چھتیس گڑھ کے 9 اضلاع میں 50 بستروں والے 'کریٹیکل کیئر بلاکس' کا سنگ بنیاد بھی رکھا
ایک لاکھ سیکل سیل کاؤنسلنگ کارڈز تقسیم کئے
’آج ملک کی ہر ریاست اور ہر علاقے کو ترقی میں برابر ترجیح مل رہی ہے‘
’’پوری دنیا نہ صرف مشاہدہ کر رہی ہے بلکہ جدید ترقی کی تیز رفتاری اور سماجی بہبود کے ہندوستانی ماڈل کی تعریف بھی کر رہی ہے ‘‘
’’چھتیس گڑھ ملک کی ترقی کا پاور ہاؤس ہے‘‘
’’حکومت کا جنگلات اور زمین کے تحفظ کا عزم ہے جبکہ جنگلات کی دولت سے خوشحالی کی نئی راہیں بھی کھل رہی ہیں‘‘
ہمیں ’سب کا ساتھ، سب کا وکاس‘ کے عزم کے ساتھ آگے بڑھنے کی ضرورت ہے

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج  چھتیس گڑھ کے رائے گڑھ میں  ریلوے کے شعبہ میں تقریباً 6,350 کروڑ روپےکی مالیت  کے کئی پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کیا۔ انہوں نے چھتیس گڑھ کے 9 اضلاع میں 50 بستروں والے 'کریٹیکل کیئر بلاکس' کا سنگ بنیاد بھی رکھا اور اسکرین شدہ آبادی میں 1 لاکھ سیکل  سیل کونسلنگ کارڈ تقسیم کئے۔ ریلوے پروجیکٹوں میں چھتیس گڑھ ایسٹ ریل پروجیکٹ فیز-I، چمپا سے جمگا کے درمیان تیسری ریل لائن، پیندرا روڈ سے انوپ پور کے درمیان تیسری ریل لائن اور ایم جی آر (میری-گو-راؤنڈ) سسٹم شامل ہے جو تلی پلی کول مائن کو این ٹی پی سی لارا سپر تھرمل پاور اسٹیشن (ایس ٹی پی ایس ) سے جوڑتی ہے ۔

 

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ چھتیس گڑھ ترقی کی طرف ایک اہم قدم اٹھا رہا ہے کیونکہ ریاست میں 6,400 کروڑ روپے سے زیادہ کے ریلوے پروجیکٹوں کی نقاب کشائی کی جا رہی ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ توانائی پیدا کرنے کی صلاحیت کو بڑھانے اور ریاست کے صحت کی دیکھ بھال کے شعبے کو بہتر بنانے کے لیے آج مختلف نئے پروجیکٹ شروع کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے اس موقع پر سیکل سیل کونسلنگ کارڈز کی تقسیم کا بھی ذکر کیا۔

وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ پوری دنیا جدید ترقی کی تیز رفتاری اور سماجی بہبود کے ہندوستانی ماڈل کا  نہ صرف مشاہدہ کر رہی ہے بلکہ تعریف بھی کر رہی ہے۔ وزیر اعظم نے نئی دہلی میں جی 20 سربراہ  کانفرنس کے دوران عالمی رہنماؤں کی میزبانی کو یاد کیا اور کہا کہ وہ ہندوستان کے ترقی اور سماجی بہبود کے ماڈل سے بہت متاثر ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عالمی ادارے ہندوستان کی کامیابیوں سے سیکھنے کی بات کر رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے اس کارنامے کا سہرا ہر ریاست اور ملک کے ہر علاقے کی ترقی کی طرف حکومت کی مساوی ترجیح کو دیا۔ وزیر اعظم نے آج کے منصوبوں کے لیے شہریوں کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا ’چھتیس گڑھ اور رائے گڑھ کا یہ خطہ بھی اس کا گواہ ہے‘۔

 

’چھتیس گڑھ ملک کی ترقی کا پاور ہاؤس ہے‘، وزیر اعظم نے یہ تبصرہ  کرتے ہوئے کہا کہ کوئی ملک تبھی آگے بڑھے گا جب اس کے پاور ہاؤس پوری طاقت سے کام کر رہے ہوں گے۔ گزشتہ 9 سالوں میں وزیر اعظم نے کہا کہ مرکزی حکومت نے چھتیس گڑھ کی کثیر جہتی ترقی کے لیے مسلسل کام کیا ہے اور اس ویژن اور ان پالیسیوں کے نتائج آج یہاں دیکھے جا سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چھتیس گڑھ میں مرکزی حکومت کی طرف سے ہر شعبے میں بڑی اسکیمیں نافذ کی جارہی ہیں اور نئے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا جارہا ہے۔ وزیر اعظم نے جولائی میں وشاکھاپٹنم سے لے کر  رائے پور اقتصادی راہداری اور رائے پور سے لے کر  دھنباد اقتصادی راہداری کے ترقیاتی پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھنے کے لیے رائے پور کے دورے کو یاد کیا۔ انہوں نے ریاست کو پیش کی گئی مختلف اہم قومی شاہراہوں کا بھی ذکر کیا۔ ’’آج، چھتیس گڑھ کے ریلوے نیٹ ورک کی ترقی میں ایک نیا باب لکھا جا رہا ہے‘‘، وزیر اعظم نے یہ تبصرہ کرتے  ہوئے کہا کہ بہتر ریل نیٹ ورک بلاس پور-ممبئی ریل لائن کے جھارسوگوڈا بلاس پور سیکشن میں بھیڑ کو کم کرے گا۔ انہوں نے کہا، اسی طرح، دیگر ریلوے لائنیں جو شروع کی جا رہی ہیں اور جو ریل کوریڈور بنائے جا رہے ہیں، وہ چھتیس گڑھ کی صنعتی ترقی کو نئی بلندیاں دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مکمل ہونے پر یہ راستے نہ صرف چھتیس گڑھ کے لوگوں کو سہولت فراہم کریں گے بلکہ اس خطے میں روزگار اور آمدنی کے نئے مواقع بھی پیدا ہوں گے۔

 

وزیر اعظم نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ کوئلے کی فیلڈ سے پاور پلانٹس تک کوئلے کی نقل و حمل کی لاگت اور وقت میں کمی آئے گی۔ کم قیمت پر زیادہ سے زیادہ بجلی پیدا کرنے کے لیے وزیراعظم نے بتایا کہ حکومت پٹ ہیڈ تھرمل پاور پلانٹ بھی بنا رہی ہے۔ انہوں نے تلی پلی کان کو جوڑنے کے لیے 65 کلومیٹر کے میری-گو-راؤنڈ پروجیکٹ کے افتتاح پر بھی بات کی اور کہا کہ اس طرح کے پروجیکٹوں کی تعداد صرف ملک میں بڑھے گی اور آنے والے وقت میں چھتیس گڑھ جیسی ریاستوں کو سب سے زیادہ فائدہ ہوگا۔

امرت کال کے اگلے 25 سالوں میں ہندوستان کو ایک ترقی یافتہ ملک میں تبدیل کرنے کے عزم کے بارے میں بات کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے ترقی کی سمت میں ہر شہری کی مساوی شراکت کی ضرورت پر زور دیا۔وہیں ، انہوں نے ماحولیات کی حفاظت کرتے ہوئے ملک کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے پر روشنی ڈالی اور سورج پور ضلع میں کوئلے کی بند پڑی  کان کا ذکر کیا جسے ایکو سیاحت  کے حصے کے طور پر تیار کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کوروا میں بھی اسی طرح کا ایکو پارک تیار کرنے کا کام جاری ہے۔ اس علاقے کے قبائلی طبقے کے لیے فوائد کے بارے میں بات کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کانوں سے نکلنے والے پانی سے ہزاروں لوگوں کو فراہم کی جانے والی آبپاشی اور پینے کے پانی کی سہولیات پر روشنی ڈالی۔

 

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ جنگلات اور زمین کے تحفظ کے ساتھ ساتھ جنگلات کی دولت کے ذریعے خوشحالی کی نئی راہیں کھولنا حکومت کا عزم ہے۔ وندھن وکاس یوجنا کا ذکر کرتے ہوئے جناب مودی نے زور دیا کہ اس اسکیم سے لاکھوں قبائلی نوجوان مستفید ہو رہے ہیں۔ انہوں نے جوار کا سال منانے والی دنیا پر بھی روشنی ڈالی اور آنے والے سالوں میں شری ان  یا باجرے کے بازار کی بڑھتی ہوئی صلاحیت کو اجاگر کیا۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف ملک کی قبائلی روایت کو ایک نئی شناخت مل رہی ہے تو دوسری طرف ترقی کی نئی راہیں بھی متعین ہو رہی ہیں۔

قبائلی آبادی پر سیکل  سیل انیمیا کے اثرات کے بارے میں بات کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ سیکل  سیل کونسلنگ کارڈز کی تقسیم قبائلی معاشرے کے لیے ایک بہت بڑا قدم ہے کیونکہ  اس سلسلے میں معلومات پھیلانے سے بیماری پر قابو پانے میں مدد مل سکتی ہے۔اپنے  خطاب کے اختتام پر وزیر اعظم نے ’سب کا ساتھ، سب کا وکاس‘ کے عزم کے ساتھ آگے بڑھنے کی ضرورت پر زور دیا اور اس اعتماد کا اظہار کیا کہ چھتیس گڑھ ترقی کی نئی بلندیوں تک پہنچے گا۔

اس موقع پر قبائلی امور کی مرکزی وزیر مملکت محترمہ رینوکا سنگھ سروتا اور چھتیس گڑھ کے نائب وزیر اعلیٰ جناب ٹی ایس سنگھ دیو بھی موجود تھے۔

پس منظر

رائے گڑھ میں عوامی پروگرام میں تقریباً 6,350 کروڑ روپے کی مالیت  کے ریلوے کے شعبہ  کے اہم پروجیکٹوں کو قوم کے تئیں وقف کرنے کے ساتھ پورے ملک میں رابطے کو بہتر بنانے پر وزیر اعظم کی ترجیح کو تقویت ملے گی۔ ان پروجیکٹوں میں چھتیس گڑھ ایسٹ ریل پروجیکٹ فیز-I، چمپا سے جمگا کے درمیان تیسری ریل لائن، پیندرا روڈ سے انوپ پور کے درمیان تیسری ریل لائن اور ایم جی آر (میری-گو-راؤنڈ) سسٹم شامل ہے جو تلی پلی کول مائن کو این ٹی پی سی لارا سپر تھرمل پاور اسٹیشن (ایس ٹی پی ایس) سے جوڑتا ہے۔ ریل پروجیکٹس  خطے میں مسافروں کی نقل و حرکت کے ساتھ ساتھ مال بردار ٹریفک کی سہولت کے ذریعے سماجی اقتصادی ترقی کو تحریک فراہم کریں گے۔

 

چھتیس گڑھ ایسٹ ریل پروجیکٹ فیز-I کو پرجوش پی ایم گتی شکتی - ملٹی ماڈل کنیکٹیویٹی کے قومی ماسٹر پلان کے تحت تیار کیا جا رہا ہے اور یہ کھرسیا سے دھرمجے گڑھ تک 124.8 کلومیٹر ریل لائن پر مشتمل ہے جس میں گارے-پیلما تک ایک اسپر لائن اور چھل ، بارود، درگاپور اور دیگر کوئلے کی کانوں کو جوڑنے والی 3 فیڈر لائنیں شامل ہیں۔ ریل لائن، تقریباً 3,055 کروڑ روپے کی لاگت سے روپے کی لاگت سے بنائی گئی بجلی سے لیس براڈ گیج لیول کراسنگ اور مسافروں کی سہولیات کے ساتھ فری پارٹ ڈبل لائن سے لیس ہیں۔ یہ رائے گڑھ، چھتیس گڑھ میں واقع مند-رائے گڑھ کول فیلڈ سے کوئلے کی نقل و حمل کے لیے ریل رابطہ فراہم کرے گا۔

پیندرا روڈ سے انوپ پور کے درمیان تیسری ریل لائن 50 کلومیٹر لمبی ہے اور تقریباً 516 کروڑ روپے کی لاگت سے بنائی گئی ہے۔ چمپا اور جمگا ریل سیکشن کے درمیان 98 کلو میٹر لمبی تیسری لائن تقریباً 796 کروڑ روپے کی لاگت سے بنائی گئی ہے۔ نئی ریل لائنیں خطے میں رابطے کو بہتر بنائیں گی اور سیاحت اور روزگار کے مواقع دونوں میں اضافہ کا باعث بنیں گے۔

65 کلومیٹر طویل الیکٹریفائیڈ ایم جی آر (میری-گو-راؤنڈ) سسٹم چھتیس گڑھ میں این ٹی پی سی کی تلائی پلی کوئلے کی کان سے 1600 میگاواٹ کے این ٹی پی سی لارا سپر تھرمل پاور اسٹیشن تک کم لاگت، اعلیٰ درجے کا کوئلہ فراہم کرے گا۔ اس سے این ٹی پی سی  لارا سے کم لاگت اور بجلی کی  پیداوار کو فروغ ملے گا، اس طرح ملک کی توانائی کی حفاظت کو تقویت ملے گی۔ ایم جی آر  نظام، 2070 کروڑ روپے سے زیادہ کی لاگت سے بنایا گیا، کوئلے کی کانوں سے پاور اسٹیشنوں تک کوئلے کی نقل و حمل کو بہتر بنانے کے لیے ایک تکنیکی کارنامہ  ہے۔

پروگرام کے دوران، وزیر اعظم نے چھتیس گڑھ کے 9 اضلاع میں 50 بستروں والے 'کریٹیکل کیئر بلاکس' کا سنگ بنیاد بھی رکھا۔ نو کریٹیکل کیئر بلاکس پردھان منتری – آیوشمان بھارت ہیلتھ انفراسٹرکچر مشن (پی ایم -اے بی ایچ آئی ایم ) کے تحت درگ، کونڈاگاؤں، راج آنند گاؤں ، گریابند، جش پور، سورج پور، سرگجا، بستر اور رائے گڑھ اضلاع میں تعمیر کیے جائیں گے، جن پر کل 210 کروڑ روپے سے زیادہ کی لاگت آئے گی۔

سیکل  سیل کی بیماری سے پیدا ہونے والے صحت کے مسائل کو حل کرنے کے مقصد سے، خاص طور پر قبائلی آبادی میں، وزیر اعظم نے اسکرین شدہ آبادی میں ایک لاکھ سیکل سیل کونسلنگ کارڈ تقسیم کیے۔ سیکل سیل کونسلنگ کارڈز کی تقسیم نیشنل سیکل سیل انیمیا ایلیمینیشن مشن (این ایس اے ای ایم ) کے تحت کی جا رہی ہے، جس کا آغاز وزیر اعظم نے جولائی 2023 میں مدھیہ پردیش کے سہ ڈول  میں کیا تھا۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Union Cabinet approves amendment in FDI policy on space sector, upto 100% in making components for satellites

Media Coverage

Union Cabinet approves amendment in FDI policy on space sector, upto 100% in making components for satellites
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Cabinet approves Proposal for Implementation of Umbrella Scheme on “Safety of Women”
February 21, 2024

The Union Cabinet chaired by Prime Minister Shri Narendra Modi approved the proposal of Ministry of Home Affairs of continuation of implementation of Umbrella Scheme on ‘Safety of Women’ at a total cost of Rs.1179.72 crore during the period from 2021-22 to 2025-26.

Out of the total project outlay of Rs.1179.72 crore, a total of Rs.885.49 crore will be provided by MHA from its own budget and Rs.294.23 crore will be funded from Nirbhaya Fund.

Safety of Women in a country is an outcome of several factors like stringent deterrence through strict laws, effective delivery of justice, redressal of complaints in a timely manner and easily accessible institutional support structures to the victims. Stringent deterrence in matters related to offences against women was provided through amendments in the Indian Penal Code, Criminal Procedure Code and the Indian Evidence Act.

In its efforts towards Women Safety, Government of India in collaboration with States and Union Territories has launched several projects. The objectives of these projects include strengthening mechanisms in States/Union Territories for ensuring timely intervention and investigation in case of crime against women and higher efficiency in investigation and crime prevention in such matters.

The Government of India has proposed to continue the following projects under the Umbrella Scheme for “Safety of Women”:

  1. 112 Emergency Response Support System (ERSS) 2.0;
  2. Upgradation of Central Forensic Sciences laboratories, including setting up of National Forensic Data Centre;
  3. Strengthening of DNA Analysis, Cyber Forensic capacities in State Forensic Science Laboratories (FSLs);
  4. Cyber Crime Prevention against Women and Children;
  5. Capacity building and training of investigators and prosecutors in handling sexual assault cases against women and children; and
  6. Women Help Desk & Anti-human Trafficking Units.