“Going to Gurudwaras, spending time in ‘sewa’, getting langar, staying at the homes of Sikh families has been a part of my life”
“Our Gurus have taught us courage and service”
“New India is scaling new dimensions and is leaving its mark on the whole world”
“I have always considered our Indian diaspora as ‘Rashtrdoot’ of India. All of you are the strong voice and lofty identity of Maa Bharati abroad”
“Feet of Gurus sanctified this great land and inspired its people”
“Sikh tradition is a living tradition of ‘Ek Bharat Shreshth Bharat’”
​​​​​​​“Sikh community is synonymous with the courage, prowess and hard work of the country”

نئی دہلی، 29 اپریل، 2022/ این آئی ڈی فاؤنڈیشن کے چیف سرپرست اور چنڈی گڑھ یونیورسٹی کے چانسلر میرے دوست جناب ستنام سنگھ سندھو جی، این آئی ڈی فاؤنڈیشن کے تمام ممبران اور تمام معزز ساتھی! مجھے پہلے بھی آپ میں سے کچھ سے ملنے کا موقع ملتا رہا ہے۔ گرودواروں میں جانا، خدمت میں وقت گزارنا، لنگر لینا، سکھ خاندانوں کے گھروں میں رہنا میری زندگی کا بہت فطری حصہ رہا ہے۔ وقتاً فوقتاً یہاں کے وزیر اعظم کی رہائش گاہ میں سکھ سنتوں کے قدم پڑتے رہتے ہیں اور یہ میری بڑی خوش قسمتی رہی ہے۔ مجھے اکثر ان کی صحبت نصیب ہوتی ہے۔

بھائیو بہنو،

جب میں غیر ملکی دورے پر جاتا ہوں تو وہاں سکھ برادری کے لوگوں سے ملتا ہوں تو  مجھے بڑا فخرمحسوس ہوتا ہے۔ آپ میں سے بہت سے لوگوں کو میرا 2015 میں کینیڈا کا سفر یاد ہوگا! اور دلائی جی کو میں اس وقت سے جانتا ہوں جب میں وزیر اعلیٰ نہیں تھا۔ چار دہائیوں میں کسی بھارتی وزیر اعظم کا کینیڈا کا یہ پہلا دو طرفہ دورہ تھا اور میں اوٹاوا اور ٹورنٹو گیا تھا۔ مجھے یاد ہے تب میں نے کہا تھا کہ میں وینکوور جاؤں گا اور میں وہاں جانا چاہتا ہوں۔ میں وہاں گیا، مجھے گردوارہ خالصہ دیوان میں سر جھکانے کی سعادت حاصل ہوئی۔ مجلس کے ارکان کے ساتھ اچھی باتیں ہوئیں۔ اسی طرح جب میں 2016 میں ایران گیا تو وہاں بھی تہران میں بھائی گنگا سنگھ سبھا گوردوارہ جانے کا شرف حاصل ہوا۔ میری زندگی کا ایک اور ناقابل فراموش لمحہ میرا فرانس میں نواہاپلے انڈین میموریل کا دورہ ہے۔ یہ یادگار پہلی جنگ عظیم کے دوران بھارتی فوجیوں کی قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرتی ہے اور ان میں بڑی تعداد ہمارے سکھ بھائیوں اور بہنوں کی تھی۔ یہ تجربات اس بات کی ایک مثال ہیں کہ کس طرح ہمارا سکھ معاشرہ بھارت اور دوسرے ممالک کے درمیان تعلقات میں ایک مضبوط کڑی کے طور پر کام کرتا ہے۔ یہ میری خوش قسمتی ہے کہ آج مجھے اس سلسلے کو مزید مضبوط کرنے کا موقع ملا ہے اور میں اس کے لیے ہر ممکن کوشش کرتا رہتا ہوں۔

ساتھیو،
ہمارے گروؤں نے ہمیں ہمت اور خدمت سکھائی ہے۔ ہمارے بھارت کے لوگ بغیر کسی وسائل کے دنیا کے مختلف حصوں میں گئے، اور اپنی محنت سے کامیابیاں حاصل کیں۔ یہ جذبہ آج نئے بھارت کی روح بن چکا ہے۔ نیا بھارت پوری دنیا پر اپنی چھاپ چھوڑ کر نئی جہتوں کو چھو رہا ہے۔ کورونا وبا کا یہ دور اس کی سب سے بڑی مثال ہے۔ وبا کے آغاز میں پرانے ذہن کے لوگ بھارت کے بارے میں تشویش کا اظہار کر رہے تھے۔ ہر کوئی کچھ نہ کچھ کہتا رہا۔ لیکن، اب لوگ بھارت کی مثال دیتے ہیں اور دنیا کو بتاتے ہیں کہ دیکھیں بھارت نے یہ کیا ہے۔ پہلے کہا جا رہا تھا کہ بھارت کی اتنی بڑی آبادی ہے، بھارت کو ویکسین کہاں سے ملے گی، لوگوں کی جانیں کیسے بچیں گی؟ لیکن آج بھارت ویکسین بنانے والا سب سے بڑا ملک بن کر ابھرا ہے۔ ہمارے ملک میں ویکسین کی کروڑوں خوراکیں دی گئی ہیں۔ آپ کو یہ سن کر بھی فخر ہو گا کہ 99 فیصدٹیکہ کاری ہماری اپنی میڈ ان انڈیا ویکسینز کے ذریعے کی گئی ہے۔ اس عرصے میں، ہم دنیا کے سب سے بڑے اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم کے طور پر ابھرے ہیں۔ ہمارے یونی کورن  کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ بھارت کا یہ بڑھتا ہوا قد، یہ بڑھتی ہوئی ساکھ، اگر کسی کا سر اس سے اونچا ہوا ہے تو وہ ہماری بیرون ملک مقیم بھارتی برادری کا ہے۔ کیونکہ جب ملک کی عزت بڑھتی ہے تو بھارتی نژاد کروڑوں لوگوں کی عزت بھی اتنی ہی بڑھ جاتی ہے۔ ان کے بارے میں دنیا کا نظریہ بدل جاتا ہے۔ اس احترام کے ساتھ نئے موقعے، نئی شراکت داری اور تحفظ کا مضبوط احساس آتا ہے۔ میں نے ہمیشہ اپنے بیرون ملک مقیم بھارتی برادری کو بھارت کا قومی سفیر سمجھا ہے۔ حکومت جسے  بھیجتی ہے وہ سفیر ہے۔ لیکن آپ قومی سفیر ہیں۔ آپ سب بھارت سے باہر ہیں، ماں بھارتی کی بلند آواز، بلند شناخت۔ بھارت کی ترقی دیکھ کر آپ کا سینہ بھی چوڑا ہوتا ہے، آپ کا سر بھی فخر سے بلند ہوتا ہے۔ بیرون ملک رہتے ہوئے آپ اپنے ملک کی بھی فکر کرتے ہیں۔ لہذا، بیرون ملک رہتے ہوئے بھارت کی کامیابی کو آگے بڑھانے میں، بھارت کی شبیہ کو مزید مضبوط کرنے میں آپ کا بہت بڑا کردار ہے۔ ہم دنیا میں کہیں بھی رہتے ہیں، بھارت پہلے، قوم سب سے پہلے ہمارا پہلا ایمان ہونا چاہیے۔

ساتھیو،
ہمارے تمام دس گروؤں نے قوم کو سرفہرست رکھ کر بھارت کو متحد کیا تھا۔ گرو نانک دیو جی نے پوری قوم کے شعور کو بیدار کیا، پوری قوم کو اندھیروں سے نکالا اور روشنی کی راہ دکھائی۔ ہمارے گرو نے پورے بھارت میں مشرق سے مغرب، شمال سے جنوب تک کا سفر کیا۔ ہر جگہ، جہاں بھی جاتے ہیں، ان کے پاس نشانیاں ہیں، ان کے پاس الہام ہے، ان کے لیے ایمان ہے۔ پنجاب میں گوردوارہ ہرمندر صاحب جی سے لے کر اتراکھنڈ کے گوردوارہ شری ہیم کنڈ صاحب تک، مہاراشٹر کے گوردوارہ حضور صاحب سے لے کر ہماچل میں گوردوارہ پاونٹا صاحب تک، بہار میں تخت شری پٹنہ صاحب سے لے کر گجرات کے کچھ میں گوردوارہ لکھپت صاحب تک، ہمارے گرووں نے لوگوں کو متاثر کیا، اس زمین کو اپنے قدموں سے پاک کیا۔ اس لیے سکھ روایت دراصل 'ایک بھارت، شریسٹھ بھارت' کی زندہ روایت ہے۔

بھائیو اور بہنو،

سکھ برادری کی جدوجہد آزادی میں اور آزادی کے بعد بھی ملک کے لیے جو تعاون دیا گیا ہے اس کے لیے پورا بھارت شکر گزار ہے۔ مہاراجہ رنجیت سنگھ کا تعاون ہو، انگریزوں کے خلاف جنگ ہو یا جلیانوالہ باغ، ان کے بغیر نہ بھارت کی تاریخ مکمل ہے اور نہ ہی بھارت مکمل ہے۔ آج بھی سرحد پر کھڑے سکھ فوجیوں کی بہادری سے لے کر ملک کی معیشت میں سکھ برادری کی شراکت اور سکھ بیرون ملک مقیم بھارتیوں کے تعاون تک سکھ برادری ملک کی ہمت، ملک کی طاقت اور ملکی محنت کی مترادف ہے۔

ساتھیو،
آزادی کا امرت مہوتسو ہماری آزادی کی جدوجہد کے ساتھ ساتھ ہماری ثقافت اور ورثے  کا جشن  منانے کا موقع ہے۔ کیونکہ، بھارت کی جدوجہد آزادی صرف ایک محدود مدت کا واقعہ نہیں ہے۔ اس کے پیچھے ہزاروں سال کا شعور اور نظریات جڑے ہوئے تھے۔ اس کے پیچھے روحانی اقدار اور بہت سی قربانیاں وابستہ تھیں۔ یہی وجہ ہے کہ آج جب ملک ایک طرف آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے تو وہیں لال قلعہ میں گرو تیغ بہادر جی کا 400 واں پرکاش پرو بھی منا رہا ہے۔ گرو تیغ بہادر جی کے 400 ویں پرکاش پرو سے پہلے، ہم نے بھی گرو نانک دیو جی کے 550 ویں پرکاش پرو کو ملک اور بیرون ملک پوری عقیدت کے ساتھ منایا۔ ہمیں گرو گوبند سنگھ جی کے 350 ویں پرکاش پرو کی بھی خوش قسمتی ملی۔

ساتھیو،
اس کے ساتھ کرتارپور صاحب کوریڈور بھی اسی عرصے میں تعمیر کیا گیا۔ آج لاکھوں عقیدت مندوں کو وہاں سر جھکانے کی سعادت حاصل ہو رہی ہے۔ لنگر کو ٹیکس فری بنانے سے لے کر، ہرمندر صاحب کو ایف سی آر اے کی اجازت دینے سے لے کر، گوردواروں کے ارد گرد صفائی کو بڑھانے سے لے کر انہیں بہتر بنیادی ڈھانچے سے جوڑنے تک، ملک آج ہر ممکن کوشش کر رہا ہے اور میں ستنام جی کا شکریہ ادا کرتا ہوں جس طرح انہوں نے کیا تھا۔ ویڈیو مرتب کرکے دکھایا گیا ہے۔ ہر شعبے میں کس طرح پوری لگن کے ساتھ کام کیا گیا ہے اس کا پتہ چل سکتا ہے۔ آپ کو وقتاً فوقتاً جو مشورے ملتے ہیں، آپ نے آج بھی مجھے کئی مشورے دیے ہیں۔ میری کوشش ہے کہ ان کی بنیاد پر ملک خدمت کی راہ پر آگے بڑھتا رہے۔

ساتھیو،
ہمارے گروؤں کی زندگی کا سب سے بڑا الہام ہمارے فرائض کا احساس ہے۔ 'سب کا ساتھ، سب کا وکاس، سب کا وشواس اور سب کا پرایاس' کا یہ منتر ہم سب کے لیے بھارت کے روشن مستقبل کو یقینی بناتا ہے۔ یہ فرائض صرف ہمارے حال کے نہیں ہیں، یہ ہمارے اور ہمارے ملک کے مستقبل کے لیے بھی ہیں۔ یہ ہماری آنے والی نسلوں کے لیے بھی ہیں۔ مثال کے طور پر آج ملک اور دنیا کے سامنے ماحولیات ایک بڑا بحران ہے۔ اس کا حل بھارت کی ثقافت اور روایات میں مضمر ہے۔ سکھ معاشرہ اس کی جیتی جاگتی مثال ہے۔سکھ معاشرے میں ہم اپنے جسم کا جتنا خیال رکھتے ہیں اتنا ہی ماحول اور کرہ ارض کا بھی خیال رکھتے ہیں۔ آلودگی کے خلاف کوششیں ہوں، غذائی قلت کے خلاف جنگ ہو، یا اپنی ثقافتی اقدار کے تحفظ کے لیے، آپ سب اس طرح کی ہر کوشش سے وابستہ نظر آتے ہیں۔ اس سلسلے میں میری آپ سے ایک اور گزارش ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ امرت مہوتسو میں نہ صرف ملک کے تمام اضلاع میں یعنی ہر ضلع میں 75 امرت سرووروں کا حل نکالا گیا ہے۔ آپ اپنے جسموں میں امرت کی جھیلوں کی تخلیق کے لیے مہم بھی چلا سکتے ہیں۔

ساتھیو،
انسانی زندگی کی عزت نفس اور وقار کا جو سبق ہمارے گروؤں نے ہمیں سکھایا، ہم ہر سکھ کی زندگی میں بھی اس کا اثر دیکھتے ہیں۔ آزادی کا امرت مہوتسو آج یہ ملک کا عزم ہے۔ ہمیں خود انحصار بننا ہے، غریب ترین شخص  کی زندگی کو بہتر بنانا ہے۔ ان تمام کاوشوں میں آپ سب کی فعال شرکت اور آپ کا فعال تعاون بہت ضروری اور ضروری ہے۔ مجھے یقین ہے کہ گروؤں کے آشیرواد سے ہم کامیاب ہوں گے اور جلد ہی ہم ایک نئے بھارت کے مقصد تک پہنچ جائیں گے۔ اس عزم کے ساتھ، میں آپ سب کا بہت بہت شکریہ ادا کرتا ہوں۔ آپ کا یہاں آنا میرے لیے محض رفاقت سے بڑھ کر ہے۔ اور اس لیے آپ پر مہربانی ہو اور میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ یہ وزیراعظم کی رہائش گاہ ہے، یہ مودی کا گھر نہیں ہے۔ یہ آپ کا دائرہ اختیار ہے، یہ آپ کا ہے۔ اپنے اس احساس کے ساتھ، ہمیں ہمیشہ ماں بھارتی کے لیے، اپنے ملک کے غریبوں کے لیے، اپنے ملک کے ہر معاشرے کی بہتری کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے۔ گروؤں کی رحمتیں ہم پر رہیں۔ اسی جذبے کے ساتھ میں ایک بار پھر آپ سب کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ واہے گرو کا خالصہ۔ واہے گرو کی فتح۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Red violence down 52% under Modi government, says Amit Shah

Media Coverage

Red violence down 52% under Modi government, says Amit Shah
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 23 فروری 2024
February 23, 2024

Vikas Bhi, Virasat Bhi - Era of Development and Progress under leadership of PM Modi