’’ گجرات کے اساتذہ کے ساتھ میرے تجربے نے پالیسی فریم ورک بنانے کے سلسلے میں قومی سطح پر بھی میری مدد کی‘‘
’’بہت سے عالمی رہنما اپنے ہندوستانی استادوں کو انتہائی احترام کے ساتھ یاد کرتے ہیں‘‘
’’میں ایک ہمیشہ سیکھنے والا طالب علم ہوں اور جو کچھ بھی معاشرہ میں ہوتا ہے اس کا باریک بینی سے مشاہدہ کرنا میں نے سیکھا ہے‘‘
’’آج کا پُراعتماد اور نڈر طالب علم اساتذہ کو روایتی طریقہ تدریس سے باہر آنے کا چیلنج دیتا ہے‘‘
’’ پُرتجسس طلبا کی طرف سے چیلنجز کو اساتذہ کے ذریعہ ذاتی اور پیشہ ورانہ ترقی کے مواقع کے طور پر دیکھا جاناچاہیے’’ کیونکہ وہ ہمیں سیکھنے، بھولنے اور پھر سے سیکھنے کا موقع فراہم کرتے ہیں ‘‘
’’ٹیکنالوجی معلومات فراہم کر سکتی ہے لیکن نقطہ نظر نہیں‘‘
’’آج ہندوستان 21ویں صدی کی ضروریات کے مطابق نئے نظام بنا رہا ہے اور ایک
نئی قومی تعلیمی پالیسی اسی کو مدنظر رکھ کر بنائی گئی ہے‘‘
’’ حکومت علاقائی زبانوں میں تعلیم پر زور دے رہی ہے
جواساتذہ کی زندگیوں کو بھی بہتر بنائے گی‘‘ ’’اسکول کی سالگرہ منانے سے اسکولوں اور طلباء کے درمیان منقطع رابطہ بحال ہوجائے گا‘‘ ’’اساتذہ کی طرف سے ایک چھوٹی سی تبدیلی تعلیم نوجوان طلباء کی زندگیوں میں یادگار تبدیلیاں لا سکتی ہے ‘‘

گجرات کے ہردلعزیز وزیر اعلیٰ، جناب بھوپیندر بھائی پٹیل، مرکز میں وزراء کی کونسل میں میرے ساتھی اور جو زندگی بھر اپنا تعارف ایک استاد کے طور پر کراتے رہے، جناب پرشوتم روپالا جی، ہندوستان کی پارلیمنٹ کے گزشتہ انتخابات میں ملک میں پورے ملک میں زیادہ ووٹ لے کر جیتنے والے جناب سی آر پاٹل، گجرات حکومت کے وزراء، اکھل بھارتیہ پرائمری سکشا سنگھ کے تمام اراکین، ملک کے کونے کونے سے آئے معزز اساتذہ کرام، خواتین و حضرات!

میں آپ کا مشکور ہوں کہ آپ نے مجھے اکھل بھارتیہ پرائمری سکشا سنگھ کے اس قومی اجلاس میں اتنے پیار کے ساتھ مدعو کیا۔ آزادی کے سنہری دور میں جب ہندوستان ترقی کے عزم کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے، آپ سبھی اساتذہ کا کردار بہت اہم ہے۔ گجرات میں رہتے ہوئے، مجھے ریاست کے پورے تعلیمی نظام کو تبدیل کرنے کے لیے پرائمری اساتذہ کے ساتھ کام کرنے کا تجربہ ہوا ہے۔ ایک زمانے میں، گجرات میں بچوں کے اسکول چھوڑنے کی شرح، جیسا کہ وزیر اعلیٰ نے ذکر کیا، تقریباً 40 فیصد ہوا کرتی تھی، آج یہ 3 فیصد سے بھی کم رہ گئی ہے جیسا کہ وزیر اعلیٰ نے بتایا تھا۔ یہ گجرات کے اساتذہ کے تعاون سے ہی ممکن ہوا ہے۔ گجرات میں اساتذہ کے ساتھ میرے تجربات نے ہمیں قومی سطح پر پالیسیوں کے فریم ورک میں پالیسیاں بنانے میں بہت مدد کی ہے۔ اب، جیسا کہ روپالا جی بتا رہے تھے، اسکولوں میں بیت الخلا کی عدم دستیابی کی وجہ سے لڑکیوں کی ایک بڑی تعداد اسکول چھوڑ دیتی تھی۔ اسی لیے ہم نے اسکولوں میں لڑکیوں کے لیے علیحدہ بیت الخلا بنانے کے لیے خصوصی مہم شروع کی۔ یہاں گجرات میں، کسی زمانے میں پوری قبائلی پٹی میں، گجرات کا پورا مشرقی سرا ایک طرح سے ہمارے قبائلی بھائیوں کا مسکن ہے، اس پورے علاقے میں عمرگام سے امبا جی تک سائنس کی تعلیم بالکل نہیں دی جاتی تھی۔ آج وہاں اساتذہ نہ صرف سائنس پڑھا رہے ہیں بلکہ میرے قبائلی نوجوان بیٹے اور بیٹیاں بھی ڈاکٹر اور انجینئر بن رہے ہیں۔ وزیر اعظم کے بعد کئی بار میں جب بھی بیرون ملک جاتا ہوں، جب بھی جاتا ہوں، بیرون ملک ان لیڈروں سے ملتا ہوں اور جو باتیں وہ بتاتے ہیں۔ یہاں بیٹھا ہر استاد یہ سن کر فخر محسوس کرے گا۔ میں آپ کو اپنے تجربات بتاتا ہوں۔ عام طور پر جب وہ غیر ملکی رہنماؤں سے ملتا ہے، تو وہ بڑے فخر سے ان کی زندگیوں میں ہندوستانی اساتذہ کے تعاون کو بیان کرتا تھا۔ وزیر اعظم بننے کے بعد میرا پہلا غیر ملکی دورہ بھوٹان تھا اور جب میں بھوٹان کے شاہی خاندان کے ساتھ بیٹھا تھا تو وہ بڑے فخر سے بتاتا تھا کہ ان کا سینئر بادشاہ کون ہے، وہ بتا رہا تھا کہ میری نسل کے تمام لوگ بھوٹان میں ہیں۔ ان سب کو ہندوستان کے کسی نہ کسی استاد نے پڑھایا اور لکھایا ہے اور بڑے فخر سے کہتا تھا۔ اسی طرح جب میں سعودی عرب گیا تو وہاں کے بادشاہ بہت بزرگ اور قابل احترام عظیم آدمی ہیں۔ ان کو بھی مجھ سے بہت پیار ہے۔ لیکن جب میں ان کے پاس بیٹھا تو انہوں نے کہا کہ میں تم سے بہت پیار کرتا ہوں۔ پھر انہوں نے مجھ سے پوچھا کہ ایسا کیوں تم کو معلوم ہے؟ میں نے کہا کہ بتائیں یہ آپ کا کرم ہے۔ انہوں نے کہا دیکھو بھائی میں اچھا بادشاہ ہوں چاہے کوئی بھی ہوں لیکن بچپن میں میرے استاد آپ کے ملک اور آپ کے گجرات سے تھے اور انہوں نے مجھے پڑھایا۔ یعنی ہندوستان کے وزیر اعظم سے بات کرتے ہوئے اتنے بڑے خوشحال ملک کے عظیم آدمی ایک استاد کے تعاون کی بات کرتے ہوئے فخر محسوس کر رہے تھے۔

پچھلے دنوں کووڈ کے سلسلے میں آپ نے ڈبلیو ایچ او کے حوالے سے ٹی وی پر بہت کچھ دیکھا ہوگا۔ ڈبلیو ایچ او کے سربراہ جناب ٹیڈ راس، آپ نے ان کے بیانات ٹی وی پر کئی بار دیکھے ہوں گے۔ میری ان سے بڑی دوستی ہے اور وہ ہمیشہ فخر سے کہتے تھے۔ پچھلے دنوں جام نگر آئے تھے، تب بھی اس کا ذکر انہوں نے اسی فخر کے ساتھ کیا۔ انہوں نے کہا کہ بچپن سے لے کر اب تک میری زندگی کے ہر موڑ پر کسی نہ کسی ہندوستانی استاد نے اپنا حصہ ڈالا ہے۔ ہندوستان کے اساتذہ نے میری زندگی کو تشکیل دینے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ اور پھر انہوں نے مجھے یہ بھی کہا کہ میں آج بھارت آیا ہوں، بھارت کے اساتذہ نے مجھے بنایا ہے کیا آپ مجھے کوئی برانڈ گفٹ دے سکتے ہیں، میں نے کہا کیا؟ کہا لیکن آپ کو دینا پڑے گا اور سر عام دینا ہوگا۔ میں نے کہا ضرور دوں گا، آپ بتائیے۔ بولے، آج تم میرا نام بدل کر ہندوستانی نام رکھ دو اور میں نے سر عام جناب ٹیڈ راس کا نام شریمان تلسی رکھ دیا۔ یعنی ہندوستان کے اساتذہ جہاں بھی گئے ہیں، دنیا میں انہوں نے ایسا انمٹ نقوش چھوڑا ہے کہ لوگ انہیں نسل در نسل یاد کرتے ہیں۔

 

ساتھیو،

جیسا کہ روپالا جی فخر سے کہہ سکتے ہیں کہ وہ تاحیات استاد ہیں۔ میں خود استاد نہیں ہوں۔ لیکن میں فخر سے کہتا ہوں کہ میں تاحیات طالب علم ہوں۔ آپ سب سے، میں نے معاشرے میں جو کچھ بھی ہوتا ہے اسے قریب سے دیکھا اور سیکھا ہے۔ آج پرائمری اساتذہ کے اس اجلاس میں میں اپنے تجربات آپ کے سامنے تھوڑا سا دل کی گہرائیوں سے شیئر کرنا چاہتا ہوں۔ اس تیزی سے بدلتی 21ویں صدی میں ہندوستان کا تعلیمی نظام بدل رہا ہے، اساتذہ بھی بدل رہے ہیں، طلبہ بھی بدل رہے ہیں۔ ایسے میں ان بدلتے ہوئے حالات میں ہم کیسے آگے بڑھیں، یہ بہت اہم ہو جاتا ہے۔ جیسا کہ ہم نے دیکھا، پہلے اساتذہ کو وسائل کی کمی، انفراسٹرکچر کی کمی جیسے بہت سے چیلنجز کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔ اور پھر طلبہ کی طرف سے کوئی خاص چیلنج نہیں تھا۔ آج وسائل اور سہولیات کی کمی اساتذہ کو درپیش مسائل تھے۔ وہ آہستہ آہستہ دور ہو رہے ہیں۔ لیکن، آج کی نسل کے بچے، طلبہ، ان کا تجسس، ان کی جستجو، وہ والدین کے ساتھ ساتھ اساتذہ کے لیے بھی ایک بڑا چیلنج لے کر آئے ہیں۔ یہ طلبہ اعتماد سے بھرپور ہیں، یہ طلبہ نڈر ہیں۔ اور اس کی فطرت یہ ہے کہ آٹھ سال کا بچہ، نو سال کا طالب علم بھی استاد کو للکارتا ہے۔ وہ تعلیم کے روایتی طریقوں سے کچھ نئی چیزیں پوچھتا ہے، ان سے بات کرتا ہے۔ ان کا تجسس اساتذہ کو چیلنج کرتا ہے کہ وہ نصاب اور مضمون سے آگے بڑھ کر ان کے سوالات کے جوابات دیں۔ یہاں بیٹھ کر موجودہ اساتذہ ہر روز حاضر بچوں سے تجربات کر رہے ہوں گے۔ وہ ایسے ہی سوالات لے کر آئے ہوں گے، آپ کے لیے بھی بہت مشکل ہوئی ہوگی۔ طلباء کے پاس معلومات کے مختلف ذرائع ہوتے ہیں۔ اس نے اساتذہ کو خود کو اپ ڈیٹ رکھنے کا چیلنج بھی پیش کیا ہے۔ ہمارے تعلیمی نظام کا مستقبل اس بات پر منحصر ہے کہ ایک استاد ان چیلنجوں کو کیسے حل کرتا ہے۔ اور بہترین طریقہ یہ ہے کہ ان چیلنجوں کو ذاتی اور پیشہ ورانہ ترقی کے مواقع کے طور پر دیکھا جائے۔ یہ چیلنجز ہمیں سیکھنے اور دوبارہ سیکھنے کا موقع فراہم کرتے ہیں۔ ان کو حل کرنے کا ایک طریقہ یہ ہے کہ تدریس کے ساتھ ساتھ اپنے آپ کو طالب علم کا رہنما اور سرپرست بنائیں۔ آپ یہ بھی جانتے ہیں کہ گوگل سے ڈیٹا حاصل کیا جا سکتا ہے، لیکن فیصلہ خود کرنا پڑتا ہے۔ صرف ایک گرو ہی طالب علم کی رہنمائی کر سکتا ہے کہ اپنے علم کا صحیح استعمال کیسے کریں۔ ٹیکنالوجی کے ذریعے معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں، لیکن صحیح نقطہ نظر صرف استاد ہی دے سکتا ہے۔ صرف ایک گرو ہی بچوں کو یہ سمجھنے میں مدد کر سکتا ہے کہ کون سی معلومات مفید ہے اور کون سی نہیں۔ کوئی ٹیکنالوجی طالب علم کے خاندان کی حیثیت کو نہیں سمجھ سکتی۔ صرف ایک گرو ہی اس کی صورتحال کو سمجھ سکتا ہے اور اسے تمام مشکلات سے نکلنے کی ترغیب دے سکتا ہے۔ اسی طرح دنیا کی کوئی ٹیکنالوجی یہ نہیں سکھا سکتی کہ کسی موضوع کو گہرائی سے کیسے سمجھنا ہے، گہرائی کے ساتھ علم کیسے سیکھا جائے۔

جب معلومات کا سیلاب آتا ہے، معلومات کے پہاڑ کھڑے ہوجاتے ہیں، تو طلبہ کے لیے یہ سیکھنا ضروری ہوجاتا ہے کہ کس طرح ایک چیز پر توجہ مرکوز کی جائے۔ گہری تعلیم حاصل کرنا اور اسے منطقی انجام تک پہنچانا بہت ضروری ہے۔ اس لیے آج اکیسویں صدی کے طالب علم کی زندگی میں استاد کا کردار زیادہ وسیع ہو گیا ہے۔ اور میں آپ سے یہ بھی کہنا چاہوں گا کہ میں آپ کو کچھ سنانے نہیں آیا ہوں اور نہ ہی میں تبلیغ کر سکتا ہوں۔ لیکن ایک لمحے کے لیے بھول جائیں کہ آپ ایک استاد ہیں۔ ایک لمحے کے لیے سوچیں کہ آپ کسی بچے کی ماں ہیں، کسی بچے کی باپ ہیں۔ آپ اپنے بچے کو کیسا چاہتے ہیں؟ آپ اپنے بچے کے لیے کیا چاہتے ہیں؟ دوستو، آپ کو پہلا جواب ملے گا، یہاں اس سے کوئی انکار نہیں کر سکتا۔ پہلا جواب آپ کو ملے گا، میں ایک اچھا استاد ہوں، ہم دونوں کے والدین اچھے استاد ہیں، لیکن ہمارے بچوں کو ایک اچھا استاد، اچھی تعلیم ملنی چاہیے، آپ کے دل میں پہلی خواہش بھی بچوں کے لیے ہے، آپ کے بچوں کو ملنی چاہیے۔ ایک اچھا استاد، اچھی تعلیم۔ جو خواہش آپ کے دل میں ہے، وہی خواہش ہندوستان کے کروڑوں والدین کے دل میں بھی ہے۔ آپ اپنے بچوں کے لیے وہی چاہتے ہیں جو ہندوستان میں ہر والدین اپنے بچوں کے لیے چاہتے ہیں اور وہ آپ سے توقع رکھتے ہیں۔

ساتھیو،

اس بات کو ہمیشہ ذہن میں رکھیں کہ طالب علم آپ سے، آپ کی سوچ، آپ کے روزمرہ کے رویے، آپ کی گفتگو، آپ کے اٹھنے بیٹھنے کے انداز سے بہت کچھ سیکھتا رہتا ہے۔ آپ جو پڑھا رہے ہیں اور طالب علم آپ سے کیا سیکھ رہا ہے اس میں بعض اوقات بہت بڑا فرق ہوتا ہے۔ آپ سوچ سکتے ہیں کہ آپ ریاضی، سائنس، تاریخ یا کوئی اور مضمون پڑھا رہے ہیں، لیکن طالب علم صرف وہ مضمون آپ سے نہیں سیکھ رہا ہے۔ وہ یہ بھی سیکھ رہا ہے کہ اپنی بات کو کیسے رکھنا ہے۔ وہ آپ سے صبر کرنے، دوسروں کی مدد کرنے جیسی خوبیاں بھی سیکھ رہا ہے۔ آپ کو دیکھ کر وہ سیکھتا ہے کہ سخت امیج رکھ کر بھی پیار کا اظہار کیسے کیا جاتا ہے۔ اسے استاد سے منصفانہ ہونے کا معیار بھی ملتا ہے۔ اس لیے پرائمری تعلیم کا کردار بہت اہم ہے۔ چھوٹے بچوں کے لیے، استاد خاندان سے باہر پہلا فرد ہوتا ہے جس کے ساتھ وہ سب سے زیادہ وقت گزارتے ہیں۔ اس لیے آپ سب میں اس ذمہ داری کا احساس ہندوستان کی آنے والی نسلوں کو بہت مضبوط کرے گا۔

ساتھیو،

جن اسکولوں میں آپ اس وقت کام کر رہے ہیں، وہاں نئی ​​قومی تعلیمی پالیسی یا تو نافذ ہو چکی ہوگی یا لاگو ہونے والی ہے۔ اور مجھے فخر ہے کہ اس بار ملک کے لاکھوں اساتذہ نے قومی تعلیمی پالیسی بنانے میں اپنا حصہ ڈالا ہے۔ اساتذہ کی محنت سے یہ مکمل تعلیمی پالیسی بنائی گئی ہے۔ اور اس کی وجہ سے ان کا ہر طرف خیر مقدم کیا گیا ہے۔ آج ہندوستان 21ویں صدی کی جدید ضرورتوں کے مطابق نئے نظام بنا رہا ہے۔ یہ نئی قومی تعلیمی پالیسی اسی بات کو مدنظر رکھتے ہوئے بنائی گئی ہے۔

اتنے سالوں سے ہم اسکولوں میں تعلیم کے نام پر اپنے بچوں کو صرف کتابی علم دے رہے تھے۔ نئی قومی تعلیمی پالیسی اس پرانے غیر متعلقہ نظام کو بدل رہی ہے۔ قومی تعلیمی پالیسی عملی پر مبنی ہے۔ اب چونکہ آپ کے پاس پڑھانے اور سیکھنے کا عمل زیادہ ہے، اب کہا جاتا ہے کہ درس و تدریس کا دور ختم ہو گیا ہے۔ اب تعلیم کو سیکھنے کے ذریعے آگے بڑھانا ہے۔ اب جیسا کہ آپ کو مٹی کے بارے میں کچھ بتانا ہے، چاک کے بارے میں کچھ سکھائیں، اگر آپ بچوں کو کمہار کے گھر لے جا سکتے ہیں۔ کمہار کے گھر جائیں تو بہت سی چیزیں دیکھنے کو ملیں گی۔ کمہار کن حالات میں رہتے ہیں، کتنی محنت کرتے ہیں؟ غربت سے نکلنے کے لیے انسان کتنی کوششیں کرتا ہے۔ اور اس سے بچوں میں حساسیت بیدار ہوگی۔ بچے دیکھیں گے کہ مٹی سے برتن، دیگ اور دیگیں کیسے بنتی ہیں۔ مٹی کی مختلف اقسام کیا ہیں، یہ سب چیزیں براہ راست نظر آئیں گی۔ اس طرح کا عملی نقطہ نظر قومی تعلیمی پالیسی کا ایک بہت اہم عنصر ہے۔

 

ساتھیو،

ان دنوں پڑھائی اور سیکھنے کے حوالے سے منفرد تجربات اور بحثیں سننے کو ملتی ہیں۔ لیکن میں آپ کو اپنے بچپن کا ایک واقعہ سناتا ہوں۔ مجھے آج اپنے ایک استاد کی کمی محسوس ہو رہی ہے۔ میرے پرائمری ٹیچر، اس شام جب انہیں اسکول سے گھر جانا تھا۔ چنانچہ بچوں کو کوئی نہ کوئی کام دیا گیا۔ اور ہوم ورک والے نہیں، کوئی اور کام دیتے تھے۔ جیسا کہ وہ کہتے تھے کہ اچھا بھائی تم ایسا کرو اور کل دس چاول لے آؤ۔ دوسروں کو دس مونگ کے دانے لانے کو کہا گیا۔ تیسرے کو کہا گیا کہ تور دال کے 10 ٹکڑے لے آؤ۔ چوتھے کو کہا گیا کہ 10 گرام لے آؤ۔ ہر ایک سے 10-10 کچھ اس طرح ملتا تھا۔ تو بچہ گھر جا کر یاد کرتا تھا، میں نے 10 لانے ہیں، مجھے 10 لانے ہیں۔ نمبر 10 طے کیا جاتا تھا۔ پھر میں نے اس کے ذہن میں گندم یا چاول لانا ہے، وہ گھر جانے سے پہلے اپنی ماں سے کہتا تھا۔ کل استاد نے مجھے کہا کہ یہ لے لو۔ صبح تک وہ چاول اور 10، چاول اور 10 اس کے ذہن میں رہے۔ لیکن جب ہم کلاس میں جاتے تھے تو ہمارے استاد ان سب کو اکٹھا کرتے تھے۔ اور پھر سب کو مختلف لوگوں سے کہتے تھے کہ اچھا بھائی تم یہ کرو، اس میں سے 5 مونگ نکالو، دوسرے کو کہتے تھے کہ 3 گرام نکالو، تیسرے کو کہتے تھے کہ وہ چنے کو پہچاننے لگے، وہ مونگ کو پہچانتا ہے اسے نمبر یاد ہے۔ یعنی ان کا عملی نظام ایسا تھا، ہمیں بھی بڑا عجیب لگتا تھا۔ لیکن یہ ان کا طریقہ تعلیم تھا۔ جب ہم نے 1 سال مکمل کیا اور اگلے سال گئے تو پھر بھی وہی ٹیچر موجود تھے، تو انہوں نے پھر وہی کہا، مجھے سوال کرنے کی عادت تھی، تو میں نے کہا سر، پچھلے سال آپ نے یہ کام کرایا تھا، آپ کیوں کروا رہے ہیں؟ دوبارہ کیا؟ کہا چپ رہو تم اپنا کام کرو۔ ٹھیک ہے ہم لے آئے ہیں جو آپ نے کہا۔ لیکن دوسرے سال وہ بدل گئے۔ انہوں نے ہر ایک کی آنکھوں پر پٹی باندھ دی۔ اور کہا، تم چھو کر فیصلہ کر سکتے ہو کہ مونگ کون سی ہے، چنا کون سا ہے اور چھونے کی حس کی طاقت کیا ہے، دوستو، انہوں نے بہت سادگی سے سکھایا تھا۔ میں اپنا تجربہ بتا رہا ہوں کہ جب ایک استاد آپ میں شامل ہو جاتا ہے تو وہ کیسا ہوتا ہے۔ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اس ایک سرگرمی سے ہمیں کتنا فائدہ ہوا۔ ہم نے گنتی کے بارے میں سیکھا، ہم نے دالوں کے بارے میں سیکھا، ہم نے رنگوں کے بارے میں سیکھا۔ تو اس طرح وہ ہمیں عملی علم کے ساتھ مطالعہ کرواتے تھے۔ پریکٹیکل کے ساتھ پڑھنا، یہ قومی تعلیمی پالیسی کی بنیادی روح بھی ہے، اور اسے زمین پر لانے کی ذمہ داری آپ سب کو پوری کرنی ہوگی۔

ساتھیو،

قومی تعلیمی پالیسی میں جو بڑا انتظام کیا گیا ہے اس سے ہمارے گاؤں اور چھوٹے شہروں کے اساتذہ کو بہت مدد ملے گی۔ یہ ہے مادری زبان میں تعلیم کی فراہمی۔ انگریزوں نے ہمارے ملک پر ڈھائی سو سال حکومت کی لیکن پھر بھی انگریزی زبان ایک طبقے تک محدود رہی۔ بدقسمتی سے آزادی کے بعد ایسا نظام بنایا گیا کہ انگریزی زبان میں تعلیم کو ترجیح دی جانے لگی۔ والدین بھی بچوں کو انگریزی زبان میں پڑھانے کی ترغیب دینے لگے۔ مجھے نہیں معلوم کہ میری ٹیچرز یونین نے کبھی اس کے نقصانات کے بارے میں سوچا ہے یا نہیں۔ آج میں آپ کو بتا رہا ہوں، اس وقت جب آپ سوچیں گے، اس موضوع پر آپ اس حکومت کی جتنی تعریف کریں، اتنی ہی کم ہوگی۔ کیا ہوا، جب یہ انگریزی میں کام کرنے لگا، تو دیہاتوں اور غریب گھرانوں کے ہمارے لاکھوں اساتذہ جو اپنی مادری زبان میں تعلیم حاصل کر کے چلے گئے۔ وہ کتنا ہی اچھا استاد کیوں نہ ہوں انہیں انگریزی سیکھنے کا موقع نہیں ملا۔ اب ان کے لیے نوکری کا خطرہ منڈلانے لگا۔ کیونکہ انگریزی کا ماحول ختم ہوچکا ہے۔ ہم نے مادری زبان میں تعلیم پر زور دیا ہے تاکہ آپ کی ملازمت اور مستقبل میں آپ جیسے ساتھیوں کی ملازمت کو یقینی بنایا جا سکے۔ جس سے میرے استاد کی جان بچ جائے گی۔ یہ ہمارے ملک میں کئی دہائیوں سے چل رہا تھا۔ لیکن اب قومی تعلیمی پالیسی مادری زبان میں تعلیم کو فروغ دیتی ہے۔ اس سے آپ کو بڑا فائدہ ہوگا۔ ہمارے گاؤں سے آنے والے، غریب گھرانوں سے آنے والے نوجوانوں کو اس کا بہت فائدہ ملے گا، اساتذہ ملیں گے، نوکریوں کے مواقع پیدا ہوں گے۔

ساتھیو،

اساتذہ سے متعلق چیلنجوں کے درمیان آج ہمیں معاشرے میں ایسا ماحول پیدا کرنے کی ضرورت ہے جس میں لوگ رضاکارانہ طور پر اساتذہ بننے کے لیے آگے آئیں۔ موجودہ حالات میں ہم دیکھتے ہیں کہ لوگ ڈاکٹر، انجینئر بننے، ایم بی اے کرنے، ٹیکنالوجی کے بارے میں جاننے کی بات کرتے ہیں، لیکن بہت کم دیکھنے کو ملتا ہے۔کون ملتا ہے کہ کوئی آکر کہے کہ میں ٹیچر بننا چاہتا ہوں، میں بچوں کو پڑھانا چاہتا ہوں۔ یہ صورتحال کسی بھی معاشرے کے لیے ایک بڑا چیلنج ہے۔ یہ سوال اٹھانا بہت ضروری ہے کہ ہم بچوں کو نوکری کے لیے پڑھا رہے ہیں، ہمیں تنخواہ بھی مل رہی ہے، لیکن کیا ہم اپنے دل سے استاد بھی ہیں؟ کیا ہم زندگی بھر کے استاد ہیں؟ کیا سوتے، جاگتے یا جاگتے ہوئے ہمارے ذہن میں یہ احساس ہوتا ہے کہ مجھے ملک کا مستقبل سنوارنا ہے، بچوں کو روز کچھ نہ کچھ نیا سکھانا ہے؟ میرا ماننا ہے کہ معاشرے کی تعمیر میں اساتذہ کا بہت بڑا کردار ہے۔ لیکن بعض اوقات میں بعض حالات کو دیکھ کر درد محسوس کرتا ہوں۔ میں آپ کو بتاتا ہوں، آپ بھی میری پریشانی کو سمجھ سکیں گے۔ میں کبھی کبھی اس لیے کہ میرے ذہن میں جیسا کہ روپالا جی نے ابھی بیان کیا ہے۔ جب میں وزیر اعلیٰ بنا تو میری دو خواہشیں تھیں، دو ذاتی خواہشات۔ میرے بچپن میں جو دوست میرے ساتھ اسکول میں پڑھتے تھے، میں انہیں وزیراعلیٰ کے گھر بلاؤں۔ کیونکہ میں، میں مہاجر تھا، میرا رشتہ سب سے ٹوٹ گیا تھا۔ درمیان میں تین دہائیاں گزر گئیں تو مجھے ان پرانے دوستوں کی یاد آنے لگی۔ اور دوسرا یہ کہ میں اپنے تمام اساتذہ کو اپنے گھر بلانا اور ان کی عزت کرنا چاہتا تھا۔ اور مجھے خوشی ہے کہ جس وقت میں نے اپنے اساتذہ کو بلایا اس وقت ایک استاد کی عمر 93 سال تھی اور آپ دوست اس بات پر فخر کریں گے کہ میں ایسا طالب علم ہوں۔ میرے تمام اساتذہ آج بھی زندہ ہیں۔ میں اس کے ساتھ زندگی کے رابطے میں ہوں، آج بھی۔ لیکن آج کل میں جس چیز کی تلاش میں ہوں اگر میں کسی کو شادی کی دعوت دینے یا شادی میں جانے کے لیے کہیں آؤں۔ تو میں اس سے پوچھتا ہوں کہ وہ کتنا بڑا آدمی ہونا چاہیے، میں اس سے پوچھتا ہوں۔ اچھا بھائی آپ کی شادی ہو رہی ہے، یہ آپ کی زندگی کا بہت اہم موقع ہے، کیا آپ نے اپنے کسی استاد کو شادی میں مدعو کیا ہے؟ 100 میں سے 90 فیصد مجھے کوئی نہیں بتاتا کہ میں نے استاد کو بلایا ہے۔ اور جب میں یہ سوال پوچھتا ہوں تو لوگ ادھر ادھر دیکھنے لگتے ہیں۔ ارے وہ جس نے آپ کی زندگی بنانا شروع کی تھی اور آپ زندگی کے بہت بڑے مرحلے کی طرف جارہے ہیں اور آپ کو شادی میں اپنے استاد کی یاد نہیں آئی۔ یہ معاشرے کی ایک حقیقت ہے اور ایسا کیوں ہو رہا ہے؟ اس بارے میں ہم سب کو سوچنا چاہیے۔ اور اس سچائی کا ایک اور پہلو بھی ہے۔ جس طرح میں ایسے لوگوں سے پوچھتا ہوں اسی طرح استاد سے بھی طلبہ کے بارے میں پوچھتا ہوں۔ مجھے بہت سے تدریسی پروگراموں میں شرکت کرنا پسند ہے۔ میں کئی سالوں سے آتا رہتا ہوں، اس لیے میں ان سے ضرور ملتا ہوں، تو میں ان سے پوچھتا ہوں، میں اسکول کے چھوٹے چھوٹے پروگراموں میں بھی جاتا ہوں اور ان کے اساتذہ کے کمرے میں بیٹھ کر ان سے پوچھتا ہوں۔ میں پوچھتا ہوں، اچھا بتاؤ بھائی آپ 20 سال سے استاد ہیں، کوئی 25 سال سے استاد ہے، کوئی 12 سال سے استاد ہے۔ آپ مجھے 10 طلباء کے نام بتائیں۔ اپنی زندگی کے 10 طلباء کے نام بتائیں جنہوں نے آج زندگی میں اتنی بلندی حاصل کی ہے کہ آپ کو فخر ہے کہ وہ آپ کا طالب علم تھا اور ان کی زندگی کامیاب رہی۔ بدقسمتی سے مجھے یہ کہنا پڑتا ہے کہ بہت سے اساتذہ مجھے اس بات کا جواب نہیں دے پا رہے ہیں کہ میں 20 سال سے استاد ہوں، ہر روز بچے آتے اور میرے ساتھ رہتے تھے، لیکن کون سے 10 طالب علم اپنی زندگی بنانے میں کامیاب ہوئے اور مجھے یاد ہے کہ نہیں؟ میرا ان سے کچھ رشتہ ہے یہ جا رہا ہے یا نہیں ورنہ صفر نتیجہ آنے والا ہے دوستو مطلب قطع تعلق دونوں اطراف سے ہے۔ یہ طالب علم اور استاد دونوں طرف سے ہو رہا ہے۔

اور ساتھیو،

ایسا نہیں ہے کہ سب کچھ تباہ ہو گیا ہے۔ ہمارے کھیل کے میدان میں آپ کو حالات بالکل مختلف نظر آتے ہیں۔ ہم دیکھتے ہیں کہ اگر کوئی کھلاڑی میڈل لے کر آتا ہے تو وہ سب سے پہلے اپنے استاد، اپنے کوچ کو سلام کرتا ہے۔ وہ اولمپکس جیتنے کے بعد آیا ہوگا۔ جس نے اسے بچپن میں کھیل سکھایا اس کے درمیان 15-20 سال کا وقفہ ضرور گزرا ہوگا، پھر بھی جب اسے تمغہ ملتا ہے تو وہ اس استاد کو سلام کرتا ہے۔ گرو کے لیے احترام کا یہ احساس اس کے ذہن میں ساری زندگی رہتا ہے۔ ایسا اس لیے ہوتا ہے کیونکہ گرو یا کوچ انفرادی کھلاڑی پر توجہ مرکوز کرتا ہے، اس کی زندگی میں شامل ہوتا ہے اور اسے تیار کرتا ہے۔ اس پر محنت کرتا ہے. کھیل کے میدان کے علاوہ، اساتذہ کی عام دنیا میں، ہم شاذ و نادر ہی دیکھتے ہیں کہ کوئی طالب علم انہیں زندگی بھر یاد کر رہا ہو، ان سے رابطے میں ہو۔ ہمیں سوچنا چاہیے کہ ایسا کیوں ہوتا ہے۔

 

ساتھیو،

وقت کے ساتھ ساتھ طلباء اور اسکولوں کے درمیان رابطہ منقطع بھی بڑھتا جا رہا ہے۔ گریجویشن کے بعد جب بچوں کو ایک فارم بھرنا ہوتا ہے اور وہاں سے داخلہ لینا ہوتا ہے تو بچے اسکول نہیں جاتے۔ میں کئی بار لوگوں سے پوچھتا ہوں کہ کیا آپ جانتے ہیں کہ آپ کے اسکول کا یوم تاسیس یا آپ کے اسکول کی سالگرہ کب ہے؟ سالگرہ کا مطلب ہے کہ وہ کون سا دن تھا جب اس گاؤں میں آپ کا اسکول شروع ہوا تھا۔ اور میرا تجربہ یہ رہا ہے کہ بچوں کو یا اسکول کی انتظامیہ یا اساتذہ کو یہ نہیں معلوم کہ وہ جس اسکول میں کام کر رہے ہیں یا جس اسکول میں وہ پڑھتے ہیں، وہ کب شروع ہوا۔ یہ معلومات دستیاب نہیں بھائی۔ اسکول اور طالب علم کے درمیان جو رابطہ منقطع ہے اسے دور کرنے کے لیے یہ روایت شروع کی جاسکتی ہے کہ ہم اسکول کی سالگرہ بہت دھوم دھام سے مناتے ہیں، پورا گاؤں مل کر اسے مناتا ہے اور اس بہانے سے کہ آپ نے اس اسکول میں پڑھا ہے، سب پرانے لوگوں کو اکٹھا کریں، تمام پرانے اساتذہ کو جمع کریں، آپ دیکھیں گے کہ پورا ماحول بدل جائے گا، وابستگی کی ایک نئی شروعات ہوگی۔ اس سے رابطہ قائم ہوگا، معاشرہ جڑے گا اور آپ کو یہ بھی معلوم ہوگا کہ آج ہمارے پڑھے لکھے بچے کہاں پہنچ چکے ہیں۔ آپ کو فخر محسوس ہوگا۔ میں یہ بھی دیکھتا ہوں کہ اسکولوں کو یہ نہیں معلوم کہ ان کے پڑھے لکھے بچے کہاں تک پہنچ چکے ہیں، کس بلندی پر ہیں۔ کوئی کسی کمپنی کے سی ای او ہیں، کوئی ڈاکٹر ہیں، کوئی انجینئر ہیں، کوئی سول سروسز جوائن کر چکے ہیں۔ اس کے بارے میں تو سبھی جانتے ہیں، لیکن جس اسکول میں اس نے پڑھا، اسی اسکول کے لوگ نہیں جانتے۔ میرا یہ پختہ یقین ہے کہ کوئی شخص کتنا ہی عظیم کیوں نہ ہو، چاہے وہ کسی بھی عہدے پر فائز ہو، اگر اسے اس کے پرانے اسکول کی طرف سے دعوت نامہ ملے تو وہ اس اسکول میں ضرور خوشی سے جائے گا۔ اس لیے ہر اسکول کو اپنے اسکول کی سالگرہ ضرور منانی چاہیے۔

ساتھیو،

ایک بہت اہم موضوع فٹنس اور صحت کے ساتھ ساتھ حفظان صحت بھی ہے۔ یہ تمام موضوعات ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں۔ کئی بار دیکھتا ہوں کہ بچوں کی زندگی اتنی پر سکون ہوگئی ہے کہ سارا دن بغیر کسی جسمانی مشقت کے گزر جاتا ہے۔ یا تو موبائل پر ڈیجیٹل طور پر بیٹھے یا ٹی وی کے سامنے بیٹھے۔ کبھی کبھی جب میں اسکول جاتا تھا تو بچوں سے پوچھتا تھا کہ کتنے بچے ہیں جو دن میں چار بار پسینہ بہاتے ہیں؟ بہت سے بچے یہ بھی نہیں جانتے کہ پسینہ کیا ہوتا ہے۔ بچوں کو پسینہ نہیں آتا کیونکہ ان کے کھیلنے کا کوئی معمول نہیں ہوتا۔ ایسے میں ان کی ہمہ جہت ترقی کیسے ہوگی؟ آپ سب جانتے ہیں کہ حکومت بچوں کی غذائیت پر کتنی توجہ دے رہی ہے۔ حکومت دوپہر کے کھانے کا انتظام کرتی ہے۔ اگر یہ احساس ہو کہ کسی نہ کسی طرح خوراک کی فراہمی کرنی ہے، کاغذات کے ساتھ سب کچھ ترتیب دینا ہے، تو غذائیت کے حوالے سے چیلنجز آتے رہیں گے۔ میں اسے ایک مختلف انداز میں دیکھتا ہوں۔ بجٹ تو حکومت دیتی ہے لیکن ہم اس ملک کے لوگ ہیں جہاں کھانے کا ایک چھوٹا سا شعبہ بھی کوئی چلاتا ہے اور وہاں جو بھی آتا ہے اسے کھانا ملتا ہے۔ معاشرہ اسے بڑے فخر سے دیکھتا ہے، بڑی عقیدت سے دیکھتا ہے۔ آج لنگر کی بات کرتے ہیں، آج لنگر کو بڑی عقیدت سے دیکھا جاتا ہے۔ آج ہم دیکھتے ہیں کہ ایک بھنڈارا ہے جو لوگوں کو بڑی عقیدت سے کھلاتا ہے۔ کیا ہمیں نہیں لگتا کہ ہمارے اسکول میں بھنڈارا روز چل رہا ہے؟ ان بچوں کو کھانا کھلانے کی خوشی، ان کے دماغ کو پالنے کی خوشی اور ان کے پیٹ میں کچھ کھانے کا خالص احساس، یہ کافی نہیں ہے دوست۔ ہمیں یہ احساس ہونا چاہیے کہ دیکھیں یہ پورا معاشرہ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کتنا کچھ کر رہا ہے کہ آپ بھوکے نہ رہیں، ان بچوں کی زندگیوں کے ساتھ اور میرا ماننا ہے کہ ڈالی گاؤں کے دو بزرگ لوگوں کو بلایا جانا چاہیے کہ آج دوپہر کا مڈ ڈے میل آؤ، سرو کرو۔ ہمارے بچے اور آپ بھی اکٹھے کھانا کھا سکتے ہیں۔ دیکھو سارا ماحول بدل جائے گا، یہ مڈ ڈے میل ایک بڑی رسم کی وجہ بن جائے گا۔ اور اس کے ساتھ بچوں کو کھانا کیسے کھلانا ہے، صاف ستھرا کیسے کھانا ہے، کوئی کھانا خراب نہیں کرنا، کوئی چیز نہیں پھینکنا، تمام رسومات اس کے ساتھ جڑی ہوں گی۔ اساتذہ کی حیثیت سے، جب ہم خود ایک مثال قائم کرتے ہیں، تو نتیجہ شاندار ہوتا ہے۔ مجھے یاد ہے، جب میں وزیراعلیٰ تھا، میں یہاں گجرات کے ایک قبائلی اکثریتی ضلع میں ایک اسکول گیا تھا۔ جب میں وہاں گیا تو دیکھا کہ بچے بہت صاف ستھرے تھے اور ہر ایک نے ایک ایک پن سے رومال لٹکا ہوا تھا۔ تو اور ان بچوں کو سکھایا جاتا تھا کہ انہیں اپنے ہاتھ، ناک صاف کرنا ہے اور وہ ایسا کرتے تھے اور جب اسکول ختم ہوتا تو ٹیچر انہیں باہر لے جاتے، نہا دھو کر گھر لے جاتے اور اگلے دن واپس لے آتے۔ وہ اسے لگاتی تھی۔ اور جب مجھے اطلاع ملی تو مجھے معلوم ہوا کہ یہاں گجرات میں یہ خاص بات ہے کہ وہ پرانے کپڑے بیچتے ہیں اور برتن خریدتے ہیں۔ وہ عورت غریب تھی لیکن اس نے اپنی ساڑھی نہیں بیچی۔ وہ ساڑی کو کاٹ کر رومال بنا کر بچوں کو لگاتی تھی۔ اب دیکھیں ایک ٹیچر اپنی پرانی ساڑی کے ٹکڑوں سے ان بچوں کو کتنی رسومات دے رہی تھی جو اس کے فرض کا حصہ نہیں تھی۔ اسے حفظان صحت کا احساس تھا۔میں اس قبائلی علاقے کی ماں کی بات کر رہا ہوں۔

بھائیو- بہنو!

حفظان صحت کا احساس اور میں دوسرے اسکول کے بارے میں بتاؤں گا۔ میں ایک اسکول میں گیا تو اسکول ایک جھونپڑی جیسا تھا، یہ کوئی بڑا اسکول نہیں تھا، قبائلی علاقہ تھا، اس لیے وہاں صرف ایک لیڈ تھا، ایک آئینہ تھا، 2/2 کا آئینہ ہوگا۔ اس ٹیچر نے ایک اصول بنایا تھا کہ جو بھی اسکول آئے وہ پہلے آئینے کے سامنے 5 سیکنڈ کھڑے ہو کر خود کو دیکھے اور پھر کلاس میں جائے۔ اس ایک تجربے سے جو بھی بچہ آتا اور فوراً اس کے سامنے اپنے بال ٹھیک کرتا، اس کی عزت نفس جاگ جاتی۔ اسے لگا کہ مجھے ایسے ہی رہنا چاہیے۔ تبدیلی لانے کا کام اساتذہ کا کیا شاندار طریقہ ہے۔ ایسی سینکڑوں مثالیں ہمارے سامنے ہیں۔

ساتھیو،

آپ تصور کر سکتے ہیں کہ آپ کی ایک چھوٹی سی کوشش کتنا بڑا فرق لا سکتی ہے۔ میں آپ کو بہت سی مثالیں دے سکتا ہوں، جو میں نے خود آپ اساتذہ کے درمیان رہتے ہوئے دیکھی، جانی اور سیکھی۔ لیکن وقت کی کمی ہے اس لیے میں اپنی بات کی وضاحت نہیں کروں گا۔ میں اپنی تقریر روکتا ہوں۔ مجھے یقین ہے، ہماری روایت نے گرو کو جو مقام دیا ہے، آپ سب اس وقار، اس فخر، اس عظیم روایت کو لیکر آگے بڑھائیں گے اور نئے ہندوستان کے خواب کو پورا کریں گے۔ اس یقین کے ساتھ، میں آپ سب کا بہت بہت شکریہ ادا کرتا ہوں اور آپ کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

نمسکار!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
As you turn 18, vote for 18th Lok Sabha: PM Modi's appeal to first-time voters

Media Coverage

As you turn 18, vote for 18th Lok Sabha: PM Modi's appeal to first-time voters
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Kerala, Tamil Nadu and Maharashtra on 27-28 February
February 26, 2024
PM to visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC), Thiruvananthapuram, and inaugurate three important space infrastructure projects worth about Rs 1800 crore
Projects include ‘PSLV Integration Facility’ at Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC
PM to also review progress of Ganganyaan
PM to inaugurate, dedicate to nation and lay the foundation stone of multiple infrastructure projects worth more than Rs 17,300 crore in Tamil Nadu
In a step to establish a transshipment hub for the east coast of the country, PM to lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port
PM to launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel
PM to address thousands of MSME entrepreneurs working in Automotive sector in Madurai
PM to inaugurate and dedicate to nation multiple infrastructure projects related to rail, road and irrigation worth more than Rs 4900 crore in Maharashtra
PM to release 16th instalment amount of about Rs 21,000 crore under PM-KISAN; and 2nd and 3rd instalments of about Rs 3800 crore under ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’
PM to disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women SHGs across Maharashtra
PM to initiate the distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra
PM to launch the Modi Awaas Gharkul Yojana

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Kerala, Tamil Nadu and Maharashtra on 27-28 February, 2024.

On 27th February, at around 10:45 AM, Prime Minister will visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC) at Thiruvananthapuram, Kerala. At around 5:15 PM, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’ in Madurai, Tamil Nadu.

On 28th February, at around 9:45 AM, Prime Minister will inaugurate, and lay the foundation stone of multiple development projects worth about Rs 17,300 crore at Thoothukudi, Tamil Nadu. At around 4:30 PM, Prime Minister will participate in a public programme in Yavatmal, Maharashtra, and inaugurate and dedicate to nation multiple development projects worth more than Rs 4900 crore at Yavatmal, Maharashtra. He will also release benefits under PM KISAN and other schemes during the programme.

PM in Kerala

Prime Minister’s vision to reform the country’s space sector to realise its full potential, and his commitment to enhance technical and R&D capability in the sector will get a boost as three important space infrastructure projects will be inaugurated during his visit to Vikram Sarabhai Space Centre, Thiruvananthapuram. The projects include the PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC, Thiruvananthapuram. These three projects providing world-class technical facilities for the space sector have been developed at a cumulative cost of about Rs. 1800 crore.

The PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota will help in boosting the frequency of PSLV launches from 6 to 15 per year. This state-of-the-art facility can also cater to the launches of SSLV and other small launch vehicles designed by private space companies.

The new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at IPRC Mahendragiri will enable development of semi cryogenic engines and stages which will increase the payload capability of the present launch vehicles. The facility is equipped with liquid Oxygen and kerosene supply systems to test engines up to 200 tons of thrust.

Wind tunnels are essential for aerodynamic testing for characterisation of rockets and aircraft during flight in the atmospheric regime. The “Trisonic Wind Tunnel” at VSSC being inaugurated is a complex technological system which will serve our future technology development needs.

During his visit, Prime Minister will also review the progress of Gaganyaan Mission and bestow ‘astronaut wings’ to the astronaut-designates. The Gaganyaan Mission is India’s first human space flight program for which extensive preparations are underway at various ISRO centres.

PM in Tamil Nadu

In Madurai, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’, and address thousands of Micro, Small and Medium enterprises (MSMEs) entrepreneurs working in the automotive sector. Prime Minister will also launch two major initiatives designed to support and uplift MSMEs in the Indian automotive industry. The initiatives include the TVS Open Mobility Platform and the TVS Mobility-CII Centre of Excellence. These initiatives will be a step towards realising the Prime Minister’s vision of supporting the growth of MSMEs in the country and helping them to formalise operations, integrate with global value chains and become self-reliant.

In the public programme at Thoothukudi, Prime Minister will lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port. This Container Terminal is a step towards transforming V.O.Chidambaranar Port into a transshipment hub for the east coast. The project aims to leverage India's long coastline and favourable geographic location, and strengthen India's competitiveness in the global trade arena. The major infrastructure project will also lead to creation of employment generation and economic growth in the region.

Prime Minister will inaugurate various other projects aimed at making the V.O.Chidambaranar Port as the first Green Hydrogen Hub Port of the country. These projects include desalination plant, hydrogen production and bunkering facility etc.

Prime Minister will also launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel under Harit Nauka initiative. The vessel is manufactured by Cochin Shipyard and underscores a pioneering step for embracing clean energy solutions and aligning with the nation's net-zero commitments. Also, Prime Minister will also dedicate tourist facilities in 75 lighthouses across ten States/UTs during the programme.

During the programme, Prime Minister will dedicate to nation rail projects for doubling of Vanchi Maniyachchi - Nagercoil rail line including the Vanchi Maniyachchi - Tirunelveli section and Melappalayam - Aralvaymoli section. Developed at the cost of about Rs 1,477 crore, the doubling project will help in reducing travel time for the trains heading towards Chennai from Kanyakumari, Nagercoil & Tirunelveli.

Prime Minister will also dedicate four road projects in Tamil Nadu, developed at a total cost of about Rs 4,586 Crore. These projects include the four-laning of the Jittandahalli-Dharmapuri section of NH-844, two-laning with paved shoulders of the Meensurutti-Chidambaram section of NH-81, four-laning of the Oddanchatram-Madathukulam section of NH-83, and two-laning with paved shoulders of the Nagapattinam-Thanjavur section of NH-83. These projects aim to improve connectivity, reduce travel time, enhance socio-economic growth and facilitate pilgrimage visits in the region.

PM in Maharashtra

In a step that will showcase yet another example of commitment of the Prime Minister towards welfare of farmers, the 16th instalment amount of more than Rs 21,000 crores under the Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi (PM-KISAN), will be released at the public programme in Yavatmal, through direct benefits transfer to beneficiaries. With this release, an amount of more than 3 lakh crore, has been transferred to more than 11 crore farmers’ families.

Prime Minister will also disburse 2nd and 3rd instalments of ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’, worth about Rs 3800 crore and benefiting about 88 lakh beneficiary farmers across Maharashtra. The scheme provides an additional amount of Rs 6000 per year to the beneficiaries of Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi Yojana in Maharashtra.

Prime Minister will disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women Self Help Groups (SHGs) across Maharashtra. This amount is additional to the Revolving fund provided by the Government of India under National rural livelihood Mission (NRLM). Revolving Fund (RF) is given to SHGs to promote lending of money within SHGs by rotational basis and increase annual income of poor households by promoting women led micro enterprises at village level.

Prime Minister will initiate distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra. This is yet another step to reach out to beneficiaries of welfare schemes so as to realise the Prime Minister’s vision of 100 percent saturation of all government schemes.

Prime Minister will launch the Modi Awaas Gharkul Yojana for OBC category beneficiaries in Maharashtra. The scheme envisages the construction of a total 10 lakh houses from FY 2023-24 to FY 2025-26. Prime Minister will transfer the first instalment of Rs 375 Crore to 2.5 lakh beneficiaries of the Yojana.

Prime Minister will dedicate to nation multiple irrigation projects benefiting Marathwada and Vidarbha region of Maharashtra. These projects are developed at a cumulative cost of more than Rs 2750 crore under Pradhan Mantri Krishi Sinchai Yojna (PMKSY) and Baliraja Jal Sanjeevani Yojana (BJSY).

Prime Minister will also inaugurate multiple rail projects worth more than Rs. 1300 crore in Maharashtra. The projects include Wardha-Kalamb broad gauge line (part of Wardha-Yavatmal-Nanded new broad gauge line project) and New Ashti - Amalner broad gauge line (part of Ahmednagar-Beed-Parli new broad gauge line project). The new broad gauge lines will improve connectivity of the Vidarbha and Marathwada regions and boost socio-economic development. Prime Minister will also virtually flag off two train service during the programme. This includes train services connecting Kalamb and Wardha; and train service connecting Amalner and New Ashti. This new train service will help improve rail connectivity and benefit students, traders and daily commuters of the region.

Prime Minister will dedicate to nation several projects for strengthening the road sector in Maharashtra. The projects include four laning of the Warora-Wani section of NH-930; road upgradation projects for important roads connecting Sakoli-Bhandara and Salaikhurd-Tirora. These projects will improve connectivity, reduce travel time and boost socio-economic development in the region. Prime Minister will also inaugurate the statue of Pandit Deendayal Upadhyay in Yavatmal city.