Dedicates Sudarshan Setu connecting Okha mainland and Beyt Dwarka
Dedicates pipeline project at Vadinar and Rajkot-Okha
Dedicates Rajkot-Jetalsar-Somnath and Jetalsar-Wansjaliya Rail Electrification projects
Lays foundation stone for widening of Dhoraji-Jamkandorna-Kalavad section of NH-927
Lays foundation stone for Regional Science Center at Jamnagar
Lays foundation stone for Flue Gas Desulphurization (FGD) system installation at Sikka Thermal Power Station
“Double engine governments at Centre and in Gujarat have prioritized the development of the state”
“Recently, I have had the privilege of visiting many pilgrimage sites. I am experiencing the same divinity in Dwarka Dham today”.
“As I descended to the submerged city of Dwarka ji, a sense of grandeur of divinity engulfed me”
“In Sudarshan Setu- what was dreamed, foundation was laid, today it was fulfilled”
“Modern connectivity is the way to build a prosperous and strong nation”
“With the mantra of ‘Vikas bhi Virasat bhi’ centers of faith are being upgraded”
“With new attractions and connectivity, Gujarat is becoming hub of tourism”
“Land of Saurashtra is a huge example of accomplishment through resolve”

 دوارکادھیش کی جئے!

دوارکادھیش کی جئے!

دوارکادھیش کی جئے!

اسٹیج پر تشریف فرما گجرات کے مقبول وزیر اعلی جناب بھوپندر بھائی پٹیل، پارلیمنٹ میں میرے ساتھی جناب سی آر پاٹل، گجرات پردیش بھارتیہ جنتا پارٹی کے صدر، دیگر تمام معززین اور گجرات کے میرے بھائیو اور بہنو!

سب سے پہلے، میں احترام کے ساتھ اپنی اہیر بہنوں کو پرنام کرتا ہوں جنہوں نے میرا استقبال کیا۔ کچھ دن پہلے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو خوب وائرل ہوئی تھی۔ جب دوارکا میں 37 ہزار اہیر بہنیں ایک ساتھ گربا کر رہی تھیں، تو لوگ فخر سے مجھ سے کہہ رہے تھے، ’’سر، دوارکا میں یہ 37 ہزار اہیر بہنیں! ‘‘میں نے کہا بھائی آپ نے گربا دیکھا لیکن اس جگہ کی ایک اور خصوصیت یہ تھی کہ جب 37000 اہیر بہنیں وہاں گربا کر رہی تھیں تو ان کے جسم پر کم از کم 25000 کلو گرام سونا تھا۔ یہ سب سے کم مقدار ہے جو میں بتا رہا ہوں۔ جب لوگوں کو پتہ چلا کہ جسم پر 25000 کلو گرام سونا اور گربا ہے تو لوگ بہت حیران ہوئے۔ ماں کی طرح، آپ سب نے میرا استقبال کیا، آپ کا آشیرباد ملا، میں تمام اہیر بہنوں کے سامنے سر جھکاکر شکریہ ادا کرتا ہوں۔

 

میں بھگوان شری کرشن کی کرم بھومی دوارکا دھام کو عقیدت کے ساتھ سر جھکاتا ہوں۔ بھگوان کرشنا دیو بھومی دوارکا میں دوارکادھیش کی شکل میں بیٹھتے ہیں۔ یہاں جو کچھ بھی ہوتا ہے وہ دوارکادھیش کی مرضی سے ہوتا ہے۔ آج صبح مجھے مندر میں درشن اور پوجا کا شرف حاصل ہوا۔ دوارکا کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ چار دھام اور سپتا پوری دونوں کا حصہ ہے۔ یہاں آدی شنکراچاریہ نے شاردا پیٹھ کی بنیاد رکھی، جو چار پیٹھوں میں سے ایک تھی۔ ناگیشور جیوتر لنگا، رکمنی دیوی مندر ہے، عقیدے کے ایسے بہت سے مراکز ہیں۔ اور حال ہی میں ملک کا کام کرتے ہوئے مجھے دیو کاج کے تحت ملک کے کئی تیرتھوں کا دورہ کرنے کا شرف حاصل ہوا ہے۔ آج میں دوارکا دھام میں بھی اسی الوہیت کا تجربہ کر رہا ہوں۔ آج صبح مجھے ایک اور ایسا ہی تجربہ ہوا، میں نے وہ لمحات گزارے، جو زندگی بھر میرے ساتھ رہیں گے۔ میں گہرے سمندر میں گیا اور قدیم دوارکا جی کے درشن کیے۔ ماہرین آثار قدیمہ نے سمندر میں اس دوارکا کے بارے میں بہت کچھ لکھا ہے۔ دوارکا کے بارے میں ہمارے صحیفوں میں بھی کہا گیا ہے:

भविष्यति पुरी रम्या सुद्वारा प्रार्ग्य-तोरणा।

चयाट्टालक केयूरा पृथिव्याम् ककुदोपमा॥

 یعنی خوبصورت دروازوں اور بلند و بالا عمارتوں والا یہ پوری زمین پر ایک چوٹی کی طرح ہوگا۔ کہا جاتا ہے کہ بھگوان وشوکرما نے خود اس دوارکا شہر کی تعمیر کی تھی۔ بھارت کا بہترین شہر دوارکا اس کی ترقی کی ایک عمدہ مثال تھا۔ آج جب میں دوارکا جی کو سمندر کی گہرائی میں دیکھ رہا تھا تو میں اسی قدیم شان و شوکت، اسی الوہیت کا تجربہ کر رہا تھا۔ وہاں میں نے بھگوان کرشن، دوارکادھیش اور ان کے سامنے سر جھکایا۔ میں اپنے ساتھ مور کے پر بھی لے گیا، جسے میں نے بھگوان کرشن کو یاد کرتے ہوئے وہاں پیش کیا۔ میرے لیے کئی سالوں تک جب میں نے آثار قدیمہ کے ماہرین سے یہ جانا، یہ ایک بہت بڑا تجسس تھا۔ مجھے ایسا لگا کہ کسی دن سمندر کے نیچے جاؤں اور دوارکا شہر کی باقیات کو چھوکر احترام کے ساتھ جھک جاؤں ۔ کئی سالوں کی یہ خواہش آج پوری ہو گئی ہے۔ میں، میرا من بہت خوش ہے، میں جذبات سے مغلوب ہوں۔ آپ اس بے پناہ مسرت کا تصور کر سکتے ہیں کہ جسے میں نے کئی دہائیوں تک سنجویا تھا آج اس مقدس سرزمین کو چھونے سے پورا ہوا ۔

ساتھیو،

اکیسویں صدی میں بھارت کی شان و شوکت کی تصویر بھی میری آنکھوں میں گھوم رہی تھی اور میں کافی دیر تک اندر رہا۔ اور آج دیر سے آنے کی وجہ یہ تھی کہ میں کافی دیر تک وہاں رکا رہا۔ میں ایک ترقی یافتہ بھارت کے عزم کو اور مضبوط کرکے آیا ہوں۔

 

ساتھیو،

آج مجھے سدرشن سیتو کا افتتاح کرنے کا اعزاز بھی ملا ہے۔ چھ سال پہلے مجھے اس پل کا سنگ بنیاد رکھنے کا موقع ملا تھا۔ یہ پل اوکھا کو بیٹ دوارکا جزیرے سے جوڑے گا۔ یہ پل دوارکادھیش کے درشن کو بھی آسان بنائے گا اور یہاں کی الوہیت میں بھی اضافہ کرے گا۔ انھوں نے جس کا خواب دیکھا تھا، جس کا سنگ بنیاد رکھا گیا تھا، وہ پورا ہوا- یہ عوام کے خادم، بھگوان کے بندے مودی کی گارنٹی ہے۔ سدرشن سیتو صرف ایک سہولت نہیں ہے۔ بلکہ یہ انجینئرنگ کا بھی عجوبہ ہے اور میں چاہوں گا کہ اسٹرکچرل انجینئرنگ کے طالب علم آئیں اور اس سدرشن سیتو کا مطالعہ کریں۔ یہ بھارت میں اب تک کا سب سے طویل کیبل پر مبنی پل ہے۔ میں تمام ہم وطنوں کو اس جدید اور عظیم الشان پل کے لیے مبارکباد دیتا ہوں۔

آج جب اتنا بڑا کام ہو رہا ہے تو مجھے ایک پرانی بات یاد آتی ہے۔ روس میں آستراخان کے نام سے ایک ریاست ہے اور گجرات کا سسٹر اسٹیٹ آستراخان کے ساتھ اپنا تعلق ہے۔ جب میں وزیر اعلیٰ تھا تو انھوں نے مجھے روس کی آستراخان ریاست میں مدعو کیا اور میں وہاں گیا۔ اور جب میں وہاں گیا، تو مجھے حیرت ہوئی کہ سب سے بہترین بازار، سب سے بڑا مال، اوکھا کے نام پر رکھا گیا تھا۔ میں نے کہا: اس کا نام اوکھا کیوں رکھا گیا ہے؟ اس لیے صدیوں پہلے لوگ کاروبار کے لیے وہاں جاتے تھے اور یہاں سے جو کچھ بھی ہوتا تھا اسے وہاں کی بہترین چیز سمجھا جاتا تھا۔ یہی وجہ ہے کہ صدیوں بعد بھی اگر اوکھا کے نام پر کوئی دکان ہے، اوکھا کے نام پر مال ہے تو وہاں کے لوگوں کو لگتا ہے کہ یہاں بہت اچھی کوالٹی کی چیزیں ہیں۔ صدیوں پہلے اوکھا کو جو عزت ملی، وہ اب اس سدرشن سیتو کی تعمیر کے بعد ایک بار پھر دنیا کے نقشے پر چمکنے والی ہے اور اوکھا کا نام مزید بڑھنے والا ہے۔

ساتھیو،

آج جب میں سدرشن سیتو کو دیکھ رہا ہوں تو مجھے کئی پرانی باتیں یاد آ رہی ہیں۔ اس سے پہلے، دوارکا اور بیٹ دوارکا کے لوگوں کو عقیدت مندوں کے لیے فیری کشتیوں پر انحصار کرنا پڑتا تھا۔ پہلے سمندر کے ذریعے اور پھر سڑک کے ذریعے لمبا سفر کرنا پڑتا تھا۔ مسافروں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا تھا اور اکثر سمندر کی اونچی لہروں کی وجہ سے کشتی سروس کبھی کبھی روک دی جاتی تھی۔ اس سے عقیدت مندوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔ جب میں وزیر اعلیٰ تھا، جب بھی یہاں کے ساتھی میرے پاس آتے تھے، وہ پل کے بارے میں بات کرتے تھے۔ اور ہمارے شیو اور ہمارے بابوبا، ان کا ایک ایجنڈا تھا کہ مجھے یہ کام کرنا ہے۔ آج میں دیکھتا ہوں کہ بابوبا سب سے زیادہ خوش ہیں۔

 

ساتھیو،

میں ان باتوں کو بار بار اس وقت کی کانگریس کی مرکزی حکومت کے سامنے رکھتا تھا، لیکن انھوں نے کبھی اس پر توجہ نہیں دی۔ اس سدرشن سیتو کی تعمیر بھی بھگوان کرشن نے میری ہی قسمت میں لکھی تھی۔ مجھے خوشی ہے کہ میں بھگوان کے حکم پر عمل کرتے ہوئے اس ذمہ داری کو نبھانے میں کامیاب رہا ہوں۔ اس پل کی تعمیر سے ملک بھر سے یہاں آنے والے عقیدت مندوں کو بہت فائدہ ہوگا۔ اس پل کے بارے میں ایک اور خاص بات ہے۔ پل پر نصب سولر پینل سے اس میں شاندار روشنی کے لیے بجلی جمع کی جائے گی۔ سدرشن سیتو میں 12 سیاحتی گیلریاں تعمیر کی گئی ہیں۔ میں نے آج یہ گیلریاں بھی دیکھی ہیں۔ وہ حیرت انگیز ہیں، بہت خوبصورتی سے بنائی گئی ہیں۔سدرشنی ہے، ان سے لوگ بے کراں نیلے سمندر کو دیکھ سکیں گے۔

ساتھیو،

آج اس مقدس موقع پر میں دیو بھومی دوارکا کے لوگوں کی بھی ستائش کروں گا۔ صفائی ستھرائی کا مشن یہاں کے لوگوں نے شروع کیا تھا اور لوگ مجھے سوشل میڈیا کے ذریعے ویڈیو بھیجتے تھے کہ دوارکا میں صفائی ستھرائی کا کتنا زبردست کام چل رہا ہے، کیا آپ خوش نہیں ہیں؟ آپ سبھی نے اس صفائی سے لطف اٹھایا ہے، لہذا سب کچھ صاف نظر آتا ہے، ہے نا؟ لیکن اب آپ کی ذمہ داری کیا ہے؟ تو کیا مجھے صفائی کرنے کی ضرورت ہے؟ آپ اسے صاف رکھیں گے یا نہیں؟ ہاتھ اٹھا کر کہیے، اب ہم دوارکا کو گندا نہیں ہونے دیں گے، منظور، منظور۔ دیکھو، بیرون ملک سے لوگ یہاں آئیں گے۔ بہت سے عقیدت مند آئیں گے۔ جب وہ صفائی ستھرائی دیکھتے ہیں تو آپ ان کے آدھے دماغ جیت لیتے ہیں۔

ساتھیو،

جب میں نے ہم وطنوں کو ایک نئے بھارت کی تعمیر کی گارنٹی دی تھی، تو یہ اپوزیشن کے لوگ جو مجھے گالیاں دینے کے شوقین ہیں، ان کا مذاق اڑاتے تھے۔ آج لوگ ایک نئے بھارت کی تشکیل کو اپنی آنکھوں سے دیکھ رہے ہیں۔ طویل عرصے تک ملک پر حکمرانی کرنے والوں میں ارادہ نہیں تھا، عام آدمی کو سہولت دینے کی نیت اور وفاداری میں کھوٹ تھی۔ کانگریس کی پوری طاقت صرف ایک خاندان کو آگے بڑھانے میں صرف ہوئی، اگر ایک خاندان کو سب کچھ کرنا ہی تھا تو ملک کی تعمیر کی یاد کیسے رہ جائے گی؟ ان کی پوری طاقت اس بات پر مرکوز تھی کہ 5 سال تک حکومت کیسے چلائی جائے، گھوٹالوں کو کیسے دبایا جائے۔ یہی وجہ ہے کہ 2014 سے پہلے کے 10 سالوں میں یہ بھارت کو صرف نمبر 11 کی معیشت بنا سکی۔ جب معیشت اتنی چھوٹی تھی تو اتنے بڑے ملک کے اتنے بڑے خوابوں کو پورا کرنے کی اتنی صلاحیت بھی نہیں تھی۔ جو لوگ تھوڑے سے بجٹ انفراسٹرکچر کے لیے گزارا کرتے تھے، وہ یہ گھوٹالہ کرکے لوٹ مار کرتے تھے۔ جب ملک میں ٹیلی کام کے بنیادی ڈھانچے کو بڑھانے کا وقت آیا تو کانگریس نے 2 جی گھوٹالہ کیا۔ جب ملک میں کھیلوں کے بنیادی ڈھانچے کو جدید بنانے کا موقع آیا تو کانگریس نے کامن ویلتھ گھوٹالہ کردیا۔ جب ملک میں دفاعی انفراسٹرکچر کو مضبوط بنانے کی بات آئی تو کانگریس نے ہیلی کاپٹر اور آبدوز گھوٹالہ کردیا۔ کانگریس صرف ملک کی ہر ضرورت سے غداری ہی کر سکتی ہے۔

 

ساتھیو،

2014 میں جب آپ سب نے مجھے آشیرباد دیا اور مجھے دہلی بھیجا تو میں نے آپ سے وعدہ کیا تھا کہ میں ملک کو لٹنے نہیں دوں گا۔ کانگریس کے دور میں ہونے والے ہزاروں کروڑ روپے کے گھوٹالے اب بند ہوچکے ہیں۔ گزشتہ 10 سالوں میں ہم نے ملک کو دنیا کی نمبر 5 اقتصادی طاقت بنایا ہے اور اس کا نتیجہ آپ پورے ملک میں ایسے نئے، عظیم الشان اور الوہی تعمیراتی کام دیکھ رہے ہیں۔ ایک طرف ہمارے الوہی زیارت گاہیں جدید شکل میں ابھر رہی ہیں۔ دوسری طرف میگا پروجیکٹس کے ذریعے نئے بھارت کی ایک نئی تصویر بنائی جا رہی ہے۔ آج آپ گجرات میں ملک کا سب سے لمبا کیبل بیسڈ پل دیکھ رہے ہیں۔ چند روز قبل ممبئی میں ملک کا سب سے لمبا سمندری پل مکمل کیا گیا تھا۔ جموں و کشمیر میں چناب پر بنایا گیا شاندار پل آج پوری دنیا میں گفتگو کا موضوع بنا ہوا ہے۔ بھارت کا پہلا عمودی لفٹ پل، تمل ناڈو میں نیو پامبن پل بھی تیز رفتاری سے زیر تعمیر ہے۔ آسام میں بھارت کا سب سے لمبا دریائی پل بھی گزشتہ 10 سالوں میں تعمیر کیا گیا ہے۔ مشرق، مغرب، شمال، جنوب اور چاروں طرف اس طرح کی بڑی تعمیرات ہو رہی ہیں۔ یہ جدید رابطہ ایک خوشحال اور بااختیار قوم کی تعمیر کا راستہ ہے۔

 

ساتھیو،

جب رابطے میں اضافہ ہوتا ہے، جب رابطہ بہتر ہوتا ہے، تو اس کا براہ راست اثر ملک کی سیاحت پر پڑتا ہے۔ گجرات میں بڑھتے ہوئے رابطے ریاست کو ایک بڑا سیاحتی مرکز بنا رہے ہیں۔ آج گجرات میں 22 سیکچریاں اور 4 قومی پارک ہیں۔ ہزاروں سال پرانے بندرگاہی شہر لوتھل کا چرچا پوری دنیا میں ہوتا ہے۔ آج احمد آباد شہر، رانی کی واو، چمپنیر اور دھولاویرا عالمی ثقافتی ورثہ بن چکے ہیں۔ شیوراج پوری کا بلیو فلیگ بیچ دوارکا میں ہے۔ عالمی ثقافتی ورثہ شہر احمد آباد ہے۔ ایشیا کا سب سے لمبا روپ وے ہمارے گرنار پہاڑ پر ہے۔ گیر ون، ایشیائی شیر، یہ ہمارے گن کے جنگلوں میں پائے جاتے ہیں۔ دنیا کا سب سے اونچا مجسمہ سردار صاحب کا اسٹیچو آف یونٹی گجرات کے ایکتا نگر میں ہے۔ آج دنیا بھر کے سیاحوں کے ساتھ رنوتسو منایا جا رہا ہے۔ کچھ کے دھورڈو گاؤں کا شمار دنیا کے بہترین سیاحتی گاؤوں میں ہوتا ہے۔ نڈابیٹ حب الوطنی اور سیاحت کا ایک اہم مرکز بنتا جا رہا ہے۔ ترقی اور وراثت کے اس منتر پر عمل کرتے ہوئے گجرات میں عقیدے کے مقامات کو بھی خوبصورت بنایا جا رہا ہے۔ دوارکا، سومناتھ، پاواگڑھ، موڈھیرا، امباجی، اس طرح کے تمام اہم زیارت گاہوں میں سہولیات تیار کی گئی ہیں۔ امباجی میں ایسا انتظام کیا گیا ہے کہ ایک ہی جگہ 52 شکتی پیٹھ نظر آتے ہیں۔ آج گجرات بھارت آنے والے غیر ملکی سیاحوں کا انتخاب بنتا جارہا ہے۔ سال 2022 میں بھارت آنے والے 85 لاکھ سے زیادہ سیاحوں میں سے ہر پانچواں سیاح گجرات آیا ہے۔ پچھلے سال اگست تک تقریبا 15.5 لاکھ سیاح گجرات آئے تھے۔ مرکزی حکومت کی جانب سے غیر ملکی سیاحوں کو دی گئی ای ویزا سہولت سے گجرات کو بھی فائدہ ہوا ہے۔ سیاحوں کی تعداد میں اس اضافے سے گجرات میں روزگار اور خود روزگار کے نئے مواقع بھی پیدا ہو رہے ہیں۔

ساتھیو،

جب بھی میں سوراشٹر آتا ہوں، میں یہاں سے ایک نئی توانائی واپس لے کر جاتا ہوں۔ سوراشٹر کی یہ سرزمین عزم کے ذریعہ کامیابی کے لیے ایک عظیم ترغیب ہے۔ آج سوراشٹر کی ترقی کو دیکھ کر کسی کو بھی اندازہ نہیں ہوگا کہ پہلے یہاں زندگی کتنی مشکل ہوا کرتی تھی۔ ہم نے وہ دن بھی دیکھے ہیں جب سوراشٹر کا ہر کنبہ اور ہر کسان پانی کے لیے ترستا تھا۔ لوگ یہاں سے ہجرت کرتے تھے اور پیدل دور دور تک جاتے تھے۔ جب میں کہا کرتا تھا کہ جن ندیوں میں سال بھر پانی ہوتا ہے، ان کا پانی اٹھا کر سوراشٹر اور کچھ لایا جائے گا، تو یہ کانگریسی لوگ میرا مذاق اڑاتے تھے۔ لیکن آج سونی ایک ایسی اسکیم ہے جس نے سوراشٹر کی قسمت بدل دی ہے۔ اس اسکیم کے تحت 1300 کلومیٹر سے زیادہ کی پائپ لائن بچھائی جا چکی ہے اور پائپ لائن بھی چھوٹی نہیں ہے، پائپ کے اندر ماروتی کاریں چلائی جا سکتی ہیں۔ اس کی وجہ سے سوراشٹر کے سینکڑوں گاؤوں کو آبپاشی اور پینے کے پانی تک رسائی حاصل ہے۔ اب سوراشٹر کا کسان خوشحال ہو رہا ہے، یہاں پالنے والے مویشی خوشحال ہو رہے ہیں، یہاں کے ماہی گیر خوشحال ہو رہے ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ آنے والے برسوں میں پورا سوراشٹر، پورا گجرات کامیابی کی نئی بلندیوں پر پہنچ جائے گا۔ دوارکادھیش کا آشیرباد ہمارے ساتھ ہے۔ ہم مل کر سوراشٹر اور گجرات کو ترقی دیں گے، گجرات ترقی کرے گا، بھارت ترقی کرے گا۔

ایک بار پھر میں آپ سبھی کو اس عظیم الشان پل کے لیے دل کی گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ مبارک ہو آپ کو! اور اب میں دوارکا کے لوگوں سے درخواست کرتا ہوں، اب آپ اپنا ذہن بنالیں کہ دنیا بھر سے زیادہ سے زیادہ سیاح کیسے آئیں۔ ان کے آنے کے بعد، انھیں یہاں رہنے کا من کرے۔ میں آپ کے جذبات کا احترام کرتا ہوں۔ میرے ساتھ بولیے، دوارکادھیش کی جئے! دوارکادھیش کی جئے! دوارکادھیش کی جئے بھارت ماتا کی جئے! بھارت ماتا کی جئے! بھارت ماتا کی جئے!

آپ کا بہت شکريہ!

نوٹ: وزیر اعظم کے خطاب میں کچھ حصے گجراتی زبان میں بھی ہیں، جن کا یہاں ترجمہ کردیا گیا ہے۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Boosting ‘Make in India’! How India is working with Asean to review trade pact to spur domestic manufacturing

Media Coverage

Boosting ‘Make in India’! How India is working with Asean to review trade pact to spur domestic manufacturing
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
India’s Top Gamers Meet ‘Cool’ PM Modi
April 13, 2024
PM Modi showcases his gaming prowess, impressing India's top gamers with his quick grasp of mobile, PC, and VR games!
PM Modi delves into gaming, sparking dialogue on innovation and digital empowerment!
Young gamers applaud PM Modi's agility and adaptability, give him ‘NaMo OP' badge

Prime Minister Narendra Modi engaged in a unique interaction with India's top gamers, immersing himself in the world of PC and VR gaming. During the session, Prime Minister Modi actively participated in gaming sessions, showcasing his enthusiasm for the rapidly evolving gaming industry.

The event brought together people from the gaming community including @gcttirth (Tirth Mehta), @PAYALGAMING (Payal Dhare), @8bitthug (Animesh Agarwal), @GamerFleet (Anshu Bisht), @MortaLyt (Naman Mathur), @Mythpat (Mithilesh Patankar), and @SkRossi (Ganesh Gangadhar).

Prime Minister Modi delved into mobile, PC, and VR gaming experiences, leaving the young gamers astounded by his quick grasp of game controls and objectives. Impressed by PM Modi’s gaming skills, the gaming community also gave him the ‘NaMo OP’ badge.

What made the entire interaction even more interesting was PM Modi's eagerness to learn trending gaming lingos like ‘grind’, ‘AFK’ and more. He even shared one of his lingos of ‘P2G2’ which means ‘Pro People Good Governance.’

The event served as a platform for a vibrant exchange of ideas, with discussions ranging from the youngsters’ unique personal journeys that led them to fame in this growing field of gaming, to the latest developments in the gaming sector.

Among the key topics explored was the distinction between gambling and gaming, highlighting the importance of responsible gaming practices while fostering a supportive environment for the gaming community. Additionally, the participants delved into the crucial issue of enhancing women's participation in the gaming industry, underscoring the need for inclusivity and diversity to drive the sector forward.

PM Modi also spoke about the potential for not just esports and gaming content creation, but also game development itself which is centred around India and its values. He discussed the potential of bringing to life ancient Indian games in a digital format, that too with open-source script so that youngsters all over the country can make their additions to it.