Inaugurates and performs Bhoomi Poojan of more than 1.3 lakh houses across Gujarat built under Pradhan Mantri Awas Yojna and other housing schemes
“Your blessings in such large numbers further strengthens our resolve”
“Today’s time is the time of creating history”
“​​Our government's effort is to ensure that everyone has a pucca roof above them”
“Every citizen wants India to become a developed nation in the coming 25 years. For this everyone is making every possible contribution”
“Modern technology is being deployed in our housing schemes to build houses at a faster pace”
“We are committed to the empowerment of the four pillars of Viksit Bharat - Youth, Women, Farmers and the Poor”
“Modi has stood guarantee for those who had no guarantee”
“The biggest beneficiaries of every poor welfare scheme are Dalit, OBC and tribal families”

نمستے۔

گجرات کے میرے پیارے بھائیو اور بہنو، کیم چھو۔۔۔ مجا ما۔ آج وکست بھارت کے وکست گجرات کے لیے ایک بہت بڑی مہم شروع ہو رہی ہے۔ اور جیسا کہ مجھے بتایا گیا ہے، گجرات کی سبھی 182 اسمبلی سیٹوں پر بیک وقت گجرات کے کونے کونے سے لاکھوں لوگ ٹکنالوجی کے ذریعے جڑے ہوئے ہیں۔ آپ سبھی اتنے جوش و خروش کے ساتھ وکست گجرات کے سفر میں شامل ہوئے ہیں۔ میں آپ تمام کو بہت بہت مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

ابھی پچھلے مہینے ہی مجھے درخشاں گجرات سمٹ میں شرکت کا موقع ملا۔ درخشاں گجرات نے 20 سال مکمل کر لیے ہیں۔ اس بار بھی آپ نے بہت شاندار انداز میں اہتمام کیا۔ یہ گجرات اور سرمایہ کاری کے معاملے میں ملک کے لیے ایک بہت اچھا پروگرام تھا۔ اور میں سوچ رہا تھا کہ جب میں وزیر اعلیٰ تھا تو میں اس طرح کے پروگرام کی منصوبہ بندی نہیں کر سکتا تھا، جیسا کہ آپ لوگوں نے اس بار کیا ہے، اور لہٰذا اگر آپ نے مجھ سے بہتر کام کیا تو میری خوشی اور بھی بڑھ گئی۔ لہٰذا میں اپنی طرف سے گجرات کے تمام لوگوں، گجرات حکومت اور وزیراعلیٰ کو اس تقریب کے لیے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ میں پوری ٹیم کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

ساتھیو،

کسی بھی غریب کے لیے، اس کا اپنا گھر اس کے روشن مستقبل کی ضمانت ہے۔ لیکن جیسے جیسے خاندان وقت کے ساتھ بڑھتے ہیں، اسی طرح نئے گھروں کی ضرورت بھی بڑھتی ہے۔ ہماری حکومت کوشش کر رہی ہے کہ ہر ایک کے پاس پکی چھت ہو، اپنا گھر ہو، اپنے خوابوں کے لیے ایک بہترین گھر ہو۔ اس سوچ کے ساتھ کوئی بھی اندازہ لگا سکتا ہے کہ گجرات کے1.25  لاکھ سے زیادہ لوگوں نے پورے ملک میں کبھی بھی اس طرح کا آنکڑہ حاصل نہیں کیا ہوگا۔ آج اس سے زیادہ گھروں میں 1.25  لاکھ گھر ایسے بنائے گئے ہیں جیسے دیوالی آ گئی ہو۔ ایودھیا میں بھگوان شری رام کو ایک گھر ملا اور آپ سبھی کو ہر گاؤں میں ایک گھر ملا۔ میں ان تمام کنبوں کو دلی مبارکباد اور نیک خواہشات پیش کرتا ہوں جنہیں آج گھر ملا ہے۔ جب اس طرح کے کام ہوتے ہیں، تبھی ملک کہتا ہے – مودی کی گارنٹی یعنی پوری ہونے کی گارنٹی ۔

بھائیو اور بہنو،

آج بناس کانٹھا کے لوگ بڑی تعداد میں اس پروگرام میں شامل ہوئے ہیں۔ اور ساتھ ساتھ مجھے بتایا گیا کہ 182 اسمبلی حلقوں میں ہر اسمبلی حلقہ میں ہزاروں لوگ جمع ہوئے ہیں۔ میں گجرات کے لوگوں، گجرات کے عوام کو، گجرات کی حکومت کو اتنے بڑے پروگرام کے انعقاد کے لیے مبارکباد دیتا ہوں۔ اور میں یہاں ٹی وی پر مختلف جگہوں کے لوگوں کو دیکھ رہا ہوں، آج یہاں مجھ سے دور مختلف جگہوں کے مختلف لوگوں کے بہت پرانے چہرے ہیں۔ مجھے یہاں سے آنے کا موقع مل رہا ہے۔ دور دور تک کے تمام علاقے مجھے دکھائے جا رہے ہیں۔ کیا شاندار تقریب ہے، میں نے برسوں سے تنظیمی کام کیا ہے، اس لیے میں جانتا ہوں کہ لاکھوں لوگ ایک ساتھ کئی جگہوں پر جمع ہوئے۔ ایسا کرنا، یہ کوئی معمولی کام نہیں ہے۔ اور آپ سب ہمیں اتنی بڑی تعداد میں برکت دیں، یہ ہمارے عزم کی طاقت کو مزید مضبوط کرتا ہے۔ اور ہم آپ کی قوت ارادی کو محسوس کر رہے ہیں۔ ہمارے بناس کانٹھا ضلع کا مطلب ہے ہمارا پورا شمالی گجرات۔۔۔ ہمیں پانی کے برتن لے کر دو کلومیٹر جانا پڑا تھا۔ لیکن ہمارے شمالی گجرات کے کسان زیادہ فصل، ڈرپ آبپاشی، جدید آبپاشی یعنی نئے ایسے اقدامات، جن کی وجہ سے آج ہمارا پورا علاقہ میسانا، امباجی یا پٹن بھی زراعت کے میدان میں ہے۔ نئی بلندیوں پر پہنچا۔ امباجی دھام میں ہونے والے ترقیاتی کاموں کو دیکھ کر مجھے بہت خوشی ہوئی۔ آنے والے وقت میں یہاں عقیدت مندوں اور سیاحوں کی تعداد میں زبردست اضافہ ہوگا۔ اب دیکھئے ترنگاہل اس میں ترقی کر رہا ہے، امباجی – یہ بہت تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے ، اور خاص بات یہ ہے کہ نئی ریلوے لائن بن رہی ہے۔ اس کی وجہ سے آبو روڈ تک یعنی احمد آباد سے آبو روڈ تک ایک نئی براڈ گیج لائن لگے گی اور آپ کو یہ کام یاد ہے، کیا آپ کو نہیں؟ یہ منصوبہ 100 سال پہلے بنایا گیا تھا۔ لیکن اسے 100 سال تک ایک ڈبے میں رکھا گیا، یہ نہیں کیا گیا، آج 100 سال بعد یہ کام ہو رہا ہے۔ اس منصوبے سے بڑی تعداد میں روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ اس پروجیکٹ کی تعمیر سے اجیت ناتھ جین مندر تک پہنچنا آسان ہوجائے گا۔ امباجی ماتا کے مندر سے ہموار ریل رابطہ ہوگا۔ اور اب میں میں نے اخبار میں پڑھا کہ جب میں وہاں تھا تو مجھے اتنا علم نہیں تھا۔ میرے گاؤں وڈ نگر کو ابھِ دریافت کیا گیا ہے۔ تقریبا 3 ہزار سال سے زندہ یہ گاؤں دنیا کے لوگوں کے لیے ایک عجوبہ ہے اور کہا جاتا ہے کہ پہلے بڑی تعداد میں سیاح ہٹکیشور آتے تھے، اب یہ وہ پرانی چیزیں دیکھنے آتے ہیں۔ یہاں امباجی، پٹن، ترنگاجی، یعنی ایک طرح سے اسٹیچو آف یونٹی جیسا پورا علاقہ سیاحوں کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے، ہے نا؟گجرات بھی آج کل نادبت جانے کے لیے چلتا ہے۔ ترقی چاروں طرف نظر آتی ہے۔ اس کی وجہ سے شمالی گجرات کو بہت فائدہ ہونے والا ہے اور یہ ترقی کی نئی بلندیوں کو چھونےوالاہے۔

 

ساتھیو،

ہم نے نومبر، دسمبر اور جنوری کے مہینوں میں ملک بھر میں وکست بھارت سنکلپ یاترا کا کامیاب انعقاد دیکھا ہے۔ مودی کی گارنٹی والی گاڑی گاؤں گاؤں جاتی تھی اور اگر گاؤں میں کوئی فائدہ اٹھانے والا رہ جاتا تھا تو وہ اسے ڈھونڈ لیتی تھی۔ اور ملک بھر کے لاکھوں گاؤوں میں حکومت ہند براہ راست ان کے پاس گئی ہے، آزادی کے 75 سالوں میں یہ پہلی بار ہوا ہے۔ اور ہمارے گجرات میں بھی کروڑوں لوگ ان پروگراموں میں شامل ہوئے۔ اور حکومت کی ایسی کوششوں کی وجہ سے میں گزشتہ 10 سالوں میں ملک میں جو سب سے بڑا کام کروں گا، جس کے لیے آپ بھی مطمئن ہوں گے، وہ کام 10 سال میں ہوا ہے۔ 25 کروڑ لوگ غربت سے نکل آئے ہیں۔ حکومت ہر قدم پر ان 25 کروڑ لوگوں کے ساتھ کھڑی رہی اور ان 25 کروڑ دوستوں نے حکومت کی اسکیموں، پیسے کا صحیح طریقے سے فائدہ اٹھایا۔ انھوں نے اپنی زندگیوں کا مساوی استعمال کرنے کے لیے اس اسکیم کا استعمال کیا ، اور 250 ملین افراد غربت کو شکست دینے میں کامیاب رہے۔ یعنی میرے 25 کروڑ نئے دوست بنے ہیں، جنہوں نے غربت کو شکست دی ہے۔ آپ تصور کریں کہ مجھے کتنی خوشی ہوئی ہوگی، میرا بھروساکتنا بڑھ گیا ہے جی ہاں۔۔۔ یہ اسکیمیں ہمیں غربت سے نکال سکتی ہیں۔ اس لیے آنے والے دنوں میں بھارت سے غربت کے خاتمے کے لیے بھی میں آپ کی مدد مانگتا ہوں۔ اگر آپ جیسے لوگوں نے غربت کو شکست دی تو اس سے بھی زیادہ غریب لوگوں کو غربت کو شکست دینی چاہیے، اس کے لیے آپ میرے ساتھی بنیں اور انھیں طاقت دیں۔ اور مجھے یقین ہے کہ آپ میرے سپاہی، میرے ساتھی بن کر غربت کو شکست دینے کی لڑائی میں میرا ساتھ دیں گے۔ جو کام آپ کو ملا ہے وہ آپ ضرور کریں گے اور غریبوں کو بھی اتنی ہی طاقت ملنی چاہیے۔ جن بہنوں کے ساتھ مجھے بات چیت کرنے کا موقع ملا، وہ اعتماد جو میں نے گھر پہنچنے کے بعد ان کی زندگیوں میں دیکھا۔ اور میں گھر کو بھی دیکھ رہا تھا، اتنے خوبصورت گھر نظر آ رہے تھے، من کو لگا کہ۔۔۔ واہ۔۔۔ درحقیقت، میرے گجرات کی طرح، میرے ملک کے لوگ بھی ایک خوش حال زندگی کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

 ساتھیو،

آج تاریخ رقم کرنے کا وقت ہے، تاریخ ثبت کرنے کا وقت ہے۔ یہ ایسا ہی وقت ہے جو ہم نے آزادی کے دور میں دیکھا تھا۔ آزادی کی جدوجہد کے دوران، چاہے وہ سودیشی تحریک ہو، بھارت چھوڑو تحریک ہو، یا ڈانڈی یاترا، یہ لوگوں کا عزم بن گئی تھی۔ آج ملک کے لیے یہی عزم ایک وکست بھارت کی تعمیر کے لیے ایک بڑا عہدبن گیا ہے۔ ملک کا ہر بچہ چاہتا ہے کہ بھارت اگلے 25 سالوں میں ایک ترقی یافتہ ملک بن جائے۔ اس کے لیے ہر کوئی ہر ممکن طریقے سے اپنا حصہ ڈال رہا ہے۔ اور گجرات نے ہمیشہ سوچا ،جب میں یہاں تھا ،تو گجرات کا عزم رہا ہے کہ ریاست کی ترقی سے ملک کی ترقی کرے۔ وکست بھارت کے لیے گجرات کو تیار کیا گیا، یہ پروگرام اسی سلسلے کا حصہ ہے۔

بھائیو اور بہنو،

مجھے خوشی ہے کہ گجرات پی ایم آواس یوجنا کو نافذ کرنے میں ہمیشہ آگے رہا ہے۔ اس کے تحت شہری علاقوں میں 8 لاکھ سے زیادہ گھر بنائے گئے ہیں۔ پی ایم آواس یوجنا گرامین کے تحت 5 لاکھ سے زیادہ مکانات تعمیر کیے گئے ہیں۔ ہم اپنی ہاؤسنگ اسکیموں میں جدید ٹکنالوجی کا استعمال کر رہے ہیں تاکہ نئی ٹکنالوجی کے ساتھ اور تیز رفتاری سے گھروں کی تعمیر کی جا سکے۔ گجرات کے راجکوٹ میں لائٹ ہاؤس پروجیکٹ سے 1100 سے زیادہ مکانات تعمیر کیے گئے ہیں۔

ساتھیو،

مودی نے غریبوں کے گھروں کے لیے سرکاری خزانہ کھول دیا ہے۔ اور مجھے یاد ہے کہ اس سے پہلے کس طرح ولساڈ کی طرف ہمارے ہڑپتی معاشرے کے لیے گھر بنے تھے۔ کوئی ایک دن بھی رہنے نہیں گیا۔ ہڑپتی بھی نہ گئے، مجھے بتاؤ کہ حالات کیا ہوں گے۔ اور آہستہ آہستہ وہ مکان خود ہی بیٹھ گئے۔ اور اسی طرح جب ہم بھاونگر جاتے ہیں، تو ہمیں راستے میں بہت سارے گھر نظر آتے ہیں۔ کوئی انسان نظر نہیں آتا۔ آہستہ آہستہ ہر کسی نے اس گھر کی کھڑکیاں اور دروازے چوری کر لیے۔ میں 40 سال پہلے کی بات کر رہا ہوں۔ سب کچھ تباہ ہو گیا ۔ کیونکہ کوئی رہنے نہیں جاتا تھا، اس لیے کہ ایسی تعمیرکی گئی تھی۔ 2014 سے پہلے کے 10 سالوں میں غریبوں کے گھروں کے لیے دی گئی رقم پچھلے 10 سالوں میں دی گئی رقم سے تقریبا 10 گنا زیادہ تھی۔ اس سال کے بجٹ میں بھی ہم نے 2 کروڑ نئے گھروں کا اعلان کیا ہے۔ تاکہ ہر غریب کے پاس پکا گھر ہو۔

ساتھیو،

2014 سے پہلے جس رفتار سے غریبوں کے گھر بنائے جاتے تھے، اس سے کہیں زیادہ رفتار سے آج غریبوں کے گھر بنائے جا رہے ہیں۔ پہلے غریبوں کے گھروں کے لیے پیسے بہت کم ہوتے تھے اور درمیان میں کمپنی، مڈل مین، کوئی 15 ہزار روپے اور کوئی 20 ہزار روپے مار دیتے تھے۔ وہ لوٹ مار کرتے تھے۔ اب یہ رقم بھی سوا دولاکھ روپے سے زیادہ مل رہی ہے اور براہ راست فائدہ اٹھانے والے کے بینک کھاتے میں پہنچ رہی ہے۔ آج غریبوں کو اپنے گھر بنانے کی آزادی مل گئی ہے، اس لیے گھر بھی تیز رفتاری سے تعمیر کیے جا رہے ہیں۔ شروع میں چھوٹے چھوٹے گھر تھے۔ گھر کیسا ہوگا، اس کا فیصلہ حکومت کے لوگ کرتے تھے۔ اگر گھر بن بھی گیا تو غریب خاندان کو کئی سالوں تک بیت الخلا، بجلی، پانی اور گیس کے کنکشن نہیں ملے۔ اس پر بھی غریبوں کے ہزاروں روپے خرچ ہوئے۔ لہٰذا، پہلے کے بہت سے گھروں میں گرہ پرویش بھی نہیں ہو سکتا تھا۔ آج یہ تمام سہولیات گھر کے ساتھ دستیاب ہیں۔ ایسے میں آج ہر مستفید خوشی خوشی اپنے پکے گھر میں گرہ پرویش کرتاہے۔ ان گھروں سے کروڑوں بہنوں کو پہلی بار کوئی پراپرٹی رجسٹرڈ ہوئی ہے، پہلے یہ کام کسی مرد کے نام ہوتا تھا، کوئی دکان ہو وہ بھی آدمی کے نام پر ،کھیت ہو وہ بھی آدمی کے نام پر، گھر میں گاڑی ہو وہ بھی مرد کے نام پر۔ پھر ہم نے فیصلہ کیا کہ یہ غریبوں کو جو گھر دیں گے نا، وہ گھر کی بزرگ بہن کے نام پر کریں گے۔ مائیں بہنیں اب گھر کی مالک گئیں۔

بھائیو اور بہنو،

غریب، نوجوان، ہمارے ملک کا کھانا فراہم کرنے والے، ہمارے کسان، ہماری ماں، ہماری عورتیں اور بہنیں وکست بھارت کے ستون ہیں۔ لہٰذا ان کو بااختیار بنانا ہمارا عزم ہے۔ اور جب میں غریبوں کی بات کرتا ہوں تو اس میں ہر معاشرے کے خاندان شامل ہوتے ہیں۔ اگر یہ گھر مل رہے ہیں تو اس میں ہر ذات کے غریب گھرانے ہیں۔ اگر مفت راشن مل رہا ہے تو ہر ذات کے مستفید ہونے والوں کو مل رہا ہے۔ اگر مفت علاج فراہم کیا جارہا ہے تو ہر ذات کے غریب مستفید افراد کو یہ مل رہا ہے۔ اگر سستی کھاد مل رہی ہے تو ہر ذات کے کسانوں کو مل رہی ہے۔ پی ایم کسان سمان ندھی ہر ذات کے کسانوں کو دی جا رہی ہے۔ غریب گھرانے کے بیٹوں اور بیٹیوں کے لیے بینکوں کے دروازے بند تھے، چاہے وہ کسی بھی معاشرے سے تعلق رکھتے ہوں۔ اس کے پاس بینک کو گارنٹی دینے کے لیے کچھ بھی نہیں تھا۔ جن کے پاس کوئی گارنٹی نہیں تھی، جن کے پاس کوئی گارنٹی نہیں تھی ، مودی نے ان کی گارنٹی دی ہے۔ مدرا اسکیم ایسی ہی ایک گارنٹی ہے۔ اس کے تحت ہر معاشرے کے غریب نوجوان بغیر گارنٹی کے قرض لے رہے ہیں اور اپنا چھوٹا سا کاروبار کر رہے ہیں۔ ہمارے وشوکرما ساتھی، ہمارے اسٹریٹ وینڈر ، ان کی گارنٹی بھی مودی نے لی ہےاس لیے ان کی زندگیاں بھی بدل رہی ہیں۔ میرے او بی سی بھائی اور بہنیں  ہیں، بکشی پنچ والے ہیں، ہمارے آدی واسی ہیں۔ مودی کی گارنٹی کا سب سے زیادہ فائدہ اگر کسی کو ہوا ہے تو ان خاندانوں کو ہوا ہے۔

 

بھائیو اور بہنو،

مودی نے بہنوں کو کروڑ پتی بنانے کی بڑی گارنٹی دی ہے۔ آپ نے سنا ہوگا کہ مودی صاحب یہ کیا کر رہے ہیں۔ میں نے فیصلہ کیا ہے کہ لکھپتی دیدی کو گاؤں گاؤں بنانا ہے۔ ملک میں اب تک ایک کروڑ کروڑ پتی دیدی بن چکی ہیں۔ ان میں سے ایک بڑی تعداد گجرات کی میری مائیں اور بہنیں ہیں۔ اب ہماری کوشش ہے کہ آنے والے چند سالوں میں 3 کروڑ بہنوں کو کروڑ پتی بنایا جائے۔ اس سے گجرات کی ہزاروں بہنوں کو بھی فائدہ ہونے والا ہے۔ اس سے غریب کنبوں کو نئی طاقت ملے گی۔ اس بجٹ میں ہماری آشا کارکنوں اور آنگن واڑی بہنوں کے لیے ایک بڑا اعلان کیا گیا ہے۔ اب ان بہنوں کو اپنے علاج کی فکر کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ مودی ان کے اور ان کے اہل خانہ کے علاج کا خیال رکھے گا ۔ سبھی آشا اور آنگن واڑی کارکنوں کو بھی آیوشمان اسکیم کے تحت مفت علاج کی سہولت ملنے والی ہے۔

ساتھیو،

گزشتہ کئی سالوں سے ہماری مسلسل کوشش رہی ہے کہ غریب اور متوسط طبقے کے اخراجات کو کم کیا جائے۔ مفت راشن، سستا علاج، سستی دوائیں، سستے موبائل بل ، اس سے بہت بچت ہو رہی ہے۔ اجولا سے مستفید ہونے والی بہنوں کو گیس سلنڈر بھی بہت سستا دیا جا رہا ہے۔ ایل ای ڈی بلبوں کا جو انقلاب ہم لائے ہیں اس نے ہر گھر میں بجلی کے بل کو کم کردیا ہے۔ اب ہماری کوشش ہے کہ عام خاندانوں کا بجلی کا بل صفر ہو اور بجلی سے آمدنی بھی ہو۔ لہٰذا اب مرکزی حکومت نے ایک بہت بڑا منصوبہ بنایا ہے۔ اس کے تحت ابتدائی طور پر ایک کروڑ خاندانوں کے گھروں پر سولر چھت یں لگائی جائیں گی۔ جس طرح آپ نے رادھن پور کے قریب ایک بہت بڑا شمسی فارم بنایا ہے، اسی طرح یہ کچھ میں بھی ہے، اور اب یہ سب کے گھر کے اوپر ہے۔ اس کی وجہ سے گھر میں بجلی مفت میں دستیاب ہوگی۔ اس سے تقریبا 300 یونٹ بجلی مفت ملے گی، یہ انتظام کیا جائے گا اور آپ کے لیے ہزاروں روپے کی بچت ہوگی اور اگر آپ زیادہ بجلی پیدا کرتے ہیں تو حکومت خریدے گی اور آپ بجلی بیچ کر کمائیں گے۔ گجرات میں تو ہم نے موڈھیرا ایک شمسی گاؤں بناکر دیکھا ہے۔ اب ایسا انقلاب پورے ملک میں آنے والا ہے۔ ہماری حکومت ان داتا کو توانائی فراہم کنندہ بنانے کے لیے بھی کام کر رہی ہے۔ حکومت بنجر زمین پر کسانوں کے لیے سولر پمپ اور چھوٹے سولر پلانٹس لگانے کے لیے بھی مدد فراہم کر رہی ہے۔ گجرات میں کسانوں کے لیے شمسی توانائی کے ذریعے علیحدہ فیڈر فراہم کرنے کا کام بھی جاری ہے۔ اس سے کسانوں کو دن کے وقت بھی آبپاشی کے لیے بجلی کی سہولت فراہم ہوگی۔

ساتھیو،

گجرات ایک تجارتی ریاست کے طور پر جانا جاتا ہے۔ اپنے ترقی کے سفر میں گجرات نے صنعتی ترقی کو ایک نئی رفتار دی ہے۔ انڈسٹری کا پاور ہاؤس ہونے کے ناطے گجرات کے نوجوانوں کو بے مثال مواقع ملے ہیں۔ آج گجرات کے نوجوان گجرات کو ہر شعبے میں نئی بلندیوں پر لے جا رہے ہیں۔ یہ تمام مہمات گجرات کے نوجوانوں کو نئے مواقع فراہم کریں گی، ان کی آمدنی میں اضافہ کریں گی اور ایک وکست گجرات کو نئی بلندیوں پر لے جائیں گی۔ ڈبل انجن کی حکومت ہر جگہ آپ کے ساتھ ہے، ہر قدم پر آپ کے ساتھ ہے۔ آج آپ سب سے مل کر بہت خوشی ہوئی، ایک بار پھر میں ان تمام لوگوں کے روشن مستقبل کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں جنہیں آج گھر ملے ہیں۔اور  آپ بھروسہ رکھیے اور اپنے بچوں کو بتائیے کہ مودی صاحب، آپ جس مصیبت میں جیے ہیں آپ کے بچوں کو اس مصیبت میں نہ جینا پڑے۔ آپ کو اس طرح جینے کی ضرورت نہیں ہے۔ آپ نے جو بھی تکلیف سہی ہوگی ، آپ کے بچوں کو یہ تکلیف برداشت نہیں کرنی ہے، ہمیں گجرات بھی بنانا ہے اور ملک بھی بنانا ہے۔

آپ سبھی کو میری طرف سے ڈھیر ساری نیک خواہشات۔

شکریہ۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%

Media Coverage

India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 23 اپریل 2024
April 23, 2024

Taking the message of Development and Culture under the leadership of PM Modi