Share
 
Comments

My dear fellow countrymen, 

I am with you again almost after a month. A month is quite a long time. Lots of things keep happening in the world. You all have recently celebrated the festival of Diwali with great fervour and joy. It is these festivals which bring happiness in our daily lives from time to time. Be it poor or rich, people from village or from urban areas, festivals hold a different significance in everyone’s lives. This is my first meeting after Diwali, so I convey my very warm wishes to you all. 

Last time we had some general conversation. But then I came to some new realizations after that conversation. Sometimes we think leave it... nothing is going to change, people are indifferent, they will not do anything, our country is like this. From my last conversation in Mann Ki Baat to this one, I would urge you all to change this mindset. Neither is our country is like this nor our people indifferent. Sometimes I feel the Nation is way ahead and the government is lacking behind. And from my personal experience I will say that the governments too needs to change their mindsets. And I say that because I can see tremendous sense of commitment in the Indian youth. They are very eager to do their bit and are just seeking an opportunity where they can do their bit. And they are making efforts at their own end. Last time I had asked them to buy at least one khadi outfit. I had not asked anyone to be Khadidhari, But the feedback I got from Khadi stores was that in a week’s time the sales had jumped up by 125%. In this way, as compared to last year the sales this year is more than double in the week following 2nd Oct. This means, the people of our country is many times more than we think of. I salute all my fellow Indians. 

Cleanliness……….. Can anyone imagine that cleanliness will become a such a huge public movement. The expectations are high and they should be so. I can see some good results, cleanliness can now be witnessed in two parts. One is those huge garbage piles which keep lying in the city; well the people in the government will work to remove those. It is a big challenge but you cannot run away from your responsibilities. All state governments and all municipalities will now have to take concrete actions due to the rising public pressure. Media is playing a very positive role in this. But there is the second aspect which gives me immense pleasure, happiness and a sense of satisfaction that the general public has started feeling that leave what happened in the past, now they will not dirty their surroundings. We will not add to the existing dirt. A gentleman Mr Bharat Gupta has sent me a mail on mygov.in from Satna, Madhya Pradesh. He has related his personal experience during his tour of the railways. He said that people eat on trains and usually litter around. He continues to say that he has been touring from the past many years but it is this time around no one was littering, rather they were looking for dustbins to throw their trash. When they could not see any arrangements they collected all their litter in a corner. He says that it was a very gratifying experience for me. I thank Bharat ji for sharing this experience with me. 

What I am seeing is that this campaign has had a great influence on kids. Many families mention that now whenever kids eat a chocolate they themselves pick the wrapper and disposes it. I was seeing a message on the social media. Someone had posted a picture with the Title “My hero of the Day”. This picture was that of a little kid who, picks up trash, wherever he goes, even when going to school. He is himself motivated to do this. Just see…people now feel it is their country and they will not make it dirty. We will not add to the existing dirt pile. And those do litter feel ashamed for someone is around to point it out to them. I consider all these to be good omens. 

Another thing is that many people come to meet me who are from all the sections of the society. They can be government officers, from film world, sports world, industrialists, scientists ……. All of them, whenever they interact with me, in ten minutes discussion, about four to five minutes the discussion is on social issues. Someone talks about cleanliness, while some others talk about education, while someone talks about social reforms. Some people discuss the ruining of family life. I initially thought if a businessman comes, he will definitely talk of things of his personal interest. But I am seeing a major change. 

They talk less about their interest and more about taking on some or the other social responsibility. When I add up all these small incidents I see a larger picture and I realize that we are moving in the right direction. It is true that unhealthy environment leads to diseases and sickness, but where does sickness strike first. It first strikes the poor household. When we work towards cleanliness, we make a major effort in the direction of helping the poor. If the poor families are saved from diseases, then they will be saved from a lot of financial problems. If a person is healthy, then he will work hard, earn for the family and help in running the family smoothly. And so this cleanliness drive is directly related to the health and welfare of my poor brethren. We may not be able to do something to help the poor, but even keeping the environs clean helps the poor in a big way. Let us view it from this perspective; it will be very beneficial. 

I receive different kinds of letters. Last time I had mentioned about our specially abled children. Whom God has given some kind of deficiencies; I had expressed my feelings regarding those people. I see that people who work in this field are sending me their success stories. But I came to know about two things from my people in the government. The people from the HRD ministry after hearing my talk, felt the need to do something. And the officers came together to work out an action plan. This is an example of how changes are coming about in governance. One they have decided that those specially abled who want to pursue technical education, a thousand of them who are good will be selected for Special Scholarships, and a plan has been made. I congratulate the officials who could think in those lines. Another important decision is that all the Kendriya Vidyalaya’s and all Central Universities will have a special infrastructure for the specially abled, for example if they can’t climb stairs then there will be provision for ramps to facilitate movement by wheel chair. They need different kinds of toilets. The HRD ministry has decided to allocate an additional Lakh rupees to the Kendriya Vidyalays and Central universities. This fund will be used by these institutions to create infrastructure for the specially abled. This is an auspicious beginning……………these things will lead us to change. 

I had the chance to visit Siachin a few days back. I spent Diwali with the Jawans who are ready to lay down their lives for the nation. When the nation was celebrating Diwali I was at Siachin. It is because of them that we were able to celebrate Diwali, so I wanted to be with them. I experienced the difficulties in which they spent their time there. I salute all my Jawans. But I want to share another matter of great pride with you. Our Jawans work in the field of security. In calamities, they risk their lives to save our life. They also fetch medals for us in sporting events. You will be glad to know that these Jawans have won a gold medal in a very prestigious event in Britain called Cambrian Patrol, defeating contestants from 140 nations. I offer these Jawans my heartiest congratulations. 

I also got an opportunity to meet, the young and dynamic students, boys and girls over tea who had won medals in Sports. They give me renewed energy. I was seeing their zeal and enthusiasm. The facilities in our country are quite less as compared to other nations, but instead of complaining they were just sharing their joy and excitement. For me, this tea programme for these players was very inspiring, and I felt really good. 

I would like to tell you something more and that too from my heart. I truly believe that people of my country trust my words and my intentions. But, today one more time, I want to reiterate my commitment. As far as black money is concerned, my people, please trust your Prime Servant, for me this is the Article of Faith. This is my commitment that the hard-earned money of the poor people stashed abroad, every penny of that should be brought back. The ways and means to be followed can be different. And this is very obvious in a democratic country, but on the basis of as much I understand and as much I know, I assure you that we are on the right track. Today, nobody, neither me, nor the government, nor you, nor even the previous government knew how much money is stashed abroad. Everyone gives estimate calculated in his/her own way. I don’t want to get lost in some such figures and estimates, Its my commitment that, be it 2 rupees, or 5 rupees, or millions or even billions, this is the hard-earned money of the poor people of my country and it has to come back. And I assure you that I will keep trying till the end. No efforts will be spared. I want your blessings to be always with me. I assure you that I will do whatever and whenever something is required to be done for you. I give my commitment to you. 

I have received a letter. It has been sent by Sri Abhishek Pareekh. The same sentiments were expressed to me by many mothers and sisters when I was not even the Prime Minister. Some doctor friends had also expressed their concern and I too have expressed my views on this issue a number of times in the past. Mr. Parikh has drawn my attention towards the increase of drug addiction that is fast catching up with our young generation. He has asked me to discuss this topic in “Mann ki Baat.” I agree with his concern and I will definitely include this topic, in my next edition of Mann Ki Baat. I will discuss the topic of drugs, drug addiction and drug mafia and how they are a threat to our country’s youth. If you have some experience, any information in this regard, if you have ever rescued any child from this drug addiction, if you know of any ways and means to help, if any government official has played a good role, if you give me any such information, I will convey such efforts to the public and together we will try to create an environment in each family that no child ever thinks of choosing this vice out of sheer frustration. I will definitely discuss this in detail in the next edition. 

I know I am choosing those topics which put the government in the dock. But how long will we keep these things hiding? How long will we brush these important concerns under the carpet? Some day or the other we need to take a call, follow our instincts and for grand intentions tough calls are equally important. I am mustering the courage to do so because your love inspires me to do so. And I will continue to do such things because of your love. 

Some people told me “ Modi ji you asked us to send you suggestions on Facebook, twitter or email. But a large section of the social class does not have access to these facilities, so what can they do. Your point is very valid. Everyone does not have this facility. Well then, if you have something to say related to Mann Ki Baat, that you hear on the radio even in the villages then do write into me on the following address

Mann Ki Baat
Akashvani
Sansad Marg
New Delhi. 

Even if you send some suggestions through letters they will definitely reach me. And I will take them seriously as active citizens are the biggest asset for development. You write one letter, it indicates that you are very active. When you give your opinion, it means that you are concerned with national issues and this is strength of the nation. I welcome you. 

For my Mann Ki Baat, your mann ki baat sould also reach me. Maybe you will definitely write a letter. I will try and interact with you again next month. I will try, that whenever I talk, it is Sunday, around 11 am. So I am getting closer to you. 

The weather is changing. Winters are slowly setting in. This is a good month for health. Some find it a good season for eating. Some find it good for wearing nice clothes. Besides food and clothes it is a good season for health. Don’t let it go waste. Make the most of it. 

Thank You. 

(The original speech was in Hindi, this is the English rendering. Original speech remains the authoritative version)

Pariksha Pe Charcha with PM Modi
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
Oxygen Express trains so far delivered 2,067 tonnes of medical oxygen across India

Media Coverage

Oxygen Express trains so far delivered 2,067 tonnes of medical oxygen across India
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Share
 
Comments
At this moment, we have to give utmost importance to what doctors, experts and scientists are advising: PM
Do not believe in rumours relating to vaccine, urges PM Modi
Vaccine allowed for those over 18 years from May 1: PM Modi
Doctors, nursing staff, lab technicians, ambulance drivers are like Gods: PM Modi
Several youth have come forward in the cities and reaching out those in need: PM
Everyone has to take the vaccine and always keep in mind - 'Dawai Bhi, Kadai Bhi': PM Modi

نئی دہلی۔ 25 اپریل میرے پیارے ہم وطنو، نمسکار ۔ آج آپ سے ‘من کی بات’، ایک ایسے وقت میں کر رہا ہوں، جب کو رونا، ہم سبھی کے صبر وتحمل ، ہم سبھی کے دکھ برداشت کرنے کی حد کا امتحان لے رہا ہے ۔ بہت سے اپنے، ہمیں، بے وقت ، چھوڑ کر چلے گئے ہیں ۔ کورونا کی پہلی لہر کا کامیابی سے مقابلہ کرنے کے بعد ملک کا حوصلہ بلند تھا، ملک خود اعتمادی سے سے لبریز تھا، لیکن اس طوفان نے ملک کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے ۔

ساتھیو، پچھلے دنوں اس بحران سے نمٹنے کے لیے، میری، الگ الگ شعبوں کے ایکسپرٹ کے ساتھ، ماہرین کے ساتھ طویل بات چیت ہوئی ہے ۔ ہماری دوا ساز صنعت کے لوگ ہوں، ویکسین بنانے والے ہوں ، آکسیجن بنانے کے عمل سے منسلک لوگ ہوں یا پھر طبی شعبہ کے جانکار، انہوں نے، اپنے اہم مشورے حکومت کو دیے ہیں۔ اس وقت ، ہمیں اس لڑائی کو جیتنے کے لیے، ماہرین اور سائنسی صلاح کو ترجیح دینی ہے ۔ ریاستی سرکار کی کوششوں کو آگے بڑھانے میں حکومت ہند پوری طاقت سے مصروف عمل ہے۔ ریاستی حکومتیں بھی اپنے فرائض کی ادائیگی کی بھر پور کوششیں کر رہی ہیں۔

ساتھیو، کو رونا کے خلاف اس وقت بہت بڑی لڑائی ملک کے ڈاکٹر اور صحت کارکنان لڑ رہے ہیں ۔ پچھلے ایک سال میں انہیں اس بیماری کے بارے میں ہر قسم کے تجربات بھی ہوئے ہیں ۔ ہمارے ساتھ، اس وقت ، ممبیٔ سے مشہور ڈاکٹر ششانک جوشی جی جڑ رہے ہیں ۔

ڈاکٹر ششانک جی کو کو رونا کے علاج اور اس سے متعلق تحقیق کا بہت زمینی تجربہ ہے۔ وہ انڈین کالج آف فیزیسین کے ڈین بھی رہ چکے ہیں ۔ آئیے بات کرتے ہیں ڈاکٹر ششانک سے :-

مودی جی - نمسکار ڈاکٹر ششانک جی

ڈاکٹر ششانک – نمسکار سر ۔

مودی جی - ابھی کچھ دن پہلے ہی آپ سے بات کرنے کا موقع ملا تھا ۔ آپکے خیالات کی توضیح مجھے بہت اچھی لگی تھی ۔ مجھے لگا ملک کے سبھی شہری کو آپ کے خیالات جاننے چاہیئے ۔ جو باتیں سننے میں آتی اسی کو میں ایک سوال کی شکل میں آپکے سامنے پیش کرتا ہوں۔ ڈاکٹر ششانک – آپ لوگ اس وقت دن رات زندگی کی حفاظت کے کام میں لگے ہوئے ہیں، سب سے پہلے تو میں چاہونگا کہ آپ دوسری لہر کے بارے میں لوگوں کو بتائیں۔ طبی طور پر یہ کیسے الگ ہے اور کیا کیا احتیاط ضروری ہے ۔

ڈاکٹر ششانک – شکریہ سر، یہ جو دوسری لہر (wave) آئی ہے ۔ یہ تیزی سے آئی ہے، تو جتنی پہلی لہر (wave) تھی اس سے یہ وائرس زیادہ تیز چل رہا ہے، لیکن اچھی بات یہ ہے کہ اس سے زیادہ رفتار سےصحت یابی بھی ہو رہی ہے اور اموات کی شرح کافی کم ہے ۔ اس میں دو تین فرق ہے، پہلا تو یہ نوجوانوں میں اور بچوں میں بھی تھوڑا دکھائی دے رہا ہے ۔ اسکی جو علامت ہے، پہلے جیسی علامت تھی سانس چڑھنا، سوکھی کھانسی آنا، بخار آنا یہ تو سب ہے ہی اور اسکے ساتھ تھوڑی بو کا ختم ہو جانا، ذائقہ چلا جانا یہ بھی ہے ۔ اور لوگ تھوڑے خوفزدہ ہیں ۔ خوفزدہ ہونے کی بالکل ضرورت نہیں ہے ۔ 80-90 فیصد لوگوں میں اس کی کوئی بھی علامت دکھائی نہیں دیتی ہے، یہ میوٹیشن - میوٹیشن جو بولتے ہیں، گھبرانے کی بات نہیں ہے ۔ یہ میوٹیشن ہوتے رہتے ہیں جیسے ہم کپڑے بدلتے ہیں ویسے وائرس بھی اپنا رنگ بدل رہا ہے اور اسلئے بالکل ڈرنے کی بات نہیں ہے اور یہ لہر ہم پار کر لیں گے ۔ لہرآتی جاتی ہے، اور یہ وائرس آتاجاتا رہتا ہے تو یہی الگ الگ علامتیں ہیں ہے اور طبی طور پر ہم کو محتاط رہنا چاہیئے ۔ ایک 14 سے 21 دن کا یہ کووڈ کا ٹائم ٹیبل ہے اس میں ویدیہ (ڈاکٹر) کی صلاح لینی چاہیے ۔

مودی جی - ڈاکٹر ششانک میرے لیے بھی آپ نے جو تجزیہ پیش کیا ، بہت دلچسپ ہے، مجھے کئی خطوط ملے ہیں ، جس میں علاج کے بارے میں بھی لوگوں کو بہت سے شکوک و شبہات ہیں، کچھ دواؤں کی مانگ بہت زیادہ ہے، اسلئے میں چاہتا ہوں کہ کووڈ کے علاج کے بارے میں بھی آپ لوگوں کو ضرور بتائیں ۔

ڈاکٹر ششانک – ہاں سر، کلینکل علاج لوگ بہت تاخیر سے شروع کرتے ہیں اور اپنے آپ بیماری سے دب جائے گی ، اس بھروسے پر رہتے ہیں، اور، موبائل پر آنے والی باتوں پر بھروسہ رکھتے ہیں، اور اگر حکومتی معلومات پر عمل کریں تو یہ دشواری پیش نہیں آتی ہے ۔ تو کووڈ میں کلینکل علاج کا پروٹوکول ہے اس میں تین طرح کی شدت ہے ، ہلکا یا معمولی کووڈ، درمیانہ یا متوسط کووڈ اور تیز کووڈ جسے severe covid بولتے ہیں، اسکے لیے ہے ۔ تو جو ہلکا کووڈ ہے اسکے لیے تو ہم آکسیجن کی نگرانی کرتے ہیں ، نبض کی نگرانی کرتے ہیں، بخار کی نگرانی کرتے ، بخار بڑھ جاتا ہے تو کبھی کبھی پیراسیٹامول (Paracetamol) جیسی دواؤں کا استعمال کرتے ہیں اور اپنے ڈاکٹر سےرجوع کرنا بہت ضروری ہے۔ صحیح اور سستی دوائیں دستیاب ہیں۔ اس میں اسٹرائیوڈ، جو ہے ، جان بچا سکتی ہے، ہم اِن ہیلر دے سکتے ہیں، ہم ٹیبلیٹ دے سکتے ہیں اور اس کے ساتھ ہی آکسیجن ہے وہ دینا پڑتا ہے اور اس کے لیے چھوٹے چھوٹے علاج ہیں ۔ لیکن اکثر کیا ہو رہا ہے کہ ایک نئی تجرباتی دوا ہے ، جس کا نام ہے ریمڈیسیویر۔ اس دوا سے ایک چیز ضرور ہوتی کہ اسپتال میں دو–تین دن کم رہنا پڑتا ہے اورکلینکل صحت یابی میں تھوڑی سی اس سے مدد ملتی ہے ۔ یہ بھی دوا کب کام کرتی ہے، جب، پہلے 9-10 دن میں دی جاتی ہے اور یہ پانچ ہی دن دینی پڑتی ہے، تو یہ لوگ جو دوڑ رہے ہیں ریمڈیسیویر کے پیچھے یہ بالکل دوڑنا نہیں چاہیئے ۔ یہ دواکا تھوڑا کام ہے، جن کو آکسیجن لگتی ہے، زندگی بخشنے والی آکسیجن لگتی ہے، جو اسپتال میں بھرتی ہوتے ہیں اور ڈاکٹر جب بتاتے ہیں تبھی لینا چاہیئے ۔ تو سب لوگوں کو یہ سمجھنا بہت ضروری ہے ۔ ہم پرانایام کریں گے، ہمارےجسم میں جو پھیپھڑے ہیں انہیں تھوڑا کشادہ کریں گے اور جو ہمارے خون کو پتلا کرنے والی انجکشن ہے جس کو ہم ہیپارین (heparin) کہتے ہیں۔ یہ چھوٹی چھوٹی دوائیں دیں گے تو 98 فیصد لوگ صحت یاب ہو جاتے ہیں، اس لیے پازیٹو رہنا بہت ضروری ہے ۔علاج کا پروٹوکول ڈاکٹروں کی صلاح سے لینا بہت ضروری ہے ۔ اور یہ جو مہنگی مہنگی دوائیں ہیں ، اسکے پیچھے دوڑنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے سر، اپنے پاس بہتر علاج ہو رہا ہے ، زندگی بخشنے والی آکسیجن ہے وینٹیلٹر کی بھی سہولت ہے ، سب کچھ ہے سر، اور کبھی کبھی یہ دوائیں اگر مل جاتی ہیں تو اہل لوگوں میں ہی دینی چاہیے ، تو اس کے لیے بھرم پھیلا ہوا ہے اور اس لیے یہ وضاحت دینا چاہتا ہوں سر کہ اپنے پاس دنیا کا سب سے بہترین علاج دستیاب ہے آپ دیکھیں گے کہ ہندوستان میں سب سے اچھی صحت یابی کی شرح ہے ۔ آپ اگر موازنہ کریں گے یورپ کے لیے، امریکہ وہیں سے ہمارے یہاں کے علاج کے پروٹوکول سے مریض ٹھیک ہو رہے ہیں سر ۔

مودی جی - ڈاکٹر ششانک آپ کا بہت بہت شکریہ ۔ ڈاکٹر ششانک نے جو جانکاریاں ہمیں دیں، وہ بہت ضروری ہیں اور ہم سب کے کام آئیں گی۔

ساتھیو، میں آپ سب سے گذارش کرتا ہوں،، آپ کو اگر کوئی بھی جانکاری چاہیئے ہو، کوئی اور ضرورت ہو، تو سہی حوالے سے ہی جانکاری لیں ۔ آپکے جو فیملی ڈاکٹر ہوں ، آس پاس کے جو ڈاکٹرس ہوں، آپ ان سے فون سے رابطہ کرکے صلاح لیجیے ۔ میں دیکھ رہا ہوں کہ ہمارے بہت سے ڈاکٹر خود بھی یہ ذمہ داری اٹھا رہے ہیں ۔ کئی ڈاکٹر سوشل میڈیا کے ذریعہ لوگوں کو جانکاری دے رہے ہیں۔ فون پر، واٹس اپ پرمشورے دے رہے ہیں ۔ کئی ہاسپٹل کی ویب سائٹیں ہیں، جہاں جانکاریاں بھی دستیاب ہیں، اور وہاں آپ ڈاکٹروں سے،صلاح و مشورہ بھی لے سکتے ہیں ۔ یہ بہت قابل تحسین ہے ۔

میرے ساتھ سرینگر سے ڈاکٹر نوید نذیر شاہ جڑ رہے ہیں ۔ ڈاکٹر نوید سرینگر کے ایک گورنمنٹ میڈیکل کالج میں پروفیسر ہیں ۔ نوید جی اپنی نگہداشت میں متعدد کورونا مریضوں کو ٹھیک کر چکے ہیں اور رمضان کے اس مقدس مہینے میں ڈاکٹر نوید اپنی خدمات بھی انجام دے رہے ہیں، اور، انہوں نے ہم سے بات چیت کے لیے وقت بھی نکالا ہے ۔ آئیے انہیں سے بات کرتے ہیں ۔

مودی جی – نوید جی نمسکار ۔

ڈاکٹر نوید – نمسکار سر ۔

ڈاکٹر نوید ‘من کی بات’ کے ہمارے سامعین نے اس مشکل گھڑی میں panic management کا سوال اٹھایا ہے ۔ آپ اپنے تجربہ سے انہیں کیا جواب دیں گے ؟

ڈاکٹر نوید – دیکھیے جب کو رونا شروع ہوا تو کشمیر میں جو سب سے پہلا hospital designate ہوا کووڈ ہاسپٹل کے طور پر تو وہ ہمارا سٹی ہاسپٹل تھا ۔ جو میڈیکل کالج کے ماتحت ہے تو اس وقت ایک خوف کا ماحول تھا ۔ لوگو میں تو تھا ہی وہ سمجھتے تھے شاید کووڈ انفیکشن اگر کسی کو ہو جاتا ہے تو سزائے موت مانا جائے گا یہ ، اور ایسے میں ہمارے ہسپتال میں ڈاکٹر صاحبان یا نیم طبی عملے کام کرتے تھے، ان میں بھی ایک خوف کا ماحول تھا کہ ہم ان مریض کا کیسے سامنا کریں گے ہمیں انفیکشن ہونے کا خطرہ تو نہیں ہے۔ لیکن جو وقت گذرا ہم نے بھی دیکھا کہ اگر پورے طریقے سے ہم جو protective gear پہنے احتیاطی تدابیر جو ہے، ان پر عمل کریں تو ہم بھی محفوظ رہ سکتے ہیں اور ہمارا جو باقی عملہ ہے وہ بھی محفوظ رہ سکتا ہے اور آگے آگے ہم دیکھتے گئے مریض یا کچھ لوگ بیمار تھے جو asymptomaticتھے جن میں بیماری کی کوئی علامت نہیں تھی۔ ہم نے دیکھا تقریبا 90-95 فیصد سے زیادہ جو مریض ہیں وہ بغیر دواؤں کے بھی ٹھیک ہو جاتے ہیں تو وقت جیسے گزرتا گیا لوگوں میں جو کو رونا کا ایک ڈر تھا وہ بہت کم ہو گیا ۔ آج کی بات جو یہ second wave جو اس ٹائم ہماری آئی ہے اس کو رونا میں اس ٹائم بھی ہمیں panic ہونے کی ضرورت نہیں ہے ۔ اس موقع پر جو بھی احتیاطی تدابیر ہیں ، جو SOPs ہے اگر ان پر ہم عمل کریں گے جیسے ماسک پہننا، hand sanitizer کا استعمال کرنا، اسکے علاوہ جسمانی دوری برقرار رکھنا یا سماجی اجتماع سے اجتناب کریں تو ہم اپنے روزمرہ کا کام بھی بخوبی کر سکتے ہیں اور اس بیماری سے محفوظ بھی رہ سکتے ہیں ۔

مودی جی - ڈاکٹر نوید ویکسین کے بارے میں بھی لوگوں کے کئی سوال ہیں، جیسے کہ ویکسین سے کتنی حفاظت ملے گی، ویکسین کے بعد کتنا مطمئن رہ سکتے ہیں ؟ آپ کچھ بات اس کے بارے میں بتائیں سامعین کو بہت فائدہ پہنچے گا ۔

ڈاکٹر نوید – جب کو رونا کا انفیکشن سامنے آیا تب سے آج تک ہمارے پاس کووڈ 19 کے لیے کوئی مؤثر علاج دستیاب نہیں ہے، تو ہم اس بیماری کا مقابلہ دو ہی چیزوں سے کر سکتے ہیں ایک توحفاظتی تدابیر اور ہم پہلے سے ہی کہہ رہے تھے کہ اگر کوئی مؤثر ویکسین ہمارے پاس آئے تو وہ ہمیں اس بیماری سے نجات دلا سکتا ہے اور ہمارے ملک میں دو ویکسین اس وقت دستیاب ہے، Covaxin and Covishield ہے جو یہیں بنی ہوئی ویکسین ہے ۔ اور کمپنیوں نے بھی جو اپنا تجربہ کیا ہے تو اس میں بھی دیکھا گیا ہے کہ اسکی اثر انگیزی 60 فیصد سے زیادہ ہے، اور اگر ہم، جموں کشمیر کی بات کریں تو مرکز کے زیر انتظام ہماری ریاست میں ابھی تک 15 سے 16 لاکھ تک لوگوں نے ابھی یہ ویکسین لگائی ہے ۔ ہاں سوشل میڈیا میں اس کے بارے میں کافی misconception یا myths ہیں، اس کے بارے میں کہا گیا کہ اس کے side effect ہیں، ابھی تک یہاں جو بھی ویکسین لگے ہیں کوئی side effect میں نہیں پایا گیا ہے ۔ صرف، جو، عام vaccine کے ساتھ منسلک ہوتا ہے، کسی کو بخار آنا، پورے بدن میں درد یا جہاں پر انجکشن لگتا ہے وہاں پر درد ہونا ایسے ہی side effects ہم نے ہر مریض میں دیکھے ہیں۔ اس کے علاوہ اور کوئی adverse effect ہم نے نہیں دیکھا ہے ۔ اور ہاں دوسری بات لوگوں میں یہ بھی شکوک و شبہات تھے کہ کچھ لوگ ٹیکہ کاری یعنی ویکسین لینے کے بعد پازیٹو ہو گئے اس میں کمپنیوں سے ہی گائیڈ لائن ہے کہ اس میں اگر کسی کو ٹیکہ لگا ہے ، اسکے بعد اس میں انفیکشن ہو سکتا ہے وہ پازیٹو ہو سکتا ہے ۔ لیکن جو بیماری کی شدت ہے، یعنی بیماری کی شدت جو ہے، ان مریض میں، اتنی نہیں ہوگی یعنی کی وہ پازیٹو ہو سکتے ہیں لیکن جو بیماری ہے وہ ایک جان لیوا بیماری ان میں ثابت نہیں ہو سکتی، اسلئے جو بھی یہ misconception ہیں ویکسین کے بارے میں وہ ہمیں دماغ سے نکال دینا چاہیئے اور جس جس کی باری آئے کیونکہ یکم مئی سے ہمارے پورے ملک میں جو بھی 18 سال سے زیادہ کی عمر کا ہے انکو ویکسین لگانے کا پروگرام شروع ہوگا تو لوگوں سے اپیل یہی کریں گےکہ آپ ویکسین لگوائیں اور اپنے آپ کو بھی محفوظ رکھیں کریں اور مجموعی طور پر ہماری سوسائٹی اور ہماری کمیونٹی اس سے محفوظ رہے گی کووڈ 19 کے انفیکشن سے ۔

مودی جی - ڈاکٹر نوید آپ کا بہت بہت شکریہ ، اور آپ کو رمضان کے مقدس مہینے کی بہت بہت مبارکباد ۔

ڈاکٹر نوید – بہت بہت شکریہ۔

مودی جی : ساتھیو، کو رونا کے اس بحران میں ویکسین کی اہمیت سبھی کو پتہ چل رہی ہے، اسلئے، میری گذارش ہے کہ ویکسین کے بارے میں کسی افواہ پر دھیان نہ دیں ۔ آپ سبھی کو معلوم بھی ہوگا کہ حکومت ہند کی طرف سے تمام ریاستی حکومتوں کو مفت ویکسین بھیجی گئی ہے جس کافائدہ 45 سال کی عمر سے زیادہ کے لوگ اٹھا سکتے ہیں ۔ اب تو یکم مئی سے ملک میں 18 سال سے زیادہ کی عمر کے ہر فرد کے لیے ویکسین دستیاب ہونے والی ہے ۔ اب ملک کا کارپوریٹ سیکٹر, کمپنیاں بھی اپنے کرمچاریوں کو ویکسین لگانے کی مہم شرکت کر پائیں گی۔ مجھے یہ بھی کہنا ہے کہ حکومت ہند کی طرف سے مفت ویکسین کا جوپروگرام ابھی چل رہا ہے، وہ، آگے بھی چلتا رہیگا ۔ میری ریاستوں سے بھی گذارش ہے، کہ، وہ حکومت ہند کی اس مفت ویکسین مہم کا فائدہ اپنی ریاست کے زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچایں ۔

ساتھیو، ہم سب جانتے ہیں کہ بیماری میں ہمارے لیے اپنی، اپنے خاندان کی دیکھ بھال کرنا، ذہنی طور پر کتنا مشکل ہوتا ہے، لیکن، ہمارے اسپتالوں کے نرسنگ اسٹاف کو تو، یہی کام، لگاتار، کتنے ہی مریضوں کے لیے ایک ساتھ کرنا ہوتا ہے۔ یہ خدمت کا جذبہ ہمارے سماج کی بہت بڑی طاقت ہے ۔نرسنگ اسٹاف کے ذریعہ کی جا رہی خدمات اور جانفشانی کے بارے میں، سب سے اچھا تو کوئی نرس ہی بتا سکتی ہے ۔ اسلئے میں نے رائے پور کے ڈاکٹر بی آر امبیڈکر میڈیکل کالج ہاسپٹل میں اپنی خدمات سر انجام دے رہیں sister بھاونا دھرو جی کو ‘من کی بات’ میں مدعو کیا ہے، وہ،متعدد کو رونا مریضوں کی دیکھ بھال کر رہی ہیں ۔ آئیے ! ان ہی سے بات کرتے ہیں –

مودی جی:- نمسکار بھاونا جی !

بھاونا:- معزز وزیر اعظم صاحب ، نمسکار !

مودی جی:- بھاونا جی۔۔۔

بھاونا:- یس سر

مودی جی:- ‘من کی بات’ سننے والوں کو آپ ضرور یہ بتائیےکہ آپکے کنبے میں اتنی ساری ذمہ داریاں یعنی multitask اور اسکے بعد بھی آپ کو رونا کے مریضوں کے ساتھ کام کر رہی ہیں ۔ کو رونا کے مریضوں کے ساتھ آپ کا جو تجربہ رہا، وہ ضرور ہم وطن سننا چاہیں گے کیونکہ sister جو ہوتی ہے، نرسیں جو ہوتی ہیں، مریض کے سب سے قریب ہوتی ہیں اور سب سے طویل وقت تک ہوتی ہیں تو وہ ہر چیز کو بڑی باریکی سے سمجھ سکتی ہیں جی بتائیے ۔

بھاونا:- جی سر، میرا total experience کووڈ میں سر، دو مہینے کا ہے سر ۔ ہم 14 دنوں کی ڈیوٹی کرتے ہیں اور 14 دنوں کے بعد ہمیں rest دیا جاتا ہے ۔ پھر 2 مہینے بعد ہماری یہ کووڈ کی ڈیوٹی دوبارہ ہوتی ہے سر ۔ جب سب سے پہلے میری کووڈ کی ڈیوٹی لگی تو سب سے پہلے میں اپنےفیملی کے لوگوں کو کووڈ ڈیوٹی کی بات شیئر کی ۔ یہ مئی کی بات ہے اور میں، یہ، جیسے ہی میں نے شیئر کیا سب کے سب ڈر گئے، گھبرا گئے مجھ سے، کہنے لگے کہ بیٹا ٹھیک سے کام کرنا، ایک جذباتی صورتحال تھی سر ۔ درمیان میں جب، میری بیٹی مجھ سے پوچھی، ممی آپ کووڈ ڈیوٹی پر جا رہی ہیں تو اس وقت بہت ہی زیادہ میرے لیے جذباتی لمحہ تھا، لیکن، جب میں کووڈ کے مریض کے پاس گئی تو میں ایک ذمہ داری گھر میں چھوڑ کر گئی اور جب میں کووڈ کے مریض سے ملی سر، تو وہ ان سے اور زیادہ گھبرایے ہوئے تھے، کووڈ کے نام سے سارے مریض اتنا ڈرے ہوئے تھے سر، کہ، انکو سمجھ میں ہی نہیں آ رہا تھا کہ انکے ساتھ کیا ہو رہا ہے، ہم آگے کیا کریں گے ۔ ہم انکے ڈر کو دور کرنے کے لیے ان کو بہت اچھے سے دوستانہ ماحول دیا ، سر ، انہیں ۔ ہمیں جب یہ کووڈ ڈیوٹی کرنے کو کہا گیا تو سر سب سے پہلے ہم کو پی پی ای کٹ پہننے کے لیے کہا گیا سر، جو کہ بہت ہی مشکل ہے، پی پی ای کٹ پہن کر ڈیوٹی کرنا ۔ سر یہ بہت ہی مشکل تھا ہمارے لیے، میں نے دو مہینے کی ڈیوٹی میں ہر جگہ 14-14 دن ڈیوٹی کی وارڈ میں، آئی سی یو میں، آئسولیشن میں سر ۔

مودی:- یعنی کل ملا کر تو آپ ایک سال سے اسی کام کو کر رہی ہیں ۔

بھاونا: یس سر، وہاں جانے سے پہلے مجھے نہیں پتہ تھا کہ میرے colleagues کون ہے ۔ ہم نے ایک ٹیم ممبر کی طرح کام کیا سر، ان کی جو بھی مشکلیں تھیں ، انکو شیئر کیا ، ہم نے مریض کے بارے میں معلومات حاصل کیں اور انکا stigma دور کیاسر، کئی لوگ ایسے تھے سر جو کووڈ کے نام سے ہی ڈرتے تھے ۔ وہ ساری علامتیں ان میں تھیں جب ہم history لیتے تھے ان سے، لیکن وہ ڈر کے باعث اپنا ٹیسٹ نہیں کروا پاتے تھے، تو ہم انکو سمجھاتے تھے، اور سر، جب شدت بڑھ جاتی تھی تب ان کا پھیپھڑا متاثر ہو چکا ہوتا تھا تب انکو آئی سی یو کی ضرورت ہوتی تھی تب وہ آتے تھے اور ساتھ میں انکی پوری فیملی آتی تھی ۔ تو ایسا 1-2 معاملہ ہم نے دیکھا سر اور ایسا بھی نہیں کہ ہر ایک age group کے ساتھ کام کیا سر ہم نے ۔جس میں چھوٹے بچے تھے، خواتین، مرد ، بزرگ، ہر طرح کے مریض تھے سر ۔ ان سب سے ہم نے بات کی تو سب نے کہا کہ ہم ڈر کی وجہ سے نہیں آ پاے، سب کا یہی جواب ہمیں ملا سر ۔ تو ہم انکو سمجھائے سر، کہ، ڈر کچھ نہیں ہوتا ہے آپ ہمارا ساتھ دیجیے ہم آپ کا ساتھ دینگے بس آپ جو بھی پروٹول ہے اس پر عمل کیجیے بس ہم اتنا ان سے کر پاے سر ۔

مودی جی:- بھاونا جی، مجھے بہت اچھا لگا آپ سے بات کرکے، آپ نے کافی اچھی جانکاریاں دی ہیں ۔ اپنے خود کے تجربے پیش کئے ہیں ، تو ضرور ہم وطنوں میں اس سے ایک اثباتیت کا پیغام پہنچے گا ۔ آپ کا بہت بہت شکریہ بھاونا جی!

بھاونا:- Thank you so much sir... Thank you so much... جے ہند سر ۔


مودی جی:- جے ہند

بھاونا جی اور Nursing Staff کے آپ جیسے ہزاروں لاکھوں بھائی بہن بخوبی اپنا فریضہ انجام دے رہے ہیں ۔ یہ ہم سبھی کے لیے بہت بڑی ترغیب ہے ۔ آپ اپنی صحت پر بھی خوب دھیان دیجیے ۔ اپنے پریوار کا بھی دھیان رکھیے ۔

ساتھیو، ہمارے ساتھ، اس وقت مینگلورو سے Sister سریکھا جی بھی جڑی ہوئی ہیں ۔ سریکھا جی K.C. General Hospital میں Senior Nursing Officer ہیں ۔ آئیے ! انکے تجربات بھی جانتے ہیں –


مودی جی:- نمستے سریکھا جی !

सुरेखा:- I am really proud and honoured sir to speak to Prime Minister of our country.

 

Modi ji:-Surekha ji, you along with all fellow nurses and hospital staff are doing excellent work. India is thankful to you all. What is your message for the citizens in this fight against COVID-19.

 

Surekha:- Yes sir... Being a responsible citizen I would really like to tell something like please be humble to your neighbors and early testing and proper tracking help us to reduce the mortality rate and moreover please if you find any symptoms isolate yourself and consult nearby doctors and get treated as early as possible. So, community need to know awareness about this disease and be positive, don’t be panic and don’t be stressed out. It worsens the condition of the patient. We are thankful to our Government proud to have a vaccine also and I am already vaccinated with my own experience I wanted to tell the citizens of India, no vaccine provides 100% protection immediately. It takes time to build immunity. Please don’t be scared to get vaccinated. Please vaccinate yourself; there is a minimal side effects and I want to deliver the message like, stay at home, stay healthy, avoid contact with the people who are sick and avoid touching the nose, eyes and mouth unnecessarily. Please practice physically distancing, wear mask properly, wash your hands regularly and home remedies you can practice in the house. Please drink Ayurvedic Kadha (आयुर्वेदिक काढ़ा), take steam inhalation and mouth gargling everyday and breathing exercise also you can do it. And one more thing last and not the least please have a sympathy towards frontline workers and professionals. We need your support and co-operation. We will fight together. We will get through with the pandemic. This is what my message to the people sir.

Modi ji:- Thank you Surekha ji.


Surekha:- Thank you sir.


سریکھا جی، واقعی، آپ بہت مشکل گھڑی میں مورچہ سنبھالے ہوئے ہیں ۔ آپ اپنا دھیان رکھیے ! آپکے پریوار کو بھی میری بہت بہت نیک خواہشات ہیں ۔ میں، ملک کے لوگوں سے بھی اپیل کرونگا کہ جیسے بھاونا جی، سریکھا جی نے، اپنے تجربات کا اظہار کیا ہے ۔ کو رونا سے لڑنے کے لیے مثبت جذبہ بہت زیادہ ضرری ہے اور ہم وطنوں کو اسے بنائے رکھنا ہے ۔

ساتھیو، ڈاکٹروں اور نرسنگ اسٹاف کے ساتھ ساتھ اس وقت Lab-Technicians اور Ambulance Drivers جیسے Frontline Workers بھی بھگوان کی طرح ہی کام کر رہے ہیں ۔ جب کوئی Ambulance کسی مریض تک پہنچتی ہے تو انہیں Ambulance Driver دیودوت جیسا ہی لگتا ہے ۔ ان سب کی خدمات کے بارے میں، انکےاحساسات کے بارے میں، ملک کو ضرور جاننا چاہیئے ۔ میرے ساتھ ابھی ایسے ہی ایک شخص ہیں – شریمان پریم ورما جی، جو کہ ایک Ambulance Driver ہیں، جیسا کہ انکے نام سے ہی پتہ چلتا ہے ۔ پریم ورما جی اپنے کام کو، اپنے فرض کو، پورے پریم اور لگن سے کرتے ہیں ۔ آئیے ! ان سے بات کرتے ہیں –

مودی جی – نمستے پریم جی ۔

پریم جی – نمستے سر جی ۔

مودی جی – بھائی ! پریم ۔

پریم جی – ہاں جی سر ۔

مودی جی – آپ اپنے کام کے بارے میں ۔

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – ذرا تفصیل سے بتائیے ۔ آپ کا جو تجربہ ہے، وہ بھی بتائیے ۔

پریم جی – میں CATS Ambulance میں driver کی post پر ہوں، اور جیسے ہی Control ہمیں ایک tab پر call دیتا ہے ۔ 102 سے جو call آتی ہے ہم move کرتے ہیں patient کے پاس ۔ ہم patient کی طرف جاتے ہیں، انکے پاس، تو دو سال سے ہم مسلسل کر رہے ہیں یہ کام ۔ اپنا کٹ پہن کر، اپنےماسک، دستانہ پہن کرمریض کو، جہاں وہ drop کرنے کے لیے کہتے ہیں، جو بھی ہاسپیٹل میں، ہم جلدی سے جلدی انکو drop کرتے ہیں ۔

مودی جی – آپ کو تو ویکسین کی دونوں dose لگ گئی ہوں گی ۔

پریم جی – بالکل سر ۔

مودی جی – تو دوسرے لوگوں کو ویکسین vaccine لگوائیں ۔ اسکے لیے آپ کا کیا پیغام ہے ؟

پریم جی – سر بالکل ۔ سبھی کو یہ dose لگوانا چاہیئے اور اچھی ہی ہے family کے لیے بھی ۔ اب مجھے میری ممی کہتی ہیں یہ نوکری چھوڑ دو ۔ میں نے بولا، ممی، اگر میں بھی نوکری چھوڑ کر بیٹھ جاؤنگا تو سب اور patient کو کیسے کون چھوڑنے جائیگا ؟ کیونکہ سب اس کورونا کال میں سب بھاگ رہے ہیں ۔ سب نوکری چھوڑ چھوڑ کر جا رہے ہیں ۔ ممی بھی مجھے بولتی ہیں کہ بیٹا وہ نوکری چھوڑ دے ۔ میں نے بولا نہیں ممی میں نوکری نہیں چھوڑوں گا ۔

مودی جی – پریم جی ماں کو دکھی مت کرنا ۔ ماں کو سمجھانا ۔

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – لیکن یہ جو آپ نے ماں والی بات بتائی نا

پریم جی – ہاں جی ۔

مودی جی – یہ بہت ہی چھونے والی ہے ۔

پریم جی – ہاں جی ۔

مودی جی – آپکی ماتا جی کو بھی ۔

پریم جی – ہاں جی ۔

مودی جی – میرا پرنام کہئے گا ۔

پریم جی – بالکل

مودی جی – ہاں

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – اور پریم جی میں آپ کے ذریعہ

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – یہ ambulance چلانے والے ہمارے driver بھی

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – کتنا بڑا risk لے کر کام کر رہے ہیں ۔

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – اور ہر ایک کی ماں کیا سوچتی ہے ؟

پریم جی – بالکل سر

مودی جی – یہ بات جب سامعین تک پہنچے گی

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – میں ضرور مانتا ہوں، کہ ان کے بھی دل کو چھو جائیگی ۔

پریم جی – ہاں جی

مودی جی – پریم جی بہت بہت شکریہ ۔ آپ ایک طرح سے پریم کی گنگا بہا رہے ہیں ۔

پریم جی – شکریہ سر جی

مودی جی – شکریہ بھیا

پریم جی – شکریہ ۔

ساتھیو، پریم ورما جی اور ان جیسے ہزاروں لوگ، آج اپنی زندگی داو پر لگاکر، لوگوں کی خدمت کر رہے ہیں ۔ کو رونا کے خلاف اس لڑائی میں جتنی بھی زندگی بچ رہی ہے اس میں Ambulance Drivers کا بھی بہت بڑی خدمت ہے ۔ پریم جی آپ کو اور ملک بھر میں آپ کے سبھی ساتھیوں کو میں بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں، ۔ آپ وقت پر پہنچتے رہیے، زندگی بچاتے رہیے ۔

میرے پیارے ہم وطنو، یہ صحیح ہے کہ، کو رونا سے بہت لوگ متاثر ہو رہے ہیں، لیکن، کو رونا سے ٹھیک ہونے والے لوگوں کی تعداد بھی اتنی ہی زیادہ ہے ۔ گروگرام کی پریتی چترویدی جی نے بھی حال ہی میں کو رونا کو ہرایا ہے۔ پریتی جی ‘من کی بات’ میں ہمارے ساتھ جڑ رہی ہیں۔ انکے تجربات ہم سب کےلیے بہت کام آئیں گی ۔

مودی جی – پریتی جی نمستے

پریتی – نمستے سر ۔ کیسے ہیں آپ ؟

مودی جی – میں ٹھیک ہوں، جی ۔ سب سے پہلے تو میں آپ کی کووڈ 19 سے

پریتی – جی

مودی جی – کامیابی کے ساتھ لڑنے کے لیے

پریتی – جی

مودی جی – ستائش کروں گا

پریتی – Thank you so much sir

مودی جی – میری تمنا ہے آپ کی صحت اور تیزی سے بہتر ہو ۔

پریتی – جی شکریہ سر

مودی جی – پریتی جی

پریتی –ہاں جی سر

مودی جی –پوری لہر میں صرف آپ ہی کا نمبر لگا ہے کہ خاندان دیگر لوگ بھی اس میں پھنس گئے ہیں ۔

پریتی – نہیں نہیں سر میں اکیلی ہی ہوئی تھی ۔

مودی جی – چلیے بھگوان کی کرپا رہی ۔ اچھا میں چاہونگا

پریتی – ہاں جی سر ۔

مودی جی –آپ اپنی اس تکلیف کی صورتحال کے کچھ تجربات اگر شیئر کریں تو شاید جو سامعین ہیں انکو بھی ایسے وقت میں کیسے اپنے آپ کو سنبھالنا چاہیئے اس کی رہنمائی ملے گی ۔

پریتی – جی سر، ضرور ۔ سر initially stage میں میرے کو بہت زیادہ lethargy, مطلب بہت سستی سستی آئی اور اسکے بعد نا میرے گلے میں تھوڑی سی خراش ہونے لگی ۔ تو اسکے بعد تھوڑا سا مجھے لگا کہ یہ علامت ہے تو میں نے جانچ کے لیے ٹیسٹ کرایا ۔ دوسرے دن report آتے ہی جیسے ہی مجھے positive ہوا، میں نے اپنے آپ کو quarantine کر لیا ۔ ایک Room میں isolate کرکےdoctors سے رابطہ کیا میں نے سے ۔ انکی medication start کر دی ۔

مودی جی – تو آپ کا پریوار بچ گیا آپکےفوری اقدام کی وجہ سے ۔

پریتی – جی سر ۔ وہ باقی سب کا بھی بعد میں کرایا تھا ۔ باقی سب negative تھے ۔ میں ہی positive تھی ۔ اس سے پہلے میں نے اپنے آپ کو isolate کر لیا تھا ایک room کے اندر ۔ اپنی ضرورت کا سارا سامان رکھ کر اسکو میں اپنے آپ اندر کمرے میں بند ہو گئی تھی ۔ اور اسکے ساتھ ساتھ میں نے پھر ڈاکٹر کے ساتھ medication start کر دی ۔ سر میں نے medication کے ساتھ ساتھ ، یوگا، آیورویدک، اور، میں یہ سب start کیا اور ساتھ میں ، میں نے، کاڑھا بھی لینا شروع کر دیا تھا ۔ قوت مدافعت بہتر کرنے کے لیے اور سر میں دن میں مطلب جب بھی کھانا کھاتی تھی ، اس میں میں نے healthy food جو کہ protein rich diet تھی، وہ لیا میں نے ۔ میں نے بہت سارا fluid لیا میں نے steam لیا gargle کیا اور hot water لیا ۔ میں نے دن بھر میں ان سب چیزوں کو ہی اپنی زندگی میں لیتی آئی روزانہ ۔ اور سر ان دنوں میں نا، سب سے بڑی بات میں بولنا چاہونگی گھبرانا تو بالکل نہیں ہے ۔ ذہنی طور پر بہت مضبوط رہنا ہے جسکے لیے مجھے یوگا نے بہت زیادہ، breathing exercise کرتی تھی اچھا لگتا تھا اسکو کرنے سے مجھے ۔

مودی جی – ہاں ۔ اچھا پریتی جی جب آپ کا process پورا ہو گیا ۔ آپ بحران سے باہر نکل آئیں ۔

پریتی – ہاں جی

مودی جی – اب آپ کا test بھی negative آ گیا ہے ۔

پریتی – ہاں جی سر

مودی جی – تو پھر آپ اپنی صحت کے لیے اسکی دیکھ بھال کے لیے ابھی کیا کر رہی ہیں ؟

پریتی – سر میں نے ایک تو یوگابند نہیں کیا ہے ۔

مودی جی – ہاں

پریتی – ٹھیک ہے میں نے کاڑھا ابھی بھی لے رہی ہوں، اور اپنی قوت مدافعت برقرار رکھنے کے لیے میں اچھا healthy food کھا رہی ہوں، ابھی ۔

مودی جی – ہاں

پریتی – جو کہ میں بہت اپنے آپ کونظر انداز کرتی تھی اس پر بہت دھیان دے رہی ہوں، میں ۔

مودی جی – شکریہ پریتی جی ۔

پریتی – Thank you so much sir.

مودی جی – آپ نے جو جانکاری دی مجھے لگتا ہے یہ بہت سارے لوگوں کے کام آئے گی ۔ آپ صحت مند رہیں، آپ کنبے کے لوگ صحت مند رہیں، میری جانب سے آپ کو بہت بہت نیک خواہشات ۔

میرے پیارے ہم وطنو، جیسے آج ہمارے طبی شعبہ کے لوگ، صف اول کے کارکنان دن رات خدمت گزاری میں مصروف ہیں۔ ویسے ہی سماج کے دیگر لوگ بھی، اس وقت پیچھے نہیں ہیں ۔ ملک ایک بار پھرمتحد ہوکر کو رونا کے خلاف لڑائی لڑ رہا ہے ۔ ان دنوں میں دیکھ رہا ہوں، کوئی قرنطینہ میں رہ رہے کنبوں کے لیے دوا پہنچا رہا ہے، کوئی، سبزیاں ، دودھ، پھل وغیرہ پہنچا رہا ہے۔ کوئی ایمبولینس کی مفت خدمات مریضوں کو دے رہا ہے ۔ ملک کے الگ الگ گوشے میں اس چیلنج سے بھرپور گھڑی میں بھی اپنی مدد آپ تنظیمیں آگے آکر دوسروں کی مدد کے لیے جو بھی کر سکتے ہیں وہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ اس بار، گاؤوں میں بھی نئی بیداری دیکھی جا رہی ہے ۔ کووڈ ضابطوں پر سختی سے عمل کرتے ہوئے لوگ اپنے گاؤں کی کو رونا سے حفاظت کر رہے ہیں، جو لوگ، باہر سے آ رہے ہیں انکے لیے صحیح انتظامات بھی کی جا رہی ہیں ۔ شہروں میں بھی کئی نوجوان سامنے آئے ہیں، جو اپنے علاقوں میں، کو رونا کے معاملے نہ بڑھیں ، اسکے لیے، مقامی لوگوں کے ساتھ مل کر کوشش کر رہے ہیں، یعنی ایک طرف ملک ، دن رات اسپتالوں، Ventilators اور دوائیوں کے لیے کام کر رہا ہے، تو دوسری جانب ، ہم وطن بھی، جی جان سے کو رونا کے چیلنجوں کا مقابلہ کر رہے ہیں ۔ یہ جذبہ ہمیں کتنی طاقت دیتا ہے، کتنا اعتماد پیدا کرتا ہے ۔ یہ جو بھی کوشش ہو رہی ہے ، سماج کی بہت بڑی خدمت ہے ۔ یہ سماج کی طاقت شکتی بڑھاتی ہیں ۔

میرے پیارے ہم وطنو، آج ‘من کی بات’ کی پوری بات چیت کو ہم نے کو رونا وبا کے لیے ہی مخصوص رکھا، کیونکہ، آج، ہماری سب سے بڑی ترجیح ہے، اس بیماری کو ہرانا ۔ آج بھگوان مہاویر جینتی بھی ہے ۔ اس موقع پر میں سبھی ہم وطنوں کونیک خواہشات پیش کرتا ہوں، ۔ بھگوان مہاویر کے پیغام ، ہمیں، حوصلہ اور خود اعتمادی کی ترغیب دیتے ہیں ۔ ابھی رمضان کا مقدس مہینہ بھی چل رہا ہے ۔ آگے بدھ پورنما بھی ہے ۔ گرو تیغ بہادر جی کا 400واں پرکاش پرو بھی ہے ۔ ایک اہم دن پوچشے بوئی شاک - ٹیگور جینتی کا ہے ۔ یہ سبھی ہمیں ترغیب دیتے ہیں اپنے فرائض کی انجام دہی کی ۔ ایک شہری کے طور پر ہم اپنی زندگی میں جتنی مہارت سے اپنے فرائض انجام دیں گے ، بحران سے نکل کر مستقبل کے راستے پر اتنی ہی تیزی سے آگے بڑھیں گے ۔ اسی تمنا کے ساتھ میں آپ سبھی سے ایک بار پھر اپیل کرتا ہوں، کہ ویکسین ہم سب کو لگوانا ہے اور پوری احتیاط بھی برتنی ہے ۔ ‘دوائی بھی - کڑائی بھی’ ۔ اس منتر کو کبھی بھی نہیں بھولنا ہے ۔ ہم جلد ہی ساتھ مل کر اس آفت سے باہر آئیں گے ۔ اسی امید کے ساتھ آپ سبھی کا بہت بہت شکریہ ۔ نمسکار ۔