Share
 
Comments
بھارت اپنےمجاہدین آزادی کو نہیں بھولے گا ، وزیر اعظم
پچھلے چھ سالوں میں گمنام ہیروز کی تاریخ کو محفوظ کرنے کے لئے با شعور کوششیں: وزیر اعظم
ہمیں اپنے آئین اور اپنی جمہوری روایت پر فخر ہے: وزیر اعظم

وزیر اعظم ، جناب نریندر مودی نے سابرمتی آشرم ، احمد آباد سے ‘پد یاترا’ (آزادی مارچ) کو روانہ کیا اور ‘آزادی کا امرت مہوتسو’ (ہندوستان 75@) کی ابتدائی سرگرمیوں کا افتتاح کیا۔ انہوں نے 75 دیگر تقریبات میں ہندوستان کے لئے دیگر متعدد ثقافتی اور ڈیجیٹل اقدامات بھی شروع کیے۔ اس موقع پر گجرات کے گورنرجناب آچاریہ دیوورت ، یونین کے ایم او ایس (آزادانہ چارج) جناب پرہلاد سنگھ پٹیل اور گجرات کے وزیر اعلی جناب وجئے روپانی موجود تھے۔

آزادی کا امروت مہوتسو تقریبات کا ایک سلسلہ ہے جو ہندوستان کی آزادی کی 75 ویں سالگرہ کی یاد میں حکومت ہند کے زیر اہتمام منعقد کیا جاتا ہے۔ مہوتسو کو عوامی بھاگیداری کے جذبے سے ایک عوامی جشن کے طور پر منایا جائے گا۔

 

سابرمتی آشرم میں اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے 15 اگست 2020 سے 75 ہفتوں پہلے 'آزادی کا امرت مہوتسو' کے آغاز کا ذکر کیا جو 15 اگست 2023 تک جاری رہے گا۔ انہوں نے مہاتما گاندھی اور ان عظیم شخصیات کو خراج عقیدت پیش کیا جنہوں نے جدوجہد آزادی میں اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔

وزیر اعظم نے پانچ ستونوں کے بارے میں زور دیا یعنی۔ آزادی کی جدوجہد ، نظریات 75 ویں منزل میں ، حصولیابیاں 75 ویں منزل میں ، 75 ویں منزل میں ایکشنز اور 75 ویں منزل میں عزائم جو خوابوں اور ذمہ داریوں کو ترغیب کے طور پر آگے بڑھنے کے لئے تحریک دینے والی ایک طاقت ہیں۔

 

وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ آزادی امرت مہوتسو کے معنی ہیں آزادی کی توانائی کا امرت۔ اس کا مطلب ہے آزادی کی جدوجہد کے سورماؤں کی ترغیب کا امرت ؛ نئے خیالات اور وعدوں کا امرت اور آ تم نربھر بھارت کا امرت۔

نمک کی علامت کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ محض قیمت کی بنیاد پر نمک کی  قدر  کا  کبھی اندازہ نہیں کیا جاتا۔ ہندوستانیوں کے لئے ، نمک ایمانداری ، اعتماد ، وفاداری ، محنت ، مساوات اور خود انحصاری کی نمائندگی کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت نمک ہندوستان کی خود انحصاری کی علامت تھا۔ ہندوستان کی اقدار کے ساتھ ساتھ انگریزوں نے  اس کی بھی خود انحصاری کو مجروح کیا۔ ہندوستان کے لوگوں کو انگلینڈ سے آنے والے نمک پر انحصار کرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ گاندھی جی نے ملک کے لوگوں کے اس  بے انتہا درد کو سمجھا ، لوگوں کی نبض کو پہچانا اور اسے ایک تحریک میں بدل د یا۔

وزیر اعظم نے آزادی کی جدوجہد کے اہم لمحات جیسے 1857 میں ہندوستان کی آزادی کے لئے پہلی جنگ ، مہاتما گاندھی کی بیرون ملک سے واپسی ، قوم کو ستیہ گرہ کی طاقت کی یاد  دلانا ،لوک مانیہ تلک کے ذریعہ ، مکمل آزادی  کی مانگ ،نیتا جی سبھاش چندر بوس کی زیر قیادت  آزاد ہند فوج  کا دہلی مارچ اور دہلی چلو جیسے نعروں کی یاد دلائی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ تحریک آزادی کے اس شعلے کو بیدار کرنے کا کام ، ہمارے آچاریوں ، سنتوں اور اساتذہ نے ملک کے کونے کونے میں، ہر سمت، ہر خطہ میں کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرح سے ، بھکتی تحریک نے ملک گیر آزادی کی تحریک کے لئے زمین تیار کی تھی۔ چیتنیا مہاپربھو ، رام کرشن پرم ہنس ، شریمنت شنکر دیو جیسے سنتوں نے ملک گیر آزادی کی جدوجہد کی  راہ ہموار کی ۔ اسی طرح کونے کونے سے آئے ہوئے سنتوں نے قومی  شعور اور آزادی  کی جدوجہد میں اہم کردار ادا کیا۔ ملک بھر سے بہت سارے دلت ، آدیواسی ، خواتین اور نوجوانوں نے لاتعداد قربانیاں دی ہیں۔ انہوں نے تمل ناڈو سے تعلق رکھنے والے 32 سالہ شخص کوڈی کتھا کماران جیسے گمنام ہیروز کی قربانیوں کا ذکر کیا ، جنھوں نے  اپنے سر میں انگریزوں کے ذریعہ گولی مارے جانے کے بعد بھی ملک کا جھنڈا زمین پرنہیں گرنے دیا۔ تمل ناڈو کے ویلو ناچیار جو پہلی مہارانی تھیں جنھوں نے برطانوی حکمرانی کے خلاف جنگ  لڑی تھی ۔

وزیر اعظم نے ریمارکس دیئے کہ ہمارے ملک کے قبائلی معاشرے نے اپنی بہادری سے غیر ملکی حکمرانوں کو  گھٹنوں پر جھکانے کے لئے مستقل طور پر کام  کیا ہے ۔جھارکھنڈ میں ، برسا منڈا نے انگریزوں کو للکارا اور مرمو بھائی نے  سنتھال تحریک کی قیادت کی ۔ اڈیشہ میں ، چکرا بسوئی نے انگریزوں کے خلاف لڑائی لڑی اور لکشمن نائک نے گاندھیائی طریقوں سے آگاہی پھیلائی۔ انہوں نے برطانوی راج کے خلاف لڑنے والے دیگر گمنام قبائلی سورماؤوں کے نام بھی گنائے ، جیسے آندھرا پردیش میں مانیم ویروڈو الوری سیرام راجو جیسے انگریزوں کے خلاف لڑنے والے دیگر غیر منقول قبائلی ہیروز کی فہرست دی جنہوں نے رامپا تحریک کی  قیادت کی اور پاسلٹھا کھنگچیرہ جنہوں نے میزورم کی پہاڑیوں میں انگریزوں کا مقابلہ کیا۔ انہوں نے آسام اور شمال مشرق کے دیگر آزادی پسند جنگجوؤں جیسے گومدھار کونور ، لچیٹ بورپھوکان اور سیرت سنگ کا ذکر کیا جنہوں نے ملک کی آزادی میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ملک گجرات کے جمبوغودہ میں نائک قبائلیوں کی قربانی اور منگدھ میں سیکڑوں قبائلیوں کے قتل عام کو ہمیشہ یاد رکھے گا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ملک گذشتہ 6 سالوں سے ہر ریاست اور ہر خطے میں اس تاریخ کو برقرار رکھنے کے لئے شعوری کوشش کر رہا ہے۔ ڈاندی یاترا سے وابستہ سائٹ کا احیاء دو سال قبل مکمل ہوا تھا۔ ملک کی پہلی آزاد حکومت کے قیام کے بعد انڈمان میں جس مقام پر نیتا جی سبھاش نے ترنگا پھہرایا تھا  اس مقام کا بھی  احیاء نو ہوا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جزائر انڈمان و نکوبار کے نام جدوجہد آزادی کے نام پر رکھے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مقامات جو بابا صاحب سے منسوب ہے ان کی تعمیر  پنج  تیرتھ  کی شکل میں کردی گئی ہے اور جلیانہ والا باغ کی یادگار اور پائیکا تحریک یادگاروں کو بھی تعمیر کیاگیا ہے۔

 جناب وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے ملک میں اور بیرون ملک اپنی سخت محنت کے ذریعہ اپنی شناخت قائم کی ہے۔ ہمیں اپنے آئین  اور جمہوری روایات پر فخر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان جو جمہوریت کی ماں ہے، آج بھی جمہوری اقدار کو مضبوطی عطا کرتے ہوئے آگے بڑھ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی کامیابیوں سے پوری انسانیت کی امیدیں وابستہ ہورہی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان کی ترقی کا سفر آج نربھرتا سے مملو ہے اور اس سے پوری دنیا کے ترقی کے سفر کو تقویت ملنے والی ہے۔

وزیراعظم نے نوجوانوں اور اسکالروں پر زور دیا کہ وہ ہمارے مجاہدین آزادی کی تاریخ پر مبنی دستاویز تیار کرنے کی ملک کی کوششوں کی ذمہ داری سنبھالیں۔ انہوں نے ان پر زور دیا کہ وہ جدوجہد آزادی میں حاصل کی گئی کامیابیوں سے پوری دنیا کو آگاہ کرائیں۔ انہوں نے فن، ادب، تھیٹر کی دنیا، فلمی صنعت اور ڈیجیٹل تفریح سے وابستہ لوگوں پر زور دیا کہ وہ ہمارے ماضی میں بکھری ہوئی شاندار داستانوں کو نئی زندگی عطا کریں۔

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops

Media Coverage

Why Amit Shah believes this is Amrit Kaal for co-ops
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Karnataka on 6th February
February 04, 2023
Share
 
Comments
PM to inaugurate India Energy Week 2023 in Bengaluru
Moving ahead on the ethanol blending roadmap, PM to launch E20 fuel
PM to flag off Green Mobility Rally to create public awareness for green fuels
PM to launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil - each uniform to support recycling of around 28 used PET bottles
PM to dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System - a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously
In yet another step towards Aatmanirbharta in defence sector, PM to dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru
PM to lay foundation stones of Tumakuru Industrial Township and of two Jal Jeevan Mission projects in Tumakuru

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Karnataka on 6th February, 2023. At around 11:30 AM, Prime Minister will inaugurate India Energy Week 2023 at Bengaluru. Thereafter, at around 3:30 PM, he will dedicate to the nation the HAL helicopter factory at Tumakuru and also lay the foundation stone of various development initiatives.

India Energy Week 2023

Prime Minister will inaugurate the India Energy Week (IEW) 2023 in Bengaluru. Being held from 6th to 8th February, IEW is aimed to showcase India's rising prowess as an energy transition powerhouse. The event will bring together leaders from the traditional and non-traditional energy industry, governments, and academia to discuss the challenges and opportunities that a responsible energy transition presents. It will see the presence of more than 30 Ministers from across the world. Over 30,000 delegates, 1,000 exhibitors and 500 speakers will gather to discuss the challenges and opportunities of India's energy future. During the programme, Prime Minister will participate in a roundtable interaction with global oil & gas CEOs. He will also launch multiple initiatives in the field of green energy.

The ethanol blending programme has been a key focus areas of the government to achieve Aatmanirbharta in the field of energy. Due to the sustained efforts of the government, ethanol production capacity has seen a six times increase since 2013-14. The achievements in the course of last eight years under under Ethanol Blending Programe & Biofuels Programe have not only augmented India’s energy security but have also resulted in a host of other benefits including reduction of 318 Lakh Metric Tonnes of CO2 emissions and foreign exchange savings of around Rs 54,000 crore. As a result, there has been payment of around Rs 81,800 crore towards ethanol supplies during 2014 to 2022 and transfer of more than Rs 49,000 crore to farmers.

In line with the ethanol blending roadmap, Prime Minister will launch E20 fuel at 84 retail outlets of Oil Marketing Companies in 11 States/UTs. E20 is a blend of 20% ethanol with petrol. The government aims to achieve a complete 20% blending of ethanol by 2025, and oil marketing companies are setting up 2G-3G ethanol plants that will facilitate the progress.

Prime Minister will also flag off the Green Mobility Rally. The rally will witness participation of vehicles running on green energy sources and will help create public awareness for the green fuels.

Prime Minister will launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil. Guided by the vision of the Prime Minister to phase out single-use plastic, IndianOil has adopted uniforms for retail customer attendants and LPG delivery personnel made from recycled polyester (rPET) & cotton. Each set of uniform of IndianOil’s customer attendant shall support recycling of around 28 used PET bottles. IndianOil is taking this initiative further through ‘Unbottled’ - a brand for sustainable garments, launched for merchandise made from recycled polyester. Under this brand, IndianOil targets to meet the requirement of uniforms for the customer attendants of other Oil Marketing Companies, non-combat uniforms for Army, uniforms/ dresses for Institutions & sales to retail customers.

Prime Minister will also dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System and flag-off its commercial roll-out. IndianOil had earlier developed an innovative and patented Indoor Solar Cooking System with single cooktop. On the basis of feedback received, twin-cooktop Indoor Solar Cooking system has been designed offering more flexibility and ease to the users. It is a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously, making it a reliable cooking solution for India.

PM in Tumakuru

In yet another step towards Aatmanirbharta in the defence sector, Prime Minister will dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru. Its foundation stone was also laid by the Prime Minister in 2016. It is a dedicated new greenfield helicopter factory which will enhance capacity and ecosystem to build helicopters.

This helicopter factory is Asia’s largest helicopter manufacturing facility and will initially produce the Light Utility Helicopters (LUH). LUH is an indigenously designed and developed 3-ton class, single engine multipurpose utility helicopter with unique feature of high manoeuvrability.

The factory will be expanded to manufacture other helicopters such as Light Combat Helicopter (LCH) and Indian Multirole Helicopter (IMRH) as well as for repair and overhaul of LCH, LUH, Civil ALH and IMRH in the future. The factory also has the potential for exporting the Civil LUHs in future.

This facility will enable India to meet its entire requirement of helicopters indigenously and will attain the distinction of enabling self-reliance in helicopter design, development and manufacture in India.

The factory will have a manufacturing set up of Industry 4.0 standards. Over the next 20 years, HAL is planning to produce more than 1000 helicopters in the class of 3-15 tonnes from Tumakuru. This will result in providing employment for around 6000 people in the region.

Prime Minister will lay the foundation stone of Tumakuru Industrial Township. Under the National Industrial Corridor Development Programme, development of the Industrial Township spread across 8484 acre in three phases in Tumakuru has been taken up as part of Chennai Bengaluru Industrial Corridor.

Prime Minister will lay the foundation stones of two Jal Jeevan Mission projects at Tiptur and Chikkanayakanahalli in Tumakuru. The Tiptur Multi-Village Drinking Water Supply Project will be built at a cost of over Rs 430 crores. The Multi-village water supply scheme to 147 habitations of Chikkanayakanahlli taluk will be built at a cost of around Rs 115 crores. The projects will facilitate provision of clean drinking water for the people of the region.