انہوں نے 860 کروڑ روپے سے زیادہ کی مالیت کے متعدد ترقیاتی پروجیکٹوں کا افتتاح کیا
‘‘راجکوٹ کو سوراشٹرا کی ترقی کے انجن کے طور پر جانا جاتا ہے’’
‘‘میں ہمیشہ راجکوٹ کا قرض چکانے کی کوشش کرتا ہوں’’
‘‘ہم ‘سوشاسن’ کی گارنٹی لے کر آئے تھے اور ہم اسے پورا کر رہے ہیں’’
‘‘نئے مڈل کلاس اور مڈل کلاس دونوں ہی حکومت کی ترجیح ہیں’’
‘‘فضائی خدمات کی توسیع نے ہندوستان کے ہوابازی کے شعبے کو نئی بلندیاں دی ہیں’’
‘‘زندگی میں آسانی اور معیار زندگی کو بہتر بنانا حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے’’
‘‘آج آر ای آر اے قانون لاکھوں لوگوں کو ان کے پیسے لوٹنے سے روک رہا ہے’’
‘‘آج ہمارے پڑوسی ممالک میں مہنگائی 25-30 فیصد کی شرح سے بڑھ رہی ہے۔ لیکن ہندوستان میں ایسا نہیں ہے’’

آپ سب کیسے ہیں؟ آرام سے ہیں؟

گجرات کے وزیراعلیٰ جناب  بھوپیندر بھائی پٹیل، کابینہ میں میرے ساتھی جناب جیوترآدتیہ سندھیا جی، سابق وزیراعلیٰ بھائی  وجے روپانی جی، سی آر پاٹل جی۔

ساتھیو،

ابھی وجے بھی میرے کان میں کہہ رہے تھے اور میں یہ بھی دیکھ رہا ہوں کہ راجکوٹ میں کوئی پروگرام ہونا چاہئے، تو چھٹی کا دن نہیں ہوناچاہئے، اور دوپہر کا وقت  نہیں ہوناچاہئے، راجکوٹ میں کوئی اس وقت میں جلسہ کرنے کا کبھی نہ سوچے، ایسے میں اتنا  بڑا جلسہ!اتنی بڑی تعداد میں، آج راجکوٹ نے راجکوٹ کے تمام ریکارڈ توڑ دیے ہیں۔ ورنہ برسوں سے ہم دیکھ رہے ہیں کہ شام 8 بجے کے بعد  ہی یہاں کوئی جلسہ ٹھیک رہتا ہے اور راجکوٹ میں تو  ویسے بھی دوپہر کو سونے کے لئے وقت چاہیے۔

آج راجکوٹ کے ساتھ ساتھ پورے سوراشٹرا اور گجرات کے لیے بڑا دن ہے۔ لیکن شروع میں میں ان خاندانوں سے اظہار تعزیت کرنا چاہوں گا جنہیں قدرتی آفات کی وجہ سے بہت نقصان پہنچا ہے۔ چند دن پہلے ہی  طوفان آیا تھا اور پھر سیلاب نے بھی بہت تباہی مچائی تھی۔ بحران کی اس گھڑی میں ایک بار پھر عوام اور حکومت نے مل کر اس کا مقابلہ کیا ہے۔ بھوپیندر بھائی کی حکومت ہر ممکن کوشش کر رہی ہے کہ تمام متاثرہ خاندانوں کی زندگی جلد از جلد معمول پر آجائے۔ مرکزی حکومت بھی ریاستی حکومت کو جو بھی تعاون درکار ہے وہ فراہم کر رہی ہے۔

 

بھائیو اور بہنو،

گزرے ہوئے برسوں میں  ہم نے راجکوٹ کو ہر طرح سے ترقی کرتے دیکھا ہے۔ اب راجکوٹ کو سوراشٹر کے گروتھ انجن کے طور پر بھی پہچانا جا رہا ہے۔ یہاں بہت کچھ ہے۔ صنعت ہے، کاروبار ہے، ثقافت ہے، کھانے پینے کی چیزیں ہیں،  لیکن کچھ کمی  محسوس ہوتی تھی اور آپ لوگ  بھی مجھے بار بار بتاتے رہتے تھے  اور وہ کمی بھی آج پوری ہو گئی ہے۔

ابھی کچھ دیر پہلے جب میں نو تعمیر شدہ  ہوائی اڈے پر تھا تو مجھے بھی آپ کا خواب پورا ہونے کی خوشی محسوس ہوئی ۔ میں ہمیشہ کہتا ہوں، راجکوٹ وہ ہے جس نے مجھے بہت کچھ سکھایا۔ مجھے پہلی بار ایم ایل اے بنایا۔ میرے سیاسی سفر کو ہری جھنڈی دکھانے کا کام راجکوٹ نے کیا اور اس طرح راجکوٹ کا قرض مجھ پر ہمیشہ باقی ہے۔ میں اس قرض کو کم کرنے کی بھی کوشش کر رہا ہوں۔

آج راجکوٹ کو ایک نیا اور بڑا بین الاقوامی ہوائی اڈہ ملا ہے۔ اب راجکوٹ سے ملک کے کئی شہروں کے ساتھ ساتھ دنیا کے لیے بھی براہ راست پروازیں ممکن ہوں گی۔ اس ایئرپورٹ سے نہ صرف سفر کرنا آسان ہوگا بلکہ اس پورے خطے کی صنعتوں کو بھی کافی فائدہ ہوگا۔ جب میں وزیر اعلیٰ تھا ، ابتدائی دن تھے، مجھے زیادہ تجربہ نہیں تھا اور ایک بار میں نے کہا تھا کہ یہ تو  میرا منی جاپان بن رہا ہے تو بہت سے لوگوں نے میرا مذاق اڑایا تھا،  لیکن آج آپ نے ان باتوں کو سچ ثابت کر دیاہے۔

 

ساتھیو،

اب یہاں کے کسانوں کے لیے ملک اور بیرون ملک کی منڈیوں میں پھل اور سبزیاں بھیجنا آسان ہو جائے گا۔ یعنی راجکوٹ کو صرف ایک ہوائی اڈہ نہیں بلکہ ایک پاور ہاؤس ملا ہے جو اس پورے خطے کی ترقی کو نئی توانائی دینے والا، نئی پرواز دینے والا ہے۔

آج یہاں سونی یوجنا کے تحت کئی پروجیکٹوں کا افتتاح بھی کیا گیا ہے۔ ان پروجیکٹوں کی تکمیل سے سوراشٹرا کے درجنوں دیہاتوں کے کسانوں کو آبپاشی اور پینے کا پانی دستیاب ہوگا۔ اس کے علاوہ ہمیں آج یہاں راجکوٹ کی ترقی سے متعلق کئی پروجیکٹوں کووقف  کرنے کا موقع ملا ہے۔ میں ان تمام منصوبوں کے لیے آپ سب کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

ساتھیو،

گزشتہ 9 سالوں میں مرکزی حکومت نے سماج کے ہر طبقے اور ہر علاقے کی زندگی کو آسان بنانے کے لیے کام کیا ہے۔ ہم گڈ گورننس کی ضمانت لے کر آئے ہیں۔ آج ہم اس ضمانت کو پورا کر رہے ہیں۔ غریب ہو، دلت ہو، پسماندہ ہو، قبائلی ہو، ہم نے ہر ایک کی زندگی کو بہتر بنانے کے لئے مسلسل کام کیا ہے۔

ہماری حکومت کی کوششوں سے آج ملک میں غربت تیزی سے کم ہو رہی ہے۔ حال ہی میں جو رپورٹ آئی ہے اس میں کہا گیا ہے کہ ہماری حکومت کے پانچ سالوں میں ساڑھے تیرہ کروڑ لوگ غربت سے باہر آئے ہیں۔ یعنی آج ہندوستان میں غریبی سے نکل کر ایک نو متوسط ​​ ​​طبقہ پیدا ہو رہا ہے۔ اسی لیے ہماری حکومت کی ترجیحات میں متوسط ​​طبقہ، نو متوسط ​​طبقہ، ایک طرح سے پورا متوسط ​​طبقہ شامل ہے۔

 

ساتھیو،

آپ کو یاد ہے، 2014 سے پہلے متوسط ​​طبقے کی ایک عام شکایت کیا تھی؟ لوگ کہتے تھے، کنکٹی ویٹی کتنا خراب ہے، سفر میں ہمارا کتنا وقت ضائع ہوتا ہے۔ لوگ ملک کے باہر کہیں سے آتے تھے، باہر سے فلمیں دیکھتے تھے، جب ٹی وی پر دنیا دیکھتے تھے تو ذہن میں سوال اٹھتے تھے، وہ سوچتے تھے کہ ہمارے ملک میں ایسا کب ہوگا، کب ایسا ہوگا؟ کب ایسی سڑکیں بنیں گی، کب  ایسے ہوائی اڈے بنیں گے؟ اسکول آفس آنے جانے میں دشواری، کاروبار کرنے میں دشواری۔ یہ ملک میں رابطے کی حالت تھی۔ ہم نے گزشتہ 9 سالوں میں اس مسئلے کو دور کرنے کی ہر ممکن کوشش کی ہے۔ 2014 میں صرف 4 شہروں میں میٹرو نیٹ ورک تھا۔ آج میٹرو نیٹ ورک ملک کے 20 سے زائد شہروں تک پہنچ چکا ہے۔ آج وندے بھارت جیسی جدید ٹرینیں ملک میں 25 مختلف روٹس پر چل رہی ہیں۔ 2014 میں ملک میں تقریباً 70 ہوائی اڈے تھے۔ اب ان کی تعداد بھی بڑھ کر دوگنا سے زیادہ ہو گئی ہے۔

فضائی سروس کی توسیع نے ہندوستان کے ایئر لائن سیکٹر کو دنیا میں ایک نئی بلندی دی ہے۔ آج ہندوستانی کمپنیاں لاکھوں کروڑوں کے نئے طیارے خرید رہی ہیں۔ کہیں نئی ​​سائیکل، نئی گاڑی یا نئے اسکوٹر کا چرچا ہے۔ آج ہندوستان کے پاس ایک ہزار نئے طیاروں کی آرڈر بک ہیں اور آنے والے دنوں میں دو ہزار طیاروں کا آرڈر دینے کا امکان ہے اور کیا آپ کو یاد ہے، مجھے یاد ہے، میں نے آپ کو گجرات کے انتخابات کے وقت کہا تھا – وہ دن دور نہیں جب گجرات بھی ہوائی جہاز بنائے گا۔ آج گجرات اس سمت میں تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

زندگی میں آسانی، معیار زندگی ہماری حکومت کی اولین ترجیحات میں سے ایک ہے۔ ہم ان مشکلات کو نہیں بھول سکتے جن سے پہلے ملک کے عوام کو گزرنا پڑا۔ اگر آپ بجلی اور پانی کا بل ادا کرنا چاہتے ہیں تو لائن لگائیں۔ اسپتال میں علاج کروانا ہو تو لمبی لائن لگ جاتی ہے۔ اگر آپ انشورنس اور پنشن حاصل کرنا چاہتے ہیں تو بھی بہت سارے مسائل ہیں،  یہاں تک کہ اگر آپ کو ٹیکس ریٹرن فائل کرنا پڑے تو پریشانیوں سے گزریں۔ ہم نے ان تمام مسائل کا حل ڈیجیٹل انڈیا سے دیا۔ پہلے بینک جا کر کام کروانے میں اتنا وقت اور توانائی لگتی تھی۔ آج آپ کا بینک آپ کے موبائل فون پر ہے۔ بہت سے لوگوں کو یہ بھی یاد نہیں ہوگا کہ وہ آخری بار کب بینک گئے تھے۔ اب جانے کی ضرورت  ہی نہیں ہے۔

ساتھیو،

آپ کو وہ دن بھی یاد ہیں جب ٹیکس ریٹرن فائل کرنا بھی ایک بڑا چیلنج ہوا کرتا تھا۔ اس کے لیے کسی کو ڈھونڈو، یہاں جاؤ، وہاں بھاگو۔ بس اتنا ہی ہوا کرتا تھا۔ آج آپ آسانی سے آن لائن ریٹرن فائل کر سکتے ہیں۔ اگر رقم کی واپسی ہوتی ہے تو اس کی رقم بھی چند دنوں میں آپ کے اکاؤنٹ میں آجاتی ہے، ورنہ پہلے کئی کئی  مہینے لگ جاتے تھے۔

ساتھیو،

پہلی حکومتوں کو متوسط ​​طبقے کے لوگوں کے گھر کی فکر نہیں تھی۔ ہم نے غریبوں کے گھروں کی بھی دیکھ بھال کی اور متوسط ​​طبقے کے گھروں کا خواب پورا کرنے کا انتظام بھی کیا۔ پی ایم آواس یوجنا کے تحت ہم نے متوسط ​​طبقے کے خاندانوں کو گھر بنانے کے لیے خصوصی سبسڈی دی۔ اس کے تحت 18 لاکھ روپے تک کی سالانہ آمدنی والے خاندانوں کو امداد دی گئی۔ اب تک ملک کے 6 لاکھ سے زیادہ متوسط ​​طبقے کے خاندان اس کا فائدہ اٹھا چکے ہیں۔ یہاں، گجرات کے 60 ہزار سے زیادہ خاندانوں نے مرکزی حکومت کی اس اسکیم کا فائدہ اٹھایا ہے۔

 

ساتھیو،

جب مرکز میں پرانی حکومت تھی تو اکثر سننے میں آتا تھا کہ گھر کے نام پر یہ فراڈ ہوا۔ کئی سالوں سے مکان کا قبضہ نہیں دیا گیا۔ امن و امان نہیں تھا۔ کوئی پوچھنے والا نہ تھا۔ یہ ہماری حکومت ہے جس نے لوگوں کے مفادات کا تحفظ کرتے ہوئے آر ای آر اے (ریرا) قانون نافذ کیا۔ ریرا قانون کی وجہ سے آج لاکھوں لوگوں کو ان کے پیسے کی لوٹ مار سے بچایا جا رہا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

آج جب ملک میں اتنا کام ہو رہا ہے، ملک آگے بڑھ رہا ہے، تو کچھ لوگوں کی پریشانی میں اضافہ  ہونا بہت فطری بات ہے۔ وہ لوگ جو ہمیشہ ملک کے عوام کے لئے تڑپنے کادکھاوا کرتے تھے، وہ لوگ جن کو ملک کے عوام کی ضرورتوں اور امنگوں سے کوئی سروکار نہیں تھا، آج وہ لوگ ملک کے عوام کے خوابوں کی تعبیر دیکھ کر کچھ زیادہ ہی پریشان ہیں۔

 اسی لیے آپ دیکھ رہے ہیں، آج کل ان بدعنوانوں اور کنبہ پرستوں نے اپنی جماعت کا نام بھی بدل رکھا ہے۔ چہرے وہی ہیں، گناہ وہی ہیں، طریقے وہی ہیں، لیکن جماعت کا نام بدل گیا ہے۔ ان کے طریقے بھی وہی  پرانے  والےہیں۔ ان کے ارادے بھی وہی ہیں۔ جب متوسط ​​طبقے کو کوئی چیز سستی ملتی ہے تو وہ کہتے ہیں کہ کسان کو صحیح قیمت نہیں مل رہی ہے۔ جب کسان کو زیادہ قیمت ملتی ہے تو کہا جاتا ہے کہ مہنگائی بڑھ رہی ہے۔ یہ دوغلا پن ان کی سیاست ہے۔

 آپ دیکھیں کہ مہنگائی کے معاملے میں ان کا ٹریک ریکارڈ کیا ہے؟ جب وہ مرکز میں اقتدار میں تھے تو انہوں نے مہنگائی کی شرح کو 10 فیصد تک پہنچا دیا تھا۔ اگر ہماری حکومت نے مہنگائی پر قابو نہ پایا ہوتا تو آج ہندوستان میں قیمتیں آسمان کو چھو رہی ہوتیں۔ اگر ملک میں پہلے  والی حکومت ہوتی تو آج دودھ 300 روپے فی لیٹر، دال 500 روپے  فی کلو فروخت ہوتی۔ بچوں کی  اسکول کی فیس سے لے کر آنے جانے کے کرایہ تک سب کچھ کئی گنا بڑھ چکا ہوتا۔

دوستو یہ ہماری حکومت ہے جس نے کورونا وبا اور روس -یوکرین جنگ کے باوجود مہنگائی کو قابو میں رکھا ہے۔ آج ہمارے پڑوسی ممالک میں مہنگائی 25 سے 30 فیصد کی شرح سے بڑھ رہی ہے، لیکن ہندوستان میں ایسا نہیں ہے۔ ہم پوری حساسیت کے ساتھ مہنگائی پر قابو پانے کی کوشش کرتے رہے ہیں اور آئندہ بھی کرتے رہیں گے۔

بھائیو اور بہنو،

غریب اور متوسط ​​طبقے کے اخراجات بچانے کے ساتھ ساتھ ہماری حکومت نے یہ بھی یقینی بنانے کی کوشش کی ہے کہ متوسط ​​طبقے کی جیبوں میں زیادہ سے زیادہ بچت ہو۔ آپ کو یاد ہوگا کہ 9 سال پہلے تک 2 لاکھ روپے سالانہ آمدنی پر ٹیکس لگایا جاتا تھا۔ اگر آپ آج 7 لاکھ روپے تک کماتے ہیں تو بھی ٹیکس کتنا ہے؟ صفر، صفر۔ سات لاکھ کی آمدنی پر کوئی ٹیکس نہیں ہے۔ اس سے شہروں میں رہنے والے متوسط ​​طبقے کے خاندانوں کو ہر سال ہزاروں روپے کی بچت ہو رہی ہے۔ ہم نے چھوٹی بچتوں پر زیادہ سود دینے کا بھی قدم اٹھایا ہے۔ اس سال ای پی ایف او پر 8.25 فیصد سود طے کیا گیا ہے۔

ساتھیو،

آپ کا موبائل فون بھی اس بات کی ایک مثال ہے کہ ہماری حکومت کی پالیسیوں اور فیصلوں سے آپ کے پیسے کیسے بچائے جا رہے ہیں۔ شاید آپ کی توجہ وہاں نہ جاتی۔ آج، چاہے امیر ہو یا غریب، زیادہ تر لوگوں کے پاس فون ضرور ہے۔ آج، ہر ہندوستانی، اوسطاً، ہر ماہ تقریباً 20 جی بی ڈیٹا استعمال کرتا ہے۔ آپ جانتے ہیں، 2014 میں 1 جی بی ڈیٹا کی قیمت کتنی تھی؟ 2014 میں، آپ کو 1 جی بی ڈیٹا کے لیے 300 روپے ادا کرنے پڑتے تھے۔ اگر آج وہی پرانی حکومت ہوتی تو آپ کو موبائل بل کے لیے ہر ماہ کم از کم 6 ہزار روپے خود ادا کرنے پڑتے۔ جبکہ آج 20 جی بی ڈیٹا پر صرف تین سے چار سو روپے کا بل آتا ہے۔ یعنی آج لوگ اپنے موبائل بل میں ہر ماہ تقریباً 5 ہزار روپے بچا رہے ہیں۔

ساتھیو،

جن خاندانوں میں بزرگ شہری، بوڑھے والدین، دادا دادی ہیں اور اگر انہیں کوئی بیماری ہے تو انہیں باقاعدگی سے دوائیں لینی پڑتی ہیں، ہماری حکومت انہیں اسکیموں کے ذریعے بہت سی بچتیں بھی فراہم کر رہی ہے۔ پہلے ان لوگوں کو بازار سے مہنگے داموں  پر ادویات خریدنی پڑتی تھیں۔ انہیں اس پریشانی سے نکالنے کے لیے ہم نے جن اوشدھی کیندر میں سستی دوائیں دینا شروع کر دیں۔ ان دکانوں کی وجہ سے غریب اور متوسط ​​طبقے کے تقریباً 20,000 کروڑ روپے کی بچت ہوئی ہے۔ غریبوں کے لیے حساس حکومت، متوسط ​​طبقے کے لیے حساس حکومت ایک کے بعد ایک اقدامات کرتی ہے تاکہ عام شہری کی جیب پر کوئی بوجھ نہ پڑے۔

بھائیو اور بہنو،

یہاں ہماری حکومت گجرات کی ترقی اور سوراشٹرا کی ترقی کے لیے پوری حساسیت کے ساتھ کام کر رہی ہے۔ گجرات سے بہتر، سوراشٹر سے بہتر کون جانتا ہے کہ پانی کی کمی کا مطلب کیا ہے؟ ہم سوراشٹر میں دیکھتے ہیں کہ سونی یوجنا سے پہلے کیا صورتحال تھی اور سونی یوجنا کے بعد کیا تبدیلی آئی ہے۔ سوراشٹرا میں آج درجنوں ڈیم، ہزاروں چیک ڈیم پانی کے ذرائع بن چکے ہیں۔ ہر گھر جل یوجنا کے تحت گجرات میں کروڑوں خاندانوں کو اب نل کا پانی مل رہا ہے۔

ساتھیو،

یہ گڈ گورننس کا وہ ماڈل ہے جسے ہم نے گزشتہ 9 سالوں میں ملک میں ایک کے بعد ایک قدم اٹھا کر، عام آدمی کی خدمت اور اس کی ضروریات پوری کر کے ثابت کیا ہے۔ ایسی گڈ گورننس جس میں معاشرے کے ہر طبقے، ہر خاندان کی ضروریات اور خواہشات کو مدنظر رکھا جائے۔ یہ ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر کا ہمارا طریقہ ہے۔ اس راستے پر چلتے ہوئے ہمیں امرت کال  کے عزائم کو تعبیر آشنا  کرنا ہے۔

میرے سوراشٹر کے لوگوں کو، میرے گجرات کے راجکوٹ کے لوگوں کو راجکوٹ سے اتنی بڑی تعداد میں آپ کی آمد کی ایک جھلک ملی، آپ سب کو ایک نیا ہوائی اڈہ مل رہا ہے، وہ بھی ایک بین الاقوامی ہوائی اڈہ اور بہت سے دوسرے منصوبے،  میں ان سب کے لیے آپ کو بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں۔ میں آپ کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔  بھوپیندر بھائی کی حکومت آپ کی امیدوں اور امنگوں کو پورا کرنے میں کوئی کسر نہیں اٹھا رکھے  گی، مجھے پورا یقین  ہے۔

میں ایک بار پھر اس خیر مقدم کے لیے، اس محبت کے لیے آپ کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ !

وضاحت: وزیر اعظم کی تقریر کا کچھ حصہ گجراتی زبان میں ہے، جس کا یہاں ترجمہ کیا گیا ہے۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
EPFO Payroll data shows surge in youth employment; 15.48 lakh net members added in February 2024

Media Coverage

EPFO Payroll data shows surge in youth employment; 15.48 lakh net members added in February 2024
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 21 اپریل 2024
April 21, 2024

Citizens Celebrate India’s Multi-Sectoral Progress With the Modi Government