Share
 
Comments
’’ایماندار حکومت کی کوششیں اور با اختیار غریبوں کی کوششیں جب ساتھ ملتی ہیں، تو غریبی کی شکست ہوتی ہے‘‘
’’غریبوں کو پکا گھر فراہم کرنے کی مہم صرف ایک سرکاری اسکیم ہی نہیں ہے، بلکہ دیہی علاقوں کے غریبوں میں اعتماد پیدا کرنے کا عزم ہے‘‘
’’اسکیموں کی کوریج میں چھنٹائی کے ذریعے حکومت جانبداری اور بدعنوانی کے امکان کو ختم کرنا چاہتی ہے‘‘
ہر ایک ریاستی حکومت، مقامی ادارہ اور پنچایت کو ہر ضلع میں 75 امرت سروور بنانے کے لیے کام کرنا ہے

نمسکار جی،

 

وزیر اعلی شیوراج سنگھ جی چوہان، مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی، مدھیہ پردیش حکومت کے وزرا، پارلیمنٹ میں میرے ساتھی، مدھیہ پردیش کے ایم ایل اے، دیگر معززین اور مدھیہ پردیش کے میرے پیارے بھائیو اور بہنوں!

آج، مدھیہ پردیش کے تقریباً سوا 5 لاکھ غریب خاندانوں کو ان کے خوابوں کا پکا مکان مل رہا ہے۔ کچھ ہی دنوں میں نیا سال وکرم سمبت 2079 شروع ہونے والا ہے۔ نئے سال کی شام ایک نئے گھر میں داخل ہونا، یہ اپنے آپ میں زندگی کا ایک انمول لمحہ ہے۔ میں اس وقت آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

ہمارے ملک میں کچھ پارٹیوں نے غربت ہٹانے کے لیے بہت سے نعرے لگائے لیکن غریبوں کو با اختیار بنانے کے لیے جو کچھ کرنا چاہیے تھا وہ نہیں کیا گیا، اور میرا ماننا ہے کہ جب غریب با اختیار ہو جائیں تو پھر انھیں غربت سے لڑنے کا حوصلہ ملتا ہے۔ دیانت دار حکومت کی کوششیں، مضبوط غریب کی کوششیں، جب اکٹھی ہوتی ہیں تو غربت بھی شکست کھا جاتی ہے۔ اس لیے مرکز میں بی جے پی کی حکومت ہو یا ریاستوں میں بی جے پی کی حکومتیں سب کا ساتھ سب کا وکاس کے منتر پر چلتے ہوئے غریبوں کو با اختیار بنانے میں لگی ہوئی ہیں۔ آج کا پروگرام اسی مہم کا حصہ ہے۔ پردھان منتری آواس یوجنا کے تحت دیہاتوں میں بنائے گئے یہ سوا پانچ لاکھ گھر محض ایک اعداد و شمار نہیں ہیں۔ یہ سوا پانچ لاکھ گھر ملک کے با اختیار غریبوں کی پہچان بن چکے ہیں۔ یہ سوا پانچ لاکھ گھر بی جے پی حکومت کی خدمت کی مثال ہیں۔ یہ سوا پانچ لاکھ گھر گاؤں کی غریب خواتین کو کروڑ پتی بنانے کی مہم کا عکس ہیں۔ مدھیہ پردیش کے دور دراز دیہاتوں میں یہ گھر ہمارے قبائلی علاقوں کے غریبوں کو دیے جا رہے ہیں۔ میں ان سوا پانچ لاکھ گھروں کے لیے مدھیہ پردیش کے لوگوں کو مبارکباد دیتا ہوں۔

بھائیو اور بہنوں،

غریبوں کو پکے گھر دینے کی یہ مہم صرف ایک سرکاری اسکیم نہیں ہے۔ یہ گاؤں کو، غریبوں کو یقین دینے کا عہد ہے۔ یہ غریبوں کو غربت سے نکالنے کا پہلا قدم ہے، انھیں غربت سے لڑنے کی ہمت فراہم کرنا ہے۔ جب غریب کے سر پر ٹھوس چھت ہو تو وہ اپنی پوری توجہ بچوں کی تعلیم اور دیگر کاموں میں لگا سکتا ہے۔ جب غریب کو گھر ملتا ہے تو اس کی زندگی میں استحکام آتا ہے۔ اسی سوچ کے ساتھ ہماری حکومت پی ایم آواس یوجنا کو اولین ترجیح دے رہی ہے۔ پچھلی حکومت میں میرے آنے سے پہلے جو لوگ تھے، انھوں نے اپنے دور میں صرف چند لاکھ گھر بنائے تھے۔ اس کے ساتھ ہی ہماری حکومت نے غریبوں کو تقریباً 2.5 کروڑ گھر دیے ہیں۔ اس میں دیہاتوں میں 2 کروڑ گھر بنائے گئے ہیں۔ گزشتہ دو سالوں میں کورونا کی وجہ سے آنے والی رکاوٹوں کے باوجود اس کام کو سست نہیں ہونے دیا گیا۔ مدھیہ پردیش میں بھی تقریباً ساڑھے 30 لاکھ منظور شدہ مکانات میں سے 24 لاکھ سے زیادہ مکمل ہو چکے ہیں۔ اس کا بڑا فائدہ بیگا، سہریا اور بھریا جیسے سماج کے ان طبقوں کو بھی مل رہا ہے جو کبھی پکے گھر کے بارے میں سوچ بھی نہیں سکتے تھے۔

بھائیو اور بہنوں،

جہاں کہیں بھی بی جے پی کی حکومتیں ہیں، ان کی خاصیت یہی ہے کہ وہ زمین سے جڑی ہیں، غریبوں کی ضروریات، ان کے مفادات کو پورا کرنے کے لیے دن رات کام کرتی ہیں۔ پی ایم آواس یوجنا میں بھی ہم نے اس بات کا خیال رکھا ہے کہ غریبوں کو فراہم کیے گئے مکان بھی ان کی باقی زندگی کی ضروریات کو پورا کرنے کے قابل ہوں۔ جیسے کہ اس گھر میں بیت الخلا ہے، اس میں سوبھاگیہ اسکیم کے تحت بجلی کا کنکشن، اجالا اسکیم کے تحت ایل ای ڈی بلب، اجولا اسکیم کے تحت گیس کنکشن، اور ہر گھر جل یوجنا کے تحت پانی کا کنکشن آتا ہے۔ یعنی غریب مستحقین کو اب ان سہولیات کے لیے الگ سے سرکاری دفاتر جانے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ غریبوں کی خدمت کی سوچ ہے، جو آج ملک کے ہر شہری کی زندگی کو آسان بنانے کے لیے استعمال ہو رہی ہے۔

ساتھیوں،

ہندوستان شکتی کی پوجا کرنے والا ملک ہے۔ نوراتری چند دنوں میں شروع ہونے والی ہے۔ ہماری دیوی دشمنوں کو تباہ کرنے والی ہیں۔ ہماری خواتین علم، فن اور ثقافت کی تحریک ہیں۔ 21ویں صدی کا ہندوستان ان سے تحریک لے کر خود کو اور اپنی خواتین کی طاقت کو با اختیار بنانے میں مصروف ہے۔ پردھان منتری آواس یوجنا اس مہم کا ایک اہم حصہ ہے۔ پی ایم آواس یوجنا کے تحت بنائے گئے مکانات میں سے تقریباً دو کروڑ مکانات پر خواتین کے مالکانہ حقوق بھی ہیں۔ اس ملکیت نے گھر کے دیگر معاشی فیصلوں میں خواتین کی شرکت کو بھی تقویت دی ہے۔ یہ اپنے آپ میں دنیا کی سب سے بڑی یونیورسٹیوں کے لیے مطالعہ کا موضوع ہے، کیس اسٹڈی کا ایک ایسا موضوع ہے جو مدھیہ پردیش کی یونیورسٹیوں کو بھی کرنا چاہیے۔

بھائیو اور بہنوں،

خواتین کی مشکلات دور کرنے کے لیے ہم نے ہر گھر تک پانی پہنچانے کا بیڑہ بھی اٹھایا ہے۔ پچھلے ڈھائی سالوں میں اس اسکیم کے تحت ملک بھر میں 6 کروڑ سے زیادہ خاندانوں کو پینے کے صاف پانی کے کنکشن مل چکے ہیں۔ اسکیم کے آغاز کے وقت، مدھیہ پردیش میں 13 لاکھ دیہی گھروں میں پائپ سے پانی آتا تھا۔ آج ہم 50 لاکھ خاندانوں کو پائپ سے پانی فراہم کرنے کے سنگ میل کے بہت قریب ہیں۔ ہم مدھیہ پردیش کے ہر دیہی گھر کو پائپ سے پانی فراہم کرنے کے لیے پُر عزم ہیں۔

ساتھیوں،

آج میں مدھیہ پردیش سمیت ملک کے ان تمام غریبوں کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ مکان بنانے کی مہم تیزی سے چل رہی ہے۔ اب بھی کچھ لوگوں کو پکے گھر نہیں ملے ہیں۔ میں اس سے پوری طرح واقف ہوں۔ اور میں آپ کو بتانے آیا ہوں کہ اس سال کے بجٹ میں ملک بھر میں 80 لاکھ سے زائد گھر بنانے کے لیے رقم مختص کرنے کا انتظام کیا گیا ہے۔ ان میں سے مدھیہ پردیش کے لاکھوں خاندانوں کو بھی فائدہ ہونا یقینی ہے۔ اس اسکیم پر اب تک 2.25 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ خرچ ہو چکے ہیں۔ یہ رقم دیہاتوں میں خرچ ہوئی ہے، اس سے دیہی معیشت کو تقویت ملی ہے۔ جب گھر بنتا ہے، تو اینٹ، ریت، بار سیمنٹ، گھر میں کام کرنے والے، سب کچھ مقامی ہوتا ہے۔ اس لیے پی ایم آواس یوجنا گاؤں میں روزگار کے نئے مواقع بھی پیدا کر رہی ہے۔

ساتھیوں،

ہمارے ملک نے آزادی کے بعد کئی دہائیوں تک کئی حکومتیں دیکھی ہیں۔ لیکن ملک کے عوام پہلی بار ایسی حکومت دیکھ رہے ہیں، جو ان کی خوشی اور غم میں ساتھی بن کر ان کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑی ہے۔ کورونا کے اتنے بڑے بحران میں بی جے پی حکومت نے پھر ثابت کر دیا ہے کہ یہ حکومت غریبوں کے لیے کتنی حساسیت سے کام کرتی ہے۔ غریبوں کی مفت ویکسینیشن ہو یا غریبوں کو مفت راشن، اور ابھی شیوراج جی نے اسے بڑی تفصیل سے بیان کیا ہے۔ ابھی دو دن پہلے ہی ہم سب نے مل کر فیصلہ کیا تھا کہ پردھان منتری غریب کلیان انّ یوجنا کو آنے والے 6 ماہ تک آگے بڑھایا جائے گا، تاکہ غریب کے گھر کا چولہا جلتا رہے۔ پہلے دنیا کورونا کی وجہ سے مشکلات میں گھری تھی اور آج پوری دنیا میدان جنگ میں ہے۔ اس کی وجہ سے بھی کئی طرح کے معاشی نظاموں پر ایک نیا بحران پیدا ہو رہا ہے۔ ہندوستان کے شہریوں پر جتنا ہو سکے بوجھ کو کیسے کم کیا جائے۔ جتنا ہو سکے ملک کے شہریوں کو مدد فراہم کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔

بھائیو اور بہنوں،

100 سالوں میں آئی اس سب سے بڑی وبا میں ہماری حکومت نے غریبوں کو مفت راشن پر 2 لاکھ 60 ہزار کروڑ روپے خرچ کیے ہیں۔ اس پر اگلے 6 ماہ میں مزید 80 ہزار کروڑ روپے خرچ ہوں گے۔ جو لوگ پہلے عوام کی کمائی پر ڈاکہ ڈالتے تھے، جو عوام کی کمائی سے اپنی تجوریاں بھرتے تھے، وہ آج بھی اس اسکیم کے لیے ہلکے پھلکے مذاق، جھوٹ پھیلانے، انتشار پھیلانے کے لیے یہ کام کر رہے ہیں۔ آج میں ملک کو ایک معلومات دینا چاہتا ہوں۔ آپ بھی اسے غور سے سنیں۔

ساتھیوں،

جب ان لوگوں کی حکومت تھی تو ان کا 4 کروڑ، 4 کروڑ کا ہندسہ غریبوں کا راشن لوٹنے کے لیے بہت بڑا ہے۔ 4 کروڑ فرضی نام جو کبھی پیدا ہی نہیں ہوئے، ایسے نام 4 کروڑ کاغذوں میں تعینات کر دیے گئے۔ ان 4 کروڑ فرضی لوگوں کے نام پر راشن اٹھایا جاتا تھا، پچھلے راستے سے بازار میں بیچا جاتا تھا، اور ان کا پیسہ ان لوگوں کے کالے کھاتوں میں پہنچ جاتا تھا۔ 2014 میں حکومت میں آنے کے بعد سے ہماری حکومت نے ان فرضی ناموں کی تلاش شروع کر دی اور انھیں راشن کی فہرست سے نکال دیا۔ تاکہ غریبوں کو ان کا حق مل سکے۔ آپ سوچیں پہلے زمانے میں غریبوں کے منہ سے کھانا چھین کر ہر ماہ ہزاروں کروڑ روپے لوٹتے تھے۔ ہم نے اس بات کو بھی یقینی بنایا کہ راشن کی دکانوں میں جدید مشینیں لگا کر راشن چوری نہ ہو۔ آپ سب جانتے ہوں گے کہ ہم نے اس مشین کو لگانے کے لیے جو مہم شروع کی ہے اس کا بھی مذاق ان لوگوں نے بنایا ہے۔ کیوں، کیوں کہ وہ جانتے تھے کہ مشین آئے گی، اگر لوگ انگوٹھے کا نشان لگائیں گے تو سچائی غالب آئے گی اور اسے روکنے کے لیے ایسی ہوائیں چلائی گئیں، یہاں تک کہہ دیا کہ راشن لینے جاؤ اور انگوٹھا لگاؤ ​​تو تمھیں کورونا ہو جائے گا۔ ایسے جھوٹ پھیلایا گیا۔ ہماری حکومت نے یہ سب جعلی کھیل بند کر دیے ہیں تو یہ لوگ دنگ رہ گئے ہیں۔ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اگر راشن کی دکانوں میں شفافیت نہ ہوتی، اگر یہ 4 کروڑ فرضی نام نہ ہٹائے جاتے تو کورونا کے اس بحران میں غریبوں کا کیا حال ہوتا۔ غریبوں کے لیے وقف بی جے پی حکومت غریبوں کے لیے دن رات کام کر رہی ہے۔

بھائیو اور بہنوں،

ہماری کوشش ہے کہ آزادی کے امرت میں ہم بنیادی سہولیات کو ہر مستحق تک تیزی سے پہنچا سکیں۔ اس طرح کے کام کی طاقت پر، ہم اسکیموں کی سیچوریشن یعنی ہر اسکیم کا 100 فیصد مستفیدین تک پہنچانے کے عزم پر کام کر رہے ہیں۔ گاؤں میں اسکیم کا جو فائدہ اٹھانے والا ہوگا، اسے اس کا حق اس کے گھر تک پہنچنا چاہیے، اس کے لیے ہم مصروف عمل ہیں۔ اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ کوئی بھی غریب اسکیموں کے فائدے سے محروم نہیں رہے گا، حکومت سب تک پہنچ جائے گی۔ اس سے تفریق کا امکان نہیں بچے گا، کرپشن کا امکان نہیں بچے گا۔ آج معاشرے میں آخری صف میں بیٹھے شخص کو فائدہ دینے کی پالیسی ہونی چاہیے۔

ساتھیوں،

آج میں شیو راج جی کی حکومت کو ایک اور کام کے لیے مبارکباد دینا چاہتا ہوں۔ اناج کی سرکاری خریداری میں ایم پی نے شاندار کام کیا ہے، نیا ریکارڈ قائم کیا ہے، ملک کی کئی ریاستوں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ آج ایم پی میں کسانوں کے بینک اکاؤنٹ میں پہلے سے زیادہ رقم دی جا رہی ہے، سرکاری خریداری مراکز کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ پی ایم کسان سمان ندھی چھوٹے کسانوں کی بھی بہت مدد کر رہی ہے۔ ایم پی کے تقریباً 90 لاکھ چھوٹے کسانوں کو ان کے چھوٹے اخراجات کے لیے 13 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کی رقم دی گئی ہے۔

ساتھیوں،

اس وقت ملک اپنی آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے۔ ہندوستان کے لاکھوں بہادر بیٹوں اور بہادر بیٹیوں نے ہمیں آزادی دلانے کے لیے اپنی جانیں، اپنی آسائشیں قربان کیں۔ اس قربانی نے ہمیں آج آزاد زندگی دی ہے۔ اس امرت مہوتسو میں ہمیں بھی اس عزم کے ساتھ آگے بڑھنا چاہیے کہ ہم اپنی آنے والی نسلوں کو کچھ دیں گے۔ اس عرصے میں ہم نے جو کام کیا، وہ آنے والی نسلوں کے لیے تحریک کا باعث بنے، انھیں اپنے فرائض کی یاد دلائیں، یہ بہت ضروری ہے۔ جیسے کہ اب ہم سب مل کر ایک کام کر سکتے ہیں۔ اور میں چاہتا ہوں کہ آج میں مدھیہ پردیش کے لاکھوں خاندانوں سے بات کر رہا ہوں۔ جب میں اتنی بڑی تعداد میں لوگوں سے بات کر رہا ہوں تو میں یقینی طور پر کوئی حل طلب کروں گا۔ آئیے ہم تہیہ کر لیں کہ اس سال جب یہ نیا سال شروع ہوگا، 2 سے 4 دن کے بعد، اس سال سے اگلے سال تک، یعنی ہمارے پاس 12 مہینے، 365 دن ہیں۔ آئیے ہم ہر ضلع میں 75 امرت سروور بنانے کا عزم کریں تاکہ آزادی کے امرت مہوتسو کی یاد میں اپنی آنے والی نسلوں کو کچھ دینے کے اپنے عزم کو پورا کیا جا سکے اور میں چاہوں گا کہ اگر ممکن ہو تو یہ امرت سروور ہر ضلع میں نیا ہو۔ ان کی تعمیر میں حکومت سے آنے والے منریگا کے پیسے سے بھی مدد لی جا سکتی ہے۔ آزادی کے امرت مہوتسو میں ہر ضلع میں 75 امرت سروور کی تعمیر آنے والی نسلوں کے لیے بہت مفید ثابت ہوگی۔ ہماری دھرتی کو اس سے بہت فائدہ ملے گا، یہ ہماری ماں دھرتی پیاسی ہے۔ ہم نے اتنا پانی کھینچا ہے، اس ماں دھرتی کے بچوں کی حیثیت سے ہمارا فرض بنتا ہے کہ اس دھرتی کی پیاس بجھائیں۔ اور اس سے فطرت کی زندگی میں ایک نئی توانائی آئے گی، ایک نیا شعور آئے گا۔ اس سے چھوٹے کسانوں کو فائدہ ہو گا، خواتین کو فائدہ ہو گا، یہی نہیں بلکہ جانوروں اور پرندوں کے لیے بھی یہ احسان مندی کا کام ہو گا۔ یعنی ہر ضلع میں 75 امرت کی جھیلوں کی تعمیر انسانیت کا بہت بڑا کام ہے، جو ہمیں کرنا چاہیے۔ میں تمام ریاستی حکومتوں، مقامی اداروں، پنچایتوں سے اس سمت میں کام کرنے کی اپیل کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

یہ ہندوستان کے روشن مستقبل کی تعمیر کا وقت ہے۔ ہندوستان کا روشن مستقبل اسی وقت ممکن ہے جب غریب خاندان کا مستقبل بہتر ہو۔ یہ نیا گھر آپ کے خاندان کو ایک نئی سمت دے، آپ کو ایک نئے مقصد کی طرف بڑھنے کی طاقت دے، آپ کے بچوں میں تعلیم، ہنر اور اعتماد پیدا کرے، اس نئے گھر میں داخلے کے لیے آپ سبھی کو، تمام مستفیدین کو، ڈھیروں نیک خواہشات دیتا ہوں۔ بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں!

شکریہ!

Share your ideas and suggestions for 'Mann Ki Baat' now!
Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Video: PM Modi captures Kullu’s eternal beauty from chopper; got 32 lakh views in 18 hours

Media Coverage

Video: PM Modi captures Kullu’s eternal beauty from chopper; got 32 lakh views in 18 hours
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Social Media Corner 6th October 2022
October 06, 2022
Share
 
Comments

India exports 109.8 lakh tonnes of sugar in 2021-22, becomes world’s 2nd largest exporter

Big strides taken by Modi Govt to boost economic growth, gets appreciation from citizens