جناب ا سپیکر،

محترمہ  نائب صدر،

امریکی کانگریس کے معزز اراکین،

خواتین و حضرات،

نمسکار!

ریاستہائے متحدہ کی کانگریس سے خطاب کرنا ہمیشہ ایک اعزاز کی بات ہے۔ دو بار ایسا کرنا ایک غیر معمولی استحقاق ہے۔ اس اعزاز کے لیے میں ہندوستان کے 1.4 بلین عوام کی جانب سے تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میں دیکھ رہا ہوں کہ آپ میں سے تقریباً نصف 2016 میں یہاں تھے۔ میں آپ کی گرمجوشی کو پرانے دوستوں کی طرح محسوس کرتا ہوں۔ میں دوسرے نصف میں بھی ایک نئی دوستی کا جوش دیکھ سکتا ہوں۔ مجھے سینیٹر ہیری ریڈ، سینیٹر جان مکین، سینیٹر اورین ہیچ، ایلیا کمنگز، ایلسی ہیسٹنگز اور دیگر یاد ہیں، جن سے میں یہاں 2016 میں ملا تھا، اور جو افسوس کے ساتھ اب ہمارے ساتھ نہیں ہیں۔

جناب  اسپیکر،

یہاں کھڑے ہوکر، سات جونوں پہلے، یہ وہ جون ہے جب ہیملٹن نے تمام ایوارڈز اپنے نام کیے، میں نے کہا کہ ہمارے پیچھے تاریخ کی ہچکچاہٹ ہے۔ اب، جب ہمارا دور ایک دوراہے پر ہے، میں یہاں اس صدی کے لیے اپنی پکار کے بارے میں بات کرنے آیا ہوں۔ ہم نے جس طویل اور گھومتی ہوئی سڑک کا سفر کیا ہے، ہم دوستی کے امتحان پر پورا اترے ہیں۔ سات گرمیاں پہلے یہاں آنے کے بعد بہت کچھ بدل گیا ہے۔ لیکن بہت کچھ ویسا ہی رہ گیا ہے - جیسا کہ ہندوستان اور امریکہ کے درمیان دوستی کو مزید گہرا کرنے کا ہمارا عزم۔ پچھلے کچھ برسوں میں، اے آئی - مصنوعی ذہانت میں بہت سی ترقی ہوئی ہے۔ اسی وقت، ایک اور اے آئی  - امریکہ اور ہندوستان میں اور بھی اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

جناب  اسپیکر اور معزز ممبران،

جمہوریت کی خوبصورتی یہ ہے کہ عوام سے مسلسل جڑے رہیں، انہیں سنیں اور ان کی نبض محسوس کریں۔ اور، میں جانتا ہوں کہ اس میں بہت وقت، توانائی، کوشش اور سفر کی ضرورت ہے۔ یہ جمعرات کی دوپہر ہے - آپ میں سے کچھ کے لیے پرواز کا دن۔ تو، میں آپ کے وقت کا شکر گزار ہوں۔ میں یہ بھی جانتا ہوں کہ آپ اس پچھلے مہینے میں کتنے مصروف تھے۔

خود ایک متحرک جمہوریت کا شہری ہونے کے ناطے، میں ایک بات مان سکتا ہوں  جناب  ا سپیکر – آپ کا کام مشکل ہے! میں جذبہ، قائل کرنے اور پالیسی کی لڑائیوں سے تعلق جوڑ سکتا ہوں۔ میں خیالات اور نظریات کی بحث کو سمجھ سکتا ہوں۔ لیکن مجھے آج آپ کو دنیا کی دو عظیم جمہوریتوں - ہندوستان اور امریکہ کے درمیان بندھن کا جشن منانے کے لیے اکٹھے ہوتے دیکھ کر خوشی ہوئی ہے۔ جب بھی آپ کو دو طرفہ مضبوط اتفاق رائے کی ضرورت ہو تو مجھے مدد کرنے میں خوشی ہوتی ہے۔ گھر میں خیالات کا مقابلہ ہوگا – اور ہونا بھی ضروری ہے۔ لیکن، جب ہم اپنی قوم کے لیے بات کرتے ہیں تو ہمیں ایک ساتھ ہونا چاہیے۔ اور، آپ نے دکھایا ہے کہ آپ یہ کر سکتے ہیں۔ مبارک ہو!

جناب ا سپیکر،

امریکہ کی بنیاد مساوی لوگوں کی قوم کے وژن سے متاثر تھی۔ اپنی پوری تاریخ میں، آپ نے دنیا بھر کے لوگوں کو گلے لگایا ہے۔ اور، آپ نے انہیں امریکی خواب میں برابر کا حصہ دار بنایا ہے۔ یہاں لاکھوں ہیں، جن کی جڑیں ہندوستان میں ہیں۔ ان میں سے کچھ اس ایوان میں بڑے فخر سے بیٹھتے ہیں۔ میرے پیچھے ایک ہے جس نے تاریخ رقم کی! مجھے بتایا گیا ہے کہ سموسے کاکس اب ایوان کا ذائقہ ہے۔ مجھے امید ہے کہ یہ بڑھے گا اور یہاں ہندوستانی کھانوں کا مکمل تنوع لائے گا۔ دو صدیوں کے دوران، ہم نے عظیم امریکیوں اور ہندوستانیوں کی زندگیوں سے ایک دوسرے کو متاثر کیا ہے۔ ہم مہاتما گاندھی اور مارٹن لوتھر کنگ جونیئر کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔ ہم بہت سے دوسرے لوگوں کو بھی یاد کرتے ہیں جنہوں نے آزادی، مساوات اور انصاف کے لیے کام کیا۔ آج، میں ان میں سے ایک - کانگریس مین جان لیوس کو بھی دلی خراج تحسین پیش کرنا چاہتا ہوں۔

جناب ا سپیکر،

جمہوریت ہماری مقدس اور مشترکہ اقدار میں سے ایک ہے۔ یہ ایک طویل عرصے  میں  تیار ہوئی ہے، اور مختلف شکلوں اور نظاموں کو اپنایا ہے۔ تاہم پوری تاریخ میں ایک بات واضح رہی ہے۔

جمہوریت وہ جذبہ ہے جو مساوات اور وقار کی حمایت کرتا ہے۔

جمہوریت وہ نظریہ ہے جو بحث و مباحثے کا خیر مقدم کرتا ہے۔

جمہوریت وہ ثقافت ہے جو سوچ اور اظہار کو پنکھ دیتی ہے۔

ہندوستان کو اس طرح کی قدریں قدیم زمانے سے نصیب ہوئی ہیں۔

جمہوری روح کے ارتقاء میں، ہندوستان جمہوریت کی ماں ہے۔

ہزاروں سال پہلے، ہمارے قدیم ترین صحیفوں نے کہا تھا،

‘ایکم ست وِپرا بہدھا ودنتی’۔‘ एकम् सत् विप्रा बहुधा वदन्ति’.

اس کا مطلب ہے - سچ ایک ہے لیکن عقلمند اس کا اظہار مختلف طریقوں سے کرتے ہیں۔

اب امریکہ سب سے پرانی اور ہندوستان سب سے بڑی جمہوریت ہے۔

ہماری شراکت داری جمہوریت کے مستقبل کے لیے اچھی علامت ہے۔

ایک ساتھ مل کر، ہم دنیا کو ایک بہتر مستقبل اور مستقبل کو ایک بہتر دنیا دیں گے۔

جناب  اسپیکر،

گزشتہ سال ہندوستان نے اپنی آزادی کے 75 سال منائے تھے۔ ہر سنگ میل اہم ہے، لیکن یہ خاص تھا۔ کسی نہ کسی شکل میں ایک ہزار سال کی غیر ملکی حکمرانی کے بعد ہم نے آزادی کے 75 سال سے زیادہ کا ایک شاندار سفر منایا۔ یہ صرف جمہوریت کا جشن نہیں تھا بلکہ تنوع کا بھی تھا۔ نہ صرف آئین کا، بلکہ سماجی تفویض اختیارات  کی اس کی روح بھی۔ نہ صرف ہماری مسابقتی اور تعاون پر مبنی وفاقیت کا، بلکہ ہمارے ضروری اتحاد اور سالمیت کا بھی۔

ہمارے پاس دو ہزار پانچ سو سے زیادہ سیاسی جماعتیں ہیں۔ جی ہاں، آپ نے صحیح سنا- دو ہزار پانچ سو۔ تقریباً بیس مختلف پارٹیاں ہندوستان کی مختلف ریاستوں پر حکومت کرتی ہیں۔ ہمارے پاس 22 سرکاری زبانیں اور ہزاروں بولیاں ہیں، پھر بھی ہم ایک ہی آواز میں بولتے ہیں۔ ہر سو میل کے بعد ہمارے کھانے بدلتے رہتے ہیں۔ ڈوسا سے آلو پرانٹھا اور سریکھنڈ سے سندیش تک۔ ہم ان سب سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔ ہم دنیا کے تمام عقائد کا گھر ہیں، اور ہم ان سب کو مناتے ہیں۔ ہندوستان میں تنوع زندگی کا ایک فطری طریقہ ہے۔

آج دنیا ہندوستان کے بارے میں زیادہ سے زیادہ جاننا چاہتی ہے۔ میں اس ایوان میں بھی وہ تجسس دیکھ رہا ہوں۔ ہمیں پچھلی دہائی کے دوران ہندوستان میں امریکی کانگریس کے سو سے زیادہ ممبران کے استقبال  کرنے کا اعزاز حاصل ہوا ہے۔ ہر کوئی ہندوستان کی ترقی، جمہوریت اور تنوع کو سمجھنا چاہتا ہے۔ ہر کوئی جاننا چاہتا ہے کہ ہندوستان کیا کر رہا ہے اور کیسے۔ قریبی دوستوں کے درمیان، میں بھی اسی کو شیئر کرنے میں خوش ہوں۔

جناب اسپیکر،

جب میں نے بطور وزیر اعظم پہلی بار امریکہ کا دورہ کیا تھا تو ہندوستان دنیا کی دسویں بڑی معیشت تھی۔ آج ہندوستان پانچویں بڑی معیشت ہے۔ اور، ہندوستان جلد ہی تیسری بڑی معیشت بن جائے گا۔ ہم نہ صرف بڑے ہو رہے ہیں بلکہ تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ جب ہندوستان ترقی کرتا ہے تو پوری دنیا ترقی کرتی ہے۔ آخر کار، ہم دنیا کی آبادی کا چھٹا حصہ ہیں! پچھلی صدی میں، جب ہندوستان نے اپنی آزادی حاصل کی، اس نے بہت سے دوسرے ممالک کو خود کو نوآبادیاتی حکمرانی سے آزاد کرنے کی ترغیب دی۔ اس صدی میں، جب ہندوستان ترقی کے معیارات طے کرے گا، تو یہ بہت سے دوسرے ممالک کو بھی ایسا کرنے کی ترغیب دے گا۔ ہمارا وژن ہے سب کا ساتھ، سب کا  وکاس ، سب کا یقین، سب کی کوشش۔ اس کا مطلب ہے: ایک ساتھ، سب کی ترقی کے لیے، سب کے اعتماد اور سب کی کوششوں کے ساتھ۔

آئیے میں آپ کے ساتھ اشتراک کرتا ہوں کہ یہ وژن کس طرح رفتار اور پیمانے کے ساتھ عمل میں بدل رہا ہے۔ ہم بنیادی ڈھانچے کی ترقی پر توجہ دے رہے ہیں۔ ہم نے تقریباً چالیس ملین گھر دیے ہیں تاکہ ایک سو پچاس ملین سے زیادہ لوگوں کو پناہ دی جاسکے۔ یہ آسٹریلیا کی آبادی کا تقریباً چھ گنا ہے! ہم ایک قومی صحت انشورنس پروگرام چلاتے ہیں جو تقریباً 500 ملین لوگوں کے لیے مفت طبی علاج کو یقینی بناتا ہے۔ یہ جنوبی امریکہ کی آبادی سے زیادہ ہے! ہم نے دنیا کی سب سے بڑی مالیاتی شمولیت کی مہم کے ساتھ بینکنگ کو بغیر بینک والے لوگوں تک پہنچایا۔ تقریباً 50 کروڑ لوگوں نے فائدہ اٹھایا۔

یہ شمالی امریکہ کی آبادی کے قریب ہے! ہم نے ڈیجیٹل انڈیا کی تعمیر پر کام کیا ہے۔ آج ملک میں آٹھ سو پچاس ملین سے زیادہ سمارٹ فونز اور انٹرنیٹ استعمال کرنے والے ہیں۔ یہ یورپ کی آبادی سے زیادہ ہے! ہم نے اپنے لوگوں کو ہندوستان میں تیار کردہ  کووڈ  ویکسینز کی دو پوائنٹ دو (2.2) بلین خوراکوں سے محفوظ کیا، اور وہ بھی مفت! ہو سکتا ہے کہ میں جلد ہی براعظموں سے باہر نکل جاؤں، اس لیے میں یہاں رک جاؤں گا!

معزز ممبران،

وید دنیا کے قدیم ترین صحیفوں میں سے ایک ہیں۔ وہ انسانیت کا عظیم خزانہ ہیں، جو ہزاروں سال پہلے مرتب ہوئے تھے۔ اس وقت ، خواتین  سادھویوں نے ویدوں میں بہت سی آیات لکھی تھیں اور آج، جدید ہندوستان میں، خواتین ہمیں ایک بہتر مستقبل کی طرف لے جا رہی ہیں۔ ہندوستان کا وژن صرف ترقی کا نہیں ہے جس سے خواتین کو فائدہ پہنچے۔ یہ خواتین کی زیر قیادت ترقی ہے، جہاں خواتین ترقی کے سفر کی قیادت کرتی ہیں۔ ایک برد بار قبائلی پس منظر سے اٹھ کر ایک عورت ہماری سربراہ مملکت بنی ہے۔

تقریباً ایک پوائنٹ پچاس لاکھ (1.50)  منتخب خواتین مختلف سطحوں پر ہماری رہنمائی کرتی ہیں اور وہ مقامی حکومتوں کی ہے۔ آج خواتین آرمی، نیوی اور ایئر فورس میں ہمارے ملک کی خدمت کر رہی ہیں۔ ہندوستان میں دنیا میں خواتین ایئر لائن پائلٹوں کی شرح بھی سب سے زیادہ ہے۔ اور، انہوں نے ہمارے مریخ مشن کی قیادت کرتے ہوئے ہمیں مریخ پر بھی پہنچا دیا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ لڑکیوں میں سرمایہ کاری پورے خاندان کو اوپر لے جاتی ہے۔ خواتین کو بااختیار بنانا، قوم کو تبدیل کرتا ہے۔

جناب  اسپیکر،

ہندوستان ایک قدیم قوم ہے جس کی نوجوان آبادی ہے۔ ہندوستان اپنی روایات کے لیے جانا جاتا ہے۔ لیکن نوجوان نسل اسے ٹیکنالوجی کا مرکز بھی بنا رہی ہے۔ انسٹا پر تخلیقی ریلز ہوں یا ریئل ٹائم ادائیگیاں، کوڈنگ ہو یا کوانٹم کمپیوٹنگ، مشین لرننگ ہو یا موبائل ایپس، فن ٹیک ہو یا ڈیٹا سائنس، ہندوستان کے نوجوان اس بات کی ایک بہترین مثال ہیں کہ معاشرہ جدید ترین ٹیکنالوجی کو کیسے اپنا سکتا ہے۔ ہندوستان میں، ٹیکنالوجی صرف اختراع کے بارے میں نہیں ہے بلکہ شمولیت کے بارے میں بھی ہے۔ آج، ڈیجیٹل پلیٹ فارم پرائیویسی کی حفاظت کرتے ہوئے لوگوں کے حقوق اور وقار کو بااختیار بنا رہے ہیں۔

پچھلے نو سالوں میں، ایک ارب سے زیادہ لوگوں نے اپنے بینک اکاؤنٹس اور موبائل فونز سے منسلک ایک منفرد ڈیجیٹل بائیو میٹرک شناخت حاصل کی۔ یہ ڈیجیٹل پبلک انفراسٹرکچر مالی امداد کے ساتھ سیکنڈوں میں شہریوں تک پہنچنے میں ہماری مدد کرتا ہے۔(850) آٹھ سو پچاس ملین افراد اپنے کھاتوں میں براہ راست فائدے کی مالی منتقلی حاصل کرتے ہیں۔ سال میں تین بار، سو ملین سے زیادہ کسان ایک بٹن کے کلک پر اپنے بینک کھاتوں میں امداد حاصل کرتے ہیں۔ اس طرح کی منتقلی کی مالیت(320) تین سو بیس بلین ڈالر سے تجاوز کر چکی ہے، اور ہم نے اس عمل میں پچیس بلین ڈالر سے زیادہ کی بچت کی ہے۔ اگر آپ ہندوستان کا دورہ کریں گے تو آپ دیکھیں گے کہ ہر کوئی بشمول اسٹریٹ وینڈرز ادائیگیوں کے لیے فون استعمال کر رہا ہے ۔

پچھلے سال، دنیا میں ہر 100 ریئل ٹائم ڈیجیٹل ادائیگیوں میں سے 46 ہندوستان میں ہوئیں۔ تقریباً چار لاکھ میل آپٹیکل فائبر کیبلز، اور سستے ڈیٹا نے مواقع کا انقلاب پیدا کیا ہے۔ اپنے فون پر صرف ایک ٹیپ سے کسان موسم کی تازہ کاریوں کی جانچ پڑتال کرتے ہیں، بزرگوں کو سماجی تحفظ کی ادائیگیاں ملتی ہیں، طالب علموں کو اسکالرشپ تک رسائی حاصل ہوتی ہے، ڈاکٹر ٹیلی میڈیسن فراہم کرتے ہیں، ماہی گیر ماہی گیری کے میدانوں کی جانچ کرتے ہیں اور چھوٹے کاروبار قرض حاصل کرتے ہیں۔

جناب  اسپیکر،

جمہوریت، شمولیت اور پائیداری کی روح ہماری تعریف کرتی ہے۔ یہ دنیا کے لیے ہمارے نقطہ نظر کو بھی تشکیل دیتی ہے۔ ہندوستان ہمارے سیارے کے بارے میں ذمہ دار ہوتے ہوئے ترقی کر رہا ہے۔

ہمارا یقین ہے:

ماتا بھومی: پوترو آہم پرتھیوا :  माता भूमि: पुत्रो अहं पृथिव्या:

اس کا مطلب ہے- ‘‘زمین ہماری ماں ہے اور ہم اس کے بچے ہیں۔’’

ہندوستانی ثقافت ماحول اور ہمارے سیارے کا زبردست احترام کرتی ہے۔ سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی معیشت بنتے ہوئے، ہم نے اپنی شمسی صلاحیت میں دو ہزار تین سو فیصد اضافہ کیا! جی ہاں، آپ نے صحیح سنا – دو ہزار تین سو فیصد!

ہم پیرس کی عہد بندی  کو پورا کرنے والا واحد جی 20  ملک بن گئے۔ ہم نے 2030 کے ہدف سے نو سال پہلے اپنے توانائی کے ذرائع کے چالیس فیصد سے زیادہ قابل تجدید ذرائع بنائے۔ لیکن ہم  یہیں نہیں  رکے۔ گلاسگو سمٹ میں، میں نے مشن لائف-  طرز زندگی  برائے ماحولیات کی تجویز پیش کی۔ یہ پائیداری کو حقیقی عوامی تحریک بنانے کا ایک طریقہ ہے۔ اسے صرف حکومتوں کے کام  کے لئے  نہ چھوڑا جائے۔

انتخاب کرنے میں لحاظ کرکے ہر فرد مثبت اثر ڈال سکتا ہے۔ پائیداری کو ایک عوامی تحریک بنانے سے دنیا کو نیٹ زیرو ہدف تک تیزی سے پہنچنے میں مدد ملے گی۔ ہمارا نقطہ نظر سیارے کی ترقی کے حامی ہے۔ ہمارا وژن  سیارے کے حق میں  خوشحالی ہے۔ ہمارا نقطہ نظر سیارے کے حامی لوگ ہیں۔

جناب  اسپیکر،

ہم وسودھیو  کٹم  بکم  یا دنیا ایک خاندان ہے کے نعرے سے جیتے ہیں۔ دنیا کے ساتھ ہماری مصروفیت سب کے فائدے کے لیے ہے۔ ‘‘ایک سورج، ایک دنیا، ایک گرڈ’’ دنیا کو صاف توانائی کے ساتھ جوڑنے میں ہم سب کے ساتھ شامل ہونے کی کوشش کرتا ہے۔ ‘‘ایک زمین، ایک صحت’’ جانوروں اور پودوں سمیت ہر کسی کے لیے معیاری صحت کی دیکھ بھال فراہم کرنے کے لیے عالمی اقدام کا ایک وژن ہے۔

جب ہم جی 20  کی صدارت کرتے ہیں تو‘‘ایک زمین، ایک خاندان، ایک مستقبل’’  تھیم میں بھی یہی جذبہ نظر آتا ہے ۔ہم یوگا کے ذریعے بھی اتحاد کے جذبے کو آگے بڑھاتے ہیں۔ ابھی کل ہی، پوری دنیا یوگا کا عالمی دن منانے کے لیے اکٹھی ہوئی تھی۔ ابھی پچھلے ہفتے ہی، تمام اقوام، اقوامِ متحدہ میں امن دستوں کے اعزاز کے لیے ایک میموریل وال بنانے کی ہماری تجویز میں شامل ہوئیں۔

اور اس سال، پوری دنیا موٹے اناج  کا بین الاقوامی سال منا رہی ہے، تاکہ پائیدار زراعت اور غذائیت کو یکساں فروغ دیا جا سکے۔ کوویڈ کے دوران، ہم نے ایک سو پچاس سے زائد ممالک کو ویکسین اور ادویات فراہم کیں۔ ہم آفات کے دوران پہلے جواب دہندگان کے طور پر دوسروں تک پہنچتے ہیں، جیسا کہ ہم اپنے لیے کرتے ہیں۔ ہم اپنے معمولی وسائل کو ان لوگوں کے ساتھ بانٹتے ہیں جنہیں ان کی سب سے زیادہ ضرورت ہوتی ہے۔ ہم صلاحیتیں بناتے ہیں، انحصار نہیں۔

جناب ا سپیکر،

جب میں دنیا  کے بارےمیں ہندوستان کے نقطہ نظر کی بات کرتا ہوں تو امریکہ ایک خاص مقام رکھتا ہے۔ میں جانتا ہوں کہ ہمارے تعلقات آپ سب کے لیے بہت اہمیت کے حامل ہیں۔اس کانگریس کے ہر رکن کی اس میں گہری دلچسپی ہے۔ جب ہندوستان میں دفاع اور ایرو اسپیس میں اضافہ ہوتا ہے، تو واشنگٹن، ایریزونا، جارجیا، الاباما، جنوبی کیرولینا اور پنسلوانیا کی ریاستوں میں صنعتیں پروان چڑھتی ہیں۔ جب امریکی کمپنیاں ترقی کرتی ہیں، ہندوستان میں ان کے تحقیق اور ترقی کے مراکز ترقی کرتے ہیں۔ جب ہندوستانی زیادہ اڑان بھرتے ہیں تو ہوائی جہاز کا ایک آرڈر امریکہ کی 44 ریاستوں میں ایک ملین سے زیادہ ملازمتیں پیدا کرتا ہے۔

جب کوئی امریکی فون بنانے والا ہندوستان میں سرمایہ کاری کرتا ہے، تو یہ دونوں ممالک میں ملازمتوں اور مواقع کا ایک پورا ماحولیاتی نظام تخلیق کرتا ہے۔ جب ہندوستان اور امریکہ سیمی کنڈکٹرز اور اہم معدنیات پر مل کر کام کرتے ہیں، تو یہ سپلائی چین کو مزید متنوع، لچکدار اور قابل اعتماد بنانے میں دنیا کی مدد کرتا ہے۔ جناب ا سپیکر، درحقیقت ہم صدی کے اختتام پر دفاعی تعاون میں اجنبی تھے۔ اب، امریکہ ہمارے اہم ترین دفاعی شراکت داروں میں سے ایک بن گیا ہے۔ آج ہندوستان اور امریکہ خلا اور سمندروں میں، سائنس اور سیمی کنڈکٹرز میں، اسٹارٹ اپس اور پائیداری میں، ٹیک اور تجارت میں، کاشتکاری اور مالیات میں، آرٹ اور مصنوعی ذہانت میں، توانائی اور تعلیم، صحت کی دیکھ بھال اور انسانی ہمدردی کی کوششوں میں مل کر کام کر رہے ہیں۔

میں مزید آگے بڑھ سکتا ہوں۔ لیکن، خلاصہ کرنے کے لئے، میں کہوں گا،

ہمارے تعاون کا دائرہ لامتناہی ہے،

ہماری ہم آہنگی کی صلاحیت لامحدود ہے،

اور، ہمارے تعلقات میں جو یکسانیت پائی جاتی ہے تو کسی کوشش کی مرہون منت نہیں  ہے۔

اس سارے معاملے میں ہندوستانی امریکیوں نے بڑا کردار ادا کیا ہے۔ وہ صرف اسپیلنگ بی  میں نہیں بلکہ ہر شعبے میں شاندار ہیں۔ اپنے دلوں اور دماغوں، ہنر اور مہارتوں اور امریکہ اور ہندوستان کے لیے اپنی محبت سے، انھوں نے ہمیں جوڑا ہے۔ انہوں نے دروازے کھولے ہیں۔ انہوں نے ہماری شراکت داری کی صلاحیت کو ظاہر کیا ہے۔

جناب  اسپیکر، معزز اراکین،

ماضی کے ہر ہندوستانی وزیر اعظم اور امریکی صدر نے ہمارے تعلقات کو مزید آگے بڑھایا ہے۔ لیکن اس کو مزید بلندیوں پر لے جانے کا اعزاز ہماری نسل کو حاصل ہے۔ میں صدر بائیڈن سے اتفاق کرتا ہوں کہ یہ اس صدی کی ایک اہم  واضح شراکت داری ہے۔ کیونکہ یہ ایک بڑے مقصد کو پورا کرتی ہے۔ جمہوریت، ڈیموگرافی اور  تقدیر   ہمیں یہ مقصد دیتی ہے۔ عالمگیریت کا ایک نتیجہ سپلائی چینز کا زیادہ ارتکاز رہا ہے۔

ہم سپلائی چین کو متنوع بنانے، عدم ارتکاز اور جمہوری بنانے کے لیے مل کر کام کریں گے۔ ٹیکنالوجی اکیسویں صدی میں سلامتی، خوشحالی اور قیادت کا تعین کرے گی۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے دونوں ممالک نے ایک نیا ‘‘انیشیٹو فار کریٹیکل اینڈ ایمرجنگ ٹیکنالوجیز’’ قائم کیا۔ ہماری علمی شراکت داری انسانیت کی خدمت کرے گی اور موسمیاتی تبدیلی، بھوک اور صحت کے عالمی چیلنجوں کا حل تلاش کرے گی۔

جناب ا سپیکر اور معزز ممبران،

پچھلے کچھ سالوں میں گہرے خلل ڈالنے والی پیش رفت دیکھنے میں آئی ہے۔ یوکرین کے تنازعے کے ساتھ، جنگ یورپ میں واپس آ گئی ہے۔اس سے یہ علاقے میں شدید تکلیف کا سبب بن رہی ہے۔ چونکہ اس میں بڑی طاقتیں شامل ہیں، اس لیے نتائج شدید ہیں۔ گلوبل ساؤتھ کے ممالک خاص طور پر متاثر ہوئے ہیں۔ عالمی نظام اقوام متحدہ کے چارٹر کے اصولوں کے احترام، تنازعات کے پرامن حل اور خودمختاری اور علاقائی سالمیت کے احترام پر مبنی ہے۔

جیسا کہ میں نے براہ راست اور عوامی طور پر کہا ہے کہ یہ جنگ کا دور نہیں ہے۔ بلکہ ،یہ بات چیت اور سفارت کاری کا دورہے۔ اور، ہم سب کو خونریزی اور انسانی مصائب کو روکنے کے لیے جو کچھ ہو سکتا ہے وہ کرنا چاہیے۔ جناب ا سپیکر، جبر اور تصادم کے سیاہ بادل انڈو پیسیفک میں سایہ کر رہے ہیں۔ خطے کا استحکام ہماری شراکت داری کے مرکزی خدشات میں سے ایک بن گیا ہے۔

ہم ایک آزاد، کھلے اور جامع انڈو پیسیفک کے وژن کا اشتراک کرتے ہیں، جو محفوظ سمندروں سے جڑا ہوا ہے، بین الاقوامی قانون کے مطابق  واضع کردہ ، تسلط سے آزاد، اور آسیان کی مرکزیت میں لنگر انداز ہے۔ایک ایسا خطہ جہاں تمام قومیں، چھوٹی اور بڑی، اپنے انتخاب میں آزاد اور بے خوف ہیں، جہاں قرضوں کے ناممکن بوجھوں سے ترقی کا گلا نہیں گھونٹ رہا ہے، جہاں اسٹریٹجک  مقاصد کے لیے رابطوں کا فائدہ نہیں اٹھایا گیا ہے، جہاں تمام قومیں مشترکہ خوشحالی کی بلند لہروں اوپر اُٹھ رہی ہیں۔ .

ہمارا وژن روکنےیا خارج کرنے کی کوشش نہیں کرتا ہے، بلکہ امن اور خوشحالی کا ایک تعاون پر مبنی خطہ بنانا ہے۔ ہم علاقائی اداروں کے ذریعے اور خطے کے اندر اور اس سے باہر کے اپنے شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں۔ اس سلسلے میں، کواڈ خطے کے لیے خیر کی ایک بڑی قوت کے طور پر اُبھرا ہے۔

جناب ا سپیکر،

11/9 کے بعد دو دہائیوں سے زیادہ اور ممبئی میں 11/26  کے بعد ایک دہائی سے زیادہ گزر جانے کے بعد بھی  بنیاد پرستی اور دہشت گردی اب بھی پوری دنیا کے لیے ایک بڑا خطرہ ہے۔ یہ نظریات نئی شناخت اور شکلیں بدلتے رہتے ہیں لیکن ان کے ارادے ایک ہی ہوتے ہیں۔ دہشت گردی انسانیت کی دشمن ہے اور اس سے نمٹنے میں  کسی اگر یا مگر کی ضرورت  نہیں ہوسکتی ہے۔ ہمیں دہشت گردی کی سرپرستی اور برآمد کرنے والی تمام قوتوں پر قابو پانا چاہیے۔

جناب  اسپیکر،

کووڈ-19  کا سب سے بڑا اثر انسانی نقصان اور اس کی وجہ سے ہونے والی تکلیف تھی۔ میں کانگریس مین، رون رائٹ اور عملے کے ان  ارکان کو یاد کرنا چاہتا ہوں جنہوں نے کووڈ سے اپنی جانیں گنوائیں۔ جیسے ہی ہم وبائی مرض سے باہر نکلتے ہیں ، ہمیں ایک نئے عالمی نظام کو  تشکیل  دینا ہوگی۔ غور و فکر، دیکھ بھال اور تشویش  وقت کی ضرورت ہے۔ گلوبل ساؤتھ کو ایک آواز دینا آگے  کا راستہ ہے۔ اس لیے میں پختہ یقین رکھتا ہوں کہ افریقی یونین کو جی 20  کی مکمل رکنیت دی جائے۔

ہمیں بہتر وسائل اور نمائندگی کے ساتھ کثیرالجہتی کو بحال کرنا چاہیے اور کثیرالجہتی اداروں کی اصلاح کرنی چاہیے۔ اس کا اطلاق حکمرانی کے ہمارے تمام عالمی اداروں، خاص طور پر اقوام متحدہ پر ہوتا ہے۔ جب دنیا بدل چکی ہے تو ہمارے اداروں کو بھی بدلنا چاہیے۔ یا، قوانین کے بغیر دشمنیوں کی دنیا سے تبدیل ہونے کا خطرہ۔ بین الاقوامی قانون پر مبنی ایک نئے عالمی نظام کے لیے کام کرنے میں، ہمارے دونوں ممالک شراکت دار کے طور پر سب سے آگے ہوں گے۔

جناب ا سپیکر اور معزز ممبران،

آج ہم اپنے تعلقات کی ایک نئی صبح پر کھڑے ہیں جو نہ صرف ہماری دونوں قوموں بلکہ دنیا کی تقدیر کو بھی تشکیل دے گا۔ جیسا کہ نوجوان امریکی شاعر امندا گورمن نے اظہار کیا ہے:

‘‘جب دن آتا ہے تو ہم سائے سے باہر نکلتے ہیں،

بھڑکتا ہوا اور بے خوف،

نئی صبح کھلتی ہے جب ہم اسے آزاد کرتے ہیں۔

کیونکہ ہمیشہ روشنی رہتی ہے،

اگر صرف ہم اسے دیکھنے کے لئے کافی بہادر ہیں.’’

ہماری قابل اعتماد شراکت اس نئی صبح میں سورج کی طرح ہے جو چاروں طرف روشنی پھیلائے گا۔

مجھے ایک نظم یاد آرہی ہے جو میں نے ایک بار لکھی تھی:

آسمان میں سر اٹھا کر

 گھنےبادلوں  کو چیڑ کرا

روشنی کا سنکلپ لیں

درڑ نشچے کے ساتھ چل کر

ہر مشکل کو پار کر

 گھور اندھیرے کو مٹانے

 ابھی توسورج اُگا ہے۔

 

اگر میں اسے انگریزی میں کہوں تو یہ ہوگا:

آسمانوں میں سر اٹھا کر،

گھنے بادلوں سے چھیدنا

روشنی کے وعدے کے ساتھ

سورج ابھی طلوع ہوا ہے۔

گہرے عزم کے ساتھ مسلح،

تمام مشکلات پر قابو پا کر،

تاریکی کی قوتوں کو دور کرنے کے لیے،

سورج ابھی طلوع ہوا ہے۔

 

جناب  اسپیکر اور معزز ممبران،

ہم مختلف حالات اور تاریخ سے آئے ہیں، لیکن ہم ایک مشترکہ نقطہ نظر اور، ایک مشترکہ تقدیر پر متحد ہیں۔ جب ہماری شراکت داری ترقی کرتی ہےتو اقتصادی لچک بڑھتی ہے، اختراع بڑھتی ہے، سائنس پھلتی  پھولتی ہے، علم میں ترقی ہو تی ہے ، انسانیت کو فائدہ پہنچتا ہے، ہمارے سمندر اور آسمان محفوظ ہیں، جمہوریت مزید چمکے گی، اور دنیا ایک بہتر جگہ ہوگی۔

یہ ہماری شراکت داری کا مشن ہے۔ یہ اس صدی کے لیے ہماری پکار ہے۔ جناب اسپیکر اور معزز اراکین، ہماری شراکت داری کے اعلیٰ معیارات کے باوجود، یہ دورہ ایک بڑی مثبت تبدیلی ہے۔ ہم مل کر یہ مظاہرہ کریں گے کہ جمہوریتیں اہم ہیں اور جمہوریتیں ڈیلیور کرتی ہیں۔ میں ہندوستان۔امریکہ شراکت داری کے لیے آپ کی مسلسل حمایت پر اعتماد کرتا ہوں۔

جب میں 2016 میں یہاں آیا تھا تو میں نے کہا تھا کہ ‘‘ہمارے تعلقات ایک اہم مستقبل کے لیے پرعزم ہیں۔’’  وہ مستقبل آج ہے۔ اس اعزاز کے لیے ایک بار پھر جناب  اسپیکر،  محترمہ   نائب صدر اور معزز اراکین کا شکریہ۔

خدا امریکہ کا بھلا کرے۔

جئے ہند۔

بھارت امریکہ دوستی زندہ باد۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
WEF chief praises PM Modi; expresses amazement with infrastructure development, poverty eradication

Media Coverage

WEF chief praises PM Modi; expresses amazement with infrastructure development, poverty eradication
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Our commitment is clear: corrupt individuals will be investigated: PM Modi at Agra rally
While Modi focuses on uplifting the poor, the SP-Congress alliance is indulging in blatant appeasement: PM Modi
We are ending 'Tushtikaran' and working for 'Santushtikaran': PM Modi at election rally in UP's Agra
I went into the sea with great devotion, I went there to seek the blessings of Lord Shri Krishna but Congress 'Shehzada' made fun of it, says the PM
Addressing a public rally in Aonla, PM Modi says this election is an election to completely free the country from the mentality of 1000 years of slavery

In anticipation of the 2024 Lok Sabha Elections, Prime Minister Narendra Modi delivered stirring addresses to massive crowds in Agra & Aonla in Uttar Pradesh. Amidst an outpouring of affection and respect, PM Modi unveiled a transparent vision for a Viksit Uttar Pradesh and a Viksit Bharat. The PM exposed the harsh realities of the Opposition’s trickery and their “loot system”.

Initiating his positively voluminous speech, PM Modi warned the audience that, “Some unnecessary force opposes India's growing power,” but at the same time the PM also assured that, “A defence corridor is being built here to manufacture deadly weapons for our army and for export. Arms brokers, who used to bribe Congress leaders, are furious. They don't want India's army to be Aatmanirbhar. They're united against Modi. We need the BJP-NDA government again to stop them.”

“While Modi focuses on uplifting the poor, the SP-Congress alliance is indulging in blatant appeasement. Congress's manifesto for the 2024 elections bears 100% imprint of the Muslim League, solely dedicated to strengthening their vote bank,” PM Modi remarked.

Addressing a crucial issue of the day, PM Modi shed light on the Opposition's deceitful tactics, remarking, “Congress, whether in Karnataka or Andhra Pradesh, has persistently pushed for religious-based reservation in its manifesto. Despite constitutional and judicial constraints, Congress is determined to pursue this agenda. Their strategy involves reallocating OBC quota to provide religious-based reservation, as seen in Karnataka where all Muslim castes were included in the OBC category by the Congress government.”

“In 2012, just before the Uttar Pradesh Assembly elections, the Congress government attempted to allocate a portion of OBC reservation to minorities based on religion but failed. Now, the people of UP, especially the OBC community, must recognize Congress and SP's dangerous game. They aim to take away the rights of OBC castes like Yadav, Kurmi, Maurya, Kushwaha, Jat-Gujjar, Rajbhar, Teli, and Pal, and give them to their preferred vote bank. The SP, for its own gains, is betraying the Yadavs and backward classes. This appeasement-driven mindset defines both the SP and Congress, who aim to surreptitiously redistribute OBC rights to their vote banks, before the arrival of Yogi ji, the slogan of the INDI Alliance here was – The land which is the government's, that land is ours,” the PM further added.

Launching his revolt against the Opposition parties, PM Modi observed that, “A new scheme by the Congress-INDI Alliance has emerged, and that is Congress Ki Loot…Jindagi Ke Sath Bhi, Jindagi Ke Baad Bhi! They claim they will investigate your belongings using the Congress prince's X-ray machine, seizing everything, including sisters' and daughters' jewellery, and distribute it among their vote banks. Not even the sisters' mangalsutras will be spared.”

With compelling facts and figures, PM Modi posed a critical question to the crowd: "The Congress-SP & INDI Alliance plans to impose a 55% tax on your inheritance. This means they'll seize a significant portion of what you leave for your children. If you built a 4-room house, only 2 rooms will go to your children, the rest seized by Congress-SP. Similarly, if you own 10 bighas of land, only 5 will be inherited by your children, the rest confiscated by Congress-SP. Are you ready to surrender your property to them?"

“Our commitment is clear: corrupt individuals will be investigated, and the money they've stolen from the poor will be returned to them. PM Modi is seeking legal advice on how to recover the looted money, including bungalows and vehicles seized from these corrupt individuals,” the PM established.

Also, PM Modi addressed the appalling paper leak incident in Rajasthan, highlighting its detrimental impact on the future of the nation's youth. He revealed that the Ashok Gehlot's government of the state played a significant role in the incident, placing the blame squarely on the Congress.

In his second rally in Aonla, PM Modi described the 2024 election as a choice to liberate the country entirely from the mentality of a thousand years of slavery. This election is about elevating India's pride to new heights.

In a blistering attack on Congress and SP, PM Modi stated, “Do you remember what the Samajwadi Party (SP) and Congress used to say ten years ago – ‘Mandir wahin banayenge, Tarikh nahi batayenge’. With your blessings, we built the temple, set a date, and even invited the SP and Congress. But they declined the invitation. Why? Because they feared upsetting their vote bank. They didn't abandon just Lord Ram, but also Lord Shyam. You know that our Lord Krishna's ancient city of Dwarka lies submerged beneath the sea. Some time ago, I went to visit Dwarka ji in the sea. But the scion of the Congress made a mockery of it too. And the family members of the SP, who claim to be from the Yadav dynasty, are now singing praises to those who ridiculed Lord Krishna.”

Emphasizing Modi's guarantee, PM Modi stated that the leaders of the INDI alliance are vying for votes to amend the Constitution and introduce reservation based on religio. “Today, I am pledging support to the OBC community of Uttar Pradesh, encompassing Yadavs, Kurmis, Maurya-Kushwahas, Jat-Gujjars, Rajbhar-Teli-Pal communities. I am committed to preventing the Samajwadi Party and Congress from depriving you of your reservation rights,” he said.

In the Aonla rally, PM Modi continued to criticize the opposition, whether it be the Congress or the Samajwadi Party, stating that they only think about their own families. He said, “For these people, their family is everything, and they do not care about anyone else. In Uttar Pradesh, the Samajwadi Party did not find a single Yadav outside their family to whom they could give a ticket. Whether it's Badaun, Mainpuri, Kannauj, Azamgarh, Firozabad, everywhere, tickets have been given only to members of the same family. Such people will always prioritize the welfare of their own family, and for them, anyone outside their family holds no significance.”

In his closing words, PM Modi humbly requested everyone in the crowd to spare a moment for their sevak and bless the BJP with a resounding victory. He also urged the crowd to visit each home, conveying his heartfelt gratitude and best wishes.