"ਜਦੋਂ ਮਹਿਲਾਵਾਂ ਸਮ੍ਰਿੱਧ ਹੁੰਦੀਆਂ ਹਨ, ਤਾਂ ਦੁਨੀਆ ਸਮ੍ਰਿੱਧ ਹੁੰਦੀ ਹੈ"
"ਭਾਰਤ ਵਿੱਚ ਗ੍ਰਾਮੀਣ ਸਥਾਨਕ ਸੰਸਥਾਵਾਂ ਵਿੱਚ ਚੁਣੇ ਗਏ ਨੁਮਾਇੰਦਿਆਂ ਵਿੱਚੋਂ 46% ਮਹਿਲਾਵਾਂ ਹਨ, ਜੋ ਗਿਣਤੀ ਵਿੱਚ 14 ਲੱਖ ਹਨ"
"ਭਾਰਤ ਵਿੱਚ ਮਹਿਲਾਵਾਂ ਨੂੰ 'ਮਿਸ਼ਨ ਲਾਈਫ' - ਵਾਤਾਵਰਣ ਲਈ ਜੀਵਨ ਸ਼ੈਲੀ ਦਾ ਬ੍ਰਾਂਡ ਅੰਬੈਸਡਰ ਬਣਾਇਆ ਗਿਆ ਹੈ"
"ਕੁਦਰਤ ਨਾਲ ਉਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਨਜ਼ਦੀਕੀ ਸਬੰਧਾਂ ਨੂੰ ਦੇਖਦੇ ਹੋਏ, ਮਹਿਲਾਵਾਂ ਕੋਲ ਜਲਵਾਯੂ ਤਬਦੀਲੀ ਦੇ ਨਵੀਨਤਾਕਾਰੀ ਸਮਾਧਾਨਾਂ ਦੀ ਕੁੰਜੀ ਹੈ"
"ਸਾਨੂੰ ਉਨ੍ਹਾਂ ਰੁਕਾਵਟਾਂ ਨੂੰ ਦੂਰ ਕਰਨ ਲਈ ਕੰਮ ਕਰਨਾ ਚਾਹੀਦਾ ਹੈ ਜੋ ਮਹਿਲਾਵਾਂ ਦੀ ਬਾਜ਼ਾਰਾਂ, ਗਲੋਬਲ ਵੈਲਯੂ-ਚੇਨ ਅਤੇ ਕਿਫਾਇਤੀ ਵਿੱਤ ਤੱਕ ਪਹੁੰਚ ਨੂੰ ਸੀਮਤ ਕਰਦੀਆਂ ਹਨ"
"ਭਾਰਤ ਦੀ ਜੀ-20 ਪ੍ਰੈਜ਼ੀਡੈਂਸੀ ਦੇ ਅਧੀਨ, 'ਮਹਿਲਾ ਸਸ਼ਕਤੀਕਰਨ' 'ਤੇ ਇੱਕ ਨਵਾਂ ਕਾਰਜ ਸਮੂਹ ਸਥਾਪਤ ਕਰਨ ਦਾ ਫੈਸਲਾ ਕੀਤਾ ਗਿਆ ਹੈ"

عزت مآب ، خواتین، و حضرات، نمسکار!

میں آپ سب کو گاندھی نگر میں خوش آمدید کہتا ہوں، اس شہر کا نام مہاتما گاندھی کے نام پر ہے، اس کے قیام کے دن کے موقع پر مجھے خوشی ہے کہ آپ کو احمد آباد میں گاندھی آشرم جانے کا موقع ملا ہے۔ آج، پوری دنیا موسمیاتی تبدیلی، گلوبل وارمنگ، اور پائیدار حل تلاش کرنے کی فوری ضرورت کے بارے میں بات کر رہی ہے۔ گاندھی آشرم میں، آپ گاندھی جی کے طرز زندگی کی سادگی اور پائیداری، خود انحصاری اور مساوات کے ان کے بصیرت افروز ویژن کا مشاہدہ کریں گے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ اسے متاثر کن پائیں گے۔ آپ کو ڈانڈی کٹیر میوزیم میں بھی اس کا تجربہ کرنے کا موقع ملے گا، ایک ایسا موقع جس سے آپ کو محروم نہیں ہونا چاہیے۔ یہاں یہ بتانا بے جا نہ ہوگا کہ گاندھی جی کا مشہور چرخہ،  سوت کاتنے  کا پہیہ ، گنگا بین نامی ایک خاتون کو قریبی گاؤں سے ملا تھا۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں، اس کے بعد سے، گاندھی جی ہمیشہ کھادی پہنتے تھے، جو خود انحصاری اور پائیداری کی علامت بن گئی۔

دوستو

جب خواتین خوشحال ہوتی ہیں تو دنیا بھی  خوشحال نظر آتی ہے۔ ان کی معاشی طاقت ترقی کو فروغ دیتی ہے۔ تعلیم تک ان کی رسائی عالمی ترقی کو آگے بڑھاتی ہے۔ ان کی قیادت شمولیت کو فروغ دیتی ہے۔ اور ان کی آوازیں مثبت تبدیلی کی تحریک دیتی ہیں۔ خواتین کو بااختیار بنانے کا سب سے مؤثر طریقہ خواتین کی زیر قیادت ترقی کا طریقہ ہے۔ ہندوستان  اس سمت میں قدم بڑھا رہا ہے۔

دوستو

ہندوستان کی صدر محترمہ  دروپدی مرمو نے خود ایک متاثر کن مثال قائم کی ہے ۔ وہ ایک عاجز قبائلی پس منظر سے آتی ہیں۔ لیکن اب دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کی قیادت کر رہی  ہیں اور دنیا کی دوسری سب سے بڑی دفاعی قوت کے کمانڈر ان چیف کے طور پر کام کررہی  ہیں۔ اس مدر آف ڈیموکریسی میں ‘ووٹ کا حق’ ہندوستانی آئین نے شروع سے ہی خواتین سمیت تمام شہریوں کو یکساں طور پر دیا تھا۔ الیکشن لڑنے کا حق بھی برابری کی بنیاد پر دیا گیا۔ منتخب خواتین نمائندہ  معاشی، ماحولیاتی اور سماجی تبدیلی کی کلیدی  کردار  رہی ہیں۔ ہندوستان کے دیہی بلدیاتی اداروں میں 1.4 ملین کے ساتھ منتخب نمائندوں میں سے 46فیصد خواتین ہیں۔ سیلف ہیلپ گروپوں میں خواتین کا متحرک ہونا بھی تبدیلی کے لیے ایک طاقتور ذریعہ رہا ہے۔ وبائی مرض کے دوران، یہ سیلف ہیلپ گروپس اور خواتین کے منتخب نمائندے ہماری کمیونٹیز کے لیے سپورٹ کے ستون بن کر اُبھرے۔ انہوں نے ماسک اور سینیٹائزر بنانے کے ساتھ ساتھ انفیکشن سے بچاؤ کے بارے میں آگاہی پیدا کی۔ ہندوستان میں 80فیصد سے زیادہ نرسیں اور مڈ وائف خواتین ہیں۔ وہ وبائی امراض کے دوران ہمارے دفاع کی پہلی صف تھیں اور، ہمیں ان کی کامیابیوں پر فخر ہے۔

دوستو

ہندوستان میں خواتین کی زیر قیادت ترقی ہمارے لیے ایک اہم ترجیح رہی ہے۔ پردھان منتری مدرا یوجنا کے تحت تقریباً 70 فیصد قرض خواتین کے لئے منظور کیے گئے ہیں۔ یہ مائیکرو لیول یونٹس کی مدد کے لیے دس لاکھ روپے تک کے قرضے ہیں۔ اسی طرح، اسٹینڈ۔ اپ انڈیا کے تحت فائدہ اٹھانے والوں میں 80فیصد خواتین ہیں، جو گرین فیلڈ پروجیکٹوں کے لیے بینک قرض حاصل کر رہی ہیں۔ پردھان منتری اجولا یوجنا کے تحت دیہی خواتین کو تقریباً 100 ملین کھانا پکانے کے گیس کنکشن فراہم کیے گئے ہیں۔ کھانا پکانے کے صاف ایندھن کی فراہمی ماحول کو براہ راست متاثر کرتی ہے اور خواتین کی صحت کو بہتر بناتی ہے۔ صنعتی تربیتی اداروں میں فنی تعلیم دینے والی خواتین کی تعداد 2014 سے دوگنا ہو گئی ہے۔

اور، بھارت میں تقریباً 43فیصد ایس ٹی ای ایم گریجویٹس خواتین ہیں ،  یہ  سائنس، ٹیکنالوجی، انجینئرنگ، اور ریاضی کے شعبے ہیں۔ ہندوستان میں خلائی سائنسدانوں میں تقریباً ایک چوتھائی خواتین ہیں۔ چندریان، گگنیان اور مشن مارس جیسے ہمارے فلیگ شپ پروگراموں کی کامیابی کے پیچھے خواتین سائنسدانوں کی قابلیت اور محنت شامل ہے۔ آج ہندوستان میں مردوں کی نسبت زیادہ خواتین اعلیٰ تعلیم میں داخلہ لے رہی ہیں۔ ہمارے پاس شہری ہوا بازی میں خاتون  پائلٹوں کا فیصد سب سے زیادہ ہے اور، ہندوستانی فضائیہ میں خواتین پائلٹ اب لڑاکا طیارے اڑا رہی ہیں۔ خا تون افسران کو ہماری تمام مسلح افواج میں آپریشنل رولز اور فائٹنگ پلیٹ فارموں میں تعینات کیا جا رہا ہے۔

دوستو

ہندوستان میں، اور گلوبل ساؤتھ میں، خواتین دیہی زرعی خاندانوں کی ریڑھ کی ہڈی کے طور پر، اور چھوٹے تاجروں اور دکانداروں کے طور پر اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ فطرت کے ساتھ ان کی قریبی وابستگی کے پیش نظر، خواتین موسمیاتی تبدیلی کے جدید حل کی کلید رکھتی ہیں۔ مجھے یاد ہے کہ کس طرح خواتین نے 18ویں صدی میں ہندوستان میں پہلی نمایاں آب و ہوا کی کارروائی کی قیادت کی۔ راجستھان کی بشنوئی برادری نے امرتا دیوی کی قیادت میں ‘چپکو تحریک’ شروع کی۔ یہ غیر منظم   طور پر درختوں  کو  کاٹنے سے  روکنے کے لیے درختوں کو گلے لگانے کی تحریک تھی۔ کئی دوسرے گاؤں والوں کے ساتھ، انہوں نے فطرت  کے تحفظ کی خاطر اپنی جان دے دی۔ ہندوستان میں خواتین ‘مشن لائف’ - طرز زندگی برائے ماحولیات کی برانڈ ایمبیسیڈر بھی رہی ہیں۔ وہ روایتی فہم و دانش  کی بنیاد پر چیزوں کو کم استعمال  کرتی ہیں،  اسےدوبارہ استعمال کرتی ہیں، ری سائیکل کرتی ہیں   اور اپنی ضرورت  کے حساب سے انہیں  دوبارہ با  مقصد بنا تی  ہیں۔ مختلف اقدامات کے تحت، خواتین سولر پینلز اور لائٹس بنانے کی سرگرمی سے تربیت حاصل کر رہی ہیں۔ ‘سولر ماماس’  گلوبل ساؤتھ میں ہمارے شراکت دار ممالک کے ساتھ کامیاب شراکت دار رہے ہیں ۔

دوستو

خواتین کاروباری افراد عالمی معیشت میں اہم شراکت دار ہیں۔ ہندوستان میں خواتین کاروباریوں کا کردار نیا نہیں ہے۔ دہائیوں پہلے، 1959 میں، ممبئی میں سات گجراتی خواتین نے مل کر ایک تاریخی تعاون پر مبنی تحریک - شری مہیلا گرہ ادیوگ قائم کیا۔ تب سے، اس نے لاکھوں خواتین اور ان کے خاندانوں کی زندگیوں کو بدل کر رکھ  دیا ہے۔ ان کا سب سے مشہور پروڈکٹ، لجت پاپڑ، غالباً گجرات میں آپ کے مینو پر ہوگا! ہماری کوآپریٹو تحریک کی ایک اور کامیابی کی کہانی ڈیری سیکٹر ہے۔  اسے  بھی خواتین کی طرف سے طاقت فراہم کی جارہی ہے۔صرف ریاست گجرات میں ہی  3.6 ملین خواتین ڈیری کے شعبے سے وابستہ ہیں۔ اور، پورے ہندوستان میں ایسی بہت سی اور بہت سی متاثر کن کہانیاں ہیں۔ ہندوستان میں، تقریباً 15فیصد یونیکورن اسٹارٹ۔ اپس کی بانی کم از کم ایک خاتون ہے۔ ان خواتین کی زیر قیادت ایک تنگاوالا کی مشترکہ قیمت 40 بلین ڈالر سے زیادہ ہے۔ تاہم، ہمارا مقصد ایک ایسا  مساوی  پلیٹ فارم تیار کرنا ہے جہاں کامیابی حاصل کرنے والی خواتین معمول کا حصہ  بن جائیں۔ ہمیں ان رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے جو مارکیٹوں، عالمی ویلیو چینز اور سستی مالیات تک ان کی رسائی کو محدود کرتی ہیں۔ ساتھ ہی، ہمیں اس بات کو یقینی بنانا ہوگا کہ دیکھ بھال اور گھریلو کام کے بوجھ کو مناسب طریقے سے حل کیا جائے۔

عزت مآب

خواتین کی انٹرپرینیورشپ، قیادت اور تعلیم پر آپ کی توجہ قابل تعریف ہے۔ مجھے اس بات کی بھی خوشی ہے کہ آپ خواتین کے لیے ڈیجیٹل اور مالیاتی خواندگی کو بڑھانے کے لیے ‘ٹیک- ایکویٹی پلیٹ فارم’  شروع کر رہے ہیں۔ اور، مجھے اس بات کی بھی  خوشی ہے کہ ہندوستانی صدارت کے تحت، ‘خواتین کو بااختیار بنانے’  پر ایک نیا ورکنگ گروپ قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، گاندھی نگر میں آپ کی انتھک کوششوں سے دنیا بھر کی خواتین کو بے پناہ امید اور اعتماد  حاصل ہو گا۔ ایک  نتیجہ خیز اور کامیاب میٹنگ کے لیے  میں آپ سب کے لئے  نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

شکریہ

بہت بہت شکریہ.

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
UPI payment: How NRIs would benefit from global expansion of this Made-in-India system

Media Coverage

UPI payment: How NRIs would benefit from global expansion of this Made-in-India system
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 21 فروری 2024
February 21, 2024

Resounding Applause for Transformative Initiatives: A Glimpse into PM Modi's Recent Milestones