Share
 
Comments
India's scientific community have been India’s greatest assets, especially during the last few months, while fighting Covid-19: PM
Today, we are seeing a decline in the number of cases per day and the growth rate of cases. India has one of the highest recovery rates of 88%: PM
India is already working on putting a well-established vaccine delivery system in place: PM Modi

نمستے!

میلنڈا اور بل گیٹس، میری کابینہ کے  مرکزی وزیر  ڈاکٹر ہرش وردھن، دنیا بھر سے شرکت کرنے والے مندوبین، سائنس دانوں، اختراع پردازوں، محققین، طلبا، دوستوں اس چھٹی گرانڈ چیلنجز اینول میٹنگ کے لئے  آپ سب سے مل کر  مجھے بہت  خوشی ہوئی ہے۔

یہ میٹنگ بھارت میں فزیکلی منعقد کی جانی تھی لیکن تبدیل شدہ صورتحال میں یہ ورچوولی منعقد کی جارہی ہے۔ یہ ٹکنالوجی کی طاقت ہے کہ  ایک عالمی وبا بھی ہمیں  ایک دوسرے سے علیحدہ نہیں رکھ پا ئی۔ یہ پروگرام  مقررہ   وقت کے مطابق  منعقد کیا گیا ۔ اس سے  گرانڈ چیلنجز برادری کی عہد بندی کا پتہ چلتا ہے۔اس سے حالات کے مواقف ڈھلنے  اور اختراع کے لئے  عہد بندی کا پتہ چلتا ہے۔

دوستو،

مستقبل کی تشکیل ایسے معاشرے کرتے ہیں جو سائنس اور اختراع میں سرمایہ  کاری کرتے ہیں لیکن  یہ کام  قلیل مدتی  انداز میں  انجام نہیں دیا جاسکتا۔سائنس اور اختراع میں  کافی پہلے سے ہی  سرمایہ کاری کرنی پڑتی ہے۔ تاکہ صحیح وقت پر ہمیں اس کے فائدے حاصل ہوسکیں۔ اسی طرح ان اختراعات کی تعاون اور  عوامی شرکت سے  تشکیل کی جانی چاہئے۔ سائنس، بند کمروں میں  کبھی فروغ نہیں پاتی۔ گرانڈ چیلنجز پروگرام اس نکتہ نظر کو بخوبی سمجھتا ہے۔اس پروگرام کا پیمانہ قابل تعریف ہے۔

پندرہ برسوں میں، عالمی سطح پر آپ نے  متعدد ملکوں کو  شامل کیا ہے۔ جن مسائل کو آپ حل کرتے ہیں، ان کی نوعیت متنوع ہے۔ آپ نے  اینٹی  مائکروبیل ریزسٹینس ، ماں اور بچے کی صحت، زراعت، تغذیہ واش۔واٹر، سنیٹیشن اور ہائیجین جیسے مسائل کو حل کرنے کے لئے  عالمی سطح کے باصلاحیت  افراد کو یکجا کیا ہے۔ اور ایسے متعدد   دیگر اقدامات کئے  ہیں جو قابل خیرمقدم ہیں۔

دوستو،

اس عالمی وبا نے ہمیں  ٹیم ورک کی اہمیت کا ایک بار پھر احساس کرایا ہے۔ بلا شبہ امراض کی  جغرافیائی حدود نہیں ہوتیں۔ امراض  عقیدت، نسل، صنف یا رنگ کی بنیاد پر  امتیاز نہیں کرتے۔میں  محض موجودہ  عالمی وبا کی صورتحال کے بارے میں بات نہیں کررہا ہوں۔ بہت سے متعدی اور غیر متعدی امراض  لوگوں،  خصوصی طور پر  باصلاحیت نوجوانوں کومتاثرکررہے ہیں۔

دوستو،

بھارت میں  ایک مضبوط اور باصلاحیت   سائنسی برادری موجود ہے۔ہمارے  سائنسی ادارے بھی بہت اچھے ہیں۔وہ خصوصی طور پر گزشتہ چند ماہ کے دوران  کووڈ۔ 19 سے لڑائی  میں  ہندوستان کا عظیم سرمایہ ثابت ہوئے ہیں۔ کنٹنمنٹ سے لیکر صلاحیت سازی  تک  انہوں نے حیرت انگیز کارنامے انجام دئے ہیں۔

دوستو،

بھارت کے  سائز ، اسکیل  اور تنوع کی وجہ سے عالمی برادری ہمیشہ اس کے بارے میں متجسس رہی  ہے۔ ہمارے ملک  کی آبادی امریکہ کی آبادی  کا تقریباً 4 گنا ہے۔ ہماری کئی ریاستوں کی آبادی  یوروپی ملکوں  کی آبادی کے برابر ہے۔ پھر بھی  عوامی طاقت سے  اور عوام کے ذریعہ  معاملات سے نمٹنے کے نظریئے کے باعث بھارت  نے اپنی کووڈ۔ 19 اموات کی شرح  بہت کم رکھی ہے۔ آج ہم  یومیہ  معاملات کی تعداد میں اور معاملات میں اضافے کی شرح میں  کمی دیکھ رہے ہیں۔ بھارت  میں  صحت یابی کی شرح  88 فیصد ہے جس کا شمار سب سے اونچی شرحوں  میں ہوتا ہے۔ایسا ممکن ہوپایا ہے کیونکہ :بھارت کا شمار  ان ممالک میں ہوتا ہے جنہوں نے  اس وقت لچیلا  لاک ڈاؤن اختیار  کیا جب مجموعی معاملات کی تعداد محض چند سو تھی۔بھارت ان  ملکوں میں شامل ہے جنہوں نے  ماسک کے استعمال کی حوصلہ افزائی کی پہل کی۔ بھارت نے  موثر طریقے سے  رابطے کا پتہ لگانے کے لئے  سرگرمی سے کام شروع کیا۔بھارت  ان ملکوں  میں شامل ہے جنہوں نے سب سے پہلے  ریپڈ اینٹیجن ٹسٹ شروع کئے۔ بھارت نے  سی آر آئی ایس پی آر  جین ایڈیٹنگ ٹکنالوجی  بھی ایجاد کی۔

دوستو،

بھارت اب کووڈ کے لئے ویکسین تیار کرنے  والوں  کی صف اول میں ہے۔ہمارے ملک میں  30 سے زیادہ  ویکسین تیار کی جارہی ہیں۔ ان میں سے تین کا کام  بہت ہی آگے کی سطح تک پہنچ گیا ہے۔ ہم یہیں نہیں رکیں گے، بھارت  پہلے ہی  ایک مضبوط ویکسین ڈلیوری سسٹم  قائم کرنے پر  کام کررہا ہے۔ ڈیجیٹل ہیلتھ آئی ڈی کے ساتھ یہ ڈیجیٹائز نیٹ ورک  ہمارے شہریوں  کی  ٹیکہ کاری کو یقینی بنانے کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

دوستو،

کووڈ کے باہر بھی  بھارت کو  کم قیمت پر معیاری ادویات اور ویکسین تیار کرنے کی  اپنی صلاحیت  کےلئے  شہرت حاصل ہے۔عالمی ٹیکہ کاری کے لئے  استعمال ہونے والی ویکسین کا  60 فیصد سے زیادہ حصہ بھارت میں تیار کیا جارہا ہے۔ ہم نے  اپنے اندر دھنش  امیونائزیشن پروگرام میں  ملک کے اندر تیار کئے جانے والے   روٹا وائرس ویکسین کو شامل کیا ہے۔ دیرپا نتائج کے لئے  ایک مضبوط شراکت داری کی  یہ ایک کامیاب مثال ہے۔ گیٹس فاؤنڈیشن بھی  اس مخصوص کوشش کا ایک حصہ  رہا ہے۔ بھارت کے تجربے اور تحقیقی صلاحیت کے ساتھ  ہم  عالمی ہیلتھ کیئر  کی کوششوں کے مرکز میں ہوں گے۔ ہم ان شعبوں میں  دوسرے ملکوں کی صلاحیتوں میں  اضافے کے سلسلے میں مدد کرنا چاہتے ہیں۔

دوستو،

گزشتہ 6 برسوں میں  ہم نے  بہت سے  ایسے اقدامات کئے ہیں جن سے  ایک بہتر  ہیلتھ کیئر نظام قائم کرنے میں تعاون ملا ہے۔کسی بھی معاملے کو لے لیجئے مثلاً سنیٹیشن ، بہتر صفائی ستھرائی، زیادہ ٹوائلیٹ کوریج،  ان کاموں نے  کس کی سب سے زیادہ مدد کی ہے؟ ان کاموں نے  غریبوں اور محروموں  کی مدد کی ہے۔ان سے امراض میں کمی آئی ہے۔ ان سے خواتین کی سب سے زیادہ مدد ہوئی  ہے۔

دوستو،

اب ہم اس بات کو یقینی بنا رہے ہیں کہ ہر ایک گھر کو  پائپ کے ذریعہ سپلائی کیا جانے والا پینے کا پانی ملے۔ اس سے  بیماری میں  مزید  کمی آئے گی۔ ہم خصوصی طور پر دیہی علاقوں میں  اور زیادہ  میڈیکل کالج قائم کررہے ہیں۔اس سے نوجوانوں کو اور زیادہ مواقع ملیں گے۔ اس سے  ہمارے گاؤں میں ہیلتھ کیئر کا نظام بہتر ہوگا ہم  دنیا کی سب سے بڑی  صحت بیمہ اسکیم چلا رہے ہیں اور  ہر ایک کی  اس اسکیم تک رسائی کو یقینی بنارہے ہیں۔

دوستو،

ہم  انفرادی تفویض اختیارات اور  مجموعی  فلاح کے لئے اپنے  تعاون کے جذبے  سے کام لینا جاری رکھیں گے۔ گیٹس فاؤنڈیشن اور دیگر متعدد تنظیمیں  حیرت انگیز کام کررہی ہیں۔ میں  آپ کے لئے آئندہ تین برسوں میں  تمام  نتیجہ خیز اور  مثبت  فیصلوں  کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ مجھے امید ہے کہ  اس گرانڈ چیلنجز پلیٹ فارم سے  بہت سے  حوصلہ افزا اور  خوش کن نئے سولیوشن سامنے آئیں گے۔ میری خواہش ہے کہ  ان کوششوں سے  انسان پر مرکوز نظریہ  مزید فروغ پائے۔ان سے  ایک روشن مستقبل کے لئے  نظریاتی  قائد بننے کے لئے  ہمارے نوجوانوں کو مواقعے بھی میسر آئیں۔ ایک بار پھر  میں  منتظمین کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے مجھے مدعو کیا۔

شکریہ

بہت بہت شکریہ

Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
PM Modi's Global Approval Rating 66%; Beats Biden, Merkel, Trudeau, Macron

Media Coverage

PM Modi's Global Approval Rating 66%; Beats Biden, Merkel, Trudeau, Macron
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM launches ‘Customized Crash Course programme for Covid 19 Frontline workers’
June 18, 2021
Share
 
Comments
One lakh youth will be trained under the initiative in 2-3 months: PM
6 customized courses launched from 111 centres in 26 states
Virus is present and possibility of mutation is there, we need to stay prepared: PM
Corona period has proved importance of skill, re-skill and up-skill: PM
The pandemic has tested the strength of every country, institution, society, family and person of the world: PM
People below 45 years of age will get the same treatment for vaccination as for people above 45 years of age from June 21st: PM
PM Lauds ASHA workers, ANM, Anganwadi and health workers deployed in the dispensaries in the villages

The Prime Minister, Shri Narendra Modi launched ‘Customized Crash Course programme for Covid 19 Frontline workers’ today via video conferencing. The training programme would be conducted in 111 training centres spread over 26 states. About one lakh frontline workers will be trained in this initiative. The Union Minister of Skill Development and Entrepreneurship Dr Mahendra Nath Pandey, and many other Union Ministers, Ministers from States, experts and other stakeholders were also present on the occasion.

Addressing the event, the Prime Minister said that this launch is an important next step in the fight against Corona. The Prime Minister cautioned that the virus is present and possibility of mutation is also there. The second wave of the pandemic illustrated the kind of challenges that the virus may present to us. The Country needs to stay prepared to meet the challenges and training more than one lakh frontline warriors is a step in that direction, said the Prime Minister.

The Prime Minister reminded us that the pandemic has tested the strength of every country, institution, society, family and person of the world. At the same time, this alerted us to expand our capabilities as science, government, society, institution or individuals. India took up this challenge and status of PPE kits, testing and other medical infrastructure related to covid care and treatment bears testimony to the efforts. Shri Modi pointed out that far-flung hospitals are being provided with ventilators and oxygen concentrators. More than 1500 oxygen plants are being established at war footing. Amidst all these efforts, skilled manpower is critical. For this and to support the current force of corona warriors one lakh youth is being trained. This training should be over in two-three months, said the Prime Minister.

The Prime Minister informed that the top experts of the country have designed these six courses, launched today, as per demands of the states and union territories . The training will be imparted to Covid warriors in six customised job roles namely Home Care Support, Basic Care Support, Advanced Care Support, Emergency Care Support, Sample Collection Support, and Medical Equipment Support. This will include fresh skilling as well as upskilling of those who have some training in this type of work. This campaign will give fresh energy to the health sector frontline force and will also provide job opportunities to our youth.

The Prime Minister said that the Corona period has proved how important the mantra of skill, re-skill and up-skill. The Prime Minister said the Skill India Mission was started separately for the first time in the country, a Skill Development Ministry was created and the Prime Minister's Skill Development Centers were opened across the country. Today Skill India Mission is helping millions of this country’s youth every year in providing training according to the needs of the day. Since last year the Ministry of Skill Development has trained lakhs of health workers across the country, even amidst the pandemic.

The Prime Minister said given the size of our population, it is necessary to keep increasing the number of doctors, nurses and paramedics in the health sector. Work has been done with a focused approach over the last 7 years to start new AIIMS, new medical colleges and new nursing colleges. Similarly, reforms are being encouraged in medical education and related institutions. The seriousness and the pace at which the work on preparing the health professionals is going on now is unprecedented.

The Prime Minister said that health professionals like ASHA workers, ANM, Anganwadi and health workers deployed in the dispensaries in the villages are one of the strong pillars of our health sector and are often left out of the discussion. They are playing an important role in preventing infection to support the world's largest vaccination campaign. The Prime Minister lauded these health workers for their work during all the adversities for the safety of each and every countryman. He said their role is huge in preventing the spread of infection in villages in remote areas and in hilly and tribal areas.

The Prime Minister said many guidelines have been issued related to the campaign which is to start from 21st June. People below 45 years of age will get the same treatment for vaccination as for people above 45 years of age from June 21st. The Union Government is committed to give free vaccines to every citizen while following corona protocol.

The Prime Minister wished the trainees and said he believed that their new skills will be used in saving the lives of the countrymen.