وزیر اعظم نے شری سنت گیانیشور مہاراج پالکھی مارگ اور شری سنت تکارام مہاراج پالکھی مارگ کے اہم سیکشن کو چار لین میں تبدیل کرنے کا سنگ بنیاد رکھا
وزیر اعظم نے پنڈھرپور سے ربط بڑھانے کےلئے کئی سڑک پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقت کیا
’’یہ یاترا دنیا کی سب سے پرانی عوامی یاترا میں سے ایک ہے اور اِسے عوامی تحریک کی شکل میں دیکھا جاتا ہے، یہ ہندوستان کے داخلی علم کی علامت ہے، جو ہمارے اعتقاد کو قید نہیں کرتا، بلکہ آزاد کرتا ہے‘‘
’’بھگوان وٹھل کا دربار سب کے لئے یکساں طور سے کھلا ہے، سب کا ساتھ ، سب کا وکاس، سب کا وشواس کے پیچھے بھی یہی جذبہ کار فرما ہے‘‘
وقت وقت پر متعدد خطوں میں ایسی عظیم ہستیاں اُبھرتی رہیں اور ملک کو سمت دکھاتی رہیں‘‘
’’پنڈھری کی واری، موقع کی یکسانیت کی علامت ہے، وارکری تحریک امتیاز کو غلط مانتی ہے اور یہی اس کا عظیم نعرہ ہے‘‘
عقیدت مندوں سے یہاں تین وعدے لیے جاتے ہیں-شجرکاری، پینے کے پانی کا انتظام اور پنڈھرپور کو سب سے زیادہ شفاف تیرتھ مقام بنانا
’’’دھرتی پتروں ہندوستانی روایت اور ثقافت کو زندہ رکھا ہے، ایک سچا ’انّ داتا‘سماج کو جوڑتا ہے اور سماج کے لئے جیتا ہے، آپ ایک سبب ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ سماج کی ترقی کا عکس بھی ہے‘‘‘

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے ویڈیو کانفرنسنگ کے توسط سے متعدد قومی شاہراہوں اور سڑک پروجیکٹوں کی بنیاد رکھی اور قوم کو وقف کیا۔ اس موقع پر سڑک ٹرانسپورٹ اور قومی شاہراہ کے مرکزی وزیر، گورنر اور وزیر اعلیٰ مہاراشٹر بھی موجود تھے۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ آج یہاں سری سنت گیانیشور پالکھی مارگ اور سنت تکا رام مہاراج پالکھی مارگ کا سنگ بنیاد رکھا گیا ۔ سری سنت گیانیشور پالکھی مارگ کی تعمیر  پانچ مرحلوں میں اور سنت تکارام مہاراج پالکھی مارگ کی تعمیر تین مرحلوں میں پوری کی جائے گی۔اُنہوں نے کہا کہ اِن پروجیکٹوں سے علاقے کے ساتھ  بہتر جڑاؤ ہوگا ۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے عقیدت مندوں ، سنتوں اور بھگوان وٹھل کو پروجیکٹوں کے لئے اُن کے آشیرواد کےلئے اپنی عقیدت پیش کی۔اُنہوں نے کہا کہ بھگوان وٹھل میں اعتقاد تاریخ کی  اُتھل پُتھل کے دوران بھی اٹوٹ رہی اور آج بھی یہ یاترا دنیا کی سب سے پرانی اجتماعی یاتراؤں میں سے ایک ہے اور اسے  لوگوں کی تحریک کی شکل میں دیکھا جاتا ہے، جو ہمیں سکھاتی ہے کہ الگ الگ راستے، الگ الگ طریقے  اور  الگ الگ خیالات  اور بھی ہوسکتے ہیں، لیکن ہمارا  ہدف ایک ہے۔ آخر میں تمام پنتھ’بھاگوت پنتھ‘ ہی ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ہندوستان کی روحانی علم  کی علامت ہے ، جو ہمارے اعتقاد کو قید نہیں کرتا ہے، بلکہ اسے آزاد کرتا ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ بھگوان وٹھل کا دربار سب کے لیے یکساں طورپر کھلا ہے اور جب میں سب کا ساتھ، سب کا وکاس اور سب کا وشواس کہتا ہوں تو اس کے پیچھے بھی  یہی جذبہ ہوتا ہے۔ یہ جذبہ ہمیں ملک کی ترقی کےلئے  تحریک دیتا ہے، سب کو ساتھ لے کر چلتا ہے اور سب کی ترقی کےلئے متحرک کرتا ہے۔

ہندوستان کی روحانی اثاثے پر خیالات کا اظہار کرتے ہوئے  وزیر اعظم نے کہا کہ پنڈھر پور کی خدمت کرنا اُن کے لئے سری نارائن ہری کی خدمت کرنا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ یہ وہی سرزمین ہے، جہاں بھکتوں کے لئے بھگوان آج بھی نِواس کرتے ہیں۔ یہ وہی سرزمین ہے، جس کے بارے میں سنت نام دیو مہاراج نے کہا کہ پنڈھر پور تب سے ہے، جب دنیا کی تخلیق بھی نہیں ہوئی تھی۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ہندوستان کی خصوصیت یہ ہے کہ وقت وقت پر مختلف خطوں میں ایسی عظیم ہستیاں  پیدا ہوتی رہیں اور ملک کو راہ دکھاتی رہیں۔ جنوب میں مدھوآچاریہ، نمبارکاچاریہ، ولبھ آچاریہ، راما نج آچاریہ اورمغرب میں نرسی مہتا، میرا بائی، دھیرو بھگت، بھوجا بھگت،  پریتم کا جنم ہوا۔ شمال میں  رامانند، کبیر داس، گوسوامی تلسی داس، سورداس، گورو نانک دیو، سنت رائےداس تھے۔مشرق میں چیتنیہ مہاپربھو اور شنکر دیو جیسے سنتوں کے  خیالات سے ملک کو مالا مال کیا۔

وارکری تحریک کی سماجی اہمیت پر تبصرہ کرتے ہوئے وزیر اعظم نے روایت کی اہم خصوصیت کی شکل میں مردوں کی طرح جوش و خروش کے ساتھ یاترا میں خواتین کی شراکت داری کا ذکر کیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ  یہ ملک میں خواتین  کی طاقت کا مظاہرہ ہے۔’پنڈھری کی واری’ موقع کی یکسانیت کی علامت ہے۔ وارکری تحریک امتیاز کو غلط مانتی ہے اور  یہ اس کا عظیم آئیڈیل نعرہ ہے۔

وزیر اعظم نے وارکری بھائیوں اور بہنوں سے تین آشیرواد کی خواہش کی۔ انہوں نے اُن کے تئیں اُن کی اٹوٹ محبت کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے عقیدت مندوں سے پالکھی مارگ پر شجر کاری کرنے کی درخواست کی، ساتھ ہی راستے کے کنارے پینے کے پانی کا انتظام کرنے کی بھی گزارش کی۔اس کے ساتھ ساتھ انہوں نے کہا کہ اِن راستوں پر پانی پینے کے برتن بھی مہیا کرائے جانے چاہئیں۔انہوں نے اس خواہش کا بھی اظہار کیا کہ وہ مستقبل میں پنڈھر پور کو ہندوستان کے سب سے زیادہ صاف مذہبی مقامات میں سے ایک دیکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ کام بھی عوامی شراکت داری سے ہوگا، جب مقامی لوگ صفائی کی تحریک کی قیادت اپنے ہاتھ میں لیں گے  تبھی ہم اس خواب کو تعبیر آشنا کرسکیں گے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ زیادہ تر وارکری کسان برادری سے آتے ہیں اور کہا کہ مٹی کے اِن سپوتوں ’دھرتی پتروں‘نے ہندوستانی روایت اور ثقافت کو زندہ رکھا ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ ایک سچا انّ داتا سماج کو جوڑتا ہے اور سماج کے لئے جیتا ہے۔ آپ سبب ہیں اور اس کے ساتھ ہی سماج کی ترقی کا عکس بھی۔

دِوے گھاٹ سے موہول تک سنت گیانیشور مہاراج پالکھی مارگ کا تقریباً 221کلومیٹر اور پاتس سے ٹونڈیل-بونڈلے تک سنت تکارام مہارا پالکھی مارگ کا تقریباً 130کلو میٹر چار لین کا ہوگا، جس میں دونوں طرف ’پالکھی‘ کےلئے وقف پیدل کے راستے ہوں گے، جن کی تعمیر پر بالترتیب 6690کروڑ اور تقریباً 4400کروڑ روپے بالترتیب لاگت آئے گی۔

تقریب کے دوران وزیر اعظم نے 223کلومیٹر سے زیادہ کی مکمل اور جدید ترین سڑک پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کیا۔جن کی تعمیر پر 1180کروڑ روپے لاگت آئی ہے۔ یہ تعمیری کام پنڈھر پور سے ربط بڑھانے کے لئے مختلف قومی شاہراہوں پر کئے گئے ہیں۔ ان پروجیکٹوں میں مہسواد-پیلیو-پنڈھرپور(این ایچ548ای)، کوردوواڑی-پنڈھر پور(این ایچ 965سی)، پنڈھر پور-سنگولا(این ایچ 965سی)،این ایچ 561 اے کا تیمبھرنی-پنڈھرپور سیکشن  اور این ایچ 561 اے کا پنڈھر پور –منگل ویدھا-اُمادی سیکشن شامل ہیں۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Flash composite PMI up at 61.7 in May, job creation strongest in 18 years

Media Coverage

Flash composite PMI up at 61.7 in May, job creation strongest in 18 years
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi addresses massive public meetings in Gurdaspur & Jalandhar, Punjab
May 24, 2024
INDI alliance people are a great danger to the security of country: PM Modi in Gurdaspur, Punjab
The problem with Congress is that it has no faith in India: PM Modi in Gurdaspur, Punjab
Skewed version of history left generations unaware of the true events, such as the tragedy of partition in Punjab: PM Modi slams Congress party
The Jhadu Party has learned the lesson of Emergency from Congress: PM Modi against the ruling party in Punjab
Where there is Congress, there are problems and where there is BJP, there are solutions: PM Modi in Jalandhar

Prime Minister Narendra Modi addressed spirited public gatherings in Gurdaspur and Jalandhar, Punjab, where he paid his respects to the sacred land and reflected upon the special bond between Punjab and the Bharatiya Janata Party.

Addressing the gathering PM Modi highlighted, the INDI alliance’s misgovernance in the state and said, “Who knows the real face of the INDI alliance better than Punjab? They've inflicted the most wounds on our Punjab. The wound of division after independence, the long period of instability due to selfishness, a long period of unrest in Punjab, an attack on the brotherhood of Punjab, and an insult to our faith, what hasn't Congress done in Punjab? Here, they fueled separatism. Then they orchestrated a massacre of Sikhs in Delhi. As long as Congress was in the Central government, they saved the rioters. It's Modi who opened the files of the Sikh riots. It's Modi who got the culprits punished. Even today, Congress and its ally party are troubled by this. That's why these people keep abusing Modi day and night."

Speaking about the INDI alliance governance and its strategy concerning National Security, PM Modi said, “These INDI alliance people are a great danger to the security of the country. They are talking about reintroducing Article 370 in Kashmir. They want terrorism back in Kashmir. They want to hand over Kashmir to separatists again. They will send messages of friendship to Pakistan again. They will send roses to Pakistan. Pakistan will carry out bomb blasts.”

“There will be terrorist attacks on the country. Congress will say, we have to talk no matter what. For this, Congress has already started creating an atmosphere. Their leaders are saying, Pakistan has an atomic bomb. Their people are saying, we'll have to live in fear of Pakistan. These INDI alliance people are speaking Pakistan's language,” he added.

Discarding the anti-national thought process of the Congress and INDI alliance, PM Modi said, “The problem with Congress is that it has no faith in India. The scions of Congress tarnish the country's image when they go abroad. They say that India is not a nation. Therefore, they want to change the nation's identity. The mentor of the scions has said that the construction of the Ram temple and celebrating Ram Navami in the country threatens the identity of India.”

Emphasizing the need for rapid development, PM Modi assured the people of Gurdaspur, Punjab, and the entire country of his unwavering commitment to their progress and prosperity. He said, “Punjab's development is Modi's priority. The BJP government is building highways like the Delhi-Katra highway and the Amritsar-Pathankot highway here. BJP is developing railway facilities here.”

“Our effort is to create new opportunities in Punjab, to benefit the farmers. In the last 10 years, we have procured record amounts of rice and wheat across Punjab. The MSP, which was fixed during the Congress government, has been increased by two and a half times. Farmers are receiving PM Kisan Samman Nidhi for seeds, fertilizers, and other necessities,” PM Modi added.

Regarding the ongoing elections, PM Modi urged the citizens to choose leadership that prioritizes the nation's interests. Contrasting the BJP-led NDA’s clear vision for a developed India with the divisive and dynastic politics of the INDI alliance, PM Modi called for support for the BJP to ensure continued progress and stability.

In his second mega rally of the day in Jalandhar, Punjab, PM Modi highlighted the shifting political sentiments. He noted that people no longer want to vote for Congress and the INDI Alliance, as it would mean wasting their votes. Emphasizing the strong support in Punjab, he concluded with a resonant call, ‘Phir Ek Baar, Modi Sarkar’!

PM Modi criticized the Congress for its appeasement politics, claiming that the party favored its vote bank at the expense of accurate historical narratives. He noted that Congress had favoured its own family and Mughal families in history books, neglecting the sacrifices of our Sahibzadas. The PM also asserted that this skewed version of history left generations unaware of the true events, such as the tragedy of partition in Punjab. ‘Congress’, he said, “hid these truths to protect its vote bank and avoid exposing its misdeeds”.

PM Modi underscored the BJP-NDA government's commitment to Hindu and Sikh families left behind during the partition, citing the CAA law as a significant step towards granting them Indian citizenship. He heavily disregarded Congress for opposing the CAA and stated that Congress intends to repeal the law if they come to power, denying these communities their rightful citizenship.

The PM explicitly compared the Jhadu Party (AAP) to Congress, calling it a "photocopy party" that has adopted Congress's oppressive tactics. He strongly condemned their actions against media houses that resist their threats, exposing their true nature. He also made the audience aware of the destructive alliance between Congress and the Aam Aadmi Party in Punjab, stressing that voting for either party is voting against Punjab's interests.

Highlighting the Congress party's lack of faith in India and its attempts to undermine the nation's identity, PM Modi urged voters to reject such divisive politics. He underscored the BJP's commitment to Punjab's development, citing initiatives to improve infrastructure, support farmers, and promote food processing industries. PM Modi sought the blessings of the people of Gurdaspur and Jalandhar, and urged them to vote for BJP candidates in the upcoming elections to secure a brighter future for Punjab and the nation.