جبل پور میں ’ویرانگنہ رانی درگاوتی اِسمارک اور ادیان‘ کا بھومی پوجن کیا
ویرانگنہ رانی درگاوتی کے 500 ویں یوم پیدائش پر یادگاری سکہ اور ڈاک ٹکٹ جاری کیا
پی ایم اے وائی – شہری کے تحت اندور میں لائٹ ہاؤس پروجیکٹ کے تحت تعمیر کیے گئے 1000 سے زیادہ مکانات کا افتتاح کیا
مانڈلا، جبل پور اور ڈِنڈوری اضلاع میں جل جیون مشن کے متعدد پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اور سیونی ضلع میں جل جیون مشن پروجیکٹ کو قوم کے نام وقف کیا
مدھیہ پردیش میں سڑک کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانے کے لیے 4800 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اور انھیں قوم کے نام وقف کیا
1850 کروڑ روپے سے زیادہ کے ریل پروجیکٹوں کو وقف کیا
وجے پور - اورائیاں - پھول پور پائپ لائن پروجیکٹ کو وقف کیا
ممبئی ناگپور جھارسوگوڈا پائپ لائن پروجیکٹ کے ناگپور جبل پور سیکشن (317 کلومیٹر) کا سنگ بنیاد رکھا اور جبل پور میں بوٹلنگ کے نئے پلانٹ کو وقف کیا
’’رانی درگاوتی ہمیں دوسروں کے فائدے کے لیے جینا سکھاتی ہیں اور مادر وطن کے لیے کچھ کرنے کی ترغیب دیتی ہیں‘‘
’’گزشتہ چند ہفتوں میں، اجولا سے فائدہ اٹھانے والوں کے لیے گیس سلنڈر کی قیمتوں میں 500 روپے کی کمی کی گئی ہے‘‘
’’جن دھن، آدھار اور موبائل کی تثلیث نے بدعنوان نظام کو ختم کرنے میں مدد کی‘‘
’’یہ 25 سال کی عمر کے افراد کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ ان کے بچے بڑے ہوکر آنے والے 25 سالوں میں ایک ترقی یافتہ مدھیہ پردیش دیکھیں‘‘
آج ہندوستان کا اعتماد ایک نئی بلندی پر ہے، کھیل کے میدان سے لے کر کھیت کھلیانوں تک ہندوستان کا پرچم لہرا رہا ہے
’’سودیشی کا احساس، ملک کو آگے لے جانے کا جذبہ آج ہر جگہ عروج پر ہے‘‘
’’ڈبل انجن والی سرکار محروم طبقات کو ترجیح دیتی ہے‘‘

 بھارت  ماتا کی جے ۔

بھارت  ماتا کی جے ۔

مدھیہ پردیش کے گورنرجناب منگو بھائی پٹیل، وزیر اعلیٰ بھائی شیوراج سنگھ چوہان، مرکزی کابینہ میں شامل میرے تمام ساتھی، ایم پی حکومت کے وزراء، ارکان پارلیمنٹ،  ممبران اسمبلی ، اسٹیج پر موجود دیگر تمام معززین اور ہمیں آشیرواد دینے اتنی بڑی تعداد میں تشریف لانے والے خواتین و حضرات!

ماں نرمدا کی اس مقدس سرزمین کو عقیدت کے ساتھ سجدہ کرتے ہوئے، آج میں جبل پور کا ایک نیا چہرہ دیکھ رہا ہوں۔ میں دیکھ رہا ہوں کہ جبل پور میں جوش ہے، مہا کوشل میں خوشحالی ہے، جوش اور ولولہ ہے۔ یہ جوش، یہ  جذبہ ،یہ ظاہر کرتا ہے کہ مہا کوشل کے ذہن میں کیا ہے۔ اس جوش و جذبے کے درمیان آج پورا ملک بہادر رانی درگاوتی جی کی 500 ویں یوم پیدائش منا رہا ہے۔ رانی درگاوتی گورو یاترا کے اختتامی موقع پر، میں نے ان کےیوم پیدائش کو قومی سطح پر منانے کا مطالبہ کیا تھا۔ آج ہم سب یہاں اسی مقصد کے لیے جمع ہوئے ہیں، ایک مقدس کام کو انجام دینے کے لیے، اپنے اسلاف کا قرض چکانے کے لیے۔ ابھی کچھ دیر پہلے یہاں رانی درگاوتی جی کی عظیم الشان یادگار کا بھومی پوجن ہوا تھا، اور میں صرف یہ سوچ رہا تھا کہ یہ کیسے بنے گا، شیوراج جی مجھے اس کا مکمل نقشہ تفصیل سے دکھا رہے تھے۔ مجھے پختہ یقین ہے کہ اس کے بننے کے بعد ہندوستان کی ہر ماں اور ہر نوجوان کو اس دھرتی پر آنے کی خواہش جاگے گی۔ایک طرح سے یہ زیارت گاہ بن جائے گا۔ رانی درگاوتی کی زندگی ہمیں سب کی بھلائی کا سبق سکھاتی ہے، ہمیں اپنی جائے پیدائش کے لیے کچھ کرنے کی ہمت دیتی ہے۔ میں رانی درگاوتی کے یوم پیدائش پر پورے قبائلی سماج، مدھیہ پردیش اور 140 کروڑ ہم وطنوں کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ اگر دنیا کے کسی بھی ملک میں رانی درگاوتی جیسا کوئی ہیرو یا ہیروئن ہوتا تو وہ ملک پوری دنیا میں اس پر فخر کر رہا ہوتا۔ آزادی کے بعد ہمارے ملک میں بھی ایسا ہونا چاہیے تھا لیکن ہمارے عظیم آدمیوں کو بھلا دیا گیا۔ یہ شاندار، تپسیا، قربانی اور تپسیا کے مجسمے، ایسے عظیم مرد، ایسے بہادر مرد اور عورتیں، بھلا دی گئیں۔

میرے خاندان کے افراد،

آج یہاں 12 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کے ترقیاتی کاموں کا سنگ بنیاد رکھا گیا اور افتتاح کیا گیا۔ پانی اور گیس کی پائپ لائن ہو یا 4 لین سڑکوں کا جال، یہ ایسے منصوبے ہیں جو لاکھوں لوگوں کی زندگیوں کا نقشہ بدل رہے ہیں۔ اس سے یہاں کے کسانوں کو ضرور فائدہ ہوگا، نئی فیکٹریاں اور پلانٹ لگیں گے، ہمارے نوجوانوں کو یہاں روزگار ملے گا۔

میرے خاندان کے افراد،

بی جے پی حکومت کی اولین ترجیحات میں سے ایک ہماری بہنوں کو دھوئیں سے پاک باورچی خانے فراہم کرنا ہے۔ کچھ لوگوں نے تحقیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ جب ماں کھانا پکاتی ہے اور دھواں دار چولہا رکھتی ہے، لکڑیاں جلاتی ہے یا کوئلہ جلاتی ہے تو 24 گھنٹوں میں کھانا پکانے اور اس دھوئیں میں رہنے کی وجہ سے اس کا جسم 400 سگریٹوں کے دھوئیں کی زد میں آ جاتا ہے۔ کیا میری ماؤں بہنوں کو اس مصیبت سے نجات ملنی چاہیے یا نہیں؟ اپنی پوری طاقت کے ساتھ بتائیں، یہ ماؤں بہنوں کی بات ہے۔ کیا میری ماؤں بہنوں کو کچن میں دھوئیں سے آزاد ہونا چاہیے یا نہیں؟ کیا کانگریس یہ کام پہلے نہیں کر سکتی تھی، یہ نہیں کر سکتی تھی، انہیں ماؤں بہنوں، ان کی صحت، ان کی بھلائی کی پرواہ نہیں تھی۔

بھائیو بہنو،

اسی لیے ہم نے ایک بڑی مہم چلائی اور غریب خاندانوں کی کروڑوں بہنوں کو مفت اجولا گیس کنکشن دیا، ورنہ اگر انہیں پہلے گیس کنکشن لینا ہوتا تو انہیں رکن اسمبلی کے گھر جانا پڑتا۔ اور آپ کو یاد ہے کہ رکشا بندھن کے تہوار پر ایک بھائی اپنی بہن کو کچھ دیتا ہے۔ تو رکھشا بندھن کے تہوار پر ہماری حکومت نے تمام بہنوں کے لیے گیس سلنڈر سستا کر دیا تھا۔ اس وقت اجولا کی استفادہ کنندہ بہنوں کے لیے سلنڈر 400 روپے سستا کیا گیا تھا۔ اور اب کچھ دنوں بعد درگا پوجا، نوراتری، دسہرہ، دیوالی کے تہوار آنے والے ہیں۔ پھر اس مودی حکومت نے کل ہی ایک بار پھر اجولا سلنڈر 100 روپے سستا کر دیا۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ صرف پچھلے چند ہفتوں میں، اجولا کی استفادہ کرنے والی بہنوں کے لیے سلنڈر 500 روپے سستا ہو گیا ہے۔ اب میری غریب ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کو جو اجولا سے مستفید ہیں انہیں صرف 600 روپے میں گیس سلنڈر ملے گا۔ بی جے پی حکومت اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بھی تیز رفتاری سے کام کر رہی ہے کہ سستی گیس سلنڈر کے بجائے پائپ کے ذریعے باورچی خانے میں پہنچے۔ اسی لیے یہاں گیس کی پائپ لائنیں بھی بچھائی جارہی ہیں۔ مدھیہ پردیش کے لاکھوں خاندان بھی اس سے مستفید ہوں گے۔

میرے خاندان کے افراد،

آج ہمارے کالج میں پڑھنے والے طلباء، ہمارے نوجوان دوست، ہمارے نوجوان بیٹے اور بیٹیاں، میں انہیں کچھ پرانی باتیں یاد دلانا چاہوں گا، انہیں پرانی باتیں یاد دلانا چاہوں گا، انہیں 2014 کی باتیں یاد دلانا چاہوں گا، کیا میں  آپ کو یہ یاد کراؤں ؟آپ دیکھیں آج جن کی عمر 22-20  سال ہے وہ بھی نہیں جانتے ہوں گے کیونکہ اس وقت ان کی عمر 8,10,12 سال ہو گی، انہیں یہ نہیں معلوم ہوگا کہ مودی کے آنے سے پہلے کیا حال تھا۔ اس وقت کانگریس حکومت کے ہزاروں کروڑ روپے کے گھوٹالے روز سرخیوں میں آتے تھے۔ جو پیسہ غریبوں پر خرچ ہونا تھا، وہ کانگریس لیڈروں کے خزانے میں جا رہا تھا۔ اور میں ان نوجوانوں سے کہوں گا، یہ آن لائن جنریشن ہیں، ذرا گوگل پر جا کر سرچ کریں، ذرا 2013-14 کے اخبارات کی سرخیاں پڑھیں، ملک کا کیا حال تھا۔

اور اس لئے بھائیو اور بہنو،

 سال 2014 کے بعد جب آپ نے ہمیں خدمت کا موقع دیا تو ہم نے کانگریس حکومت کے بنائے کرپٹ نظام کو بدلنے کی مہم شروع کی اور صفائی مہم بھی شروع کی۔ ہم نے تقریباً 11 کروڑ کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال کیا، کیا آپ کو یہ اعداد و شمار یاد ہیں؟ اگر آپ جواب دیں گے تو ہمیں معلوم ہوگا، کیا آپ کو یہ اعداد و شمار یاد ہوں گے؟ کیا آپ کو یہ اعداد و شمار یاد ہوں گے؟ ہم نے سرکاری دفاتر سے 11 کروڑ فرضی نام نکالے۔ کتنے، کتنے، بلند آواز سے بولیں کتنے، 11 کروڑ، یہ 11 کروڑ نام کون سے تھے، یہ وہ نام تھے جو کبھی پیدا ہی نہیں ہوئے۔ لیکن سرکاری دفتر سے خزانے کو لوٹنے کا طریقہ بنایا گیا تھا۔ کانگریس نے انہیں جھوٹے نام، فرضی نام اور کاغذی دستاویزات تیار کیے۔

یہ مدھیہ پردیش اور چھتیس گڑھ کی کل آبادی ہے، اس سے بھی بڑی تعداد 11 کروڑ ہے۔ یہ 11 کروڑ فرضی نام اصلی حق داروں سے ان کا  حق چھین کر خزانے کو لوٹنے کا کام انجام دے رہے تھے، 2014 میں آنے کے بعد مودی نے سب کچھ واضح کر دیا۔ ان لوگوں کے ناراض ہونے کی وجہ یہ ہے کہ ان کی کٹکی بند کردی گئی ہے، کمیشن روک دیا گیا ہے۔ مودی نے آکر سب کچھ صاف کردیا۔ نہ غریبوں کا پیسہ لوٹنے دوں گا اور نہ کانگریس کے خزانے کو، کانگریسی لیڈروں کی تجوریاں بھرنے دوں گا۔ ہم نے جن دھن آدھار اور موبائل کی ایسی تثلیث بنائی کہ کانگریس کا بدعنوانی نظام تباہ ہو گیا۔ آج اس ترشکتی کی وجہ سے ڈھائی لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ، یہ اعداد و شمار بھی آپ سے دوبارہ پوچھنے کے قابل ہیں، مودی نے ڈھائی لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ بچانے کا کام کیا ہے جو غلط ہاتھوں میں جا رہے تھے اور چوری ہورہےتھے؟ کتنے ڈھائی لاکھ کروڑ؟ آج غریبوں کا پیسہ غریبوں کے فائدے میں استعمال ہو رہا ہے۔ آج مرکزی حکومت صرف 500 روپے میں اجولا سلنڈر فراہم کرنے کے لیے کروڑوں روپے خرچ کر رہی ہے۔ کروڑوں خاندانوں کو مفت راشن فراہم کرنے پر 3 لاکھ کروڑ روپے خرچ کیے جا رہے ہیں۔ یہ تین لاکھ کروڑ روپے خزانے سے اس لیے دیے جاتے ہیں کہ میری غریب ماں کا بچہ رات کو بھوکا نہ سوئے، غریب کا چولہا جلتا رہے۔ آیوشمان اسکیم کے تحت ملک کے تقریباً 5 کروڑ خاندانوں کا مفت علاج ہوا ہے۔ اس کے لیے بھی حکومت نے آپ کے آیوشمان کارڈ کے لیے 70 ہزار کروڑ روپے خرچ کیے ہیں۔ کسانوں کو سستا یوریا ملنا چاہیے، دنیا میں یوریا کا ایک تھیلا 3000 روپے میں بکتا ہے، مودی جی 300 روپے سے بھی کم میں دیتے ہیں اور اسی لیے مرکزی حکومت نے خزانے سے 8 لاکھ کروڑ روپے خرچ کیے ہیں،  تاکہ  میرے کسانوں کو نقصان نہیں پہنچ سکے۔ پی ایم کسان سمان ندھی کے تحت 2.5 لاکھ کروڑ روپے براہ راست کسانوں کے بینک کھاتوں میں جمع کیے گئے ہیں۔ ہماری حکومت نے غریب خاندانوں کو مستقل مکان فراہم کرنے کے لیے بھی 4 لاکھ کروڑ روپے خرچ کیے ہیں، تاکہ غریبوں کو مستقل مکان مل سکے۔ آج بھی آپ نے دیکھا کہ میں نے اندور میں غریب خاندانوں کو جدید ٹیکنالوجی سے بنے ایک ہزار کثیر منزلہ پکے مکانات فراہم کرنے کا کام کیا ہے۔

میرے خاندان کے افراد،

اگر آپ یہ ساری رقم جوڑیں گے تو اعداد و شمار کیا ہوں گے، کتنے صفر جوڑنا ہوں گے، آپ اندازہ لگا سکتے ہیں، یہ کانگریس والے اس کا حساب بھی نہیں لگا سکتے۔ اور آپ سنیں، 2014 سے پہلے، یہ صفر، صفر، صفر صرف گھوٹالوں سے پیسے لینے کے لیے استعمال ہوتا تھا۔ اب سوچئے، کانگریس کا ایک وزیر اعظم کہتا تھا کہ اگر آپ دہلی سے ایک روپیہ بھیجیں تو 15 پیسے تک پہنچ جاتا ہے، لیکن اگر آپ 85 پیسے بھیجیں گے تو کوئی 85 پیسے خرچ کرے گا۔ ہم ایک روپیہ بھیجتے تھے اور یہ 15 پیسے تک پہنچ جاتا تھا۔ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اگر میں نے جو روپیہ شمار کیا ہے وہ کانگریس کے دور میں چلا جاتا تو کتنی بڑی چوری ہوتی۔ آج بی جے پی حکومت غریبوں کو اتنا پیسہ دے رہی ہے۔

میرے خاندان کے افراد،

یہ میرے مدھیہ پردیش کے لیے بہت اہم وقت ہے۔ آج ماں نرمدا کے کنارے کھڑے ہو کر میں یہ کہہ رہا ہوں، میں یہ پورے مدھیہ پردیش سے کہہ رہا ہوں، میں یہ پورے مدھیہ پردیش کے نوجوانوں سے کہہ رہا ہوں، میں ماں نرمدا کو یاد کرکے یہ کہہ رہا ہوں کیونکہ میں بھی یہاں سے آیا ہوں۔ ماں نرمدا کی گود میں ہوں اور آج ماں نرمدا کے کنارے کھڑا یہ کہہ رہا ہوں۔ میرے نوجوانو، میرے الفاظ لکھو، مدھیہ پردیش آج ایک ایسے موڑ پر ہے جہاں ترقی میں کوئی رکاوٹ، ترقی کی رفتار میں کوئی کمی 20-25 سال بعد بھی واپس نہیں آئے گی، و رنہ سب کچھ تباہ ہو جائے گا۔ اور اس لیے ترقی کی اس رفتار کو رکنے نہیں دینا چاہیے، پھنسنے نہیں دینا چاہیے۔ یہ 25 سال آپ کے لیے بہت اہم ہیں۔ ایم پی کے 25 سال سے کم عمر کے دوستوں نے صرف نیا اور ترقی کرتا ہوا مدھیہ پردیش دیکھا ہے۔ اب یہ ان کی ذمہ داری ہے کہ آنے والے 25  برسوں میں جب ان کے بچے بڑے ہوں تو انہیں ایک ترقی یافتہ مدھیہ پردیش، ایک خوشحال مدھیہ پردیش، فخر اور عزت کا حامل  مدھیہ پردیش ملے۔ اس کے لیے آج مزید محنت کی ضرورت ہے۔ اس کے لیے آج درست فیصلے کی ضرورت ہے۔ پچھلےبرسوں میں، بی جے پی حکومت نے ایم پی کو زرعی برآمدات میں سب سے اوپر پہنچا دیا ہے۔ اب یہ بھی ضروری ہے کہ ہمارا مدھیہ پردیش صنعتی ترقی میں بھی نمبر ون بن جائے۔ ہندوستان کی دفاعی پیداوار اور دفاعی برآمدات میں گزشتہ برسوں کے دوران کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ اس میں جبل پور کا بھی بڑا ہاتھ ہے۔ مدھیہ پردیش میں، صرف جبل پور میں دفاع سے متعلق سامان بنانے والی 4 فیکٹریاں ہیں۔ آج مرکزی حکومت اپنی فوج کو میڈ ان انڈیا ہتھیار دے رہی ہے۔ دنیا میں ہندوستان کے دفاعی سامان کی مانگ بڑھ رہی ہے۔ مدھیہ پردیش کو بھی اس سے کافی فائدہ ہونے والا ہے، یہاں روزگار کے ہزاروں نئے مواقع پیدا ہونے والے ہیں۔

میرے خاندان کے افراد،

آج ہندوستان کی خود اعتمادی  ایک نئی بلندی پر ہے۔ کھیل کے میدان سے لے کر کھیتوں اور کھلیانوں تک ہندوستان کا پرچم لہرا رہا ہے۔ آپ نے دیکھا ہوگا کہ اس وقت ایشین گیمز چل رہے ہیں، جس میں ہم ہندوستان کی شاندار کارکردگی دیکھ رہے ہیں۔ آج ہندوستان کا ہر نوجوان محسوس کر رہا ہے کہ یہ ہندوستان کے نوجوانوں کا دور ہے، یہ دور ہندوستان کے نوجوانوں کا دور ہے۔ جب نوجوانوں کو ایسے مواقع ملتے ہیں تو ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر کا جذبہ بھی بڑھ جاتا ہے۔ تبھی ہندوستان اتنے فخر کے ساتھ جی 20 جیسے عظیم الشان عالمی پروگراموں کا انعقاد کرنے کے قابل  ہواہے۔ تبھی ہندوستان کا چندریان ایسی جگہ پہنچتا ہے جہاں کوئی دوسرا ملک نہیں پہنچ سکتا تھا۔ تب ہی مقامی لوگوں کے لیے آواز اٹھانے کا منتر دور دور تک گونجنے لگتا ہے۔ آپ سوچ سکتے ہیں، ایک طرف یہ ملک چندریان تک پہنچتا ہے اور دوسری طرف گاندھی جینتی پر، 2 اکتوبر کو دہلی کے ایک اسٹور پر، آپ کو یاد ہوگا، 2 اکتوبر کو دہلی کے ایک کھادی اسٹور نے ایک ہی دن میں کروڑوں روپے سے زیادہ کی فروخت کی۔ 1.5 کروڑ کی کھادی ایک اسٹور میں بکتی ہے، یہ ملک کی طاقت ہے۔ یہ سودیشی کا احساس، یہ ملک کو آگے لے جانے کا احساس آج ہر جگہ بڑھتا جا رہا ہے۔ اور میرے ملک کے نوجوانوں، میرے ملک کے بیٹوں اور بیٹیوں نے اس کی باگ ڈور سنبھالی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کے نوجوان اسٹارٹ اپس کی دنیا میں کمال کر رہے ہیں۔ اسی لیے ہندوستان صاف ستھرے بننے کا اتنا بڑا عہد لیتا ہے۔ یکم اکتوبر کو ہی ملک میں شروع کی گئی صفائی مہم میں 9 لاکھ سے زائد مقامات پر صفائی کے پروگرام چلائے گئے۔ اس صفائی مہم میں ملک کے 9 کروڑ سے زیادہ لوگوں نے حصہ لیا، وہ اپنے گھروں سے نکلے، جھاڑو لے کر ملک میں سڑکوں اور پارکوں کی صفائی کا کام کیا۔ مدھیہ پردیش کے عوام اور مدھیہ پردیش کے نوجوانوں نے اور بھی کمال کر دکھایا ہے۔ مدھیہ پردیش نے صفائی کے معاملے میں سب سے اوپر نمبر حاصل کیے، مدھیہ پردیش ملک میں پہلے نمبر پر رہا۔ ہمیں اس جذبے کو آگے لے جانا ہے۔ اور آنے والے 5 سالوں میں ہم نے ایم پی کو زیادہ سے زیادہ معاملات میں پہلے نمبر پر رکھنا ہے۔

میرے خاندان کے افراد،

جب کسی سیاسی جماعت پر صرف اور صرف اپنے مفادات کی تکمیل کا غلبہ ہو تو ہم اس کے حالات کو سمجھ سکتے ہیں۔ آج پوری دنیا ہندوستان کی کامیابیوں کا چرچا کر رہی ہے۔ لیکن یہی سیاسی جماعتیں جو سب کچھ لٹا چکی ہیں، انہیں سوائے کرسی کے کچھ نظر نہیں آتا، وہ اب اس حد تک چلے گئے ہیں کہ بی جے پی کو گالی دیتے ہوئے خود ہندوستان کو گالی دینے لگے ہیں۔ آج پوری دنیا ڈیجیٹل انڈیا مہم کی ستائش کر رہی ہے۔ لیکن آپ کو یاد ہے کہ یہ لوگ ڈیجیٹل انڈیا کے لیے ہر روز ہمارا مذاق اڑاتے ہیں۔ بھارت نے کورونا کے خلاف دنیا کی سب سے موثر ویکسین بنا لی۔ ان لوگوں نے اپنی ویکسین پر بھی سوالات اٹھائے۔ اور ابھی کوئی مجھے بتا رہا تھا کہ ایک نئی فلم آئی ہے، ویکسین پر مبنی فلم 'ویکسین وار' اور ایسی فلم ہمارے ملک میں بنی ہے جو پوری دنیا کے لوگوں کی آنکھیں کھول دے گی۔ فلم ویکسین وار ہمارے ملک کے سائنسدانوں کے حیرت انگیز کام پر بنائی گئی ہے اور  اس پر کہ اس نے ملک کے کروڑوں لوگوں کی جان کیسے بچائی۔

بھائیو بہنو،

بھارتی فوج جو بھی بات کرتی ہے، بھارتی فوج جو بھی بہادری کرتی ہے، وہ اس پر بھی سوال اٹھاتے ہیں۔ وہ ملک دشمنوں اور دہشت گردی کے آقاوں کی باتوں کو سچ سمجھتے ہیں۔ میرے ملک کی فوج کے جوانوں کی باتیں درست نہیں لگتی۔ آپ نے یہ بھی دیکھا ہے کہ آزادی کے 75 سال مکمل ہونے پر پورے ملک نے امرت مہوتسو منایا۔یہ بی جے پی کا پروگرام نہیں تھا، یہ ملک کا پروگرام تھا۔ آزادی ہندوستان کے ہر شہری کے لیے ایک جشن تھا۔ لیکن یہ لوگ آزادی کے سنہری دور کا بھی مذاق اڑاتے ہیں۔ ہم آنے والی نسلوں کے لیے ملک کے کونے کونے میں امرت سروور بنا رہے ہیں اور پانی جمع کرنے کی ایک بڑی مہم چل رہی ہے۔ لیکن ان لوگوں کو اس کام میں بھی  دقت ہورہی  ہے۔

میرے خاندان کے افراد،

جس پارٹی نے آزادی کے بعد اتنے برسوں تک ملک میں حکومت چلائی، اس نے قبائلی سماج کو عزت بھی نہیں دی۔ آزادی سے لے کر ثقافتی ورثے کی دولت تک، ہمارے قبائلی معاشرے کا کردار بہت بڑا رہا ہے۔ گونڈ معاشرہ دنیا کے بڑے قبائلی معاشروں میں سے ایک ہے۔ ایسے میں میں آپ سے ایک سوال پوچھنا چاہتا ہوں۔ طویل عرصے تک اقتدار میں رہنے والوں نے قبائلی معاشرے کی شراکت کو قومی شناخت کیوں نہیں دی؟ اس کے لیے ملک کو بی جے پی کا انتظار کیوں کرنا پڑا؟ ہمارے نوجوان قبائلیوں کو،  جو اس وقت  پیدا  ہی نہیں ہوئے تھے، یہ جان لینا چاہیے۔ ان کی پیدائش سے پہلے ہی اٹل بہاری واجپائی کی حکومت نے قبائلی سماج کے لیے ایک الگ وزارت بنائی اور الگ بجٹ دیا۔ پچھلے 9 برسوں میں مودی حکومت نے اس بجٹ کو کئی گنا بڑھانے کا کام کیا ہے۔ بی جے پی کو ملک کو اپنی پہلی خاتون قبائلی صدر دینے کا اعزاز بھی حاصل ہوا۔ بی جے پی حکومت نے بھگوان برسا منڈا کے یوم پیدائش کو بھی قبائلی فخر کا دن قرار دیا۔ ملک کے جدید ترین ریلوے اسٹیشنوں میں سے ایک کا نام ملکہ کملا پتی کے نام پر رکھا گیا تھا۔ پاتالپانی اسٹیشن اب جننائک تانتیابھیل کے نام سے جانا جاتا ہے اور آج یہاں گونڈ برادری کی تحریک رانی درگاوتی جی کے نام پر ایک عظیم الشان، جدید یادگار تعمیر کی جا رہی ہے۔ اس میوزیم میں گونڈ ثقافت، گونڈ کی تاریخ اور آرٹ کی نمائش بھی کی جائے گی۔ ہماری کوشش ہے کہ آنے والی نسلیں بھرپور گونڈ روایت کو جان سکیں۔ جب میں عالمی رہنماؤں سے ملتا ہوں تو میں انہیں گونڈ پینٹنگز بھی تحفے میں دیتا ہوں۔ جب وہ اس شاندار گونڈ آرٹ کی تعریف کرتے ہیں تو میرا سر بھی فخر سے بلند  ہوجاتا ہے۔

دوستو

جو پارٹی آزادی کے بعد کئی دہائیوں تک ملک میں برسراقتدار رہی، اس نے صرف ایک کام کیا، ایک خاندان کے پیروں کی پوجا کی۔ایک خاندان کے پیروں کی پوجا کرنے کے علاوہ انہیں ملک کی کوئی پرواہ نہیں تھی۔ یہ صرف ایک خاندان نہیں تھا جس نے ملک کو آزادی دلائی۔ ملک کی ترقی صرف ایک خاندان سے نہیں ہوئی۔ یہ ہماری حکومت ہے جس نے سب کو عزت دی،  وقار دیا، سب کا خیال رکھا۔ یہ بی جے پی کی حکومت ہے، جس نے مہو، پنچ تیرتھ سمیت دنیا بھر میں ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر سے جڑے مقامات کو مقدس مقامات کی حیثیت دی ہے۔ کچھ ہفتے پہلے، مجھے ساگر میں سنت رویداس جی کی یادگار جگہ کا بھومی پوجن کرنے کا موقع بھی ملا۔ یہ سماجی ہم آہنگی اور وراثت کے تئیں بی جے پی حکومت کی وابستگی کو ظاہر کرتا ہے۔

ساتھیو

اقربا پروری اور کرپشن کو پروان چڑھانے والی جماعتوں نے قبائلی معاشرے کے وسائل کو لوٹا ہے۔ 2014 سے پہلے، ایم ایس پی  صرف 8-10 جنگلاتی پیداوار پر دیا جاتا تھا۔ کچھ لوگوں نے باقی ماندہ جنگلات کی پیداوار بہت کم قیمت پر خریدی اور قبائلیوں کو کچھ نہیں ملا۔ ہم نے اسے بدل دیا اور آج تقریباً 90 جنگلاتی پیداوار کو ایم ایس پی کے دائرے میں لایا گیا ہے۔

ساتھیو

ماضی میں، ہمارے قبائلی کسانوں اور ہمارے چھوٹے کسانوں کے ذریعہ تیار کردہ کوڈو-کٹکی جیسے موٹے اناج کو بھی زیادہ اہمیت نہیں دی جاتی تھی۔ آپ نے دیکھا ہے کہ جی 20 کے لیے دنیا بھر سے بڑے لیڈر دہلی آئے تھے، کئی بڑے لیڈر آئے تھے۔ ہم نے انہیں آپ کی کوڈو کٹکی سے بنی پکوان بھی کھلائیں۔ بی جے پی حکومت بھی شری انّ کی شکل میں آپ کی کوڈو-کٹکی کو ملک اور بیرون ملک کے بازاروں میں پہنچانا چاہتی ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ قبائلی کسانوں اور چھوٹے کسانوں کو زیادہ سے زیادہ فائدہ پہنچایا جائے۔

میرے خاندان کے افراد،

بی جے پی کی ڈبل انجن والی حکومت کی ترجیح پسماندہ طبقے کی ترجیح ہے۔ غریبوں کی صحت اور خواتین کی سہولت کے لیے پائپ کے ذریعے پینے کے صاف پانی کی فراہمی بہت ضروری ہے۔ آج بھی تقریباً 1600 دیہاتوں کو پانی پہنچانے کے انتظامات کئے گئے ہیں۔ خواتین کی صحت ہمیشہ ملک کی ترجیح ہونی چاہیے۔ لیکن اس کو بھی پہلے مسلسل نظر انداز کیا گیا۔ بی جے پی نے ناری شکتی وندن ایکٹ کے ذریعے لوک سبھا اور اسمبلی میں خواتین کو ان کے حقوق دلانے کا کام بھی کیا ہے۔

 ساتھیو

گاؤں کی سماجی و اقتصادی زندگی میں ہمارے وشوکرما دوستوں کا بہت بڑا حصہ ہے۔ انہیں بااختیار بنانا اولین ترجیح ہونی چاہیے تھی۔ لیکن بی جے پی کی حکومت بننے کے بعد ہمیں 13 ہزار کروڑ روپے کی پی ایم وشوکرما اسکیم لانی پڑی۔

میرے خاندان کے افراد،

بی جے پی حکومت غریبوں کی حکومت ہے۔ کچھ لوگ اپنی کرپشن اور اقربا پروری کو آگے بڑھانے کے لیے ہر طرح کے حربے استعمال کر رہے ہیں۔ لیکن مودی کی گارنٹی ہے کہ ایم پی ترقی میں سرفہرست آئےگا۔ مجھے یقین ہے کہ مہا کوشل مودی کی بی جے پی حکومت کے اس عزم کو مضبوط کرے گا اور مدھیہ پردیش کو مضبوط کرے گا۔ میں ایک بار پھر بہادر رانی درگاوتی جی کو خراج عقیدت پیش کرتا ہوں۔ اور آپ اتنی بڑی تعداد میں ہمیں آشیرواد دینے آئے ہیں، میں آپ کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میرے ساتھ، میں رانی درگاوتی کہوں گا، تم کہو گے امر رہے، امر رہے ۔ رانی درگاوتی - امر رہے، امر رہے آواز پورے مدھیہ پردیش میں گونجنی چاہیے۔

 رانی درگاوتی – امر رہے، امر رہے۔

رانی درگاوتی – امر رہے، امر رہے۔

رانی درگاوتی – امر رہے، امر رہے۔

 بھارت ماتا  کی جئے!

بھارت ماتا  کی جئے!

بہت بہت شکریہ.

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
BJP manifesto 2024: Super app, bullet train and other key promises that formed party's vision for Indian Railways

Media Coverage

BJP manifesto 2024: Super app, bullet train and other key promises that formed party's vision for Indian Railways
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 15 اپریل 2024
April 15, 2024

Positive Impact of PM Modi’s Policies for Unprecedented Growth Being Witnessed Across Sectors