Share
 
Comments
نوجوان توانائی سے ملک کی ترقی کو نئی رفتار مل رہی ہے
‘‘8 سال کی مختصر مدت میں ملک کی اسٹارٹ اپ کہانی میں بڑے پیمانے پر تبدیلی آئی ہے’’
‘‘2014 کے بعد حکومت نے نوجوانوں کی اختراعی طاقت پر اعتماد بحال کیا اور ایک سازگار ایکوسسٹم بنایا’’
‘‘7 سال قبل اسٹارٹ اپ انڈیا کا آغاز خیالات کو اختراع میں بدلنے اور انہیں صنعت تک لے جانے کے لیے ایک بڑا قدم تھا’’
‘‘کاروبار کرنے میں آسانی کے ساتھ ساتھ بھارت میں رہنے میں آسانی پر بے مثال زور دیا گیا ہے’’

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج اندور میں منعقدہ مدھیہ پردیش اسٹارٹ اپ کنکلیو کے دوران ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے مدھیہ پردیش اسٹارٹ اپ پالیسی کا آغاز کیا۔ انہوں نے مدھیہ پردیش اسٹارٹ اپ پورٹل بھی لانچ کیا، جو اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم کو فروغ دینے میں سہولت اور مدد فراہم کرے گا۔ انہوں نے اسٹارٹ اپ انٹرپرینیورز سے بھی بات چیت کی۔

کیرانہ اسٹورز - شاپ کرانہ کو منظم کرنے کے لیے آن لائن سٹور کے بانی جناب تنو تیجس سرسوت کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے وزیر اعظم نے ان کے پس منظر کے بارے میں دریافت کیا کہ انہیں یہ کاروبار شروع کرنے کا خیال کیسے آیا۔ وزیر اعظم نے اس کاروبار میں مواقع اور ترقی کے بارے میں پوچھا۔ انہوں نے یہ بھی پوچھا کہ ان کے اسٹارٹ اپ سے کتنے کیرانہ اسٹور منسلک ہیں اور انہوں نے اپنے سٹارٹ اپ کے لیے اندور کو کیوں چنا ہے۔ وزیراعظم نے پوچھا کہ کیا کوئی سڑک کے دکانداروں کو منظم کر سکتا ہے جو سونیدھی سے مستفید ہوتے ہیں۔

بھوپال سے امنگ شریدھر ڈیزائنس پرائیویٹ لمیٹڈ کی بانی امنگ شریدھر کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے وزیر اعظم کو کھادی میں ان کی اختراعات اور بڑی کمپنیوں کے لیے پراڈکٹس بنانے کے بارے میں بتایا گیا۔ وزیراعظم کو بتایا گیا کہ اسٹارٹ اپ کا سفر حکومت کے ساتھ متوازی رہا ہے کیونکہ انہوں نے 2014 میں کمپنی شروع کی تھی۔ انہوں نے انہیں خواتین کے ساتھ اپنے کام کے بارے میں بھی بتایا۔ وزیر اعظم نے اپنے اسٹارٹ اپ کے ذریعے خواتین میں بہتری اور قدر میں اضافے کے بارے میں پوچھا۔ انہوں نے بتایا کہ خواتین کاریگروں کی آمدنی میں تقریباً 300 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے خواتین کو گریجویٹ ہونے کے لیے کاریگر سے کاروباری افراد تک کی تربیت دینے کے بارے میں بھی بات کی۔ وزیر اعظم نے کاشی میں ان کے کام کے بارے میں دریافت کیا اور ایک روزگار پیدا کرنے والے اور ایک محرک ہونے کے لیے ان کی تعریف کی۔

اندور سے جناب توصیف خان کے ساتھ بات چیت کے دوران وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ ان کی تنظیم کسانوں کی آمدنی کو دوگنا کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔ انہوں نے تکنیکی حل بنائے ہیں جو کسانوں کو ڈیجیٹل اور فزیکل ذرائع سے فراہم کیے جا رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے پوچھا کہ کیا کوئی اپنے اسٹارٹ اپ سے جڑے کسانوں کے لیے مٹی کی جانچ کی سہولیات کو ضم کر سکتا ہے۔ وزیراعظم کو مٹی کی جانچ کرنے اور کسانوں کے ساتھ ڈیجیٹل طور پر رپورٹ شیئر کرنے کے طریقوں کے بارے میں بتایا گیا۔ وہ نامیاتی اور مائکروبیل کھاد کو بھی فروغ دے رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے کسانوں میں قدرتی کھیتی کو اپنانے کے بارے میں بھی پوچھا۔ وزیر اعظم نے خواہش ظاہر کی کہ سوچھ سرویکشن میں اندور کی بہترین کارکردگی کی طرح اندور ضلع کے کسانوں کو بھی کیمیکل سے پاک کھیتی کے لیے ایک مثال قائم کرنی چاہیے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ نوجوان توانائی سے ملک کی ترقی کو نئی رفتار مل رہی ہے۔ ایک احساس ہے، جیسا کہ ایک فعال اسٹارٹ اپ پالیسی ہے، ملک میں اسٹارٹ اپ کی اتنی ہی محنتی قیادت موجود ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ 8 سال کے مختصر عرصے میں ملک کی اسٹارٹ اپ کہانی میں بڑے پیمانے پر تبدیلی آئی ہے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ 2014 میں جب ان کی حکومت بنی تھی، ملک میں اسٹارٹ اپس کی تعداد تقریباً 300-400 تھی۔ آج تقریباً 70000 تسلیم شدہ اسٹارٹ اپس ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس ملک میں ہر 7-8 دن میں ایک نیا ایک تنگاوالا بنتا ہے۔

وزیر اعظم نے اسٹارٹ اپس کے تنوع کو بھی نوٹ کیا۔ انہوں نے کہا کہ تقریباً 50 فیصد اسٹارٹ اپ ٹائر II اور ٹائر III شہروں سے ہیں اور وہ کئی ریاستوں اور شہروں کا احاطہ کرتے ہیں۔ وہ 50 سے زائد صنعتوں سے وابستہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسٹارٹ اپ حقیقی دنیا کے مسائل کا حل فراہم کرتے ہیں۔ آج کے اسٹارٹ اپ مستقبل کی ایم این سی بن جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسٹارٹ اپ کا تصور 8 سال پہلے چند لوگوں کے درمیان زیر بحث آیا تھا اور اب عام لوگوں میں بحث کا حصہ بن گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ تبدیلی اتفاق نہیں بلکہ سوچی سمجھی حکمت عملی کا نتیجہ ہے۔

انہوں نے بھارت میں اختراعی حلوں کی کہانی پر توجہ دی اور آئی ٹی انقلاب کی رفتار کے لئے حوصلہ افزائی کی کمی اور موقع کو استعمال کرنے میں ناکامی پر افسوس کا اظہار کیا۔ پوری ایک دہائی اس وقت کے گھپلوں اور افراتفری میں ضائع ہو گئی۔ انہوں نے کہا کہ 2014 کے بعد حکومت نے نوجوانوں کی اختراعی قوت پر اعتماد بحال کیا اور ایک سازگار ایکوسسٹم بنایا۔ انہوں نے آئیڈیا سے جدت تک صنعت تک کا روڈ میپ بنا کر اس شعبے کو آگے بڑھانے کے لیے تین جہتی نقطہ نظر کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے کہا کہ اس حکمت عملی کا پہلا حصہ خیال، اختراع، انکیوبیٹ اور صنعت کا تصور تھا۔ ان سے متعلق ادارے بنائے گئے اور مضبوط ہوئے۔ دوسرا، حکومتی ضوابط میں نرمی۔ تیسرا، ایک نیا ایکوسسٹم بنا کر اختراع کے لیے ذہنیت میں تبدیلی۔ اسی کو مدنظر رکھتے ہوئے ہیکاتھون جیسے اقدامات کیے گئے۔ 15 لاکھ باصلاحیت نوجوان اس ہیکاتھون تحریک میں شامل ہوئے ہیں جو اسٹارٹ اپس کے لیے ایک ایکوسسٹم تشکیل دے رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ 7 سال قبل اسٹارٹ اپ انڈیا کا آغاز تصورات کو اختراع میں بدلنے اور انہیں صنعت تک لے جانے کا ایک بڑا قدم تھا۔ ایک سال بعد اٹل انوویشن مشن کا آغاز اسکولوں میں اٹل ٹنکرنگ لیبز اور اعلیٰ تعلیمی اداروں میں انکیوبیشن سینٹرز کے ساتھ کیا گیا۔ 10 ہزار سے زیادہ اسکولوں میں ٹنکرنگ لیبز ہیں اور 75 لاکھ سے زیادہ طلباء کو جدت طرازی کے ماحول سے روشناس کرایا جا رہا ہے۔ اسی طرح قومی تعلیمی پالیسی بھی جدت طرازی کو فروغ دیتی ہے۔ جدت طرازی کے شعبے میں نجی سرمایہ کاری بڑھ رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ خلائی شعبے، نقشہ سازی، ڈرون وغیرہ میں کی گئی اصلاحات اسٹارٹ اپس کے لیے نئے مواقع کھول رہی ہیں۔ اسٹارٹ اپس کی مصنوعات کو مارکیٹ میں لانے کی آسانی کو بہتر بنانے کے لیے جی ای ایم پورٹل قائم کیا گیا تھا۔ جی ای ایم پورٹل پر 13000 سے زیادہ اسٹارٹ اپ رجسٹرڈ ہیں اور انہوں نے پورٹل پر 6500 کروڑ روپے کا کاروبار کیا ہے۔ ڈیجیٹل انڈیا نے اسٹارٹ اپس کی ترقی اور نئی منڈیوں کو کھولنے کے لیے بڑا زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ سیاحت کے شعبے کی ترقی میں اسٹارٹ اپ کا بڑا کردار ہے۔ اسٹارٹ اپس ووکل فار لوکل کو فروغ دینے میں بھی مدد کریں گے۔ اسٹارٹ اپ قبائلیوں کو ان کی دستکاری اور مصنوعات کو بازار میں لانے میں بھی مدد کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت گیمنگ انڈسٹری اور کھلونوں کی صنعت کے لیے بڑا زور دے رہی ہے۔ انہوں نے اسٹارٹ اپس کے لیے فرنٹیئر ٹیکنالوجیز کی صلاحیت کو بھی نوٹ کیا۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ 800 سے زیادہ بھارتی اسٹارٹ اپ کھیلوں کے شعبے سے وابستہ ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ‘‘ہمیں بھارت کی کامیابی کو نئی رفتار اور بلندی فراہم کرنا ہے۔ آج بھارت جی- 20 معیشتوں میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی معیشت ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ بھارت دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت ہے۔ بھارت اسمارٹ فون، ڈیٹا استعمال کرنے کے معاملے میں پہلے اور انٹرنیٹ استعمال کرنے والوں کے معاملے میں دوسرے نمبر پر ہے۔ گلوبل ریٹیل انڈیکس میں بھارت دوسرے نمبر پر ہے، بھارت دنیا کا تیسرا سب سے بڑا توانائی استعمال کرنے والا ملک ہے اور دنیا کی تیسری سب سے بڑی صارف منڈی بھارت میں ہے۔ بھارت نے اس سال 470 بلین ڈالر کے تجارتی سامان کی برآمدات کرکے ایک نیا ریکارڈ بنایا ہے۔ انفراسٹرکچر میں بے مثال سرمایہ کاری ہوئی ہے۔ بھارت میں کاروبار کرنے میں آسانی کے ساتھ ساتھ رہنے میں آسانی پر بے مثال زور دیا جاتا ہے۔ یہ حقائق ہر ہندوستانی پر فخر کرتے ہیں اور یہ یقین پیدا کرتے ہیں کہ بھارت کی ترقی کی کہانی اس دہائی میں نئی ​​توانائی کے ساتھ آگے بڑھے گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ امرت کال میں ہماری کوششیں ملک کی سمت متعین کریں گی اور ہم اپنی اجتماعی کوششوں سے ملک کی امنگوں کو پورا کریں گے۔

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

مودی ماسٹرکلاس: وزیر اعظم مودی کے ساتھ پریکشا پے چرچا
Share your ideas and suggestions for 'Mann Ki Baat' now!
Explore More
وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی  ایم مودی کے ساتھ کا متن

Popular Speeches

وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی ایم مودی کے ساتھ کا متن
Nearly 62 Top Industry Captains confirm their arrival; PM Modi to perform Bhumi-pujan for 2k projects worth Rs 75 thousand crores

Media Coverage

Nearly 62 Top Industry Captains confirm their arrival; PM Modi to perform Bhumi-pujan for 2k projects worth Rs 75 thousand crores
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM expresses happiness on the entire team of ASHA workers getting WHO Director-General's Global Health Leaders' award
May 23, 2022
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has expressed his happiness for the entire team of ASHA workers receiving WHO Director-General's Global Health Leaders' award. Shri Modi said that ASHA workers are at forefront of ensuring a healthy India and their dedication and determination is admirable.

In response of tweet by World Health Organisation, the Prime Minister tweeted;

"Delighted that the entire team of ASHA workers have been conferred the @WHO Director-General’s Global Health Leaders’ Award. Congratulations to all ASHA workers. They are at the forefront of ensuring a healthy India. Their dedication and determination is admirable."