Share
 
Comments
‘‘لتا جی نے اپنی الٰہی آواز سے پوری دنیا کو مغلوب کیا’’
‘‘بھگوان شری رام ایودھیا کے عظیم مندر میں پہنچنے والے ہیں’’
’’بھگوان رام کی آشیرواد سے مندر کی تعمیر کی تیز رفتاری کو دیکھ کر پورا ملک پرجوش ہے’’
یہ ‘وراثت پر فخر’ کا اعادہ ہے نیز قوم کی ترقی کا ایک نیا باب ہے
’’بھگوان رام ہماری تہذیب کی علامت ہیں اور ہماری اخلاقیات، اقدار، وقار اور فرض کا زندہ آئیڈیل ہیں’’
‘‘لتا دیدی کے بھجن نے ہمارے ضمیر کو بھگوان رام میں غرق کررکھا ہے’’
‘‘لتا جی کی طرف سے پڑھے گئے منتروں سے نہ صرف ان کی آواز گونجتی تھی بلکہ ان کاعقیدہ، روحانیت اور پاکیزگی بھی’’
‘‘لتا دیدی کی آواز آنے والے زمانے تک اس ملک کے ہر ذرے کو جوڑے گی’’

نمسکار!

آج ہم سب کی قابل احترام اور  محبت کی مورتی لتا دیدی کا یوم پیدائش ہے۔ آج اتفاق سے نوراتری کا تیسرا دن، ماں چندر گھنٹا  کی سادھنا کا تہوار بھی ہے۔ کہتے ہیں کہ کوئی سادھک- سادھیکا  جب  سخت ریاضت کرتا ہے، تو ماں چندر گھنٹا کی کرپا سے  اسے غیبی آوازوں کا احساس ہوتا ہے۔ لتا جی، ماں سرسوتی کی ایک ایسی ہی سادھیکا تھیں، جنہوں نے پوری دنیا کو اپنی غیبی آوازوں سے مسحور کر دیا۔ سادھنا (ریاضت) لتا جی نے کی، وردان ہم سب کو ملا۔ ایودھیا میں لتا منگیشکر چوک پر نصب کی گئی ماں سرسوتی کی یہ عظیم الشان وینا،  موسیقی کی اُس ریاضت کی علامت بنے گی۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ چوک کے احاطہ میں سروور کے بہتے ہوئے پانی میں سنگ مرمر سے بنے 92 سفید کمل، لتا جی  کی مدت حیات کی عکاسی کر رہے ہیں۔ میں اس شاندار کوشش کے لیے یوگی جی کی حکومت کا،  ایودھیان ڈیولپمنٹ اتھارٹی کا اور ایودھیا کے عوام کا دل کی گہرائیوں سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔ اس موقع پر میں تمام ہم وطنوں کی طرف سے بھارت رتن لتا جی کو  خراب عقیدت پیش کرتا ہوں۔ میں پربھو شری رام سے کامنا کرتا ہوں، ان کی زندگی کا جو فائدہ ہمیں ملا، وہی فائدہ ان کے سُروں کے ذریعے آنے والی نسلوں کو بھی ملتا رہا۔

ساتھیوں،

لتا دیدی کے ساتھ جڑی ہوئی میری کتنی ہی یادیں ہیں، کتنے ہی جذباتی اور  محبت بھرے لمحے ہیں۔ جب بھی میری ان سے بات ہوتی، ان کی آواز کی جانی پہچانی مٹھاس ہر بار مجھے مسحور کر دیتی تھی۔ دیدی اکثر مجھ سے کہتی تھیں- ’انسان عمر سے نہیں کارنامے سے بڑا ہوتا ہے، اور جو ملک کے لیے جتنا زیادہ کرے، وہ اتنا ہی بڑا ہے‘۔ میں مانتا ہوں کہ ایودھیا کا یہ لتا منگیشکر چوک، اور ان سے جڑی ایسی تمام یادگاریں ہمیں ملک کے تئیں اپنے فرائض کا بھی احساس کروائیں گی۔

ساتھیوں،

مجھے یاد ہے، جب ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لیے بھومی پوجن ختم ہوا تھا، تو میرے پاس لتا دیدی کا فون آیا تھا۔ وہ بہت جذباتی تھیں، بہت خوش تھیں، بہت  مسرت سے بھر گئی تھیں اور بہت آشیرواد دے رہی تھیں۔ انہیں یقین نہیں ہو رہا تھا کہ آخرکار رام مندر کی تعمیر شروع ہو رہی ہے۔ آج مجھے لتا دیدی کا گایا وہ بھجن بھی یاد آ رہا ہے – ’’من کی ایودھیا تب تک سونی، جب تک رام نہ آئے‘‘ ایودھیان کے شاندار مندر میں شری رام آنے والے ہیں۔ اور اس سے پہلے کروڑوں لوگوں میں رام نام کی عظمت بیان کرنے والی لتا دیدی کا نام، ایودھیا شہر کے ساتھ ہمیشہ کے لیے  قائم ہو گیا ہے۔ وہیں رام چرت مانس میں کہا گیا ہے – ’رام تے ادھک رام کر داسا‘۔ یعنی، رام جی کے بھکت رام جی سے بھی پہلے آتے ہیں۔ شاید اس لیے، رام مندر کی شاندار تعمیر سے پہلے ان کی آرادھنا کرنے والی ان کی بھکت لتا دیدی کی یاد میں بنا یہ چوک بھی مندر سے پہلے ہی بن گیا ہے۔

ساتھیوں،

پربھو رام تو ہماری تہذیب کے ’پرتیک پروش‘ ہیں۔ رام ہماری اخلاقیات کے، ہماری قدروں، ہمارے وقار،  ہمارے فرائض کے جیتے جاگتے رہنما ہیں۔ ایودھیا سے لے کر رامیشورم تک، رام بھارت کے ذرے ذرے میں سمائے ہوئے ہیں۔ بھگوان رام کے آشیرواد سے آج جس تیز رفتار سے  شاندار رام مندر کی تعمیر ہو رہی ہے، اس کی تصویریں پورے ملک کو مبہوت کر رہی ہیں۔ یہ اپنی ’وراثت پر فخر‘ کا نیا احساس بھی ہے، اور ترقی کا نیا باب بھی ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ جس جگہ پر لتا چوک تیار کیا گیا ہے، وہ ایودھیا میں ثقافتی اہمیت کے مختلف مقامات کو جوڑنے والے  مرکزی مقامات میں سے ایک ہے۔ یہ چوک، رام کی پیڑی کے قریب ہے اور سریو کی مقدس  دھارا بھی اس سے بہت دور نہیں ہے۔ لتا دیدی کے نام پر چوک کی تعمیر کے لیے اس سے بہتر جگہ اور کیا ہوتی؟ جیسے ایودھیا نے اتنے زمانے کے بعد بھی رام کو ہمارے من میں برقرار رکھا ہے، ویسے ہی لتا دیدی کے بھجنوں نے  ہماری روح کو  ’رام مئے‘ بنائے رکھا ہے۔  مانس کا منتر ’شری رام چندر کرپالو بھَج من، ہرَن بھو بھئے دارونم‘ ہو، یا میرا بائی کا ’پایو جی میں نے رام رتن دھن پاپو‘، بے شمار ایسے بھجن ہیں، باپو کا محبوب بھجن ’ویشنو جن‘ ہو، یا پھر ہر ایک کے من اتر چکا ’تم آشا وشواس ہمارے رام‘، ایسے میٹھے گیت ہوںٍ! لتا جی کی آواز میں انہیں سن کر  بے شمار ہم وطنوں نے بھگوان رام کے دَرشن کیے ہیں۔ ہم نے لتا دیدی  کی آوازوں کی ’دیویہ‘ مٹھاس سے رام کے  ’الوکِک مادُھریہ‘ کو محسوس کیا ہے۔

اور ساتھیوں،

موسیقی میں اثر صرف الفاظ اور آوازوں سے نہیں آتا۔ یہ اثر تب آتا ہے، جب بھجن گانے والے میں وہ جذبہ ہو، وہ بھکتی ہو، رام سے وہ ناطہ ہو، رام کے لیے وہ عقیدت ہو۔ اسی لیے، لتا جی کے ذریعے ادا کیے گئے منتروں میں، بھجنوں میں صرف  ان کی آواز ہی نہیں بلکہ ان کا عقیدہ، روحانیت اور تقدس بھی گونجتا ہے۔

ساتھیوں،

لتا دیدی کی آواز میں آج بھی ’وندے ماترم‘ کی اپیل سن کر ہماری آنکھوں کے سامنے بھارت ماتا  کی عظیم الشان شکل و صورت نظر آنے لگتی ہے۔ جس طرح لتا دیدی ہمیشہ شہریوں کے فرائض کو لے کر بہت بیدار رہیں، ویسے ہی یہ چوک بھی ایودھیا میں رہنے والے لوگوں کو، ایودھیا آنے والے لوگوں کو  فرائض کی تعمیل کا سبق دے گا۔ یہ چوک، یہ وینا، ایودھیا کی ترقی اور ایودھیا  کے حوصلے کو بھی مزید معنی خیز بنائے گا۔ لتا دیدی کے نام پر بنا یہ چوک، ہمارے ملک میں فنون کی دنیا سے وابستہ لوگوں کے لیے بھی حوصلہ کے مقام کی طرح کام کرے گا۔ یہ بتائے گا کہ  بھارت کی جڑوں سے جڑے رہ کر، جدیدیت کی جانب بڑھتے ہوئے، بھارت  کے فن و ثقافت کو  دنیا کے کونے کونے تک پہنچانا، یہ بھی ہماری ذمہ داری ہے۔ بھارت کی ہزاروں سال پرانی وراثت پر فخر کرتے ہوئے، بھارت کی ثقافت کو نئی نسل تک پہنچانا، یہ بھی ہماری ذمہ داری ہے۔ اس کے لیے لتا دیدی جیسی جفا کشی اور اپنی ثقافت کے تئیں بے پناہ محبت لازمی ہے۔

مجھے یقین ہے،  بھارت  کے فنون کی دنیا کے ہر ’سادھک‘ کو اس چوک سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔ لتا دیدی کی آواز  برسہا برس تک  ملک کے ذرے ذرے کو جوڑے رکھے گی، اسی یقین کے ساتھ، ایودھیا کے باشندوں سے بھی میری کچھ توقعات ہیں، مستقبل قریب میں رام مندر بننا ہے،  ملک کے کروڑوں لوگ ایودھیا آنے والے ہیں، آپ تصور کر سکتے ہیں ایودھیا کے باشندوں کو ایودھیا کو کتنا عظیم الشان بنانا ہوگا، کتنا خوبصورت بنانا ہوگا، کتنا صاف ستھرا بنانا ہوگا اور اس کی تیاری آج سے ہی کرنی چاہیے اور یہ کام ایودھیا کے ہر باشندے کو کرنا ہے، ہر ایودھیا والے کو کرنا ہے، تبھی جا کر ایودھیا کی آن بان شان، جب کوئی بھی مسافر آئے گا، تو رام مندر کی عقیدت کے ساتھ ساتھ ایودھیا کے انتظامات کو، ایودھیا کی عظمت کو، ایودھیا کی مہمان نوازی کو محسوس کرکے جائے گا۔ میرے ایودھیا کے بھائیوں اور بہنوں تیاریاں ابھی سے شروع کر دیجئے، اور لتا دیدی کا یوم پیدائش  ہمیشہ ہمیشہ کے لیے حوصلہ بخشتا رہے۔ چلئے بہت سی باتیں ہو چکیں، آپ سب کو بہت بہت مبارکباد۔

شکریہ!

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Indians Abroad Celebrate 74th Republic Day; Greetings Pour in from World Leaders

Media Coverage

Indians Abroad Celebrate 74th Republic Day; Greetings Pour in from World Leaders
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM thanks world leaders for their greetings on India’s 74th Republic Day
January 26, 2023
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has thanked world leaders for their greetings on India’s 74th Republic Day.

In response to a tweet by the Prime Minister of Australia, the Prime Minister said;

"Thank you Prime Minister @AlboMP. Greetings to you and to the friendly people of Australia on Australia Day."

In response to a tweet by the Prime Minister of Nepal, the Prime Minister said; "Thank You @cmprachanda ji for your warm wishes!"

In response to a tweet by the Prime Minister of Bhutan, the Prime Minister said; "Thank you @PMBhutan Dr. Lotay Tshering for your warm wishes! India is committed to its unique partnership with Bhutan for progress and prosperity of both our nations."

In response to a tweet by the President of Maldives, the Prime Minister said; "Thank you for your warm greetings, President @ibusolih. Glad to see the sustained progress achieved by India-Maldives partnership, underpinned by common democratic values."

In response to a tweet by the Prime Minister of Israel, the Prime Minister said; "Thank you for your warm wishes for India's Republic Day, PM @netanyahu. Look forward to further strengthening our strategic partnership."

In response to a tweet by the President of France, the Prime Minister said; "Grateful for your warm greetings my dear friend @EmmanuelMacron on India’s Republic Day. I share your commitment to work together for success of India’s G20 Presidency & 25th anniversary of India-France Strategic Partnership. India and France together are a force for global good."

In response to a tweet by the Prime Minister of Mauritius, the Prime Minister said; "Thank you, PM @KumarJugnauth. In our shared journey as modern Republics, our two countries have been partnering closely in people-centred development. Looking forward to taking our cherished partnership with Mauritius to even greater heights."