Share
 
Comments

Honourable Speaker of Parliament, Mr. Chamal Rajapaksa ji,

Honourable Prime Minister of Sri Lanka, Shrimaan Ranil Wickremesinghe ji,

Honourable Leader of the Opposition, Mr. Nimal Siripala De Silva,

Honourable Members of Parliament,

Distinguished Guests,

30 PM Modi to Address Sri Lankan Parliament (4)

I am truly delighted to visit Sri Lanka - a land of beauty, culture and friendship.

I am deeply honoured to be in this Parliament. I am conscious of its rich history.

This Parliament represents one of Asia`s oldest democracies; and, one of its most vibrant.

Long before many others in the world, Sri Lanka gave every individual a vote and voice.

To the people of Sri Lanka, ayubuvan, Vanakkam.

I bring the greetings of 1.25 billion friends; and millions of fans of Sri Lankan cricket.

I bring the blessings from the land of Bodh Gaya to the land of Anuradhapura.

I stand here in respect for our shared heritage; and, in commitment to our shared future.

Last May, when I took the oath of office, I was honoured by the presence of South Asian leaders at the ceremony.

Their presence was a celebration of democracy`s march in our region. It was also recognition of our common destiny.

I am convinced that the future of any country is influenced by the state of its neighbourhood.

The future that I dream for India is also the future that I wish for our neighbours.

We in this region are on the same journey: to transform the lives of our people.

30 PM Modi to Address Sri Lankan Parliament (3)

Our path will be easier, the journey quicker and destination nearer when we walk step in step.

As I stand here in Colombo and look north towards the Himalaya, I marvel at our region`s uniqueness – of our rich diversity and our common civilisational links.

We have been formed from the same elements; and, from our interconnected histories.

Today, we stand together as proud independent nations – sovereign and equal.

India and Sri Lanka do not have a land boundary, but we are the closest neighbours in every sense.

No matter where you look in India or Sri Lanka, the many strands of our links - religion, language, culture, food, customs, traditions and epics - come together into a deep and strong bond of familiarity and friendship.

Ours is a relationship that is beautifully defined by the journey of Mahindra and Sanghamitra. They carried the message of peace, tolerance and friendship more than two millenniums ago.

It is evoked by Kannagi, the central character of the great Tamil epic Silapathikaram, who is worshipped as goddess the Pattini in Sri Lanka.

It lives in the Ramayan trail in Sri Lanka.

It expresses itself in devotion at the dargah of the Nagore Andavar and the Christian shrine of Velankanni.

It is reflected in the friendship of Swami Vivekananda and Anagarika Dharmapala, the founder of the Maha Bodhi Society in Sri Lanka and India.

It lives in the work of Mahatma Gandhi`s followers in India and Sri Lanka.

Above all, our relationship thrives through the inter-woven lives of ordinary Indians and Sri Lankans.

Our independent life began at about the same time.

Sri Lanka has made remarkable progress since then.

The nation is an inspiration for our region in human development. Sri Lanka is home to enterprise and skill; and extraordinary intellectual heritage.

There are businesses of global class here.

Sri Lanka is a leader in advancing cooperation in South Asia.

And, it is important for the future of the Indian Ocean Region.

Sri Lanka`s progress and prosperity is also a source of strength for India.

So, Sri Lanka`s success is of great significance to India.

And, as a friend, our good wishes, and our support and solidarity have always been with Sri Lanka.

And, it will always be there for you.

For all of us in our region, our success depends on how we define ourselves as a nation.

All of us in this region, indeed every nation of diversity, have dealt with the issues of identities and inclusion, of rights and claims, of dignity and opportunity for different sections of our societies.

We have all seen its diverse expressions. We have faced tragic violence. We have encountered brutal terrorism. We have also seen successful examples of peaceful settlements.

Each of us has sought to address these complex issues in our own ways.

However we choose to reconcile them, to me something is obvious:

Diversity can be a source of strength for nations.

When we accommodate the aspirations of all sections of our society, the nation gets the strength of every individual.

And, when we empower states, districts and villages, we make our country stronger and stronger.

You can call this my bias. I have been a Chief Minister for 13 years; a Prime Minister for less than a year!

Today, my top priority is to make the states in India stronger. I am a firm believer in cooperative federalism.

So, we are devolving more power and more resources to the states. And, we are making them formal partners in national decision making processes.

Sri Lanka has lived through decades of tragic violence and conflict. You have successfully defeated terrorism and brought the conflict to an end.

You now stand at a moment of historic opportunity to win the hearts and heal the wounds across all sections of society.

Recent elections in Sri Lanka have reflected the collective voice of the nation – the hope for change, reconciliation and unity.

The steps that you have taken in recent times are bold and admirable. They represent a new beginning.

I am confident of a future of Sri Lanka, defined by unity and integrity; peace and harmony; and, opportunity and dignity for everyone.

I believe in Sri Lanka`s ability to achieve it.

It is rooted in our common civilisational heritage.

The path ahead is a choice that Sri Lanka has to make. And, it is a collective responsibility of all sections of the society; and, of all political streams in the country.

But, I can assure you of this:

For India, the unity and integrity of Sri Lanka are paramount.

It is rooted in our interest. It stems from our own fundamental beliefs in this principle.

Hon`ble Speaker and Distinguished Members,

My vision of an ideal neighbourhood is one in which trade, investments, technology, ideas and people flow easily across borders; when partnerships in the region are formed with the ease of routine.

In India, the growth momentum has been restored. India has become the fastest growing major economy in the world.

The world sees India as the new frontier of economic opportunity.

But, our neighbours should have the first claim on India. And I again repeat, the first claim on India is of our neighbours – of Sri Lanka.

I will be happy if India serves a catalyst in the progress of our neighbours.

In our region, Sri Lanka has the potential to be our strongest economic partner.

We will work with you to boost trade and make it more balanced.

India`s trade environment is becoming more open. Sri Lanka should not fall behind others in this competitive world.

That is why we should conclude an ambitious Comprehensive Economic Partnership Agreement.

30 PM Modi to Address Sri Lankan Parliament (10)

India can also be a natural source of investments – for exports to India and elsewhere; and to build your infrastructure. We have made good progress today. Let us get together to harness the vast potential of the Ocean Economy.

Our two nations must also take the lead in increasing cooperation in the South Asian Region and the linked BIMSTEC Region.

Connecting this vast region by land and sea, our two countries can become engines of regional prosperity.

I also assure you of India`s full commitment to development partnership with Sri Lanka. We see this as a responsibility of a friend and neighbour.

India has committed 1.6 billion U.S. dollars in development assistance. Today, we have committed further assistance of up to 318 million dollars to the railway sector.

We will continue our development partnership. We will be guided by your Government. And, we will do so with the same level of transparency that we expect in our own country.

Last month we signed the agreement on cooperation in peaceful uses of nuclear energy.

More than anywhere else in the region, I see enormous potential to expand cooperation with Sri Lanka in areas like agriculture, education, health, science and technology, and space. Indeed, we are limited only by our imagination.

We hope that Sri Lanka will take full benefit of India`s satellite for the SAARC Region. This should be in Space by December 2016.

People are at the heart of our relationship. When we connect people, bonds between nations become stronger. That is why we have decided to extend the visa-on-arrival facility to Sri Lankan citizens.

We will also increase connectivity between our countries. We will strengthen ties of culture and religion. Last month we announced reduction in fees for Sri Lankan nationals visiting National Museum in Delhi to see the Kapilavastu Relics. We will bring our shared Buddhist heritage closer to you through an exhibition. Together, we will develop our Buddhist and Ramayana Trails. My birth place Varnagarh was an international centre of Buddhist learning in ancient times. Excavations have revealed a hostel for 2000 students and in plans to redevelop the centre.

Mr Speaker,

A future of prosperity requires a strong foundation of security for our countries and peace and stability in the region.

The security of our two countries is indivisible. Equally, our shared responsibility for our maritime neighbourhood is clear.

India and Sri Lanka are too close to look away from each other. Nor can we be insulated from one another.

Our recent histories have shown that we suffer together; and we are more effective when we work with each other.

Our cooperation helped deal with the devastation of Tsunami in 2004. As a Chief Minister, I was pleased to share our experience in reconstruction after the Bhuj earthquake in 2001.

Our cooperation is also integral to our success in combating terrorism and extremism.

For both of us, local threats remain. But, we see threats arising in new forms and from new sources. We are witnessing globalisation of terrorism. The need for our cooperation has never been stronger than today.

The Indian Ocean is critical to the security and prosperity of our two countries. And, we can be more successful in achieving these goals if we work together; build a climate of trust and confidence; and we remain sensitive to each other`s interest.

We deeply value our security cooperation with Sri Lanka. We should expand the maritime security cooperation between India, Sri Lanka and Maldives to include others in the Indian Ocean area.

I often say that the course of the 21st century would be determined by the currents of the Indian Ocean. Shaping its direction is a responsibility for the countries in the region.

We are two countries at the crossroads of the Indian Ocean. Your leadership and our partnership will be vital for building a peaceful, secure, stable and prosperous maritime neighbourhood.

30 PM Modi to Address Sri Lankan Parliament (8)

In our deeply interconnected lives, it is natural to have differences. Sometimes, it touches the lives of ordinary people. We have the openness in our dialogue, the strength of our human values and, the goodwill in our relationship to resolve them.

Mr.Speaker,

Sri Lanka and India are at a moment of a great opportunity and responsibility – for realising the dreams of our people.

This is also a time for renewal in our relationship; for a new beginning and new vigour in our partnership.

We have to ensure that our proximity always translates into closeness.

We were honoured that President Sirisena chose India as his first destination last month. I am honoured to be his first guest here.

This is how it should be between neighbours.

Tomorrow I will go to Talaimannar to flag off the train to Madhu Road. This is part of the old India –Lanka rail link.

I recall the lines of a famous song ‘Sindu Nadiyin Misai’ composed by the great nationalist poet Subramanian Bharati in the early 20th century:

‘Singalatheevukkinor paalam ameippom’(we shall construct a bridge to Sri Lanka)

I have come with the hope of building this bridge – a bridge that rests on strong pillars of our shared inheritance; of shared values and vision; of mutual support and solidarity; of friendly exchanges and productive cooperation; and, above all, belief in each other and our shared destiny. Thank you once again for the honour to be with you.

Thank you very much.

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Mann KI Baat Quiz
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
World's tallest bridge in Manipur by Indian Railways – All things to know

Media Coverage

World's tallest bridge in Manipur by Indian Railways – All things to know
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سپریم کورٹ کے زیر اہتمام یوم آئین کی تقریبات میں وزیر اعظم کے خطاب کا متن
November 26, 2021
Share
 
Comments
"ہم سب کے مختلف کردار، مختلف ذمہ داریاں، کام کرنے کے مختلف طریقے ہو سکتے ہیں، لیکن ہمارا یقین، تحریک اور توانائی کا منبع ایک ہی ہے – ہمارا آئین"
"سب کا ساتھ – سب کا وکاس ، سب کا وشواس – سب کا پریاس، آئین کی روح کا سب سے طاقتور مظہر ہے۔ حکومت آئین کےتئیں وقف ہے، ترقی میں کوئی امتیاز نہیں کرتی ہے"
"ہندوستان واحد ملک ہے جس نے پیرس معاہدے کے اہداف کو وقت سے پہلے حاصل کیا ہے۔ اور پھر بھی ماحولیات کے نام پرہندوستان پرمختلف قسم کے دباؤ ڈالے جاتے ہیں۔ یہ سب نوآبادیاتی ذہنیت کا نتیجہ ہے
اقتدار کی علیحدگی کی مضبوط بنیاد پر ہمیں اجتماعی ذمہ داری کا راستہ ہموار کرنا ،ایک لائحہ عمل تیار کرنا ، اہداف کا تعین کرنا اور ملک کو اس کی منزل تک لے جانا ہے

نمسکار !

چیف جسٹس این وی رمنا جی، جسٹس یو یو للت جی، وزیر قانون جناب کرن رجیجو جی، جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ جی، اٹارنی جنرل جناب کےکے وینوگوپال جی، سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر جناب وکاس سنگھ جی، اور ملک کے عدالتی نظام سے وابستہ خواتین و حضرات!

آج صبح میں مقننہ اور عاملہ میں اپنے ساتھیوں کے ساتھ تھا۔ اور اب میں عدلیہ سے وابستہ آپ تمام دانشوروں  کے درمیان ہوں۔ ہم سب کے مختلف کردار، مختلف ذمہ داریاں، اور کام کرنے کے مختلف طریقے بھی  ہو سکتے ہیں، لیکن ہمارا عقیدہ ، تحریک اور توانائی کا منبع ایک ہی ہے –  ہمارا آئین! مجھے خوشی ہے کہ آج یوم آئین  کے موقع پر اس تقریب کی شکل میں ہمارے اجتماعی جذبے کا اظہار ہو رہا ہے، جس سے ہماری آئینی عزائم کو تقویت مل رہی ہے۔ اس کام سے وابستہ تمام لوگ مبارکباد کے مستحق ہیں۔

معززین،
آزادی کے لیے جینے مرنے والے لوگوں نے جو خواب دیکھے تھے ، ان خوابوں کی روشنی میں  اور ہندوستان کی ہزاروں سال کی عظیم روایت کو پروان چڑھاتے ہوئے ، ہمارے آئین سازوں نے ہمیں آئین دیا۔ سینکڑوں سال کی غلامی نے ہندوستان کو بہت سی مشکلات میں مبتلا کر دیا تھا۔ کسی عہد میں سونے کی چڑیا کہا جانے والا ہندوستان ، غربت، بھوک اور بیماری سے نبرد آزما تھا۔ اس پس منظر میں ملک کو آگے لے جانے میں آئین ہمیشہ ہماری مدد کرتا رہاہے۔ لیکن آج دنیا کے دیگر ممالک کے مقابلے میں جو ممالک تقریباً ہندوستان کے ساتھ ہی آزاد ہوئے، وہ آج ہم سے بہت آگے ہیں۔ یعنی ابھی بہت کچھ کیا جانا باقی ہے، ہمیں مل کر ہدف تک پہنچنا ہے۔ ہم سب جانتے ہیں کہ ہمارے آئین میں شمولیت پر کتنا زور دیا گیا ہے۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت رہی ہے کہ آزادی کی اتنی دہائیوں کے بعد بھی ملک کے عوام کی ایک بڑی تعداد محرومی  کا شکار ہونے پر مجبورہے ۔ وہ کروڑوں لوگ، جن کے گھروں میں بیت الخلاء تک نہیں تھا، کروڑوں لوگ جو بجلی نہ ہونے کی وجہ سے اپنی زندگی اندھیرے میں گزار رہے تھے، وہ کروڑوں لوگ جن کی زندگی میں سب سے بڑی جدوجہد گھر کے لیے پانی حاصل کرنے کے لیے تھی،  ان کی مشکلات، ان کے درد کو سمجھ کر، ان کی زندگی کو آسان بنانے کے لیے اپنے آپ کو نچھاور کر دینا ، میں آئین کا حقیقی احترام سمجھتا ہوں۔ اور اس لیے آج مجھے اطمینان ہے کہ ملک میں آئین کی اس بنیادی روح کے مطابق اخراج کو شمولیت میں تبدیل کرنے کی بھاگیرتھ مہم تیز رفتاری سے جاری ہے۔ اور اس کا جو سب سے بڑا فائدہ ہوا ہے،اسے بھی  ہمیں سمجھنا ہوگا۔جن  2 کروڑ سے زیادہ غریبوں کو آج اپنا پختہ مکان ملا ہے ،جن  8 کروڑ سے زیادہ غریب خاندانوں کو اجولا اسکیم کے تحت مفت گیس کنکشن ملا ہے،جن 50 کروڑ سے زیادہ غریبوں کو 5 لاکھ روپے تک کا  بڑے سے بڑے اسپتال میں مفت علاج کو یقینی بنایا گیا ہے۔ یقینی بنایا گیا، جن کروڑوں غریبوں کو پہلی باربیمہ اور پنشن جیسی بنیادی سہولتیں ملی ہیں، ان غریبوں کی زندگی کی بہت سی پریشانیاں کم ہوئی ہیں، یہ اسکیمیں ان کے لیے بڑا سہارا بن گئی ہیں۔ اسی کورونا  کے دوران، پچھلے کئی مہینوں سے 80 کروڑ سے زیادہ لوگوں کو مفت اناج کی فراہمی کو یقینی بنایا جا رہا ہے۔ حکومت پردھان منتری غریب کلیان اَن یوجنا پر 2 لاکھ 60 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کرکے غریبوں کو مفت اناج دے رہی ہے۔ ابھی کل ہی ہم نے اس اسکیم کو اگلے سال مارچ تک بڑھا دیا ہے۔ ہمارے جو رہنما اصول ہیں – "شہریوں، مردوں اور عورتوں کو یکساں طور پر، مناسب ذریعہ معاش کا حق حاصل ہے"وہ اسی جذبے کے عکاس ہیں۔ آپ سب یقین کریں گے کہ جب ملک کا عام آدمی، ملک کا غریب، ترقی کے مرکزی دھارے میں شامل ہوتا ہے، جب اسے برابری اور یکساں مواقع ملتے ہیں، تو اس کی دنیا یکسر بدل جاتی ہے۔ جب ریہڑی ، ٹھیلے ، پٹری والا شخص بھی بینک کریڈٹ کے نظام میں شامل ہوتا ہے، تب اسے قوم کی تعمیر میں حصہ لینے کا احساس ہوتا ہے۔ جب عوامی مقامات، پبلک ٹرانسپورٹ اور دیگر سہولیات معذور افراد کو ذہن میں رکھ کر بنائی جاتی ہیں، جب انہیں آزادی کے 70 سال بعد پہلی بار عام اشاروں کی زبان ملتی ہے، تو ان میں خود اعتمادی کا احساس جاگتا ہے۔ جب خواجہ سراؤں کو قانونی تحفظ ملتا ہے، خواجہ سراؤں کو پدم ایوارڈ ملتا ہے، تو سماج اور  آئین کے تئیں ان کا بھی اعتماد مضبوط ہوتا ہے۔ جب تین طلاق جیسی برائی کے خلاف سخت قانون بنتا ہے تو آئین کے تئیں ان بہنوں اور بیٹیوں کا اعتماد مزید  مضبوط ہوتا ہے جو ہر طرح سے ناامیدہوچکی ہوتی  تھیں۔

معززین،
سب کا ساتھ-سب کا وکاس، سب کا وشواس-سب کا پریاس، یہ آئین کی روح کا سب سے طاقتور مظہر ہے۔ آئین کے لیے وقف حکومت ، ترقی میں کوئی امتیاز نہیں کرتی اور ہم نے یہ کر کے دکھایا ہے۔ آج غریب ترین غریبوں کو معیاری انفراسٹرکچر تک وہی رسائی مل رہی ہے جو کبھی وسائل رکھنے والے لوگوں تک محدود تھی۔ آج لداخ، انڈمان اور نکوبار، شمال مشرق کی ترقی پربھی ملک  اتنی ہی توجہ مرکوز کیے ہوا ہے جتنا کہ دہلی اور ممبئی جیسے میٹرو شہروں پرہے۔ لیکن اس سب کے درمیان میں آپ کی توجہ ایک اور بات کی طرف مبذول کرانا چاہوں گا۔ آپ نے یہ بھی تجربہ کیا ہوگا کہ جب حکومت کسی ایک طبقہ کے لیے، کسی ایک چھوٹے سے ٹکڑے کے لیے کچھ کرتی ہے تو بڑی اعتدال پسند کہلاتی ہے، اس کی بہت ستائش کی جاتی ہے کہ  دیکھیں کہ ان کے لیے کچھ کیا لیکن میں حیران ہوں ،کبھی کبھی ہم دیکھتے ہیں کوئی حکومت ایک ریاست کے لیے کچھ کرے ، جس سے ریاست کا بھلا ہو تو بہت ستائش ہوتی ہے۔ تاہم جب حکومت سب کے لیے کرتی ہے ، ہر شہری کے لیے کرتی ہے، ہر ریاست کے لیے کرتی ہے، تو اسے اتنی اہمیت نہیں دی جاتی، اس کا ذکر تک نہیں ہوتا۔ حکومت کی اسکیموں سے ہر طبقہ، ہر ریاست کو یکساں طور پر کس طرح فائدہ پہنچایا جا رہا ہے اس پر زیادہ توجہ نہیں دی جاتی ہے۔ پچھلے سات سالوں میں ہم نے ترقی کو بلا امتیاز، تعصب کے بغیر، ہر فرد، ہر طبقے اور ملک کے ہر کونے تک پہنچانے کی کوشش کی ہے۔ اس سال 15 اگست کو، میں نے غریبوں کی فلاح و بہبود سے متعلق اسکیموں کے بارے میں بات کی اور اس کے لیے ہم مشن موڈ پر کام بھی کر رہے ہیں۔ سروجن ہتائے، سروجن سکھائے، اس منتر کے ساتھ کام کرنے کی ہماری کوشش ہے۔آج اس سے ملک کی تصویر کس طرح بدلی ہے یہ ہمیں حالیہ قومی فیملی صحت سروے رپورٹ میں بھی نظر آتے ہیں۔  اس رپورٹ کے بہت سے حقائق اس نکتے کو ثابت کرتے ہیں کہ جب نیک نیتی کے ساتھ کام کیا جائے، درست سمت میں پیشرفت کی جائے اور پوری قوت کو یکجا کر کے مقصد کے حصول کی کوشش کی جائے تو یقینی طور پر خوش آئند نتائج برآمد ہوتے ہیں۔ صنفی مساوات کی بات کریں تو اب مردوں کے مقابلے میں بیٹیوں کی تعداد بڑھ رہی ہے۔ حاملہ خواتین کے لیے ہسپتال میں زچگی کے مزید مواقع دستیاب ہو رہے ہیں۔ جس کی وجہ سے زچگی کی شرح اموات اور نوزائیدہ بچوں کی شرح اموات میں کمی آرہی ہے۔ بہت سے دوسرے اشارے ایسے ہیں جن پر ہم بحیثیت ملک بہت اچھا کام کر رہے ہیں۔ ان تمام اشاریوں میں ہر فیصد پوائنٹ میں اضافہ صرف ایک اعداد و شمار نہیں ہے۔ یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ کروڑوں ہندوستانیوں کو حقوق حاصل ہو  رہے ہیں۔ یہ بہت ضروری ہے کہ عوام کو فلاح عامہ سے متعلق اسکیموں کا بھرپور فائدہ ملے، انفراسٹرکچر سے متعلق منصوبوں کو وقت پر مکمل کیا جائے۔ کسی بھی وجہ سے غیر ضروری تاخیر شہری کو اس کے حق سے محروم رکھتی ہے۔ میں گجرات سے ہوں اس لیے سردار سروور ڈیم کی مثال دینا چاہتا ہوں۔ سردار پٹیل نے ماں نرمدا پر اس طرح کے ڈیم کا خواب دیکھا تھا۔ پنڈت نہرو نے اس کا سنگ بنیاد رکھا تھا۔ لیکن یہ منصوبہ کئی دہائیوں سے زیر التواء رہا۔ ماحولیات کے نام پر تحریک میں پھنسا رہا ۔ اس پر فیصلہ لینے سے عدالت ہچکچا تی رہی ۔عالمی بینک نے بھی اس کے لیے رقم دینے سے انکار کر دیا تھا۔ لیکن اسی نرمدا کے پانی کی وجہ سے کچھ میں ترقی کا کام ہوا، آج کچھ ضلع ہندوستان کے تیزی سے ترقی کرنے والے اضلاع میں سے ایک ہے۔ کچھ تو ایک طرح سے ریگستان جیسا علاقہ ہے،لیکن تیزی سے ترقی کرنے والے خطے میں اس کی جگہ بن گئی۔ کسی زمانے میں صحرا کے طور پر جانا جانے والا کچھ، اپنی نقل مکانی کے لیے جانا جاتا تھا، آج زرعی برآمدات کی وجہ سے اپنی پہچان بنا رہا ہے۔ اس سے بڑا گرین ایوارڈ اور کیا ہو سکتا ہے۔

معززین،
ہندوستان کے لیے اور دنیا کےمتعدد ممالک کے لیے، ہماری کئی نسلوں کے لیے،نوآبادیات کی بیڑیوں میں جکڑے ہوئے  زندگی گزارنا ایک مجبوری تھی۔ ہندوستان کی آزادی کے بعد سے پوری دنیا میں نوآبادیاتی دور کا آغاز ہوا، کئی ممالک آزاد ہوئے۔ آج پوری دنیا میں کوئی ملک ایسا نہیں جو بظاہر کسی دوسرے ملک کی نوآبادی کے طور پر موجود ہو۔ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ نوآبادیاتی ذہنیت ختم ہو چکی ہے۔ ہم دیکھ رہے ہیں کہ یہ ذہنیت بہت سی بگاڑ کو جنم دے رہی ہے۔ اس کی سب سے واضح مثال ترقی پذیر ممالک کی ترقی کے سفر میں ہمیں درپیش رکاوٹوں میں نظر آتی ہے۔جن وسائل سے جن راہوں پر چلتے ہوئے  آج ترقی یافتہ دنیا جس مقام پر پہنچی ہے، آج وہی وسائل ، وہی راستے ترقی پذیر ممالک کے لیے بند کرنے کی کوششیں کی جاتی ہیں۔ پچھلی دہائیوں میں اس کے لیے مختلف قسم کی اصطلاحات کا ایک جال بنایا گیا ہے۔ لیکن مقصد ایک ہی رہا ہے - ترقی پذیر ممالک کی ترقی کو روکنا۔ آج کل ہم دیکھتے ہیں کہ اسی مقصد کے لیے ماحولیات کے مسئلے کو ہائی جیک کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ ہم نے چند ہفتے قبل کوپ – 26 سربراہی اجلاس میں اس کی زندہ مثال دیکھی۔اگر مطلق مجموعی اخراج کی بات کریں تو ترقی یافتہ ممالک نے مل کر 1850 سےاب تک  ہندوستان سے 15 گنا زیادہ اخراج کیا ہے۔ اگر ہم فی کس کی بنیاد پر بات کریں، پھر بھی ترقی یافتہ ممالک نے ہندوستان سے 15 گنا زیادہ اخراج کیا ہے۔ امریکہ اور یورپی یونین کا مطلق مجموعی اخراج ہندوستان کے مقابلے میں 11 گنا زیادہ ہے۔ اس میں بھی فی کس بنیاد پر امریکہ اور یورپی یونین نے ہندوستان کے مقابلے 20 گنا زیادہ اخراج کیا ہے۔ اس کے باوجود آج ہمیں ہندوستان پر فخر ہے جس کی تہذیب و ثقافت میں ہی فطرت کے ساتھ رہنے کا رجحان ہے جہاں پتھروں میں، درختوں میں اور فطرت کے ہر ذرے میں خدا نظر آتا ہے، جہاں اس کی شکل نظر آتی ہے، جہاں دھرتی کی ایک ماں کے طور پر پوجا کی جاتی ہے، اس ہندوستان کو ماحولیاتی تحفظ کے پیغام سنائے جاتے ہیں۔ اور ہمارے لیے یہ اقدار صرف کتابی نہیں، کتابی چیزیں نہیں ہیں۔ آج ہندوستان میں  شیروں، ببروں، ڈالفنوں وغیرہ کی تعداد، اور حیاتیاتی تنوع کی کئی اقسام کے پیرامیٹر میں مسلسل بہتری آرہی ہے۔ ہندوستان میں جنگلات کا رقبہ بڑھ رہا ہے۔ ہندوستان میں غیر استعمال شدہ زمین بہتر ہو رہی ہے۔ ہم نے رضاکارانہ طور پر گاڑیوں کے ایندھن کے معیار میں اضافہ کیا ہے۔ ہم ہر قسم کی قابل تجدید توانائی میں دنیا کے سرکردہ ممالک میں سے ایک ہیں۔ اور پیرس معاہدے کے اہداف کے حصول کے ابتدائی مراحل میں اگر کوئی ہے تو صرف ہندوستان ہی ہے۔ جی 20 ممالک کے گروپ میں بہتر سے بہتر کام کرنے والا کوئی ملک ہے ، تو دنیا نے تسلیم کیا ہےکہ وہ ہندوستان ہے اور پھر بھی ماحول کے نام پر ایسے ہندوستان پر مختلف قسم کے دباؤ ڈالے جاتے ہیں۔ یہ سب نوآبادیاتی ذہنیت کا نتیجہ ہے۔ لیکن بدقسمتی یہ ہے کہ ہمارے ملک میں بھی ایسی ہی ذہنیت کی وجہ سے اپنے ہی ملک کی ترقی میں رکاوٹیں کھڑی کی جاتی ہیں۔ کبھی آزادی اظہار کے نام پر اور کبھی کسی اور چیز کی مدد سے۔ ہمارے ملک کے حالات، ہمارے نوجوانوں کی خواہشات، خوابوں کو جانے بغیر، کئی بار ہندوستان کو دوسرے ممالک کے معیار پر تولنے کی کوشش کی جاتی ہے اور اس کی آڑ میں ترقی کے راستے بند کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ اس کا نقصان ایسے لوگوں کو بھگتنا نہیں پڑتا جو یہ کرتے ہیں۔ اس کا نقصان اس ماں کو بھگتنا پڑتا ہے جس کا بچہ پاور پلانٹ نہ لگنے کی وجہ سے پڑھنے سے قاصر ہے۔ اس کا نقصان اس باپ کو بھگتنا پڑتا ہے جو زیر التواء سڑک منصوبے سے اپنے بچے کو بروقت اسپتال نہیں لے جا پاتے ہیں۔ اس کا خمیازہ اس متوسط ​​طبقے کے خاندان کو بھگتنا پڑتا ہے جس سے ماحولیات کے نام پر جدید زندگی کی سہولیات اس کی استطاعت سے باہر پہنچا دی  گئی ہیں۔ اسی نوآبادیاتی ذہنیت کی وجہ سے ہندوستان جیسے ملک میں ترقی کے لیے کوشاں ملک میں کروڑوں امیدیں دم توڑ جاتی ہیں، امنگیں دم توڑ دیتی ہیں۔ یہ نوآبادیاتی ذہنیت تحریک آزادی میں پیدا ہونے والی قوت ارادی کو مزید مضبوط کرنے میں بڑی رکاوٹ ہے۔ ہمیں اسے دور کرنا ہی ہوگا۔ اور اس کے لیے، ہماری سب سے بڑی طاقت، ہماری سب سے بڑی تحریک، ہمارا آئین ہے۔

معززین،
حکومت اور عدلیہ دونوں نے آئین کی کوکھ سے جنم لیا ہے ۔ لہذا، دونوں ہی جڑواں ہیں. یہ دونوں آئین کی وجہ سے  ہی وجود میں آئے ہیں۔ اس لیے، وسیع تر نقطہ نظر سے دیکھیں تو مختلف ہونے کے باوجود بھی  دونوں ایک دوسرے کی تکمیل کرتے ہیں۔

ہمارےیہاں شاستروں میں بھی کہا گیا ہے-

ایکیم بلم سماجسیہ، تت ابھاوے سے دُربل

تسمات ایکیم پرشنسنتی ، دیڑھم راشٹر ہیتوشم:

یعنی کسی معاشرے اور ملک کی مضبوطی اس کے اتحاد اور متحدہ کوششوں میں ہوتی  ہے۔ اس لیے جو لوگ ایک مضبوط قوم کے خیر خواہ ہیں، وہ اتحاد کی ستائش کرتے ہیں، اس پر زور دیتے ہیں۔ ملکی مفادات کو مقدم رکھتے ہوئے یہی اتحاد ملک کے ہر ادارے کی کوششوں میں ہونا چاہیے۔ آج جب ملک امرت کال میں اپنے لیے غیر معمولی اہداف کا تعین کر رہا ہے، دہائیوں پرانے مسائل کا حل تلاش کر رہا ہے اور نئے مستقبل کا عزم کر رہا ہے، تو یہ کارنامہ سب کے ساتھ ہی پورا ہو گا۔ یہی وجہ ہے کہ ملک نے آنے والے 25 سالوں میں جب ملک آزادی کی 25ویں صدی کا جشن منائے گا اور اسی لیے 'سب کا پریاس' کی اپیل کی ہے۔ یقیناً اس اپیل میں عدلیہ کا بھی بڑا کردار ہے۔

معززین،

ہماری بحث میں ایک بات بھولے بغیر لگاتار سننے کو ملتی ہے، اسے بار بار دہرایا جاتا ہے یعنی اقتدار کی علیحدگی۔ اقتدار کی علیحدگی کا معاملہ چاہے وہ عدلیہ کا ہو، عاملہ کا یا مقننہ کا، اپنے آپ میں بہت اہم رہا ہے۔ اس کے ساتھ ہی آزادی کے اس امرت کال میں، ہندوستان کی آزادی کے 100 سال مکمل ہونے تک، اس امرت کال میں آئین کی روح کے مطابق اجتماعی عزم کا اظہار کرنے کی ضرورت ہے۔ آج ملک کا عام آدمی اس سے زیادہ کا مستحق ہے جو اس کے پاس ہے۔ جب ہم ملک کی آزادی کا صد سالہ جشن منائیں گے تو اس وقت کا ہندوستان کیسا ہوگا، اس کے لیے ہمیں آج ہی کام کرنا ہے۔ اس لیے ملک کی امنگوں کی تکمیل کے لیے اجتماعی ذمہ داری کے ساتھ چلنا بہت ضروری ہے۔ اقتدار کی علیحدگی کی مضبوط بنیاد پر ہمیں اجتماعی ذمہ داری کا راستہ طے کرنا ہے، لائحہ عمل تیار کرنا ہے ، اہداف کا تعین کرنا ہے اور ملک کو منزل تک پہنچانا ہے۔

معزز،
کورونا کے دور نے انصاف کی فراہمی میں ٹیکنالوجی کے استعمال نے نیا اعتماد پیدا کیا ہے۔ ڈیجیٹل انڈیا کے میگا مشن میں عدلیہ شامل ہے۔ 18 ہزار سے زائد عدالتوں کو کمپیوٹرائزڈ کیا جانا ، 98 فیصد کورٹ کمپلیکس کا وسیع ایریا نیٹ ورک سے منسلک کیا جانا ، جوڈیشل ڈیٹا کی حقیقی وقت میں ترسیل کے لیے نیشنل جوڈیشل ڈیٹا گرڈ کو فعال کیا جانا ، ای کورٹ پلیٹ فارم لاکھوں لوگوں تک پہنچنا، یہ بتاتا ہے کہ آج ٹکنالوجی ہمارے ہمارے نظام انصاف کی اتنی بڑی طاقت بن چکی ہے اور آنے والے وقت میں ہم ایک جدید ترین عدلیہ کو کام کرتے ہوئے دیکھیں گے۔ وقت بدلتا رہتا ہے، دنیا بدلتی رہتی ہے، لیکن یہ تبدیلیاں انسانیت کے ارتقاء کا ذریعہ بنی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ انسانیت نے ان تبدیلیوں کو قبول کیا، اور ساتھ ہی انسانی اقدار کو برقرار رکھا۔ انصاف کا تصور ان انسانی اقدار میں سب سے زیادہ بہتر تصور ہے۔ اور، آئین انصاف کے اس تصور کا سب سے جدید ترین نظام ہے۔ اس نظام کو متحرک اور ترقی پذیر رکھنے کی ذمہ داری ہم سب پر ہے۔ ہم سب ان کرداروں کو پوری لگن کے ساتھ نبھائیں گے، اور آزادی کے سو سال سے پہلے ایک نئے ہندوستان کا خواب پورا ہو  گا۔ ہم مسلسل  ان باتوں سے متاثر ہیں، جن  باتوں پر ہمیں فخر ہے اور وہ منتر ہمارے لیے ہے – سنگچدھوں ، سموددھوں، سم وہ منانسی جتنم۔ ہمارے مقاصد یکساں ہوں ، ہمارے ذہن یکساں ہوں اور ہم مل کر ان مقاصد کو حاصل کریں۔ میں اسی جذبے کے ساتھ آج یوم آئین کے اس مقدس ماحول میں آپ سب کو اور اہل وطن کو نیک خواہشات پیش کرتے ہوئے اپنی تقریر ختم کرتا ہوں۔ ایک بار پھر آپ سب کو بہت بہت مبارک ہو۔

بہت بہت شکریہ!