وزیراعظم نے تعاون، مشترکہ کوششوں اور آپسی تال میل کیلئے ریاستوں کی تعریف کی
وزرائے اعلی نے تمام ممکنہ مدد فراہم کرنے کیلئے وزیراعظم کا شکریہ ادا کیا
مہاراشٹر اور کیرالہ میں کووڈ معاملوں میں اضافہ کا رجحان تشویش کا باعث ہے: وزیراعظم
ٹیسٹ ٹریک، ٹریٹ اور ٹیکہ کا تجربہ کیا گیا ہے اور حکمت عملی ثابت ہوئی ہے: وزیراعظم
ہم نے تیسری لہر کے امکانات کو روکنے کیلئے سرگرم اقدامات کئے ہیں: وزیراعظم
بنیادی ڈھانچہ میں خلا کو،خاص طور پر دیہی علاقوں میں ، پورا کیا گیا: وزیراعظم
کورونا ابھی ختم نہیں ہوا ہے،ان لاکنگ کے بعد کے رویے کی تصویر تشویشناک ہے: وزیراعظم

نئی دہلی،16؍جولائی : نمسکار جی!

آپ سب نے کورونا کے خلاف ملک کی لڑائی میں بہت سے اہم نکات پر اپنی بات بتائی۔ صرف دو روز قبل ہی ، مجھے شمال مشرقی ریاستوں  کے تمام معزز وزرائے اعلی سے اسی موضوع پر گفتگو کرنے کا موقع ملا تھا۔ کیونکہ جہاں جہاں بھی پریشان کن صورتحال ہے۔ میں ان ریاستوں کے ساتھ خصوصی  طور سے بات  چیت کر رہا ہوں۔

ساتھیوں،

گذشتہ ڈیڑھ برسوں میں ، ملک نے باہمی تعاون اور متحدہ کوششوں سے ہی اس بڑی وبا کا مقابلہ کیا ہے۔ تمام ریاستی حکومتوں نے جس طرح سے ایک دوسرے سے سبق حاصل کرنے کی کوشش کی ہے ، انہوں نے بہترین طریقوں کو سمجھنے کی کوشش کی ہے۔ ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرنے کی کوشش کی ہے اور ہم اپنے تجربات  سے  یہ کہہ سکتے ہیں۔ کہ ایسی کوششوں سے ہم آگے کی اس لڑائی میں فاتح ثابت ہوسکتے ہیں۔

ساتھیوں،

آپ سب واقف ہیں کہ ہم ایک ایسے موڑ پرکھڑے  ہیں جہاں تیسری لہر کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔ جس طرح سے ملک کی بیشتر ریاستوں میں حکومتوں کی محنت کے باعث کیسوں کی تعداد کم ہوئے ہیں ، اس سے نفسیاتی طور پر ، کچھ راحت  تو ضرور محسوس ہوئی ہے۔ ماہرین بھی اس گراوٹ کو دیکھ کر  توقع کر رہے تھے کہ جلد ہی یہ ملک دوسری لہر سے مکمل طور پر نکل آئے گا۔ لیکن کچھ ریاستوں میں کیسوں کی بڑھتی ہوئی تعداد اب بھی تشویش ناک ہے۔

ساتھیوں،

آج جتنی ریاستیں ہیں ، چھ ریاستیں آج ہمارے ساتھ ہیں۔ اس بحث میں شامل ہوئی ہیں ، پچھلے ہفتے تقریباً 80 فیصد نئے معاملات اسی ریاستوں سے آئے ہیں جہاں آپ ہیں۔ ان ریاستوں میں 68 فیصد المناک اموات بھی ہوئیں۔ ابتداء میں ماہرین یہ فرض کر رہے تھے کہ جہاں دوسری لہر کی ابتدا ہوئی ہے ، صورتحال دوسروں کے مقابلہ میں پہلے ہی قابو میں ہوگی۔ لیکن معاملات میں اضافہ مہاراشٹر اور کیرالہ میں مسلسل دیکھا جارہا ہے۔ یہ واقعی ہم سب کے لئے ، ملک کے لیےتشویش کا باعث ہے۔ آپ سبھی واقف ہیں کہ دوسری لہر سے پہلے بھی جنوری-فروری میں اسی طرح کے رجحانات دیکھے گئے تھے۔ لہذا ، خدشات قدرتی طور پر بڑھتے ہیں کہ اگر اس کو قابو نہ کیا گیا تو صورتحال  مزید مشکل ہوسکتی ہے۔ یہ بہت ضروری ہے کہ جن ریاستوں میں معاملات بڑھ رہے ہیں ، انہیں تیسری لہر کے کسی بھی امکان کو روکنے کے لئے عملی اقدامات کرنا ہوں گے۔

ساتھیوں،

ماہرین کا کہنا ہے کہ طویل عرصے تک کیسوں میں مسلسل اضافہ ہونے کی وجہ سے ، کورونا وائرس میں تغیر کا امکان بڑھ جاتا ہے ، نئے قسم کی کیفیت کے پیدا ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ لہذا ، تیسری لہر کو روکنے کے لئے کورونا کے خلاف موثر اقدامات کرنا بہت ضروری ہے۔ اس سمت میں حکمت عملی وہی ہے ، جو آپ نے اپنی ریاستوں میں اپنائی ہے ، پورے ملک نے اس پر عمل درآمد کیا ہے۔ اور ہمارے پاس بھی اس کا ایک وسیع  تجربہ ہے۔ جو آپ کے لئے آزمودہ اور کارآمد طریقہ  ثابت ہوسکتا ہے۔ ٹیسٹ ، ٹریک اور علاج ۔ اب ہمیں صرف ٹیکہ کاری کی اپنی پہلے سے ہی وضع کردہ حکمت عملی پر فوکس کرتے ہوئے آگے بڑھنا ہے۔ ہمیں مائیکرو کنٹونمنٹ زون پر خصوصی توجہ دینی ہوگی۔ جن اضلاع میں مثبت کیسزکی  شرح زیادہ ہیں ، جہاں سے زیادہ تعداد میں کیسز آ رہے ہیں ، وہاں زیادہ توجہ دی جانی چاہئے۔ جب میں نارتھ ایسٹ کے دوستوں سے بات کر رہا تھا۔ تو ایک بات سامنے آئی کہ کچھ ریاستوں نے لاک ڈاؤن بالکل نہیں کیا۔ لیکن مائکرو  کنٹونمنٹ زون پر بہت زیادہ زور دیا گیا۔ اور اسی وجہ سے وہ حالات کو سنبھالنے میں کامیاب رہے۔ جانچ میں بھی ، ایسے اضلاع پر خصوصی توجہ ی جانی چاہیے جہاں کیسز بڑھ رہے ہیں۔  پوری ریاست میں جانچ کو زیادہ سے زیادہ بڑھایا جانا چاہئے۔ ان اضلاع میں جہاں زیادہ انفیکشن ہے ، ویکسین ہمارے لئے ایک اسٹریٹجک ٹول بھی ہے۔ ٹیکوں کے موثر استعمال سے کورونا کی وجہ سے پیدا ہونے والی پریشانیوں کو کم کیا جاسکتا ہے۔ بہت سی  ریاستیں اس وقت ہمارے پاس موجود ونڈو کا استعمال بھی کررہی ہیں تاکہ ان کی آر ٹی-پی سی آر جانچ کی صلاحیت کو بڑھایا جاسکے۔ یہ بھی ایک قابل ستائش اور ضروری قدم ہے۔ زیادہ سے زیادہ RT-PCR جانچ وائرس کو روکنے میں موثر ثابت ہوسکتی ہیں۔

ساتھیوں،

آئی سی یو میں نئے بیڈ بنانے ، جانچنے کی استعداد بڑھانے اور دیگر تمام ضروریات کے لئے ملک کی تمام ریاستوں کو فنڈز مہیا کیے جارہے ہیں۔ حال ہی میں ، مرکزی حکومت نے 23 ہزار کروڑ سے زائد کا ایمرجنسی کووڈ رسپانس پیکیج بھی جاری کیا ہے۔ میں چاہوں گا کہ اس بجٹ کو صحت کے بنیادی ڈھانچے کو مزید مستحکم کرنے کے لئے استعمال کیا جائے۔ ریاستوں میں جو بھی 'بنیادی ڈھانچے' ہیں ، ان کو تیزی سے پُر کیا جائے۔ خاص طور پر دیہی علاقوں – دور درازمقامات میں ، ہمیں مزید محنت کی ضرورت ہے۔ اس کے ساتھ ہی ، تمام ریاستوں میں آئی ٹی سسٹم ، کنٹرول روم اور کال سنٹرز کے نیٹ ورک کو مضبوط بنانا بھی اتنا ہی ضروری ہے۔ اس کے ساتھ ، وسائل کا ڈیٹا ، اس کی معلومات شہریوں کو شفاف انداز میں دستیاب کرائی جانی چاہیے۔ مریضوں اور ان کے لواحقین کو علاج کے لئے یہاں وہاں بھاگنا نہ پڑ ے ایسے انتظامات کیے جائیں۔

ساتھیوں،

مجھے بتایا گیا ہے کہ آپ کی ریاستوں میں جو 332 PSA پلانٹ مختص کیے گئے ہیں ان میں سے 53پر کام شروع کر دیا گیا ہے۔ میری تمام ریاستوں سے گزارش ہے کہ وہ PSA آکسیجن پلانٹوں کو جلد سے جلد مکمل کریں۔ اس کام کے لیے کسی ایک سینئر آفیسر کو خصوصی طور پر رکھیں ، اور اس کام کو 15-20 دن کے مشن موڈ میں مکمل کریں۔

ساتھیوں،

ایک اور  گہری تشویش بچوں کے بارے میں بھی ہے۔ ہمیں بچوں کو کورونا انفیکشن سے بچانے کے لئے پوری کوشش کرنی ہوگی۔

ساتھیوں،

ہم دیکھ رہے ہیں کہ پچھلے دو ہفتوں میں ، یورپ کے بہت سے ممالک میں کورونا کے کیسز بہت تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ اگر ہم مغرب کی طرف دیکھیں ، چاہے وہ یورپ کا ملک ہو یا امریکہ ، یہاں ہم مشرق کی طرف دیکھتے ہیں ، پھر بنگلہ دیش ، میانمار ، انڈونیشیا ، تھائی لینڈ ، معاملات بہت تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ ایک طرح سے ، کہیں چار گنا اضافہ ہوا ہے ، کہیں آٹھ گنا اور  کہیں دس گنا۔ یہ پوری دنیا کے لئے ایک انتباہ ہے ، اور ہمارے لئے بھی ، ایک بہت بڑی وارننگ ہے۔ ہمیں لوگوں کو بار بار یاد دلانا ہوگا کہ کورونا ہمارے درمیان سے نہیں گیا ہے۔ یہاں کی بیشتر مقامات سے اَنلاک کرنے کے بعد جو تصاویر آرہی ہیں وہ اس تشویش کو اور بھی بڑھاتی ہیں۔ میں صرف اس سلسلے میں نارتھ ایسٹ کے تمام دوستوں سے بات کر رہا تھا ، میں نے اس دن بھی اس کا تذکرہ کیا تھا۔ آج میں اس بات پر ایک بار پھر زور دے کر کہنا چاہتا ہوں۔ آج جو ریاستیں ہمارے ساتھ جڑی  ہیں ،ان میں سے تو کئی  بہت بڑے شہر(میٹروپولیٹن سیٹی) ہیں ، وہاں  بہت گنجان آبادی ہے۔ ہمیں اس کو بھی دھیان میں رکھنا ہوگا۔ عوامی مقامات پر ہجوم کو روکنے کے لئے ہمیں ہوشیار ، مستعد اور سخت رہنا ہوگا۔ حکومت کے ساتھ ساتھ - ہمیں سول سوسائٹی سمیت دیگر سیاسی جماعتوں ، سماجی تنظیموں اور این جی اوز کو بھی ساتھ لے کر لوگوں کو مستقل آگاہ کرتے رہنا ہوگا ۔ مجھے یقین ہے کہ آپ کا وسیع تجربہ اس سمت میں بہت کام آئے گا۔ اس اہم ملاقات کے لئے وقت نکالنے کے لئے آپ کا بہت بہت شکریہ! اور جیسا کہ آپ سب وزرائے اعلی نے جن خاص چیزوں کا تذکرہ کیاہے۔ میں ہر لمحہ دستیاب ہوں۔ ہمارا رابطہ بنا رہتا ہے ۔ میں آئندہ بھی ہمیشہ دستیاب رہوں گا۔ تاکہ ہم سب  مل کر بنی نوع انساں کو اس بحران سے بچانے کی  اس مہم میں اپنی متعلقہ ریاستوں کو بھی  بچاسکیں۔ میں آپ سب کو نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ بہت بہت شکریہ !

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Flash composite PMI up at 61.7 in May, job creation strongest in 18 years

Media Coverage

Flash composite PMI up at 61.7 in May, job creation strongest in 18 years
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi addresses massive public meetings in Gurdaspur & Jalandhar, Punjab
May 24, 2024
INDI alliance people are a great danger to the security of country: PM Modi in Gurdaspur, Punjab
The problem with Congress is that it has no faith in India: PM Modi in Gurdaspur, Punjab
Skewed version of history left generations unaware of the true events, such as the tragedy of partition in Punjab: PM Modi slams Congress party
The Jhadu Party has learned the lesson of Emergency from Congress: PM Modi against the ruling party in Punjab
Where there is Congress, there are problems and where there is BJP, there are solutions: PM Modi in Jalandhar

Prime Minister Narendra Modi addressed spirited public gatherings in Gurdaspur and Jalandhar, Punjab, where he paid his respects to the sacred land and reflected upon the special bond between Punjab and the Bharatiya Janata Party.

Addressing the gathering PM Modi highlighted, the INDI alliance’s misgovernance in the state and said, “Who knows the real face of the INDI alliance better than Punjab? They've inflicted the most wounds on our Punjab. The wound of division after independence, the long period of instability due to selfishness, a long period of unrest in Punjab, an attack on the brotherhood of Punjab, and an insult to our faith, what hasn't Congress done in Punjab? Here, they fueled separatism. Then they orchestrated a massacre of Sikhs in Delhi. As long as Congress was in the Central government, they saved the rioters. It's Modi who opened the files of the Sikh riots. It's Modi who got the culprits punished. Even today, Congress and its ally party are troubled by this. That's why these people keep abusing Modi day and night."

Speaking about the INDI alliance governance and its strategy concerning National Security, PM Modi said, “These INDI alliance people are a great danger to the security of the country. They are talking about reintroducing Article 370 in Kashmir. They want terrorism back in Kashmir. They want to hand over Kashmir to separatists again. They will send messages of friendship to Pakistan again. They will send roses to Pakistan. Pakistan will carry out bomb blasts.”

“There will be terrorist attacks on the country. Congress will say, we have to talk no matter what. For this, Congress has already started creating an atmosphere. Their leaders are saying, Pakistan has an atomic bomb. Their people are saying, we'll have to live in fear of Pakistan. These INDI alliance people are speaking Pakistan's language,” he added.

Discarding the anti-national thought process of the Congress and INDI alliance, PM Modi said, “The problem with Congress is that it has no faith in India. The scions of Congress tarnish the country's image when they go abroad. They say that India is not a nation. Therefore, they want to change the nation's identity. The mentor of the scions has said that the construction of the Ram temple and celebrating Ram Navami in the country threatens the identity of India.”

Emphasizing the need for rapid development, PM Modi assured the people of Gurdaspur, Punjab, and the entire country of his unwavering commitment to their progress and prosperity. He said, “Punjab's development is Modi's priority. The BJP government is building highways like the Delhi-Katra highway and the Amritsar-Pathankot highway here. BJP is developing railway facilities here.”

“Our effort is to create new opportunities in Punjab, to benefit the farmers. In the last 10 years, we have procured record amounts of rice and wheat across Punjab. The MSP, which was fixed during the Congress government, has been increased by two and a half times. Farmers are receiving PM Kisan Samman Nidhi for seeds, fertilizers, and other necessities,” PM Modi added.

Regarding the ongoing elections, PM Modi urged the citizens to choose leadership that prioritizes the nation's interests. Contrasting the BJP-led NDA’s clear vision for a developed India with the divisive and dynastic politics of the INDI alliance, PM Modi called for support for the BJP to ensure continued progress and stability.

In his second mega rally of the day in Jalandhar, Punjab, PM Modi highlighted the shifting political sentiments. He noted that people no longer want to vote for Congress and the INDI Alliance, as it would mean wasting their votes. Emphasizing the strong support in Punjab, he concluded with a resonant call, ‘Phir Ek Baar, Modi Sarkar’!

PM Modi criticized the Congress for its appeasement politics, claiming that the party favored its vote bank at the expense of accurate historical narratives. He noted that Congress had favoured its own family and Mughal families in history books, neglecting the sacrifices of our Sahibzadas. The PM also asserted that this skewed version of history left generations unaware of the true events, such as the tragedy of partition in Punjab. ‘Congress’, he said, “hid these truths to protect its vote bank and avoid exposing its misdeeds”.

PM Modi underscored the BJP-NDA government's commitment to Hindu and Sikh families left behind during the partition, citing the CAA law as a significant step towards granting them Indian citizenship. He heavily disregarded Congress for opposing the CAA and stated that Congress intends to repeal the law if they come to power, denying these communities their rightful citizenship.

The PM explicitly compared the Jhadu Party (AAP) to Congress, calling it a "photocopy party" that has adopted Congress's oppressive tactics. He strongly condemned their actions against media houses that resist their threats, exposing their true nature. He also made the audience aware of the destructive alliance between Congress and the Aam Aadmi Party in Punjab, stressing that voting for either party is voting against Punjab's interests.

Highlighting the Congress party's lack of faith in India and its attempts to undermine the nation's identity, PM Modi urged voters to reject such divisive politics. He underscored the BJP's commitment to Punjab's development, citing initiatives to improve infrastructure, support farmers, and promote food processing industries. PM Modi sought the blessings of the people of Gurdaspur and Jalandhar, and urged them to vote for BJP candidates in the upcoming elections to secure a brighter future for Punjab and the nation.