی جو میں بیان کر رہا ہوں یا نہیں؟ سب کے پاس تھا؟ پچھلی حکومت نے نہ آپ کے مسائل سنے، نہ سمجھے اور نہ ہی مسائل کے حل کے لیے کوئی قدم اٹھایا۔ آپ کا یہ بندہ غربت سے یہاں آیا ہے۔ میں غربت کی زندگی گزار کر یہاں آیا ہوں۔ اور اسی لیے جن کو کسی نے نہیں پوچھا، مودی نے بھی ان سے پوچھا اور مودی نے ان کی پوجا بھی کی۔ جن کے پاس گارنٹی کے لیے کچھ نہیں تھا، مودی نے بینکوں کے ساتھ ساتھ گلیوں میں دکاندار بھائیوں اور بہنوں سے کہا تھا کہ اگر آپ کے پاس گارنٹی کے لیے کچھ نہیں ہے تو فکر نہ کریں، مودی آپ کی گارنٹی لے، اور میں نے آپ کی گارنٹی لے لی۔ اور آج میں بڑے فخر سے کہتا ہوں کہ میں نے بڑے لوگوں کی بے ایمانی دیکھی ہے اور چھوٹے لوگوں کی ایمانداری بھی۔ پی ایم سواندھی یوجنا مودی کی ایسی ہی ایک گارنٹی ہے، جو آج گلیوں میں کام کرنے والے لاکھوں خاندانوں کا سہارا بن گئی ہے، گلی میں بیچنے والے، ہینڈ کارٹ اور اس طرح کی چھوٹی ملازمتوں میں۔ مودی نے فیصلہ کیا کہ انہیں بینکوں سے سستے قرضے لینے چاہئیں، اور انہیں مودی کی ضمانت پر قرضہ لینا چاہیے۔ پی ایم سواندھی کے تحت، پہلی بار جب آپ قرض لینے جاتے ہیں، تو آپ 10،000 روپے ادا کرتے ہیں۔ اگر آپ اسے وقت پر ادا کرتے ہیں تو بینک خود آپ کو 20 ہزار روپے کی پیشکش کرتا ہے۔ اور اگر یہ رقم وقت پر ادا کی جائے اور ڈیجیٹل لین دین کیا جائے تو بینکوں سے 50 ہزار روپے تک کی مدد کی یقین دہانی کرائی جاتی ہے۔ اور آج آپ نے یہاں دیکھا، کچھ لوگ ایسے تھے جنہیں 50 ہزار روپے کی قسط ملی تھی۔ اس کا مطلب ہے کہ پی ایم سواندھی یوجنا نے چھوٹے کاروباروں کو بڑھانے میں بہت مدد کی ہے۔ اب تک ملک کے 62 لاکھ سے زیادہ استفادہ کنندگان کو تقریباً 11 ہزار کروڑ روپے مل چکے ہیں۔ یہ اعداد و شمار کم نہیں ہیں، یہ سڑک کے کنارے دکانداروں کے ہاتھ میں ہے کہ مودی کو ان پر اتنا بھروسہ ہے کہ انہوں نے 11 ہزار کروڑ روپے ان کے ہاتھ میں دے دیے ہیں۔ اور میرا اب تک کا تجربہ یہ ہے کہ وہ پیسے وقت پر واپس کر دیتے ہیں۔ اور مجھے خوشی ہے کہ پی ایم سواندھی کے مستفید ہونے والوں میں سے نصف سے زیادہ ہماری مائیں اور بہنیں ہیں۔

ساتھیو،

کورونا کے وقت جب حکومت نے پی ایم سواندھی اسکیم شروع کی تھی تو کسی کو اندازہ نہیں تھا کہ یہ کتنی بڑی اسکیم بننے جا رہی ہے۔ تب کچھ لوگوں نے کہا کہ اس اسکیم سے زیادہ فائدہ نہیں ہوگا۔ لیکن پی ایم سواندھی یوجنا سے متعلق حالیہ مطالعہ ایسے لوگوں کے لیے ایک آنکھ کھولنے والا ہے۔ سواندھی اسکیم کی وجہ سے سڑکوں پر دکانداروں، فٹ پاتھوں پر دکانداروں اور دکانداروں کی کمائی میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔ خرید و فروخت کے ڈیجیٹل ریکارڈ کی وجہ سے اب آپ سب کے لیے بینکوں سے مدد لینا آسان ہو گیا ہے۔ یہی نہیں، ان ساتھیوں کو ڈیجیٹل لین دین کرنے پر سالانہ 1200 روپے تک کا کیش بیک بھی ملتا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ کسی کو ایک قسم کا پرائز، انعام ملتا ہے۔

 

ساتھیو،

آپ جیسے لاکھوں خاندانوں کے لوگ جو سڑکوں پر، فٹ پاتھوں پر یا گلیوں میں دکانداروں کا کام کرتے ہیں، شہروں میں بہت مشکل حالات میں زندگی گزار رہے ہیں۔ آپ میں سے اکثر اپنے گاؤں سے آتے ہیں، یہ کام شہروں میں کرتے ہیں۔ یہ پی ایم سواندھی اسکیم صرف بینکوں کو جوڑنے کا پروگرام نہیں ہے۔ اس کے مستفید ہونے والوں کو دیگر سرکاری اسکیموں کا بھی براہ راست فائدہ مل رہا ہے۔ آپ جیسے تمام دوستوں کو مفت راشن، مفت علاج اور مفت گیس کنکشن کی سہولت مل رہی ہے۔ آپ سب جانتے ہیں کہ کام کرنے والے ساتھیوں کے لیے شہروں میں نیا راشن کارڈ بنوانا کتنا بڑا چیلنج تھا۔ مودی نے آپ کا مسئلہ حل کرنے کے لیے بہت اہم قدم اٹھایا ہے۔ اس لیے ون نیشن ون راشن کارڈ اسکیم بنائی گئی ہے۔ اب ایک ہی راشن کارڈ پر ملک میں کہیں بھی راشن دستیاب ہے۔

ساتھیو،

گلی کوچوں اور گلیوں میں دکانداروں کی اکثریت کچی آبادیوں میں رہتی ہے۔ مودی کو بھی اس کی فکر ہے۔ ملک میں بنائے گئے 4 کروڑ سے زیادہ گھروں میں سے تقریباً ایک کروڑ گھر شہری غریبوں کو دیے گئے ہیں۔ ملک کے مختلف شہروں میں غریب لوگ اس سے بہت زیادہ فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ حکومت ہند دارالحکومت دہلی میں کچی بستیوں کی جگہ مستقل مکانات فراہم کرنے کی ایک بڑی مہم بھی چلا رہی ہے۔ دہلی میں 3 ہزار سے زیادہ مکانات کی تعمیر مکمل ہو چکی ہے، اور جلد ہی ساڑھے 3 ہزار سے زیادہ مکانات مکمل ہونے والے ہیں۔ دہلی میں غیر منظور شدہ کالونیوں کو باقاعدہ بنانے کا کام بھی تیزی سے مکمل کیا جا رہا ہے۔ حال ہی میں حکومت ہند نے پی ایم سوریہ گھر مفت بجلی اسکیم بھی شروع کی ہے۔ اس اسکیم کے تحت مرکزی حکومت چھت پر سولر پینل لگانے کے لیے مکمل مدد فراہم کرے گی۔ اس سے 300 یونٹ تک مفت بجلی ملے گی۔ باقی بجلی حکومت کو بیچ کر کمائی ہوگی۔ حکومت اس اسکیم پر 75 ہزار کروڑ روپے خرچ کرنے جا رہی ہے۔

 

ساتھیو،

مرکز کی بی جے پی حکومت دہلی میں غریب اور متوسط ​​طبقے کی زندگی کو بہتر بنانے کے لیے دن رات کام کر رہی ہے۔ ایک طرف ہم نے شہری غریبوں کے لیے مستقل مکانات بنائے تو دوسری طرف متوسط ​​طبقے کے خاندانوں کے لیے مکانات بنانے میں بھی مدد کی۔ ملک بھر میں تقریباً 20 لاکھ متوسط ​​طبقے کے خاندانوں کو گھر بنانے کے لیے 50 ہزار کروڑ روپے کی سبسڈی دی گئی ہے۔ ہم ملک کے شہروں میں ٹریفک اور آلودگی کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے خلوص نیت سے کام کر رہے ہیں۔ اس کے لیے ملک کے درجنوں شہروں میں میٹرو کی سہولت پر کام کیا جا رہا ہے اور الیکٹرک بسیں چلائی جا رہی ہیں۔ دہلی میٹرو کا دائرہ بھی 10 سالوں میں تقریباً دوگنا ہو گیا ہے۔ دنیا کے صرف چند ممالک میں میٹرو نیٹ ورک ہے جتنا کہ دہلی۔ درحقیقت، اب دہلی-این سی آر کو بھی نمو بھارت جیسے تیز رفتار ریل نیٹ ورکس سے جوڑا جا رہا ہے۔ ہماری حکومت دہلی میں ٹریفک آلودگی کو کم کرنے کے لیے بھی مسلسل کام کر رہی ہے۔ مرکزی حکومت نے دہلی میں ایک ہزار سے زیادہ الیکٹرک بسیں متعارف کروائی ہیں۔ ہم نے دہلی کے ارد گرد جو ایکسپریس وے بنائے ہیں وہ ٹریفک اور آلودگی کے مسائل کو بھی کم کر رہے ہیں۔ دوارکا ایکسپریس وے کا بھی چند دن پہلے افتتاح ہوا تھا۔ اس سے دہلی کی ایک بڑی آبادی کی زندگی آسان ہو جائے گی۔

ساتھیو،

بی جے پی حکومت کی یہ مسلسل کوشش ہے کہ غریب اور متوسط ​​طبقے کے نوجوان کھیلوں میں ترقی کریں۔ اس کے لیے ہم نے پچھلے 10 سالوں میں ہر سطح پر ماحول بنایا ہے۔ کھیلو انڈیا اسکیم کے ذریعے ملک بھر کے عام خاندانوں کے وہ بیٹے اور بیٹیاں بھی آگے آ رہے ہیں، جنہیں پہلے مواقع ملنا ناممکن لگتا تھا۔ آج ان کے گھر کے قریب کھیلوں کی اچھی سہولیات تعمیر ہو رہی ہیں اور حکومت ان کی تربیت کے لیے مدد فراہم کر رہی ہے۔ اس لیے میرے غریب خاندان سے آنے والے کھلاڑی بھی ترنگے پر فخر کر رہے ہیں۔

 

ساتھیو،

مودی غریب اور متوسط ​​طبقے کی زندگی کو بہتر بنانے میں مصروف ہے۔ دوسری طرف انڈی اتحاد ہے جس نے دن رات مودی کو گالی دینے کے منشور کے ساتھ دہلی میں ایک کر رکھا ہے۔ اس انڈی اتحاد کا نظریہ کیا ہے؟ ان کا نظریہ بدانتظامی، بدعنوانی اور ملک دشمن ایجنڈے کو فروغ دینا ہے۔ اور مودی کا نظریہ عوامی فلاح و بہبود کے ذریعے قومی بہبود لانا، بدعنوانی اور خوشامد کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا اور ہندوستان کو دنیا کی تیسری بڑی اقتصادی طاقت بنانا ہے۔ کہتے ہیں مودی کا کوئی خاندان نہیں ہے۔ مودی کے لیے ملک کا ہر خاندان ان کا خاندان ہے۔ اور اسی لیے آج پورا ملک کہہ رہا ہے کہ میں مودی کا خاندان ہوں!

ساتھیو،

ملک کے عام آدمی کے خواب اور مودی کا عزم، یہ شراکت داری شاندار مستقبل کی ضمانت ہے۔ ایک بار پھر دہلی کے لوگوں اور ملک بھر کے سواندھی سے فائدہ حاصل کرنے والوں کو بہت بہت مبارکباد۔ نیک خواہشات، شکریہ۔

 
Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Indian economy entering a ‘Goldilocks period’, says KennethAndrade of Old Bridge MF; prefers infra, IT sectors

Media Coverage

Indian economy entering a ‘Goldilocks period’, says KennethAndrade of Old Bridge MF; prefers infra, IT sectors
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM condoles passing away of Vietnamese leader H.E. Nguyen Phu Trong
July 19, 2024

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has condoled the passing away of General Secretary of Communist Party of Vietnam H.E. Nguyen Phu Trong.

The Prime Minister posted on X:

“Saddened by the news of the passing away of the Vietnamese leader, General Secretary H.E. Nguyen Phu Trong. We pay our respects to the departed leader. Extend our deepest condolences and stand in solidarity with the people and leadership of Vietnam in this hour of grief.”