عزت مآب حضرات گرامی،

نمسکار!

آج 23 ویں شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہ اجلاس میں آپ کا پرتپاک خیرمقدم ہے۔ گذشتہ دو دہائیوں کے دوران شنگھائی تعاون تنظیم ایشیائی خطے میں امن، خوش حالی اور ترقی کے ایک اہم پلیٹ فارم کے طور پر ابھری ہے۔ اس خطے کے ساتھ بھارت کے ہزاروں سال پرانے ثقافتی اور لوگوں کے درمیان تعلقات ہمارے مشترکہ ورثے کا جیتا جاگتا ثبوت ہیں۔ ہم اس علاقے کو نہ صرف ’’توسیع شدہ محلے‘‘ کے طور پر دیکھتے ہیں، بلکہ ایک ’’توسیع شدہ خاندان‘‘ کے طور پر بھی دیکھتے ہیں۔

شنگھائی تعاون تنظیم کے چیئرمین کی حیثیت سے بھارت نے کثیر جہتی تعاون کو نئی بلندیوں تک لے جانے کے لیے مسلسل کوششیں کی ہیں۔ ہم نے ان تمام کوششوں کی بنیاد دو بنیادی اصولوں پر رکھی ہے۔ سب سے پہلے، وسودھیوا کٹمبکم، یعنی پوری دنیا ایک کنبہ ہے۔ یہ اصول قدیم زمانے سے ہی ہمارے سماجی طرز عمل کا لازمی حصہ رہا ہے۔ اور یہاں تک کہ جدید دور میں بھی، ہمارے لیے ایک نئی تحریک اور توانائی کا منبع ہے۔ اور دوسرا، سیکیور(SECURE) یعنی سلامتی، اقتصادی ترقی، رابطہ کاری، اتحاد، خودمختاری اور علاقائی سالمیت کا احترام اور ماحولیاتی تحفظ۔ یہ ہماری صدارت کا موضوع ہے اور ہمارے شنگھائی تعاون تنظیم کے وژن کی عکاسی کرتا ہے۔

اس وژن کے ساتھ بھارت نے شنگھائی تعاون تنظیم میں تعاون کے پانچ نئے ستون تعمیر کیے ہیں:

  • اسٹارٹ اپ اور جدت طرازی

  • روایتی طب

  • نوجوانوں کو بااختیار بنانا

  • ڈیجیٹل شمولیت، اور

  • مشترکہ بودھی وراثت

عزت مآب حضرات،

بھارت نے شنگھائی تعاون تنظیم کی صدارت میں ایک سو چالیس سے زیادہ تقریبات، کانفرنسوں اور اجلاسوں کی میزبانی کی ہے۔ ہم نے چودہ مختلف تقریبات میں شنگھائی تعاون تنظیم کے تمام مشاہدین اور مفاہمے کے شراکت داروں کو شامل کیا ہے۔ شنگھائی تعاون تنظیم کے چودہ وزارتی سطح کے اجلاسوں میں ہم نے مل کر کئی اہم دستاویزات تیار کی ہیں۔ ان کے ساتھ، ہم اپنے تعاون میں نئی اور جدید جہتوں کا اضافہ کر رہے ہیں – جیسے

  • توانائی کے شعبے میں ابھرتے ہوئے ایندھنوں پر تعاون

  • نقل و حمل کے شعبے میں ڈی-کاربونائزیشن اور ڈیجیٹل تبدیلی پرتعاون

  • ڈیجیٹل پبلک انفراسٹرکچر کے شعبے میں تعاون

بھارت کی کوشش رہی ہے کہ شنگھائی تعاون تنظیم میں تعاون صرف حکومتوں تک محدود نہ رہے۔

لوگوں کے درمیان رابطے کو مزید گہرا کرنے کے لیے بھارت کی صدارت میں نئے اقدامات کیے گئے ہیں۔

پہلی بار ایس سی او ملٹ فوڈ فیسٹیول، فلم فیسٹیول، ایس سی او سورج کنڈ کرافٹ میلہ، تھنک ٹینک کانفرنس، مشترکہ بودھی ورثے پر بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد کیا گیا۔

ایس سی اوکا پہلا سیاحتی اور ثقافتی دارالحکومت، ابدی شہر، وارانسی، مختلف تقریبات کے لیے توجہ کا مرکز بنا ۔

شنگھائی تعاون تنظیم کے ممالک کے نوجوانوں کی توانائی اور صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کے لیے ہم نے ینگ سائنٹسٹس کنکلیو، ینگ رائٹرز کنکلیو، ینگ ریزیڈنٹ اسکالر پروگرام، اسٹارٹ اپ فورم، یوتھ کونسل جیسے نئے فورمز کا انعقاد کیا۔

عزت مآب حضرات،

موجودہ وقت میں عالمی صورت حال ایک نازک موڑ پر ہے۔ تنازعات، تناؤ اور وبائی امراض سے بھری دنیا میں خوراک، ایندھن اور کھاد کا بحران تمام ممالک کے لیے ایک بڑا چیلنج ہے۔

آئیے ہم سب مل کر اس بات پر غور کریں کہ کیا ہم ایک تنظیم کے طور پر اپنے عوام کی توقعات اور امنگوں پر پورا اترنے کے قابل ہیں۔

کیا ہم جدید چیلنجز سے نمٹنے کی صلاحیت رکھتے ہیں؟

کیا شنگھائی تعاون تنظیم ایک ایسی تنظیم بن رہی ہے جو مستقبل کے لیے مکمل طور پر تیار ہے؟

اس موضوع پر شنگھائی تعاون تنظیم میں بھارت اختراع اور جدیدکاری کی تجویز کی حمایت کرتا ہے۔

ہمیں شنگھائی تعاون تنظیم کے تحت زبان کی رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے بھارت کے مصنوعی ذہانت پر مبنی لنگویج پلیٹ فارم بھاشنی کو سبھی کے ساتھ ساجھا کرنے میں خوشی ہوگی۔

یہ جامع ترقی کے لیے ڈیجیٹل ٹکنالوجی کی ایک مثال بن سکتا ہے۔

شنگھائی تعاون تنظیم اقوام متحدہ سمیت دیگر عالمی اداروں میں اصلاحات کے لیے بھی ایک اہم آواز بن سکتا ہے۔

مجھے خوشی ہے کہ آج ایران شنگھائی تعاون تنظیم میں ایک نئے رکن کی حیثیت سے شامل ہونے جا رہا ہے۔

اس کے لیے میں صدر رئیسی اور ایرانی عوام کو اپنی نیک امنگوں پیش کرتا ہوں۔

اس کے ساتھ ہی ہم بیلاروس کی شنگھائی تعاون تنظیم کی رکنیت کے لیے میمورنڈم آف آبلیگیشن پر دستخط کا خیرمقدم کرتے ہیں۔

آج شنگھائی تعاون تنظیم میں شمولیت میں دیگر ممالک کی دلچسپی اس تنظیم کی اہمیت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

اس عمل میں یہ ضروری ہے کہ شنگھائی تعاون تنظیم کی بنیادی توجہ وسطی ایشیائی ممالک کے مفادات اور امنگوں پر مرکوز رہے۔

عزت مآب حضرات،

دہشت گردی علاقائی اور عالمی امن کے لیے ایک بڑا خطرہ بنی ہوئی ہے۔ اس چیلنج سے نمٹنے کے لیے فیصلہ کن کارروائی ضروری ہے۔ دہشت گردی، کسی بھی شکل میں اور کسی بھی شکل میں، ہمیں مل کر اس کا مقابلہ کرنا ہے۔ کچھ ممالک سرحد پار دہشت گردی کو اپنی پالیسیوں کے آلہ کار کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ وہ دہشت گردوں کو پناہ دیتے ہیں۔ شنگھائی تعاون تنظیم کو ایسے ممالک پر تنقید کرنے میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں ہونی چاہیے۔ اس طرح کے سنجیدہ موضوع پر دوہرے معیار کی کوئی جگہ نہیں ہونی چاہیے۔ ہمیں دہشت گردی کی مالی اعانت سے نمٹنے کے لیے باہمی تعاون میں بھی اضافہ کرنا چاہیے۔ ایس سی او کے آر اے ٹی ایس میکانزم نے اس میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ ہمیں اپنے ممالک کے نوجوانوں میں بنیاد پرستی کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے مزید فعال اقدامات کرنے ہوں گے۔ بنیاد پرستی کے بارے میں آج جو مشترکہ بیان جاری کیا جا رہا ہے وہ ہمارے مشترکہ عزم کی علامت ہے۔

عزت مآب حضرات،

افغانستان کی صورت حال کا ہم سب کی سلامتی پر براہ راست اثر پڑا ہے۔ افغانستان کے بارے میں بھارت کے خدشات اور توقعات شنگھائی تعاون تنظیم کے بیشتر ممالک سے ملتی جلتی ہیں۔ ہمیں افغانستان کے عوام کی فلاح و بہبود کے لیے مل کر کام کرنا ہے۔ افغان شہریوں کے لیے انسانی امداد؛ ایک جامع حکومت کی تشکیل۔ دہشت گردی اور منشیات کی اسمگلنگ کے خلاف جنگ۔ خواتین، بچوں اور اقلیتوں کے حقوق کو یقینی بنانا ہماری مشترکہ ترجیح ہیں۔ بھارت اور افغانستان کے عوام کے درمیان صدیوں پرانے دوستانہ تعلقات ہیں۔ گذشتہ دو دہائیوں کے دوران ہم نے افغانستان کی معاشی اور سماجی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ 2021 کے واقعات کے بعد بھی ہم انسانی امداد بھیجتے رہے ہیں۔ یہ ضروری ہے کہ افغانستان کی سرزمین ہمسایہ ممالک کو غیر مستحکم کرنے یا انتہا پسند نظریات کو فروغ دینے کے لیے استعمال نہ ہو۔

عزت مآب حضرات،

کسی بھی شعبے کی ترقی کے لیے مضبوط رابطہ بہت ضروری ہے۔ بہتر رابطے سے نہ صرف باہمی تجارت بلکہ باہمی اعتماد میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔ لیکن ان کوششوں میں شنگھائی تعاون تنظیم کے چارٹر کے بنیادی اصولوں بالخصوص رکن ممالک کی خودمختاری اور علاقائی سالمیت کا احترام کرنا بہت ضروری ہے۔ ایران کی شنگھائی تعاون تنظیم کی رکنیت کے بعد ہم چابہار بندرگاہ کے بہتر استعمال کے لیے کام کر سکتے ہیں۔ وسطی ایشیا کے زمین سے گھرے ہوئے ممالک کے لیے بین الاقوامی شمالی جنوبی ٹرانسپورٹ کوریڈور بحر ہند تک پہنچنے کا ایک محفوظ اور آسان راستہ بن سکتا ہے۔ ہمیں اس کی پوری صلاحیت کا ادراک کرنا چاہیے۔

عزت مآب حضرات،

شنگھائی تعاون تنظیم دنیا کے چالیس فیصد لوگوں اور عالمی معیشت کو دیکھتی ہے۔یہ دنیا کی ایک تہائی آبادی کی نمائندگی کرتا ہے۔ اور اسی وجہ سے ایک دوسرے کی ضروریات اور حساسیت کو سمجھنا ہماری مشترکہ ذمہ داری ہے۔ بہتر تعاون اور ہم آہنگی کے ذریعے تمام چیلنجوں سے نمٹیں۔ اور اپنے لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے مستقل کوششیں کریں۔ ہم سبھی کو بھارت کی صدارت کو کامیاب بنانے میں لگاتار حمایت ملی ہے۔ اس کے لیے میں آپ سب کا بے حد شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میں پورے بھارت کی طرف سے شنگھائی تعاون تنظیم کے اگلے صدر، قازقستان کے صدر اور اپنے دوست صدر توکائیف کو اپنی نیک امنگوں پیش کرتا ہوں۔ شنگھائی تعاون تنظیم کی کامیابی کے لیے بھارت شنگھائی تعاون تنظیم کی کامیابی میں فعال کردار ادا کرنے کے لیے عزم بستہ ہے۔

بہت بہت شکريہ۔ 

 

 

 

 

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is a top-tier security partner, says Australia’s new national defence strategy

Media Coverage

India is a top-tier security partner, says Australia’s new national defence strategy
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 22 اپریل 2024
April 22, 2024

PM Modi's Vision for a Viksit Bharat Becomes a Catalyst for Growth and Progress Across the Country