Share
 
Comments
Elaborates on five aspects: universalization of quality education; skill development; inclusion of India’s ancient experience and knowledge of urban planning and designing into education; internationalization and focus on Animation Visual Effects Gaming Comic
“Empowering our youth who are future nation builder, is empowering India’s future”
“It was digital connectivity that kept the country’s education system going during the pandemic”
“Innovation is ensuring inclusion in our country. Now going even further, country is moving towards integration”
“It is critical to prepare the ‘demographic dividend’ of the country as per the demands of the changing job roles”
“Budget is not just an account of statistics, budget, if implemented properly, can bring great transformation even with limited resources”

نمسکار!

مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی، تعلیم، ہنر کی ترقی، سائنس، ٹیکنالوجی اور تحقیق سے وابستہ تمام معززین، خواتین و حضرات،

ہماری حکومت نے بجٹ سے پہلے اور بجٹ کے بعد اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مکالمے، بات چیت کی ایک خاص روایت شروع کی ہے۔ آج کا پروگرام اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔ اس سلسلے میں بجٹ میں تعلیم اور ہنر کی ترقی کے حوالے سے کی گئی شقوں پر تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مختلف پہلوؤں پر تفصیلی بات چیت کی جائے گی۔

ساتھیوں،

ہماری آج کی نوجوان نسل ملک کی مستقبل کی رہنما ہے، وہ مستقبل کے معمار بھی ہیں۔ لہذا آج کی نوجوان نسل کو با اختیار بنانے کا مطلب ہندوستان کے مستقبل کو با اختیار بنانا ہے۔ اسی سوچ کے ساتھ 2022 کے بجٹ میں تعلیم کے شعبے سے متعلق پانچ چیزوں پر بہت زیادہ زور دیا گیا ہے۔

پہلا –

معیاری تعلیم کی ہمہ گیریت: ہمارے تعلیمی نظام کو وسعت دینے، اس کے معیار کو بہتر بنانے اور تعلیمی شعبے کی استعداد بڑھانے کے لیے اہم فیصلے کیے گئے ہیں۔

دوسرا ہے –

ہنر کی ترقی: ملک میں ڈجیٹل اسکلنگ ایکو سسٹم کی تشکیل، جب انڈسٹری 4.0 کی بحث چل رہی ہے تو صنعت کی مانگ کے مطابق اسکل ڈیولپمنٹ پر توجہ دی گئی ہے، تاکہ صنعت کے تعلق کو بہتر بنایا جا سکے۔

تیسرا اہم پہلو ہے-

شہری منصوبہ بندی اور ڈیزائن۔ اس میں ہندوستان کے قدیم تجربے اور علم کو آج ہماری تعلیم میں ضم کرنا ضروری ہے۔

چوتھا اہم پہلو ہے-

بین الاقوامیت: عالمی معیار کی غیر ملکی یونیورسٹیاں ہندوستان میں آئیں جو ہمارا صنعتی علاقہ ہے، جیسے GIFT City، وہاں Fin Tech سے وابستہ ادارے آئیں، اس کی بھی حوصلہ افزائی کی جانی چاہیے۔

پانچواں اہم پہلو ہے-

اے جی وی سی- یعنی اینیمیشن ویزول افیکٹس گیمنگ کامک، ان سب میں روزگار کی بے پناہ صلاحیت ہے، ایک بہت بڑی عالمی مارکیٹ ہے۔ اس کو پورا کرنے کے لیے، اس بات پر یکساں توجہ مرکوز کی گئی ہے کہ ہم ہندوستانی ٹیلنٹ کو کس طرح استعمال کرتے ہیں۔ یہ بجٹ نئی قومی تعلیمی پالیسی کو زمین پر لانے کے لیے ایک طویل سفر طے کرنے والا ہے۔

ساتھیوں،

میں کورونا کی آمد سے بہت پہلے ملک میں ڈجیٹل مستقبل کی بات کر رہا تھا۔ جب ہم اپنے دیہات کو آپٹیکل فائبر سے جوڑ رہے تھے، جب ہم ڈیٹا کی لاگت کو ممکنہ حد تک کم رکھنے، کنیکٹیویٹی انفراسٹرکچر کو بہتر بنانے کی کوشش کر رہے تھے، تو کچھ لوگوں نے سوال کیا کہ اس کی کیا ضرورت ہے۔ لیکن ہر ایک نے وبائی امراض کے وقت ان کوششوں کی اہمیت کو دیکھا ہے۔ یہ ڈجیٹل کنیکٹیویٹی ہے جس نے عالمی وبا کے اس دور میں ہمارے تعلیمی نظام کو رواں دواں رکھا ہے۔

ہم دیکھ رہے ہیں کہ ہندوستان میں ڈجیٹل تقسیم کس طرح تیزی سے کم ہو رہی ہے۔ جدت ہمارے اندر شمولیت کو یقینی بنا رہی ہے۔ اور اب ملک شمولیت سے آگے بھی انضمام کی طرف بڑھ رہا ہے۔

اس دہائی میں ہم تعلیمی نظام میں جس جدیدیت کو لانا چاہتے ہیں اس کی بنیاد کو مضبوط کرنے کے لیے اس سال کے بجٹ میں بہت سے اعلانات کیے گئے ہیں۔ ڈجیٹل تعلیم ہندوستان کے ڈجیٹل مستقبل کی طرف بڑھنے کے وسیع تر وژن کا حصہ ہے۔ اس لیے ای ودیا ہو، ون کلاس ون چینل ہو، ڈجیٹل لیبز ہوں، ڈجیٹل یونیورسٹی ہو، اس طرح کا تعلیمی انفراسٹرکچر نوجوانوں کی بہت مدد کرنے والا ہے۔ یہ ہندوستان کے سماجی و اقتصادی سیٹ اپ میں گاؤں، غریب، دلت، پسماندہ، قبائلی، سبھی کو تعلیم کے لیے بہتر حل فراہم کرنے کی کوشش ہے۔

ساتھیوں،

نیشنل ڈجیٹل یونیورسٹی ہندوستان کے تعلیمی نظام میں اپنی نوعیت کا ایک منفرد اور بے مثال قدم ہے۔ میں ڈجیٹل یونیورسٹی میں وہ طاقت دیکھ رہا ہوں کہ یہ یونیورسٹی ہمارے ملک میں سیٹوں کے مسئلے کا مکمل حل دے سکتی ہے۔ جب ہر مضمون کے لیے لامحدود سیٹیں ہوں گی تو آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ تعلیمی دنیا میں کتنی بڑی تبدیلی آئے گی۔ یہ ڈجیٹل یونیورسٹی سیکھنے اور دوبارہ سیکھنے کی موجودہ اور مستقبل کی ضروریات کے لیے نوجوانوں کو تیار کرے گی۔ میری وزارت تعلیم، یو جی سی، اے آئی سی ٹی ای اور تمام اسٹیک ہولڈرز سے درخواست ہے کہ یہ ڈجیٹل یونیورسٹی تیزی سے کام شروع کر سکے، اس بات کو یقینی بنایا جائے۔ شروع سے ہی یہ ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ ہم دیکھیں کہ یہ ڈجیٹل یونیورسٹی بین الاقوامی معیار کے ساتھ چلے۔

ساتھیوں،

ملک میں ہی عالمی معیار کے ادارے بنانے کا حکومت کا ارادہ اور اس کے لیے پالیسی فریم ورک آپ کے سامنے ہے۔ اب آپ کو اپنی کوششوں سے اس ارادے کو زمین پر اتارنا ہوگا۔ آج مادری زبانوں کا عالمی دن بھی ہے۔ مادری زبان میں تعلیم کا تعلق بچوں کی ذہنی نشوونما سے ہے۔ طبی اور تکنیکی تعلیم کئی ریاستوں میں مقامی زبانوں میں شروع کی گئی ہے۔

اب یہ تمام ماہرین تعلیم کی خصوصی ذمہ داری ہے کہ وہ مقامی ہندوستانی زبانوں میں بہترین مواد اور اس کے ڈجیٹل ورژن کی تخلیق کو تیز کریں۔ ہندوستانی زبانوں میں ای مواد، انٹرنیٹ، موبائل فون، ٹی وی اور ریڈیو کے ذریعے اسے سب کے لیے قابل رسائی بنانے کے لیے کام کرنا ہوگا۔

ہندوستانی اشاراتی زبان میں بھی ہم ایسے کورسز تیار کر رہے ہیں، جو معذور نوجوانوں کو با اختیار بنا رہے ہیں۔ اس میں مسلسل بہتری لاتے رہنا بہت ضروری ہے۔ ڈجیٹل ٹولز کے لیے، ڈیجیٹل مواد کو بہتر طریقے سے کیسے پہنچایا جائے، اس کے لیے ہمیں اساتذہ کو آن لائن تربیت دینے پر بھی زور دینا ہوگا۔

ساتھیوں،

متحرک ہنر مندی خود انحصار ہندوستان کے لیے اور عالمی ہنر کی مانگ کے لحاظ سے بھی بہت اہم ہے۔ جس رفتار کے ساتھ ملازمت کے پرانے کردار بدل رہے ہیں، ہمیں اپنے ڈیموگرافک ڈیویڈنڈ کو تیزی سے تیار کرنا ہوگا۔ اس لیے اکیڈمی اور انڈسٹری کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ بجٹ میں ڈجیٹل ایکو سسٹم فار اسکلنگ اینڈ لائیولی ہوڈ اور e-Skilling Lab کے اعلان کے پیچھے یہی سوچ ہے۔

ساتھیوں،

آج ہماری توجہ سیاحت کی صنعت، ڈرون انڈسٹری، اینیمیشن اور کارٹون انڈسٹری، دفاعی صنعت پر زیادہ ہے۔ ہمیں موجودہ صنعتوں اور ان شعبوں سے وابستہ اسٹارٹ اپس کے لیے تربیت یافتہ افرادی قوت کی ضرورت ہے۔ اینیمیشن، ویژول ایفیکٹس، گیمنگ اور کامک سیکٹرز کی ترقی کے لیے ٹاسک فورس کی تشکیل اس میں بہت مددگار ثابت ہوگی۔ اسی طرح شہری منصوبہ بندی اور ڈیزائننگ ملک کی ضرورت ہے اور نوجوانوں کے لیے ایک موقع بھی۔ آزادی کے امرت میں، ہندوستان اپنے شہری منظر نامے کو تبدیل کرنے کی طرف تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے۔ اس لیے اے آئی سی ٹی ای جیسے اداروں سے ملک کو خصوصی توقع ہے کہ اس سے متعلق تعلیم و تربیت میں مسلسل بہتری کی جائے۔

ساتھیوں،

اس سلسلے میں آپ کی معلومات ملک کے لیے کارآمد ثابت ہوں گی کہ ہم تعلیم کے شعبے کے ذریعے خود کفیل ہندوستان کی مہم کو کس طرح مضبوط کریں گے۔ مجھے یقین ہے کہ ہم سب کی مشترکہ کوششوں سے ہم بجٹ میں طے شدہ اہداف کو تیزی سے نافذ کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ تجربہ یہ ہو رہا ہے کہ اسمارٹ کلاس کے ذریعے، اینیمیشن کے ذریعے، لانگ ڈسٹنس ایجوکیشن کے ذریعے یا ہمارے نئے تصور کے ذریعے کہ ایک کلاس، ایک چینل کے ذریعے ہم گاؤں تک اچھے معیار کی تعلیم کا بندوبست کر سکتے ہیں۔ اس کے لیے بجٹ میں انتظام کیا گیا ہے۔ ہم اسے کیسے نافذ کریں۔

آج جب ہم بجٹ کے بارے میں بات کر رہے ہیں تو آج یہ توقع نہیں ہے کہ بجٹ کیا ہونا چاہیے، کیونکہ وہ تو ہو چکا ہے۔ اب آپ سے یہ توقع ہے کہ جو چیزیں بجٹ میں ہیں ان کو جلد از جلد کیسے نافذ کیا جائے۔ آپ نے بجٹ کا مطالعہ کیا ہوگا، آپ فیلڈ میں کام کرتے ہیں، بجٹ اور آپ کے کام کی توقعات اور محکمہ تعلیم، اسکل ڈیپارٹمنٹ ان تینوں کو ملا کر، اگر ہم ایک اچھا روڈ میپ بناتے ہیں، ہم ٹائم باؤنڈ کام کی تشکیل کرتے ہیں، تو آپ نے دیکھا ہوگا کہ ہم نے تقریباً ایک مہینے پیشگی بجٹ پیش کر دیا ہے۔

پہلے بجٹ 28 فروری کو آتا تھا، اب اسے یکم فروری تک لے جایا گیا ہے، کیونکہ اگر بجٹ یکم اپریل سے لاگو ہوتا ہے تو اس سے پہلے بجٹ کے حوالے سے ہر کوئی تفصیلی انتظامات کر لے۔ تاکہ یکم اپریل سے ہم زمین پر بجٹ کا کم کرنا شروع کر سکیں۔ ہمارا وقت ضائع نہ ہو۔ اور میں چاہوں گا کہ آپ لوگوں کو اس میں بہت کچھ ملے… اب جیسا کہ آپ نے دیکھا ہوگا، یہ ٹھیک ہے کہ کچھ چیزیں ایسی ہیں جن کا محکمہ تعلیم سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اب ملک نے سوچا ہے کہ ہم بڑی تعداد میں سینک اسکولوں کے لیے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ ماڈل کی طرف بڑھیں گے۔ اب ملٹری اسکول کیسے ہوں گے، پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کا ماڈل کیا ہوگا، وزارت دفاع اس کے لیے بجٹ دینے جا رہی ہے، پھر فوجی اسکولوں کے اساتذہ کی خصوصی تربیت کیسے ہوگی، آج ہمارے پاس کیا ہے، تربیت کے انتظامات اساتذہ، سینک اسکولوں کے اساتذہ کی خصوصی تربیت کیونکہ اس میں جسمانی حصہ بھی ہوگا، ہم یہ کیسے کر سکیں گے۔

کیا ہم نے کبھی سوچا کہ جس ملک میں نالندہ، ٹیکسلا، ولبھی جیسے بڑے تعلیمی ادارے ہیں، آج ہمارے ملک کے بچے بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں، کیا یہ ہمارے لیے درست ہے؟ ہم دیکھ رہے ہیں کہ جو بچے ہمارے ملک سے باہر جا رہے ہیں، ان پر پیسہ غیر ضروری خرچ ہو رہا ہے، وہ خاندان قرض لے رہا ہے۔ کیا ہم دنیا کی یونیورسٹیاں اپنے ملک میں لا کر اپنے بچوں کی دیکھ بھال کر سکتے ہیں، وہ ہمارے اپنے ماحول میں اور کم خرچ میں پڑھ سکیں؟ یعنی پری پرائمری سے لے کر پوسٹ گریجویٹ تک ہمارا پورا بلیو پرنٹ 21ویں صدی سے کیسے ہم آہنگ ہو سکتا ہے؟

ہمارے بجٹ میں جو کچھ بھی کیا گیا ہے، ٹھیک ہے، اس کے باوجود، اگر کسی کو لگتا ہے کہ ایسا نہ ہوتا تو اچھا ہوتا، ہم اگلے سال اس کے بارے میں سوچیں گے... اگلے بجٹ میں سوچیں گے۔ اس وقت جو بجٹ ہمارے پاس دستیاب ہے، ہم اس بجٹ کو زمین پر کیسے اتاریں، اسے بہترین طریقے سے کیسے استعمال کریں، زیادہ سے زیادہ نتیجہ کیسے حاصل کیا جائے، بہترین نتیجہ کیسے حاصل کیا جائے۔ اب اٹل ٹنکرنگ لیب کے کام کو دیکھنے والے لوگ الگ ہیں، لیکن اس کا رشتہ تو کسی نہ کسی تعلیمی نظام سے جڑا ہوا ہے۔ اگر ہم جدت کے بارے میں بات کرنا چاہتے ہیں، تو ہم اٹل ٹنکرنگ لیب کو کس طرح جدید بنائیں گے۔ یعنی تمام مضامین ایسے ہیں کہ بجٹ کے تناظر میں اور قومی تعلیم کے تناظر میں یہ پہلا بجٹ ہے جسے ہم فوراً نافذ کرنا چاہتے ہیں اور آزادی کے اس امرت مہوتسو میں امرت عہد کی بنیاد رکھنا چاہتے ہیں۔

اور میں چاہتا ہوں کہ ایک بہت بڑی تبدیلی ہو جو ہمیں آپ تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مل کر لانے کی ضرورت ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ جب بجٹ پیش کیا جاتا ہے، اس کے بعد وقفہ ہوتا ہے اور تمام اراکین اسمبلی مل کر چھوٹے چھوٹے گروپس میں مل کر بجٹ پر باریک بینی سے بحث کرتے ہیں اور خوب بحث ہوتی ہے، اس سے اچھی چیزیں سامنے آتی ہیں لیکن ہم نے اس کا ایک دائرہ اور بڑھا دیا ہے، ان دنوں ارکان اسمبلی ہی کر رہے ہیں لیکن اب ہم براہ راست محکمہ کے لوگوں سے اسٹیک ہولڈرز سے بات کر رہے ہیں۔

یعنی ایک طرح سے ہم سب کی کوشش جو میں یہ کہہ رہا ہوں، ”سب کا ساتھ، سب کا وکاس، سب کا وشواس، سب کا پریاس“… اس بجٹ میں بھی سب کی کوشش بہت اہم ہے۔

آج کی بحث سے وزارت تعلیم، اسکل منسٹری کو بھی بہت فائدہ ہوگا۔ کیونکہ آپ کے الفاظ اس بات کی تصدیق کریں گے کہ یہ بجٹ بہت اچھا ہے، لیکن اگر آپ اس میں ایسا کریں گے تو یہ مشکل ہوگا، اگر آپ یہ کریں گے تو ٹھیک رہے گا۔ بہت سی عملی چیزیں سامنے آئیں گی۔ کھل کر اپنے خیالات کا اظہار کریں۔ بنیادی بات یہ ہے کہ فلسفے کی کوئی بحث نہیں ہے، اسے عملی زندگی میں کیسے زمین پر لایا جائے، اسے کیسے اچھی طرح سے لاگو کیا جائے، اسے آسانی سے کیسے اتارا جائے، حکومت اور سماجی نظام میں کوئی فاصلہ نہیں ہونا چاہیے، کیسے؟ مل کر کام کریں، اسی کے لیے یہ بحث ہے۔

میں ایک بار پھر میرے ساتھ شامل ہونے کے لیے آپ سب کا شکریہ ادا کرتا ہوں، دن بھر آپ کی گفتگو سے بہت اچھے نکات سامنے آئیں گے جس کی وجہ سے محکمہ تیز رفتاری سے فیصلے کر سکے گا اور ہم اپنے وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے اپنے وسائل کو بہتر بنائیں گے۔ اگلے بجٹ کی تیاری کریں گے۔ میں آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
The Largest Vaccination Drive: Victory of People, Process and Technology

Media Coverage

The Largest Vaccination Drive: Victory of People, Process and Technology
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،1 اکتوبر 2022
October 01, 2022
Share
 
Comments

PM Modi launches 5G for the progress of the country and 130 crore Indians

Changes aimed at India’s growth are being appreciated in all sectors