Launches two major initiatives designed to support and uplift MSMEs in the Indian automotive industry
“MSMEs are key players in propelling the automotive industry forward and are vital to the nation's economic growth”
“Automobile industry is a powerhouse of the economy
“Today our MSMEs have a great opportunity to become a strong part of the global supply chain”
“Country is seeing the future of MSME as the nation's MSME”
“Government of India is standing shoulder to shoulder with every industry today”
“Take innovation and competitiveness forward. The government is completely with you”

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج تمل ناڈو کے مدورائی میں ’مستقبل کی تعمیر – موٹر گاڑی سے متعلق ایم ایس ایم ای صنعت کاروں کے لیے ڈیجیٹل موبیلٹی‘ کے موضوع پر منعقدہ پروگرام میں شرکت کی اور اس موقع پر موٹر گاڑی شعبے میں مصروف عمل بہت چھوٹے ، چھوٹے اور درمیانہ درجے کے اداروں (ایم ایس ایم ایز) کے  ہزاروں صنعت کاروں  سے خطاب کیا۔ وزیر اعظم نے اس موقع پر گاندھی گرام سے تربیت یافتہ خواتین صنعت کاروں اور اسکولی بچوں سے بھی بات چیت کی۔

 

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ تکنالوجی اور اختراعی شعبے سے وابستہ ذہین افراد کے درمیان موجود ہونا ایک خوشگوار تجربہ ہے اور کہا کہ یہ احساس مستقبل کو تیار کرنے والی تجربہ گاہ کا دورہ کرنے جیسا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ جب تکنالوجی خصوصاً موٹرگاڑی کے شعبے کی ہو تو تمل ناڈو نے عالمی سطح پر اپنی صلاحیت کا لوہا منوایا ہے۔ انہوں نے تقریب کے موضوع ’مستقبل کی تعمیر – موٹر گاڑی سے متعلق ایم ایس ایم ای اداروں کے لیے ڈیجیٹل موبیلٹی‘پر خوشی کا اظہار کیا اور تمام ایم ایس ایم ایز اور خواہشمند نوجوانوں کو ایک پلیٹ فارم پر اکٹھا کرنے پر ٹی وی ایس کمپنی کو مبارکباد دی۔ وزیر اعظم نے اس اعتماد کا اظہار کیا کہ موٹر گاڑی صنعت کے ساتھ ساتھ وکست بھارت کی ترقی سے مطلوبہ قوت حاصل ہوگی۔

وزیراعظم نے کہا کہ ملک کی جی ڈی پی کا 7 فیصد موٹر گاڑی صنعت سے آتا ہے جو اسے ملک کی خود مختاری کا ایک بڑا حصہ بناتا ہے۔ وزیراعظم نے مینوفیکچرنگ اور اختراع کو فروغ دینے میں موٹر گاڑی صنعت کے کردار کا بھی اعتراف کیا۔

 

وزیراعظم نے کہا کہ ملک کی جی ڈی پی کا 7 فیصد موٹر گاڑی صنعت سے آتا ہے جو اسے ملک کی خود مختاری کا ایک بڑا حصہ بناتا ہے۔ وزیراعظم نے مینوفیکچرنگ اور اختراع کو فروغ دینے میں موٹر گاڑی صنعت کے کردار کا بھی اعتراف کیا۔

اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ ہندوستان کی جانب موٹر گاڑی صنعت کی شراکتیں خود موٹر گاڑی صنعت میں ایم ایس ایم ایز کے تعاون سے ملتی جلتی ہیں، وزیر اعظم نے بتایا کہ 45 لاکھ سے زیادہ کاریں، 2 کروڑ دو پہیہ گاڑیاں، 10 لاکھ تجارتی گاڑیاں اور 8.5 لاکھ تین پہیہ موٹر گاڑیاں  ہر سال ہندوستان میں تیار ہوتی ہیں۔ انہوں نے ہر مسافر گاڑی میں 3000-4000 مختلف آٹو موٹیو پارٹس کے استعمال کا اعتراف کیا اور کہا کہ اس طرح کے لاکھوں پرزے ہر روز مینوفیکچرنگ کے عمل میں استعمال ہوتے ہیں۔ وزیر اعظم نے ہندوستان کے بیشتر زمرہ I اور II کے شہروں میں ان کی موجودگی کا ذکر کرتے ہوئے کہا "یہ ہندوستان کے ایم ایس ایم ایز ہی ہیں جو یہ پرزے تیار کر رہے ہیں"۔ وزیر اعظم نے ہمارے دروازے پر دستک دینے والے عالمی امکانات کو اجاگر کرتے ہوئے کہا "دنیا میں بہت سی کاروں میں ہندوستانی ایم ایس ایم ایز کے تیار کردہ پرزے استعمال ہوتے ہیں"۔

 

وزیر اعظم نے معیار اور پائیداری پر کام کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے اور معیار اور ماحولیاتی پائیداری کا احاطہ کرنے والے 'زیرو ڈیفیکٹ-زیرو ایفیکٹ' کے اپنے فلسفے کا اعادہ کرتے ہوئے کہا "آج ہمارے ایم ایس ایم ایز کے پاس عالمی سپلائی چین کا ایک مضبوط حصہ بننے کا ایک بہترین موقع ہے.."

وزیر اعظم نے وبائی مرض کے دوران ہندوستان کے ایم ایس ایم ایز کی صلاحیت کا اعتراف کیا۔ انہوں نے مزید کہا ،"ملک ایم ایس ایم ای کے مستقبل کو ملک کے ایم ایس ایم ای کے طور پر دیکھ رہا ہے" ۔ ایم ایس ایم ای کے لیے حکومت کے کثیر جہتی دباؤ کی وضاحت کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے پی ایم مدرا یوجنا اور پی ایم وشوکرما یوجنا کا ذکر کیا۔ مزید برآں، ایم ایس ایم ای کریڈٹ گارنٹی اسکیم نے وبائی امراض کے دوران ایم ایس ایم ای میں لاکھوں نوکریوں کو بچایا۔

 

وزیر اعظم مودی نے تصدیق کی کہ آج ہر شعبے میں ایم ایس ایم ایز کے لیے کم لاگت والے قرضے اور کام کاج کی پونجی سہولیات کو یقینی بنایا جا رہا ہے، اس طرح ان کا دائرہ وسیع ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے چھوٹے کاروباری اداروں کی جدید کاری پر حکومت کا زور بھی مضبوط کرنے والا عنصر ثابت ہو رہا ہے۔ وزیر اعظم نے ملک میں جاری ہنر مندی کے فروغ کے پروگراموں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا، "آج کی حکومت ایم ایس ایم ایز کی نئی ٹیکنالوجی اور مہارتوں کی ضرورت کا خیال رکھتی ہے۔" مستقبل کی تشکیل میں ہنر مندی کی ترقی کے کردار پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے مہارت کی ترقی پر خصوصی زور دینے پر روشنی ڈالی اور مزید کہا کہ اقتدار میں آنے کے بعد سے ایک نئی وزارت بنائی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ "اعلی درجے کی مہارت والی یونیورسٹیاں جس میں اپ گریڈیشن کی گنجائش موجود ہے، ہندوستان کے لیے وقت کی اہم ضرورت ہیں"۔

وزیر اعظم نے تاجروں سے درخواست کی کہ وہ ای وی کی بڑھتی ہوئی مانگ کے مطابق اپنی صلاحیت میں اضافہ کریں۔ وزیر اعظم مودی نے چھت پر شمسی توانائی کے لیے حال ہی میں شروع کی گئی پی ایم سوریہ گھر یوجنا کا ذکر کیا جو مستفید ہونے والوں کو مفت بجلی اور اضافی آمدنی فراہم کرے گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ایک کروڑ گھرانوں کے ابتدائی ہدف کے ساتھ، برقی موٹر گاڑیوں کو گھروں میں مزید قابل رسائی چارجنگ اسٹیشن ملیں گے۔

 

وزیر اعظم نے آٹو اور آٹو پرزوں کے لیے 26,000 کروڑ روپے کی پی ایل آئی اسکیم پر بھی غور کیا جو مینوفیکچرنگ کے ساتھ ہائیڈروجن گاڑیوں کو فروغ دے رہی ہے۔ اس کے ذریعے 100 سے زیادہ جدید آٹوموٹیو ٹیکنالوجیز کو فروغ دیا جا رہا ہے۔ وزیر اعظم نے صنعت کاروں کو اپنی صلاحیتوں کو بڑھانے اور نئے شعبوں کو تلاش کرنے کی تلقین کرتے ہوئے کہا "جب ملک میں نئی ٹیکنالوجیز تیار ہوں گی، تو ان ٹیکنالوجیز میں عالمی سرمایہ کاری بھی ہندوستان آئے گی"۔

مواقع کے ساتھ چیلنجوں کی موجودگی کو تسلیم کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے ڈیجیٹلائزیشن، بجلی، متبادل ایندھن کی گاڑیوں اور مارکیٹ کی طلب میں اتار چڑھاؤ کو اہم مسائل کے طور پر ذکر کیا۔ انہوں نے ان مواقع کو مواقع میں تبدیل کرنے کے لیے صحیح حکمت عملی کے ساتھ کام کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

وزیر اعظم نے ایم ایس ایم ایز کو باضابطہ بنانے کی سمت میں اقدامات کی طرف بھی اشارہ کیا جیسے ایم ایس ایم ایز کی تعریف میں ترمیم کرنا، جس سے ایم ایس ایم ایز کے سائز میں اضافہ کا راستہ صاف ہو گا۔

 

"حکومت ہند آج ہر صنعت کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑی ہے"، پی ایم مودی نے تبصرہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ پہلے چھوٹے چھوٹے معاملات کے لیے بھی سرکاری دفاتر کا چکر لگانا پڑتا تھا، چاہے وہ انڈسٹری ہو یا فرد، لیکن آج کی حکومت ہر شعبے کو درپیش تمام مسائل سے نمٹ رہی ہے۔ انہوں نے گزشتہ چند سالوں میں 40,000 سے زیادہ تعمیل کو ختم کرنے اور کاروبار سے متعلق بہت سی معمولی غلطیوں کو مجرمانہ قرار دینے کا ذکر کیا۔

وزیر اعظم نے کہا "یہ نئی لاجسٹک پالیسی ہو یا جی ایس ٹی، ان سب نے آٹوموبائل سیکٹر کی چھوٹی صنعتوں کی مدد کی ہے"۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت نے پی ایم گتی شکتی نیشنل ماسٹر پلان بنا کر ہندوستان میں بنیادی ڈھانچے کی ترقی کو ایک راہ دکھائی ہے جس کے تحت ڈیڑھ ہزار سے زیادہ پرتوں میں ڈیٹا پروسیسنگ کرکے مستقبل کا بنیادی ڈھانچہ تشکیل دیا جا رہا ہے جس سے موڈل کنیکٹوٹی، کثیرالجہتی کو بہت زیادہ طاقت ملتی ہے۔ انہوں نے ہر صنعت کے لیے سپورٹ میکانزم تیار کرنے پر بھی زور دیا اور آٹو موبائل ایم ایس ایم ای سیکٹر کے اسٹیک ہولڈرز پر زور دیا کہ وہ اس سپورٹ میکانزم سے فائدہ اٹھائیں۔ وزیر اعظم نے کہا "جدت اور مسابقت کو آگے بڑھائیں۔ حکومت پوری طرح آپ کے ساتھ ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ٹی وی ایس کی یہ کوشش بھی اس سمت میں آپ کی مدد کرے گی”۔

 

وزیر اعظم مودی نے حکومت کی اسکریپنگ پالیسی کو بھی چھوا اور تمام پرانی گاڑیوں کو نئی جدید گاڑیوں سے تبدیل کرنے کی خواہش کا اظہار کیا اور اسٹیک ہولڈرز سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کی اپیل کی۔ انہوں نے جہاز سازی کے جدید اور منصوبہ بند طریقوں اور اس کے پرزوں کی ری سائیکلنگ کے لیے مارکیٹ کے ساتھ آگے آنے کے بارے میں بھی بات کی۔ خطاب کے اختتام پر، وزیر اعظم نے ڈرائیوروں کو درپیش چیلنجوں پر بھی روشنی ڈالی اور ہائی وے پر ڈرائیوروں کے لیے سہولیات کے لیے 1000 مراکز بنانے کا ذکر کیا۔ وزیراعظم نے نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت قوم کو نئی بلندیوں پر لے جانے کے منصوبوں میں ان کے ساتھ کھڑی ہے۔

اس موقع پر دیگر معززین کے علاوہ مرکزی وزیر مملکت ڈاکٹر ایل مروگن اور ٹی وی ایس سپلائ چین سالیوشنز لمیٹڈ کے چیئرمین جناب آر دنیش بھی موجود تھے۔

پس منظر

مدورائی میں، وزیر اعظم نے پروگرام ’مستقبل کی تخلیق – آٹو موٹیو ایم ایس ایم ای انٹرپرینیورز کے لیے ڈیجیٹل موبلٹی‘ میں حصہ لیا، اور آٹو موٹیو سیکٹر میں کام کرنے والے ہزاروں مائیکرو، سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز (ایم ایس ایم ایز ) کاروباریوں سے خطاب کیا۔ وزیر اعظم نے ہندوستانی آٹو موٹیو انڈسٹری میں ایم ایس ایم ایز کی حمایت اور ترقی کے لیے بنائے گئے دو بڑے اقدامات کا بھی آغاز کیا۔ ان اقدامات میں ٹی وی ایس اوپن موبیلٹی پروگرام اور ٹی وی ایس موبیلٹی – سی آئی آئی سینٹر آف ایکسی لینس شامل ہیں۔ یہ اقدامات ملک میں ایم ایس ایم ایز کی ترقی میں معاونت کے وزیر اعظم کے وژن کو عملی جامہ پہنانے اور آپریشنز کو باضابطہ بنانے، عالمی قدر کی زنجیروں کے ساتھ مربوط ہونے اور خود انحصار بننے میں مدد کرنے کے لیے ایک پہل قدمی کی حیثیت رکھتے ہیں ۔

 

Click here to read full text speech

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Demat accounts rise to 15,14 million in March 2024, up 32.25% year-on-year: March month new additions at 31.3 Lakh

Media Coverage

Demat accounts rise to 15,14 million in March 2024, up 32.25% year-on-year: March month new additions at 31.3 Lakh
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 17 اپریل 2024
April 17, 2024

Holistic Development under the Leadership of PM Modi