Share
 
Comments
PM Modi, President Obama meet in New York, discuss bilateral ties
Achieved significant progress in our bilateral cooperation and international partnership since last visit in September: PM
In Silicon Valley I experienced the strength of American innovation and enterprise: PM Modi
Youth, technology and innovation are the driving forces of Indo-US relationship: PM Modi
President and I share uncompromising commitment on climate change, without affecting our ability to meet dev. aspirations of humanity: PM
Our extraordinary bilateral partnership in the energy sector focuses on clean and renewable energy and energy efficiency: PM Modi
Thanked President Obama for US' support for India's permanent membership of a reformed UN Security Council: PM Modi
Look forward to working with the U.S. for India’s early membership of Asian Pacific Economic Community: PM
Our economic partnership is a key driver of our relationship: PM Modi
This meeting & my engagements in the U.S. demonstrate extraordinary depth & diversity of our relationship: PM

President Obama,
Members of the media,

It is a great pleasure to meet President Obama in New York. Thank you for hosting this meeting.

I deeply value your friendship and your vision and commitment for the relationship between our two countries.

We have achieved significant progress in our bilateral cooperation and international partnership.

I was in Silicon Valley over the weekend. I experienced the strength of American innovation and enterprise that provide the foundation of American success.

I also saw the driving force of our relationship - youth, technology and innovation; and, the natural partnerships of Indian and Americans in advancing human progress.

California also reminds us that India and the United States are part of the dynamic Asia Pacific Region.

Amid the problems that the world faces today and the global challenges that we see ahead, our partnership is of great significance for us and our world.

We can apply innovation and technology for achieving Sustainable Development Goals, including combating climate change and conserving Nature.

President and I share an uncompromising commitment on climate change, without affecting our ability to meet the development aspirations of humanity. We have both set ambitious national agendas.

In India, our measures include not just a plan to add 175 GW of renewable energy by 2022, but a development strategy that will enable us to transition to a more sustainable energy mix. This is an exercise we are undertaking in the spirit of our culture and tradition, but also because of our commitment to the future of this planet.

Our extraordinary bilateral partnership in the energy sector focuses on clean and renewable energy and energy efficiency.

I also thank President Obama for his positive response to my call for a global public partnership for developing affordable clean energy sources that will enable faster adoption of clean energy across the world.

We should work together to advance that goal. And, it is equally important to develop mechanisms to ensure that the affordable also become accessible to those who need it the most.

We look forward to comprehensive and concrete outcome in Paris with a positive agenda on combating climate change, which also focuses on access to finance and technology for the developing world, especially the poor countries and small island states.

I thanked President Obama for U.S. support for India's permanent membership of a reformed UN Security Council. I also sought U.S. support to complete the reform process within a fixed time frame.

I expressed our appreciation for continued U.S. support for India's membership of the international export control regimes within our targeted time frame.

Our partnership addresses a broad range of strategic and security concerns.

Our defence cooperation, including defence trade and training, is expanding. As existing terrorism threats grow and new ones emerge, we have resolved to further deepen cooperation on counter terrorism and radicalism. We have just had a successful cyber security dialogue.

We have agreed to further strengthen our consultation and cooperation on helping the Afghan people combat terrorism and build a peaceful, stable and prosperous future of their nation.

I welcomed the progress in giving shape to our Joint Strategic Vision on Asia, Pacific and Indian Ocean Regions as also our joint engagement with regional partners like Japan. This will also strengthen our maritime security cooperation.

To further increase our strategic engagement in the region, I look forward to working with the U.S. for India’s early membership of Asian Pacific Economic Community.

Our economic partnership is a key driver of our relationship. I have had excellent meetings with business leaders in New York and San Jose. I am very pleased with their confidence in India and value their constructive feedback and suggestions.

We will also continue to work towards a stronger bilateral framework of economic cooperation, including the Bilateral Investment Treaty and Totalisation Agreement.

This meeting and my engagements in the U.S. demonstrate the extraordinary depth and diversity of our relationship.

Our meeting today was very productive in advancing some of our immediate priorities as also our broader strategic partnership.

Thank you.

عطیات
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India’s forex reserves at new life-time high of $439.712 billion

Media Coverage

India’s forex reserves at new life-time high of $439.712 billion
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
نیوکلیائی تباہی کی دھمکی سیاسی ناپختگی ہے، نہ کہ بالغ نظری
September 28, 2019
Share
 
Comments

نئی دہلی،28 ستمبر       

جناب  صدر،

میں پاکستان کے وزیر اعظم کے ذریعے دیئے گئے بیان کے  حوالے سے ہندوستان  کے جواب دینے کے اختیار کا استعمال کرنا چاہتی ہوں۔

2۔ اس  اجلاس  کے پوڈیم سے بولا گیا ایک ایک لفظ، یہ سمجھا جاتا ہے کہ  اس  کی تاریخی اہمیت ہے۔ تاہم، آج ہم نے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان سے جو کچھ بھی سنا ہے، وہ دوغلے پن کی تصویر بیان کرتا ہے۔ ہمارے اور ان کے، امیر اور غریب ترقی یافتہ اور ترقی پذیر؛ مسلم اور دیگر کو لیکر جس طرح کی باتیں  کہی گئی وہ اقوام متحدہ کو منقسم کرنے والی کہانی کا حصہ ہیں۔ اختلافات  کو ہوا دینے اور نفرت پھیلانے والی اس تقریر کو ‘‘نفرت انگیز تقریر’’ کہی جاسکتی ہے۔

3۔ جنرل اسمبلی نے اظہارِ رائے کی آزادی کے ایسے غلط استعمال  بلکہ اس کے ساتھ بدسلوکی  شاید ہی کبھی دیکھی ہو۔ ‘‘تباہی’’، ’’خون خرابہ’’، نسلی برتری’’، ‘‘اسلحہ اٹھانا’’ اور ‘‘آخری دم تک لڑنا’’ یہ سبھی ایسے الفاظ ہیں، جو 21ویں صدی کے تصور کو نہیں بلکہ  قرون وسطیٰ کی ذہنیت کی عکاسی کرتا ہے۔

4۔ وزیر اعظم عمران کی نیوکلیائی تباہی کی دھمکی چھچھوڑے پن کی علامت ہے، اس میں کوئی سیاسی بالغ نظری نہیں ہے۔

5۔ وہ ایک ایسے ملک کے وزیر اعظم ہیں جس کا دہشت گردی کی پوری صنعت پر قبضہ ہے، ان کے ذریعہ دہشت گردی کو مناسب قرار دینا بے شرمی اور فسطائی بیان معلوم ہوتا ہے۔

6۔ ایک ایسا شخص، جو کبھی کھیلوں کا جینٹل مین کہے جانے والے کرکٹ کا کھلاڑی رہا ہو، ان کی آج کی تقریر بھونڈے پن کی ساری حدود پار کرتے ہوئے  درّہ آدم خیل کی بندوقوں کی یاد دلانے والا ہے۔

7۔اب پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اقوام متحدہ کے مبصرین کو اس بات کی جانچ کرنے کے لیے مدعو کیا ہے کہ پاکستان میں کوئی دہشت گرد تنظیم نہیں ہے۔ دنیا امید کرتی ہے کہ وہ اپنے وعدے کی تکمیل کریں گے۔

8۔یہاں کچھ سوال ہیں جن کا جواب پاکستان کو دینا چاہئے، اگر وہ مجوزہ تحقیق کا علمبردار ہے۔

  • کیا پاکستان اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ اس کے یہاں اقوام متحدہ کے ذریعہ  قرار دیئے گئے  25 دہشت گرد گروپ اور 130 دہشت گرد وہاں پناہ لئے ہوئے ہیں؟
  • کیا پاکستان یہ تسلیم کرتا ہے کہ وہ دنیا میں ایک ایسی حکومت ہے، جو اقوام متحدہ کے ذریعہ  ممنوعہ تنظیم قرار دیئے جانے والی القاعدہ اور داعش میں شامل ایک شخص کو وظیفہ دے رہا ہے؟
  • کیا پاکستان اس سلسلے میں وضاحت کرے گا کہ نیویارک میں اسے اپنا اہم بینک، دی حبیب بینک اس لیے بند کرنا پڑاکہ دہشت گردی کو دولت مہیا کرانے کے لیے اس پر کروڑوں ڈالر کا جرمانہ لگایا گیا؟
  • کیا پاکستان اس بات سے انکار کرسکتا ہے کہ مالی سرگرمی  سے متعلق ٹاسک فورس نے اسے 27 معیارات میں سے 20 سے زائد کی خلاف ورزی کرنے کے لیے نوٹس جاری کیا؟
  • اور کیا وزیر اعظم عمران خان نیویارک سے اس بات سے انکار کرسکتے ہیں کہ وہ اوسامہ بن لادین کے کھلے طور پر محافظ رہے ہیں؟

جناب صدر

9۔  دہشت گردی اور نفرت پھیلانے والی تقریروں کے بعد، پاکستان خود کو انسانی حقوق کے بڑے حمایتی کی شکل میں پیش کرنے کا بڑا کھیل کھیل رہا ہے۔

10۔ یہ ایک ایسا ملک ہے جہاں اقلیتوں کی تعداد  ہر سال 1947 کے 23 فیصدی سے گھٹ کر اب صرف تین فیصد رہ گئی ہے اور جہاں عیسائی، سکھ، احمدیہ، ہندو، شیعہ، پشتون، سندھی اور بلوچیوں کوتحفظ ناموس رسالت قانون کا سامنا کرنے،  منظم ظلم وستم اور  جبری تبدیلی مذہب کے لیے مجبور کیا جاتا ہے۔

11۔ انسانی حقوق کی وکالت کرنے کا اس کا نیا شوق خطرات سے دوچار پہاڑی بکرے- مارخور کے شکار نے ٹرافی جیتنے کی کوشش جیسا ہے۔

12۔ وزیر اعظم عمران خان اور کرنل نیازی،  قتل عام آج کے جمہوری نظام کا حصہ نہیں ہیں۔ ہم آپ سے اپیل کریں کہ آپ تاریخ کی اپنی کم علمی کو وسیع بنائیں اور 1971 میں اپنے ہی لوگوں کے خلاف پاکستان کے ذریعہ کئے گئے زبردست قتل عام اور اس میں لیفٹیننٹ جنرل اے اے کے نیازی  کے کردار کو نہ بھولیں۔ بنگلہ دیش کی وزیر اعظم کے ذریعہ جنرل اسمبلی میں آج دوپہر اس بات کا ذکر کیا جانا اس کا ایک ٹھوس ثبوت ہے۔

جناب صدر

13۔ جموں وکشمیر میں ترقی نیز ہندوستان کے ساتھ اس کے جوڑنے کے عمل میں رخنہ ڈالنے والے  پرانے اور عارضی ضابطوں کو ختم کیے جانے  سے متعلق پاکستان کی  زہر افشانی اس بات کی علامت ہے کہ جو تصادم میں یقین رکھتے ہیں وہ کبھی امن کو پسند نہیں کرسکتے۔

14۔ ایک طرف جہاں پاکستان بڑے پیمانے پر دہشت گردی کو فروغ  دے رہا ہے وہیں دوسری طرف وہ نفرت انگیز بیان دینے کے معاملے میں نچلی سطح پر آگیا ہے جبکہ ہندوستان جموں وکشمیر کو ترقی کی دھارا سے جوڑنے کی کوشش کر رہا ہے۔

15۔ ہندوستان کے رنگارنگی جمہوری نظام نیز خوشحالی،  تنوع ،  کثرت اور تحمل کی صدیوں پرانی وراثت کے ساتھ، جموں اور کشمیر اور لداخ کوقومی دھارے میں لانے کا عمل جاری ہے۔

16۔ ہندوستان کے لوگ نہیں چاہتے کہ کوئی دوسرا ان کی طرف سے بولے، خاص طور پر ایسے لوگ تو بالکل نہیں جنھوں نے دہشت گردی کی پوری فیکٹری کھول رکھی ہے۔