Share
 
Comments
’’محض6 سال میں زرعی بجٹ میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے، گزشتہ سات برسوں میں کسانوں کو فراہم کرائےجانے والے زرعی قرضوں میں بھی ڈھائی گنا اضافہ ہوا ہے‘‘
’’سال 2023 کو باجرہ کا بین الاقوامی سال تسلیم کئےجانے پر کارپوریٹ دنیا کو بھارت کے باجرہ کی برانڈنگ اور اسے فروغ دینے کے لئے آگے آنا چاہئے‘‘
’’مصنوعی ذہانت 21ویں صدی میں زراعت اور کاشتکاری سے متعلق رجحان کو پوری طرح تبدیل کردے گی‘‘
’’گزشتہ 3-4 برسوں میں ملک میں 700 سے زیادہ ایگری اسٹارٹ اپ قائم کئے گئے ہیں ‘‘
’’حکومت نے کوآپریٹیو زسے متعلق ایک نئی وزارت قائم کی ہے ، آپ کا مقصد یہ ہونا چاہئے کہ کوآپریٹیوز کو کامیاب کاروباری صنعت میں کس طرح تبدیل کیا جائے‘‘

نمسکار!

کابینہ کے میرے ساتھی، ریاستی حکومتوں کے نمائندے، صنعت اور اکیڈمی کے تمام ساتھی، کرشی وگیان کیندروں سے وابستہ ہمارے تمام کسان بھائیو اور بہنوں، خواتین و حضرات!

یہ ایک خوش کن اتفاق ہے کہ 3 سال قبل اسی دن پی ایم کسان سمان ندھی شروع کی گئی تھی۔ آج یہ اسکیم ملک کے چھوٹے کسانوں کے لیے ایک بڑا سہارا بن گئی ہے۔ اس کے تحت ملک کے 11 کروڑ کسانوں کو تقریباً پونے دو لاکھ کروڑ روپے دیے جا چکے ہیں۔ اس پلان میں بھی ہم اسمارٹنس کا تجربہ کر سکتے ہیں۔ صرف ایک کلک سے 10-12 کروڑ کسانوں کے بینک کھاتوں میں براہ راست رقم کی منتقلی، یہ اپنے آپ میں کسی بھی ہندوستانی کے لیے فخر کی بات ہے۔

ساتھیوں،

پچھلے 7 سالوں میں ہم نے بیج سے لے کر بازار تک ایسے کئی نئے سسٹم تیار کیے ہیں، ہم نے پرانے سسٹمز کو بہتر کیا ہے۔ صرف 6 سالوں میں زرعی بجٹ میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ کسانوں کے زرعی قرضوں میں بھی 7 سالوں میں ڈھائی گنا اضافہ کیا گیا ہے۔ کورونا کے مشکل وقت میں بھی خصوصی مہم چلا کر ہم نے 3 کروڑ چھوٹے کسانوں کو KCC کی سہولت سے جوڑا ہے۔ یہ سہولت مویشی پروری اور ماہی پروری سے وابستہ کسانوں کو بھی دی گئی ہے۔ مائیکرو اریگیشن کا نیٹ ورک جتنا مضبوط ہو رہا ہے، اس سے بھی چھوٹے کسانوں کی بہت مدد ہو رہی ہے۔

ساتھیوں،

ان تمام کوششوں کی وجہ سے کسان ہر سال ریکارڈ پیداوار کر رہے ہیں اور ایم ایس پی پر بھی خریداری کے نئے ریکارڈ بن رہے ہیں۔ نامیاتی زراعت کے فروغ کی وجہ سے آج آرگینک مصنوعات کا بازار 11000 کروڑ کا ہو گیا ہے۔ اس کی برآمد بھی 6 سالوں میں 2000 کروڑ سے بڑھ کر 7000 کروڑ سے زیادہ ہو رہی ہے۔

ساتھیوں،

اس سال کا زرعی بجٹ پچھلے سالوں کی ان ہی کوششوں کو جاری رکھتا ہے، ان میں توسیع کرتا ہے۔ اس بجٹ میں زراعت کو جدید اور اسمارٹ بنانے کے لیے سات اہم طریقے تجویز کیے گئے ہیں۔

پہلا- گنگا کے دونوں کناروں پر 5 کلومیٹر کے دائرے میں مشن موڈ پر قدرتی کاشتکاری کرنے کا ہدف ہے۔ جڑی بوٹیوں کی ادویات پر بھی زور دیا جا رہا ہے۔ پھلوں اور پھولوں پر بھی زور دیا جا رہا ہے۔

دوسرا- زراعت اور باغبانی میں جدید ٹیکنالوجی کسانوں کو فراہم کی جائے گی۔

تیسرا یہ کہ خوردنی تیل کی درآمد کو کم کرنے کے لیے ہم مشن آئل پام کے ساتھ ساتھ تیل کے بیجوں کو زیادہ سے زیادہ مضبوط کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور اس بجٹ میں اس پر زور دیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ چوتھا مقصد یہ ہے کہ زرعی مصنوعات کی نقل و حمل کے لیے پی ایم گتی شکتی پلان کے ذریعے نئے لاجسٹک انتظامات کیے جائیں گے۔

بجٹ میں پانچواں حل یہ دیا گیا ہے کہ ایگری ویسٹ مینجمنٹ کو مزید منظم کیا جائے گا، کچرے سے توانائی کے اقدامات کے ذریعے کسانوں کی آمدنی میں اضافہ کیا جائے گا۔

چھٹا حل یہ ہے کہ ملک کے ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ ڈاک خانوں کو باقاعدہ بینکوں جیسی سہولتیں ملیں گی، تاکہ کسانوں کو کسی قسم کی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

اور ساتواں یہ کہ زرعی تحقیق اور تعلیم سے متعلق نصاب میں مہارت کی ترقی، انسانی وسائل کی ترقی کو آج کے جدید دور کے مطابق تبدیل کیا جائے گا۔

ساتھیوں،

آج دنیا میں صحت سے متعلق آگاہی بڑھ رہی ہے۔ ماحول دوست طرز زندگی کے بارے میں آگاہی بڑھ رہی ہے۔ زیادہ سے زیادہ لوگ اس کی طرف راغب ہو رہے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ اس کا بازار بھی بڑھ رہا ہے۔ ہم اس سے جڑی چیزوں کی مدد سے مارکیٹ پر قبضہ کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں، جیسے کہ قدرتی کاشتکاری، نامیاتی کاشتکاری۔ ہمارے کرشی وگیان کیندروں اور زرعی یونیورسٹیوں کو قدرتی کھیتی کے فوائد کو عوام تک پہنچانے کے لیے پوری طاقت کے ساتھ متحرک ہونا پڑے گا۔ ہمارے KVK ایک ایک گاؤں کو گود لے سکتے ہیں۔ ہماری زرعی یونیورسٹی اگلے ایک سال میں 100 یا 500 کسانوں کو قدرتی کھیتی کی طرف لانے کا ہدف رکھ سکتی ہے۔

ساتھیوں،

آج کل ہمارے متوسط ​​طبقے کے خاندانوں میں، بالائی متوسط ​​طبقے کے خاندانوں میں، ایک اور رجحان دیکھنے کو ملتا ہے۔ اکثر دیکھا گیا ہے کہ بہت سی چیزیں ان کے کھانے کی میز تک پہنچ چکی ہیں۔ پروٹین کے نام پر، کیلشیم کے نام پر، ایسی کئی مصنوعات اب کھانے کی میز پر جگہ بنا رہی ہیں۔ اس میں بہت سی پروڈکٹس بیرون ملک سے آ رہی ہیں اور وہ بھی ہندوستانی ذائقے کے مطابق نہیں ہیں۔ جب کہ ان تمام مصنوعات میں ہماری ہندوستانی مصنوعات میں وہ سب کچھ موجود ہے، جو ہمارے کسان تیار کرتے ہیں، لیکن ہم اسے صحیح طریقے سے پیش نہیں کر پاتے۔ ہم اس کی مارکیٹنگ کرنے کے قابل نہیں ہیں، اور اسی لیے ہمیں کوشش کرنی چاہیے، اس میں بھی ’ووکل فار لوکل‘ ضروری ہے۔

ہم نے دیکھا ہے کہ کورونا کے دور میں مصالحہ جات، ہلدی جیسی چیزوں کی کشش بہت بڑھ گئی ہے۔ سال 2023 جوار کا بین الاقوامی سال ہے۔ اس میں ہماری کارپوریٹ دنیا کو بھی آگے آنا چاہیے، برانڈنگ کرنا چاہیے، ہندوستان کے جواروں کو فروغ دینا چاہیے۔ ہمارے پاس جتنے بڑے دھان ہیں اور دوسرے ملکوں میں ہمارے جتنے بڑے مشن ہیں، وہ بھی اپنے ملکوں میں بڑے بڑے سیمینار منعقد کریں، وہاں کے درآمد کنندگان کو سمجھائیں کہ ہندوستان کا جوار جو ہندوستان کا دھان ہے، وہ کن طریقوں سے بہت اچھا ہے۔ اس کا ذائقہ کتنا اہم ہے۔ ہم اپنے جوار کے حوالے سے درآمد کنندگان کے درمیان سیمینار، ویبینار کر سکتے ہیں۔ ہم اس بات پر زور دے سکتے ہیں کہ ہندوستان میں جوار کی غذائیت کی قیمت کتنی زیادہ ہے۔

ساتھیوں،

آپ نے دیکھا ہے کہ ہماری حکومت کا بہت زور سوائل ہیلتھ کارڈ پر رہا ہے۔ حکومت نے ملک کے کروڑوں کسانوں کو سوائل ہیلتھ کارڈ دیے ہیں۔ جس طرح ایک زمانہ تھا جب پیتھالوجی لیب نہیں تھے، لوگ پیتھالوجی ٹیسٹ نہیں کرواتے تھے، لیکن اب کوئی بیماری آئے تو سب سے پہلے پیتھالوجی لیب جانا پڑتا ہے۔ کیا ہمارے اسٹارٹ اپس، کیا ہمارے نجی سرمایہ کار ہماری زمین اور اس کے نمونوں کے پیتھولوجیکل ٹیسٹ اسی طرح کر کے کسانوں کی رہنمائی کر سکتے ہیں جس طرح مختلف جگہوں پر پرائیویٹ پیتھالوجی لیبز ہیں۔ مٹی کی صحت کی جانچ پڑتال مسلسل کرتے رہنا چاہیے، اگر ہم اپنے کسانوں کو اس کی عادت ڈالیں گے تو چھوٹے کاشتکار بھی سال میں ایک بار مٹی کی جانچ ضرور کرائیں گے۔ اور اس کے لیے سوائل ٹیسٹنگ لیبز کا پورا نیٹ ورک کھڑا ہو سکتا ہے۔ میرے خیال میں یہ بہت بڑا علاقہ ہے، اسٹارٹ اپس کو آگے آنا چاہیے۔

ہمیں کاشتکاروں میں یہ شعور بھی بڑھانا ہے، ہمیں ہر ایک یا دو سال بعد اپنے کھیتوں کی مٹی کا ٹیسٹ کروانے کا جذبہ پیدا کرنا ہو گا اور اس کے مطابق اس میں کون سی دوائیاں درکار ہیں، کونسی کھاد کی ضرورت ہے، کس فصل کے لیے مفید ہے، وہ اس کا سائنسی علم حاصل کریں گے، یہ آپ کے علم میں ہے کہ ہمارے نوجوان سائنسدانوں نے نینو کھاد تیار کی ہے۔ یہ گیم چینجر ثابت ہونے والا ہے۔ ہماری کارپوریٹ دنیا میں بھی اس میں کام کرنے کی کافی صلاحیت ہے۔

ساتھیوں،

مائیکرو اریگیشن ان پٹ لاگت کو کم کرنے اور زیادہ پیداوار کا ایک بہترین ذریعہ بھی ہے اور یہ ماحولیات کی خدمت بھی ہے۔ پانی کو بچانا بھی آج بنی نوع انسان کے لیے ایک بڑا کام ہے۔ کاروباری دنیا کے لیے بھی بہت زیادہ پوٹینشل ہے کہ آپ اس فیلڈ میں آئیں۔

ساتھیوں،

آنے والے 3-4 سالوں میں ہمیں خوردنی تیل کی پیداوار کو موجودہ وقت سے 50 فیصد تک بڑھانے کا ہدف حاصل کرنا ہے۔ خوردنی تیل کے قومی مشن کے تحت تیل کی کھجور کی کاشت کو وسعت دینے میں بہت زیادہ امکانات ہیں اور ہمیں تیل کے بیجوں کے میدان میں بھی بڑے پیمانے پر آگے بڑھنے کی ضرورت ہے۔

فصل کے نمونوں کے لیے، ہمارے زرعی سرمایہ کاروں کو بھی فصلوں کے تنوع کو فروغ دینے کے لیے آگے آنا چاہیے۔ مثال کے طور پر درآمد کنندگان کو معلوم ہے کہ ہندوستان میں کس قسم کی مشینوں کی ضرورت ہے۔ وہ جانتے ہیں کہ کس قسم کی چیزیں چلیں گی۔ اسی طرح ہمارے یہاں فصلوں کے بارے میں معلومات ہونی چاہئیں۔ مثال کے طور پر تیل کے بیجوں اور دالوں کی مثال لیں۔ ملک میں اس کی بہت زیادہ مانگ ہے۔ ایسے میں ہماری کارپوریٹ دنیا کو اس میں آگے آنا چاہیے۔ یہ آپ کے لیے ایک یقینی مارکیٹ ہے۔ بیرون ملک سے لانے کی کیا ضرورت ہے، آپ کسانوں کو پہلے ہی بتا دیں کہ ہم آپ سے اتنی فصل لے لیں گے۔ اب جبکہ انشورنس کا نظام ہے تو انشورنس کی وجہ سے آپ کو تحفظ مل رہا ہے۔ ہندوستان کی خوراک کی ضرورت کا مطالعہ ہونا چاہیے، اور ہم سب کو مل کر ان چیزوں کو تیار کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے جن کی ہندوستان میں ہی ضرورت ہے۔

ساتھیوں،

مصنوعی ذہانت 21ویں صدی میں زراعت اور کاشتکاری سے متعلق تجارت کو مکمل طور پر بدلنے والی ہے۔ ملک کی زراعت میں کسان ڈرون کا زیادہ سے زیادہ استعمال اسی تبدیلی کا حصہ ہے۔ ڈرون ٹیکنالوجی بڑے پیمانے پر اسی وقت دستیاب ہوگی جب ہم زرعی اسٹارٹ اپ کو فروغ دیں گے۔ پچھلے 3-4 سالوں میں ملک میں 700 سے زیادہ ایگری اسٹارٹ اپس تیار ہوئے ہیں۔

ساتھیوں،

گزشتہ 7 سالوں میں پوسٹ ہارویسٹ مینجمنٹ پر بہت کام کیا گیا ہے۔ مرکزی حکومت کی مسلسل کوشش رہی ہے کہ پروسیسڈ فوڈ کا دائرہ بڑھایا جائے، ہمارا معیار بین الاقوامی معیار کا ہو۔ اس کے لیے کسان سمپدا یوجنا کے ساتھ ساتھ پی ایل آئی اسکیم بھی اہم ہے۔ ویلیو چین بھی اس میں بڑا کردار ادا کرتا ہے۔ اس لیے 1 لاکھ کروڑ روپے کا خصوصی زرعی انفراسٹرکچر فنڈ بنایا گیا ہے۔ آپ نے دیکھا ہے کہ ابھی کچھ دن پہلے ہی ہندوستان نے UAE کے ساتھ، خلیجی ممالک کے ساتھ، ابوظہبی کے ساتھ کئی اہم معاہدوں پر دستخط کیے ہیں۔ اس میں فوڈ پروسیسنگ میں تعاون بڑھانے کے لیے کئی اہم فیصلے بھی کیے گئے ہیں۔

ساتھیوں،

Agri-residue، جسے پرالی بھی کہا جاتا ہے، کا انتظام کرنا بھی اتنا ہی ضروری ہے۔ اس کے لیے اس بجٹ میں کچھ نئے اقدامات کیے گئے ہیں، جس سے کاربن کا اخراج بھی کم ہوگا اور کسانوں کو بھی آمدنی ہوگی۔

ہم پرالی کے انتظام کے حوالے سے جو بھی حل لا رہے ہیں، کسانوں کے لیے اسے قبول کرنا بہت آسان ہو گا، اس پر بات ہونی چاہیے۔ ہمارے کسانوں کے لیے پوسٹ ہارویسٹنگ ویسٹ ایک بڑا چیلنج ہے۔ اب اگر ہم فضلے کو بہترین میں تبدیل کر دیں تو کسان بھی فعال طور پر ہمارا ساتھی بن کر حصہ دار بن جائے گا۔ ایسی صورت حال میں لاجسٹک اور ذخیرہ اندوزی کے نظام کو وسعت اور فروغ دیتے رہنا بہت ضروری ہے۔

ساتھیوں،

زراعت میں جدت اور پیکیجنگ دو ایسے شعبے ہیں جن پر زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ آج دنیا میں صارفیت بڑھ رہی ہے، اس لیے پیکیجنگ اور برانڈنگ کی بہت اہمیت ہے۔ ہمارے کارپوریٹ گھرانوں، زرعی اسٹارٹ اپس کو پھلوں کی پیکنگ میں بڑی تعداد میں آگے آنا چاہیے۔ انہیں اس بات پر بھی توجہ دینی چاہیے کہ وہاں موجود ایگری ویسٹ کے ساتھ کس طرح بہترین پیکیجنگ کی جا سکتی ہے۔ انھیں اس میں کسانوں کی مدد کرنی چاہیے اور اس سمت میں اپنا منصوبہ بنانا چاہیے۔

ہندوستان میں فوڈ پروسیسنگ اور ایتھنول میں سرمایہ کاری کی بڑی صلاحیت ہے۔ حکومت ایتھنول کی 20 فیصد ملاوٹ کا ہدف رکھتی ہے، ایک یقینی مارکیٹ ہے۔ 2014 سے پہلے، جہاں 1-2 فیصد ایتھنول بلیڈنگ کی جاتی تھی، اب یہ تقریباً 8 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ حکومت ایتھنول بلیڈنگ کو بڑھانے کے لیے بہت زیادہ مراعات دے رہی ہے۔ اس شعبے میں ہماری کاروباری دنیا کو بھی آگے آنا چاہیے، ہمارے کاروباری گھرانوں کو آگے آنا چاہیے۔

ایک موضوع قدرتی جوس کا بھی ہے۔ اس کی پیکنگ بہت اہمیت کی حامل ہے۔ اس طرح کی پیکیجنگ پر کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ پروڈکٹ کی شیلف لائف لمبی ہو، یہ زیادہ سے زیادہ دنوں تک چلتی رہے، کیونکہ ہمارے پاس اس طرح کے مختلف قسم کے پھل ہیں اور ہندوستان میں قدرتی جوس، ہمارے پھلوں کے جوس، بہت سے اختیارات اور قسمیں دستیاب ہیں۔ باہر کی نقل کرنے کے بجائے، ہمیں ہندوستان میں قدرتی جوس کو فروغ دینا، مقبول بنانا چاہیے۔

ایک اور موضوع کوآپریٹو سیکٹر کا ہے۔ ہندوستان کا کوآپریٹو سیکٹر بہت پرانا، متحرک ہے۔ شوگر ملیں ہوں، کھاد کے کارخانے ہوں، ڈیری ہوں، قرض کے انتظامات ہوں، اناج کی خریداری ہو، کوآپریٹو سیکٹر کی شراکت بہت زیادہ ہے۔ ہماری حکومت نے اس سے متعلق ایک نئی وزارت بھی بنائی ہے اور اس کی بنیادی وجہ کسانوں کی ہر ممکن مدد کرنا ہے۔ ہمارے کوآپریٹو کے پاس ایک متحرک کاروباری ادارہ بنانے کی بہت گنجائش ہے۔ آپ کا مقصد یہ ہونا چاہیے کہ کوآپریٹیو کو ایک کامیاب کاروباری ادارے میں کیسے تبدیل کیا جائے۔

ساتھیوں،

میں اپنے مائیکرو فنانسنگ اداروں سے بھی درخواست کرتا ہوں کہ وہ آگے آئیں اور ایگری اسٹارٹ اپس، فارمر پروڈیوس آرگنائزیشن- ایف پی او کو زیادہ سے زیادہ مالی مدد فراہم کریں۔ آپ سب ہمارے ملک کے چھوٹے کسانوں کے کاشتکاری پر ہونے والے اخراجات کو کم کرنے میں بھی بڑا کردار ادا کر سکتے ہیں۔

ہماری کارپوریٹ دنیا کو ایسے نظام بنانے چاہیے، جو کھیتی کے سازوسامان کو کرائے پر دینے میں سہولت فراہم کریں۔ ہماری حکومت کسانوں کو خوراک فراہم کنندگان کے ساتھ ساتھ توانائی فراہم کرنے والے بنانے کے لیے ایک بڑی مہم چلا رہی ہے۔ ملک بھر میں کسانوں میں سولر پمپ تقسیم کیے جا رہے ہیں۔ ہمارے زیادہ سے زیادہ کسان، کھیتوں میں شمسی توانائی کیسے پیدا کریں، ہمیں اس سمت میں بھی اپنی کوششیں بڑھانا ہوں گی۔

اسی طرح ’میڑ پر پیڑ‘ جو ہمارے کھیت کی حد ہے، آج ہم لکڑی درآمد کرتے ہیں۔ اگر ہم اپنے کسانوں کو اس قسم کی لکڑی کو اپنے میڑوں پر سائنسی طریقے سے لگانے کی ترغیب دیں تو 10 سے 20 سال بعد یہ ان کی آمدنی کا ایک نیا ذریعہ بن جائے گا۔ حکومت اس میں ضروری قانونی تبدیلیاں بھی کرے گی۔

ساتھیوں،

کسانوں کی آمدنی میں اضافہ، کاشتکاری کے اخراجات میں کمی، کسانوں کو بیج سے لے کر مارکیٹ تک جدید سہولیات فراہم کرنا ہماری حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ کی تجاویز سے حکومت کی کوششوں کو تقویت ملے گی اور ہمارا کسان جو خواب دیکھ کر کچھ کرنا چاہتا ہے، ان سب کو مضبوطی ملے گی۔ اور میرا ماننا ہے کہ آج ہم زراعت کی اگلی نسل پر بات کرنا چاہتے ہیں، روایتی طریقوں سے باہر آنے کے لیے سوچنا چاہتے ہیں، بجٹ کی روشنی میں جو چیزیں بجٹ میں فراہم کی گئی ہیں، ان کی روشنی میں ہم یہ کیسے کر سکتے ہیں، اور میری آپ سے یہ گزارش ہے کہ اس سیمینار میں اسے سامنے آنا چاہیے۔

یکم اپریل سے جس دن نیا بجٹ لاگو ہوگا، اسی دن ہم چیزیں رول آؤٹ کریں گے، کام شروع کریں گے۔ ابھی ہمارے پاس مارچ کا پورا مہینہ ہے۔ بجٹ پہلے ہی پارلیمنٹ میں رکھا جا چکا ہے اب وہ بجٹ ہمارے سامنے ہے۔ ایسے میں وقت ضائع کیے بغیر ہمارے کسان کو کھیتی کے نئے سال کا آغاز جون جولائی میں کرنا چاہیے، اس سے پہلے مارچ کے مہینے میں ہمیں کسانوں تک چیزیں پہنچانے کا منصوبہ بنانا چاہیے۔ اس میں ہماری کارپوریٹ دنیا، ہماری مالیاتی دنیا، ہمارے اسٹارٹ اپس، ہمارے ٹیکنالوجی کے لوگ آگے آئیں۔ ہمیں ایک چیز باہر سے نہیں لانی چاہیے، ہمیں اسے ملک کی ضروریات کے مطابق تیار کرنا چاہیے۔

اور مجھے یقین ہے کہ اگر ہم اپنے کسانوں، اپنی زرعی یونیورسٹیوں، اپنے زراعت کے طلباء، ان تمام کاموں کو ایک پلیٹ فارم پر لا کر آگے بڑھیں، تو حقیقی معنوں میں بجٹ صرف نمبروں کا کھیل نہیں رہے گا، بجٹ زندگی کی تبدیلی، زرعی تبدیلی، گاؤں کی زندگی میں تبدیلی کا ایک بڑا ذریعہ بن سکتا ہے۔ اس لیے میں آپ سے گزارش کرتا ہوں کہ یہ سیمینار، یہ ویبینار بہت نتیجہ خیز ہونا چاہیے، ٹھوس ہونا چاہیے، تمام قابل عمل نکات کے ساتھ ہونا چاہیے۔ اور تب ہی ہم نتائج حاصل کر سکیں گے۔ مجھے یقین ہے کہ اس شعبے سے وابستہ ملک بھر سے آپ سبھی لوگ جو آج اس ویبینار سے جڑے ہوئے ہیں، اس کی وجہ سے محکمہ کو بھی آپ کی طرف سے بہت اچھی رہنمائی ملے گی۔ بغیر کسی رکاوٹ کے چیزوں کو لاگو کرنے کا ایک راستہ نکلے گا، اور ہم مل کر تیزی سے آگے بڑھیں گے۔

ایک بار پھر میں آپ سب کا بہت بہت شکریہ ادا کرتا ہوں اور آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں ۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Indians Abroad Celebrate 74th Republic Day; Greetings Pour in from World Leaders

Media Coverage

Indians Abroad Celebrate 74th Republic Day; Greetings Pour in from World Leaders
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM thanks world leaders for their greetings on India’s 74th Republic Day
January 26, 2023
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has thanked world leaders for their greetings on India’s 74th Republic Day.

In response to a tweet by the Prime Minister of Australia, the Prime Minister said;

"Thank you Prime Minister @AlboMP. Greetings to you and to the friendly people of Australia on Australia Day."

In response to a tweet by the Prime Minister of Nepal, the Prime Minister said; "Thank You @cmprachanda ji for your warm wishes!"

In response to a tweet by the Prime Minister of Bhutan, the Prime Minister said; "Thank you @PMBhutan Dr. Lotay Tshering for your warm wishes! India is committed to its unique partnership with Bhutan for progress and prosperity of both our nations."

In response to a tweet by the President of Maldives, the Prime Minister said; "Thank you for your warm greetings, President @ibusolih. Glad to see the sustained progress achieved by India-Maldives partnership, underpinned by common democratic values."

In response to a tweet by the Prime Minister of Israel, the Prime Minister said; "Thank you for your warm wishes for India's Republic Day, PM @netanyahu. Look forward to further strengthening our strategic partnership."

In response to a tweet by the President of France, the Prime Minister said; "Grateful for your warm greetings my dear friend @EmmanuelMacron on India’s Republic Day. I share your commitment to work together for success of India’s G20 Presidency & 25th anniversary of India-France Strategic Partnership. India and France together are a force for global good."

In response to a tweet by the Prime Minister of Mauritius, the Prime Minister said; "Thank you, PM @KumarJugnauth. In our shared journey as modern Republics, our two countries have been partnering closely in people-centred development. Looking forward to taking our cherished partnership with Mauritius to even greater heights."