Share
 
Comments
“Key programmes of the last 8 years carry an insistence on environment protection”
“On World Environment Day, Prime Minister Shri Narendra Modi attended a programme on ‘Save Soil Movement’ today”
“India's role in climate change is negligible but India is working on a long term vision in collaboration with the International community on protecting the Environment”
“India has a five-pronged programme of soil conservation”
“Policies related to Biodiversity and Wildlife that India is following today have also led to a record increase in the number of wildlife”
“Today, India has achieved the target of 10 percent ethanol blending, 5 months ahead of schedule”
“In 2014 ethanol blending was at 1.5 percent”
“10 percent ethanol blending has led to reduction of 27 lakh tonnes of carbon emission, saved foreign exchange worth 41 thousand crore and earned 40 thousand 600 crores in the last 8 years to our farmers”

نمسکار!

آپ سب کو،پوری دنیا کو ماحولیات کا عالمی دن بہت بہت مبارک ہو۔ سدھ گرو اور ایشا فاؤنڈیشن بھی آج مبارکباد کے مستحق ہیں۔ مارچ میں، ان کی تنظیم نے مٹی بچاؤ مہم شروع کی تھی۔ ان کا 27 ممالک کا سفر آج 75ویں دن یہاں پہنچا ہے۔ آج جب ملک اپنی آزادی کا 75واں سال منا رہا ہے، اس امرت کے دور میں نئی ​​قراردادیں لے رہا ہے، تو اس طرح کی عوامی مہم بہت ضروری ہو جاتی ہے۔

ساتھیو،

مجھے اطمینان ہے کہ ملک میں گزشتہ 8 سالوں سے جو اسکیمیں چل رہی ہیں، جو بھی پروگرام چل رہے ہیں، ان میں کسی نہ کسی طرح ماحولیات کے تحفظ کی تلقین کی جارہی ہے۔ سوچھ بھارت مشن ہو یا ویسٹ ٹو ویلتھ سے متعلق پروگرام،امرت مشن کے تحت شہروں میں جدید سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹس کی تعمیر یا سنگل یوز پلاسٹک سے چھٹکارا پانے کی مہم، یا نمامی گنگا کے تحت گنگا کی صفائی کی مہم، ایک سورج ایک گرڈ، یہ شمسی توانائی پر فوکس ہو یا ایتھنول کی پیداوار اور ملاوٹ دونوں میں اضافہ، ماحولیات کے تحفظ کے لیے ہندوستان کی کوششیں کثیر جہتی رہی ہیں اور ہندوستان یہ کوششیں اس وقت کر رہا ہے جب آج دنیا، آب و ہوا سے پریشان ہے، اس میں ہمارا کوئی کردار نہیں، بھارت کا کوئی کردار نہیں۔

دنیا کے بڑے اور جدید ممالک نہ صرف زمین کے زیادہ سے زیادہ وسائل کا استحصال کر رہے ہیں بلکہ سب سے زیادہ کاربن کا اخراج بھی ان کے کھاتے میں جاتا ہے۔ کاربن کے اخراج کی عالمی اوسط 4 ٹن فی شخص ہے۔ جبکہ ہندوستان میں فی کس کاربن فٹ پرنٹ صرف نصف ٹن سالانہ ہے۔ کہاں چار ٹن اور کہاں آدھا ٹن۔ اس کے باوجود، ہندوستان نہ صرف ملک کے اندر بلکہ عالمی برادری کے ساتھ منسلک ہو کر ماحولیات کے تئیں کام کر رہا ہے۔ بین الاقوامی سطح پر، ہندوستان نے قدرتی آفات سے متعلق لچک دار ڈھانچے کا اتحاد (سی ڈی آر آئی) کی تشکیل کی قیادت کی ہے اور جیسا کہ سد ھ گروجی نے ابھی کہا ہے، بین الاقوامی شمسی اتحاد، آئی ایس اے، پچھلے سال ہندوستان نے یہ عزم بھی کیا ہے کہ ہندوستان 2070 تک نیٹ زیرو کا ہدف حاصل کر لے گا۔

ساتھیو،

مٹی یا یہ زمین ہمارے لیے پانچ عناصر میں سے ایک ہے۔ ہم فخر سے مٹی اپنی پیشانی سے لگاتے ہیں۔ اس میں پڑ کر ہم کھیلتے کھیلتے بڑے ہو جاتے ہیں۔ مٹی کے احترام میں کوئی کمی نہیں، مٹی کی اہمیت کو سمجھنے میں کوئی کمی نہیں۔ کمی یہ تسلیم کرنے میں مضمر ہے کہ بنی نوع انسان جو کچھ کر رہا ہے اس نے مٹی کو کتنا نقصان پہنچایا ہے اس کی سمجھ میں خلا چھوڑ دیا ہے۔ اور ابھی سدھ گرو جی کہہ رہے تھے کہ سب جانتے ہیں کہ مسئلہ کیا ہے۔

جب ہم چھوٹے تھے تو سلیبس میں سبق پڑھایا جاتا تھا، سلیبس کی کتاب میں، میں نے گجراتی میں پڑھا ہے، دوسروں نے اپنی زبان میں پڑھا ہوگا... راستے میں کہیں کوئی پتھر پڑا تھا، لوگ جا رہے تھے کوئی غصے میں تھا، کوئی اسے لاتیں مارتا تھا۔ سب کہتے تھے کہ یہ پتھر کس نے رکھا، یہ پتھر کہاں سے آیا، ان کی سمجھ میں نہیں آیا وغیرہ وغیرہ۔ لیکن کسی نے اسے اٹھا کر ایک طرف نہیں رکھا۔ ایک شریف آدمی باہر آیا تو اس نے سوچا کہ چلو، سدھ گرو جیسا کوئی ضرور آیا ہوگا۔

جب یودھیشتھر اور دوریودھن کی ملاقات کے بارے میں بحث ہوتی ہے، تو جب دوریودھن کے بارے میں کہا جاتا ہے، تو کہا جاتا ہے کہ ’’جنم دھرم نہ چاہ میں رجحان‘‘۔

میں مذہب جانتا ہوں، لیکن میرا رجحان نہیں ہے، میں نہیں کر سکتا، میں جانتا ہوں کہ وہ سچائی کیا ہے، لیکن میں اس راستے پر نہیں چل سکتا۔ لہٰذا جب معاشرے میں ایسا رجحان بڑھتا ہے تو ایسے بحران آتے ہیں، پھر اجتماعی مہم کے ذریعے مسائل کے حل کے لیے راستے تلاش کرنے پڑتے ہیں۔

مجھے خوشی ہے کہ پچھلے آٹھ سالوں میں ملک نے مٹی کو زندہ رکھنے کے لیے انتھک محنت کی ہے۔ مٹی کو بچانے کے لیے، ہم نے پانچ اہم چیزوں پر توجہ مرکوز کی ہے۔

سب سے پہلے مٹی کو کیمیکل سے پاک کیسے بنایا جائے۔ دوسرا- مٹی میں رہنے والی مخلوقات کو کیسے بچایا جائے جسے تکنیکی زبان میں آپ مٹی کے نامیاتی معاملات کہتے ہیں۔ اور تیسرا- زمین کی نمی کیسے برقرار رکھی جائے، اس تک پانی کی دستیابی کو کیسے بڑھایا جائے۔ چہارم، زیر زمین پانی کی کمی کی وجہ سے زمین کو جو نقصان ہو رہا ہے اسے کیسے دور کیا جائے، اور پانچواں، جنگلات کے رقبے میں کمی کی وجہ سے زمین کے مسلسل کٹاؤ کو کیسے روکا جائے۔

ساتھیو،

ان تمام باتوں کو مدنظر رکھتے ہوئے گزشتہ برسوں میں ملک میں جو سب سے بڑی تبدیلی آئی ہے وہ ملک کی زرعی پالیسی ہے۔ پہلے ہمارے ملک کے کسان کے پاس اس بات کی معلومات نہیں ہوتی تھیں کہ اس کی زمین کس قسم کی ہے، اس کی زمین میں کیا کمی ہے، کتنی  کمی ہے۔ اس مسئلے پر قابو پانے کے لیے ملک میں کسانوں کو سوائل ہیلتھ کارڈ دینے کے لیے ایک بڑی مہم چلائی گئی۔ اگر ہم کسی انسان کو ہیلتھ کارڈ نہیں دیں گے تو پھر بھی اخبار میں سرخی لگ جائے گی کہ مودی سرکار نے کوئی اچھا کام کیا ہے۔ یہ ملک ایسا ہے کہ سوائل ہیلتھ کارڈ دے رہا ہے لیکن میڈیا کی توجہ پھر بھی کم ہے۔

ملک بھر میں کسانوں کو 22 کروڑ سے زیادہ سوائل ہیلتھ کارڈ دیے گئے۔ اور نہ صرف کارڈ دیے گئے بلکہ ملک بھر میں مٹی کی جانچ سے متعلق ایک بہت بڑا نیٹ ورک بھی بنایا گیا ہے۔ آج ملک کے کروڑوں کسان ،سوائل ہیلتھ کارڈ سے موصول ہونے والی معلومات کی بنیاد پر کھادوں اور مائیکرو نیوٹرینٹ کا استعمال کر رہے ہیں۔ اس سے کسانوں کی لاگت میں 8 سے 10 فیصد کی بچت ہوئی ہے اور پیداوار میں بھی 5 سے 6 فیصد اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ یعنی جب زمین صحت مند ہو رہی ہے تو پیداوار بھی بڑھ رہی ہے۔

یوریا کی 100 فیصد نیم کی کوٹنگ نے بھی زمین کو فائدہ پہنچانے میں بہت مدد کی ہے۔ مائیکرو آب پاشی کے فروغ کی وجہ سے، اٹل بھو یوجنا کی وجہ سے ملک کی کئی ریاستوں میں مٹی کی صحت کو بھی برقرار رکھا جا رہا ہے۔ کبھی کبھی کچھ باتیں، فرض کریں کہ ڈیڑھ سال کا بچہ بیمار ہے، صحت ٹھیک نہیں ہو رہی، وزن نہیں بڑھ رہا، قد میں کوئی فرق نہیں ہے اور کوئی ماں سے کہے کہ ذرا فکر کرو اور اس نے کہیں سنا ہے کہ بھائی، دودھ وغیرہ چیزیں صحت کے لیے اچھی ہیں اور فرض کریں کہ وہ اسے روزانہ 10-10 لیٹر دودھ سے نہلائے تو کیا اس کی صحت ٹھیک ہو جائے گی؟ لیکن اگر ایک سمجھدار ماں اسے ایک چمچ، تھوڑا تھوڑا دودھ، دن میں دو بار، پانچ بار، سات بار، ایک ایک چمچ پلائے تو آہستہ آہستہ فرق نظر آئے گا۔

اس فصل کا بھی یہی حال ہے۔ ایسا نہیں ہے کہ پانی بھر کر فصل کو ڈبونے سے فصل اچھی ہوتی ہے۔ اگر قطرہ قطرہ پانی دیا جائے تو فصل بہتر ہوتی ہے، فی قطرہ مزید فصل۔ ایک ناخواندہ ماں بھی اپنے بچے کو دس لیٹر دودھ سے نہیں نہلاتی لیکن ہم پڑھے لکھے پورے کھیت کو پانی سے بھر دیتے ہیں۔ خیر ان سب چیزوں میں تبدیلی لانے کی کوشش کرتے رہیں۔

ہم بارش پکڑو جیسی مہم کے ذریعے ملک کے لوگوں کو پانی کے تحفظ سے جوڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اس سال مارچ میں ہی ملک میں 13 بڑے دریاؤں کے تحفظ کی مہم بھی شروع ہوئی ہے۔ اس میں پانی کی آلودگی کو کم کرنے کے ساتھ ساتھ ندیوں کے کناروں پر جنگلات لگانے کا کام بھی کیا جا رہا ہے۔ اور ایک اندازے کے مطابق اس سے ہندوستان کے جنگلات کا احاطہ 7400 مربع کلومیٹر سے زیادہ ہو جائے گا۔ اس سے جنگلات کے احاطہ میں مزید مدد ملے گی کہ ہندوستان نے پچھلے آٹھ سالوں میں 20 ہزار مربع کلومیٹر سے زیادہ کا اضافہ کیا ہے۔

ساتھیو،

حیاتیاتی تنوع اور جنگلی حیات سے متعلق جن پالیسیوں پر ہندوستان آج عمل پیرا ہے اس نے بھی جنگلی حیات کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ کیا ہے۔ آج چاہے شیر ہو،  چیتا ہو یا ہاتھی، ملک میں سب کی تعداد بڑھ رہی ہے۔

ساتھیو،

یہ بھی ملک میں پہلی بار ہے، جب ہم نے اپنے گاؤں اور شہروں کو صاف ستھرا بنانے، ایندھن میں خود انحصاری، کسانوں کو اضافی آمدنی اور مٹی کی صحت کی مہموں کو ایک ساتھ جوڑا ہے۔ گوبردھن اسکیم ایسی ہی ایک کوشش ہے۔ اور جب میں گوبردھن کی بات کرتا ہوں تو کچھ سیکولر لوگ سوال کریں گے کہ وہ کون سا گوبردھن لایا ہے۔ وہ پریشان ہو جائیں گے۔

اس گوبردھن اسکیم کے تحت بائیو گیس پلانٹس سے گائے کے گوبر اور دیگر زرعی فضلہ کو توانائی میں تبدیل کیا جا رہا ہے۔ اگر آپ کبھی کاشی وشوناتھ دیکھنے جائیں تو چند کلومیٹر کے فاصلے پر گائے کے گوبر کا پودا بھی ہے، آپ اسے دیکھنے ضرور آئیں گے۔ اس سے جو نامیاتی کھاد بنتی ہے اسے کھیتوں میں استعمال کیا جا رہا ہے۔ پچھلے 7-8 سالوں میں، 1600 سے زائد نئی اقسام کے بیج بھی کسانوں کو دستیاب کرائے گئے ہیں تاکہ ہم زمین پر اضافی دباؤ ڈالے بغیر کافی پیداوار حاصل کر سکیں۔

ساتھیو،

قدرتی کھیتی ہمارے آج کے چیلنجوں کا ایک بہترین حل بھی رکھتی ہے۔ اس سال کے بجٹ میں ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم گنگا کے کنارے واقع دیہاتوں میں قدرتی کھیتی کی حوصلہ افزائی کریں گے، قدرتی کھیتی کا ایک بہت بڑا کوریڈور بنائیں گے۔ اپنے ملک میں ہم نے انڈسٹریل کوریڈور کے بارے میں سنا ہے، ڈیفنس کوریڈور کا ہم نے سنا ہے، ہم نے گنگا کے کنارے ایک نیا کاریڈور شروع کیا ہے، زراعت کی راہداری کا، قدرتی کاشتکاری کا۔ اس سے ہمارے کھیت نہ صرف کیمیکل سے پاک ہوں گے بلکہ نمامی گنگے مہم کو بھی نئی طاقت ملے گی۔ بھارت 2030 تک 26 ملین ہیکٹر بنجر زمین کو بحال کرنے کے ہدف پر بھی کام کر رہا ہے۔

ساتھیو،

ماحولیات کے تحفظ کے لیے، آج ہندوستان نئی ایجادات، ماحول دوست ٹیکنالوجی پر مسلسل زور دے رہا ہے۔ آپ سب جانتے ہیں کہ آلودگی کو کم کرنے کے لیے ہم بی ایس- کے معیار پر نہیں آئے بلکہ ہم نے بی ایس- سے براہ راست بی ایس- میں چھلانگ لگا دی ہے۔ اُجالا اسکیم کی وجہ سے جو ہم نے ملک بھر میں ایل ای ڈی بلب فراہم کرنے کے لیے شروع کی تھی، تقریباً 40 ملین ٹن کاربن کے اخراج میں سالانہ کمی ہو رہی ہے۔ گھر میں صرف لٹو بدلنے سے..اگر سب شامل ہو جائیں تو سب کی محنت کا کتنا بڑا نتیجہ نکلتا ہے۔


ہندوستان جیواشم ایندھن پر اپنا انحصار کم کرنے کی بھی کوشش کر رہا ہے۔ قابل تجدید ذرائع سے اپنی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے، ہم تیزی سے بڑے اہداف پر کام کر رہے ہیں۔ ہم نے غیر جیواشم ایندھن پر مبنی ذرائع سے اپنی نصب شدہ بجلی کی پیداواری صلاحیت کا 40 فیصد حاصل کرنے کا ہدف مقرر کیا تھا۔ ہندوستان نے یہ ہدف مقررہ وقت سے 9 سال پہلے حاصل کر لیا ہے۔ آج ہماری شمسی توانائی کی صلاحیت تقریباً 18 گنا بڑھ گئی ہے۔ ہائیڈروجن مشن ہو یا سرکلر پالیسی کا موضوع، یہ ماحولیات کے تحفظ کے لیے ہمارے عزم کا ثبوت ہے۔ ہم پرانی گاڑیوں کی اسکریپ پالیسی لے کر آئے ہیں جو کہ اپنے آپ میں اسکریپ پالیسی پر بہت بڑا کام ہونے والا ہے۔

ساتھیو،

ان کوششوں کے درمیان یوم ماحولیات کے دن ہندوستان نے ایک اور کامیابی حاصل کی ہے۔ اور یہ ہماری خوش قسمتی ہے کہ آج مجھے خوشخبری سنانے کے لیے ایک بہت ہی موزوں پلیٹ فارم ملا ہے۔ ہندوستان کی روایت رہی ہے کہ اگر آپ سفر کے بعد آنے والے کو ہاتھ لگائیں تو آپ کو آدھا میرٹ مل جاتا ہے۔ میں آج یہ خوشخبری ضرور سناؤں گا، ملک اور دنیا کے لوگ بھی اس سے لطف اندوز ہوں گے... ہاں کچھ لوگ اس سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں۔ آج ہندوستان نے پٹرول میں 10 فیصد ایتھنول ملاوٹ کا ہدف حاصل کر لیا ہے۔

آپ یہ جان کر بھی فخر محسوس کریں گے کہ ہندوستان نے اس ہدف کو مقررہ وقت سے 5 ماہ پہلے حاصل کر لیا ہے۔ یہ کتنی بڑی کامیابی ہے اس کا اندازہ آپ اس بات سے لگا سکتے ہیں کہ سال 2014 میں ہندوستان میں پیٹرول میں صرف 1.5 فیصد ایتھنول ملایا گیا تھا۔
اس ہدف تک پہنچنے سے ہندوستان کو براہ راست تین فوائد حاصل ہوئے ہیں۔ ایک تو اس سے تقریباً 27 لاکھ ٹن کاربن کے اخراج میں کمی آئی ہے۔ دوسرا، ہندوستان نے 41 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کا زرمبادلہ بچایا ہے۔ اور تیسرا اہم فائدہ یہ ہے کہ ایتھنول کی ملاوٹ میں اضافہ سے ملک کے کسانوں نے 8 سالوں میں 40 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کی کمائی کی ہے۔ میں اس کامیابی کے لیے ملک کے لوگوں، ملک کے کسانوں، ملک کی تیل کمپنیوں کو مبارکباد دیتا ہوں۔

ساتھیو،

پی ایم نیشنل گتی شکتی ماسٹر پلان جس پر ملک آج کام کر رہا ہے وہ بھی ماحولیات کے تحفظ میں اہم کردار ادا کرے گا۔ گتی شکتی کی وجہ سے ملک میں لاجسٹکس کا نظام جدید ہوگا، ٹرانسپورٹ کا نظام مضبوط ہوگا۔ اس سے آلودگی میں کمی آئے گی۔ ملک میں ملٹی موڈل کنیکٹیویٹی ہونی چاہیے، سو سے زیادہ نئے آبی راستوں کے لیے کام کرنا چاہیے، یہ سب ماحولیات کے تحفظ اور موسمیاتی تبدیلی کے چیلنج سے نمٹنے میں ہندوستان کی مدد کریں گے۔

ساتھیو،

بھارت کی ان کوششوں کا ایک اور پہلو بھی ہے، جس پر بہت کم بحث ہوتی ہے، وہ پہلو ہے گرین جابز۔ جس طرح سے ہندوستان ماحولیات کے مفاد میں فیصلے لے رہا ہے، ان پر تیزی سے عمل درآمد کر رہا ہے، وہ بڑی تعداد میں سبز روزگار کے مواقع بھی پیدا کر رہا ہے۔ یہ بھی ایک مطالعہ کا موضوع ہے جس پر غور کرنا چاہیے۔

ساتھیو،

ماحول کو بچانے کے لیے، زمین کی حفاظت کے لیے، مٹی کی حفاظت کے لیے جتنا عوامی شعور بڑھے گا، اتنا ہی اچھا نتیجہ نکلے گا۔ میری ملک سے اور ملک کی تمام حکومتوں سے، تمام مقامی اداروں سے، تمام رضاکارانہ تنظیموں سے، اسکولوں، کالجوں سے،این ایس ایس- این سی سی سے اپنی کوششوں میں شامل ہونے کی درخواست ہے۔

میں آزادی کے امرت میں پانی کے تحفظ سے متعلق ایک اور گزارش کرنا چاہتا ہوں۔ اگلے سال 15 اگست تک ملک کے ہر ضلع میں کم از کم ایک ضلع میں کم از کم 75 امرت سروور کی تعمیر کا کام آج ملک میں جاری ہے۔ 50 ہزار سے زیادہ امرت سروور آنے والی نسلوں کے لیے پانی کی حفاظت کو یقینی بنانے میں مدد کرے گا۔ یہ امرت سروور اپنے اردگرد کی مٹی میں نمی بڑھائیں گے، پانی کی سطح کو نیچے جانے سے روکیں گے اور حیاتیاتی تنوع کو بھی بہتر بنائیں گے۔ ایک شہری ہونے کے ناطے ہم سب کو غور کرنا چاہیے کہ اس عظیم قرارداد میں آپ سب کی شرکت کیسے بڑھے گی۔

ساتھیو،

ماحولیات کا تحفظ اور تیز رفتار ترقی ہمہ گیر نقطہ نظر سے ہی ممکن ہے، سب کی کوششوں سے۔ اس میں ہمارے لائف اسٹائل کا کیا کردار ہے، ہمیں اسے کیسے بدلنا ہوگا، میں آج رات ایک پروگرام میں اس پر بات کرنے جا رہا ہوں، میں تفصیل سے بتانے جا رہا ہوں، کیونکہ بین الاقوامی اسٹیج پر یہی میرا پروگرام ہے۔ ماحولیات کے لیے طرز زندگی، مشن لائف، اس صدی کی تصویر، اس صدی میں زمین کی تقدیر بدلنے کے مشن کا آغاز۔ یہ پی- یعنی پرو پلینیٹ پیپل موومنٹ ہوگی۔ لائف اسٹائل فار دی انوائرنمنٹس گلوبل کال فار ایکشن آج شام کو شروع کیا جا رہا ہے۔ میری گزارش ہے کہ ہر وہ شخص جو ماحولیات کے تحفظ کا شعور رکھتا ہے، اسے اس میں شامل ہونا چاہیے۔ ورنہ ہم بھی اے سی چلائیں گے اور لحاف اوڑھ لیں گے اور پھر ماحولیات کے سیمینار میں اچھی تقریر کریں گے۔

ساتھیو،

آپ پوری انسانیت کی بہت بڑی خدمت کر رہے ہیں۔ آپ کو کامیابی حاصل ہو، یہ طویل، مشکل سفر جو سدھ گرو جی نے بائیک پر کیا ہے۔ اگرچہ اسے بچپن سے ہی شوق ہے لیکن پھر بھی کام بہت مشکل ہے۔ کیونکہ جب بھی میں دوروں کا اہتمام کرتا تھا اور میں اپنی پارٹی میں کہتا تھا کہ یاترا چلانے کا مطلب ہے عمر کو پانچ سے دس سال کم کرنا، اس میں اتنی محنت لگتی ہے۔ سدھ گرو جی نے سفر کیا ہے، اپنے آپ میں بہت اچھا کام کیا ہے۔ اور میرا پختہ یقین ہے کہ دنیا مٹی سے محبت کے ساتھ پیدا ہوئی ہوگی، لیکن ہندوستان کی مٹی کی طاقت کا بھی تعارف ہوا ہوگا۔

آپ سب کے لیے نیک خواہشات۔

شکریہ!

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Arming Armenia: India to export missiles, rockets and ammunition

Media Coverage

Arming Armenia: India to export missiles, rockets and ammunition
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Social Media Corner 29th September 2022
September 29, 2022
Share
 
Comments

Citizens shower affection and love as the PM visits Gujarat to inaugurate multiple development projects.

Netizens appreciates Govt’s efforts for taking essential steps towards economic development.