ہمارے سیارے کے لیے درست فیصلے کرنے والے افراد سیارے کے لیے ہماری جنگ میں کلیدی حیثیت رکھتے ہیں۔ یہ مشن لائف کا بنیادی حصہ ہے
ماحولیاتی تبدیلیوں کا مقابلہ صرف کانفرنس کی میزوں سے نہیں کیا جا سکتا۔ اس کا مقابلہ ہر گھر میں کھانے کی میزوں سے کرنا پڑتا ہے
مشن لائف موسمیاتی تبدیلی کے خلاف جنگ کو جمہوری بنانا ہے
ہندوستان کے لوگوں نے پچھلے چند سالوں میں عوامی تحریکوں اور رویے میں تبدیلی کے معاملے میں بہت کچھ کیا ہے
طرز عمل سے متعلق اقدامات کے لیے مالی اعانت کے مناسب طریقوں پر بھی کام کرنے کی ضرورت ہے۔ مشن لائف جیسے طرز عمل سے متعلق اقدامات کے لیے ورلڈ بینک کی طرف سے حمایت کا ایک بہت بڑا اثر ہوگا

عالمی بینک کی صدر، مراکش کی توانائی کی منتقلی اور پائیدار ترقی کی وزیر، میری کابینہ کی ساتھی نرملا سیتارمن جی، لارڈ نکولس اسٹرن، پروفیسر سنسٹین، اور دیگر معزز مہمانان

نمسکار!

مجھے خوشی ہے کہ عالمی بینک موسمیاتی تبدیلی پر رویے کی تبدیلی کے اثرات پر اس تقریب کا اہتمام کر رہا ہے۔ یہ میرے دل کے قریب کا موضوع ہے، اور اسے ایک  عالمی تحریک کی صورت  اختیار کرتا ہوا دیکھ کر بہت اچھا  لگتا ہے۔

دوستو

ایک عظیم ہندوستانی فلسفی چانکیہ نے دو ہزار سال پہلے یہ لکھا تھا: جل بندو نیپاتین کرمشہ : پیوتی گھٹہ : سہ ہیتو: سرو ودھیاناں دھرمسیہ چہ دھنسیہ چہ|| پانی کے چھوٹےچھوٹے قطرے، جب آپس میں ملتے ہیں  تو گھڑے کو بھر دیتے ہیں ۔ اسی طرح علم، نیک عمل یا دولت میں  رفتہ رفتہ اضافہ ہوتا ہے۔  اس میں ہمارے لیے ایک پیغام ہے۔ بذات خود، پانی کا ہر قطرہ زیادہ نہیں لگ سکتا ہے تاہم جب یہ اس طرح کے بہت سے دوسرے قطروں کے ساتھ ملتا ہے تو اس کا اثر پڑتا ہے۔ بذات خود، کرہ ارض کے لیے ہر نیک عمل معمولی معلوم ہو سکتا ہے۔ لیکن جب دنیا بھر میں اربوں لوگ مل کر ایسا کرتے ہیں تو اس کا اثر بہت زیادہ ہوتا ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ ہمارے سیارے کے لیے صحیح فیصلے کرنے والے افراد ہمارے سیارے کی جنگ میں کلیدی حیثیت رکھتے ہیں۔ یہ 'مشن لائف '  کا بنیادی جزو  ہے۔

دوستو

اس تحریک کے بیج بہت پہلے بوئے گئے تھے۔ 2015 میں، اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں، میں نے رویے میں تبدیلی کی ضرورت کے بارے میں بات کی تھی۔ تب سے، ہم ایک طویل سفر طے کر چکے ہیں۔ اکتوبر 2022 میں، اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور میں نے مشن لائف کا آغاز کیا تھا۔  سی او پی-27 کے نتائج کی دستاویز کی تمہید بھی پائیدار طرز زندگی اور استعمال کے بارے میں بات کرتی ہے۔ اور یہ دیکھنا حیرت انگیز ہے کہ موسمیاتی تبدیلی کے شعبے کے ماہرین نے بھی اس منتر کو اپنایا ہے۔

دوستو

دنیا بھر کے لوگ موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں بہت کچھ سنتے ہیں۔ ان میں سے بہت سے لوگ بہت زیادہ پریشانی محسوس کرتے ہیں کیونکہ وہ نہیں جانتے کہ وہ اس کے بارے میں کیا کر سکتے ہیں۔ انہیں مسلسل یہ احساس دلایا جاتا ہے کہ صرف حکومتوں یا عالمی اداروں کا  ہی کردار ہے۔ اگر وہ جان لیں کہ وہ بھی اپنی خدمات بھی پیش کر سکتے ہیں تو ان کی پریشانی عمل میں بدل جائے گی۔

دوستو

ماحولیاتی تبدیلیوں کا مقابلہ صرف کانفرنس کی میزوں سے نہیں کیا جا سکتا۔ اس کا مقابلہ ہر گھر میں کھانے کی میزوں سے کرنا پڑے گا ۔ جب کوئی آئیڈیا ڈسکشن ٹیبل سے ڈنر ٹیبل پر منتقل ہوتا ہے تو یہ ایک عوامی تحریک بن جاتا ہے۔ ہر خاندان اور ہر فرد کو اس بات سے آگاہ کرانا کہ ان کے انتخاب سے کرہ ارض کو پیمانہ اور رفتار فراہم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ 'مشن لائف' موسمیاتی تبدیلی کے خلاف جنگ کو جمہوری بنانے کے بارے میں ہے۔ جب لوگوں کو یہ احساس ہو جائے گا کہ ان کی روزمرہ کی زندگی میں سادہ اعمال طاقتور ہیں، تو ماحول پر بہت مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔

دوستو

عوامی تحریکوں اور رویے کی تبدیلی کے معاملے میں، ہندوستان کے لوگوں نے پچھلے کچھ سالوں میں بہت کچھ کیا ہے۔ لوگوں کی کوششوں سے ہندوستان کے کئی حصوں میں جنسی تناسب میں بہتری آئی۔ یہ وہ  لوگ تھے جنہوں نے بڑے پیمانے پر صفائی مہم کی قیادت کی۔ دریا ہوں، ساحل ہوں یا سڑکیں، وہ عوامی مقامات کو کوڑے سے پاک کرنے کو یقینی بنا رہے ہیں۔ اور، یہ لوگ تھے جنہوں نے ایل ای ڈی بلب میں تبدیلی کو کامیاب بنایا۔ ہندوستان  میں تقریباً 370 ملین ایل ای ڈی بلب فروخت ہو چکے ہیں۔ اس سے ہر سال تقریباً 39 ملین ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج سے بچنے میں مدد ملتی ہے۔ ہندوستان کے کسانوں نے مائیکرو آبپاشی کے ذریعہ تقریباً سات لاکھ ہیکٹر کھیتی کی زمین کے احاطے  کو یقینی بنایا۔ فی قطرہ  زیادہ فصل ' یعنی 'پرڈراپ مور کراپ'  کے منتر کو پورا کرتے ہوئے، اس سے پانی کی بہت زیادہ بچت ہوئی ہے۔ ایسی اور بھی بہت سی مثالیں ہیں۔

دوستو

مشن لائف کے تحت، ہماری کوششیں کئی شعبوں میں پھیلی ہوئی ہیں جیسے: مقامی اداروں کو ماحول دوست بنانا، · پانی کی بچت، · توانائی کی بچت، · فضلہ اور ای ویسٹ کو کم کرنا، · صحت مند طرز زندگی کو اپنانا، · قدرتی کاشتکاری کو اپنانا، · موٹے اناج  کا فروغ

ان کوششوں میں حسب ذیل شامل ہیں:

  • بائیس بلین یونٹ توانائی کی بچت،
  • نو ٹریلین لیٹر پانی کی بچت ،
  • کچرے میں تین سو پچھتر ملین ٹن کمی
  • تقریباً ایک ملین ٹن ای ویسٹ کی  ری سائیکلنگ ، اور 2030 تک تقریباً ایک سو ستر ملین ڈالر کی اضافی لاگت کی بچت ۔

علاوہ ازیں اس سے ہمیں پندرہ ارب ٹن خوراک کے ضیاع کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔ یہ کتنا بڑا ہے یہ جاننے کے لیے میں آپ کو ایک موازنہ دیتا ہوں۔ فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن (ایف اے او)  کے مطابق 2020 میں عالمی بنیادی فصل کی پیداوار تقریباً نو بلین ٹن تھی!

دوستو

دنیا بھر کے ممالک کی حوصلہ افزائی میں عالمی اداروں کا اہم کردار ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ عالمی بینک گروپ کل فنانسنگ کے حصہ کے طور پر موسمیاتی  فنانس کو 26فیصد سے بڑھا کر 35فیصد کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس موسمیاتی فنانس کی توجہ عام طور پر روایتی پہلوؤں پر ہوتی ہے۔ طرز عمل سے متعلق اقدامات کے لیے بھی مالی اعانت کے مناسب طریقوں پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ 'مشن لائف 'جیسے طرز عمل سے متعلق اقدامات کے لیے  عالمی بینک کی حمایت سے اس پر کئی گنا اثر پڑے گا۔

دوستو

میں اس تقریب کی میزبانی کرنے والی عالمی بینک کی ٹیم کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ اور میں امید کرتا ہوں کہ یہ میٹنگیں افراد کو رویے کی تبدیلی کی طرف راغب کرنے کے لیے حل پیش کریں گی۔

 شکریہ!  بہت بہت شکریہ!!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India's pharma exports rise 10% to USD 27.9 bn in FY24

Media Coverage

India's pharma exports rise 10% to USD 27.9 bn in FY24
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Morena extends a grand welcome to PM Modi as he speaks at a Vijay Sankalp rally in MP
April 25, 2024
Nothing is greater than the country for BJP. But for Congress, it is family first: PM Modi in Morena
Congress did not allow the demands of army personnel like One Rank-One Pension to be fulfilled. We implemented OROP as soon as the govt was formed: PM
If Congress comes to power, it will snatch more than half of your earnings through inheritance tax: PM Modi
Congress is indulging in different games to get the chair anyhow by playing with the future of people: PM Modi in Morena

The momentum in Lok Sabha election campaigning escalates as the NDA's leading campaigner, Prime Minister Narendra Modi, ramps up his efforts ahead of the second phase. Today, PM Modi addressed an enthusiastic crowd in Madhya Pradesh’s Morena. He declared that the people of Madhya Pradesh know that once they get entangled in a problem, it's best to keep their distance from it. “The Congress party represents such an obstacle to development. During that time, Congress had pushed MP to the back of the line among the nation's BIMARU states,” the PM said.

Slamming the Congress for keeping those who contribute the most to the nation at the back, PM Modi asserted, “For the BJP, there is nothing bigger than the nation, while for the Congress, their own family is everything. Hence, the Congress government for so many years did not fulfill demands like One Rank One Pension (OROP) for soldiers. As soon as we formed the government, we implemented OROP. We also addressed the concerns of soldiers standing at the border and we have asked our jawans to fire ten bullets in reply to one.”

Training guns at Congress Party, PM Modi said, “As you all know, during the time of independence, the Congress accepted the division of the country in the name of religion to gain power. Today, once again, the Congress is scrambling for power. These people are once again using religious appeasement as a political tool. But Modi is standing as a wall between you and Congress' plans to loot you.”

Furthermore, he said, “The Congress has been conspiring to deprive Dalits, backward classes, and tribals of their rights for a long time. In Karnataka, the Congress government has essentially declared the entire Muslim community as OBCs. This means that the Congress has begun to give reservation to the Muslim community in education and government jobs by taking it away from the OBCs. The Constitution of the country does not allow reservation based on religion, so Congress has resorted to this deceit. Even Dr. B.R. Ambedkar himself was strongly against reservation based on religion. However, drowning in vote banks and appeasement, the Congress wants to implement this model of Karnataka across the entire country.”

The PM came out all guns blazing against Congress’s appeasement politics. He reminisced, “Back in 2014, the Congress stated in its manifesto that, if necessary, they would even enact a law to provide reservation based on religion. At that time, the country ousted the Congress from power, but now they are talking about completing this unfinished task. If the Congress comes to power here in MP, they will snatch the share of reservation from our Kushwaha, Gurjar, Yadav, Gadaria, and Dhakad Prajapati communities, as well as from our Kumhar, Teli, Manjhi, Nai, and Sonar communities, to give it to their favored vote bank. Will the people of MP allow this to happen?”

“According to the Congress, they would even provide the benefits of poverty alleviation schemes based on religion. Because the Congress bluntly states that Muslims have the first right on the country's resources,” he added.

Accusing the Congress’s Shehzaade of hatching a deep conspiracy, PM Modi remarked, “One of the Congress leaders is talking about conducting an X-ray of people's assets across the country. Whatever you earn, the Mangalsutra, gold, and silver that our mothers and sisters have, Congress wants to seize it and distribute it among their vote bank supporters. Even the wealth left after you leave this world won't go to your sons and daughters. Congress wants to snatch more than half of your earnings. For this, Congress wants to impose an Inheritance tax on you.”

In a scathing critique of the Congress's proposal to impose an Inheritance tax, PM Modi said, “When Mrs. Indira Gandhi passed away, her property was supposed to go to her children. If there had been the previous law, the government would have taken a portion of it. At that time, there was talk that, in order to save their property, her son and the then Prime Minister simply abolished the inheritance law. When it came to their own interests, they removed the law. Today, driven by the greed for power once again, these people want to reintroduce the same law. After accumulating limitless wealth for generations without taxes on their families, now they want to impose taxes on your inheritance. That's why the country is saying – ‘Congress ki loot – Jindagi ke saath bhi, jindagi ke baad bhi’.”

PM Modi urged that the stronger the voter turnout on May 7th, the stronger Modi will be. “I have one more request: please go door-to-door, convey my regards to the people, and inspire them to vote,” he said.