وزیر اعظم تلنگانہ کے عادل آباد میں 56,000 کروڑ روپے سے زیادہ کے منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے
عادل آباد میں شروع کیے جانے والے متعدد منصوبوں کے ذریعے پاور سیکٹر کو زبردست فروغ ملے گا
وزیر اعظم سنگاریڈی، تلنگانہ میں 6,800 کروڑ روپے سے زیادہ کے ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے
سنگاریڈی میں شروع کیے گئے منصوبے سڑک، ریل، پیٹرولیم اور قدرتی گیس جیسے متعدد اہم شعبوں پر محیط ہیں
وزیر اعظم حیدرآباد میں سول ایوی ایشن ریسرچ آرگنائزیشن (سی اے آر او) کو ملک کے نام وقف کریں گے
وزیر اعظم کلپکم، تمل ناڈو میں ہندوستان کے مقامی پروٹو ٹائپ فاسٹ بریڈر ری ایکٹر کی کور لوڈنگ کے آغاز کا مشاہدہ کریں گے
یہ ہندوستان کے نیوکلیئر پاور پروگرام میں ایک تاریخی سنگ میل ثابت ہوگا
وزیر اعظم اوڈیشہ کے چندیکھول میں 19,600 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے
وزیر اعظم کولکتہ میں 15,400 کروڑ روپے کے متعدد کنیکٹیویٹی منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھ
وزیر اعظم جناب نریندر مودی 4 تا 6 مارچ 2024 کو تلنگانہ، تمل ناڈو، اوڈیشہ، مغربی بنگال اور بہار کا دورہ کریں گے۔
4 مارچ کو، صبح تقریباً 10:30 بجے، وزیر اعظم تلنگانہ کے عادل آباد میں 56,000 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس کے بعد، تقریباً 3:30 بجے، وزیر اعظم تمل ناڈو کے کلپکم میں بھاوینی کا دورہ کریں گے۔
6 مارچ کو، صبح تقریباً 10:15 بجے، وزیر اعظم کولکتہ میں 15,400 کروڑ روپے کے متعدد کنیکٹیویٹی منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس کے بعد، تقریباً 3:30 بجے، وزیر اعظم بہار کے بیتیہ میں تقریباً 8,700 روپے کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔

وزیر اعظم جناب نریندر مودی 4 تا 6 مارچ 2024 کو تلنگانہ، تمل ناڈو، اوڈیشہ، مغربی بنگال اور بہار کا دورہ کریں گے۔

4 مارچ کو، صبح تقریباً 10:30 بجے، وزیر اعظم تلنگانہ کے عادل آباد میں 56,000 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس کے بعد، تقریباً 3:30 بجے، وزیر اعظم تمل ناڈو کے کلپکم میں بھاوینی کا دورہ کریں گے۔

5 مارچ کو، صبح تقریباً 10 بجے، وزیر اعظم حیدرآباد میں شہری ہوا بازی ریسرچ آرگنائزیشن (سی اے آر او) سینٹر کو ملک کے نام وقف کریں گے۔ صبح تقریباً 11 بجے، وزیر اعظم سنگاریڈی، تلنگانہ میں 6,800 کروڑ روپے کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ تقریباً 3:30 بجے، وزیر اعظم اوڈیشہ میں چاندیکھول، جاجپور میں 19,600 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔

6 مارچ کو، صبح تقریباً 10:15 بجے، وزیر اعظم کولکتہ میں 15,400 کروڑ روپے کے متعدد کنیکٹیویٹی منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس کے بعد، تقریباً 3:30 بجے، وزیر اعظم بہار کے بیتیہ میں تقریباً 8,700 روپے کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔

وزیر اعظم عادل آباد میں

عادل آباد، تلنگانہ میں ایک عوامی پروگرام میں، وزیر اعظم 56,000 کروڑ روپے سے زیادہ کی بجلی، ریل اور سڑک کے شعبے سے متعلق متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کو وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ منصوبوں میں سب سے زیادہ توجہ پاور سیکٹر پر ہوگی۔

وزیر اعظم ملک بھر میں پاور سیکٹر سے متعلق مختلف منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کو وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ وزیر اعظم تلنگانہ کے پیڈا پلی میں این ٹی پی سی کے تلنگانہ سپر تھرمل پاور پروجیکٹ کے 800 میگاواٹ (یونٹ-2) کو ملک کے نام وقف کریں گے۔ الٹرا سپر کریٹیکل ٹیکنالوجی پر مبنی، یہ پروجیکٹ تلنگانہ کو 85 فیصد بجلی فراہم کرے گا اور ہندوستان میں این ٹی پی سی کے تمام پاور اسٹیشنوں میں تقریباً 42 فیصد کی سب سے زیادہ بجلی پیدا کرنے کی کارکردگی کا حامل ہوگا۔ وزیراعظم نے اس منصوبے کا سنگ بنیاد بھی رکھا تھا۔

وزیر اعظم جھارکھنڈ کے چترا میں نارتھ کرن پورہ سپر تھرمل پاور پروجیکٹ کا 660 میگاواٹ (یونٹ-2) بھی ملک کے نام وقف کریں گے۔ یہ ملک کا پہلا سپر کریٹیکل تھرمل پاور پروجیکٹ ہے جس کا تصور اتنے بڑے پیمانے پر ایئر کولڈ کنڈینسر (اے سی سی) سے کیا گیا ہے جو روایتی واٹر کولڈ کنڈینسر کے مقابلے میں پانی کی کھپت کو ایک تہائی تک کم کر دیتا ہے۔ اس پروجیکٹ کے کام کا آغاز بھی وزیر اعظم نے کیا تھا۔

اس کے علاوہ، وزیر اعظم سون بھدرا، اتر پردیش میں سنگرولی سپر تھرمل پاور پروجیکٹ، مرحلہ-III (2x800 میگاواٹ)، چھتیس گڑھ میں لارا، رائے گڑھ میں فلو گیس CO2 سے 4G ایتھنول پلانٹ؛ آندھرا پردیش میں سمہادری، وشاکھاپٹنم میں سمندری پانی سے گرین ہائیڈروجن پلانٹ؛ اور چھتیس گڑھ کے کوربا میں فلائی ایش پر مبنی ایف اے ایل جی ایگریگیٹ پلانٹ کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔

وزیر اعظم سات منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور پاور گرڈ کارپوریشن آف انڈیا کے ایک پروجیکٹ کا سنگ بنیاد بھی رکھیں گے۔ یہ منصوبے نیشنل گرڈ کو مضبوط بنانے میں اہم کردار ادا کریں گے۔

وزیر اعظم راجستھان کے جیسلمیر میں نیشنل ہائیڈرو الیکٹرک پاور کارپوریشن (این ایچ پی سی) کے 380 میگاواٹ سولر پروجیکٹ کا افتتاح کریں گے۔ منصوبے سے ہر سال تقریباً 792 ملین یونٹ سبز توانائی پیدا کی جائے گی۔

وزیر اعظم اتر پردیش کے جالون میں بندیل کھنڈ سور اورجا لمیٹڈ کے 1200 میگاواٹ جالون الٹرا میگا رینیوایبل انرجی پاور پارک کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ یہ پارک ہر سال تقریباً 2400 ملین یونٹ بجلی پیدا کرے گا۔

وزیر اعظم اتر پردیش میں جالون اور کانپور دیہات میں ستلج جل ودیوت نگم (ایس جے وی این) کے تین شمسی توانائی منصوبوں کا افتتاح کریں گے۔ ان منصوبوں کی کل صلاحیت 200 میگاواٹ ہے۔ ان منصوبوں کا سنگ بنیاد بھی وزیراعظم نے رکھا تھا۔ وزیر اعظم اترکاشی، اتراکھنڈ میں منسلک ٹرانسمیشن لائن کے ساتھ نیتوار موری ہائیڈرو پاور اسٹیشن کا افتتاح کریں گے۔ وزیر اعظم بلاس پور، ہماچل پردیش اور دھوبری، آسام میں ایس جے وی این کے دو شمسی منصوبوں اور ہماچل پردیش میں 382 میگاواٹ سنی ڈیم ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ کا سنگ بنیاد بھی رکھیں گے۔

وزیر اعظم یوپی کے للت پور ضلع میں ٹی یو ایس سی او کے 600 میگاواٹ للت پور سولر پاور پروجیکٹ کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس منصوبے کے تحت سالانہ 1200 ملین یونٹ سبز توانائی پیدا کی جائے گی۔

دورے کے دوران پاور سیکٹر کے علاوہ سڑک اور ریل سیکٹر کے منصوبے بھی زیر غور رہیں گے۔ وزیر اعظم نئی الیکٹریفائیڈ امباری - عادل آباد - پمپلکھٹی ریل لائن کو ملک کے نام وقف کریں گے۔ وہ تلنگانہ کو مہاراشٹر اور تلنگانہ کو چھتیس گڑھ سے این ایچ-353B اور این ایچ-163 کے ذریعے جوڑنے والے دو بڑے نیشنل ہائی وے منصوبوں کا بھی سنگ بنیاد رکھیں گے۔

وزیر اعظم حیدرآباد میں

وزیر اعظم حیدرآباد میں سول ایوی ایشن ریسرچ آرگنائزیشن (سی اے آر او) سینٹر کو قوم کے نام وقف کریں گے۔ شہری ہوا بازی کے شعبے میں تحقیق اور ترقی (آر اینڈ ڈی) کی سرگرمیوں کو اپ گریڈ کرنے اور بڑھانے کے لیے ایئرپورٹس اتھارٹی آف انڈیا کے ذریعہ بیگم پیٹ ہوائی اڈے، حیدرآباد پر اسے قائم کیا گیا ہے۔ مقامی اور اختراعی حل فراہم کرنے کے لیے اندرون ملک اور باہمی تعاون کے ذریعے ایوی ایشن کمیونٹی کے لیے ایک عالمی تحقیقی پلیٹ فارم فراہم کرنے کا تصور کیا گیا ہے۔ 350 کروڑ روپے سے زیادہ کی لاگت سے بنایا گیا، یہ جدید ترین سہولت پانچ ستارہ گرہ ریٹنگ اور انرجی کنزرویشن بلڈنگ کوڈ (ای سی بی سی) کے اصولوں کے مطابق ہے۔

سی اے آر او مستقبل کی تحقیق اور ترقی کے اقدامات کی حمایت کے لیے جامع لیبارٹری کی صلاحیتوں کا استعمال کرے گا۔ یہ آپریشنل تجزیہ اور کارکردگی کی پیمائش کے لیے ڈیٹا تجزیہ کی صلاحیتوں کا بھی فائدہ اٹھائے گا۔ سی اے آر او میں بنیادی آر اینڈ ڈی سرگرمیوں میں شامل ہوں گے: فضائی حدود اور ہوائی اڈے سے متعلق حفاظت، صلاحیت اور کارکردگی میں بہتری کے پروگرام، فضائی حدود کے بڑے چیلنجوں سے نمٹنا، ہوائی اڈے کے بنیادی ڈھانچے کے بڑے چیلنجوں کا جائزہ لینا، مستقبل کی فضائی حدود اور ہوائی اڈے کی ضروریات کے لیے شناخت شدہ شعبوں میں ٹیکنالوجیز اور مصنوعات تیار کرنا وغیرہ۔

وزیر اعظم سنگاریڈی میں

وزیر اعظم 6,800 کروڑ سے زیادہ کے ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ ان منصوبوں میں سڑک، ریل، پٹرولیم اور قدرتی گیس جیسے متعدد اہم شعبوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔

وزیر اعظم قومی شاہراہ کے تین منصوبوں کا افتتاح اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ دو قومی شاہراہ منصوبے جن کا وزیر اعظم افتتاح کریں گے ان میں این ایچ-161 کے کنڈی تا رامسان پلے سیکشن تک 40 کلومیٹر طویل چار لیننگ شامل ہیں۔ یہ پروجیکٹ اندور-حیدرآباد اکنامک کوریڈور کا ایک حصہ ہے اور تلنگانہ، مہاراشٹر اور مدھیہ پردیش کے درمیان بغیر کسی رکاوٹ کے مسافروں اور مال برداری کی سہولت فراہم کرے گا۔ اس سیکشن سے حیدرآباد اور ناندیڑ کے درمیان سفر کے وقت میں تقریباً 3 گھنٹے کی کمی آئے گی۔ وزیر اعظم 47 کلومیٹر طویل میریالا گوڈا سے این ایچ-167 کے کوداڈ سیکشن کو پکی سڑک کے ساتھ دو لین میں اپ گریڈ کرنے کا بھی افتتاح کریں گے۔ بہتر رابطوں سے خطے میں سیاحت کے ساتھ ساتھ اقتصادی سرگرمیوں اور صنعتوں کو بھی فروغ ملے گا۔

اس کے علاوہ، وزیر اعظم این ایچ-65 کے پونے-حیدرآباد سیکشن کی 29 کلومیٹر طویل چھ لیننگ کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ یہ پروجکٹ تلنگانہ کے بڑے صنعتی مراکز جیسے پتانچیرو کے قریب پشامیلارام صنعتی علاقہ کو بھی بہتر کنیکٹیویٹی فراہم کرے گا۔

وزیر اعظم گھاٹ کیسر - لنگم پلی سے مولا علی - سنت نگر کے راستے ایم ایم ٹی ایس ٹرین سروس کا افتتاح بھی کریں گے۔ یہ ٹرین سروس پہلی بار حیدرآباد - سکندرآباد شہر کے علاقوں میں مقبول مضافاتی ٹرین سروس کو نئے علاقوں تک توسیع دیتی ہے۔ یہ شہر کے مشرقی حصے کے نئے علاقوں جیسے چرلاپلی، مولا علی کو دونوں شہر کے علاقوں کے مغربی حصے سے جوڑتا ہے۔

اس کے علاوہ، وزیر اعظم انڈین آئل پارا دیپ-حیدرآباد پروڈکٹ پائپ لائن کا بھی افتتاح کریں گے۔ 4.5 ایم ایم ٹی پی اے کی صلاحیت کے ساتھ 1212 کلومیٹر پروڈکٹ پائپ لائن اوڈیشہ (329 کلومیٹر)، آندھرا پردیش (723 کلومیٹر) اور تلنگانہ (160 کلومیٹر) سے گزرتی ہے۔ یہ پائپ لائن پارا دیپ ریفائنری سے وشاکھاپٹنم، اچوتپورم، اور وجے واڑہ (آندھرا پردیش میں)، اور حیدرآباد (تلنگانہ میں) کے قریب ملکاپور کے ڈیلیوری اسٹیشنوں تک پیٹرولیم مصنوعات کی محفوظ اور اقتصادی نقل و حمل کو یقینی بنائے گی۔

وزیر اعظم کلپکم میں

ہندوستان کے جوہری توانائی کے پروگرام میں ایک تاریخی سنگ میل کو نشان زد کرتے ہوئے، وزیر اعظم کلپکم، تمل ناڈو میں 500 میگاواٹ صلاحیت کے ہندوستان کے مقامی پروٹو ٹائپ فاسٹ بریڈر ری ایکٹر (پی ایف بی آر) کی کور لوڈنگ کے آغاز کا مشاہدہ کریں گے۔ اس پی ایف بی آر کو بھاوینی (بھارتیہ نابھیکی ودیوت نگم لمیٹڈ) نے تیار کیا ہے۔

ہندوستان نے بند فیول سائیکل کے ساتھ تین مرحلوں پر مشتمل نیوکلیئر پاور پروگرام اپنایا ہے۔ پی ایف بی آر میں، جوہری پروگرام کے دوسرے مرحلے کو نشان زد کرتے ہوئے، پہلے مرحلے سے خرچ شدہ ایندھن کو دوبارہ پروسیس کیا جاتا ہے اور ایف بی آر میں بطور ایندھن استعمال کیا جاتا ہے۔

ری ایکٹر سے پیدا ہونے والے کم سے کم جوہری فضلہ اور جدید حفاظتی خصوصیات کے ساتھ، ایف بی آر توانائی کا محفوظ، مؤثر اور صاف ذریعہ فراہم کریں گے اور خالص صفر کے ہدف میں تعاون کریں گے۔ جوہری توانائی کے پروگرام کے تیسرے مرحلے میں تھوریم کے استعمال کی طرف ہندوستان کے لیے یہ ایک اہم قدم ہے۔ ایک بار شروع ہونے کے بعد، ہندوستان روس کے بعد دوسرا ملک ہوگا جس کے پاس تجارتی آپریٹنگ فاسٹ ری ایکٹر ہوگا۔

وزیر اعظم چندیکھول میں

وزیر اعظم 19,600 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کریں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ منصوبے تیل اور گیس، ریلوے، سڑک، ٹرانسپورٹ اور ہائی وے اور ایٹمی توانائی سمیت مختلف شعبوں سے متعلق ہیں۔

وزیر اعظم پارا دیپ ریفائنری میں انڈین آئل کارپوریشن لمیٹڈ مونو ایتھیلین گلائکول پروجیکٹ کا افتتاح کریں گے جس سے ہندوستان کے درآمدی انحصار کو کم کرنے میں مزید مدد ملے گی۔ وہ اوڈیشہ کے پارا دیپ سے مغربی بنگال کے ہلدیہ تک 344 کلومیٹر لمبی پروڈکٹ پائپ لائن کا بھی افتتاح کریں گے۔ ہندوستان کے مشرقی ساحل پر درآمدی بنیادی ڈھانچے کو بڑھانے کے لیے، وزیر اعظم پارا دیپ میں 0.6 ایم ایم ٹی پی اے ایل پی جی درآمدی سہولت کا بھی افتتاح کریں گے۔

خطے میں سڑک کے بنیادی ڈھانچے کو فروغ دینے کے لیے، وزیر اعظم سنگھارا سے این ایچ-49 کے بنجابہل سیکشن تک چار لین، بنجابہل سے این ایچ-49 کے تلیبانی سیکشن تک چار لین، این ایچ-18 کے بالاسور-جھارپوکھریا سیکشن کو چار لین اور این ایچ-16 کے تنگی-بھوبنیشور سیکشن کو چار لین بنانے کا کام ملک کو وقف کریں گے۔ وہ چاندیکھول میں چاندیکھول - پارا دیپ سیکشن کی آٹھ لین کا سنگ بنیاد بھی رکھیں گے۔

ریلوے نیٹ ورک کی توسیع بھی ریل رابطے کو جدید بنانے اور توسیع دینے پر توجہ مرکوز کرنے کے ساتھ ہوگی۔ وزیر اعظم 162 کلومیٹر بنساپانی - دیتاری - ٹومکا - جاکھا پورہ ریل لائن ملک کو وقف کریں گے۔ یہ نہ صرف موجودہ ٹریفک سہولت کی صلاحیت میں اضافہ کرے گا بلکہ ضلع کیونجھار سے قریبی بندرگاہوں اور اسٹیل پلانٹس تک لوہے اور مینگنیج کی مؤثر نقل و حمل کی سہولت بھی فراہم کرے گا، جس سے علاقائی اقتصادی ترقی میں نمایاں طور پر تعاون کیا جائے گا۔ کلنگا نگر میں کونکور کنٹینر ڈپو کا افتتاح ملکی اور بین الاقوامی تجارت کو فروغ دینے کے مقصد سے کیا جائے گا۔ نرلا میں الیکٹرک لوکو پیریڈیکل اوور ہالنگ ورکشاپ، کانتا بنجی میں ویگن پیریڈیکل اوور ہالنگ ورکشاپ اور بگواپال میں دیکھ بھال کی سہولیات کی اپ گریڈیشن اور اضافہ کا سنگ بنیاد رکھا جائے گا۔ اس دورے کے دوران ریلوے کے دیگر منصوبوں بشمول نئی ٹرین سروسز کو جھنڈی دکھا کر شروع کیا جائے گا۔

وزیر اعظم کولکاتہ میں

شہری نقل و حرکت میں آسانی کو یقینی بنانے کے راستے کو بڑھانے پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے، وزیر اعظم کولکاتہ میٹرو کے ہاوڑہ میدان- ایسپلانیڈ میٹرو سیکشن، کاوی سبھاش- ہیمنتا مکوپادھیائے میٹرو سیکشن، تراتلا- ماجرہاٹ میٹرو سیکشن (جوکا- ایسپلانیڈ لائن کا حصہ)، پونے میٹرو روبی ہال کلینک سے رام واڑی تک؛ کوچی میٹرو ریل مرحلہ I توسیعی منصوبہ (مرحلہ IB) ایس این جنکشن میٹرو اسٹیشن سے تریپونیتھورا میٹرو اسٹیشن تک؛ آگرہ میٹرو کا تاج ایسٹ گیٹ سے منکامیشور تک کا حصہ؛ اور دہلی-میرٹھ آر آر ٹی ایس کوریڈور کا دوہائی-مودی نگر (شمالی) سیکشن کا افتتاح کریں گے۔

یہ حصے سڑکوں پر ٹریفک کو کم کرنے میں مدد کریں گے اور ہموار، آسان اور آرام دہ رابطہ فراہم کریں گے۔ کولکاتہ میٹرو کے ہاوڑہ میدان - ایسپلینیڈ میٹرو سیکشن میں ہندوستان میں کسی بھی طاقتور دریا کے نیچے پہلی نقل و حمل کی سرنگ ہے۔ ہاوڑہ میٹرو اسٹیشن ہندوستان کا سب سے گہرا میٹرو اسٹیشن ہے۔ نیز، ماجرہاٹ میٹرو اسٹیشن (تراتلا پر - ماجرہاٹ میٹرو سیکشن کا افتتاح کیا جا رہا ہے) ریلوے لائنوں، پلیٹ فارموں اور نہر کے پار ایک منفرد ایلیویٹڈ میٹرو اسٹیشن ہے۔ آگرہ میٹرو کے سیکشن کا افتتاح ہونے سے تاریخی سیاحتی مقامات سے رابطہ بڑھے گا۔ آر آر ٹی ایس سیکشن این سی آر میں اقتصادی سرگرمیوں کو فروغ دے گا۔

وزیر اعظم بیتیہ میں

وزیر اعظم نریندر مودی بہار کے مغربی چمپارن ضلع کے بیتیہ میں تقریباً 8700 کروڑ روپے کے ریل، سڑک اور پٹرولیم اور قدرتی گیس سے متعلق مختلف بنیادی ڈھانچے سے متعلق منصوبوں کا سنگ بنیاد رکھیں گے، ملک کے نام وقف کریں گے اور افتتاح کریں گے۔

وزیر اعظم 109 کلومیٹر طویل انڈین آئل کی مظفر پور - موتیہاری ایل پی جی پائپ لائن کا افتتاح کریں گے۔ یہ ریاست بہار اور پڑوسی ملک نیپال میں کھانا پکانے کے صاف ایندھن تک رسائی فراہم کرے گا۔ وزیر اعظم موتیہاری میں انڈین آئل کے ایل پی جی بوٹلنگ پلانٹ اور اسٹوریج ٹرمینل کو ملک کے نام وقف کریں گے۔ نیا پائپ لائن ٹرمینل نیپال کو پیٹرولیم مصنوعات کی برآمد کے لیے ایک اسٹریٹجک سپلائی پوائنٹ کے طور پر بھی کام کرے گا۔ یہ شمالی بہار کے 8 اضلاع یعنی مشرقی چمپارن، مغربی چمپارن، گوپال گنج، سیوان، مظفر پور، شیوہر، سیتامڑھی اور مدھوبنی میں کام کرے گا۔ موتیہاری میں نیا بوٹلنگ پلانٹ موتیہاری پلانٹ سے منسلک فیڈنگ مارکیٹوں میں سپلائی چین کو ہموار بنانے میں بھی مدد کرے گا۔

وزیر اعظم ریلوے کے مختلف منصوبوں کا افتتاح کریں گے اور سنگ بنیاد رکھیں گے۔ وزیر اعظم باپودھام موتیہاری - پپرہن سے 62 کلومیٹر ریل لائن کو دوگنا کرنے کے کام کو ملک کے نام وقف کریں گے اور وہ دوسرے منصوبوں کے ساتھ نارکٹیا گنج - گوناہا گیج کی تبدیلی کا بھی افتتاح کریں گے۔ وزیر اعظم 96 کلومیٹر طویل گورکھپور کینٹ-والمیکی نگر ریل لائن کو دوگنا اور برقی کاری کرنے اور بیتیہ ریلوے اسٹیشن کی از سر نو تعمیر کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ وزیر اعظم نارکٹیا گنج - گوناہا اور رکسول - جوگبانی کے درمیان دو نئی ٹرین سروسز کو بھی ہری جھنڈی دکھا کر روانہ کریں گے۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Make in India: Google to manufacture drones in Tamil Nadu, may export it to US, Australia, others

Media Coverage

Make in India: Google to manufacture drones in Tamil Nadu, may export it to US, Australia, others
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،25مئی 2024
May 25, 2024

Citizens Express Appreciation for India’s Muti-sectoral Growth with PM Modi’s Visionary Leadership